Issuu on Google+

‫اا الّرْحـمـَِنا الّرِحميم‬ ِ ّ ‫ِبْسِما ا‬

Well Come    To 

                  

65th  Monthly Darse Quran  Stockholm Study Circle


‫‪Agenda for today‬‬ ‫افتاحی کلمات •‬ ‫گذشتہ نشست کا خلصہ •‬ ‫سورہ البقرہ ‪• 29 - 21‬‬

‫مضامین قرآن کے سلسلہ ایک موضوع‬ ‫آج کا موضوع •‬ ‫خواب کے قرآنی آیات اور جدید سائنسی‬ ‫نظریات اور معلومات‬ ‫‪• Round Table Discussion, Comments & ‬‬ ‫‪Questions‬‬ ‫‪• Tea & Refereshments‬‬


‫‪Previous Session held on ‬‬

‫تخلیق آدم کا تفصیل‬ ‫ببنی اسرآئیل کا قصہ‬


Al Baqrah Verses 21 - 29

‫درس قرآن کا سلسلہ‬ ‫ تا‬21 ‫سورہ البقرہ آیت‬ 29

‫اے لوگو! اپنے رب کی عبادت کرو جس نے تمہیں پیدا کیا اور ان‬ ‫لوگوں کو )بھی( جو تم سے پیشتر تھے تاکہ تم پرہیزگار بن جاؤ‬ O Mankind! do not be deceived by the glitter of secular  systems (17/18-20). It behoves you to adhere to the Laws of that Creator and Sustainer Who created you and your  ancestors, and Who has brought the human race to the  present state of evolution through various stages despite the  destructive forces of nature (7/172). This is the only way you  can shield yourself from the hazards of the journey.


‫جس نے تمہارے لئے زمین کو فرش اور آسمان کو عمارت بنایا‬ ‫اور آسمانوں کی طرف سے پانی برسایا پھر اس کے ذریعے تمہارے‬ ‫ پس تم اللہ کے‬،‫کھانے کے لئے )انواع و اقسام کے( پھل پیدا کئے‬ ‫ت حال( جانتے ہو‬ ِ ‫لئے شریک نہ ٹھہراؤ حالنکہ تم )حقیق‬

You will find protection from life’s pitfalls only within the universal system of Rabubiyyat according to which Allah made the earth a resting place for you and scattered various planets in the atmosphere which remain in their orbits through mutual gravitation. Allah also caused rain to come down from the sky so that means of nourishment could be provided for you. It is evident that all means of sustenance have been given to you unearned but Allah alone is the owner and master of these means and you are permitted only their use. Therefore, take care lest you make human beings masters of these means. If you were to do this, it would be tantamount to Shirk, or setting up rivals to Allah.


‫اور اگر تم اس )کلم( کے بارے میں شک میں مبتل ہو جو ہم نے اپنے‬ ‫)برگزیدہ( بندے پر نازل کیا ہے تو اس جیسی کوئی ایک سورت ہی‬ ‫ اور )اس کام کے لئے بیشک( اللہ کے سوا اپنے )سب( حمائتیوں‬،‫بنا لؤ‬ ‫کو بل لو اگر تم )اپنے شک اور انکار میں( سچے ہو‬ If after reviewing such persuasive arguments and clear  evidence, you are still in doubt and perplexity about the truth  or falsity of this Book (Code of life) which We have revealed to  you through our Rasool, then there is a simple way to resolve  this problem. Produce only one Surah like any Surahs from this  Book (11/13, 10/38). If you cannot do this single-handedly,  ask various thinkers in your society to co-operate with you in  producing the like of just one Surah – accept this challenge to  prove, if what you say is true.


‫پھر اگر تم ایسا نہ کر سکو اور ہرگز نہ کر سکو گے تو اس آگ‬ ‫سے بچو جس کا ایندھن آدمی )یعنی کافر( اور پتھر )یعنی ان کے‬ ‫ جو کافروں کے لئے تیار کی گئی ہے‬،‫بت( ہیں‬ But if you will not accept our challenge – and, for sure, you will  not – and continue in your opposition, all of you – common and elite, leaders and followers alike – will fall into an  inferno of devastation along with your wealth and glory. This  devastation may occur through a war in which fire is kindled by  human hands wielding destructive weapons or through an evil  political system. In any case, this is the hell which those who  deny and defy this Code of life have prepared for themselves  (104/5-9).


‫اور آپ ان لوگوں کو خوشخبری سنا دیں جو ایمان لئے اور نیک‬ ‫عمل کرتے رہے کہ ان کے لئے )بہشت کے( باغات ہیں جن کے نیچے‬ ‫نہریں بہتی ہیں‪ ،‬جب انہیں ان باغات میں سے کوئی پھل کھانے‬ ‫کو دیا جائے گا تو )اس کی ظاہری صورت دیکھ کر( کہیں گے‪ :‬یہ‬ ‫تو وہی پھل ہے جو ہمیں )دنیا میں( پہلے دیا گیا تھا‪ ،‬حالنکہ انہیں‬ ‫)صورت میں( ملتے جلتے پھل دیئے گئے ہوں گے‪ ،‬ان کے لئے جنت میں‬ ‫پاکیزہ بیویاں )بھی( ہوں گی اور وہ ان میں ہمیشہ رہیں گے‬


In this turmoil, there is no cause for anxiety for those who  believe in the Divine Laws  and in life’s higher values, and  who follow the plan designed by Allah for the actualisation of  their potentialities. O Rasool! tell them that they will, thereby,  lead a life of bliss both  here and in the Hereafter. This promise of joy and success is  not exclusive to your present community. Whenever and  wherever any community followed the right path the outcome  was similar (24/55, 39/74). Similar actions always lead to  similar consequences though forms of these may vary  according to the dictates of time.  In the society to be formed by Momineen, others who are  like them in purity of conduct will become their companions.  As long as this society remains steadfastly rooted in the  foundations of the Divine Laws, it will continue to prosper and  be safe from disorder and disintegration. 


‫بیشک اللہ اس بات سے نہیں شرماتا کہ )سمجھانے کے لئے( کوئی‬ ‫بھی مثال بیان فرمائے )خواہ( مچھر کی ہو یا )ایسی چیز کی جو‬ ‫حقارت میں( اس سے بھی بڑھ کر ہو‪ ،‬تو جو لوگ ایمان لئے وہ‬ ‫خوب جانتے ہیں کہ یہ مثال ان کے رب کی طرف سے حق )کی‬ ‫نشاندہی( ہے‪ ،‬اور جنہوں نے کفر اختیار کیا وہ )اسے سن کر یہ(‬ ‫کہتے ہیں کہ ایسی تمثیل سے اللہ کو کیا سروکار؟ )اس طرح( اللہ‬ ‫ایک ہی بات کے ذریعے بہت سے لوگوں کو گمراہ ٹھہراتا ہے اور‬ ‫بہت سے لوگوں کو ہدایت دیتا ہے اور اس سے صرف انہی کو‬ ‫گمراہی میں ڈالتا ہے جو )پہلے ہی( نافرمان ہیں‬


We have likened such a society to a succulent garden Jannat, and We have used analogies of delicious fruits for the rewards of good deeds, since profound truths can best be explained only by perceptible similitude. Hence Allah’s Omnipotence is not compromised if He explains abstract truth in concrete terms and if need arises will not hesitate to use any simile even that of a humble creature such as a mosquito. Those who believe that the revelation is from Allah will find these similes to be profoundly true whereas those who deny this basic truth, will find faults with them and question Allah’s motives for using them. It is not difficult to see how different conclusions can be derived from the same premises depending upon one’s mode of thinking, and how one can make the same premise the basis for following either the wrong or the right path. those who follow the wrong path do not wish to live within the limits prescribed by the Divine Laws.


(‫یہ نافرمان وہ لوگ ہیں( جو اللہ کے عہد کو اس سے پختہ کرنے کے‬ ‫ اور اس )تعلق( کو کاٹتے ہیں جس کو اللہ نے جوڑنے‬،‫بعد توڑتے ہیں‬ ‫ یہی لوگ نقصان‬،‫کا حکم دیا ہے اور زمین میں فساد بپا کرتے ہیں‬ ‫اٹھانے والے ہیں‬ These people repudiate wholly the responsibilities vested in  them by Allah’s Law of Universal Rabubiyyat and violate their  covenant with the Divine System (9/111). By severing human  relationships (13/21, 13/25) they fragment humanity into pieces  on the basis of unnatural racial or national distinctions. They  make individual self-seeking their primary motto in life, even  though Allah’s System of Rabubiyyat demands that human  beings should respect the bonds of humanity (2/213, 10/19,  31/28). They, thus, create disorder in society and eventually 


‫تم کس طرح اللہ کا انکار کرتے ہو حالنکہ تم بے جان تھے اس نے‬ ‫ پھر تمہیں موت سے ہمکنار کرے گا اور پھر‬،‫تمہیں زندگی بخشی‬ ‫ پھر تم اسی کی طرف لوٹائے جاؤ گے‬،‫تمہیں زندہ کرے گا‬ Ask these people: “How can you deny the Divine Laws when your own existence is its living testament. Howsoever you reflect, you will have to acknowledge the fact that there was a time when there was no sign of life on earth (76/1). Then life appeared, and, going through stages of its evolution, reached the point when homosapiens emerged. Now you became conscious human beings worthy of being addressed as ‘You’ (32/9). From this process of creation it becomes clear that life was not created by you, but by Allah. Why should it then be difficult for Him to bring you back to life (44/56, 40/11) after you die? Life continues beyond death so that one’s deeds can be judged according to the Law of Mukaf’at. You cannot escape from the jurisdiction of this Law.”


،‫وہی ہے جس نے سب کچھ جو زمین میں ہے تمہارے لئے پیدا کیا‬ ‫پھر وہ )کائنات کے( بالئی حصوں کی طرف متوجہ ہوا تو اس نے‬ ‫ اور وہ ہر‬،‫انہیں درست کر کے ان کے سات آسمانی طبقات بنا دیئے‬ ‫چیز کا جاننے وال ہے‬ This Law has been ordained by Allah Who created you and  also provided the means for your nourishment. If you reflect  you can see how numerous planets are functioning harmoniously in the space (57/1-2). This is also  happening in accordance with Allah’s Laws Who has full  knowledge about the latent potentialities and requirements  of everything.


Important Terminonolgy and words in these verses Rabb, Rabubiyyat - (ra-ba-ba)

‫رب کا تصور‬

Ismlamic Society must reflect the same – Hadith Holy of Prophet


Abad 

‫عبد‬ ‫عبادت‬

6/163 Say: “My Sal’at and the means which I adopt to establish its  system; in short - my living and dying - are all for the cause  of Allah, the Rabb of the entire Universe, who has no  partner. Thus have I been commanded and I am the first to  submit to the commandment.” 

‫اور جو شخص اللہ کے نازل کردہ حکم کے مطابق‬ 5/44‫فیصلہ )و حکومت( نہ کرے سو وہی لوگ کافر ہیں‬


Muttaqeen  Taqwa  ‫وی‬ ٰ ‫متقی تق‬ Waqa means to protect something, to look after and protect it  from harmful and injurious things. obey the laws of Allah and do not violate them. This is called  taqwa


‫ میں عظیم سائنسی‬22 ‫آیت مبارکہ‬ ‫حقائق۔‬ ‫زمین کا فرش‬

METAPHOR FOR THE CRUST OF THE EARTH AS  FLOORING FOR MANKIND

Farash; thin soft and separate from the rest of the body of the earth. This is exactly what the modern Science and geology has discovered so for.

Outermost hard crust was softened and became like a soft flooring spread over the underneath rocky structure, fit to support life. It is only few Km thick. Look how the Science travels behind the glorious Quran.


‫‪ Ozone layer‬آسمانی چھت‬ ‫سورہ نباء کی عظیم آیت فوقکم سبعَا شداد‬ ‫اور تمہارے اوپر سات یا متعدد رکاوٹیں ہیں‬ ‫آسمان سے پانی‬ ‫سائنسی دریافتیں اس بات کی تصدیق کرتی ہیں‬ ‫کہ واقعی پانی آسمان سے نازل ہوا تھا‬ ‫‪NASA Observed this phenomena  in 1980 ‬‬


‫چیلنج‬

‫قرآن جیسی ایک سورت بنا لؤ ‪2/23‬‬ ‫فاتو ا بسورۃ من مثلہ‬ ‫کیا کفار یہ کہتے ہیں کہ پیغمبر نے اس )قرآن( کو خود‬ ‫گھڑ لیا ہے‪ ،‬فرما دیجئے‪ :‬تم )بھی( اس جیسی گھڑی ہوئی‬ ‫دس سورتیں لے آؤ اور اﷲ کے سوا )اپنی مدد کے لئے(‬ ‫جسے بھی بل سکتے ہو بل لو اگر تم سچے ہو‬ ‫‪11/13‬‬

‫کیا وہ کہتے ہیں کہ اسے رسول )صلی اللہ علیہ وآلہ‬ ‫وسلم( نے خود گھڑ لیا ہے‪ ،‬آپ فرما دیجئے‪ :‬پھر تم اس‬ ‫کی مثل کوئی )ایک( سورت لے آؤ )اور اپنی مدد کے لئے(‬ ‫اللہ کے سوا جنہیں تم بلسکتے ہو بل لو اگر تم سچے ہ‬ ‫‪10/38‬‬


‫فرما دیجئے‪ :‬اگر تمام انسان اور جّنات اس بات پر جمع‬ ‫ہو جائیں کہ وہ اس قرآن کے مثل )کوئی دوسرا کلم‬ ‫بنا( لئیں گے تو )بھی( وہ اس کی مثل نہیں لسکتے‬ ‫اگرچہ وہ ایک دوسرے کے مددگار بن جائیں‬ ‫‪17/88‬‬

‫‪52/34‬‬

‫‪ Let them bring a 'writ' like this.‬‬


‫مکہ میں ہجرت سے قبل حج کے موقع پر سالنہ‬ ‫علی نے چیلنج کے لیے‬ ‫ادبی میلہ میں حضر ؓت‬ ‫قرآن کی سب سے چھوٹی سورہ کوثر کو خانہ‬ ‫کعبہ میں آویزاں کردیا کہ ہے کوئی جو‬ ‫اس کلم کے مثل اپنا کلم پیش کرے‬ ‫وہ رب جو اپنے آپ کو زبان دانی میں اپنا کوئی‬ ‫ثانی نہیں سمجھتے تھے اور پوری دنیا کو‬ ‫عجمی یعنی گونگا کہتے تھے ُان کے ُاس وقت کے‬ ‫ملک الشعرا لبید نے سورہ کوثر کے نیچے لکھ دیا‬ ‫کہ‬ ‫معجزاتکلم البشر‬ ‫دو ما ھذا‬ ‫حضورﷺ کی سیرت اور قرآن‬

‫یہ چیلنج آج بھی موجود ہے‬


‫جنت‪ :‬ایمان اور عمل صالحہ کا نتیجہ‬ ‫جنت ج۔ن۔ت‬ ‫چھپا ہوا ہونا۔ اس کے معنی باغ کے بھی ہیں۔ تشبیہہ‬ ‫اور استعارہ سے وضاحت۔‬ ‫زمین و آسماں جو ہمارے سامنے ہیں ہم ان کی وسعت‬ ‫کو نہیں سمجھ پائے۔‬ ‫روشنی تین لکھ کلومیٹر فی سیکنڈ کی رفتار سے‬ ‫سفر کرتے ہوئے بھی کائنات کے ایک سرے سے دوسرے‬ ‫سرے تک پندرہ ارب سالوں میں بھی نہیں پہنچ سکتی‬ ‫‪ 250‬ارب کہکشائیں‬ ‫جب اس کائنات کی وسعت اس قدر ہے تو جنت کو‬ ‫ہم کیسے سمجھ سکتے ہیں۔‬


‫چھوٹی بڑی تخلیقات کی اہمی��۔‬ ‫‪Small is Big‬‬ ‫خالق حقیقی کی تخلیق‬ ‫مچھر کے ڈیزائن‪ ،‬ساخت اور اس کی صلحیت کا مقابلہ‬ ‫انسان کا ایجاد کردہ بہترین سے بہترین ہیلی کاپڑ یا جہاز‬ ‫نہیں کرسکتا۔ اپنے سائیز کے لحاظ سے اس کی ساخت‪،‬‬ ‫حرکت‪ ،‬سرعت رفتاری‪ ،‬خطرہ کو سونگھنے کی حس‪،‬‬ ‫چابکدستی‪ ،‬چالبازی‪ ،‬کم سے کم توانائیاستعمال کرکے زیادہ‬ ‫سے زیادہ کارکردگی‪ ،‬اس کی آنکھیں‪ ،‬دماغ‪ ،‬ٹانگیں‪ ،‬آواز‪،‬‬ ‫غرض ہر چیز کا ڈیزائن ایسا شاہکار ہے کہ اعٰلی سے اعٰلی‬ ‫سائنس اور انجینئرنگ کے ماہر دماغ انہیں ابھی تک اچھی‬ ‫طرح سمجھ بھی نہیں سکے۔‬ ‫حیران کن بات یہ ہے کہ مچھر کی ان صلحیتوں کا اس کا‬ ‫دماغ کنٹرول کررہا ہوتا ہے جو خوردبین کی مدد کے بغیر نظر‬ ‫بھی نہیں آسکتا۔‬


‫ہدایت اور گمراہی‬ ‫اللہ کی جانب سے ہدایت اور گمراہی کا‬ ‫درست تصور‬

‫گمراہ فاسقین ہی ہوتے ہیں‬

‫اگلی آیت میں وضاحت کردی۔‬ ‫ہدایت اور گمراہی کا قانو ِ‬ ‫ن‬ ‫خداوندی‬ ‫جو اللہ کے عہد کو اس سے پختہ کرنے کے بعد توڑتے ہیں‪،‬‬ ‫اور اس )تعلق( کو کاٹتے ہیں جس کو اللہ نے جوڑنے کا‬ ‫حکم دیا ہے اور زمین میں فساد بپا کرتے ہیں‬


‫فکر اقبال‬ ‫تو اپنی سرنوشت اب اپنے قلم سے لکھ‬ ‫خالی رکھی ہے خامہ حق نے تری جبیں‬ ‫خاک میں تجھ کو مقدر نے ملیا ہے اگر‬ ‫تو عصا افتاد سے پیدا مثال دانہ کر‬ ‫ستارہ کیا مری تقدیر کی خبر دے گا‬ ‫وہ خود فراخی افلک میں ہے خوارو زبوں‬


‫زمان و مکان میں ہمارا سفر‬ ‫ انسان کے زمان و مکان کی داستان ہے۔ سورہ‬28 ‫آیہ‬ ‫ملک میں ہے خلق الموت و الحیوۃ‬ ‫فلسفہ موت و حیات‬ Two States of Existence, Each one of us has to pass  through them. 1. LIFE is state of existence with body 2. DEATH is state of existence without body  Before our earthly arrival we used to live in the  state of death. Two DEATH stages; Pre birth & after earthly Life Two LIFE stages; earthly existence & after  Doomsday existence 2/28, 23/15-16, 87/13


‫‪Different examples in Holy Quran‬‬ ‫عقیدہ آخرت پر زور۔‬ ‫علمہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ موت کے بارے میں کیا فرماتے‬ ‫ہیں۔‬ ‫فرشتہ موت کا چھوتا ہے گو بدن تیرا‬ ‫زندگی رہتا ہے‬ ‫اختتامسے دور‬ ‫غافل مرکز‬ ‫وجود کے‬ ‫ترے ہیں‬ ‫موت کو سمجھے‬ ‫ہے یہ شام زندگی‪ ،‬صبح دوام زندگی‬ ‫ق زندگی کا نام ہے‬ ‫موت ‪ ،‬تجدیِد مذا ِ‬ ‫خواب کے پردے میں بیداری کا اک پیغام ہے‬ ‫خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے‬ ‫کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں کہ میری انتہا کیا ہے‬


‫ہو اگر خود نگر و خود گر و خود گیر خو د ی‬ ‫یہ بھی ممکن ہے کہ تو موت سے بھی مر نہ سکے‬ ‫وہ کیا چیز ہے جسے موت بھی نہیں مار سکتی‬ ‫میرا گھر‪ ،‬میرا جسم‪ ،‬میری جان۔ میں کون‬

‫‪Who I am‬‬

‫آخرت پر ایمان رکھنے والے موت سے ڈرتے نہیں‪ ،‬بلکہ اس‬ ‫کی تمنا ‪ 2/94‬کرتے ہیں‬ ‫نشان مرِد مومن باتو گویم‬ ‫ب اوست‬ ‫چو مرگ آئد تبسم بر ل ِ‬ ‫دانش میں خوف مرگ سے بالکل ہوں بے نیاز‬ ‫سنت رسول کی‬ ‫میں جانتا ہوں کہ موت ہے ُ‬


‫آج کے درس کی آخری آیت مبارکہ ‪29‬‬ ‫معلوم سے نامعلوم کی تلش۔‬ ‫زمین و آسمان سے اس کے خالق کی پہچان۔‬ ‫بہت بڑی سائینسی حقیقت کی طرف اشارہ۔‬ ‫مسلمان اہل علم اور سائنس دانوں کی ذمہ داری۔‬ ‫سات آسمان اور کائنات‬ ‫سات متعدد کے معنوں میں بھی‬ ‫‪Perfect Number ‬‬


‫خلصہ‬

SUMMARY

‫خواب کے قرآنی آیات اور جدید سائنسی‬ ‫نظریات اور معلومات‬

Round Table Discussion,  Comments & Questions Thanks very much for your kind  attention


NEXT   SESSION  29 SEPTEBER  SUDNAY  AT 4.00 PM ‫تخلیق آدم کا تفصیل‬ ‫ببنی اسرآئیل کا قصہ‬ For more details please visit

www.ssc.n.nu


65 Presentation Baqra 21 to 29 (1/9-13)