Page 1

‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪1‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪2‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ج‬ ‫ات حسین‬ ‫ی‬ ‫ل‬ ‫ت ِ‬ ‫(حسینی دائرۃ المعارف کی روشنی میں)‬

‫تحرئر‬ ‫لس‬ ‫حجت االسالم وا م لمین موالنا میرزا دمحم جواد شبیر‬

‫ناشر‬ ‫الجواد ئرست لیدن‪ ،‬ئرطان یا‬

‫‪3‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪4‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪‬جملہ حقوق تجق ناشر محقوظ ہیں‪‬‬ ‫تعارف کیاب‬ ‫نام کیاب‪:‬‬

‫ات حسین‬ ‫تجلی ِ‬

‫اقت یاسات‪:‬‬

‫ٔ ٓ‬ ‫از حسینی دائرۃ المعارف‪ ،‬مولفہ انت ہللا دمحم صادق کرناسی‬

‫تحرئر‪:‬‬

‫لس‬ ‫حجت االسالم وا م لمین موالنا میرزا دمحم جواد شبیر‬

‫پیسکش‪:‬‬ ‫طیاعت‪:‬‬

‫حسینی رشرچ شبیر لیدن‪ ،‬ئرطان یا‬ ‫ٓ‬ ‫میت ظر ئرنیرز ‪ ،‬حیدر اناد‪ ،‬دکن‪ ،‬ہ یدوسیان۔ فون‪۹۹۰۰۰۰۰۲۶۲۹۹۹۹:‬‬

‫طبع‪:‬‬

‫دوم‬

‫نار تخ اساعت‬

‫‪۶۹۰۰‬ء‬

‫ہدیہ‪:‬‬

‫‪ ۰۹۹‬ہ یدوسیانی رونیہ‪ ،‬ئرطان یا ‪ ۸‬ناونڈ‪ ،‬امرنکہ ‪ ۰۰‬ڈالر‬

‫ناشر‬

‫الجواد ئرسٹ لیدن‪ ،‬ئرطان یا‬ ‫فون‪:‬‬

‫‪0044 786 229 6910‬‬

‫ای میل‪:‬‬

‫‪shaikh.jawad.inc@gmail.com‬‬

‫سانٹ‪:‬‬

‫‪www.al-jawad.org‬‬

‫‪15 Shelley Court,Wembley, London, UK, HA0 3BA‬‬ ‫‪Contact person in Hyderabad, India:‬‬ ‫‪Mr Mirza Mujtaba Ahmed & Mr Mirza Murtuza Ali:‬‬ ‫‪0091- 8978678261 & 0091- 9885451556‬‬ ‫‪5‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪6‬‬


 ‫ تجلی ِات حسین‬

Contribution This book is published with the contribution of Brother Roshan Ali Mawji & Brothers & World federation of KSIMC & Husaini Charitable Trust London UK. Name of Author Mirza Mohammed Jawad Email:

mmjawad2000000@yahoo.com

Web:

www.al-jawad.org

Phone:

0044 786 229 6910

Facebook

http://www.facebook.com/mjawadshabbir

Please send your donations to:

Account Name: Sort Code: Account No: IBAN: BIC: Bank Address:

HSBC Al-jawad 40-07-27 61614347 GB88MIDL40072761614347 MIDLGB22 91 High Road, NW10 2TA, London, UK 7


 ‫ تجلی ِات حسین‬

Please recite Fatiha for Marhoom Mir Muzaffer Ali Ibne Late Mir Jafar Ali who was owner of Muntazar Printers and passed away during the publication of this book, May Allah bless him and reward him for his contributions.

Please also recite Fatiha for The Marhoomin Of Rajabali Mawji Family

8


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫س ْی َن‬ ‫اِنَّ ا ْل ُح َ‬ ‫اح ھُدی‬ ‫ِم ْ‬ ‫صب َ ُ‬ ‫سفِیْنَةُ ن َجاة‬ ‫َو َ‬ ‫َو اِ َما ُم َخ ْیر َو یُ ْمن َو ِع ٍّز َو فَ ْخر‬ ‫َو بَ ْح ُر ِع ْلم َو ُذ ْخر‬ ‫پیسک حسین ہدانت کا چراغ ‪ ،‬تجات کی کشنی اور وہ امام ہیں کہ جو صاحب خیر و ئرکت ‪،‬‬ ‫صاحب عزت و فحر اور درنائے علم و شرمایہ ہیں(عیون اح یار الرصا جلد ا ص ‪)۲۶‬۔‬

‫‪9‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪10‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫اپینہ ک یاب‬ ‫ٔ‬

‫ٓ‬

‫حسینی دائرۃ المعارف کے مولف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰‬‬

‫لس‬ ‫حجت االسالم و ا م لمین موالنا میرزا دمحم جواد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳‬‬ ‫عرض ناشر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰‬‬ ‫ان یدائے کالم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬

‫ٓ‬

‫تفسیر و ناونل و مصداق کا معیار (حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫ل فظ قران کی تعرتف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۰‬‬ ‫مسیرک نکات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫اسمانی کیابیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۶‬‬ ‫ٓ‬ ‫جامعیت قران ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫اعجاز قران ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۰‬‬ ‫تفسیر و ناونل و مصداق کی تعرتف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۳‬‬ ‫ٓ‬ ‫تفسیر و ناونل قران کا معیار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‪۹۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫تفسیر قران کا طرتفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۲‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تفسیر القران نالقران ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۲‬‬ ‫ٓ‬ ‫تفسیر القران نالجدنث ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۲‬‬ ‫تفسیر کی اقسام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۳‬‬ ‫‪11‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫قران مج ید ئر اعراب گذاری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۳‬‬ ‫ٓ‬ ‫قران مج ید سے اشت قاق نافنہ علوم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۳‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین(ع) اور اسمانی کیابیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۸‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین(ع) اور قران مج ید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۹۸‬‬ ‫اجادنث کے جوہری علوم (امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۰‬‬ ‫امام حسین(ع) شنت کی روشنی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۲‬‬ ‫علوم جدنث ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۲‬‬ ‫علم درانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۳‬‬ ‫نص کا فوی و سالم ہونا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۳‬‬ ‫اصیاف ت قل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫ائر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫جدنث ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫خیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫روانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫شنت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۸‬‬ ‫اصیاف روانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۰‬‬ ‫روانت میوائرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫روانت اجاد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۰‬‬ ‫روانت مرسل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۲۰‬‬ ‫روانت مسید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۹‬‬ ‫‪12‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫م ت‬ ‫جدنث س فیض ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۹‬‬ ‫جدنث مشہور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۹‬‬ ‫جدنث صحیح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۹‬‬ ‫جدنث حسن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫جدنث موثق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫جدنث فوی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫جدنث ضعیف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫جدنث مصرح۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۶‬‬ ‫جدنث مضمر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۶‬‬ ‫علم رجال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۶‬‬ ‫جدنث کے ت قل کرئے کی اہلیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫چرح و تعدنل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫القاظ تعدنل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫القاظ چرح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫علم ناصیل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫انک جدنث کے مبعدد طرق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۹‬‬ ‫علم نصییف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۲‬‬ ‫کیاب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۲‬‬ ‫اصل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۲‬‬ ‫ثوادر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬

‫‪13‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫مصتف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫ٔ‬ ‫کیاب کی نسنت مولف کی طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫کیاب کی ححیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۳‬‬ ‫علم نار تخ جدنث ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۸‬‬ ‫علم درانت کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۸‬‬ ‫علم رجال کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۸‬‬ ‫علم ناصیل کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۳۰‬‬ ‫علم نصییف کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۹‬‬ ‫علم نار تخ جدنث کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۹‬‬ ‫علم روانت کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۹‬‬ ‫علم روانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫اداب روانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۰‬‬ ‫مروی عنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۰‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم ( ٔ‬ ‫صہ اول) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۹‬‬ ‫ح‬ ‫سیرت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۳‬‬ ‫عوامل نشو نما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۸‬‬ ‫ورانت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۸‬‬ ‫ئربیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۸۰‬‬ ‫جاندان‪ ،‬اجتماع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰‬‬ ‫امام حسین مج یلف ادوار میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶‬‬ ‫‪14‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم ق یل از والدت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰‬‬ ‫امام حسین سنہ ‪ ۳‬ھ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳‬‬ ‫امام حسین سنہ ‪ ۹‬ھ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹‬‬ ‫امام حسین سنہ ‪ ۲‬ھ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹‬‬ ‫امام حسین سنہ ‪ ۳‬ہحری میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ ا سالم ( ٔ‬ ‫صہ دوم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫ل‬ ‫ح‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۳‬ھ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۶‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۸‬ہحری میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰‬ہحری میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۹‬ہحری میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۰‬ھ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬

‫ا جاب امام حسین علنہ السالم (کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء‪ٔ ،‬‬ ‫صہ اول) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫کرنال میں ہاشمی شھداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫اثوطالب اور انکی ال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫طالب بن اثو طالب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۶‬‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن اثو طالب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫لڑکیوں کے نام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۳‬‬ ‫قرزندوں کے نام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۳‬‬ ‫جعقر بن اثوطالب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫علی بن ابت طالب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۲‬‬ ‫‪15‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫امام حسن علنہ السالم کی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۸‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۸‬‬ ‫حصرت عیاس کی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۸‬‬ ‫عید ہللا بن جعقر الطیار و زبیب کیری کی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۸‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم ابن ق یل و زبیب ضعری کے قرزند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۸‬‬ ‫ع‬ ‫مسلم ابن ق یل اور رفنہ الکیری کے قرزند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫ع‬ ‫عید الرجمان بن ق یل و جدتجہ کے قرزند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫ع‬ ‫عید ہللا االکیر بن ق یل اور ام ہانی کے قرزند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫ائراہیم بن حسین بن علی بن ابت طالب بن ع ید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫ائراہیم بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫ع‬ ‫ائراہیم بن مسلم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫اثونکر بن حسن بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫اثو نکر بن حسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫اثونکر بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ع‬ ‫اثو سعید بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫اجمد بن حسن بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۶‬‬ ‫ع‬ ‫اجمد بن دمحم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۶‬‬ ‫ع‬ ‫اجمد بن مسلم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬

‫ا جاب امام حسین علنہ السالم (کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء‪ٔ ،‬‬ ‫صہ دوم( ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫نشر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪16‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫جعقر االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ع‬ ‫جعقر االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫جعقر االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫ع‬ ‫جعقر بن دمحم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫جعقر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫حسن مینی بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۶‬‬ ‫ع‬ ‫جکم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۶‬‬ ‫حمزہ بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۶‬‬ ‫ع‬ ‫حمزہ بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫جالد بن جعقر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫جالد بن سعید بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫زند بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫زند بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫سعد بن عید الرجمان بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫ع‬ ‫سعید بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫عیاس االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫ع‬ ‫عید الرجمان االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۲‬‬ ‫ع‬ ‫عید الرجمان بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫عید ہللا بن م غیرہ بن جارث بن عید الم طلب بن ہاشمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫‪17‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫عید ہللا االضعر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫ع‬ ‫عید ہللا االضعر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫عید ہللا االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫عید ہللا االکیر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫ع‬ ‫عید ہللا االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫عید ہللا االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫عید ہللا االوسط بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫عید ہللا بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫عید ہللا بن جکم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫عید ہللا بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫ع‬ ‫عید ہللا بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫عت ید ہللا بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۶‬‬ ‫عت ید ہللا ابن عید ہللا االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫عت ید ہللا بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫ع‬ ‫عت ید ہللا بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫عییق بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫عتمان بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن عید الرجمان االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن دمحم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬

‫‪18‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫علی اضعر بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫ع‬ ‫علی اضعر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫علی اکیر بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۲‬‬ ‫علی بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۲‬‬ ‫علی بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫عمر االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫عمر االطرف بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم ا لقرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫عمرو بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫عون بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫عون بن عید ہللا بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫ع‬ ‫عون بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬ ‫عون بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬ ‫ع‬ ‫عون بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬

‫ع‬

‫ا جاب امام حسین لیہم السالم (کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء‪ٔ ،‬‬ ‫صہ سوم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۰‬‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫فصل بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬ ‫قاشم بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬ ‫قاشم بن عیاس بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۲‬‬ ‫قاشم بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۳‬‬ ‫قاشم بن دمحم االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۳‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم بن اثو سعید االجول بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۸‬‬ ‫‪19‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫دمحم االضعر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۸‬‬ ‫دمحم االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۸‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم االضعر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۰‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم االکیر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۰‬‬ ‫دمحم االوسط بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫دمحم بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫دمحم بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫دمحم بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫دمحم بن عید ہللا االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم بن عید ہللا االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫دمحم االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫دمحم الیاقر بن علی بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۶‬‬ ‫دمحم بن عمرو بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۶‬‬ ‫ع‬ ‫مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ع‬ ‫مسلم بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫ع‬ ‫معین بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫ع‬ ‫موسی بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫پہال جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۲‬‬ ‫دوشرا جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫پیشرا جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۰‬‬ ‫‪20‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫جوتھا جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۰‬‬ ‫ناتجواں جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۶‬‬ ‫چھیا جدول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۶‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین (امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‪ٔ ،‬‬ ‫صہ اول) ۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۳‬‬ ‫ح‬ ‫نلوغ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۸‬‬ ‫نافص العقل‪ ،‬نافص الحظوظ‪ ،‬نافص االنمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۸۰‬‬ ‫حجاب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ام اسجاق بیت طلجہ الییمنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ُ‬ ‫امامہ بیت انی العاص العیشمنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ام نسیر قاطمہ بیت انی مسعود الحزرجنہ اور ام حییب بیت عیاد البعلینۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ام الحسن بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫ام الحسین بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫ام جدتجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫ام سعید بیت عروہ الی قفنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫ام سعیب المحزومنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫ام قاطمہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫ام کلیوم ضعری بیت عید ہللا بن جعقر الطیار بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ام کلیوم کیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ام کلیوم بیت فصل بن عیاس بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫امام حسن کی ازواج اور انکی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫‪21‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۰‬۔ قاطمہ بیت عفنہ الحزرجنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫‪۶‬۔ ام کلیوم بیت فصل الہاشمنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۰‬۔ جعدہ بیت االسعث الکیدیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۳‬۔ جولہ بیت متظور القزاریہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۹‬۔ ام اسجاق بیت طلجہ الییمنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۲‬۔ عانشہ بیت جلیفہ ا حلبعمنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۳‬۔ ح فصہ بیت عید الرجمان الییمنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۸‬۔ ہ ید بن شہیل العامریہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسن علنہ السالم کی کبیزبں اور ان سے اپ کی اوالد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۹‬‬ ‫ام وھب بیت وھب نصرانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫ت‬ ‫ّ ت‬ ‫ئرۃ ( فیح الیاء و فیح الراء المسددۃ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۶‬‬ ‫ام اجمد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۶‬‬ ‫ام الحسن بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۶‬‬ ‫ام القاشم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫ام دمحم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫تحریہ بیت مسعود الحزرجنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫جمایہ بیت انی طالب الھاشمنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۳‬‬ ‫ح بینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۳‬‬ ‫حسینۃ ( ح مضموم‪ ،‬ثون مکشور‪ ،‬ی مفیوح و مسدد) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۳‬‬ ‫ع‬ ‫حمیدہ بیت مسلم بن ق یل بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۹‬‬ ‫‪22‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫جدتجہ بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۹‬‬ ‫جلیلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۲‬‬ ‫جوصاء بیت عمرو الھصانیۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۲‬‬ ‫جوصاء بیت ح فصہ بن تفیف بن رببعہ بن عتمان الوانلنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۳‬‬ ‫ع‬ ‫رناب بیت امریء القیس بن عدی بن اوس بن جائر بن کعب بن لیم الکیدیۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۳‬‬ ‫رفنہ بیت الحسین بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫رفنہ ضعری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫رملۃ الکیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫رملہ الرومنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫روضہ ج ٔ‬ ‫ادمہ رسول ہللا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫زبیب بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۶‬‬ ‫زبیب ضعری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۶‬‬ ‫زبیب کیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‪ٔ ،‬‬ ‫صہ دوم (کرنال میں جوابین کا کردار )۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۶۰‬‬ ‫ح‬ ‫عورت ئر مرد کی والنت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۶۳‬‬ ‫تعدد زوجات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۶۹‬‬ ‫مسی ٔلہ طالق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۶۳‬‬ ‫سکینہ بیت الحسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫سالفہ (سین مضموم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۶‬‬ ‫س‬ ‫لمی ام الرا فع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۶‬‬ ‫‪23‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ساہ زنان بیت ئزدچر نالث ابن شہرنار بن ائروئز بن ہرمز بن اثوسیروان الساسانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫صافنہ زتجنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬ ‫صفنہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن الہاشم القرسنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫صہیاء بیت عیاد بن رببعہ البعلینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫عانکہ بیت زند العدویہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫ع‬ ‫عانکہ بیت مسلم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۲‬‬ ‫عزالہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۲‬‬ ‫قاجنہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۲‬‬ ‫قاطمہ بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬ ‫قاطمہ ضعری بیت الحسین بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‪ٔ ،‬‬ ‫صہ سوم( کرنال میں جوابین کا کردار ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۰‬‬ ‫ح‬ ‫قاطمہ ضعری بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۳‬‬ ‫قاطمہ بیت عفنہ بن عمرو بن تعلنہ بن اسیرۃ‪ ،‬بن عسیرۃ‪ ،‬بن عطنہ بن جدارۃ بن عوف بن الجارث بن الحزرج االنصاریۃ‬ ‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۹‬‬ ‫قاطمۃ الکیری بیت الحسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۲‬‬ ‫قاطمہ وسطی بیت الحسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۰‬‬ ‫فص ٔہ ثونیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۹۶‬‬ ‫فکیھۃ (اشم مصعر) کبیز امام حسین علنہ السالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۰‬‬ ‫قفیرۃ (اشم مصعر) بیت علقمہ بن عید ہللا بن انی قیس الحیشنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۰‬‬ ‫قمر ام وھب بیت عید الیمریۃ (ی مر بن قاسط) العدنانیۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۶‬‬ ‫‪24‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫کیشہ (کاف مفیوح‪ ،‬ناء ساکن‪ ،‬سین مفیوح) ام سلتمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۶‬‬ ‫لیلی بیت انی مرۃ بن عروۃ بن مسعود بن مبعب بن مالک بن کعب الی قفنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۰‬‬ ‫لیلی بیت مسعود بن جالد بن مالک بن رت عی بن سلم الیھسلنۃ الدارمنۃ الییمنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۹‬‬ ‫ملیکۃ بیت االجیف بن القیس بن معاویۃ بن حصین السعدیۃ الییمنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۹‬‬ ‫ملیکۃ المدنیۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۲‬‬ ‫میمویہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۲‬‬ ‫میمویہ ام عید ہللا بن ت ق ظر الحمیری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۳‬‬ ‫تقیشہ بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۸‬‬ ‫تق یلہ (ام انی نکر بن حسن) المدنیۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۸‬‬ ‫ہانیۃ الکوفنۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۸‬‬ ‫پہلی فہرست۔کرنال میں شہید ہوئے والی ن بت یاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۰‬‬ ‫دوشری فہرست۔ کرنال سے ناہر شہید ہوئے والی نی نی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۲۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫پیشری فہرست۔ وہ نی ن یاں کہ جن کی کرنال میں شہادت انت ہللا کرناسی کے ئزدنک نانت پہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۹‬‬ ‫جوتھی فہرست۔ وہ ن بت یاں کہ جن کا کرنالمیں جاضر ہونا غیر تقینی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۹‬‬ ‫ناتجوبں فہرست۔ وہ ن بت یاں کہ جو کرنال میں جاضر ہوبیں اسیر ن یانی گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۹‬‬ ‫چ‬

‫ھنی فہرست۔وہ نی ن یاں جو کرنال میں جاضر یہ ہو سکیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۰‬‬

‫ساثوبں فہرست۔ وہ جوابین کہ جن کے اصل وجود میں سک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۳‬‬ ‫ازواج و اوالد امام حسن علنہ السالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۹‬‬ ‫ازواج و اوالد امام حسین علنہ السالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۲‬‬ ‫حسینی جواثوں کی تعبیر (جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۳۰‬‬ ‫‪25‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫پت ید کی تعرتف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۹‬‬ ‫پت ید کا قلسفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫سوئے کے اوقات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۰‬۔ عیلولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۶‬‬ ‫‪۶‬۔ ق یلولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۶‬‬ ‫‪۰‬۔ ق یلولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۳‬۔ حیلولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۹‬۔ ع یلولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫پت ید کےمراجل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۰‬۔ ی مہیدی مرجلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۶‬۔ ہلکی پت ید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫‪۰‬۔ میوسط پت ید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ‪۶۸۳‬‬ ‫‪۳‬۔گہری پت ید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۳‬‬ ‫‪۹‬۔گہری سے گہری ئر پت ید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۳‬‬ ‫کس پہلو سونا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۹‬‬ ‫جواب کی تعرتف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫جواب قران کی رو سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۲‬‬ ‫جواب اجادنث کی رو سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫جواب کی ان یداء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۸۰‬‬ ‫ے اور چھوئے جواب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫سچ‬ ‫‪26‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫جواب کی حفیقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫ے ن یان کیا جائے؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۶‬‬ ‫جواب کس‬ ‫ے) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫پہال ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم ئے د یکھ‬ ‫‪۰‬۔ ئروز حمعہ‪ ۶۳ ،‬رحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫‪۶‬۔ ئروز اثوار‪ ۶۰ ،‬رحب المرحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سحر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬ ‫‪۰‬۔ ئروز اثوار‪ ۶۰ ،‬رحب المرحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫‪۳‬۔ ‪ ۸‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام مکہ‪ ،‬سب میگل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۹‬‬ ‫‪۹‬۔ ‪ ۰۶‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ‪ ،‬سب ہفنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۲‬‬ ‫‪۲‬۔ ‪ ۰۰‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام تعلینہ‪ ،‬ئروز ہفنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۲‬‬ ‫‪۳‬۔ ‪ ۶۶‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام بطن العفنہ‪ ،‬ئروز میگل ثوقت سام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬ ‫‪۸‬۔ ‪ ۶۹‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ ثوقت ظہر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۳‬‬ ‫‪۰‬۔ ‪ ۶۸‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬ئروز نیر ثوقت صیح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۸‬‬ ‫‪۰۹‬۔ ‪ ۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعرات‪ ،‬ثوقت عصر‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫‪۰۰‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ثوقت سحر‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۶۰۰‬‬ ‫‪۰۶‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ثوقت صیح‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے) ۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫ے گئ‬ ‫دوشرا ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ میں اپ کے مبعلق د یکھ‬ ‫۔‪۰‬۔ ماہ صقر سنہ ‪۳‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫‪۶‬۔ ماہ صقر سنہ ‪۳‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫‪۰‬۔ دس ہحری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫‪۳‬۔ تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۶‬‬ ‫‪27‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۹‬۔ ‪ ۳‬سوال سنہ ‪۰۲‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۶‬‬ ‫‪۲‬۔ ‪ ۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ثوقت سام ی مقام کرنال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫ے گئ‬ ‫پیشرا ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم کی شہادت کے تعد اپ کے مبعلق د یکھ‬ ‫‪۰‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام مدنیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫‪۶‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام مدنیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫‪۰‬۔ ‪۰۹‬محرم الحرم سنہ ‪۲۰‬ھ ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام کرنالء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫‪۳‬۔ گیارہ محرم سنہ ‪۲۰‬ھ کی سب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۲‬‬ ‫‪۹‬۔ تقرن یا ‪ ۰۰‬محرم سنہ ‪۲۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫‪۲‬۔ تعد از ‪ ۰۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫‪۳‬۔ ‪ ۰۳‬محرم الحرم سنہ ‪۲۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫‪۸‬۔ ‪ ۲‬صقر کی سب سنہ ‪۲۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫‪۰‬۔ ‪ ۳‬صقر سنہ ‪۲۰‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫‪۰۹‬۔ سب ‪ ۶۰‬جمادی االول سنہ ‪۲۹‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۰۰‬۔ ق یل از سنہ ‪۰۹‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫‪۰۶‬۔ سنہ ‪۶۰۳‬ھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۶‬‬ ‫قاثون اور زندگی (امام حسین اور شرتعت اسالمی‪ ،‬جلد اول) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫نشر تع اور مشرع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ِ‬ ‫نشر تع (قاثونگذاری) کی نار تخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫شرتعت ادم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫شرتعت ثوح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫‪28‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫شرتعت ائراہیم (شرتعت حییفنہ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۹‬‬ ‫شرتعت موسی (شرتعت تھودیہ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫شرتعت عیسی (شرتعت نصرانیہ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۶‬‬ ‫شرتعت اسالم ( شرتعت دمحمیہ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۶‬‬ ‫شرتعت اسالم کی نار تخ اور اس کی پیشرقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫نشر تع کے مصادر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫مدرسہ رائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۳‬‬ ‫مدرسہ جدنث اور‬

‫ح‬

‫فیقی اسالم اور مج یلف قرقے (امام حسین اور شرتعت اسالمی‪ ،‬جلد دوم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۶۰‬‬

‫قرف ٔہ امامنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫قرف ٔہ زندیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۶‬‬ ‫قرف ٔہ ِاناضنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۶‬‬ ‫قرف ٔہ جیفنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫قرف ٔہ مالکنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫قرف ٔہ سافعنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫قرف ٔہ حت یلنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫ققہاء کی مرجعیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۹‬‬ ‫قفنہ کی والنت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫والنت اور اسکی اقسام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫والنت نکوپینہ ذانیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫والنت نکوپینہ نکری منہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۲‬‬ ‫‪29‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫والنت نشرتعنہ ذانیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫والنت نشرتعنہ نکری منہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫والنت م طلفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫والنت مق یدہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۳‬‬ ‫والنت عامہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫والنت جاضہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫والنت قفنہ اور والنت سوری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۸‬‬ ‫نشر تع اسالم کی پیشرقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۰۰‬‬ ‫مدنیہ میورہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬

‫ع‬

‫دبنی مراکز اور ت لیمی درسگاہوں کی نار تخ (امام حسین اور شرتعت اسالمی‪ ،‬جلد سوم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫مدنیہ میورہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫مکہ مکرمہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫کوفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۹‬‬ ‫کرنالء معلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۲‬‬ ‫تعداد (کاطمنہ مشرفہ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۲‬‬ ‫تحف اشرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۳‬‬ ‫سامراء المشرفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫سام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۸‬‬ ‫جلب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫طرانلس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫‪30‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ح یل عامل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۳۰‬‬ ‫ائران ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫شہر ری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫قم المقدسہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬

‫ع‬

‫اجیہاد کا نس مت ظر‪ :‬انک لمی جوالہ (امام حسین اور شرتعت اسالمی‪ ،‬جلد چہارم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۹‬‬ ‫ے مروجہ القاب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۳‬‬ ‫علماء کے لئ‬ ‫قفنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫عالمہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫حجت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫عالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۸‬‬ ‫قاصل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫امام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫آنت ہللا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۹۰‬‬ ‫اثواب قفہ کی اتجاد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۹‬‬ ‫کیاب ظہارت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‪۰۲۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫ات حسین کے ‪ ۰۹‬ماجذ و مصادر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‪۰۲۹‬‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کی ‪ ۸۲‬سا تع سدہ کیب سے تجلی ِ‬

‫‪31‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪32‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ل‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مولف انت ہللا دمحم صادق ا کرناسی‬ ‫اشم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا شیخ دمحم صادق دمحم الکرناسی‬

‫نسب‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کا نسب مالک بن جارث اسیر تخ عی ئر میی ہی ہونا ہے کہ جن کی ناک نسل سے ئےسمار ققہاء و علماء وجود میں ئاے۔‬

‫نار تخ و مقام والدت‪:‬‬ ‫‪ ۹‬ذی الحجہ سنہ ‪۰۰۲۲‬ھ ی م طاثق ‪۶۹‬۔‪۰۹‬۔‪۰۰۳۳‬م‪ ،‬کرنالء معلی۔‬

‫ع‬ ‫ت لیم و تحصیالت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ٔ‬ ‫جوزہ علمنہ کرنال معلی‪ ،‬تحف اشرف‪ ،‬ظہران‪ ،‬قم المقدسہ میں مراجع ع طام سے کسب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫فیض قرمانا پہاں نک کے مج یلف مراجع کرام ئے اپ کو اج ٔ‬ ‫ازہ اجیہاد ثوازا‪ ،‬اپ کے اسانذہ کے اسماء گرامی یہ ہیں‪:‬‬

‫‪33‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫شیخ دمحم کرناسی(شیخ کرناسی کے والد محیرم)‪ ،‬شیخ دمحم ساہرودی‪ ،‬شیخ ثوسف ن یارحمیدی‪ ،‬سید دمحم سیرازی‪ ،‬سید اثو القاشم الجونی‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫سید روح ہللا حمینی‪ ،‬سید اجمد جوانساری‪ ،‬سید اثو الحسن رفب عی‪ ،‬شیخ دمحم ناقر اشت یانی‪ ،‬سید دمحم رصا گلیانگانی‪ ،‬دمحم کاطم شرتعتمداری‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫شیخ مرنضی الجائری‪ ،‬شیخ ہاشم املی‪ ،‬شیخ دمحم حسین الکرناسی۔‬

‫ناشیسات‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬جن میں‬ ‫انت ہللا کرناسی ئے ندرنس و نالیف و تحفیق کے ساتھ ساتھ مج یلف ممالک میں تقرن یا ‪ ۳۹‬ادارے قایم کئ‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫عراق‪ ،‬ائران‪ ،‬لت یان‪ ،‬سام‪ ،‬اور ا گ سیان سامل ہیں‪ ،‬اپ ئے سنہ ‪۰۰۳۹‬ء میں شہر دمشق میں ٔ‬ ‫جوزہ علمن ٔہ زن بینہ کی ناشیس‬ ‫نل‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫میں پت یادی کردار ادا کیااور اس ع ظیم لمی مرکز کی ئرقی میں نلید نایہ اقدامات اتجام د بئ‬

‫نالی قات‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مولف ئے مج یلف عیوانات و مصامین ئر کیابیں نالیف کیں‪ ،‬جن میں میدرجہ ذنل کیابیں‬ ‫قانل ذکر ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ حسینی دائرۃ المعارف ‪ ۳۹۹‬جلدبں۔‬ ‫‪۶‬۔ شرا تع (احکام شرتعت) ‪ ۰۹۹۹‬جلدبں۔‬ ‫‪۰‬۔ مج یلف ممالک میں اسالم کی پیشرقت‪ ۳ ،‬جلدبں ۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۳‬۔ تفسیر قران مج ید ‪ ۰۹ ،‬جلدبں۔‬ ‫‪۹‬۔ علم عروض (حس میں ‪ ۶۰۹‬تحروں ئر گق یگو کی گنی ہے)۔‬ ‫ٔ‬ ‫‪۲‬۔ دثوان سعر (حس میں مولف کے اسعار حمع ہیں)‪۰۳ ،‬جلدبں۔‬ ‫‪۳‬۔ مج یلف مقاالت و مجالت اور میاحث کہ جو انیربیٹ ئر موجود ہیں۔‬

‫‪34‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی ان جدمات کے پیش ب ظر اردن سے نالیف سدہ معجم االدباء االسالمیین المعاصرین اور‬ ‫ٓ‬ ‫ے ممالک کی‬ ‫الموسوعۃ الکبری للشعراء العرب میں اپ کی قدردانی کی گنی‪ ،‬اور سام‪ ،‬لت یان‪ ،‬قرانس اور امرنکہ حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ثوبیورشیبیز ئے اپ کو جار ڈاکیرنٹ شربیفیکیٹ سے ثوازا ہے۔‬

‫‪35‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪36‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫لس‬ ‫حجت االسالم و ا م لمین موالنا میرزا دمحم جواد‬ ‫اشم‪:‬‬ ‫میرزا دمحم جواد (عرف‪:‬شبیر ) بن مرزا محینی اجمد بن مرزا دمحم رصا بن مرزا علی جواد بن مرزا عالم سجاد اش ہر بن مرزا حسین علی‬ ‫جان ظقر بن مرزا تحم الدبن علی جان پہادر بن مرزا اثوئراب عین الملک بن مرزا علی ن یگ علی ثواز جان بن مرزا واصالن‬ ‫ن یگ جان۔۔۔ ابن مالک اسیر تخ عی۔‬

‫نار تخ و مقام والدت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪ ۰۲‬محرم الحرام سنہ ‪۰۳۹۰‬ھ‪ ،‬ی م طاثق ‪۶۹‬۔‪۰۰‬۔‪ ۰۰۸۹‬عیشوی‪ ،‬حیدر اناد دکن‪ ،‬ہ یدوسیان ۔‬

‫تحصیالت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے حیدر اناد سےگلیرکہ کرنانکہ‬ ‫مولف میرزا دمحم جواد سنہ ‪۰۰۰۰‬ءکو (‪ ۰۶‬سال کی عمر میں) علوم دپینہ کے حصول کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ‪ ،‬چہاں اپ ئے سنہ ‪۰۰۰۰‬ءسے سنہ ‪۰۰۰۰‬ء نک مدرسۃ الصادقین(قاف مفیوح)میں مقدمانی علوم‬ ‫نشرتف لے گئ‬ ‫ع‬ ‫ے سنہ ‪۰۰۰۰‬ء کے اواچر میں ٔ‬ ‫جوزہ علمنہ قم المقدسہ مساقرت کی۔‬ ‫ے‪ ،‬حس کے تعد سظوح اعلی کی ت لیم کے لئ‬ ‫جاصل کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سنہ ‪۶۹۹۳‬ء میں تحصیالت سے قراعت کے تعد اپ لیدن ئرب طان یا مست قل طور ئر نشرتف الئے کہ چہاں اپ‬ ‫نی‬ ‫ئے دبنی مراکز میں لب عی جدمات اتجام دبں‪ ،‬اور اسی م فصد کے پیش ب ظر کونت‪ ،‬امرنکہ‪ ،‬چرمنی کے مجلیف شہروں میں‬ ‫ٓ‬ ‫علوم ال دمحم کی نشر و ئرو تج کا قرنصہ ادا کیا۔‬ ‫‪37‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫نالی قات و ئراحم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫نی‬ ‫موالنا ئے لبغ دبن کے ساتھ ساتھ نالیف و ئراحم میں تھی ابنی جدمات پیش کیں‪ ،‬اپ کے م ظیوعہ ئراحم میں کیاب "‬ ‫گ‬ ‫ات حسین) اور "اردو ادب ئر تقوش‬ ‫ق یگو کا سلیفہ"‪" ،‬اجمالی تعارف حسینی دائرۃ المعارف "اور کیب میں کیاب ہذا ( تجلی ِ‬ ‫ٓ‬ ‫کرنالء" سامل ہیں‪ ،‬حسینی صیف ٔہ کاملہ‪ ،‬رس ٔ‬ ‫الہ حقوق‪ ،‬امر نالمعروف و پ ہی عن المیکر‪ ،‬اور محیت علی کردار و اچرت کی صامن‬ ‫ح‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی وہ کیب ہیں کہ جو انساء ہللا عیقرنب زثور طبع سے اراسنہ ہوکر مت ظر عام ئر ابیں گی۔‬ ‫ے قرن ‪ ۰۹‬ہحری سے قرن ‪ ۰۰‬ہحری نک‬ ‫موصوف ئے اس کے عالوہ حسینی رشرچ شبیر کے سعنہ اردو کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫نا تچ جلدوں ئر مشتمل اردو سعرائے کرام کے ناناب کالم کی حمع اوری کی ہے کہ جو ابنی ثوعیت میں انک ئےب ظیر‬ ‫ٓ‬ ‫جدمت ہے‪ ،‬ہم دعاگو ہیں کہ ہللا تعالی موالنا کی ثوفی قات میں اصافہ قرمائے (ال ہی امین)۔‬

‫حسینی رشرچ شبیر لیدن‬

‫‪38‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عرض ناشر‬ ‫ے چھانا ہوا ہے کہ چہاں‬ ‫جودہ سوسال سے حصرت امام حسین علنہ السالم کی سحصنت و شہادت کا ائر نار تخ اسالم ئر ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫چہاں اسالم کا ثول ناال ہے وہاں وہاں مسلماثوں کی زناثوں ئر ذک ِر حسین اور اپ کی ناد ئر و نازہ ہے۔‬ ‫ے‬ ‫ے انک ہی دن میں فحر سے عصر نک ا بئ‬ ‫یہ وہ حسین علنہ السالم ہیں کہ جیہوں ئے اسالم کی ت قاء کے لئ‬ ‫ے میرے اکیر و اضعر ‪ ،‬عون و‬ ‫ے ہوئے کہ اگر میری شہادت سے اسالم ناقی رہ یا ہے ثو مجھ‬ ‫ے کو قرنان کردنا‪ ،‬یہ کہئ‬ ‫سارے کیئ‬ ‫دمحم‪ ،‬قاشم و عیاس اور نمام بنی ہاشم و اصجاب کی شہادت گوارا ہے۔‬ ‫دمت‬ ‫ے حسین ئے جدا کی راہ میں ان یا سب کجھ قرنان کر دنا‪ ،‬اسی لئ‬ ‫پیسک اسالم کی ت قاء کے لئ‬ ‫ے اس ج ِ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہی کسی کی زنان ئر ل فظ شہید ا نا ہے ثو نمام اپت یاء و‬ ‫عظمٰی کے ندلے ہللا تعالی ئے اپ کو وہ عظمت ع طا کی کہ حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اپ کو‬ ‫ے حصرت اثو عید ہللا الحسین علنہ السالم کی قرنانی ذہن میں انی ہے‪ ،‬اسی لئ‬ ‫اوصیاء و ای مہ میں سب سے پہل‬ ‫سید الشہداء (شہداء کے شردار) کہا گیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت اثو عید ہللا الحسین کی شہادت میں وہ ائر ہے کہ حس کے ذرتعہ ق یامت نک ئاے والے مومئین‬ ‫ٓ‬ ‫کے دل رتج یدہ اور ان کی ایکھیں اسکیار ہیں‪ ،‬یہ وہ حسین ہیں کہ جن کے صدقے میں ہر دور کا جق و ناطل پہجانا جانا ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے والے اپ ہی کی سیرت میارکہ کی نیروی‬ ‫امام حسین علنہ السالم جق و ناطل کی کشونی تھی ہیں اور اپ کی حمیت ر کھئ‬ ‫کرئے ہوئے جق و ناطل کی س یاحت جاصل کرئے ہیں۔‬

‫‪39‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫عظمت حسینی کے پیش ب ظر نمام ادوار میں مول فین و مورخین‪ ،‬علماء و خطیاء‪ ،‬اور نمام دن یا کے دانشوروں ئے‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تح‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اپ کی عظمت سے ضرف مسلمان ہی میائر پہیں‬ ‫اپ کی سحصنت ئر مج یلف زاوثوں سے فیقی کام اتجام د بئ‬ ‫ٓ‬ ‫نلکہ غیر مسلم دانشوروں ئے تھی اپ کی قرنانی و شہادت کو شراہا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫گرجہ نار تخ اسالم میں ہر سحص ئے ابنی نصاعت کے اعت یار سے اپ کی حیات طینہ ئر روشنی ڈالی ہے لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫تح‬ ‫جو فیقی سلسلہ انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے پیشوی صدی میں شروع کیا ہے اس کی میال ثوری نار تخ اسالم میں‬ ‫پہیں ملنی‪ ،‬جونکہ محقق کرناسی ئے سحصنت امام حسین علنہ السالم ئر ہر زاویہ سے روشنی ڈالی ہے‪ ،‬حس کے پییجہ میں‬ ‫ٓ‬ ‫‪ ۳۹۹‬سے زنادہ جلدبں وجود میں ابیں کہ جیہیں حسینی دائرۃ المعارف کے نام سے موسوم کیا گیا ہے۔‬ ‫لس‬ ‫ات حسین) میں حجت االسالم و ا م لمین موالنا میرزا دمحم جواد شبیر ئے حسینی دائرۃ المعارف کی‬ ‫کیاب ہذا ( تجلی ِ‬ ‫‪ ۰۹‬کیاثوں کا جالضہ پیش کیا ہےکہ جو ابنی ثوعیت میں انک میقرد تحفیق ہے‪ ،‬جن کیاثوں کا جالضہ ہوا ہے ان کے اسامی‬ ‫یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ الحسین الکریم قی القران الع ظیم (الحزء االول)‪ ،‬حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں (جلد اول)۔‪۶‬۔ الحسین قی‬ ‫الشنۃ (الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں (جلد اول)۔‪۰‬۔ السیرۃ الحس بینۃ (الحزء االول)‪،‬‬ ‫سیرت امام حسین علنہ السالم (جلد اول)۔‪۳‬۔ السیرۃ الحس بینۃ (الحزء الیانی)‪ ،‬سیرت امام حسین علنہ السالم (جلد دوم)‬ ‫۔‪۹‬۔ معحم انصار الحسین (الھاشمیون)‪( ،‬الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد اول)۔‪۲‬۔ معحم‬ ‫انصار الحسین (الھاشمیون)‪( ،‬الحزء الیانی)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد دوم)۔‪۳‬۔ معحم انصار الحسین‬ ‫(الھاشمیون)‪( ،‬الحزء الیالث)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد سوم)۔‪۸‬۔معحم انصار الحسین (الیساء)‪،‬‬ ‫(الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین (جلد اول)۔‪۰‬۔ معحم انصار الحسین (ا الیساء)‪( ،‬الحزء الیانی)‪،‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین (جلد دوم)۔‪۰۹‬۔ معحم انصار الحسین (الیساء)‪( ،‬الحزء الیالث)‪ ،‬امام حسین علنہ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫السالم کی مددگار جوابین (جلد سوم)۔‪۰۰‬۔ الرونا مساھدات و ناونل (الحزء االول)‪ ،‬جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر (جلد‬ ‫اول)۔ ‪۰۶‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء االول)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد اول)۔ ‪۰۰‬۔ الحسین و‬ ‫‪40‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫الیشر تع االسالمی (الحزء الیانی)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد دوم)۔‪۰۳‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء‬ ‫الیالث)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد سوم)۔‪۰۹‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء الرا تع)‪ ،‬امام حسین اور‬ ‫شرتعت اسالمی (جلد چہارم)۔‬ ‫ات حسین کی صورت میں موالنا کی یہ کاوش حسینی دائرۃ المعارف اور‬ ‫ہمیں ثورا ت فین ہے کہ کیاب تجلی ِ‬ ‫ے پہیربن وسیلہ قرار نائے گی۔‬ ‫نالحصوص عظمت امام حسین علنہ السالم کے ادراک کے لئ‬ ‫ع‬ ‫اس لمی کاوش کو عوام وجواص کی جدمت میں پیش کرئے کی سعادت الجواد ئرسٹ کو جاصل ہونی ہے‪ ،‬اس کی نشر و‬ ‫ے محیر مومئین سے ہر قشم کے تعاون کی ضرورت ہے۔‬ ‫اساعت کے لئ‬

‫سعنہ نشر و اساعت‬

‫الجواد ئرسٹ‪ ،‬لیدن‪ ،‬ئرطان یا‬

‫‪41‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪42‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ان یدائے کالم‬

‫ے ہیں کہ جو عالمین کا رب ‪ ،‬رجمان و رجیم اور مالک رو ِز چزا ہے‪ ،‬اور درود و سالم ہو دمحم اور‬ ‫ساری تعرت فیں اس ہللا کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ان کی ال ئر جو عالمین کے ئرگزندہ ہیں۔‬

‫اما تعد‬ ‫ے اس نات ئر حر ہے کہ ہللا عالی ئے اس ن ی ٔ‬ ‫ے معزز قاربین کی جدمت میں‬ ‫دہ حفیر کو یہ سعادت نصنب کی کہ میں ا بئ‬ ‫مجھ‬ ‫ف‬ ‫ت‬ ‫ٔ ٓ‬ ‫ات حسین" پیش کر سکوں کہ حس میں حسینی دائرۃ المعارف مولف ٔہ انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کی ‪۰۹‬‬ ‫یہ کیاب تعنی " تجلی ِ‬ ‫کیاثوں کا تعارف و جالضہ موجود ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف ‪ ۳۹۹‬جلدوں ئر مشتمل ہے کہ حس کی ‪ ۸۲‬جلدبں مت ظر عام ئر اجکی ہیں‪ ،‬گرجہ جق ثو یہ تھا کہ‬ ‫ان نمام کیاثوں کا اردو اور دنگر زناثوں میں ئرحمہ کیا جائے‪ ،‬لیکن جونکہ یہ انک طونل عمل ہے لہذا میں ئے ئر جیح دی کہ‬ ‫پ‬ ‫ے جن ‪ ۰۹‬کیاثوں کے‬ ‫جال جاضر نک مجھ‬ ‫نمام کیاثوں کے ئرحمہ کے تجائے ان میں سے ہر انک کا جالضہ یش کروں‪ِ ،‬‬ ‫جالضہ کی ثوفیق جاصل ہونی ان کے اسماء کجھ اس ئربیب سے ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ الحسین الکریم قی القران الع ظیم (الحزء االول)‪ ،‬حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں (جلد اول)۔‪۶‬۔ الحسین قی‬ ‫الشنۃ (الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں (جلد اول)۔‪۰‬۔ السیرۃ الحس بینۃ (الحزء االول)‪،‬‬ ‫سیرت امام حسین علنہ السالم (جلد اول)۔‪۳‬۔ السیرۃ الحس بینۃ (الحزء الیانی)‪ ،‬سیرت امام حسین علنہ السالم (جلد دوم)‬ ‫۔‪۹‬۔ معحم انصار الحسین (الھاشمیون)‪( ،‬الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد اول)۔‪۲‬۔ معحم‬

‫‪43‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫انصار الحسین (الھاشمیون)‪( ،‬الحزء الیانی)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد دوم)۔‪۳‬۔ معحم انصار الحسین‬ ‫(الھاشمیون)‪( ،‬الحزء الیالث)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار (جلد سوم)۔‪۸‬۔معحم انصار الحسین (الیساء)‪،‬‬ ‫(الحزء االول)‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین (جلد اول)۔‪۰‬۔ معحم انصار الحسین (ا الیساء)‪( ،‬الحزء الیانی)‪،‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین (جلد دوم)۔‪۰۹‬۔ معحم انصار الحسین (الیساء)‪( ،‬الحزء الیالث)‪ ،‬امام حسین علنہ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫السالم کی مددگار جوابین (جلد سوم)۔‪۰۰‬۔ الرونا مساھدات و ناونل (الحزء االول)‪ ،‬جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر (جلد‬ ‫اول)۔ ‪۰۶‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء االول)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد اول)۔ ‪۰۰‬۔ الحسین و‬ ‫الیشر تع االسالمی (الحزء الیانی)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد دوم)۔‪۰۳‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء‬ ‫الیالث)‪ ،‬امام حسین اور شرتعت اسالمی (جلد سوم)۔‪۰۹‬۔ الحسین و الیشر تع االسالمی (الحزء الرا تع)‪ ،‬امام حسین اور‬ ‫شرتعت اسالمی (جلد چہارم)۔‬ ‫ن‬ ‫ات حسین) میں مذکورہ نمام کیب میں سے ہر انک کی لحیص کو انک جاص عیوان دنا گیا ہے‬ ‫کیاب ہذا ( تجلی ِ‬ ‫ے ہوئے میں ئے ح ید مقدمانی‬ ‫جو کہ اصل کیاب کے نام سے مج یلف ہے‪ ،‬ہر تحرئر میں کیاب کے موصوع کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫نکات کی طرف اسارہ کیا ہے حس کے تعد اصل کیاب کا جالضہ ہے‪ ،‬جونکہ حسینی دائرۃ المعارف انت ہللا دمحم صادق‬ ‫تح ی م‬ ‫ل‬ ‫ات حسین) میں اسی موسوعہ کے اقت یاسات نائے جائے ہیں‪ ،‬لہذا اگر‬ ‫اب ہذا ( تجلی ِ‬ ‫ا کرناسی کی ف ق ئر ینی ہے اور کی ِ‬ ‫ٔ‬ ‫مومئین کرام کو حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف نا تجلیات حسین کے مولف کی کسی تھی رائے سے اح یالف ہو ثو اس‬ ‫صورت میں وہ اسے محض انک اجیہادی ب ظریہ قرض کرئے ہوئےاس موصوع میں دنگر علمائے کرام کی حسب ت قلید‬ ‫نیروی قرمابیں۔‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کی ان ن یدرہ کیب کے عالوہ دو اور کیابیں ن یام المدجل الی السعر االردوی (اردو اسعار کا‬ ‫مقدمہ و ی مہید ) اور دثوان السعر االردو (اردو اسعار کا دثوان‪ ،‬جلد اول)کا ت ھی جالضہ ہو حکا ہے لیکن ان دوثوں کیاثوں کے‬ ‫ے ہوئے میں ئے اسے انک مست قل کیاب کی سکل دی ہے کہ حس کا نام "اردو ادب ئر تقوش‬ ‫موصوع کو مد ب ظر ر کھئ‬

‫‪44‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫کرنالء " ہے جو نا سیان ٔ‬ ‫ادارہ میہاج الحسین کے ثوسط سے سا تع ہو جکی ہے اور اسی ادارہ ئے ہماری پیشری کیاب تعنی‬ ‫ک‬ ‫"ات قالب حسینی کے سیاسی عوامل" کو تھی سا تع کیا ہے۔‬ ‫ے ت فین ہے کہ کیاب تجلیات حسین کے م طالعہ کے تعد قاربین کرام کا انمان دوح یداں ہو گا اور اپہیں حصور‬ ‫مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سفِ ْینَة ُ نَ َجاة‪َ ،‬و اِ َما ُم َخیْر َو‬ ‫سیْنَ ِم ْ‬ ‫صبَا ُح ھُدی َو َ‬ ‫کی وہ جدنث ضرور ناد ئاے گی کہ حس میں اپ ئے قرمانا‪ :‬اِنَّ ا ْل ُح َ‬ ‫یُ ْمن َو ِع ٍّز َو فَ ْخر‪َ ،‬و َب ْح ُر ِع ْلم َو ُذ ْخر‪ ،‬پیسک حسین ہدانت کا چراغ ‪ ،‬تجات کی کشنی اور وہ امام ہیں کہ جو صاحب خیر و‬ ‫ئرکت ‪ ،‬صاحب عزت و فحر اور درنائے علم و شرمایہ ہیں(عیون اح یار الرصا جلد ا ص ‪)۲۶‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫اچر میں حصرت ج‬ ‫دان رسالت‪ ،‬ای مہ و اہلییت اظہار نالحصوص نارگاہ حسین بن علی اور‬ ‫ان‬ ‫ج‬ ‫اور‬ ‫وں‬ ‫ہ‬ ‫گو‬ ‫ا‬ ‫ع‬ ‫د‬ ‫سے‬ ‫ق‬ ‫ِ‬ ‫ع‬ ‫صاحب وقت امام زمایہ لیہم السالم سے میمنی ہوں کہ وہ اس کیاب میں موجود کسی تھی قشم کی خ طاء سے درگزر قرمائے‬ ‫ہوئے میری اس کاوش کو فیول قرمابیں اور اسے میرے اور میرے والدبن و مبعل فین کی معقرت کا شنب قرار دبں‬ ‫ٓ‬ ‫(الٰہی امین)۔‬

‫م‬

‫لیمس دعا‬

‫میرزا دمحم جواد شبیر‬ ‫‪ ۶۶‬جمادی االولی سنہ ‪۰۳۰۳‬ھ‬ ‫‪ ۰‬ائرنل ‪۶۹۰۰‬ء‬

‫‪45‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪46‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ٓ‬ ‫حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں‬ ‫جلد اول‬ ‫ٓ‬ ‫کیاب "حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں" بین سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد (جو ‪ ۳۳۸‬ص فجات ئر‬ ‫ٓ‬ ‫مشتمل ہے) سنہ ‪۶۹۹۰‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪ ۶۹۹۹‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫م طالب کی حلیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪47‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪48‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫تفسیر و ناونل و مصداق کا مع یار‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے حصرت ادم اثو الیشر کو معلم کی ح بییت سے اس شر زمین ئر ھیجا ناکہ نشرنت‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے نشر کی ہدانت کے لئ‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے کہ انک‬ ‫ے حجت قایم ہوجائے اور کونی یہ یہ کہہ سک‬ ‫کی ان یدا ت لیم و تعلم ئر اشتوار ہو‪ ،‬اور ان یدہ ئاے والی نسلوں کے لئ‬ ‫وقت اس شرزمین ئر نشر ثو موجود تھا مگر ہدانت کرئے واال ہادی یہ تھا‪ ،‬گرجہ ہللا ئے انسان کو عقل حیسی تعمت سے تھی‬ ‫م‬ ‫ے ہوئے حصرت اجدنت ئے علم اور دبن کے‬ ‫ے ناطنی راہتما ہے لیکن قاعدہ لطف کو لجوظ ب ظر ر ک ھئ‬ ‫ثوازا جو کہ انسان کے لئ‬ ‫ے کے ساتھ ساتھ‬ ‫ے انک پہیں نلکہ انک الکھ جوپیس ہزار ببعمیروں کو مبعوث قرمانا‪ ،‬ناکہ نسل کے ئڑ ھئ‬ ‫اکمال کے لئ‬ ‫ہدانت کا سلسلہ تھی جاری و ساری رہے‪ ،‬پہاں نک کہ جایم االپت یاء نشرتف الئے جن کے ہر فول‪ ،‬فعل اور تقرئر کی‬ ‫ہللا تعالی ئے و ما ینطق عن الھوی ان ھو اال وحی یوحی کہہ کر ضمانت لی‪ ،‬تعنی ببعمیر اسالم کی ہر قکر‪ ،‬ہر فول‪،‬‬ ‫ہرفعل اور ہر سکوت وحی ا ٰلہی سے م طاتقت رکھیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫نی‬ ‫دمحم ابن عید ہللا صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ئے گذسنہ نمام ببعمیروں سے زنادہ دبن اسالم کی لبغ میں مسقت‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے ہی وطن‪ ،‬مکہ مکرمہ میں عرنت کی زندگی نشر کرئے لگ‬ ‫ے کہ ا تحصرت ا بئ‬ ‫اتھانی‪ ،‬اس قدر رسول ئر م طالم ڈھائے گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫پہاں نک کہ ہللا ئے اپ کو ہحرت کا جکم دے دنا‪ ،‬دشمیان اسالم سے سالہا حمیلی ح یگ اور مسفیوں کے تحمل کرئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے لگا اور اس کی اواز سارے چہان میں گو تج اتھی۔‬ ‫کے تعد اہشنہ اہشنہ دبن اسالم شرزمین عرب میں ھیلئ‬ ‫ٓ‬ ‫رسول اسالم ئے ساری زندگی وحی الٰہی کے م طاثق لوگوں کی ہدانت کی اور چہاں مسلماثوں کو احکام و اداب و‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تعد ئاے والے ای مہ کا تعارف کرئے رہے‪ ،‬ا تحصرت ئے مبعدد‬ ‫اجالق سے مزبن قرمانا وہیں ساری زندگی ا بئ‬

‫‪49‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے‬ ‫مقامات ئر والنت علی ابن ابت طالب کا اعالن کیا‪ ،‬جن میں دعوت ذو العسیرہ ‪ ،‬سب ہحرت‪ ،‬ح یگ بیوک‪ ،‬عدئر حم حیس‬ ‫موا فع نماناں ح بییت کے جامل ہیں۔‬ ‫پ‬ ‫اسی طرح رسول اسالم ئے مجافط اسالم حصرت اناعید ہللا الحسین علنہ السالم کو حہیوائے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫الحسن و الحسین سیدا شباب اھل الجنة‪ ،‬الحسن و الحسین امامان قاما او قعدا‪ ،‬ان الحسین مصباح ھدی‬ ‫و سفینة نجاة و امام خیر و یمن و عز و فخر و بحر علم و ذخر‪ ،‬الحسین منی و انا من الحسین۔‬ ‫ٓ‬ ‫رسول اسالم کا یہ کردار عین کردار جدا تھا کیونکہ جود ذات اجدنت ئے اہلییت اظہار کا قران مج ید میں مج یلف‬ ‫ٓ‬ ‫مقامات ئر تعارف کروانا ہے اور مبعدد روابیوں کے م طاثق انک چہارم قران کو اہلییت کی سان میں نازل قرماناہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ابن عیاس رسول اسالم سے ت قل قرمائے ہیں کہ انک روز اپ ئے علی علنہ السالم کا ہاتھ نکڑ کر قرمانا‪:‬‬ ‫ان القرآن اربعة ارباع‪ ،‬ربع فینا اھل البیت خاصة‪ ،‬و ربع فی اعدائنا‪ ،‬و ربع حالل و حرام‪ ،‬و ربع فرائض‬ ‫و احکام‪ ،‬و لنا کرائم القرآن۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬قران کا پہال حصہ ہمارے نارے میں ہے‪ ،‬دوشرا حصہ ہمارے دشمیوں کے نارے‬ ‫پیسک قران مج ید کے جار حص‬ ‫ٓ‬ ‫میں ہے‪ ،‬پیشرا حصہ چرام و جالل سے تعلق رکھیا ہے اور جوتھا حصہ قرانض و احکام سے مبعلق ہے اور قران میں جو تھی‬ ‫فص یلت ذکر ہونی ہے وہ ہم اہلییت سے محصوص ہے‪ ،‬اسی طرح ابن عیاس ت قل قرمائے ہیں‪ :‬ان ہللا انزل فی علی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کرائم القرآن‪ ،‬ہللا ئے قران میں درج سدہ نمام فص یلیوں کو علی کی سان میں نازل قرمانا ہے (الحسین الکریم قی قران‬ ‫ٓ‬ ‫الکریم‪ ) 12/1:‬لہذا قران مج ید جدا کی وہ کیاب ہے جو اہلییت کی معرف ہوئے کے ساتھ ساتھ ان کا فصیدہ تھی ئڑھنی‬ ‫ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫قران و اجادنث کی روشنی میں اہلییت کی انک قرد تعنی حصرت اناعید ہللا الحسین (ع) کو جدا کے ئزدنک‬ ‫ٓ‬ ‫ے کرنال کے میدان میں‬ ‫جاص مقام جاصل ہے‪ ،‬اور اس کی وجہ وہ قرنانی ہے جو اپ ئے دبن اسالم کو تجائے کے لئ‬ ‫ے امام حسین(ع) انک پ ہیربن وسیلہ ہیں پ ہی وجہ ہے کہ علماء عرقان اور‬ ‫پیش کی تھی‪ ،‬تقرب ا ٰل ہی کے حصول کے لئ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے امام حسین(ع) کو ان یا وسیلہ قرار د بئ‬ ‫اولیاء ا ٰل ہی سیر و سلوک اور درجات کی نلیدی کے لئ‬

‫‪50‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫اسی اہمیت کے پیش ب ظر انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ابنی حیات کا اکیر حصہ حصرت اناعید ہللا الحسین‬ ‫ے ناناب محموعہ کو‬ ‫سے محصوص قرمادنا ہے اور اس طرح وہ سب و روز کی حمیت و کاوش کے تعد حسینی دائرة المعارف حیس‬ ‫ے پیش کرئے میں کامیاب ہوئے۔‬ ‫امت مسلمہ کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اس دائرة‬ ‫حسینی دائرة المعارف ‪ ۳۹۹‬جلدوں ئر مشتمل ہے جن میں سے مبعدد اچزاء زثور طبع سے اراسنہ ہو جک‬ ‫ع‬ ‫المعارف کا ضرف انک ہی م فصد ہے اور وہ م فصد امام حسین علنہ السالم سے مرثوط نمام لمی م طالب کو حمع کرنا ہے‪،‬‬ ‫مصتف ئے اس م صد کو ج ٔ‬ ‫ے مج یلف عیوانات کے تجت اناعید ہللا الحسین (ع) کی زندگی ئر‬ ‫امہ عمل پہیائے کے لئ‬ ‫ف‬ ‫ٓ‬ ‫روشنی ڈالی ہے‪ ،‬م ظیوعہ اچزاء میں سے انک "الحسین الکریم قی القران الع ظیم" بین سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس‬ ‫ٓ‬ ‫کی پہلی جلد (جو کہ ‪ ۳۳۸‬ص فجات ئر مشتمل ہےاور سنہ ‪ ۶۹۹۹‬ء کو چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے ) میں مصتف ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫مقدمانی میاحث ئر گق یگو کی ہے حس کے تعد قران مج ید میں امام حسین سے مبعلق انات میں سے تعض انات کو ذکر کیا گیا‬ ‫م‬ ‫ے ہوئے کیاب میں موجود م طالب کو مرجلہ وار قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫ہے‪ ،‬ہم اجیصار کو لجوظ ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ل فظ قران کی تعرتف‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قران مج ید وہ کالم ہے جو ذات اجدنت کی طرف سے دمحم صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ئر نازل ہوا اور اج ہمارے درمیان بین‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫الدقئین موجود ہے‪ ،‬قران مج ید کو قرقان‪ ،‬کیاب‪ ،‬ذکر‪ ،‬نیزنل تھی کہئ‬

‫مسیرک نکات‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫اگرجہ مسلماثوں کے درمیان پہت سارے اعی قادی مسانل میں اح یالقات نائے جائے ہیں لیکن قران مج ید کے مبعلق‬ ‫نمام مسلمان میدرجہ ذنل امور ئر ات قاق کرئے ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قران کا مقدس ہونا‪ ،‬قران کا تحرتف سے جالی ہونا‬ ‫ٓ‬ ‫"انا نحن نزلنا الذکر و انا له لحافظون" (الححر ایہ‪۰ :‬۔)۔‬ ‫‪51‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قران مج ید کی طاہری ئر یب کا قان‬ ‫م‬ ‫ردات قران کا عرنی زنان میں ہونا‪ ،‬قران مج ید کا دمحم‬ ‫ق‬ ‫و‬ ‫ت‬ ‫ع‬ ‫ا‪،‬‬ ‫ون‬ ‫ہ‬ ‫ول‬ ‫ی‬ ‫ل‬ ‫ل‬ ‫ف‬ ‫ِ‬ ‫ب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ئر نازل ہونا‪ ،‬احکام‪ ،‬عقاند‪ ،‬اجالق‪ ،‬تجو‪ ،‬ضرف‪ ،‬نالعت جنی دنگر نمام علوم میں قران مج ید کا مرجعی ِت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اول و اچر ہونا‪ ،‬اور حفیقت میں ئرح ٔ‬ ‫مہ قران کا انک ہونا۔‬

‫ٓ‬ ‫اسمانی کیابیں‪:‬‬

‫ت‬ ‫ے اور کیابیں تھی نازل قرمابیں ناکہ لوگوں کے‬ ‫ےوہاں صحیف‬ ‫ے چہاں اپت یاء ھیچ‬ ‫ہللا تعالی ئے بنی ثوع انسان کی ہدانت کے لئ‬ ‫ناس ہمہ وقت وسی ٔلہ ہدانت ہر صورت میں موجود رہے‪،‬شیخ الکرناسی ئے اس مقام ئر پہانت مدلل انداز میں ان‬ ‫صیقوں ‪ ،‬ان کی نار تخ ئزول اور ان ببعمیروں کا نذکرہ کیا ہے کہ جن ئر یہ کیابیں نازل ہونی ہیں میال ثورنت حصرت موسی‬ ‫ح‬ ‫ئر ‪ ۲‬رمصان کو نازل ہونی‪ ،‬زثور حصرت داود ئر ‪ ۰۸‬رمصان کو نازل ہونی‪ ،‬اتج یل حصرت عیسی ئر ‪ ۰۶‬رمصان کو نازل ہونی‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ھنۃ ہللا شنث‬ ‫ے ‪ ۶۳‬رمصان کو حصرت ادم ئر نازل ہوئے‪ ۹۹،‬صحیف‬ ‫قران مج ید رسول اسالم ئر ‪ ۶۰‬رمصان کو نازل ہوا‪ ۶۰ ،‬صحیف‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھی ماہ رمصان میں نازل‬ ‫صیف‬ ‫صیف‬ ‫ے حصرت ادرنس ئر نازل ہوئے‪ ،‬علی ال طاہر یہ ح‬ ‫ابن ادم ئر نازل ہوئے‪ ۶۰ ،‬نا ‪ ۰۹‬ح‬ ‫ے حصرت ائراہیم ئر ماہ رمصان کی پہلی سب میں نازل ہوئے۔‬ ‫صیف‬ ‫ہوئے تھ‬ ‫ے اور ‪ ۶۹‬ح‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ تحفیق سے واصح ہونا ہے کہ اکیر اسمانی کیابیں ماہ میارک رمصان میں نازل ہوبیں حس سے اس ماہ کی‬ ‫فص یلت طاہر ہونی ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ان اسمانی کیاثوں میں سے جار کیاثوں کا نذکرہ قران مج ید میں تھی موجود ہے جداوند عالم قرمانا ہے‪:‬‬ ‫وعدا علیه حقا فی التوراة واالنجیل و القرآن( ثویہ‪)۰۰۰ :‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫و آتینا داود زبورا (نساء ‪ ،)۳۶۱‬جداوند عالم ئے قران مج ید میں صحف ائراہیم و موسی کا تھی نذکرہ کیا ہے‬ ‫صحف ابراھیم و موسی (اعلی‪)۰۰:‬۔‬

‫‪52‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے کے احت یام ئر مصتف ئے وصاحت کے ساتھ ن یان کیا کہ ثورنت اور اتج یل وہ دو کیابیں ہیں کہ‬ ‫اور اس مر جل‬ ‫جن میں دمحم (ص) کی رسالت ئر گواھی موجود ہے‪ ،‬جداوند عالم قرمانا ہے‪:‬‬ ‫الذین یتبعون الرسول النبی االمی الذی یجدونه مکتوبا عندھم فی التوراة و االنجیل یامرھم بالمعروف و‬ ‫ینھاھم عن المنکر(اعراف‪ )۳۵۱ :‬و قال ہللا‪:‬‬ ‫و اذ قال عیسی ابن مریم یا بنی اسرائیل انی رسول ہللا الیکم مصدقا لما بین یدی من التوراة مبشرا‬ ‫برسول یاتی من بعدی اسمه احمد (صف‪)۲ :‬۔‬

‫ٓ‬ ‫جامعیت قران‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھی مسلمان ہیں جو‬ ‫قران مج ید ہللا کی وہ کیاب ہے کہ حس میں ہر حسک و ئر کا ذکر نانا جانا ہے‪ ،‬ہمارے درمیان کجھ ا نس‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ قران مج ید ضرف اجالق یات و عیادات کی کیاب ہے اور اس کا جکومت و‬ ‫معرنی افکار سے میائر ہو کر یہ ت فین کر پییھ‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫سیاست اور دنگر علوم سے کونی تعلق پہیں ہے ح یکہ یہ قکر نص قران سے میاقات ر ھنی ہے جداوند عالم قرمانا ہے وال‬ ‫ٓ‬ ‫رطب و ال یابس اال فی کتاب مبین (اتعام ‪ )۹۰‬کونی حسک و ئر پہیں کہ حس کا نذکرہ قران مج ید میں یہ ہوا ہو‪ ،‬لہذا ہمارا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫یہ اعی قاد ہے کہ قران مج ید میں اجالق و اداب‪ ،‬احکام و شرتعت‪ ،‬قلسفہ و حکمت‪ ،‬ادب و نالعت‪ ،‬نار تخ و غیرت‪،‬‬ ‫جکومت و سیاست اور دنگر وہ نمام علوم نائے جائے ہیں کہ جن نک نشرنت کی رسانی اس ئرقی نافنہ دور میں تھی یہ ہو‬ ‫سکی۔‬

‫ٓ‬ ‫اعجاز قران‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اعجاز قران انک تقینی و ندپ ہی امر ہے کیونکہ عہد بیوی(ص) سے لیکر اج نک نمام دبیوی‬ ‫صاحیان نصیرت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے نازل ہوا تھا اج تھی ت غیر کسی ن یدنلی کے‬ ‫علوم میں ئرقی وا فع ہونی لیکن قران مج ید حس صورت میں جودہ سو سال پہل‬ ‫ع‬ ‫ہمارے درمیان موجود ہے اور ہر دور میں ہر سحص کی لمی ضرورثوں کو ثورا کرنا ہے۔‬ ‫‪53‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫یہ نات تھی قانل عور ہے کہ قران مج ید کا انک طاہر ہے جو پہت ابیق ہےاور انک ناطن ہے جو ئے جد‬ ‫عمیق ہے‪ ،‬موال علی علنہ السالم قرمائے ہیں ‪:‬‬ ‫ان القرآن ظاھرہ انیق‪ ،‬و باطنه عمیق‪ ،‬ال تفنی عجائبه‪ ،‬و ال تنقضی غرائبه‪ ،‬وال تکشف الظلمات اال به‬ ‫(پہج الیالعہ‪ :‬خطنہ‪)۰۸ :‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫پیسک قران مج ید کا طاہر مرنب و مزبن اور اس کا ناطن دفیق و عمیق ہے‪ ،‬یہ اس کے عجانب ق یا ہوئے ہیں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اور قران ہی کے ذرتعہ طلمات ئرطرف ہوئے ہیں‪ ،‬لہذا قران کی انک انت‬ ‫اور یہ ہی اس کے علوم کیھی جیم ہو نگ‬ ‫س‬ ‫ے واال نا ثو جدا ہے نا تھر وہ لوگ ہیں جو‬ ‫ے جائے ہیں لیکن اس عمق کو ح مھئ‬ ‫ہی سے مج یلف ادوار میں مج یلف معانی اجذ کئ‬ ‫راسجون قی العلم کے مصداق ہیں حیسا کہ جداوند کریم ئے قرمانا ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫و ما یعلم تاویله اال ہللا و الراسخون فی العلم (ال عمران‪)۳ :‬۔‬

‫تفسیر و ناونل و مصداق کی تعرتف‪:‬‬ ‫لعت میں تفسیر کے معنی پتئین‪ ،‬ناونل کے معنی رجوع‪ ،‬مصداق کے معنی مطابقۃ الکالم مع الواقع (حفیقت سے‬ ‫کالم کا م طاتقت کرنا) کے ہیں اور اہل لعت کے ئزدنک ان تعرتقوں میں کسی قشم کا اح یالف پہیں نانا جانا۔‬ ‫لیکن تفسیر و ناونل کے اص طالحی معنی میں مفشربن ئے اح یالف کیا ہے اور اس سلسلہ میں دس سے زنادہ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬تعض مفشربن ئے تفسیر و ناونل کی کجھ اس طرح سے تعرتف کی ہے‪:‬‬ ‫ے گئ‬ ‫ب ظرنات پیش کئ‬

‫الیفسیر‪:‬‬ ‫ے ہیں کہ حس کا تعلق روانت سے ہونا ہے)‬ ‫ھو ما یتعلق بالروایة (تفسیر اسے کہئ‬ ‫الیاونل‪:‬‬ ‫ے ہیں کہ حس کا تعلق درانت سے ہونا ہے)‬ ‫ھو ما یتعلق بالدرایة (ناونل اسے کہئ‬

‫‪54‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یکہ دائرۃ المعارف الحس بینہ کے مصتف ئے جو تعرتف پیش کی ہے وہ ہمیں جامع ئر ب ظر انی ہے‪:‬‬

‫الیفسیر‪:‬‬ ‫ھو علم یبحث فیه عن کالم ہللا تعالی المنزل ضمن الکالم (تفسیر‪ :‬وہ علم ہے جو کالم جدا کے نارے میں گق یگو کرنا‬ ‫ہے لیکن یہ گق یگو کالم الٰ ہی کے ضمن میں ہونی ہے)‬

‫الیاونل‪:‬‬ ‫ھو ارجاع الکالم و صرفه عن معناہ الظاھری الی معنی اخفی منه ( ناونل‪ :‬کالم کے طاہری معنی کو اس معنی‬ ‫کی طرف موڑ دن یا جو کہ ناطن کالم میں موجود ہے)۔‬

‫ٓ‬ ‫تفسیر و ناونل قران کا معیار‪:‬‬ ‫ے کجھ معیارات ہیں‬ ‫اہل نسیع کے پہاں ہر تفسیر‪ ،‬ناونل اور مصداق قانل فیول پہیں نلکہ ان میں سے ہر انک کے لئ‬ ‫ے وگریہ انکی کونی قدر و فیمت یہ ہوگی۔‬ ‫جن سے اگر وہ م طاتقت کربں ثو قانل فیول ہو نگ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ضروری ہے کہ وہ ان اقراد کی عضمت کا قانل ہو کہ جیھیں ہللا تعالی ئے‬ ‫تفسیر قران میں انک مفشر کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫معصوم ن یا کر ھیجا ہے‪ ،‬اور وہ قران کی تفسیر کرئے ہوئے راسجون قی العلم کی اجادنث سے اشت قادہ کرے‪ ،‬اس کے ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے کی صالجیت‬ ‫ے یہ تھی ضروری ہے کہ وہ نا سخ و میشوخ‪ ،‬م طلق و مق ید‪ ،‬عام و جاص قران کو مجھئ‬ ‫ساتھ انک مفشر کے لئ‬ ‫تھی رکھیا ہو۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ناونل قران‪ ،‬تفسیر قران سے زنادہ سجت کام ہے کیونکہ جو سحص ناونل قران کا علم رکھیا ہو اس کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے‪ ،‬لیکن یہ ضروری پہیں کہ حس کے ناس تفسیر قران کا علم ہو وہ ناونل قران کو‬ ‫ضروری ہے کہ وہ تفسیر قران کو تھی مجھ‬

‫‪55‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ضروری ہے کہ وہ طاہر و ناطن قران کو اجادنث و ارسادات ای مہ کی‬ ‫تھی جائے‪ ،‬لہذا ناونل قران میں انک مفشر کے لئ‬ ‫روشنی میں درک کرے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ضروری ہے وہ انات کے اسارات‬ ‫صداق قران کا تعین تھی انک مشکل امر ہے حس میں مفشر کے لئ‬ ‫م ِ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے‪ ،‬قران مج ید میں تعض اوقات خ طاب طاہرا ببعمیر اسالم سے ہونا لیکن مراد مومئین ہوئے ہیں‪ ،‬اسی طرح دنگر موارد‬ ‫کو مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میں کیھی انات کا مصداق ضرف انک قرد ہونا ہے ثو کیھی مسیرک اقراد ہوئے ہیں‪ ،‬لہذا مصداق انت کے تعین سے‬ ‫ٓ‬ ‫ے اجادنث ای مہ کی روشنی میں انت کے نمام جوانب و اسارات کا درک کرنا بیجد ضروری ہے۔‬ ‫پہ ل‬ ‫ٓ‬ ‫تفسیر قران کا طرتفہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کیاب "الحسین الکریم قی القران الع ظیم" میں ان دو اہم ذرتعوں کو ذکر کیا گیا ہے کہ جن سے قران مج ید کی تفسیر کی جا سکنی‬ ‫ہے‪:‬‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫(الف) تفسیر القران نالقران‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫جداوند عالم کا ارساد ہے کہ اگر یم کسی تھی امر میں اح یالف کرو ثو ہللا و رسول کی طرف رجوع کرو‪ ،‬اس انت میں ہللا کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قران کو قران ہی سے‬ ‫ے کہ وہ پہل‬ ‫طرف رجوع سے مراد قران کی طرف رجوع کرنا ہے لہذا تفسیر قران میں مفشر کو جا ہئ‬ ‫ے اجادنث کا شہارا لے۔‬ ‫تفسیر کرے اور تھر نشر تح و ت قاصیل کے لئ‬

‫ٓ‬ ‫(ب) تفسیر القران نالجدنث‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ببعمیر اسالم و ای م ٔہ اظہار کی اجادنث‪ ،‬تفسیر قران کا پہیربن وسیلہ ہیں‪ ،‬اور جدنث ت قلین (انی تارک فیکم الثقلین ما ان‬ ‫تمسکتم بھما لن تضلوا کتاب ہللا و عترتی اھل بیتی فانھما لن یفترقا حتی یردا علی الحوض۔ تفسیر ئرھان‪:‬‬

‫‪56‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ )۰/۰‬کے م طاثق قران و اہلییت انک دوشرے کے ساتھ ہیں لہذا قران کو اہلییت سے اور اہلییت کو قران سے شمجھیا‬ ‫ے۔‬ ‫جا ہئ‬

‫تفسیر کی اقسام‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے‬ ‫قران مج ید جونکہ جامع دشتور العمل ہےلہذا اس میں لمی و عملی جوالوں سے نمام پہلووں کی معرقت ضروری ہے‪،‬اسی لئ‬ ‫م‬ ‫تفسیری عمل میں تھی ہر زاوی ٔہ ب ظر کا لجوظ رکھیا ناگزئر ہے اور اسی ن یاء ئر تفسیر کی مج یلف اقسام را تج ہیں‪ ،‬اس سلسلہ میں‬ ‫ت‬ ‫مصتف ئے تفسیر کی نارہ اقسام کو فصیل کے ساتھ ن یان کیا ہے ہم پہاں ضرف ان اقسام کا نذکرہ کرئے ہیں‪ ،‬ت قاصیل‬ ‫ے قاربین اصل کیاب کی طرف رجوع قرمابیں‪:‬‬ ‫کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ق‬ ‫ل‬ ‫تفسیر قطی‪ ،‬تفسیر قران نالقران‪ ،‬تفسیرائری‪ ،‬تفسیر لعوی‪ ،‬تفسیر ناونلی‪ ،‬تفسیر نالغی‪ ،‬تفسیر لسقی‪ ،‬تفسیراعی قادی‪ ،‬تفسیر نشرت عی‪ ،‬تفسیر‬ ‫ع‬ ‫لمی‪ ،‬تفسیر موصوغی‪ ،‬تفسیر نارتخی۔‬

‫ٓ‬ ‫قران مج ید ئر اعراب گذاری‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫اس نات میں کونی سک پہیں کہ قران مج ید ئر اعراب گذاری کا کام حصرت امام حسین کے ندر ئزرگوار ناب مدنیۃ العلم‬ ‫ع‬ ‫ٔ‬ ‫ے ساگرد اثو االسود الدولی سے کروانا اور اعراب گذاری کے نمام فوابین اتھیں ت لیم‬ ‫موال امیر المومئین(ع) ئے ا بئ‬ ‫س‬ ‫قرمائے‪،‬اس حفیقت کو نمام ارناب تحفیق ئے ن لیم اور ذکر کیا ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫قران مج ید سے اشت قاق نافنہ علوم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫قران مج ید کی جامعیت کے ن یاطر میں یہ حفیقت کسی وصاحت و دلیل کی مجیاج پہیں کہ یہ مقدس کیاب علوم و معارف‬ ‫ٓ‬ ‫کا شرحشمہ ہے‪ ،‬اس ن یا ئر اجمالی ب ظر سے دیکھا جائے ثو معلوم ہونا ہے کہ میدرجہ ذنل علوم نا قران مج ید میں موجود ہیں نا تھر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قران کے ئزول کی ئرکت سے وجود میں ئاے ہیں‪:‬‬

‫‪57‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫علم لعت‪ ،‬علم تجو‪ ،‬علم ضرف‪ ،‬علم نالعت‪ ،‬علم متظق‪ ،‬علم نار تخ‪ ،‬علم ادنان‪ ،‬علم قرانات قران‪ ،‬علم رشم الخط قران‪،‬علم‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫نار تخ قران‪ ،‬علم احیاء‪ ،‬علم قفہ‪ ،‬علم اصول‪ ،‬علم عق یدہ‪ ،‬علم تجوند‪ ،‬علم اجالق‪ ،‬علوم تفشنہ‪ ،‬علوم اجتماعنہ‪ ،‬علوم رناضنہ‪ ،‬علوم‬ ‫طیبعنہ‪ ،‬علوم ع بینہ‪ ،‬علوم تفسیر و ناونل‪ ،‬اور تعض دنگر علوم۔‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین(ع) اور اسمانی کیابیں‪:‬‬

‫امام حسین کی سحصنت میں وہ جامعیت نانی جانی ہے کہ حس کی ب ظیر دوشری سحصیات میں کم دکھانی دبنی ہیں‪ ،‬ثوں ثو‬ ‫اہلییت کا ذکر حمیل کلی و چزنی اور ضراحت و اسارہ کے ساتھ ہر دبن و مذہب کی پت یادی کیب میں موجود ہےاور چہاں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫نک کیب اسمانی کا تعلق ہےثو اس جوالے سے دائرۃ المعارف کی جلد "الحسین الکریم قی القران الع ظیم" میں مصتف‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے ان نمام اسمانی کیب کا نذکرہ کیا ہے جن میں حصرت امام حسین کا ذکر حمیل موجود ہے‪ ،‬انت ہللا کرناسی ئے اس‬ ‫ٔ‬ ‫مقام ئر وہ نمام عیاربیں تھی پیش کی ہیں جو ثورنت و اتج یل میں وارد ہوبیں ہیں‪ ،‬نالحصوص ارمیا اور ثوحیا کی پیسین گوبیوں کو‬ ‫جوالہ کے ساتھ ت قل قرمانا ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫امام حسین(ع) اور قران مج ید‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین کا نذکرہ حمیل مصداقی جوالہ سے مج یلف و مبعدد انات میارکہ میں کلی و چزنی صورت میں موجود ہےح یاتجہ اس‬ ‫ٓ‬ ‫جوالے سے مصتف ئے ٔ‬ ‫سورہ جمد کی جار ان عمومی انات کو قلم ن ید قرمانا کہ جن کی ناونل امام حسین(ع) سے کی جانی‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ہے تھر مصتف ئے ٔ‬ ‫سورہ تقرہ کی ان ‪ ۰۸‬انات کو فصیل کے ساتھ ن یان قرمانا ہے جو نالحصوص امام حسین علنہ السالم کی‬ ‫سان میں نازل ہوبیں ہیں‪ ،‬مصتف ئے اس مقام ئر پیشمار اجادنث کو ذکر کیا اور وہ کلمات کہ جن کی نشر تح بیجد ضروری‬

‫‪58‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھی اتھیں جواسی میں قلم ن ید قرمانا‪ ،‬اور اچر میں ‪ ۰۰‬عام انئیں جن کا اطالق امام حسین (ع) ئر ہونا ہے اتھیں تھی اجمال‬ ‫کے ساتھ ذکر کیا ہے۔‬ ‫سچ ثو یہ ہے کہ اگر حصرت امام حسین کی حیات طینہ کے کسی تھی پہلو ئر ب ظر کی جائے ثو ان کی عملی زندگی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ف‬ ‫ٓ ف‬ ‫قران مج ید کا عکس و ئرثو ہی پہیں نلکہ ان کا وجود ثولیا قران ب ظر ا نا ہے‪ ،‬ضرورت اس امر کی ہے قران ہمی اور حسین ہمی‬ ‫ٓ‬ ‫ح‬ ‫م‬ ‫ے ہوئے عالمایہ و مح ق قایہ انداز میں قکری ثوانان یاں ئروئے کار النی جابیں ناکہ قران اور حس کے گھر‬ ‫کا فیقی معیار لجوظ ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫میں قران ائرا ہے ان کی ح‬ ‫ے۔‬ ‫صیح معرقت جاصل ہو سک‬

‫‪59‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪60‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں‬ ‫جلد اول‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں" نارہ سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد (جو ‪۹۹۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫ص فجات ئر مشتمل ہے) سنہ ‪ ۰۰۸۳‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۸‬ء میں زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫میں موجود م طالب کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪61‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪62‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫اجادنث کے جوہری علوم‬

‫ت‬ ‫ے جداوند عالم ئے انک الکھ جوپیس ہزار ببعمیروں کو ھیجا‪ ،‬اور ان میں‬ ‫نشر کی ہدانت انک انسا اھم موصوع ہے حس کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫سے پہبیروں ئر اسمانی کیاثوں کو نازل قرمانا‪ ،‬نمام اپت یاء انساثوں کے درمیان معصوم نشر کی ح بییت سے نشرتف الئے‪،‬‬ ‫ناکہ جود خ طا و نسیان و شھو سے محقوظ رہ کر دوشروں کا ئزکنہ کر سکیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ذات اجدنت ئے اپت یاء کو اسمانی کیاب کے ساتھ ھیجا ناکہ وہ کیاب کے م طاثق عمل کرکے یہ ن یالدبں کہ‬ ‫ے ہیں ثو جدا کا کونی‬ ‫کونسا عمل کس طرح تجا النا جائے‪ ،‬اور حب نشر ہوئے کی ح بییت سے وہ نمام واح یات کو اتجام دے سکئ‬ ‫تھی جکم نکلیف ماال ب طاق پہیں ہوگا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫امت مسلمہ کی ہدانت کا پہال ذرتعہ قران اور دوشرا اہلییت اظہار ہیں‪ ،‬لہذا ہر مسلمان کو قران ئڑھ کر یہ دیکھیا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے کہ اہلییت ئے قرانی احکامات ئر کس طرح عمل کیا ہے‪ ،‬انک دور انسا تھی تھا کہ حب قران مج ید کے ساتھ ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫ساتھ لوگوں کو معصوم نک رسانی تھی جاصل تھی‪ ،‬اس دور میں حب کسی تھی قشم کا اح یالف ہونا ثو مسلمان‪ ،‬مفشر قران کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جن ئر قران مج ید‬ ‫ے مفشر حصرت دمحم صلی ہللا علنہ و الہ و سلم تھ‬ ‫ے‪ ،‬قران مج ید کے سب سے پہل‬ ‫طرف رجوع کیا کرئے تھ‬ ‫ے‬ ‫نازل ہوا‪ ،‬اس دور میں اگر اصجاب کے درمیان کسی تھی قشم کا اح یالف ہونا ثو وہ حصور کی جدمت میں جاضر ہو کر ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لہذا ان کے کسی تھی‬ ‫ے‪ ،‬جونکہ قران کی روشنی میں ا تحصرت عضمت کے درجہ ئر قائز تھ‬ ‫اح یالف کو ئرطرف کیا کرئے ت ھ‬ ‫فول و فعل و سکوت کی مجالقت کرنا انمان میں اجالل کے مساوی تھا۔‬

‫‪63‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تعد دو گرات قدر خیزبں چھوڑبں اور ناکید قرمانی کہ‬ ‫ے ثو اپ ئے ا بئ‬ ‫حب ا تحصرت اس دن یا سے نشرتف لے گئ‬ ‫حب نک یم ان کے ساتھ رہوگے ثو ی مھارے درمیان یہ کسی قشم کا احیالف ہوگا اور یہ ہی یم کسی اح یالف کی ن یا ئر گمراہ‬ ‫ٓ‬ ‫ہو گے‪ ،‬اور وہ دو خیزبں قران و اہلییت ہیں‪ ،‬رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫انی تارک فیکم الثقلین ما ان تمسکتم بھما لن تضلوا کتاب ہللا و عترتی اھل بیتی فانھما لن یفترقا حتی‬ ‫یردا علی الحوض (تفسیر ئرہان‪)۰/۰ :‬۔‬ ‫یہ وہ جدنث ہے جو نمام مسلماثوں کے درمیان قانل فیول ہے اور ہر انک ئے ابنی معبیر کیاب میں اس‬ ‫جدنث کو ت قل کیا ہے اس جدنث شرتف سے پہت سارے مق ید نکات واصح ہوئے ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ قران و اہلییت انک دوشرے کے ساتھ ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۶‬۔ قران و اہلییت میں کسی قشم کا اح یالف پہیں ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جونکہ یہ دوثوں ہمیشہ انک دوشرے کے ساتھ ہیں۔‬ ‫‪۰‬۔ اہلییت کو قران سے اور قران کو اہلییت سے شمجھانا جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۳‬۔ جو حصوصیات قران مج ید کی ہیں وہی حصوصیات اہلییت میں تھی موجود ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۹‬۔ جو فصانل قران مج ید کے ہیں وہی فصانل اہلییت کے ہیں‪ ،‬بظور میال اگر قران رحس و خ طا و ناطل سے دور ہے ثو‬ ‫اہلییت تھی رحس و خ طار و ناطل سے دور ہیں۔‬ ‫‪۲‬۔ حس کے ساتھ انسان زنادہ وقت گزارنا ہے وہ اس کی سب سے زنادہ معرقت تھی رکھیا ہے جونکہ ق یامت نک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اہلییت قران کے ساتھ ہیں لہذا قران کی معرقت سب سے زنادہ اتھیں کو ہوگی۔‬ ‫ٓ‬ ‫گرجہ نار تخ اسالم میں نمام مسلماثوں ئے موجودہ قران ئر ات قاق کیا ہے لیکن حس خیز میں اح یالف ہوا وہ مفشربن‬ ‫ٓ‬ ‫قران ہیں جیکا نذکرہ ثو اہلییت کے عیوان سے جدنث ت قلین میں موجود ہے لیکن مصداق کے تعین میں مسلمان انک‬ ‫ٓ‬ ‫ے ح یکہ رسول اسالم کی مذکورہ جدنث کی نشر تح وہ جدنث کرنی ہے کہ حس میں ا تحصرت ئے‬ ‫دوشرے سے اح یالف کر پییھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا علی مع القرآن و القرآن مع علی‪ ،‬تعنی علی قران کے ساتھ اور قران علی کے ساتھ ہے‪ ،‬ان دوثوں‬

‫‪64‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫جملوں(علی مع القرآن والقرآن مع علی‪ ،‬ولن یفترقا) کو اگر انک ساتھ رکھا جائے ثو واصح ہو جانا ہے جدنث ت قلین‬ ‫ٓ‬ ‫میں اہلییت سے مراد علی و ال علی ہیں۔‬ ‫یہ نار تخ اسالم کی انک حفیقت ہے کہ ہر دور میں حس طرح رسول اسالم امت مسلمہ کے مسانل کو جل قرمانا‬ ‫ے نالکل اسی طرح ا ٔ‬ ‫مہ اہلییت ئے تھی امت کی مشکل کسانی قرمانی‪ ،‬جاکمان وقت کو حب کیھی کونی مشکل‬ ‫کرئے ت ھ‬ ‫ی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے مسانل کا جواب‬ ‫مسیلہ درپیش ہوا نا قران مج ید کی کونی انت شمجھ میں یہ انی ثو وہ علی و ال علی کی طرف رجوع کرکے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے واصح ہو جانا ہے کہ اولین مفشر قران تعنی رسول اسالم‬ ‫ے‪ ،‬حس سے انک صاحب نصیرت کے لئ‬ ‫جاصل کیا کرئے ت ھ‬ ‫کے قایم مقام جلقاء‪ ،‬پ ہی ا ٔ‬ ‫مہ اہلییت ہیں‪ ،‬جو رسول اسالم کی طرح امت مسلمہ کی مشکلکسانی قرمائے ہیں۔‬ ‫ی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫لہذا اس جدنث ت قلین کی روشنی میں اہل نسیع ئے ہر دور میں قران مج ید کو ا ٔ‬ ‫مہ اہلییت سے شیکھا‪ ،‬جو ا تحصرت‬ ‫ی‬ ‫ٓ‬ ‫کے قایم مقام اور انکی طرح عضمت کے جامل ہیں‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ اج نک اہل نسیع امام وقت کے ذرتعہ وحی ا ٰل ہی‬ ‫سے میسلک ہیں لیکن چہاں مسلماثوں ئے اہلییت کا دامن چھوڑا وہیں ئر وہ اح یالف کا سکار ہوئے اور ان میں مج یلف‬ ‫ے جو انک دوشرے کی یکفیر کرئے سے تھی گرئز پہیں کرئے‪ ،‬اگر ان اح یالقات کی رنشہ نانی کی جائے‬ ‫قرقے نماناں ہو گئ‬ ‫ثو واصح ہو جائے گا کہ اس اح یالف کی اصل وجہ اجادنث رسول میں تحرتف نا جعلی اجادنث کا گھڑنا ہے جو کہ تعض مقاد‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے اہل نسیع ئے اجادنث رسول و ای مہ لیہم السالم کی جامع تحفی ق‬ ‫ے ئر وجود میں ابیں‪ ،‬اسی لئ‬ ‫ئرست حکمراثوں کے کہئ‬ ‫ے مج یلف علوم کا شہارا لیا جن کو علوم جدنث کے نام سے جانا جانا ہے‪ ،‬یہ وہ علوم ہیں جن کی کشونی ئر ہر جدنث‬ ‫کے لئ‬ ‫ابنی سید و مین کے ساتھ ئرکھی جانی ہے۔‬ ‫اسی م فصد کے پیش ب ظر دائرۃ المعارف ثونسی میں انک معبیر سحصنت عالمہ دمحم صادق الکرناسی ئے کیاب‬ ‫ٓ‬ ‫"الحسین فی السنة" کی پہلی جلد (جو ‪ ۹۹۰‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪۶۹۹۸‬ء میں چھپ کر مت ظر عام ئر ا جکی ہے)‬ ‫ت‬ ‫میں علوم اجادنث کو ئڑی فصیل اور جونصورنی کے ساتھ ن یان قرمانا ہے‪ ،‬کیاب "الحسین فی السنة" نارہ سے زاند‬ ‫جلدوں ئر مشتمل ہے حسکی پہلی جلد میں علوم جدنث ئر گق یگو کی گنی ہے اور تفنہ جلدوں میں ان نمام اجادنت کو تحفیق کے‬

‫‪65‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫ساتھ پیش کیا جائے گا جو معصومین لیہم السالم سے امام حسین علنہ السالم کے نارے میں وارد ہونی ہیں ہم اس مقام ئر‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫کیاب "الحسین فی السنة" کی پہلی جلد میں موجود م طالب ئر اجمالی روشنی ڈا لئ‬

‫امام حسین(ع) شنت کی روشنی میں‪:‬‬

‫ع‬ ‫شنت سے مراد فول‪ ،‬فعل‪ ،‬اور تقرئر چہاردہ معصومیں لیہم السالم ہے‪ ،‬اور شنت کا اطالق جار خیزوں ئر ہونا ہے‪ :‬روانت‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫جدنث‪ ،‬خیر‪ ،‬ائر‪ ،‬اس جلد میں انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے عیاضر جدنث (تعنی سید جدنث اور مین جدنث) ئر‬ ‫مقدمانی و علوم جوہری کے ذرتعہ تجث کی ہے‪ ،‬جن کے ذرتعہ سید و مین جدنث کی صجت اور اس کا معصوم سے صادر‬ ‫ہونا واصح ہو جانا ہے۔‬

‫علوم جدنث‪:‬‬ ‫علوم جدنث کی دو قشمیں ہیں‪ ،‬علوم مقدمانی(علوم عام)‪ ،‬علوم جوہری (علوم جاص)۔‬ ‫ے الزم و ضروری ہے‪ ،‬اور اپ ہی‬ ‫علوم مقدمانی وہ علوم ہیں کہ جن کا جاصل کرنا مین اور معانی جدنث کو درک کرئے کے لئ‬ ‫علوم کے ذرتعہ سید جدنث کا معبیر نا غیر معبیر ہونا نانت ہونا ہے‪ ،‬اور وہ علوم یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫علم ضرف‪ ،‬علم تجو‪ ،‬علم نالعت‪ ،‬علم متظق‪ ،‬علم کالم‪ ،‬علم قفہ‪،‬علم اصول‪ ،‬علم نار تخ‪ ،‬علم تفسیر‪ ،‬علوم قران۔‬ ‫علوم جوہری وہ علوم ہیں کہ جن کے ذرتعہ ئراہ راست سید اور مین جدنث ئر تحفیق کی جانی ہے اور وہ چھ علوم ہیں‪:‬‬ ‫علم درانت‪ ،‬علم رجال‪ ،‬علم ناصیل‪ ،‬علم نصییف‪ ،‬علم نار تخ جدنث‪ ،‬علم روانت جدث۔‬ ‫ت‬ ‫کیاب "الحسین فی السنة" کی اس پہلی جلد میں مصتف ئے علوم جوہری جدنث کی مذکورہ چھ اقسام ئر فصیل کے‬ ‫ساتھ تجث و گق یگو قرمانی ہے۔‬

‫‪66‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علم درانت‬ ‫ے ہیں اور اص طالع میں علم درانت اس علم کو کہا جا نا ہے کہ حس کے ذرتعہ جدنث کی نص کو‬ ‫لعت میں درانت فہم کو کہئ‬ ‫اور مین و سید کے اعت یار سے اس کے مفیول نا مردود ہوئے کو شمجھا جانا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے انت ہللا شیخ کرناسی ئے ان نمام قروعات ئر تجث کی ہے کہ جن کے ذرتعہ علم‬ ‫اس تعرتف کی پیسیر وصاحت کے لئ‬ ‫درانت کے نمام جوانب روشن ہوئے ہیں‪ ،‬میال نص کا فوی و سالم ہونا‪ ،‬اقسام جدنث و اصیاف سید‪ ،‬تعادل و ئرا جیح‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫جدنث شرتف میں اشیعمال سدہ ادن یات‪ ،‬نص شرتف کا حجت ہونا‪ ،‬جدنث کو قران و عقل و اجماع کے معیارات ئر‬ ‫ئرکھیا۔‬ ‫ہم اس مقام ئر بظور ی مویہ ح ید اہم اور پت یادی م طالب کو قاربین کے جدمت پیش کرئے ہیں‪:‬‬

‫نص کا فوی و سالم ہونا‪:‬‬ ‫ے ح ید امور شرط ہیں‪:‬‬ ‫کسی تھی جدنث کی صجت و ححیت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫‪۰‬۔ جدنث‪ ،‬قران مج ید اور عقلم لیم سے معارض و مجالف یہ ہو۔‬ ‫‪۶‬۔ جدنث‪ ،‬معصوم کی طرف میشوب ہو۔‬ ‫ن‬ ‫‪۰‬۔ عربیت کے اعت یار سے مین جدنث ئر سک و شیہہ وارد یہ ہو تعنی اس کی عرنی فصیح و لبغ ہو۔‬ ‫‪۳‬۔ جدنث ذوق اور روش عضمت سے جالی یہ ہو۔‬ ‫‪۹‬۔ جدنث میں تفنہ کا اجتمال یہ ہو۔‬ ‫‪۲‬۔ راوی‪ ،‬جدنث کے مراد اور معنی کو ت قل کرئے کے تجائے جود القاظ جدنث کو ت قل کرے۔‬

‫‪67‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫اصیاف ت قل‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ت قل کے اعت یار سے جدنث کی نا تچ اصیاف ہیں ائر‪ ،‬جدنث‪ ،‬خیر‪ ،‬روانت‪ ،‬شنت۔‬

‫ائر‪:‬‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫س َل واتصل خلفا عن سلف‪ ،‬ھر وہ کالم کہ جو جلف سے سلف ئر میی ہی ہو اسے ائر کہئ‬ ‫س ْل َ‬ ‫کل کالم تَ َ‬

‫جدنث‪:‬‬ ‫ھو الکالم المنقول عن المعصوم‪ ،‬وہ کالم جو معصوم سے ت قل ہوا ہو‪ ،‬اس تعرتف کے ذرتعہ افعال وتقرئر معصوم جارج‬ ‫ہو جائے ہیں۔‬ ‫خ یر ‪:‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اور مجازا اجادنث معصوم کو تھی خیر کہا جانا ہے۔‬ ‫ھو حدیث غیر المعصوم‪ ،‬غیر معصوم کی جدنث کو خیر کہئ‬

‫روانت‪:‬‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ہر وہ جدنث کہ جو ناقلین سے ت قل ہوئے ہوئے معصوم ئر میی ہی ہو اسے روانت کہئ‬

‫شنت‪:‬‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫جو خیز فول‪ ،‬فعل اور تقرئر معصوم سے صادر ہو اسے شنت کہئ‬

‫‪68‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫اصیاف روانت‪:‬‬ ‫سید کے اعت یار سے روانت کی دو اصیاف ہیں‪ ،‬روانت میوائرہ اور روانت آجاد‪.‬‬

‫روانت میوائرہ‪:‬‬

‫وہ روانت کہ حس کے راوی ہر طیف ٔہ روات میں پہت زنادہ ہوں‪ ،‬حس سے یہ اطمت یان جاصل ہونا ہے کہ کسی ئے تھی‬ ‫اس روانت کو یہ جعل کیا ہے اور یہ ہی اس میں کسی قشم کا نصرف کیا گیا ہے‪ ،‬اور روانت میوائرہ میں اگر نمام راوثوں ئے‬ ‫ل‬ ‫ے ہوں ثو اسے ثوائر قطی اور اگر مضمون روانت میوائر ہو (گرجہ القاظ مج یلف ہوں) ثو اسے ثوائر معیوی‬ ‫یکساں القاظ ت قل کئ‬ ‫کہا جانا ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫روانت اجاد‪:‬‬ ‫وہ روانت کہ جو میوائرہ یہ ہو اور حس میں شرائط ثوائر (تعنی ہر نسل میں راوثوں کی کیرت کا ہونا حس سے سید کی صجت ئر‬ ‫اطمت یان جاصل ہو جائے) یہ نانی جابیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫روانت اجاد کی دو قشمیں ہیں‪:‬‬

‫روانت مرسل‪:‬‬ ‫وہ روانت کہ حس کے راوثوں کا سلسلہ کلی نا چزنی طور ئر کامل یہ ہو۔‬

‫‪69‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫روانت مسید‪:‬‬ ‫وہ روانت کہ حس کے راوثوں کا سلسلہ ہر طیفہ میں مکمل طور ئر مذکور ہو۔‬ ‫م ت‬ ‫جدنث مسید کی کمیت کے اعت یار سے دو قشمیں ہیں‪ ،‬جدنث س فیض اور جدنث مشہور۔‬

‫م ت‬ ‫جدنث س فیض‪:‬‬ ‫اس جدنث کو کہا جانا ہے کہ حس کے ہر طیفہ میں بین نا بین سے زنادہ راوی موجود ہوں۔‬

‫جدنث مشہور‪:‬‬ ‫وہ جدنث کہ حس کے راوثوں کے طی قات میں عام طور سے بین نا دو راوی نائے جائے ہیں جن کے ذرتعہ اس جدنث‬ ‫کو جدنث مشہور کہا جانا ہے‪ ،‬گرجہ یہ تھی دیکھا گیا ہے کہ اس کے تعض طی قات میں انک ہی راوی ہونا ہے۔‬ ‫راوی کے موثق اور غیر موثق ہوئے کے اعت یار سے جدنث مسید کی نا تچ قشمیں ہیں‪ ،‬جدنث ح‬ ‫صیح‪ ،‬جدنث حسن‪ ،‬جدنث‬ ‫موثق‪ ،‬جدنث فوی‪ ،‬جدنث ضعیف۔‬

‫جدنث ح‬ ‫صیح‪:‬‬ ‫اس جدنث کو کہا جانا ہے کہ حس کے نمام راوثوں میں جدنث ت قل کرئے کی شرائط اعلی معیار ئر نانی جانی ہوں‪ ،‬ت قل‬ ‫جدنث کی شرائط میں سے راوی کا شیعہ ان یا عشری اور عادل ہونا ئے جد ضروری ہے‪ ،‬اور اس کے ساتھ ساتھ وہ اس‬ ‫قانل تھی ہو کہ روانات کو ح‬ ‫ے۔‬ ‫صیح طرح محقوظ کر سک‬

‫‪70‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جدنث حسن‪:‬‬ ‫وہ جدنث کہ حس کے اکیر راوثوں میں شرائط ت قل جدنث نانی جانی ہیں لیکن ان میں سے تعض کی عدالت کی ضراحت یہ‬ ‫ہونی ہو۔‬

‫جدنث موثق‪:‬‬ ‫ے ہیں جو شیعہ‬ ‫وہ جدنث کہ حس کے نمام راوثوں میں شرائط ت قل جدنث نانی جانی ہیں لیکن ان میں سے تعض راوی ا نس‬ ‫ے موثق ہوئے کو علماء شیعہ ئے فیول کیا ہے۔‬ ‫ان یا عشری ثو پہیں لیکن ا نک‬

‫جدنث فوی‪:‬‬ ‫ے ہیں کہ جن کی یہ‬ ‫وہ جدنث کہ حس کے نمام راوثوں میں شرائط ت قل جدنث نانی جانی ہیں‪ ،‬لیکن ان میں سے تعض ا نس‬ ‫مدح ہونی ہے اور یہ ہی مذمت۔‬

‫جدنث ضعیف‪:‬‬ ‫وہ جدنث کے حس کے راوی مجہول‪ ،‬غیر معبیر‪ ،‬غیر موثق ہوں‪ ،‬اور جو جدنث مذکورہ اقسام میں سے یہ ہو اسے جدنث‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ضعیف کہئ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫اگر ضعیف جدنث کے مضمون کو علماء ئے فیول کیا ہو ثو اسے مفیول‪ ،‬اور اگر رد کردنا ہو ثو اسے مردود کہئ‬ ‫سید جدنث کے اعت یار سے جدنث مسید کی دو قشمیں ہیں‪ ،‬جدنث مصرح‪ ،‬جدنث مضمر۔‬

‫‪71‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جدنث مصرح‪:‬‬ ‫وہ جدنث کہ حس میں راوی ئے ضراحت کے ساتھ معصوم کا نام ن یان کیا ہو۔‬

‫جدنث مضمر‪:‬‬ ‫وہ جدنث کہ حس میں راوی ئے ضراحت کے ساتھ امام کا نام یہ لیا ہو نلکہ ضمیر کے ذرتعہ معصوم کی طرف اسارہ کرے‪،‬‬ ‫ے‪ :‬سمعته یقول۔‬ ‫میال کہ‬

‫علم رجال‬ ‫ٓ‬ ‫علم رجال وہ علم ہے کہ حس میں راوثوں کے ان جاالت سے اگاہی جاصل ہونی ہے کہ جن کی پت یاد ئر ان کی ت قل کردہ‬ ‫جدنث مفیول نا مردود قرار نانی ہے‪ ،‬جاہے روانت کرئے والے مرد ہوں نا عورت‪ ،‬لہذا اس علم کو علم رجال مجازا کہا جانا‬ ‫ہے حس سے مراد وہ مرد اور عوربیں ہیں کہ جن کی سحصنت کامل ہو‪ ،‬اس علم کے ذنل میں محقق شیخ الکرناسی ئے‬ ‫میدرجہ ذنل عیوانات ئر تجث قرمانی ہے‪:‬‬ ‫راوی کا تعین‪ ،‬وناقت کے اعت یار سے راوی کے جاالت‪ ،‬راوی کے اعی قادات‪ ،‬راوثوں کے درمیان راوی کی‬ ‫ح بییت‪ ،‬ان اقراد کا تعین جن سے راوی ئے روانت کو ت قل کیا ہے‪ ،‬جدنث ت قل کرئے کی اہلیت‪ ،‬چرح و تعدنل‪ ،‬مدح‬ ‫و قدح میں دقت‪ ،‬چرح و تعدنل کے اصول۔‬

‫‪72‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جدنث کے ت قل کرئے کی اہلیت‪:‬‬ ‫جدنث کا ت قل کرنا انک پہت ئڑی ذمہ داری ہے کہ حس کے ذرتعہ احکام‪ ،‬عقاند‪ ،‬اجالق اور نار تخ کو ت قل کیا جانا ہے‪ ،‬اگر‬ ‫ے کجھ شرائط ہیں جن کا ثورا‬ ‫کسی مقام ئر کمی نا زنادنی ہو جائے ثو ثوری نار تخ ئر اس کا ائر ناقی رہ جانا ہے لہذا راوی کے لئ‬ ‫ہونا ضروری ہے‪:‬‬ ‫(الف) راوی عاقل ہو۔‬ ‫(ب) راوی رس ید ہو تعنی اس میں قکری یگتخپ اور ن یداری نانی جائے۔‬ ‫(ج) راوی‪ ،‬روانت کے ت قل کرئے میں امین ہو۔‬ ‫ے روانت کا لکھیا نا اسے ح فظ کرنا ممکن ہو۔‬ ‫(د) راوی کے لئ‬

‫چرح و تعدنل‪:‬‬

‫علم رجال میں چرح وتعدنل انک اہم موصوع ہے حس کی پت یاد ئر نا ثو راوی کو عادل جان کر اس کی روانات کو فیول نا تھر‬ ‫اسے قاسق قرار دنکر اس کی روانت کو رد کر دنا جانا ہے لہذا اگر از لجاظ صقات‪ ،‬راوی کی مدح کی جائے ثو اسے تعدنل اور اگر‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬چرح وتعدنل عییت پہیں نلکہ انک مشروع عمل ہے حس کی مشروعیت ای ٔہ‬ ‫مذمت کی جائے ثو اسے تحر تح کہئ‬ ‫ان جاءکم فاسق بنبأ فتبینوا (ححرات‪ )۲ :‬سے نانت ہونی ہے‪ ،‬جداوند عالم قرمانا ہے اگر کونی قاسق ی مھارے ناس خیر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫لے کر ئاے ثو یم اس خیر کی تحفیق کرلو لہذا اس ای ٔہ میارکہ کی روشنی میں راوی کے کاذب نا صادق ہوئے کی تحفیق کرنا‬ ‫جائز ہی پہیں نلکہ انک وجونی امر ہے۔‬ ‫علم رجال میں مروجہ القاظ چرح و تعدنل کو ہم پہاں اجمال کے ساتھ ن یان کرئے ہیں۔‬

‫‪73‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫القاظ تعدنل‪:‬‬ ‫س‬ ‫م ت‬ ‫ج‬ ‫عدل‪ ،‬تفہ‪ ،‬عین‪ ،‬بیت‪ ،‬سدند‪ ،‬حجت‪ ،‬وجہ‪ ،‬لیل‪ ،‬معتمد‪ ،‬س فیم‪ ،‬صدوق‪ ،‬می قدم‪ ،‬لیم‪ ،‬خیر‪ ،‬ع ظیم القدر‪ ،‬الناس یہ‪ ،‬مسکون‬ ‫النہ‪ ،‬من اصجان یا‪ ،‬من جواص االمام‪ ،‬حسن الظرتفہ‪ ،‬تقی الجدنث‪ ،‬ح‬ ‫صیح الجدنث۔‬

‫القاظ چرح‪:‬‬ ‫ی‬ ‫کذاب‪ ،‬عال‪ ،‬الخیر فنہ‪ ،‬ضعیف نا ضعیف الجدنث‪ ،‬قاسد المذہب‪ ،‬م ھم قی دنیہ‪ ،‬مض ظرب نا مض ظرب االمر‪ ،‬مج یلط‪ ،‬ال‬ ‫ٔ‬ ‫نلیقت النہ‪ ،‬عمز علنہ‪ ،‬ال تعیا یہ‪ ،‬نصیع الجدنث نا وصاع الجدنث‪ ،‬لم نکن نالمرضی‪ ،‬پیساہل قی روانیہ عن غیر الیفہ‪ ،‬تعرف و‬ ‫م‬ ‫ن یکر‪ ،‬امرہ ل بیس‪ ،‬ال تعتمد علنہ‪ ،‬میروک قی تفشہ نا میروک الجدنث‪ ،‬مرت فع القول‪ ،‬جدنیہ لیس نالیقی‪ ،‬قی جدنیہ تعض السیء‪،‬‬ ‫مجہول۔‬

‫علم ناص یل‬ ‫علم ناصیل جدنث وہ علم ہے کہ حس کے ذرتعہ صدور جدنث کے اسیاب و عوامل کو کسف کیا جانا ہے‪ ،‬اس ناب میں‬ ‫درج ذنل امور ئر روشنی ڈالی گنی ہے‪:‬‬ ‫انک جدنث کے مج یلف طرق سے وارد ہوئے کے اسیاب‪،‬جدنث میں تحرتف کے اسیاب‪ ،‬ندعت اور اس کی‬ ‫اقسام‪ ،‬علو و نصب‪ ،‬صدور جدنث کے اسیاب‪ ،‬صدور جدنث کا وقت اور مکان‪ ،‬وہ اقراد کہ جن کو اجادنث لکھوانی گئیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫اس نات کا ایکساف کہ انا جدنث مکمل طور ئر ت قل کی گنی ہے نا نافص‪ ،‬نا تھر ضرف معنی جدنث کو ن یان کیا گیا ہے۔‬

‫‪74‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫انک جدنث کے مبعدد طرق‪:‬‬

‫ع‬ ‫اجادنث معصومین لیہم السالم میں پہت ساری جدنئیں انسی ہیں کہ جو مج یلف راوثوں سے مج یلف موا فع میں وارد ہونی‬ ‫ے ہوئے ہیں‪ ،‬اگر مضمون و القاظ انک ہوں اور جدنث‬ ‫ہیں جن کا کیھی ضرف مضمون انک ہونا ثو کیھی القاظ تھی انک حیس‬ ‫مج یلف طرق سے ت قل ہونی ہو ثو اسکی میدرجہ ذہل وجوہات ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ معصوم ئے اس روانت کو کسی عمومی مقام ئر ارساد قرمانا حس کی وجہ سے اس روانت کو مج یلف اصجاب ئے ت قل‬ ‫کیا۔‬ ‫‪۶‬۔ جدنث کا موصوع معصوم علنہ السالم کی جدمت میں اہم تھا لہذا امام ئے اس جدنث کو مج یلف مقامات ئر ن یان‬ ‫قرمانا۔‬ ‫ے جدنث کسا ء کو ئرکت اور دنگر فواند کے پیش ب ظر‬ ‫‪۰‬۔ تعض اوقات اعادہ کی بیت سے اجادنث کو نارہا ن یان کیا جانا ہے حیس‬ ‫دہرانا جانا ہے۔‬ ‫لیکن اگر انک ہی مضمون‪ ،‬مج یلف القاظ میں مجلیف راوثوں سے ت قل ہو ثو اس کی تھی بین وجوہات ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ہو سکیا ہے کہ ضرورت و جاالت کے پیش ب ظر راوی ئے مضمون روانت کو حمیصر طور ئر نا ضرف معنی جدنث کو ن یان‬ ‫کیا ہو۔‬ ‫ے اس کا تحرئر نا ح فظ کرنا ممکن یہ ہو ثو اس مقام ئر‬ ‫‪۶‬۔ اگر روانت کے طوالنی ہوئے نا کسی اور وجہ سے راوی کے لئ‬ ‫راونان جدنث مضمون اور معنی روانت کو ت قل کرئے ہیں حس کی وجہ سے انک ہی مضمون مج یلف راوثوں سے مج یلف‬ ‫القاظ میں ن یان ہونا ہے۔‬ ‫ع‬ ‫ے ہوئے معصومین لیہم السالم انک ہی روانت کو مجلیف القاظ‬ ‫‪۰‬۔ تعض اوقات سانل کی اشیعداد اور سوال کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے حس کی وجہ سے انک ہی مضمون مج یلف القاظ میں وارد ہونا ہے۔‬ ‫میں مج یلف مقامات ئر ن یان قرمائے ت ھ‬ ‫‪75‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علم نصییف‬

‫علم نصییف کے ذرتعہ کیب اجادنث کے اجوال کی معرقت جاصل ہونی ہے‪ ،‬اس علم کے ذنل میں میدرجہ ذنل‬ ‫عیوانات کو پیش کیا گیا ہے‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫کیاب کی نسنت مولف کی طرف‪ ،‬کیاب کی ححیت‪ ،‬نصییف سدہ کیاب کی روانات کی سید ئر تجث‪ ،‬جدنث کی کیاب کو‬ ‫اصول نصییف ئر ئرکھیا‪ ،‬کیاب کے مج یلف نسجوں نا تھر اس میں تحرتف ئر تحفیق و ئررسی کرنا۔‬ ‫ے مصتف ئے اس نات کی طرف قاربین کی ثوجہ کو میذول قرمانا کہ کیب اجادنث‬ ‫اس مقام ئر سب سے پہل‬ ‫ے جائے والے القاظ جار ہیں‪ ،‬تعض کیب جدنث کو کیاب تعض کو اصل‪ ،‬اور تعض دنگر کو ثوادر نا‬ ‫ے اشیعمال کئ‬ ‫کے لئ‬ ‫ت‬ ‫مصتف ( فیح ثون) کہا جانا ہے‪ ،‬جن کے معنی انک دوشرے سے مج یلف ہیں‪ ،‬اور علوم جدنث میں ان کے قرق کو‬ ‫جان یا تھی ئے جد ضروری ہے‪ ،‬جونکہ علم رجال میں حب کسی صجانی کی سحصنت ئر تحفیق کی جانی ہے ثو یہ کہا جانا ہے کہ‬ ‫ے‪ ،‬اور حسن کے ناس اصل تھی‪ ،‬لہذا ہم اس مقام ئر اجمال کے ساتھ ان کی تعرتف پیش کرئے‬ ‫میال زند کے ناس ثوادر تھ‬ ‫ہیں‪:‬‬ ‫کیاب‪:‬‬ ‫اس کا اطالق نمام قشم کی کیب اجادنث ئر ہونا ہے لہذا اصل‪ ،‬ثوادر اور مصتف کو تھی کیاب کہا جانا ہے۔‬

‫اصل‪:‬‬ ‫اس جدنث کی کیاب کو اصل کہا جانا ہے کہ حس میں ت غیر کسی واسظہ کے روانت کو ت قل کیا گیا ہو‪ ،‬تعنی راوی جود معصوم‬ ‫سے جدنث کو شن کر اسے کیانی سکل دے دے۔‬ ‫‪76‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ثوادر‪:‬‬ ‫اس جدنث کی کیاب کو کہا جانا ہے کہ حس میں مج یلف موصوعات ئر اجادنث حمع ہونی ہوں‪ ،‬اور جن میں اجادنث کی از‬ ‫ت‬ ‫جیث موصوع فشیم ن یدی یہ کی گنی ہو۔‬

‫مصتف‪:‬‬ ‫ے جابیں۔‬ ‫ے ہیں حس میں ئر جالف ثوادر نمام اجادنث‪ ،‬موصوع ن یدی کے ساتھ پیش کئ‬ ‫اس جدنث کی کیاب کو کہئ‬

‫ٔ‬ ‫کیاب کی نسنت مولف کی طرف‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫یہ انک ندپ ہی امر ہے کہ نمام کیب اجادنث کو ان کے مصتف نا مولف کی وجہ سے معبیر قرار پہیں دنا جاسکیا‪ ،‬نلکہ ان‬ ‫میں سے ہر انک جدنث ئر چھان بین اور تحفیق کرنا ضروری ہے ناکہ ان کی ححیت کا ہمیں ت فین جاصل ہوجائے‪ ،‬لہذا‬ ‫ک‬ ‫مصتف محیرم ئے اس مقام ئر ان نمام کیب شیعہ کا نذکرہ کیا ہے جن کی روانئیں سید و مین کے اعت یار سے ححیت ر ھنی‬ ‫ہیں۔‬

‫کیاب کی ححیت‪:‬‬ ‫ے ح ید امور شرط ہیں‪:‬‬ ‫ے کے لئ‬ ‫کسی تھی کیاب کو موثق قرار د بئ‬ ‫ٔ‬ ‫‪۰‬۔ مولف کا موثق اور معبیر ہونا۔‬ ‫ٔ‬ ‫ے‬ ‫‪۶‬۔ کیاب میں نالیف کے زمایہ کا لکھا جانا‪ ،‬ناکہ تعد میں اگر مولف گمراہ ہو جائے ثومعلوم ہو کہ کیاب گمراہی سے پہ ل‬ ‫لکھی گنی ہے۔‬

‫‪77‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۰‬۔ ثوبیق کرئے واال کیاب کی مدح نا مذمت میں دفیق ہو‪ ،‬اور ساری کیاب کو دقت کے ساتھ ئڑھ کر ابنی رائے کا اظہار‬ ‫کرے۔‬

‫علم نار تخ جدنث‬ ‫ٓ‬ ‫یہ وہ علم ہے کہ حس میں جدنث کے وجود میں ئاے کے وقت اور اس کی پیشرقت ئر گق یگو کی جانی ہے‪ ،‬لہذا عالمہ شیخ‬ ‫الکرناسی ئے اس عیوان کے تجت‪ ،‬علم درانت‪ ،‬علم رجال‪ ،‬علم روانت‪ ،‬علم ناصیل‪ ،‬علم نار تخ نصییف اور علم نار تخ‬ ‫جدنث کی ان یدا اور ان علوم ئر لکھی جائے والی کیب کو ن یان کیا ہے۔‬

‫علم درانت کی ان یداء‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ے انان ابن تعلب (جو‬ ‫اس علم کی ان یدا رسول اسالم و ای مہ لیہم السالم سے ہونی اور علی ال طاہر اس علم ئر سب سے پہل‬ ‫ع‬ ‫ے) ئے کیاب لکھی حس کا نام "کتاب االصول فی‬ ‫امام سجاد‪ ،‬امام ناقر اور امام صادق لیہم السالم کے صجانی تھ‬ ‫الروایة علی مذھب الشیعة" تھا۔‬

‫علم رجال کی ان یداء‪:‬‬ ‫ع‬ ‫پیسک علم رجال کے موجد رسول اسالم اور ای مہ اھل بیت لیہم السالم ہیں‪ ،‬مسلم ابن انی جنہ ت قل قرمائے ہیں کہ انک‬ ‫ٓ‬ ‫ے کی جواہش کی‪ ،‬امام علنہ‬ ‫دن میں امام جعقر صادق علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہوا اور اپ سے جدنث شرتف شیئ‬ ‫ٔ‬ ‫السالم ئے قرمانا کہ انان بن تعلب کو نالو کیونکہ اتھوں ئے مجھ سے پ ہت ساری اجادنث کو سیا ہے لہذا ان کی مجھ سے‬ ‫میشوب کردہ روانت کو یم ت قل کرو۔‬ ‫اس جدنث شرتف سے واصح ہو جانا ہے کہ رجال جدنث کا تعین اور ان کو موثق قرار دن یا انک انسا اہم کام ت ھا‬ ‫ع‬ ‫کہ حس کی پت یاد جود معصومین لیہم السالم ئے رکھی‪ ،‬اور دوشری طرف جود جدنث سلسلۃ الذھب (کہ حس کی سید کو امام‬

‫‪78‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے نانا سے رسول جدا نک اور رسول جدا سے خیرنیل کے ذرتعہ ذات ناری نک پہیجانا ہے) سے‬ ‫رصا(ع) ئے ا بئ‬ ‫تھی واصح ہو جانا ہے کہ علم رجال کے موجد رسول اسالم اور ای مہ اھل بیت ہیں۔‬ ‫ے جو رسول اسالم و موال علی‬ ‫ے والے حصرت عت ید ہللا بن انی را فع تھ‬ ‫ے علم رجال ئر کیاب لکھئ‬ ‫سب سے پہل‬ ‫ے اور جیھوں ئے کیاب "تسمیة من شھد من الصحابة مع امیر المومنین" لکھی‪ ،‬اس کیاب میں‬ ‫کے صجانی تھ‬ ‫ے اور اتھوں ئے امام کی معیت‬ ‫ے ہیں جو جق تعنی امام علی علنہ السالم کے ساتھ تھ‬ ‫ے گئ‬ ‫ان اقراد کے اسامی درج کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میں شہادت نانی‪ ،‬تھر عید ہللا ابن ح یلۃ الکیانی (میوقی ‪۶۰۰‬ھ نا ‪۶۶۰‬ھ) ئے کیاب الرجال لکھی‪ ،‬تھر اہشنہ اہشنہ مجلیف‬ ‫علماء اسالم ئے پہت ساری کیابیں اس فن میں تحرئر قرمابیں جتمیں سے درج ذنل کیاثوں کو رجال کی پت یادی کیابیں‬ ‫جانا جانا ہے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ رجال کسی‪ :‬اس کیاب کے مصتف دمحم بن عمر الکسی ہیں جو تقرن یا ‪۶۹۹‬ھ میں ن یدا ہوئے اور ‪۰۰۲‬ھ میں وقات نانی۔‬ ‫‪۶‬۔ رجال تجاسی‪ :‬اس کیاب کے مصتف اجمد بن علی الیجاسی ہیں جو ‪۰۳۶‬ھ میں ن یدا ہوئے اور ‪۳۹۹‬ھ میں وقات نانی۔‬ ‫‪۰‬۔ رجال طوسی‪ :‬اس کیاب کے مصتف دمحم بن حسن الظوسی ہیں جو ‪۰۸۹‬ھ میں ن یدا ہوئے اور ‪۳۲۹‬ھ میں وقات نانی۔‬ ‫‪۳‬۔ رجال ئرقی‪ :‬اس کیاب کے مصتف اجمد بن دمحم میوقی ‪۶۳۳‬ھ ہیں۔‪۹‬۔ رجال ابن عصائری‪ :‬اس کیاب کے مصتف‬ ‫اجمد بن حسین ہیں جو تقرن یا ‪۳۶۹‬ھ کو وقات نائے‪ ،‬یہ دو کیابیں م ققود ہو جکی ہیں۔‬

‫علم ناصیل کی ان یداء‪:‬‬ ‫حیسا کہ ہم ئے عرض کیا تھا کہ علم ناصیل میں جدنث کے صادر ہوئے کے اسیاب و عوامل ئر گق یگو کی جانی ہے اور جونکہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫یہ علم‪ ،‬انات کے اسیاب اور سان ئزول کی مان ید ہے‪ ،‬لہذا حس طرح انت کی وجہ ئزول کو رسول اسالم کے زمائے میں‬ ‫ن یان کیا جانا تھا اسی طرح اسی زمائے سے اجادنث کے صادر ہوئے کی وجوہات کو ن یان کیا جائے لگا۔‬

‫‪79‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علم نصییف کی ان یداء‪:‬‬ ‫ع‬ ‫اس علم میں ان کیاثوں کی تحفیق و ئررسی کی جانی ہے جن میں معصومین لیہم السالم کی اجادنث وارد ہونی ہیں‪ ،‬اور یہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫دیکھا جانا ہے کہ انا وہ کیاب محموغی طور ئر ححیت ر ھنی ہے نا پہیں؟ انا کیاب کی نسنت کانب کی طرف درست ہے نا‬ ‫پہیں؟ اور اسی طرح مج یلف زاوثوں سے جدنث کی کیاب کو ئرکھا جا نا ہے لہذا یہ کہا جا سکیا ہے کہ ندوبن کیاب کے ساتھ‬ ‫ساتھ علم نصییف کی تھی ان یدا ہونی۔‬

‫علم نار تخ جدنث کی ان یداء‪:‬‬ ‫اس علم میں جدنث شرتف کے معصوم سے صادر ہوئے کے وقت اور مکان کو معین کیا جانا ہے‪ ،‬اس علم میں‬ ‫مست قل طور ئر ثو کونی کیاب پہیں لکھی گنی لیکن صجایہ و اکائر علماء شیعہ ئے پہت ساری انسی روانات ت قل کی ہیں جن‬ ‫میں جدنث کے ت قل کرئے کے وقت اور مکان کو معین کیا گیا ہے۔‬

‫علم روانت کی ان یداء‪:‬‬ ‫یہ علم رسول اسالم کے مبعوث یہ رسالت ہوئے سے شروع ہو کر اہل شنت کے پہاں وقات رسول ہللا ئر جیم ہوا‬ ‫ح یکہ اہل نسیع کے پہاں یہ علم امام زمایہ علنہ السالم کی عییت کیری نک جاری رہا۔‬ ‫ت قل جدنث اور ندوبن جدنث کا جکم جود رسول اسالم ئے قرمانا تھا لہذا امام علی اور حصرت زہراعلیہما السالم ئے سب ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے جدنث کی کیاب لکھی‪ ،‬اج تھی جیھیں کیاب ع‬ ‫صیف ٔہ قاطمہ سے ناد کیا جاناہے۔‬ ‫اور‬ ‫لی‬ ‫پہ ل‬ ‫ح‬

‫‪80‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علم روانت‬

‫ٓ‬ ‫ے ہے‪ ،‬علم روانت میں اداب روانت‪،‬‬ ‫انک سحص سے دوشرے سحص نک جدنث کے میی قل کرئے کو روانت کرنا کہئ‬ ‫اشیجیاب روانت‪ ،‬مروی عنہ ئر گق یگو کی جانی ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫اداب روانت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫اداب روانت سے مراد وہ اداب ہیں کہ جن سے انک راوی کا مزبن ہونا ضروری ہے‪ ،‬میال انک راوی کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ضروی ہے کہ وہ مومن‪ ،‬عالم‪ ،‬نا اجالق‪ ،‬رس ید‪ ،‬عادل‪ ،‬اور نا عمل ہو‪ ،‬اس مقام ئر مصتف ئے ‪ ۶۰‬اداب روانت کو ت قل‬ ‫قرمانا ہے۔‬

‫مروی عنہ‪:‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اہل‬ ‫وہ معصوم کہ جن سے روانت کو ت قل کیا جانا ہے اتھیں مروی عنہ اور روانت ت قل کرئے والے کو راوی کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫نسیع کے پہاں نمام روانئیں ضرف چھاردہ معصومین لیہم السالم سے ت قل کی جانی ہیں کیونکہ پ ہی وہ اقراد ہیں جو قران‬ ‫ع‬ ‫ے‪ ،‬اس مقام ئر مصتف ئے معصومین لیہم السالم کے اسامی‪ ،‬القاب‪ ،‬اور‬ ‫کی روشنی میں عضمت کے درجے ئر قائز تھ‬ ‫ان مج یلف ک بییوں کو ن یان قرمانا ہے جو اجادنث میں وارد ہونی ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫کیاب "الحسین فی السنۃ "کے اچر میں مجدث شیخ کرناسی ئے امام حسین (ع) کی سان میں وارد سدہ‬ ‫ٓ‬ ‫ح ید روانات کو بظور ی مویہ و نیرک پیش کیا ہے اور دنگر نمام اجادنث کو تعد میں ئاے ولی جلدوں ئر موکول قرمانا ہے۔‬

‫‪81‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫حفیقت ثو یہ ہے کہ اگر ہم حصرت امام حسین علنہ السالم کے جوالے سے حصرت رسول اسالم کے‬ ‫ٓ‬ ‫ع تح‬ ‫ارسادات و قرمودات سے اگاہی جاصل کرنا جاہیں اور اس موصوع ئر لمی و فیقی م طالب جان یا جاہیں ثو دائرۃ المعارف‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں اور اس سلسلہ میں‬ ‫الحس بینہ نالیف انت ہللا دمحم صادق کرناسی کا م طالعہ کرکے ان یا م فصود نائے میں کامیاب ہو سکئ‬ ‫کیاب "الحسین فی السنة " پہیربن راہتما نانت ہو سکنی ہے۔‬

‫‪82‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم‬ ‫جلد اول‬ ‫کیاب "سیرت امام حسین علنہ السالم"دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد (جو ‪ ۳۰۶‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۹‬ء کو لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۶‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪83‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪84‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم ( ٔ‬ ‫صہ اول)‬ ‫ح‬

‫ے کونی یہ کونی سحص ی موی ٔہ عمل ہونا ہے کہ حس کے طرز عمل کو ان یائے ہوئے وہ کمال کی میزلوں کو طے‬ ‫ہر انسان کے لئ‬ ‫کرنا ہے‪ ،‬لیکن جونکہ کامل سحصیات پہت کم ہیں لہذا کجھ ہی مدت کے تعد انسان کو یہ احساس ہوئے لگیا ہے کہ اب‬ ‫ے وہ کامل شمجھ رہا تھا وہ کامل ہی پہیں تھا نلکہ جود اسے کسی کامل سحص کی نالش ہے‪ ،‬لہذا اس‬ ‫نک وہ سحص کہ حس‬ ‫ے نا کمال اقراد کو جلق قرمانا کہ جن کے‬ ‫ے ہوئے کل کمال تعنی ذات اجدنت ئے کجھ ا نس‬ ‫کمال طلنی کی ضرورت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫کمال کی معرقت ضرف اسی کو جاصل ہے۔‬ ‫ع‬ ‫چہان ہشنی میں کامل ئربن اقراد معصومین لیہم الصلوۃ و السالم ہیں جن کی زندگی کو ہللا تعالی ئے امت مسلمہ‬ ‫ے ی موی ٔہ عمل قرار دنا ہے‪:‬‬ ‫کے لئ‬ ‫لقد کان لکم فی رسول ہللا اسوة حسنة لمن کان یرجو ہللا و الیوم االٓخرة و ذکر ہللا کثیرااے مسلماثو! یم میں‬ ‫ے ہوئے ہے اور‬ ‫ے رسول کی زندگی میں پہیربن ی مویہ عمل ہے جو ہللا اور آچرت سے امیدبں وانشنہ کئ‬ ‫سے اس کے لئ‬ ‫ہللا کو پہت زنادہ ناد کرنا ہے (احزب‪،)۱۲‬یہ وہ اقراد ہیں کہ جو ہر قشم کے رحس سے دور ہیں‪:‬‬ ‫انما یرید ہللا لیذھب عنکم الرجس اھل البیت و یطھرکم تطھیرا نس ہللا کا ارادہ یہ ہے کہ اے اہلییت یم سے‬ ‫ے کا جق ہے ( اچزاب‪ )۰۰ :‬اور ان میں ہر انک قرد‬ ‫ے جو ناک و ناکیزہ ر کھئ‬ ‫ے اور اس طرح ناک و ناکیزہ ر کھ‬ ‫ہر ئرانی کو دور ر ک ھ‬ ‫دمحم ہے‪:‬‬ ‫قال امامنا الصادق علیہ السالم اولنا محمد و اوسطنا محمد و آخرنا محمد امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫ہم میں سے پہال تھی دمحم ہے اوسط تھی دمحم ہے اور اچری تھی دمحم ہے‪(،‬تجار االثوار جلد ‪ ۶۹‬ص ف ٔجہ ‪ ۰۲۰‬ناب ایہ چری ھم‬ ‫‪85‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫من ا فصل ما چری لرسول ہللا‪ ،‬جدنث ی میر ‪ ،)۶۰‬لہذا اگر ان ذوات مقدسہ کی نیروی کی جائے ثو انسان کو دن یا و اچرت کی‬ ‫سعادبیں جاصل ہونی ہیں۔‬ ‫حصرت اثو عید ہللا الحسین علنہ السالم اپہیں کامل ئربن اقراد میں سے انک ہیں جن کے نارے میں رسول گرامی قدر‬ ‫ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ان الحسین مصباح ھدی و سفینة نجاة‪ ،‬و اما ُم خیر و یمن و عز و فخر‪ ،‬و بح ُر علم و ُذخر(عیون اح یار‬ ‫الرصا جلد ا ص ‪)۲۶‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اگر اتحصرت (ص) کی اس جدنث میارکہ میں عور و قکر کیا جائے ثو میدرجہ ذنل مق ید نکات واصح و اسکار ہوئے ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم ہدانت کا چراغ ہیں‪ ،‬انسا چراغ کہ حس کے ثور سے ہر تھیکا ہوا ہدانت کی راہ ئر گامزن ہو سکیا‬ ‫م ت‬ ‫لم ت‬ ‫ہے‪ ،‬اگر حصرت علی اھدنا الصراط ا س فیم میں ضراط س فیم ہیں ثو امام حسین علنہ السالم چراغ ہدانت ہیں لہذا جو تھی اس‬ ‫چراغ ہدانت سے اشت قادہ کرئے ہوئے ضراط علی ئر گامزن ہو گا ثو اسے یہ راسنہ اس ع ظیم مرنیہ نک پہیجائے گا کہ حس‬ ‫کا نام شہادت ہے پ ہی وجہ ہے کہ حصور(ص) ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫من مات علی حب آل محمد مات شھیدا (جو ال دمحم کی حمیت ئر مرا و شہید مرا)۔‬ ‫‪۶‬۔ اس جدنث شرتف میں دوشرا یکنہ حصرت امام حسین علنہ السالم کا کشنی تجات سے تعبیر ہونا ہے‪ ،‬کشنی کا کام یہ‬ ‫ہے کہ وہ انسان کو انک م فصد سے دوشرے م فصد نک پہیجانی ہے‪ ،‬لیکن دبیوی کست یاں کیھی کیھی م فصد نک پہیجانا ثو‬ ‫ے حصور (ص)ئے قرمانا کہ حسین کشنی تجات ہیں تعنی جو اس میں سوار ہوا وہ ہر‬ ‫کجا نلکہ انسان کو عرق کر دبنی ہیں اسی لئ‬ ‫ے گا۔‬ ‫نالطم و جوادث زمایہ سے تجات نا کر م فصد نک ضرور پہیچ‬ ‫‪۰‬۔ اس جدنث میارکہ میں پیشرا یکنہ امام حسین علنہ السالم کا صاحب خیر و ئرکت ‪ ،‬صاحب عزت و افیجار اور درنائے علم و‬ ‫ت‬ ‫ے انک فصیلی گق یگو درکار ہے‪ ،‬لیکن حصور ناک(ص) ئے فصانل‬ ‫شرمایہ ہونا ہے‪ ،‬گرجہ ان القاظ میں سے ہر انک کے لئ‬ ‫ے ہو ثو یہ جان لو‬ ‫ے ہوئے قرمانا اگر عظمت حسین کو درک کرنا جا ہئ‬ ‫امام حسین علنہ السالم کے شمیدر کو انک کوزے میں شم بیئ‬ ‫کہ حسین درنائے علم و شرمایہ ہیں۔‬

‫‪86‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫حصور(ص) کی تعرتف کے م طاثق جونکہ امام حسین ہر قشم کا شرمایہ ہیں وہ تھی انسا شرمایہ کہ جو تحر ئے کراں کی‬ ‫ع‬ ‫مان ید ہے ثو جو تھی اس کشنی تجات میں سوار ہو گا وہ تقت یا اس ع ظیم لمی اور ہر قشم کے شرمایہ سے پہرمید ہوگا‪ ،‬انسا پہرہ کہ‬ ‫حس کی کونی ابیہاء پہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫اسی تحر ئےکراں سے اشت قادہ کی زندہ ئربن میال حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق‬ ‫ے حسینی شرمایہ سے انسا تھرثور اشت قادہ کیا‬ ‫ے ہوئے چراغ حسینی کے نل‬ ‫الکرناسی ہیں‪ ،‬کہ جیہوں ئے ضراط علی ئر قایم ر ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫کہ اج وہ امام حسین سے میشوب حسینی دائرۃ المعارف کی ‪ ۳۹۹‬سے زاند کیاثوں کے مصتف ہوئے کی ح بییت سے‬ ‫پ‬ ‫ے حصور (ص) کی کم از کم دو نابیں ثو عین الی فین کی میزل نک ہیچ جانی ہیں کہ‬ ‫جائے جائے ہیں‪ ،‬حس سے ہمارے لئ‬ ‫پیسک امام حسین علنہ السالم درنائے علم و شرمایہ ہیں اور جو تھی ان سے میسلک ہونا ہے وہ علم و کمال میں ممیاز و میقرد‬ ‫سحصنت کا جامل ہو جانا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے تحر‬ ‫جونکہ مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کی دلی ی میا ہے کہ مومئین ت ھی حصرت اثو عید ہللا الحسین حیس‬ ‫ے اپہوں ئے حسینی دائرۃ المعاف کی دس جلدوں کو سیرت امام حسین علنہ‬ ‫ئے کراں سے تھرثور اشت قادہ کربں اسی لئ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم سے محصوص قرمانا ہے حس کی دو جلدبں زثور طبع سے اراسنہ ہو جکی ہیں‪ ،‬ہم اس مقام ئر کیاب السیرۃ الحس بینہ (جو‬ ‫ٓ‬ ‫‪ ۳۰۶‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۶‬عیشوی میں چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) کی جلد اول میں موجودہ تعض‬ ‫م طالب کو قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں حس میں نار تخ انسان کی ان یداء‪ ،‬نار تخ کی ندوبنی ح بییت و اہمیت‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫علم نار تخ و علم انار کا قرق‪ ،‬اسالمی نار تخ کی ان یدا‪،‬مورخ کی شرائط‪ ،‬نار تخ کی ححیت‪ ،‬سیرت کے معنی‪ ،‬عوامل نشو و نما ‪ ،‬اور‬ ‫ے عیاوبن سامل ہیں ۔‬ ‫سیرت امام حسین علنہ السالم حیس‬

‫سیرت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے سیرت امام حسین کے ن یان کرئے سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے سیرت کے معنی اسکار ہو جابیں‪:‬‬ ‫سیرت کے معانی کو ن یان قرمانا ہے ناکہ قاربین کے لئ‬ ‫‪87‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہیں اور اس سے مراد انسان کا سلوک اور اسکی طرتقت ہے اور سلوک و‬ ‫کسی تھی انسان کی نار تخ حیات کو سیرت کہئ‬ ‫طرتقت سے مراد انسان کے افعال و افوال ہیں‪ ،‬لہذا علم سیرت میں کسی تھی سحص نا امت کے افوال و افعال و‬ ‫عادات ئر گق یگو کی جانی ہے‪ ،‬اور رسول اسالم کی جدنث کے م طاثق علم سیرت کی چھ اصیاف ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ فن اسماء‪ ،۶ ،‬فن حصانص‪ ،۰ ،‬فن فصانل‪۳ ،‬۔ فن سمانل‪۹ ،‬۔ فن معازی(ح یگ)‪۲ ،‬۔ فن والدت و تعیت۔‬ ‫علم نار تخ نا علم سیرت سے سے پیشمار فواند جاصل ہوئے ہیں جن میں غیرت و موعظہ‪ ،‬ایکساقات‪ ،‬مشکالت کا جل‪،‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬مصتف ئے السیرۃ الحس بینہ میں امام حسین علنہ السالم کے افوال‪،‬‬ ‫ے فواند نماناں حت بییت ر کھئ‬ ‫تحریہ‪ ،‬اخیراع حیس‬ ‫افعال‪ ،‬اور ان وافعات کی طرف روشنی ڈالی ہے جن کا تعلق امام حسین علنہ السالم سے ہے۔‬

‫عوامل نشو نما‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے سیرت کے معنی ن یان کرئے کے تعد ان عوامل کا نذکرہ قرمانا ہے جو کسی تھی سیرت‬ ‫ے عظمت امام حسین علنہ السالم مزند اجاگر ہو جائے اور وہ عوامل جار‬ ‫سازی میں اہم کردار ادا کرئے ہیں ناکہ لوگوں کے لئ‬ ‫ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ورانت‪۶ ،‬۔ ئربیت‪۰ ،‬۔ جاندان‪۳ ،‬۔ اجتماع۔‬

‫ورانت‪:‬‬ ‫ا س نات میں کونی سک پہیں کہ کسی تھی انسان کے کمال میں والدبن کے حت بت یک )‪(Genetics‬ئےجد ائر انداز‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے تھانی ق یل سے قرمانا‪:‬‬ ‫ہوئے ہیں‪ ،‬اس نات ئر دلیل حصرت امیر المومئین کا وہ فول ہے کہ حس میں اپ ئے ا بئ‬ ‫ب ِ َالتَ َز َّو َج َھا فَتَلِ ُد لِ ْی ُ‬ ‫غ َال َما فَا ِرسا فَقَا َل لَہ َعقِ ْیل‪ :‬تَزَ َّو ْج ا ُ َّم البَنِ ْینَ‬ ‫ا ُ ْنظُ ْر لِ ْی ا ِ ْم َرأة قَ ْد َولَّ َدتْ َھا الفُ ُح ْولَۃُ ِمنَ العَ َر ِ‬ ‫عل‬ ‫ش َجع ِمنْ آبَائِ َھا‪ ،‬فَتَ َز َّو َج َھا (ب طل ال قمی جلد ‪ ۰‬ص‪)۰۳‬۔‬ ‫س فِ ْی ال َع َربِ اَ ْ‬ ‫ک َالبِیَّۃَ فِانَّہ لَ ْی َ‬ ‫ال ِ‬

‫‪88‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫ے سجاع قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬ح یاب ق یل‬ ‫ے انک انسا سجاع جاندان نالش کرو کہ حس سے جداند عالم مجھ‬ ‫تعنی میرے لئ‬ ‫ئے ام التئین کا تعارف کروانا جن سے ہللا تعالی حصرت امیر کو عیاس حیسا قرزند ع طا کیا۔‬ ‫ٔ‬ ‫ے قرزند دمحم جیفنہ کو جملہ کرئے کا جکم دنا اور اتھیں نامل ہوا‬ ‫اسی طرح حب ح یگ ص فین میں حصرت امیر المومئین ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ثو اپ ئے اگے ئڑھ کر قرمانا‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫لم‬ ‫ک (بیمۃ ا ییھی ص ‪ )۶۰‬تعنی یہ ی مھاری ماں کے جون کا ائر ہے حس کی وجہ سے ی مھیں نامل ہو‬ ‫ک ِع ْرق ِمنْ ا ُم َ‬ ‫اَ ْد َر َک َ‬ ‫رہا ہے۔‬ ‫مذکورہ دوثوں وافعات اس نات ئر داللت کرئے ہیں کہ کسی تھی قرزند کی سعادت و س قاوت میں والدبن کے حت بت یک‬ ‫)‪ (Genetics‬اہم کردار ادا کرئے ہیں لیکن اس کا م طلب یہ پہیں ہے کہ قرزند میں حصول کمال کی صالجیت جیم ہو‬ ‫ے سعاد ت کی راہیں ہمیشہ کھلی ہونی ہیں۔‬ ‫جائے‪ ،‬نلکہ ئربیت و ماجول کے ذرتعہ کسی تھی انسان کے لئ‬

‫ئربیت‪:‬‬ ‫ئربیت اوالد کا مرجلہ جود سازی سے شروع ہونا ہے‪ ،‬کیونکہ حب انسان جود ئربیت نافنہ یہ ہو ثو وہ اوالد کی ئربیت کرئے‬ ‫سے قاضر رہ یا ہے پ ہی وجہ ہے کہ امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ے اعمال کے‬ ‫کونوا دعاة الی انفسکم بغیر السنتکم (تجار االثوار جلد ‪ ۲۳‬ص ‪ ،)۶۰۰‬لوگوں کو زنان کے تجائے ا بئ‬ ‫ع‬ ‫ذرتعہ اچھانی کی طرف دعوت دو ‪ ،‬اور چہاں نک ئربیت کا سوال ہے ثو اس نارے میں معصومین لیہم السالم کی ئے‬ ‫سمار اجادنث موجود ہیں‪،‬جن میں اس موصوع کے ہر پہلو کو اجاگر کیا گیا ہے‪ ،‬میال امام صادق علنہ السالم اس سلسلہ میں‬ ‫قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫تجب للولد علی والدہ ثالث خصال‪ :‬اختیارہ لوالدتہ‪ ،‬و تحسین اسمہ‪ ،‬و المبالغۃ فی تادیبہ (تحف العقول‪:‬‬ ‫‪ )۰۶۶‬کسی تھی ناپ ئر اوالد کے بین حقوق واحب ہیں‪:‬‬

‫‪89‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ن یک ماں کا ابیجاب کرنا‪۶ ،‬۔ اوالد کا ن یک نام رکھیا‪۰ ،‬۔ اور انکی ئربیت میں ہمیشہ س عی و کوشش کرئے‬ ‫‪۰‬۔ اوالد کے لئ‬ ‫رہ یا۔‬ ‫ے ہیں‪ ،‬کیونکہ اگر ماں مومنہ ہو ثو‬ ‫امام علنہ السالم کی اس حمیصر جدنث شرتف میں ئربیت کے سارے اصول حمع ہو گئ‬ ‫ئربیت کا اہم مرجلہ مہیا ہو جانا ہے ساند اسی وجہ سے رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ش ِقی فی بطن امہ‪ ،‬و السعید سعید فی بطن امہ (السیرۃ الحس بینہ جلد اول ص‪ )۲۰‬سقی‪ ،‬ماں کے پییھ سے‬ ‫الشقی َ‬ ‫ے سعادت کا شنب پینی ہے۔‬ ‫سقی ہونا اور اور سعید ‪ ،‬ماں کے پییھ سے سعادت مید ہوناہے‪ ،‬لہذا مومنہ ماں قرزند کے لئ‬ ‫دوشرا مرجلہ اوالد کا ن یک نام رکھیا ہے‪ ،‬کیونکہ نام سے انسان کی سحصنت اور اس کے دبن و مذہب کی‬ ‫پہجان ہونی ہے‪ ،‬لہذا دبن اسالم میں ناکید کی گنی ہے کہ اوالد کا نیک نام رکھا جائے اور پہیر یہ ہے کہ ثومولود کو اشم‬ ‫معصوم سے موسوم کیا جائے۔‬ ‫پیشرا مرجلہ ئربیت کا ہے حس کی ان یداء جود سازی سے ہونی ہے اور ابیجاب ہمشر‪ ،‬حمیط جاثوادہ‪ ،‬والدت اور اس کے تعد ہر‬ ‫لمجہ میں اوالد ئر نگرانی کے ذ رتعہ ئربیت کے مراجل کو طے کیا جانا ہے‪ ،‬ئربیت اوالد انک انسا واحب ہے کہ حس کے‬ ‫ٓ‬ ‫نارے میں ہللا ن یارک و تعالی قران مج ید میں قرمانا ہے‪:‬‬ ‫یا ایھا الذین آمنوا قوا انفسکم و اھلیکم و نارا وقودھا الناس و الحجارة علیھا مالئکۃ غالظ شداد‬ ‫ٓ‬ ‫یومرون ( تحریم ایہ ‪)۲‬۔‬ ‫الیعصون ہللا ما امرھم و یفعلون ما ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے اہل و عیال کو چہیم کی اگ سے تجاو ‪ ،‬وہ چہیم حس کا ان یدھن انسان اور بیھر ہیں‪ ،‬اور‬ ‫اے انمان الئے والو جود کو اور ا بئ‬ ‫ے ہیں کہ حس‬ ‫ے مالنکہ مسلط ہیں جو سیگ دل اور ئے رحم ہیں‪ ،‬جو جدا کی ناقرمانی پہیں کرئے اور وہی اتجام د بئ‬ ‫اس ئر ا نس‬ ‫کا اتھیں جکم دنا جانا ہے۔‬

‫‪90‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جاندان‪ ،‬اجتماع‪:‬‬ ‫تھانی پہن‪ ،‬اجداد‪ ،‬حجا تھوتھی‪ ،‬جالہ ماموں‪ ،‬اور ان کی اوالد میں سے ہر انک قرد کسی تھی انسان کی ئربیت میں اہم کردار‬ ‫ادا کرئے ہیں‪ ،‬اسی طرح وہ معاشرہ کہ حس میں انسان ئرورش نانا ہے‪ ،‬لہذا جاندان اور معاشرہ کا ن یک ہونا بیجد ضروری‬ ‫ہے جدنث شرتف میں وارد ہوا ہے کہ‬ ‫من عاشر قوما اربعین یوما اصبح منھم (السیرۃ الحس بینہ جلد اول ص ‪ )۸۳‬جو سحص کسی فوم میں جالیس دن زندگی‬ ‫ے ضروری ہے کہ وہ ابنی‬ ‫گزارنا ہے وہ اتھیں میں سے ہو جانا ہے‪ ،‬لہذا اس جدنث شرتف کی روشنی میں انسان کے لئ‬ ‫ے سالم جاندان اور سالم معاشرہ نالش کرے ناکہ اس کی ئربیت کے زنادہ سے زنادہ مق ید ائرات نماناں ہو‬ ‫اوالد کے لئ‬ ‫سکیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ان جار عوامل کے نذکرہ کے تعد انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے قرمانا کہ مذکورہ معیارات امام حسین علنہ‬ ‫ے‪ ،‬کیونکہ امام حسین علنہ السالم کا نسب شرتف ئربن نسب تھا اسی‬ ‫السالم میں ایم اور اکمل معنی میں نائے جائے ت ھ‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫وجہ سے زنارت عاسورا میں ہم گواہی د بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جاندان میں ایکھیں کھولیں‬ ‫اشھد انک کنت نورا فی االصالب الشامخۃ و االرحام المطھرة‪ ،‬اور اپ ئے ا نس‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے رسنہ دار موجود ت ھ‬ ‫ے معصومین‪ ،‬زبیب و ام کلیوم حیسی پہئیں‪ ،‬حمزہ و عیاس و جعقر حیس‬ ‫چہاں دمحم و علی و قاطمہ و حسن حیس‬ ‫امام حسین علنہ السالم ئے مدنیہ میورہ حیسا معیوی و روجانی ماجول نانا چہاں اس دور میں ضر ف اسالم کا ثول ناال تھا‪ ،‬ان‬ ‫ٓ‬ ‫نمام کماالت کے یکجا ہو جائے سے نار تخ اسالم میں امام حسین حیسی سحصنت وجود میں انی جن کا نام جداوند عالم ئے‬ ‫ے۔‬ ‫مییجب قرمانا اور جن کی عذا رسول اسالم مہیا قرمانا کرئے ت ھ‬

‫‪91‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین مج یلف ادوار میں‪:‬‬ ‫ے کے تعد امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ ئر مج یلف ادوار میں روشنی‬ ‫دائرۃ المعارف میں مذکورہ م طالب ئر روشنی ڈا لئ‬ ‫ت‬ ‫ڈالی گنی ہے اور امام حسین علنہ السالم کی زندگی کو سات مراجل و ادوار ئر فشیم قرمانا ہے اور وہ ادوار یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم عہد بیوی میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪ ۳‬ھ سے شروع ہو کر ‪۰۰‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۶‬۔ امام حسین علنہ السالم عہد اثو نکر میں یہ دور سنہ ‪۰۰‬ھ سے شروع ہو کر سنہ ‪۰۰‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم عمر ابن خ طاب کے دور میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪۰۰‬ھ سے شروع ہو کر سنہ ‪۶۰‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۳‬۔ امام حسین علنہ السالم عتمان بن عقان کے دور میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪۶۰‬ھ سے شروع ہو کر سنہ ‪۰۲‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۹‬۔ امام حسین علنہ السالم موال علی کے دور میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪۰۲‬ھ سے شروع ہو کر سنہ ‪۳۹‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۲‬۔ امام حسین علنہ السالم دور معاویہ میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪ ۳۹‬ھ سے شروع ہوکر سنہ ‪۲۹‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۳‬۔ امام حسین علنہ السالم دور ئزند میں‪ ،‬یہ دور سنہ ‪۲۹‬ھ سے شروع ہو کر اپ کی شہادت تعنی سنہ ‪۲۰‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫ت‬ ‫اس فشیم ن یدی کے تعد مصتف ئے السیرۃ الحس بینہ کی جلد اول و دوم میں امام حسین علنہ السالم کی زندگی کو عہد بیوی کے‬ ‫ت‬ ‫ذنل میں ‪ ۰‬مراجل ئر فشیم کیا ہے‪ ،‬یہ مراجل امام حسین کی والدت کے ق یل سے شروع ہو کر سنہ ‪۰۰‬ھ (وقات رسول‬ ‫ت‬ ‫جدا) ئر جیم ہوئے ہیں‪ ،‬عہد بیوی کی فشیم ن یدی کجھ اس طرح سے ہے‪:‬‬ ‫ے‪۶،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۳‬ہحری میں‪۰ ،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪۹‬‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم والدت سے پہل‬ ‫ہحری میں‪۳،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۲‬ہحری میں‪۹ ،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۳‬ہحری میں‪۲ ،‬۔ امام حسین علنہ‬ ‫السالم سنہ ‪ ۸‬ہحری میں‪۳ ،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰‬ہحری میں‪۸ ،‬۔ امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۹‬ہحری میں‪۰ ،‬۔‬ ‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۰‬ہحری میں۔‬ ‫سیرت امام حسین ئر پیشمار کیابیں لکھی گنی ہیں لیکن اس کیاب میں مصتف ئے امام حسین علنہ السالم کی‬ ‫سوا تح حیات کو ہحری اور عیشوی نار تخ کے ساتھ ن یان قرمانا ہے‪ ،‬اور جن جن مقامات سے امام حسین علنہ السالم کا گذر‬ ‫‪92‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ہوا ہے ان مقامات کو تھی تفشہ کی سکل میں پیش کیا گیاہے‪ ،‬ناکہ انک وافعہ کی معلومات کے ساتھ ساتھ اسکی نار تخ و‬ ‫مکان کا تھی قاربین کو علم ہو جائے‪ ،‬مصتف کا یہ میقرد انداز ئے ب ظیر ہے۔‬ ‫امام حسین علنہ السالم کے عہد بیوی میں ‪ ۰‬مراجل میں ئے سمار وافعات رونما ہوئے‪ ،‬جن کو مصتف ئے‬ ‫ت‬

‫فصیل کے ساتھ ن یان قرمانا ہے ہم اس مقام ئر قاربین کی جدمت میں ہر دور سے مبعلق ح ید اہم روانات نا وافعات‬

‫ے قاربین اصل کیاب کی طر ف رجوع قرمابیں۔‬ ‫کی طرف اسارہ کرئے ہیں‪ ،‬ت فصیالت کے لئ‬

‫امام حسین علنہ السالم ق یل از والدت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ رسول اکرم دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم کی حیات طینہ کے حب جالیس سال مکمل ہوئے ثو عار چرا میں‬ ‫خیرن یل امین ‪ ۶۳‬رحب المرحب م طاثق ‪ ۰‬جوالنی سنہ ‪ ۲۹۰‬عیشوی کو رسول اسالم ئر وحی ال ہی لے کر نازل ہوئے اور قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫اقرا باسم ربک الذی خلق (علق ایہ ‪)۰‬۔‬ ‫رسول اسالم ئے نالوت کی حس کے تعد خیرن یل امین ئے پہت سارے وافعات کے نذکرہ کے تعد قرمانا‪:‬‬ ‫و سوف یقر عینک ببنتک فاطمۃ‪ ،‬و سوف یخرج منھا و من علی الحسن و الحسین سیدا شباب اھل الجنۃ‬ ‫و سوف ینشر فی البالد دینک (تجار االثوار جلد ‪ ۰۳‬ص‪)۰۰۹‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عیقرنب اپ کی پینی قاطمہ کی والدت سے اپ کی ایکھیں روشن ہونگی‪ ،‬اور قاطمہ و علی سے ہللا ن یارک و تعالٰی اپ کو‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے قرزند ع طا قرمائے گا‪ ،‬حس کے تعد اپ کا دبن دن یا تھر میں ھیل جائے گا۔‬ ‫حسن و حسین حیس‬ ‫اس جدنث کے ذکر کرئے کے عد مصتف ئے معراج‪ ،‬عقد مواجات‪ ،‬م ٔ‬ ‫عرکہ ندر و اجد کے ذنل میں جو‬ ‫ت‬ ‫روانات امام حسین علنہ السالم کے نار ے میں رسول اسال م سے وارد ہونی ہیں اتھیں ت قل قرمانا ہے۔‬

‫‪93‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین سنہ ‪ ۳‬ھ میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے نازو ئر وتمت‬ ‫ن یائر مشہور حصرت اناعید ہللا الحسین ‪ ۰‬سعیان سنہ ‪ ۳‬ہحری کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کے دا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کلمۃ ربک صدقا و عدال المبدل لکلماتہ وھو السمیع العلیم ( ٔ‬ ‫سورہ اتعام ایہ ‪ )۰۰۹‬لکھا ہوا تھا‪ ،‬اپ کی والدت‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کے تعد اسمان سے اواز انی‪:‬‬ ‫یا حسین بن علی اثبت فانک صفوتی من خلقی و عیبۃ علمی و لک و لمن توالک اوجبتُ رحمتی و منحت‬ ‫دنیای‬ ‫جنانی و احلک جواری‪ ،‬و عزتی و جاللی الصلین من عاداک اشد عذابی‪ ،‬و ان اوسعتُ علیھم فی‬ ‫َ‬ ‫من سعۃ رزقی‪ ،‬یہ شن کر امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شھد ہللا انہ ال ٰالہ اال ھو و المالئکۃ و اولوا العلم قائما بالقسط‪ ،‬ال الہ اال ھو العزیز الحکیم (ال عمران ایہ‬ ‫‪ ( )۰۸‬تجار االثوار کی جلد ‪ ۶۹‬ص ‪) ۰۳‬‬ ‫ے ہیں ثو وہ مدنیہ میورہ‬ ‫والدت کے تعد حب انک نصرانی راہب کو اطالع ملی کہ حسئین علیہما السالم میولد جو جک‬ ‫ٓ‬ ‫پ‬ ‫ے ہوئے حصرت زہرا سالم ہللا علیہا کے گھر ئر ہیچ کر اس ئے اواز دی ‪ :‬نا بیت رسول ہللا‪،‬‬ ‫میں داجل ہوا اور راسنہ ثو چھئ‬ ‫ت‬ ‫حسن و حسین علیہما السالم کو ناہر ھیجیں‪،‬ناکہ میں انکی زنارت سے مشرف ہو سکوں‪ ،‬حصرت زہرا ئے دوثوں قرزندوں کو ناہر‬ ‫ت‬ ‫ھیجا ‪ ،‬اس سحص ئے حسئین علیہما السالم کو ن یار کیا اور گریہ کرئے ہوئے کہا ‪ :‬پیسک ان کا نام ثورنت میں سیر و شبیر اور‬ ‫اتج یل میں طاب و طیب ہے‪ ،‬یہ کہہ کر اس ئے کلمہ ئڑھا اور مسلمان ہو گیا۔‬ ‫ٓ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے اس سال کے ذنل میں پہت سارے‬ ‫ٓ‬ ‫وافعات کو درج کیا ہے جن میں جیت میں امام حسین علنہ السالم کی والدت ئر ہوئے والے حسن‪ ،‬اہل دوزخ کی انش‬ ‫ے قرشتوں کی س قاعت‪ ،‬ئزول مالنکہ اور ان کی نیرنکات‪ ،‬کقالت امام‬ ‫چہیم سے تجات‪ ،‬دردان یل و ف ظرس اور صلصان یل حیس‬ ‫حسین علنہ السالم‪ ،‬مالنکہ کا امام حسین کا جادم ہونا‪ ،‬رسول اسالم کا جالیس دن نک امام حسین کو ابنی زنان حشوانا اور دنگر‬ ‫نارتخی وافعات سامل ہیں۔‬

‫‪94‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین سنہ ‪ ۹‬ھ میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫سنہ ‪ ۹‬ھ ہحری میں انک روز ام ای من قاطمہ الزہرا سالم ہللا علیہا کے گھر ابیں اور اتھوں ئے دیکھا کہ حصرت زہرا سو رہی‬ ‫ہیں‪ ،‬لیکن جکی نس رہی ہے‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کا چھوال تغیر کسی سحص کے چھول رہا ہے‪ ،‬اور انک ہاتھ ہے جو نسییح‬ ‫ٓ‬ ‫میں مسعول ہے‪ ،‬ام ای من اس جالت کو دنکھ کر میحیر ہوبیں اور حب رسول اسالم سے سارے وافعہ کو ن یان کیا ثو ا تحصرت‬ ‫ئے پیشم کے ساتھ قرمانا‪ :‬جونکہ اس روز حصرت زہرا روزے سے تھیں اور موشم گرم تھا‪ ،‬لہذا ہللا ن یارک و تعالی ئے ان‬ ‫ت‬ ‫ئر عیودگی طاری کی اور حب وہ سو گئیں ثو اشراق یل کو ھیجا ناکہ وہ حصرت زہرا جو نسییح ن یداری میں ئڑھنی تھیں اس کا ورد‬ ‫ت‬ ‫ت‬ ‫کربں‪ ،‬خیرن یل کو ھیجا ناکہ وہ جکی پیسیں اور میکان یل کو ھیجا ناکہ وہ حسین کے چھولے کو چھالبیں (المییجب للظرتخی‪)۶۳۹ :‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے ہمراہ مسجد لے گئ‬ ‫اسی سال ماہ رببع االول میں حب امام حسین علنہ السالم ‪ ۲‬ماہ کے ہو ئے ثو ا تحصرت اتھیں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے صقوف مہیا ہو گئیں ثو رسول اسالم ئے نلید اواز سے یکبیر ک ہی لیکن امام حسین علنہ السالم ئے‬ ‫حب جماعت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫پہیں دہرانا‪ ،‬ا تحصرت ئے تھر سے یکبیر ک ہی‪ ،‬امام حسین ئے تھر پہیں دہرانا‪ ،‬پہاں نک کے ا تحصرت ئے سات‬ ‫ے سات مرنیہ یکبیرات کا کہیا شنت‬ ‫مرنیہ یکبیرات کو دہرانا حس کے تعد امام حسین ئے ہللا اکیر کہا‪ ،‬اس طرح نماز سے پہل‬ ‫قرار نانا(علل الشرا تع جلد ‪ ۰‬ص ‪)۶۳‬۔‬

‫امام حسین سنہ ‪ ۲‬ھ میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اس سال حب ای ٔہ یاایھا الذین آمنوا اطیعوا ہللا و اطیعوا الرسول و اولی االمر منکم ( ٔ‬ ‫سورہ نساء ای ٔہ ‪ )۹۰‬نازل‬ ‫ہونی‪ ،‬ثو جائر بن عید ہللا انصاری ئے سوال کیا‪ :‬نارسول ہللا ہم ئے ہللا اور اس کے رسول کو ثو پہجان لیا‪ ،‬لیکن یہ اولوا االمر‬ ‫ے علی ابن انی‬ ‫کون ہیں؟ ثو رسول اسالم ئے قرمانا‪ :‬اولوا االمر میرے تعد میرے وہ جلقاء اور ای مہ ہیں جن میں کے پہل‬ ‫طالب ہیں جن کے تعد امام حسن‪ ،‬امام حسین‪ ،‬علی سید العاندبن‪ ،‬دمحم ناقر‪ ،‬جعقر صادق‪ ،‬موسی بن جعقر ‪ ،‬علی بن موسی‪ ،‬دمحم‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬میرے اچری نانب کا نام میرا نام اور ان کی‬ ‫بن علی‪ ،‬علی بن دمحم‪ ،‬حسن بن علی‪ ،‬حجت ہللا بن حسن میرے جلقاء ہو ن گ‬ ‫‪95‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫کییت میری کییت ہوگی‪ ،‬اے جائر حب میرے ناتجوبں نانب سے مالقات ہو ثو اتھیں میرا سالم پہیجانا (تجار االثوار جلد‬ ‫‪ ۳۲‬ص ‪)۶۶۳‬۔‬

‫امام حسین سنہ ‪ ۳‬ہحری میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے حمع کیا اور قرمانا‪:‬‬ ‫اس سال ایہ ب طہیر نازل ہونی‪ ،‬رسول اسالم ئے علی و قاطمہ و حسن و حسین لیہم السالم کو کساء کے بیچ‬ ‫ھوالء‬ ‫ھوالء آل محمد فاجعل صلواتک و برکاتک علی محمد و علی آل محمد انک حمید مجید‪ ،‬اللھم ٔ‬ ‫اللھم ٔ‬ ‫ھوالء اھل بیتی و خاصتی و لحمتی‪،‬‬ ‫و‬ ‫اھال‬ ‫نبی‬ ‫لکل‬ ‫ان‬ ‫اللھم‬ ‫وعدتنی‪،‬‬ ‫ما‬ ‫فیھم‬ ‫وعدتنی‬ ‫الذین‬ ‫بیتی‬ ‫اھل‬ ‫ٔ‬ ‫یولمھم‪ ،‬و یجرحنی ما یجرحھم‪ ،‬فاذھب عنھم الرجس و طھرھم تطھیرا(بحار االنوار جلد ‪۱۲‬‬ ‫یولمنی ما ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫ص‪)۳۴۳‬‬ ‫ھو الء اھلی‪ ،‬انا حرب لمن حاربھم‪ ،‬و سلم لمن سالمھم‪ ،‬محب لمن احبھم‪ ،‬و مبغض لمن‬ ‫ثم قال‪ :‬اللھم ٔ‬ ‫ابغضھم‪ ،‬فکن لمن حاربھم حربا‪ ،‬و لمن سالمھم سلما‪ ،‬و لمن احبھم محبا‪ ،‬و لمن ابغضھم مبغضا(بحار‬ ‫االنوار جلد ‪ ۲۱‬ص ‪ )۱۲۱‬عبد ہللا ابن عباس نقل کرتے ہیں کہ رسول اسالم نے یہ بھی فرمایا‪ :‬ان علیا‬ ‫وصیی و خلیفتی‪ ،‬و زوجتہ فاطمۃ سیدة نساء العالمین ابنتی‪ ،‬و الحسن و الحسین سیدا شباب اھل الجنۃ‬ ‫ولدای من واالھم فقد واالنی‪،‬و من عاداھم فقد عادانی‪ ،‬و من ناواھم فقد ناوانی‪ ،‬و من جفاھم فقد جفانی‪ ،‬و‬ ‫من برھم فقد برنی‪ ،‬وصل ہللا من وصلھم‪ ،‬و قطع من قطعھم‪ ،‬و نصر من اعانھم‪ ،‬و خذل من خذلھم‪ ،‬اللھم‬ ‫من کان لہ من انبیائک و رسلک ثقل و اھل بیت‪ ،‬فعلی و فاطمۃ و الحسن و الحسین اھل بیتی و ثقلی‪،‬‬ ‫فاذھب عنھم الرجس و طھرھم تطھیرا (بحار االنوار جلد ‪ ۳۱‬ص‪)۳۳‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہی رسول اسالم ئے یہ قرمانا ثو خیرن یل امین ح یاب میکان یل کے ساتھ قران مج ید کی یہ انت لے کر نازل ہوئے‪:‬‬ ‫حیس‬ ‫ٓ‬ ‫انما یرید ہللا لیذھب عنکم الرجس اھل البیت و یطھرکم تطھیرا (اچزاب ایہ‪)۰۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫رسول اسالم ئے حصرت علی سے قرمانا کہ اے علی بن ابت طالب یہ انت بیجین اور اپ کی اوالد میں جو ای مہ ن یدا ہو نگ‬ ‫ان سب کے نارے میں نازل ہونی ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے؟(حصرت علی کا یہ سوال لوگوں کو میوجہ و م بینہ کرئے‬ ‫ے امام ہو نگ‬ ‫حصرت امیر ئے قرمانا‪ :‬نا رسول ہللا اپ کے تعد کیئ‬ ‫ے تھا) رسول اسالم ئے قرمانا ‪:‬‬ ‫کے لئ‬ ‫انت یا علی ثم ابناک الحسن و الحسین‪ ،‬و بعد الحسین علی ابنہ‪ ،‬و بعد علی محمد ابنہ‪ ،‬و بعد محمد جعفر‬ ‫ابنہ‪ ،‬و بعد جعفر موسی ابنہ‪ ،‬و بعد موسی علی ابنہ‪ ،‬و بعد علی محمد ابنہ‪ ،‬و بعد محمد علی ابنہ‪ ،‬و بعد‬ ‫علی الحسن ابنہ‪ ،‬و بعد الحسن ابنہ الحجۃ‪ ،‬ھکذا وجدت اسامیھم مکتوبۃ علی ساق العرش‪ ،‬فسألت ہللا‬

‫‪96‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫عز و جل عن ذالک فقال‪ :‬یا محمد ھم االئمۃ بعدک‪ ،‬مطھرون معصومون و اعدائھم ملعونون(تجار االثوار جلد‬ ‫‪ ۰۲‬ص ‪)۰۰۲‬۔‬ ‫ے ہوئے قرمانا‪ :‬انک الی‬ ‫اس مو فع ئر ام سلمہ ئے جادر میں داجل ہوئے کی کوشش کی ثو رسول اسالم ئے اتھیں رو کئ‬ ‫ٓ‬ ‫خیر نا تعض دنگر روانات کے م طاثق ا تحصرت ئے قرمانا‪ :‬انت الی خیر‪ ،‬انت من ازواج النبی (ذجائر العفنی ص‬ ‫ھوالء اھل بیتی و اھل بیتی احق (در مییور جلد ‪ ۹‬ص‪۰۳۲‬۔‪)۰۳۸‬۔‬ ‫‪ ،)۹۹‬تھر رسول اسالم ئے ناکیدا قرمانا‪ :‬اللھم ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے سیرت امام حسین کی جلد اول میں سنہ ‪۳‬‬ ‫ت‬ ‫ہحری نک امام حسین علنہ السالم کے جاالت زندگی ئر فصیل کے ساتھ روشنی ڈالی‪ ،‬حس کا ی مویہ ہم ئے قاربین کی‬ ‫جدمت پیش کیا ہے‪ ،‬سنہ ‪ ۳‬ہحری سے ‪ ۰۰‬ہحری نک کے مزند جاالت و وافعات کو جلد دوم میں ن یان کیا گیا ہے۔‬

‫‪97‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪98‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم‬ ‫جلد دوم‬ ‫کیاب "سیرت امام حسین علنہ السالم"دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی دوشری جلد ( جو ‪ ۳۲۲‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۹‬ء کو لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۰‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪99‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪100‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم ( ٔ‬ ‫صہ دوم)‬ ‫ح‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ی موی ٔہ علم ہے‪ ،‬اپ کی زندگی اس قدر نا ئرکت ہے کہ اگر ہم اپ‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ ہر مومن کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے مسعل راہ قرار دبں ثو ہمیں دن یا و اچرت کی‬ ‫ے لئ‬ ‫کی ساری زندگی سے ضرف ب ظر کرئے ہوئے ضرف روز عاسورا کو ا بئ‬ ‫قالح جاصل ہوسکنی ہے‪ ،‬جونکہ حصرت اناعید ہللا الحسین ئے اس انک دن میں ساری امت مسلمہ کو عیودنت‪،‬‬ ‫ے درس دے کر دبن دمحمی کو‬ ‫عزت‪ ،‬چرنت‪ ،‬ان یار ‪ ،‬سجاعت‪ ،‬کرامت‪ ،‬سجاوت‪ ، ،‬اشت قامت‪ ،‬شہادت‪ ،‬جق گونی‪ ،‬صیر حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ے زندہ قرمانا ہے‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ رسول اسالم ئے اپ کے نارے میں قرمانا‪ :‬حسین منی و‬ ‫ق یامت نک کے لئ‬ ‫انا من حسین۔‬ ‫ٓ‬ ‫لہذا نمام مسلماثوں کا قرنصہ ہے کہ وہ حصرت اثوعید ہللا حیسی ع ظیم سحصنت سے اگاہ ہو ں ناکہ اتھیں دن یا و‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اسی م فصد کے پیش ب ظر حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق‬ ‫عفنی کی سعادت جاصل ہو سک‬ ‫الکرناسی ئے اس محموعہ کی دس جلدوں کو امام حسین علنہ الصلوۃ و السالم کی حیات طینہ سے محصوص قرمانا ہے‪ ،‬حس کی‬ ‫ٓ‬ ‫دو جلدبں زثور طبع سے اراسنہ ہو جکی ہیں‪ ،‬یہ نات قانل ذکر ہے کہ مصتف ئے السیرۃ الحس بینہ میں امام حسین علنہ السالم‬ ‫ے سات عہد تعنی عہد بیوی‪،‬عہد اثو نکر ‪ ،‬عہد عمر ابن خ طاب‪ ،‬عہدعتمان بن عقان‪ ،‬عہد موال‬ ‫کی حیات طینہ کو سب سے پہل‬ ‫ت‬ ‫علی‪ ،‬عہدمعاویہ ‪ ،‬عہد ئزند ئر فشیم قرمانا ہے حس کے تعد مصتف ئے جلد اول و دوم میں سنہ ‪۳‬ھ سے سنہ ‪ ۰۰‬ہحری نک‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ ئر عہد بیوی میں روشنی ڈالی ہے‪ ،‬مصتف ئے اس کیاب میں وافعات کے نذکرہ‬ ‫کے ساتھ ساتھ ان کی شمسی و ہحری نار تخ کو ان میاطق کے تفشوں کے ساتھ ن یان قرمانا ہے کہ چہاں سے امام حسین‬ ‫علنہ السالم کا گزر ہوا تھا‪ ،‬مصتف ئے جلد اول میں سنہ ‪۳‬ھ سے سنہ ‪ ۳‬ھ نک کے وافعات کو ن یان قرمانا ہے ‪ ،‬اور جلد‬ ‫ت‬ ‫دوم میں سنہ ‪ ۳‬ہحری سے سنہ ‪ ۰۰‬ہحری کے تفنہ جاالت ئر فصیلی روشنی ڈالی ہے‪ ، ،‬ہم پہاں السیرۃ الحس بینہ کی جلد دوم‬ ‫‪101‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫( جو ‪ ۳۲۲‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۰‬عیشوی کو چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں موجودہ وافعات میں سے‬ ‫تعض کو قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں۔‬

‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۳‬ھ میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ اس سال اثوہرئرہ ئے رسول اسالم سے ای ٔہ وجعلھا کلمۃ باقیۃ فی عقبہ (زچرف ‪ )۶۸‬کے نارے میں سوال کیا‬ ‫ٓ‬ ‫ثو ا تحصرت ئے قرمانا‪:‬‬ ‫جعل االمامۃ فی عقب الحسین‪ ،‬یخرج من صلبہ تسعۃ من االئمۃ‪ ،‬منھم مھدی ھذہ االمۃ (تجار االثوار جلد ‪۶۹‬‬ ‫ص ‪ ) ۶۹۰‬ہللا ن یارک و تعالی ئے امامت کو صلب امام حسین علنہ السالم میں قرار دنا ہے‪ ،‬نسل امام حسین سے ‪ ۰‬ای مہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اس کے تعد رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ے‪ ،‬جن میں کے اچری امام مہدی ہو نگ‬ ‫میولد ہو نگ‬ ‫لو ان رجال صفن بین الرکن و المقام ثم لقی ہللا مبغضا الھل بیتی دخل النار (تجار االثوار جلد ‪ ۰۲‬ص ‪ )۰۰۹‬جو‬ ‫سحص رکن و مقام کے درمیان طوالنی نماز میں مسعول ہو اور اس کے تعد ہللا سے اس جال میں مالقات کرے کہ اس‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اہل بیت کو ناراض کیا ہو ثو وہ انش دوزخ میں داجل ہوگا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اصجاب ئے‬ ‫ے کہ اجانک اپ ئے نا تچ سجدے کئ‬ ‫‪۶‬۔ انک روز رسول اسالم‪ ،‬اصجاب کے درمیان نشرتف قرما تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اتھوں ئے خیر دی‬ ‫ا تحصرت سے ان سجدوں کی وجہ ثوچھی ثو اپ ئے قرمانا‪ :‬اتھی اتھی خیرنیل امین نشرتف الئے تھ‬ ‫کہ ہللا ن یارک و عالی علی کو دوست رکھیا ہے‪ ،‬یہ شن کر میں ئے پہال ج ٔ‬ ‫دہ سکر کیا‪ ،‬تھر خیرن یل ئے کہا ہللا تعالی حسن کو‬ ‫س‬ ‫ت‬ ‫دوست رکھیا ہے ثو میں ئے دوشرا سجدہ کیا‪ ،‬خیرن یل ئے کہا ہللا ن یارک و تعالی حسین کو دوست رکھیا ہے ثو میں ئے پیشرا‬ ‫سجدہ کیا‪ ،‬خیرن یل ئے تھر قرمانا کہ ہللا قاطمہ کو دوست رکھیا ہے ثو میں ئے جوتھا سجدہ کیا‪ ،‬حس کے تعد خیرن یل ئے کہا کہ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬یہ شن کر میں ئے ناتجواں ج ٔ‬ ‫دہ سکر ادا کیا‬ ‫ہللا ان سب کو دوست رکھیا جو علی و قاطمہ و حسن و حسین کو دوست ر کھئ‬ ‫س‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫(میاقب ال ابت طالب البن شھر ا سوب جلد ‪ ۰‬ص‪)۰۶۲‬۔‬ ‫‪102‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۸‬ہحری میں‪:‬‬

‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ انک روز سلمان قارسی رسول اسالم کی جدمت میں جاضر ہوئے ثو دیکھا کہ ا تحصرت امام حسن و امام حسین علیہما السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہو‪،‬‬ ‫ے ثو اپ ئے قرمانا اے سلمان‪ ،‬کیا یم ان دوثوں کو دوست ر کھئ‬ ‫کو کھانا ک ھال رہے ہیں‪ ،‬حب رسول اسالم کھانا کھال جک‬ ‫ے ممکن ہے کہ میں اتھیں دوست یہ رکھوں‪ ،‬یہ شن کر رسول گرامی قدر ئے قرمانا‪:‬‬ ‫سلمان ئے قرمانا نارسول ہللا یہ کیس‬ ‫یا سلمان من احبھم فقد احبنی و من احبنی فقد احب ہللا‬ ‫ے گونا وہ میرا مجب ہے اور جو میرا مجب ہو گونا وہ جدا کا مجب ہے‪ ،‬تھر رسول اسالم ئے‬ ‫اے سلمان جو اتھیں دوست ر کھ‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین کا ثوسہ لیا اور اپ کے کاندھے ئر ہاتھ رکھ کے قرمانا‪:‬‬ ‫یا حسین انت السید ابن السید ابو السادة‪ ،‬انت االمام ابن االمام ابو االئمۃ‪ ،‬انت الحجۃ ابن الحجۃ ابو‬ ‫الحجج‪ ،‬تسعۃ من صلبک ائمۃ ابرار امناء معصومون تاسعھم قائمھم (کیایۃ االئر‪ ۳ :‬و ‪،)۳۹‬‬ ‫فطوبی لمن احبھم و الویل لمن ابغضھم‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اے حسین اپ سید و شردار ہیں‪ ،‬سید و شردار زادہ ہیں‪ ،‬سید و شرداروں کے والد ہیں‪ ،‬اپ امام‪ ،‬ابن امام اور اثو االی مہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫ے جو ن یک و صا لح‪ ،‬امین و‬ ‫ہیں‪ ،‬اپ ہللا کی حجت‪ ،‬ہللا کی حجت کے قرزند اور اثو ا ححج ہیں‪ ،‬اپ کی صلب سے ثو ای مہ ہو نگ‬ ‫ے جوسحیری ہے‪ ،‬اور عذاب‬ ‫ے‪ ،‬ثو جو ان سے حمیت کرے اس کے لئ‬ ‫ے‪ ،‬ان کے ثوبں ان کے قایم ہو نگ‬ ‫معصوم ہو نگ‬ ‫ے (کقایۃ االئر‪ ،۳۹ :‬و تجار االثوار جلد ‪ ۰۲‬ص ‪)۰۲۰‬۔‬ ‫ے جو ان سے تعض ر کھ‬ ‫ہے اس کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ ا تحصرت کے نلید مرنیہ ئر قائز ہوئے کی وجہ سے وہ جیت میں ان‬ ‫‪۶‬۔ انک روز اصجاب رسول اقشوس کر رہے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے انت نازل کی اور قرمانا‪:‬‬ ‫سے جدا ہو جابیں گے‪ ،‬ثو ہللا ن یارک و تعالی ئے ان کی دلجونی کے لئ‬ ‫و من یطع ہللا و الرسول فاولئک مع الذین انعم ہللا علیھم من النبیین و الصدیقین و الشھداء و الصالحین‬ ‫و حسن اولئک رفیقا‬

‫‪103‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ت‬ ‫ے جن ئر ہللا ئے عمئیں نازل قرمابیں اپت یاء میں سے‪،‬‬ ‫ے لوگ ان کے ساتھ ہو ن گ‬ ‫جو اطاعت کرے ہللا اور رسول کی ثو ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے رق قاء ہیں (نساء ایہ ‪ ،)۲۰‬حب رسول اسالم ئے اس انت‬ ‫صدت فین و شھدا ء و صالجین میں سے‪ ،‬اور وہ پہانت ا چھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کے ذرتعہ نسارت دی ثو ام سلمہ ئے ا تحصرت سے اس انت کی تفسیر ثوچھی ثو اپ ئے قرمانا‪ :‬پتئین سے مراد میں‬ ‫ہوں‪ ،‬صدت فین سے مراد علی ابن انی طالب ہیں‪ ،‬شھداء سے مراد امام حسن و امام حسین علیہما السالم ہیں‪ ،‬صالجین سے‬ ‫ٓ‬ ‫مراد حمزہ ہیں اور حسن اولئک رفیقا سے مراد میرے تعد ئاے والے نارہ ای مہ ہیں (کقایۃ االئر‪ ،۶۳ :‬تجار االثوار جلد ‪ ۰۲‬ص‬ ‫ٓ‬ ‫‪ ،۰۳۳‬الیرھان قی تفسیر القران جلد ‪ ۰‬ص ‪ ،۰۰۶‬سواھد نیزنل جلد ‪ ۰‬ص‪)۰۹۰‬۔‬

‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰‬ہحری میں‪:‬‬ ‫انک روز رسول اسالم ئے انس بن جارث ( جن کا سمار اصجاب صفہ میں ہونا ہے )سے قرمانا‪:‬‬ ‫ان ابنی ھذا یقتل فی ارض یقال لھا کربالء فمن ادرکہ فلینصرہ (فصانل حمشہ من الصجاح الشنۃ جلد ‪ ۰‬ص ‪)۰۳۳‬‬ ‫انک دن میرا یہ قرزند حسین کرنال میں شہید کیا جائے گا لہذا جو اس کو درک کرے (اس وقت موجود ہو) اس ئر واحب ہے‬ ‫ت‬ ‫کہ وہ اس کی نصرت کرے‪ ،‬انس بن جارث ئے رسول اسالم کے اس جکم کی عمیل کرئے ہوئے امام حسین علنہ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم کے لسکر میں شمولیت احت یار کی اور اس طرح اپ ئے دس محرم کو ناران امام حسین علنہ السالم کے ساتھ شرنت‬ ‫شہادت کو ثوش قرمانا۔‬

‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۹‬ہحری میں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ثو ای ٔہ مودت نازل ہونی اور ہللا ن یارک تعالی ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ے تھ‬ ‫‪۰‬۔ اس سال حب مومئین اچر رسالت ادا کرنا جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫قل ال اسئلکم علیہ اجرا اال المودة فی القربی (سوری ایہ ‪ )۶۰‬اصجاب ئے رسول اسالم سے قرنی کے نارے‬ ‫ٓ‬ ‫میں سوال کیا ثو اپ ئے بین مرنیہ قرمانا کہ قرنی سے مراد علی و قاطمہ حسن و حسین ہیں۔‬

‫‪104‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۶‬۔ انک روز رسول اسالم ئے اہلییت کو مجاطب کرئے ہوئے قرمانا کہ ہللا ن یارک و تعالی کے ئزدنک ہم اہلییت محیوب‬ ‫ے ناموں سے مستق کیا ہے‪ ،‬اس ئے دمحم کو محمود‬ ‫ئربن اقراد ہیں‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ اس ئے ہم سب کے اسامی کو ا بئ‬ ‫سے‪ ،‬علی کو ع ِلی اعلٰی سے‪ ،‬حسن کو محسن سے‪،‬حسین کو ذو االحسان سے اور قاطمہ کو قاطر سے مستق قرمانا ہے‪ ،‬اس گق یگو کے‬ ‫تعد رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫اللھم انی اشھدک انی سلم لمن سالمکم و حرب لمن حاربکم و محب لمن احبھم و مبغض لمن ابغضھم و‬ ‫عدو لمن عاداھم و ولی لمن واالھم‪ ،‬النھم منی و انا منھم‬ ‫ے اور میری اس سے ح یگ ہے جو ان‬ ‫ے گواہ ن یانا ہوں کہ میری اس سے صلح ہے جو ان سے صلح ر ک ھ‬ ‫اے ہللا میں تجھ‬ ‫سے ح یگ کرے‪ ،‬میں اس کا مجب ہوں جو ان سے حمیت کرے اور ان کا دشمن ہوں جو ان کا دشمن ہو‪ ،‬میں اس کا عدو‬ ‫ے اور اس کا دوست ہوں جو ان کا دوست ہو‪ ،‬کیونکہ وہ مجھ سے ہیں اور میں ان سے ہوں‬ ‫ہوں جو ان سے عداوت ر کھ‬ ‫(تجار االثوار جلد ‪ ۰۳‬ص فجہ ‪)۳۳‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ اسی سال رسول اسالم ئے اچری حج کی ن یاری کی حس میں ا تحصرت کی نمام ازواج‪ ،‬امام علی‪ ،‬حصرت زہرا ‪ ،‬امام حسن‬ ‫ع‬ ‫ے‪ ،‬حج کے تعد عدئر حم کے میدان میں والنت علی ابن انی طالب کے اعالن‬ ‫اور امام حسین لیہم السالم تھی موجود تھ‬ ‫کے ساتھ ساتھ رسول اسالم ئے والنت ای مہ کا تھی نذکرہ قرمائے ہوئے کہا ‪:‬‬ ‫یا معاشر الناس فاتقوا ہللا و بایعوا علیا امیر المومنین‪ ،‬و الحسن و الحسین و االئمۃ کلمۃ طیبۃ باقیۃ‬ ‫یھلک ہللا من غدر و یرحم من وفی‬ ‫اے لوگو تقوائے الٰہی احت یار کرو اور علی کی ببعت کرو کہ وہ امیر المومئین ہے‪ ،‬اور حسن و حسین اور ای مہ انک انسا ناک سلسلہ‬ ‫ے واال ہے‪ ،‬جو ان سے عداری کرے ہللا اسے ن یاہ کرے گا اور جو ان سے وقا کرے ہللا ان ئر احسان‬ ‫ہےجو ناقی ر ہئ‬ ‫کرے گا (خطنۃ العدئر‪ )۰ :‬اس روز رسول اسالم ئے نمام اصجاب سے ان القاظ میں اقرار لیا‪:‬‬ ‫اطعنا ہللا بذالک و ایاک و علیا و الحسن و الحسین و االئمۃ الذین ذکرت عھدا و میثاقا ماخوذا المیر‬ ‫المومنین من قلوبنا و انفسنا و السنتنا و مصافقۃ ایدینا‬

‫‪105‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ہم ِاس ئر ہللا کی اور اپ کی اطاعت کرئے ہیں اور علی و حسن و حسین اور جن ای مہ کا اپ ئے نذکرہ قرمانا ہے کی والنت‬ ‫ے لیا گیا ہے‪ ،‬ہمارا یہ عہد ہمارے دلوں‪ ،‬جاثوں اور‬ ‫کا دم تھرئے ہیں‪ ،‬یہ ہمارا تجنہ عہد و بتمان ہے جو امیر المومئین کے لئ‬ ‫زناثوں سے ہے اور ہاتھ ئر ہاتھ رکھ کے ببعت کرکے ہے (السیرۃ الحس بینہ جلد دوم ص ‪)۶۰۰‬۔‬

‫ے کہ امام حسین علنہ السالم‬ ‫‪۳‬۔ حجۃ الوداع سے وانسی ئر انک روز رسول اسالم اور حصرت علی انک ساتھ نشرتف قرما ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ناس بیھانا اور اپ کی پیسانی کا ثوسہ لیا‪ ،‬یہ دنکھ کر امام علی ئے ثوچھا‪ :‬نا رسول‬ ‫وارد ہوئے‪ ،‬رسول اسالم ئے اپ کو ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں؟ رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ہللا کیا اپ حسین کو دوست ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫کیف ال احبہ وھو عضو من اعضائی ‪ ،‬یہ شن کر موال علی ئے قرمانا‪ :‬نارسول ہللا‪ ،‬حسین اور مجھ میں سے کون اپ کے‬ ‫ے عزئز ئر ہے‪ ،‬یہ شن کر امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا‪ ،‬نانا حس کا مرنیہ نلیدئر ہوگا وہی رسول اسالم کے ئزدنک عزئز‬ ‫لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے فصانل‬ ‫ے فصانل ن یان کروں اور اپ ا بئ‬ ‫ے ہیں کہ میں ا بئ‬ ‫ئر ہوگا‪ ،‬یہ شن کر موال علی ئے قرمانا اے حسین کیا اپ جا ہئ‬ ‫ن یان کربں‪ ،‬یہ شن کر امام حسین علنہ السالم ئے رصانت کا اظہار کیا ثو موال امیر المومئین ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا حسین انا امیر المومنین‪ ،‬انا لسان الصادقین‪ ،‬انا وزیر المصطفی‪ ،‬انا خازن علم ہللا و مختارہ من خلقہ‪،‬‬ ‫انا قائد السابقین الی الجنۃ‪ ،‬انا قاضی الدین من رسول ہللا‪ ،‬انا الذی عمہ سید الشھداء فی الجنۃ‪ ،‬انا الذی‬ ‫اخوہ جعفر الطیار فی الجنۃ عند المالئکۃ‪ ،‬انا قاضی الرسول‪ ،‬انا آخذ لہ با لیمین‪ ،‬انا حامل سورة التنزیل‬ ‫الی اھل مکۃ بامر ہللا ‪ ،‬انا الذی اختارنی ہللا تعالی من خلقہ‪ ،‬انا حبل ہللا المتین الذی امر ہللا تعالی ان‬ ‫ی عتصموا بہ فی قولہ تعالی واعصموا بحبل ہللا جمیعا(آل عمران آیہ ‪ ،)۲۰۳‬انا نجم ہللا الزاھر‪ ،‬انا الذی‬ ‫یزورہ مالئکۃ السماوات‪ ،‬انا لسان ہللا الناطق‪ ،‬انا حجۃ ہللا تعالی علی خلقہ‪ ،‬انا ید ہللا القویۃ‪ ،‬انا وجہ ہللا‬ ‫تعالی فی السماوات‪ ،‬انا جنب ہللا الظاھر‪ ،‬انا الذی قال سبحانہ و تعالی فی و فی حقی بل عباد مکرمون ال‬ ‫یسبقونہ بالقول و ھم بامرہ یعملون(انبیاء آیہ ‪۱۲‬۔‪ ،)۱۱‬انا عروة ہللا الوثقی التی ال انفصام لھا وہللا سمیع‬ ‫علیم( ‪ ،)1‬انا باب ہللا الذی یوتی منہ‪ ،‬انا َعلَم ہللا علی الصراط‪ ،‬انا بیت ہللا الذی من دخلہ کان آمنا فمن‬ ‫تمسک بوالیتی و محبتی امن من النار‪ ،‬انا قاتل الناکثین و القاسطین و المارقین‪ ،‬انا قاتل الکافرین‪ ،‬انا ابو‬ ‫الیتامی‪ ،‬انا کھف االرامل‪ ،‬انا عم یتسائلون عن والیتی یوم القیامۃ و قولہ تعالی ثم لتسئلن یومئذ عن‬ ‫النعیم(تکاثر آیہ ‪ ، )۸‬انا نعمۃ ہللا تعالی الذی انعم ہللا بھا علی خلقہ‪ ،‬انا الذی قال ہللا تعالی فی و فی حقی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬پہاں امام ئے ٔ‬ ‫سورہ تقرہ کی انت ‪ ۶۹۲‬کی طرف اسارہ قرمانا ہے اور وہ انت فقد استمسک بالعروة الوثقی ال انفصام لھا وہللا سمیع‬ ‫علیم ہے۔‬

‫‪106‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫الیوم اکملت لکم دینکم و اتممت علیکم نعمتی و رضیت لکم االسالم دینا(مائدہ آیت ‪ ،)۳‬فمن احبنی کان‬ ‫مسلما مومنا کامل الدین‪ ،‬انا الذی بی اھتدیتم‪ ،‬انا الذی قال ہللا تبارک و تعالی فی و فی عدوی وقفوھم انھم‬ ‫مسئولون (صافات آیہ ‪ )۱۴‬ای عن والیتی یوم القیامۃ‪ ،‬انا النبأ العظیم(‪ ،)1‬انا الذی اکمل ہللا تعالی بہ الدین‬ ‫یوم غدیر خم و خیبر‪ ،‬انا الذی قال رسول ہللا صلی ہللا علیہ و آلہ و سلم فی من کنت موالہ فعلی موالہ‪ ،‬انا‬ ‫صالة المومن( ‪ ، )2‬انا حی علی الصلوة‪ ،‬انا حی علی الفالح‪ ،‬انا حی علی خیر العمل‪ ،‬انا الذی نزل علی‬ ‫اعدائی سأل سائل بعذاب واقع للکافرین لیس لہ دافع( بمعنی من انکر والیتی وھو النعمان بن الحارث‬ ‫الیھودی لعنہ ہللا تعالی) ‪ ،‬انا داعی االنام الی الحوض‪ ،‬فھل داعی المومنین الی الحوض غیری؟ انا ابو‬ ‫االئمۃ الطاھرین من ولدی‪ ،‬انا میزان القسط لیوم القیامۃ‪ ،‬انا یعسوب الدین‪ ،‬انا قائد االمومنین الی الخیر و‬ ‫الغفران الی ربی‪ ،‬انا الذی اصحابی یوم القیامۃ من اولیائی المبرون من اعدائی‪ ،‬و عند الموت ال یخافون و‬ ‫ال یحزنون‪ ،‬وفی قبورھم ال یعذبون‪ ،‬وھم الشھداء الصدیقون‪ ،‬و عند ربھم یفرحون‪ ،‬انا الذی شیعتی‬ ‫متوثقون ان ال یوادون من حاد ہللا و رسولہ و لو کانوا آبائھم او ابنائھم(‪ ،)3‬انا الذی شیعتی یدخلون الجنۃ‬ ‫بغیر حساب‪ ،‬انا الذی عندی دیوان الشیعۃ باسمائھم‪ ،‬انا عون المومنین و شفیع لھم عند رب العالمین‪ ،‬انا‬ ‫الضارب بالسیفین‪ ،‬انا الطاعن با الرمحین‪ ،‬انا قاتل الکافرین یوم بدر و حنین‪ ،‬انا ُمردی الکماة یوم احد‪،‬‬ ‫انا ضارب ابن عبد ود یوم االحزاب‪ ،‬انا قاتل عمرو و مرحب‪ ،‬انا قاتل فرسان خیبر‪ ،‬انا الذی قال فیہ االمین‬ ‫جبرائیل ال سیف اال ذو الفقار و ال فتی اال علی‪ ،‬انا صاحب فتح مکۃ‪ ،‬انا کاسر الالت و العزی‪ ،‬انا ھادم‬ ‫الھبل االعلی و مناة الثالثۃ االخری‪ ،‬انا علوت علی کتف النبی و کسرت االصنام‪ ،‬انا الذی کسرت یغوث و‬ ‫یعوق و نسرا‪ ،‬انا الذی قاتلت الکافرین فی سبیل ہللا ‪ ،‬انا الذی تصدق بالخاتم‪ ،‬انا الذی نمت علی فراش‬ ‫النبی و فدیتہ من المشرکین‪ ،‬انا الذی یخاف الجن من باسی‪ ،‬انا الذی بہ یعبد ہللا‪ ،‬انا ترجمان ہللا‪ ،‬انا خازن‬ ‫علم ہللا‪ ،‬انا علم رسول ہللا‪ ،‬انا قاتل یوم الجمل و الصفین بعد رسول ہللا‪ ،‬انا قسیم الجنۃ و النار‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫حب موال علی ئے یہ فصانل ن یان قرمائے ثو رسول اسالم ئے کہا اے میرے قرزند حسین اپ کے نانا ئے‬ ‫ے ہیں‪ ،‬یہ سیکر امام حسین‬ ‫ے فصانل کا نک دھم حصہ ن یان قرمانا ہے‪ ،‬علی ابن ابت طالب ہزارہا فص یلیوں ئر ئرئری ر کھئ‬ ‫ا بئ‬ ‫علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ ٓ‬ ‫‪ -1‬پہاں امام ئے ٔ‬ ‫سورہ ن یا کی انت ‪ ۶‬کی طرف اسارہ قرمانا ہے‪ ،‬اور وہ انت عن النبأ الذی ھم فیہ مختلفون ہے۔‬ ‫ے شرط ہے‪ ،‬اس سے یہ مراد یہ لی جائے کہ نماز ئڑھیا ضروری‬ ‫‪ -2‬اس جملہ کا م طلب یہ ہے کہ امام عالی مقام کی والنت نماز فیول ہوئے کے لئ‬ ‫ع‬ ‫ے‪ ،‬اس م طلب کو سلسلۃ الذھب سے تھی درک کیا جا سکیا ہے کہ‬ ‫ے تھ‬ ‫پہیں‪ ،‬کیونکہ جود ای مہ لیہم السالم رات تھر نماز میں مسعول و مصروف ر ہئ‬ ‫حس میں امام رصا علنہ السالم ئے قرمانا کہ ہللا عالی ئے قرمانا‪ :‬کل ٔ‬ ‫مہ ال الہ اال ہللا میرا کا قلعہ ہے اور جو اس میں داجل ہوا وہ امان ناگیا‪ ،‬تھر امام‬ ‫ت‬ ‫عالی مقام ئے قرمانا کہ اس امان نامہ کی انک شرط ہے اور وہ شرط ہم اہلییت کی والنت ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -3‬اس مقام ئر امام ئے سور ٔہ مجادلہ کی انت ‪ ۶۶‬کی طرف اسارہ قرمانا ہے اور وہ انت یہ ہے‪ :‬ال تجد قوما یومنون باہلل و الیوم االٓخر‬ ‫یوادون من حاد ہللا و رسولہ و لو کانوا آبائھم او ابنائھم او اخوانھم او عشیرتھم‪ ،‬اولئک کتب فی قلوبھم االیمان‪ ،‬و ایدھم‬ ‫بروح منہ و یدخلھم جنات تجری من تحتھا االنھار خالدین فیھارضی ہللا عنھم و رضوا عنہ اولئک حزب ہللا اال ان حزب ہللا ھم‬ ‫المفلحون۔‬

‫‪107‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫الحمد ہلل الذی فضلنا علی کثیر من عبادہ المومنین و علی جمیع المخلوقین‪ ،‬وخص جدنا بالتنزیل و التاویل‬ ‫و الصدق و مناجاة االمین جبرئیل‪ ،‬و جعلنا خیار من اصطفاہ الجلیل‪ ،‬و رفعنا علی الخلق اجمعین‪ ،‬تھر امام‬ ‫حسین نانا کی طرف میوجہ ہوئے اور قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے فصانل کو‬ ‫اما ما ذکرت یا امیر المومنین فانت فیہ صادق امین‪ ،‬تھر رسول اسالم ئے قرمانا کہ اے حسین اپ ا بئ‬ ‫ن یان قرمابیں ثو امام حسین ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا ابت انا الحسین بن علی بن ابیطالب‪ ،‬و امی فاطمۃ الزھراء سیدة النساء العالمین‪ ،‬و جدی محمد‬ ‫المصطفی سید بنی آدم اجمعین الریب فیہ‪ ،‬یا علی امی افضل من امک عند ہللا و عند الناس اجمعین‪ ،‬و‬ ‫جدی خیر من جدک و افضل عند ہللا و عند الناس اجمعین و انا فی المھد ناغانی جبرئیل و تلقانی اسرافیل‪،‬‬ ‫یا علی انت عند ہللا افضل‪ ،‬و انا افخر منک باالٓباء و االمھات و االجداد۔‬ ‫ع‬ ‫ے ہوئے‬ ‫ے قرزند کا ثوسہ لیئ‬ ‫ے نانا کی گردن میں ہاتھوں کو ڈال دنا‪ ،‬موال لی ئے ا بئ‬ ‫یہ کہہ کر امام حسین ئے ا بئ‬ ‫قرمانا‪:‬‬ ‫زادک ہللا شرفا و فخرا‪ ،‬و علما و حلما‪ ،‬و لعن ہللا تعالی ظالمیک یا ابا عبد ہللا (میاقب و فصانل االمام علی‬ ‫ل‬ ‫ل‬ ‫النی ا فصل ساذان بن خیرن یل ا قمی‪ :‬ص ‪ ،۳۳‬جاب دوم میں ص ‪ ۸۰‬کی طرف رجوع کیا جائے)۔‬

‫امام حسین علنہ السالم سنہ ‪ ۰۰‬ھ میں‪:‬‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ کسی ئے اپ سے مج یلف جیوانات کے اوازوں کے نارے میں سوال‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم اتھی کمسن ہی تھ‬ ‫ٓ‬ ‫کیا ثو اپ ئے قرمانا‪ :‬نمام جاثور ابنی زنان میں ہللا کی نسییح کرئے ہیں تھر امام علنہ السالم ئے اس کمشنی میں ‪ ۹۶‬جاثوروں‬ ‫ے ہم پہاں قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫کی نسیی ح کو ن یان قرمانا کہ حس‬ ‫‪1‬۔ح یل )‪ (Eagle‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ش ْئتَ فَآ ِخ ُرہ ا ْل َم ْوتُ ‪ ،‬اے قرزند ادم حس قدر جاہو زندہ رہو مگر اچر میں موت ہے۔‬ ‫یَاْبنَ آ َد َم ِع ْ‬ ‫ش َما ِ‬ ‫‪2‬۔ ناز )‪ (Falcon‬کہیا ہے‪:‬‬

‫‪108‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے والے‪ ،‬اے مص بییوں کو دور کرئے والے۔‬ ‫ت‪ ،‬اے ثوس یدہ خیزوں کو جا بئ‬ ‫شفَ الْ َب ِلی َّا ِ‬ ‫ت‪َ ،‬یا َکا ِ‬ ‫َیا َعا ِل َم ا ْل َخ ِفیَّا ِ‬ ‫‪3‬۔ مور )‪ (Peacock‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے حسن‬ ‫ے ساتھ زنادنی کی‪ ،‬اور ا بئ‬ ‫س ْی َو ا ْغت ُ ِر ْرتُ بِ ِزیْنَتِ ْی فَا ْغفِ ْر لِ ْی‪ ،‬اے میرے اقا‪ ،‬میں ئے ا بئ‬ ‫ی ظَلَ ْمتُ نَ ْف ِ‬ ‫َم ْو َال َ‬ ‫ے معاف کردے۔‬ ‫ئر معرور ہوا‪ ،‬مجھ‬ ‫‪4‬۔ پبیر )‪ (Gray Partridge‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ستَوٰ ی‪ ،‬رجمان عرش ئر قایم ہے۔‬ ‫اَل َّر ْحمٰ نُ َ‬ ‫شا ْ‬ ‫علَی ا ْل َع ْر ِ‬ ‫‪5‬۔ مرعا )‪ (Cock‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫س ِذ ْک َرہ‪ ،‬حس ئے ہللا کو پہجان لیا وہ اس کے ذکر کو تھول پہیں سکیا۔‬ ‫َمنْ َع َرفَ ہللاَ لَ ْم یَ ْن َ‬ ‫‪6‬۔ مرغی )‪ (Hen‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫ک ا ْل َحق یَا َہللا ُ یَا َحق‪ ،‬اے ئر جق معیود‪ ،‬ثو جق ہے‪ ،‬نیرا قرمان جق ہے‪ ،‬اے ہللا‪ ،‬اے‬ ‫یَا اِ ٰل َہ ا ْل َحق ا َ ْنتَ ا ْل َحق َو قَ ْولُ َ‬ ‫جق۔‬ ‫‪7‬۔ ناسق )‪ (Sparrow hawk‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫آ َم ْنتُ بِاہللِ َو الْیَ ْو ِم ا ٓال ِخ ِر‪ ،‬میرا ہللا اور ق یامت کے دن ئر انمان ہے۔‬ ‫‪8‬۔ َح َدأةُ )‪ (kite‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫ے رزق دنا جائے۔‬ ‫ق‪ ،‬ہللا ئر تھروسہ کر‪ ،‬ناکہ تجھ‬ ‫تَ َو َّک ْل َع ٰلی ہللاِ ت ُ ْر َز ْ‬ ‫‪9‬۔ عقاب )‪ (Osprey‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ق‪ ،‬جو ہللا کی اطاعت کرے وہ نکلیف میں پہیں رہ یا۔‬ ‫ش َّ‬ ‫َمنْ اَطَا َع ہللاَ لَ ْم یَ ُ‬ ‫‪10‬۔ ساہین )‪ (Gyrfalcon‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫س ْب َحانَ ہللاِ َحقا َحقا‪ ،‬ناک ہے ہللا جو جق ہی جق ہے۔‬ ‫ُ‬ ‫‪11‬۔ الو )‪ (Owl‬کہیا ہے‪:‬‬

‫‪109‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے نسید ہے۔‬ ‫س ا ُ ْنس‪ ،‬لوگوں سے دور رہ یا مجھ‬ ‫اَ ْلبُ ْع ُد ِمنَ النَّا ِ‬ ‫‪12‬۔ کوا )‪ (Crow‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے والے‪ ،‬رزق جالل ع طا قرما۔‬ ‫ق ا ْل َح َال ِل‪ ،‬اے رزق د بئ‬ ‫یَا َرازِ ُ‬ ‫ق ا ِ ْب َع ْث بِالر ْز ِ‬ ‫‪13‬۔ کرکی )‪ (Crane Bird‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫احفَ ْ‬ ‫ے میرے دشمن سے محقوظ رکھ۔‬ ‫ی‪ ،‬اے ہللا مجھ‬ ‫ظ ِن ْی ِمنْ َع ُدو ْ‬ ‫اَ ٰلل ُھ َّم ْ‬ ‫‪14‬۔ لقلق )‪ (Stork‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫من تخلی من الناس نجی من اذاھم‪ ،‬جو سحص لوگوں سے الگ تھلگ رہے وہ ان کے ت فصان پہیجائے والے سے‬ ‫دور رہ یا ہے۔‬ ‫‪15‬۔ بطخ )‪ (Duck‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫ک یَا َہللاُ ُ‬ ‫ُ‬ ‫ک‪ ،‬نیری ششخب کی طلب ہے اے ہللا‪ ،‬نیری ہی ششخب۔‬ ‫غفْ َرانَ َ‬ ‫غ ْف َرانَ َ‬ ‫‪16‬۔ ہدہد )‪ (Hoopoe‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫صی ہللاَ‪ ،‬کس قدر ندتجت ہے وہ جو ہللا کی ناقرمانی کرے۔‬ ‫َما اَ ْ‬ ‫شقَیٰ َمنْ َع َ‬ ‫‪17‬۔ قُ ْمری )‪ (Turtledove‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے والے‪ ،‬اے ہللا۔‬ ‫َیا َعا ِل َم السر َوالنَّ ْجوٰ ی یَا َہللاُ‪ ،‬اے ناطن و طاہر کو جا بئ‬ ‫ُ‬ ‫‪18‬۔ دنسی )‪ (Malasses my‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ک یَا َہللاُ‪ ،‬ثو ہللا (معیود) ہے‪ ،‬نیرے سوا کونی معیود پہیں اے ہللا۔‬ ‫س َوا َ‬ ‫اَ ْنتَ ہللا ُ َال اِ ٰلہَ ِ‬ ‫‪19‬۔ َعق َعق )‪ (Magpie Bird‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫چ‬ ‫چ‬ ‫س ْب َحانَ َمنْ َالیَ ْخفَیٰ َعلَ ْیہِ َخافِیَۃ‪ ،‬ناک ہے وہ ذات حس سے کونی ھنی ہونی خیز ھنی پہیں۔‬ ‫ُ‬ ‫‪20‬۔ طوطا )‪ (Parrot‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫َمنْ َذ َک َر َربَّہ ُ‬ ‫ے جائے ہیں۔‬ ‫غفِ َر َذنْبُہ‪ ،‬جو ہللا کا ذکر کرے اس کے گیاہ معاف کئ‬ ‫‪110‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪21‬۔ چڑنا )‪ (Bird‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫س ِخطُ ہللاَ‪ ،‬اس گیاہ سے اشیع قار کر کہ جو ہللا کو ناراض کرنا ہے۔‬ ‫ستَ ْغفِ ِر ہللاَ ِم َّما یُ ْ‬ ‫اِ ْ‬ ‫ن‬ ‫‪22‬۔ لیل )‪ (Bulbul Bird‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫َال اِ ٰلہَ اِ َّال ہللاُ َحقا َحقا‪ ،‬پہیں ہے کونی معیود سوائے ہللا کے‪ ،‬وہی جق ہے۔‬ ‫بجۃ )‪(Akind of Partridge‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫‪23‬۔ قَ َ‬ ‫ب‪ ،‬جق پہت ہی ئزدنک ہے۔‬ ‫ب ا ْل َحق قَ ُر َ‬ ‫قَ ُر َ‬ ‫‪24‬۔ پبیر )‪ (Quail‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے کس خیز ئے موت سے عاقل کردنا ہے۔‬ ‫ت‪ ،‬اے ابن ادم‪ ،‬تجھ‬ ‫ک َع ِن ا ْل َم ْو ِ‬ ‫یَابْنَ آ َد َم َما اَ ْغفَلَ َ‬ ‫سنو ُذنیق )‪ (Aplomado‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫‪25‬۔ ُ‬ ‫س ْو ُل ہللاِ َو آلُہ ِخیَ َرةُ ہللاِ‪ ،‬کونی معیود پہیں سوائے ہللا کے‪ ،‬دمحم ہللا کے رسول ہیں‪ ،‬اور ان کی‬ ‫َال اِ ٰل َہ اِ َّال ہللا ُ ُم َح َّمد َر ُ‬ ‫ٓ‬ ‫ال ہللا کے نسیدندہ ہیں۔‬ ‫‪26‬۔ قاجنہ )‪ (Ringdove‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ص َم ُد‪ ،‬اے نکیا‪ ،‬اے اکیال‪ ،‬اے بیہا‪ ،‬اے ئے ن یاز۔‬ ‫اح ُد یَا اَ َح ُد یَا فَ ْر ُد یَا َ‬ ‫یَا َو ِ‬ ‫شق َراق )‪ (Green woodpecker‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫‪27‬۔ ِ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے دوزخ کی اگ سے تجا لے۔‬ ‫ی اَ ْعتِ ْقنِ ْی ِمنَ النَّا ِر‪ ،‬میرے اقا مجھ‬ ‫َم ْو َال َ‬ ‫‪28‬۔ قُنْبَ َرة )‪(Lark‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ی ت ُْب ع َٰلی ُکل ُم ْذنِب ِمنَ ال ُم ٔو ِمنِیْنَ ‪ ،‬میرے اقا‪ ،‬ہر مومن کا گیاہ معاف کرکے اس کی ثویہ فیول قرما۔‬ ‫َم ْو َال َ‬ ‫َ‬ ‫‪29‬۔ ورسان )‪ (Wood piegon‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫شقَیْتُ ‪ ،‬اگر ثو میرے گیاہ معاف یہ کرے ثو میں ندتجت ہو جاوں گا۔‬ ‫اِنْ لَ ْم تَ ْغفِ ْر َذ ْن ِب ْی َ‬ ‫شفنین )‪ (Mourning Dove‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫‪30‬۔ ِ‬ ‫‪111‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ہلل ا ْل َع ِلی ا ْل َع ِظ ْی ِم‪ ،‬کونی طاقت پہیں مگر ہللا کے جو نلید و ئرئر ہے۔‬ ‫َال قُ َّوةَ اِ َّال ِبا ِ‬ ‫‪31‬۔ سیر مرغ )‪ (Ostrich‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫س ٰوی ہللاِ‪ ،‬ہللا کے سوا کونی معیود پہیں۔‬ ‫َال َم ْعبُ ْو َد ِ‬ ‫‪32‬۔ انان یل )‪ٔ (Swallow‬‬ ‫سورہ جمد کی نالوت کرنی ہے اور کہنی ہے‪:‬‬ ‫ے ہی‬ ‫ک ا ْل َح ْم ُد‪ ،‬اے ثویہ کرئے والوں کی ثویہ فیول کرئے والے‪ ،‬اے ہللا نیرے لئ‬ ‫َیاقَابِ َل ت َْو َب ِۃ الت ََّوابِیْنَ ‪َ ،‬یا َہللاُ لَ َ‬ ‫ہے ہر جمد۔‬ ‫‪33‬۔ زرافہ )‪ (Giraffe‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫َال اِ ٰلہَ اِ َّال ہللاُ َو ْحدَہ‪ ،‬ہللا کے سوا کونی معیود پہیں‪ ،‬وہ نکیا ہے۔‬ ‫‪34‬۔ (الحمل ) گوسق ید )‪ (Lamb‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ت َوا ِعظا‪ ،‬موت ہی پہیر اور کاقی و واقی نصیجت کرئے والی ہے۔‬ ‫َک ٰفی ِبا ْل َم ْو ِ‬ ‫‪35‬۔ َج ْدی )‪ (Kid‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے موت جلدی ئاے ثو میرے گیاہ کم ہوں گے۔‬ ‫َاجلَنِ ْی ال َم ْوتُ فَقَ َّل َذ ْنبِ ْی‪ ،‬مجھ‬ ‫ع َ‬ ‫‪36‬۔ سیر )‪(Lion‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ہللا ُم ِھم ُم ِھم‪ ،‬ہللا کا جکم ہی اہمیت واال ہے۔‬ ‫اَ ْم ُر ِ‬ ‫‪37‬۔ الیور )‪(Bull‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہے جو سب‬ ‫َی َمنْ یَ ٰری َو َال ی ُ ٰری َوھُ َو ہللاُ‪،‬ہاں اے ابن ادم‪ ،‬ثو اس کے سا مئ‬ ‫َم ْھال َم ْھال یَابْنَ آ َد َم ا َ ْنتَ بَیْنَ یَد ْ‬ ‫کجھ دیکھیا ہے مگر اسے کونی پہیں دنکھ سکیا‪ ،‬اور وہی معیود ہے۔‬ ‫‪38‬۔ ہاتھی )‪ (Elephant‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ت ق ُ َّوة َو َال ِحیْلَۃ‪ ،‬کونی طاقت و حیلہ موت سے پہیں تجا سکیا۔‬ ‫َال تُ ْغنِ ْی ع َِن ا ْل َم ْو ِ‬ ‫‪39‬۔ حت یا )‪ (Puma‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫‪112‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع ِز ْی ُز یَا َجبَّا ُر َیا ُمتَ َ‬ ‫کب ُر َیا َہللاُ‪ ،‬اے طافیور‪ ،‬اے ح یار‪ ،‬اے ئڑانی والے‪ ،‬اے ہللا۔‬ ‫َیا َ‬ ‫‪40‬۔ اونٹ )‪ (Camel‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫س ْب َحانَہ‪ ،‬ناک ہے جائروں کو ذلیل کرئے واال‪ ،‬وہ ناک ہے۔‬ ‫س ْب َحانَ ُم ِذل ا ْل َجبَّا ِریْنَ ُ‬ ‫ُ‬ ‫‪41‬۔ گھوڑا )‪ (Horse‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫س ْب َحانَ ‪ ،‬ناک ہے ہمارا ئروردگار‪ ،‬ناک ہے۔‬ ‫س ْب َحانَ َربنَا ُ‬ ‫ُ‬ ‫‪42‬۔ تھیڑنا )‪(Wolf‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے اسے کونی صا تع پہیں کر سکیا۔‬ ‫ے ہللا ر کھ‬ ‫ض ْی َع اَبَدا‪ ،‬حس‬ ‫َما َحفِظَ ہللا ُ فَلَنْ یُ ِ‬ ‫‪23‬۔ گیڈر )‪ (Jackal‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫صر‪ ،‬نار نار گیاہ کرئے والے ئر عذاب ہی عذاب ہے۔‬ ‫ب الْ ُم ِ‬ ‫اَ ْل َویْ ُل ا ْل َو ْی ُل ا ْل َو ْی ُل لِلْ ُم ْذنِ ِ‬ ‫‪44‬۔ کیا )‪ (Dog‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے کاقی ہے۔‬ ‫ص ْی ُذال‪ ،‬گیاہ ہی ذلت کے لئ‬ ‫َک ٰفی ِبا ْل َم َعا ِ‬ ‫‪45‬۔ چرگوش )‪ ( Rabbit‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے جمد و ن یاء ہے۔‬ ‫ے ن یاہ یہ کر‪ ،‬نیرے لئ‬ ‫ک ا ْل َح ْمدُ‪ ،‬اے ہللا مجھ‬ ‫َال تُ ْھلِ ْکنِ ْی یَا َہللاُ‪ ،‬لَ َ‬ ‫‪46‬۔ لومڑی )‪ (Fox‬کہنی ہے‪:‬‬ ‫اَلد ْنیَا دَا ُر ُ‬ ‫غ ُرور‪ ،‬دن یا دھوکہ کا گھر ہے۔‬ ‫‪47‬۔ عزال )‪ (Gazelle‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ے نکلیف سے تجات ع طا قرما۔‬ ‫نَجنِ ْی ِمنَ ْاالَ ٰذی‪ ،‬مجھ‬ ‫‪48‬۔ گت یڈا )‪ (Rhinoceros‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ی‪ ،‬میری قرناد رسی کر‪ ،‬وریہ میں ن یاہ ہو جاوں گا‪ ،‬اے ہللا۔‬ ‫اَ ِغ ْثنِ ْی َو اِ َّال َھلَ ْکتُ یَا َم ْو َال َ‬ ‫‪49‬۔ ہرن )‪ (Deer‬کہیاہے‪:‬‬

‫‪113‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے کاقی ہے۔‬ ‫ے ہللا کاقی ہے‪ ،‬اور وہ پہیربن شہارا ہے‪ ،‬وہ میرے لئ‬ ‫س ِبی‪ ،‬میرے لئ‬ ‫س ِب َی ہللا ُ َو ِن ْع َم ا ْل َو ِک ْی ُل َح ْ‬ ‫َح ْ‬ ‫‪50‬۔ پت یدوا )‪ (Tiger‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫س ْب َحانَہ‪ ،‬وہ ناک ہے جو قدرت کے ساتھ عزت واال ہے‪ ،‬وہ ناک ہے۔‬ ‫س ْب َحانَ َمنْ تَ َع َّز َز بِا ْلقُ ْد َر ِة ُ‬ ‫ُ‬ ‫‪51‬۔ سانپ )‪ (Snake‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫ک َیا َر ْح َمانُ ‪ ،‬جو نیررا ناقرمان ہو وہ کت یا ندتجت ہے اے رجمان۔‬ ‫صا َ‬ ‫َما اَش ْٰقی َمنْ َع َ‬ ‫‪52‬۔ عقرب )‪ (Scorpion‬کہیا ہے‪:‬‬ ‫اَلشَّر ش َْیء َو ْحش‪ ،‬ئرانی وحست یاک خیز ہے۔‬ ‫مذکورہ نمام اذکار کی طرف اسارہ کرئے کے تعد امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا کہ جداوند عالم ئے اس چہان‬ ‫ٓ‬ ‫ے انک محصوص ذکر اور ورد کو مقرر قرمانا ہے‪ ،‬حس ئر ساہد کالم مج ید کی یہ انت‬ ‫میں جو تھی مجلوق ن یدا کی ہے اس کے لئ‬ ‫س ِب ْی َحھُ ْم‪ ،‬تعنی کونی سی پہیں جو ہللا کی نسییح یہ کرنی ہو‬ ‫کنْ َّال تَ ْفقَھُ ْونَ تَ ْ‬ ‫سب ُح ِب َح ْم ِدہ َو ٰل ِ‬ ‫ہے ‪َ :‬و اِنْ ِمنْ ش َْیء اِ َّال یُ َ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے ( اشراء ایہ ‪ (، )۳۳‬چرا تج و چرا تح جلد ‪ ۰‬ص ‪ ،۶۳۸‬تجار االثوار جلد ‪ ۲۰‬ص ‪ ،۶۳‬کیز الدقاث ق‬ ‫لیکن یم ان کی نسییح کو پہیں مجھئ‬ ‫جلد ‪ ۸‬ص‪)۰۶۰‬۔‬

‫ٓ‬ ‫‪۶‬۔ رسول اسالم ئے سنہ ‪ ۰۰‬ھ میں وقات نانی لہذا اس سال ا تحصرت ئے مبعدد مقامات ئر امام حسین علنہ السالم کا‬ ‫ے ئروز حمعہ ‪ ۶۹‬صقر کو رسول اسالم‬ ‫تعارف کروانا میحملہ ان موارد کے انک مورد وہ تھا کہ حب وقات سے بین دن پہل‬ ‫ئے طونل خطنہ میں قرمانا‪:‬‬ ‫ایھا الناس انی راحل عن قریب ۔۔۔۔ معاشر الناس من افتقد منکم الشمس فلیتمسک بالقمر‪ ،‬و من افتقد‬ ‫القمر فلیتمسک بالفرقدین‪ ،‬و ان فقدتم الفرقدین فتمسکوا بالنجوم الزاھرة۔۔۔۔‬ ‫تعنی اے لوگو میں عیقرنب رجلت کرئے واال ہوں‪ ،‬حب یم سورج کو کھو پییھو ثو جاند سے میمسک رہو‪ ،‬حب جاند کو کھو پییھو‬ ‫ٓ‬ ‫ثو قرقدبن(دو سیاروں) سے میمسک رہو‪ ،‬حب قرقدبن کو کھو پییھو ثو تجوم زاھرہ سے میمسک رہو‪ ،‬ا تحصرت یہ کہہ کر مبیر‬ ‫‪114‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬راسنہ میں سلمان قارسی ئے شمس‪ ،‬قمر‪ ،‬قرقدبن اور تجوم‬ ‫سے نشرتف لے ئاے اور بیت الشرف کی طرف جائے لگ‬ ‫ٓ‬ ‫زاہرۃ کے نارے میں سوال کیا ثو ا تحصرت ئے قرمانا‪ :‬شمس میں‪ ،‬قمر علی بن ابت طالب‪ ،‬قرقدبن حسن و حسین اور تجوم زاھرۃ‬ ‫ے (السیرۃ الحسینہ جلد ‪ ۶‬ص ‪)۰۶۲‬۔‬ ‫سے مراد وہ ثو ای مہ ہیں جو نسل امام حسین علنہ السالم سے میولد ہو نگ‬ ‫ے وہ ح ید وافعات کہ جیھیں ہم ئے مرجلہ وار قاربین کی جدمت میں پیش کیا ح یکہ کیاب "السیرۃ الحس بینۃ"‬ ‫یہ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫میں انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ئڑے ہی فصیلی انداز کے ساتھ امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ ئر عہد بیوی‬ ‫ے میاسب ہے کہ وہ اصل کیاب کا تھی م طالعہ قرمابیں‪ ،‬ناکہ امام‬ ‫کے ذنل میں روشنی ڈالی ہے‪ ،‬لہذا قاربین کے لئ‬ ‫حسین علنہ السالم کی حیات ط ینہ کے مزند پہلو اجاگر ہو سکیں۔‬

‫‪115‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪116‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار‬ ‫جلد اول‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار " بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد (جو ‪ ۹۳۰‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۶‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪ ۶۹۹۸‬ء میں زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫م طالب کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪117‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪118‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ا جاب امام حسین علنہ السالم ( ٔ‬ ‫صہ اول)‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫(کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء)‬

‫دوشنی انک انسا ناک و ناکیزہ اور روجانی رسنہ ہے کہ حس کے ذرتعہ دوشتوں کے درمیان حمیت‪،‬عشق‪ ،‬ہمدلی‪ ،‬رقاقت‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے اس‬ ‫ناوری اور ان یار حیسی ن یک صقات وجود میں انی ہیں‪ ،‬لہذا اس رسنہ کو دبن اسالم ئے مقدس رسنہ قرار د بئ‬ ‫کے معیارات کو معین قرمانا ہے‪ ،‬امام علی علنہ السالم دوست کے نارے میں قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫الصدیق الصدوق من نصحک فی عیبک‪ ،‬و حفظک فی غیبک‪ ،‬و آثرک علی نفسہ (عرر الجکم جلد ‪ ۶‬ص ‪)۳۲‬‬ ‫ے دوست کے عیب کو ن یان کرے‪ ،‬اسکی غیر موجودگی میں اسکی حقاطت کرے‪ ،‬اور اس کو جود ئر‬ ‫سجا دوست وہ ہے جو ا بئ‬ ‫ے۔‬ ‫مقدم ر کھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اقراد پہت کم ب ظر ئاے ہیں جو‬ ‫ے دو معیارات ئر عمل کرنا ثو ممکن ہے لیکن ا نس‬ ‫اس جدنث میارکہ کے پہل‬ ‫دوست کو جود ئر مقدم رکھ سکیں‪ ،‬نار تخ نشرنت میں ضرف کرنال معلی ہی انسا مقام ہے کہ چہاں اصجاب امام حسین علنہ‬ ‫السالم ئے دوشنی کے نمام قرانض کو ثورا کرئے ہوئے ابنی فیمنی جاثوں کو امام حسین علنہ السالم ئر قرنان کیا‪ ،‬پ ہی وجہ‬ ‫ہے کہ امام ئے ان کے نارے میں قرمانا‪:‬‬ ‫فانی ال اعلم اصحابا اوفی و ال خیرا من اصحابی‪ ،‬و ال اھل بیت ابر و ال اوصل من اھل بیتی‪ ،‬فجزاکم ہللا‬ ‫عنی جمیعا خیرا‬ ‫ت‬ ‫ہ‬ ‫ے ا لییت سے زنادہ‬ ‫ے‪ ،‬اور یہ ہی ا بئ‬ ‫ے اصجاب اور سا ھیوں سے زنادہ وقادار اور پہیر اصجاب پہیں د یکھ‬ ‫میں ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ن یک و صا لح اور ہمدل کونی اہلییت نائے ہیں‪ ،‬ہللا تعالی اپ سب کو میری طرف سے چزائے خیر ع طا قرمائے‪ ،‬امام‬

‫‪119‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫حسین علنہ السالم کی اس گق یار سے واصح ہونا ہے کہ اپ کے اصجاب رسول اسالم اور نمام ای مہ کے اصجاب ئر ہر اعت یار‬ ‫ے ہیں ۔‬ ‫سے ئرئری ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ے ہوئے حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم‬ ‫انصار امام حسین لیہم السالم کی ظمیوں کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫صادق الکرناسی ئے اس دائرۃ المعارف کی ‪ ۲‬جلدوں کو معحم انصار حسین (ہاشمی و غیر ہاشمی‪ ،‬مرد و عورت) سے حمیص‬ ‫ت‬ ‫قرمانا ہے حس میں مصتف ئے ان کی حیات طینہ ئر فصیل کے ساتھ روشنی ڈالی ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر معحم انصار‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین (ہاشمی انصار) کی جلد اول( جو ‪ ۹۳۰‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۸‬عیشوی میں زثور طبع سے اراسنہ ہو کر‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں موجودہ م طالب ئر روشنی ڈا لئ‬

‫کرنال میں ہاشمی شھداء‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬یہ‬ ‫اس نات میں کونی سک پہیں کہ کرنال میں شہید ہوئے والے نمام ہاشمی شہداء ح یاب اثوطالب کی ال سے تھ‬ ‫انک انسی حفیقت ہے کہ حس کا کسی ئے انکار پہیں کیا‪ ،‬اگر نار تخ اسالم کا دقت کے ساتھ جائزہ لیا جائے ثو معلوم ہوگا‬ ‫ٓ‬ ‫کہ ان یدائے اسالم سے واف ٔعہ کرنال نک اثوطالب اور ان کی ال ہی ئے ابنی قرنابیوں کے ذرتعہ اس دبن کی چڑوں کو‬ ‫ٓ‬ ‫ے ح یاب اثوطالب اور انکی ال کا نذکرہ کرئے ہیں کہ حس ذرتعہ یہ نات‬ ‫مصتوط کیا ہے‪ ،‬لہذا ہم اس مقام ئر سب سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫واصح ہوجائے گی کہ کرنال میں ہاشمی شہداء ضرف اثوطالب کی ال سے تھ‬

‫ٓ‬ ‫اثوطالب اور انکی ال‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب اثوطالب کا نام شینۃ الحمد تھا‪ ،‬اپ کا عقد قاطمہ بیت اسد بن ہاشم بن عید میاف بن فضی سے ہوا ‪ ،‬اپ اور اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ہللا تعالی ئے قاطمہ بیت اسد سے اپ کو اتھ اوالد ع طا قرمانی‪ ،‬جن کے نام نیربیب یہ‬ ‫کی زوجہ دوثوں ہاشمی نسب تھ‬ ‫ہیں‪:‬‬

‫‪120‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۰‬۔ طالب(والدت‪۹۰ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات‪ ۶ :‬ہحری)۔‪۶‬۔ قاجنہ (والدت‪ ۳۸ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات‪ ۲۹ :‬ہحری)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ ق یل (والدت‪ ۳۰ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات‪ ۲۹ :‬ہحری)۔ ‪۳‬۔ جمایہ(والدت‪ ۰۸ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات‪۲۰ :‬‬ ‫ہحری)۔ ‪۹‬۔ جعقر طیار (والدت‪ ۰۰ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات‪ ۸ :‬ہحری)۔‪۲‬۔ رب ظہ(والدت‪ ۶۸ :‬ق یل از ہحرت)۔ ‪۳‬۔‬ ‫علی ابن ابت طالب (والدت‪ ۶۰ :‬ق یل از ہحرت‪ ،‬شہادت‪ ۳۹:‬ہحری)۔‪۸‬۔ اسماء (والدت ‪ ۰۸‬ق یل از ہحرت)۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے ندری کی اور قاطمہ بیت اسد ئے انک ماں کی طرح ا تحصرت کی‬ ‫ح یاب اثوطالب ئے رسول اسالم کے لئ‬ ‫ے‪ ،‬حب ح یاب اثوطالب کا سنہ ‪ ۰‬ق یل از‬ ‫جدمت قرمانی پ ہی وجہ ہے کہ رسول اسالم اتھیں ماں کہہ کر مجاطب قرمائے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ہحرت میں ابی قال ہوا ثو رسول اسالم ئے اس سال کو عام الحزن قرار دنا‪ ،‬اور قاطمہ بیت اسد کے ابی قال ئر ا تحصرت ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے دشیہای میارک سے اپ کی لجد کو کھودا اور اس میں لیٹ کر یہ دعا ئڑھی‪:‬‬ ‫ان کی نسیبع میں نا ئرہنہ شرکت کی‪ ،‬ا بئ‬ ‫ہللا الذی یحیی و یمیت وھو حی الیموت ‪ ،‬اللھم اغفر المی فاطمۃ بنت اسد‪ ،‬و لقنھا حجتھا‪ ،‬و وسع‬ ‫مدخلھا‪ ،‬بحق نبیک محمد و االنبیاء الذین من قبلی فانک ارحم الراحمین‬ ‫ٓ‬ ‫ہللا ہی ہے جو زندہ کرنا ہے اور موت دن یا ہے اور وہ انسا زندہ ہے حس ئر موت پہیں انی‪ ،‬اے ہللا میری ماں قاطمہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے بنی دمحم اور جو‬ ‫بیت اسد کی معقرت قرما‪ ،‬اور اتھیں ان کی حجت سے اگاہ قرما‪ ،‬اور ان کی قیر میں وسعت ع طا قرما‪ ،‬ا بئ‬ ‫ے گزرے ہیں ان کے جق کا واس ظہ‪ ،‬کہ ثو ہی رحم کرئے والوں میں سب سے زنادہ رحم کرئے واال‬ ‫اپت یاء مجھ سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے‪ ،‬اور تھر رسول اسالم ئے قاطمہ بیت اسد کو ابنی جاص جادر اڑھانی‪ ،‬حب اصجاب اپ کی اس روش سے مبعجب‬ ‫ٓ‬ ‫ہوئے ثو ا تحصرت ئے قرمانا‪:‬‬ ‫البستھا قمیصی لتلبس من ثیاب الجنۃ‪ ،‬واضطجعت فی قبرھا لیخفف عنھا من ضغطۃ القبر فانھا کانت من‬ ‫احسن خلق ہللا صنیعا بی بعد عمی ابیطالب‬ ‫میں ئے اتھیں ابنی قمیص پہیانی ناکہ وہ جیت کا لیاس زنب بن کربں‪ ،‬اور میں ئے اتھیں قیر میں لیانا ہے ناکہ ان‬ ‫ے میرے حجا اثوطالب کے تعد نمام مجلوق جدا سے زناد ن یک سلوک کرئے‬ ‫سنی کم ہوجائےکیونکہ وہ میرے لئ‬ ‫سے قیر کی ح‬ ‫والی جاثون تھیں (طی قات کیری جلد ‪ ۸‬ص فجہ ‪ ،۶۶۶‬تجار االثوار جلد ‪ ۹۰‬ص فجہ ‪)۰۸۹‬۔‬

‫‪121‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اثوطالب کے تعد دبن دمحمی کی قروغ میں اپ کی اوالد میں سے ح یاب طالب‪ ،‬ح یاب ق یل‪ ،‬ح یاب جعقر‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ہم اس مقام ئر ان حصرات کی جدمات او ر انکی ال کا‬ ‫طیار اور موال علی اور ان کی اوالد ئے ع ظیم جدمات اتجام د بئ‬ ‫نذکرہ کرئے ہیں‪:‬‬

‫طالب بن اثو طالب‪:‬‬

‫ٓ‬ ‫ے ہوئے‬ ‫ے‪ ،‬اپ ئے اسالم فیول قرمانا لیکن مکہ کے جاالت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ح یاب طالب دبن ائراہیمی کے نیروکار تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئر حمیور کیا ثو رسول اسالم ئے‬ ‫ے اسالم کو ثوس یدہ رکھا‪ ،‬حب ح یگ ندر میں کقار مکہ ئے اپ کو مشرکین کے ساتھ جلئ‬ ‫ا بئ‬ ‫قرمانا‪:‬‬ ‫انی قد عرفت رجاال من بنی ہاشم قد خرجوا الی بدر کرھا فمن لقی منکم احدا منھم فال یقتلہ‬ ‫ے ہیں لہذا اگر یم میں سے کونی تھی اتھیں میدان ح یگ‬ ‫پیسک ح یگ ندر میں کقار کے ساتھ کجھ بنی ہاشم اح یارا الئے گئ‬ ‫ے ثو اتھیں ق یل یہ کرے (نار تخ طیری جلد ‪ ۶‬ص فجہ ‪ )۶۸۶‬رسول اسالم کا اسارہ ح یاب طالب کی طرف تھا کیوکہ‬ ‫میں د یکھ‬ ‫ٰ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے وقت اپ ئے ان اسعار کے ذرتعہ کقار مکہ سے‬ ‫ے‪ ،‬مکہ سے نکلئ‬ ‫کقار اتھیں ناالح یار اس ح یگ میں لے کر ئاے تھ‬ ‫مجالقت کا اظہار قرمانا‪:‬‬ ‫یا رب اما خرجوا بطالب‪ ،‬فی مقنب من ھذہ المقانب‪ ،‬فلیکن المطلوب غیر طالب‪ ،‬و الرجل المغلوب غیر‬ ‫الغالب‬ ‫ے ساتھ ح یگ میں لے جا رہے ہیں‪،‬جدا کرے ان کی مراد ثوری یہ ہو ‪،‬اور میرا سمار ان میں یہ ہو‬ ‫ے ا بئ‬ ‫اے جدا یہ لوگ مجھ‬ ‫جو کہ مسلماثوں ئر علنہ ن یدا کربں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی شہادت کے نارے میں مج یلف افوال ہیں‪ ،‬انک فول یہ ہے کہ حب کقار مکہ کو اپ کے انمان کا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫علم ہوا ثو تھوں ئے اپ کو اپ کے گھوڑے کے شمیت درنا میں عرق کردنا‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ ح یگ ندر کے تعد کسی کو‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب طالب کا نیہ یہ جل سکا‪ ،‬لہذا نار تخ میں اپ کے عقد اور قرزندوں کا تھی کونی نذکرہ پہیں ملیا ہے ۔‬

‫‪122‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫ق یل بن اثو طالب‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے ئڑے تھانی طالب کی والدت کے دس سال تعد میولد ہوئے‪ ،‬اثوطالب اپ سے بیجد حمیت کرئے‬ ‫ح یاب ق یل ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے رسول اسالم ئے اپ کے نارے میں قرمانا‪:‬‬ ‫ے اسی لئ‬ ‫تھ‬ ‫انی الحبک ُحبین‪ ،‬حبا لک و حبا البیطالب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میں اپ سے دوہری حمیت کرنا ہوں‪ ،‬انک جود اپ کی وجہ سے اور دوشرے اپ کے (نانا) اثوطالب کی وجہ سے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫اور انک نار ا تحصرت ئے حصرت علی سے قرمانا‪:‬‬ ‫انی احب عقیال حبین حبا لہ و حبا لحب ابیطالب لہ‪ ،‬و ان ولدہ لمقتول فی محبۃ ولدک تدمع علیہ عیون‬ ‫المومنین و تصلی علیہ المالئکۃ المقربون ثم بکی رسول ہللا و قال الی ہللا اشکو ما تلقی عترتی بعدی‪(،‬‬ ‫ع‬ ‫کیاب شہید مسلم ابن ق یل‪)۳ :‬‬ ‫مج ع‬ ‫ے جوالہ سے اور دوشری اس جوالہ سے کہ اثوطالب کو‬ ‫ے ق یل سے دو جوالوں سے حمیت ہے‪ ،‬انک جود ان کے ا بئ‬ ‫ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ان سے حمیت تھی اور یہ کہ ان کا قرزند اپ کے قرزند کی حمیت میں ق یل کیا جائے گا حس ئر مومئین کی ایکھیں اسکیار‬ ‫ے اور قرمانا‪ :‬میں ان یا دکھ جدا کی نارگاہ‬ ‫ہوں گی اور مالنکہ مقربین اس ئر نماز ئڑھیں گے‪ ،‬یہ کہہ کر حصرت رسول جدا روئے لگ‬ ‫میں پیش کرنا ہوں کہ میرے تعد میری غیرت کن جاالت سے دوجار ہوگی۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے‪ ،‬اپ ئے ق یل از ہحرت اسالم کا اظہار کیا‬ ‫ے ح یاب ق یل تھی دبن ائراہیمی کے نیروکار تھ‬ ‫اسالم سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے انمان کو ثوس یدہ رکھا‪ ،‬اپ کو کقار ئے ح یگ ندر میں شرکت کرئے ئر‬ ‫ے ا بئ‬ ‫ے کے لئ‬ ‫لیکن کقار کے گزند سے محقوظ ر ہئ‬ ‫محیور کیا تھا‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ رسول اسالم ئے ناکید قرمانی کہ وہ ہاشمی جو اس ح یگ میں دشمن کے ساتھ مکہ سے خیرا‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫الئے جابیں اتھیں ق یل یہ کیا جائے‪ ،‬ح یگ کے احت یام ئر ح یاب ق یل رسول اسالم کے ہمراہ ہوئے اور اپ ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھانی حصرت علی کی جدمت میں گذاردی۔‬ ‫ساری عمر ا تحصرت اور ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے‪ ،‬اپ مسجد بیوی میں پییھ کر لوگوں کو ان کے نسب کی‬ ‫ح یاب ق یل عرب کے ماہر نسب س یاس تھی تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے انک سجاع‬ ‫ے قرزند امام حسین کے لئ‬ ‫ے‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ حب حصرت امیر المومئین ا بئ‬ ‫ت فصیالت سے اگاہ کرئے تھ‬ ‫‪123‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے ثو اپ ئے ح یاب ق یل ہی سے مشورہ کیا تھا اور ان کی تجوئز ئر حصرت علی ئے‬ ‫ے تھ‬ ‫ناور و تھانی کا اہتمام کرنا جا ہئ‬ ‫قاطمہ کالنیہ سے سادی کی جن سے ح یاب عیاس میولد ہوئے۔‬

‫ع‬ ‫ح یاب ق یل کے پہاں مج یلف ازواج سے ‪ ۰۸‬قرزند اور ‪ ۸‬ن بت یاں میولد ہوبیں‪ ،‬جن کے نام نار تخ میں کجھ اس طرح سے‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ملئ‬ ‫لڑکیوں کے نام‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ زبیب‪ :‬اپ ح یاب ق یل کی ن بییوں میں سب سے ئڑی تھیں اور کہا جانا ہے کہ اپ ئے امام حسین علنہ السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔ ‪۶‬۔ ام عید ہللا ۔ ‪۰‬۔ رملہ‪ :‬اپ تھی ساعرہ تھیں اور اپ ئے کرنال میں شہید ہوئے والے‬ ‫ے کہ‬ ‫ے مر بئ‬ ‫کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ع‬ ‫ے ہیں۔ ‪۳‬۔ ام القاشم ۔ ‪۹‬۔ ام ہانی‪ :‬اپ امام حسین علنہ السالم کی شہادت کے تعد تھی‬ ‫ے کہ‬ ‫ے مر بئ‬ ‫ال ق یل کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ع‬ ‫نا حیات تھیں۔ ‪۲‬۔ قاطمہ ۔ ‪۳‬۔ ام تعمان (ام لقمان)‪ :‬اپ ئے تھی شہدائے ال ق یل اور امام حسین علنہ السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے کہ‬ ‫ے مر بئ‬ ‫ے ہیں۔ ‪۸‬۔ اسماء ‪ :‬اپ ئے امام حسین علنہ السالم کے لئ‬ ‫ے کہ‬ ‫ے مر بئ‬ ‫کے لئ‬ ‫روانت میں میقول ہے کہ تعد از شہادت امام حسین علنہ السالم ام لقمان‪ ،‬ابنی پہیوں تعنی اسماء‪ ،‬ام ہانی‪ ،‬رملہ‪ ،‬زبیب‬ ‫ے مرنیہ‬ ‫ے شہدائے کرنال کے لئ‬ ‫کے ساتھ قیر رسول ئر نشرتف لے جابیں اور گریہ و نکا کے تعد مہاچربن و انصار کے سا مئ‬ ‫ئڑھنی تھیں۔‬

‫قرزندوں کے نام‪:‬‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ ئزند‪ ،‬اسی قرزند کے نام ئر ح یاب ق یل کی کییت اثوئزند قرار نانی ۔‪۶‬۔ سعید ۔‪۰‬۔ انان ۔‪۳‬۔ عتمان ۔ ‪۹‬۔ عید الرجمان‬ ‫۔‪۲‬۔ حمزہ ۔‪۳‬۔ جعقر االکیر ۔‪۸‬۔ عید ہللا االکیر ۔‪۰‬۔ عید ہللا االضعر ۔ ‪۰۹‬۔ جعقر االوسط ۔‪۰۰‬۔ جعقر االضعر ۔‪۰۶‬۔ علی االکیر ۔ ‪۰۰‬۔‬ ‫ع‬ ‫علی االضعر ۔‪۰۳‬۔ عیسی ۔ ‪۰۹‬۔ دمحم االکیر ۔‪۰۲‬۔ مسلم ۔‪۰۳‬۔ اثوسعید االجول ۔‪۰۸‬۔ عید میاف‪ ،‬مورخین ئے ح یاب ق یل‬

‫‪124‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہیں جن کے اسامی مذکورہ ئربیب کے م طاثق یہ ہیں‪ :‬۔‪۰۰‬۔ دمحم االضعر ۔‪۶۹‬۔‬ ‫کے اور تھی قرزندوں کے نام درج کئ‬ ‫ع‬ ‫جکم ۔‪۶۰‬۔ ق یل ۔‪۶۶‬۔ معین ۔‪۶۰‬۔ عید ہللا االوسط ۔‪۶۳‬۔ اجمد ۔‪۶۹‬۔ فصل۔‬ ‫ع‬ ‫ح یاب ق یل ابن ابت طالب کے مذکورہ نمام قرزندوں میں سے میدرجہ ذنل ‪ ۰۲‬قرزند کرنال میں شہید ہوئے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ اثوسعید۔ ‪۶‬۔ اجمد ۔‪۰‬۔ جعقر االکیر ۔‪۳‬۔ جکم ۔‪۹‬۔ حمزہ ۔‪۲‬۔ سعید ۔‪۳‬۔ عید الرجمان االکیر۔ ‪۸‬۔ عید ہللا االضعر۔ ‪۰‬۔ عید ہللا‬ ‫ع‬ ‫االکیر ۔ ‪۰۹‬۔ ق یل۔ ‪۰۰‬۔ علی االکیر ۔‪۰۶‬۔ عون ۔‪۰۰‬۔ دمحم االکیر۔ ‪۰۳‬۔ مسلم۔ ‪۰۹‬۔ معین۔ ‪۰۲‬۔ موسی۔‬

‫جعقر بن اثوطالب‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو سنہ ‪ ۰۰‬ق یل از ہحرت کو ن یدا ہوئے اور اپ ئے سنہ ‪ ۸‬ہحری میں ح یگ‬ ‫جعقر طیار اثوطالب کے پیشرے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫مویہ میں شہادت نانی‪ ،‬رسول اسالم ئے اپ کے نارے میں قرمانا کہ ہللا ن یارک و تعالی جعقر کو انکی جار حصلیوں کی وجہ‬ ‫سے دوست رکھیا ہے‪:‬‬ ‫ے سجدہ یہ کرنا‪ ،‬ح یکہ‬ ‫‪۰‬۔ انکا کیھی شراب یہ پت یا ۔‪۶‬۔ کیھی چھوٹ یہ ثولیا ۔‪۰‬۔ کیھی زنا یہ کرنا۔ ‪۳‬۔ کیھی کسی نت کے سا مئ‬ ‫ے۔‬ ‫یہ نمام امور زمای ٔہ جاہلیت میں عام ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ہللا تعالی ئے ح یاب جعقر طیار کو اسماء بیت عمیس سے اتھ قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬جن کے اسماء یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ عید ہللا االکیر ۔‪۶‬۔ عون (شہید کرنال)۔‪۰‬۔دمحم االکیر (اپ ح یگ ص فین میں شہید ہوئے) ۔‪۳‬۔ دمحم االضعر (شہید‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫کرنال)۔‪۹‬۔حمید ۔‪۲‬۔ حسین۔ ‪۳‬۔ عید ہللا االوسط ۔‪۸‬۔ عید ہللا االضعر۔ تعض مورخین ئے اپ کے قرزندوں میں حمزہ کا‬ ‫تھی نذکرہ کیا ہے‪ ،‬پہاں اس نات کا اجتمال ہے کہ حمید اور حمزہ دوثوں انک ہی قرد کے دو نام ہوں‪ ،‬جونکہ جیھوں ئے‬ ‫حمزہ کا نذکرہ کیا ہے اتھوں ئے حمید کا نذکرہ پہیں کیا ہے۔‬

‫‪125‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علی بن ابت طالب‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ ئے مج یلف زماثوں میں اتھ عقد قرمائے‪ ،‬اپ‬ ‫ے قرزند ت ھ‬ ‫حصرت علی ابن انی طالب ح یاب اثوطالب کے جو تھ‬ ‫کی ازواج میں حصرت قاطمۃ الزہرا سالم ہللا علیہا‪ ،‬امامہ العیشمنہ‪ ،‬قاطمہ کالنیہ‪ ،‬جولہ جیفنہ‪ ،‬اسماء جبعمنہ‪ ،‬مجیاۃ الکلینہ‪ ،‬ام سعید‬ ‫ٓ‬ ‫الی قفنہ‪ ،‬لیلی الیھسلنہ سامل ہیں‪،‬ان از ازواج میں سے ہر انک سے ہللا تعالی ئے اپ کو قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬ان کے‬ ‫ٓ‬ ‫عالوہ ح ید کبیزوں سے تھی اپ کو اوالد ہونی ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر ہر زوجہ اور کبیز سے امام علی علنہ السالم کی اوالد کا نذکرہ‬ ‫کرئے ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ قاطمہ زہرا بیت دمحم‪ :‬اپ زوجہ امام علی تھیں اور امام حسن‪ ،‬امام حسین‪ ،‬حصرت زبیب‪ ،‬حصرت ام کلیوم اور ح یاب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۶‬۔ امامہ بیت انی العاص العیشمنہ‪ :‬اپ زوجہ امام علی تھیں اور دمحم االوسط اور عید الرجمان اپ‬ ‫محسن اپ کی اوالد ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۰‬۔ قاطمہ بیت چرام الکالنیہ‪ :‬اپ زوجہ امام علی تھیں اور عیاس االکیر‪ ،‬جعقر االکیر‪ ،‬عید ہللا االکیر‪ ،‬عتمان‬ ‫کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫االکیر اپ کے قرزند ت‬ ‫ع‬ ‫ج‬ ‫الیفنہ‪ :‬اپ زوجہ امام علی تھیں اور دمحم االکیر (ابن جیفنہ) اپ کے قرزند‬ ‫ر‬ ‫ق‬ ‫ت‬ ‫ی‬ ‫ولہ‬ ‫ج‬ ‫۔‬ ‫‪۳‬‬ ‫۔‬ ‫ے‬ ‫ھ‬ ‫ح‬ ‫ب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۹‬۔ صہیاء بیت عیاد بن رببعہ البعلینہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور عمر االکیر اور رفنہ الکیری اپ کے قرزند و دخیر‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۳‬۔‬ ‫ے ۔‪۲‬۔ اسماء بیت عمیس ا حلبعمنہ‪ :‬اپ زوجہ امام علی تھیں اور حتنی‪ ،‬عون اور مسلمہ اپ کے قرزند و دخیر تھ‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۸‬۔ ام معین‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں‪،‬‬ ‫ام عون االکیر‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور عون االکیر اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ۔‪۰‬۔ مجیاۃ بیت امرو القیس الکلینہ‪ :‬اپ امام علی کی زوجہ تھیں اور ام تعلی اپ کی دخیر‬ ‫اور معین اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھیں ۔‪۰۹‬۔ ام سعیب المحرومنہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور تقیشہ‪،‬زبیب الصعری‪،‬رفنہ الصعری اپ کی دخیر تھیں ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰۰‬۔ ام میمویہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور میمویہ اپ کی پینی تھیں ۔ ‪۰۶‬۔ ام امامہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور امامہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی پینی تھیں ۔‪۰۰‬۔ ام قاطمہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور قاطمہ اپ کی دخیر تھیں ۔‪۰۳‬۔ ام رملہ الصعری‪ :‬اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫امام علی کی کبیز تھیں اور رملۃ الصعری اپ کی پینی تھیں ۔ ‪۰۹‬۔ام تفنہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور تفنہ اپ کی دخیر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۰۳‬۔ ام قاجنہ‪ :‬اپ امام علی‬ ‫تھیں ۔‪۰۲‬۔ ام جعقر االضعر‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور جعقر االضعر اپ کے قرزند تھ‬ ‫‪126‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کی کبیز تھیں اور قاجنہ اپ کی پینی تھیں ۔‪۰۸‬۔ والدۃ ام سلمہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور ام سلمہ اپ کی دخیر تھیں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫۔‪۰۰‬۔ ام امۃ ہللا‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور امۃ ہللا اپ کی پینی تھیں ۔‪۶۹‬۔ والدۃ ام ابیھا‪ :‬اپ امام علی کی کبیز‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھیں اور ام ابیہا اپ کی دخیر تھیں ۔‪۶۰‬۔ والدۃ ام الکرام‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور ام الکرام اپ کی پینی تھیں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۶۰‬۔‬ ‫۔‪۶۶‬۔ لیلی بیت مسعود الیھسلنہ‪ :‬اپ زوج ٔہ امام علی تھیں اور عید ہللا االضعر‪ ،‬اثونکر‪ ،‬عت ید ہللا اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۶۳‬۔ ام عمر االضعر‬ ‫الورقاء ام دمحم االضعر‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور دمحم االضعر‪ ،‬عیاس االضعر اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۶۹‬۔ ام عتمان االضعر‪ :‬اپ امام علی کی کبیز‬ ‫المض طلفنہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور عمر االضعر اپ کے قرزند ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے ۔‪۶۲‬۔ ام القاشم‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور قاشم اپ کے قرزند ت ھ‬ ‫تھیں اور عتمان االضعر اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫ے ۔‪۶۸‬۔ ام جدتجہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں‬ ‫۔‪۶۳‬۔ ام ا فصل‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور فصل اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اور جدتجہ اپ کی دخیر تھیں ۔ ‪۶۰‬۔ ام جمایہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور جمایہ اپ کی پینی تھیں ۔‪۰۹‬۔ ام ائراہیم‪ :‬اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ۔‪۰۰‬۔ ام اسماء‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور اسماء اپ کی دخیر‬ ‫امام علی کی کبیز تھیں اور ائراہیم اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھیں ۔‪۰۶‬۔ ام یمیمہ‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں اور یمیمہ اپ کی دخیر تھیں ۔‪۰۰‬۔ ام عییق‪ :‬اپ امام علی کی کبیز تھیں‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫اور عییق اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫محقق انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے اس مقام ئر موال امیر المومئین کی ازواج م طہرات اور اپ کی نمام‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫کبیزوں کی حیات طینہ ئر فصل روشنی ڈالی ہے حس کے تعد اپ کی اوالد میں سے کرنال میں شہید ہوئے والے‬ ‫قرزندوں کے ناموں کو اس ئربیب کے ساتھ درج قرمانا ہے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم ۔‪۶‬۔ اثونکر ۔‪۰‬۔جعقر االضعر ۔‪۳‬۔ جعقر االکیر ۔‪۹‬۔ ائراہیم ۔‪۲‬۔ عیاس االضعر ۔‪۳‬۔عیاس االکیر‬ ‫۔‪۸‬۔ عید الرجمان ۔‪۰‬۔ عید ہللا االضعر ۔‪۰۹‬۔ عید ہللا االکیر ۔‪۰۰‬۔ عییق ۔‪۰۶‬۔عتمان االضعر ۔‪۰۰‬۔ عتمان االکیر ۔‪۰۳‬۔ عمر االضعر‬ ‫۔‪۰۹‬۔ عون ۔‪۰۲‬۔ فصل ۔‪۰۳‬۔ قاشم۔ ‪۰۸‬۔ دمحم االوسط۔‬ ‫ٓ‬ ‫کرنال میں امیر المومئین کی اوالد کے ساتھ ساتھ اپ کے ثوئے تھی شہید ہوئے جن کے نام نار تخ میں ہمیں کجھ اس طرح‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫سے ملئ‬ ‫‪127‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسن علنہ السالم کی اوالد‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ اجمد بن حسن ۔‪۶‬۔ نشر بن حسن ۔‪۰‬۔زند بن حسن ۔‪۳‬۔ عید ہللا االضعر بن حسن ۔‪۹‬۔ حتنی بن حسن ۔‪۲‬۔ قاشم بن حسن‬ ‫۔‪۳‬۔ عید ہللا بن حسن ۔‪۸‬۔ عمر بن حسن۔‬

‫امام حسین علنہ السالم کی اوالد‪:‬‬

‫‪۰‬۔ ائراہیم بن حسین۔‪۶‬۔ اثونکر بن حسین ۔‪۰‬۔حمزہ بن حسین ۔‪۳‬۔زند بن حسین ۔‪۹‬۔عمر بن حسین ۔‪۲‬۔قاشم بن حسین‬ ‫۔‪۳‬۔دمحم بن حسین ۔‪۸‬۔عید ہللا بن حسین ۔‪۰‬۔ علی اکیر بن حسین ۔‪۰۹‬۔ علی االضعر بن حسین۔‬

‫حصرت عیاس کی اوالد‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ عت ید ہللا بن عیاس االکیر ۔‪۶‬۔ قاشم بن عیاس االکیر ۔‪۰‬۔دمحم بن عیاس االکیر۔‬

‫عید ہللا بن جعقر الطیار و زبیب کیری کی اوالد‪:‬‬ ‫عون و دمحم‬

‫ع‬ ‫دمحم ابن ق یل و زبیب ضعری کے قرزند ‪:‬‬ ‫جعقر‬

‫‪128‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫مسلم ابن ق یل اور رفنہ الکیری کے قرزند‪:‬‬ ‫عید ہللا‬

‫ع‬ ‫عید الرجمان بن ق یل و جدتجہ کے قرزند‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ق یل‬

‫ع‬ ‫عید ہللا االکیر بن ق یل اور ام ہانی کے قرزند‪:‬‬ ‫دمحم‬

‫م‬ ‫ے ہوئے نمام شہدائے بنی ہاشم کی سوا تح‬ ‫مذکورہ اسماء شہداء کے نذکرہ کے تعد مصتف ئے الق یاء کی ئربیت کو لجوظ ر کھئ‬ ‫ے ہوئے اجماال ہر انک شہید کا نذکرہ کرئے ہیں‪:‬‬ ‫حیات کو ن یان قرمانا ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر اسی ئربیب کو مد ب ظر ر کھئ‬

‫ائراہیم بن حسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪ ۳۸‬ہحری میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کے نارے میں نار تخ سے پہت کم معلومات جاصل ہونی ہیں‪ ،‬ساند‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہونی‪ ،‬اور‬ ‫اپ کی والدہ کا نام عانکہ بیت زند العدویہ تھا‪ ،‬کرنال میں اپ کی شہادت امام حسین علنہ السالم کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫اجتمال اس نات کا ہے کہ اپ ئے دشمیوں کے اجتماغی جملہ میں شہادت نانی ہو۔‬

‫‪129‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ائراہیم بن علی بن ابتطالب بن عید الم طلب بن ہاشم بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ائراہیم بن علی سنہ ‪ ۳۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی ماں ام ولد ( کبیز) تھیں‪ ،‬اپ کی عمر کرنال میں تقرن یا پیس (‪ )۶۹‬سال‬ ‫ٓ‬ ‫تھی‪ ،‬اپ کو زند بن دقاف ئے شہید کیا۔‬

‫ع‬ ‫ائراہیم بن مسلم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ائراہیم بن مسلم سنہ ‪ ۹۳‬ھ کو مدنیہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کا لقب م طہر تھا‪ ،‬اپ کو اور اپ کے تھانی دمحم (جیکا لقب طاہر‬ ‫ع‬ ‫تھا) کو جارث بن عروۃ ئے کوفہ میں ح یاب مسلم ابن ق یل کی شہادت کے تعد ابن زناد سے اتعام نائے کی عرض سے‬ ‫ئڑی ئے رحمی کے ساتھ شہید کیا۔‬

‫اثونکر بن حسن بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ے اور اور ‪ ۰۳‬ن بت یاں تھیں جن کے اسامی الق یاء کی ئربیب سے کجھ اس طرح ہیں‪:‬‬ ‫ح یاب امام حسن علنہ السالم کے ‪ ۶۳‬پیئ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ اثونکر (شہید کرنال) ۔‪۶‬۔ اجمد (شہید کرنال) ۔‪۰‬۔اسماعیل۔‪۳‬۔نشر (نسیر) (شہید کرنال) ۔‪۹‬۔ جعقر ۔‪۲‬۔ حسن مینی‪ ،‬اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ے) ۔‪۰۹‬۔ طلجہ۔ ‪۰۰‬۔ عید‬ ‫ے ۔‪۳‬۔ حسین ۔‪۸‬۔ حمزہ ۔‪۰‬۔ زند (اپ کرنال میں جاضر ہوئے ت ھ‬ ‫کرنال میں جاضر ہوئے ت ھ‬ ‫الرجمان ۔‪۰۶‬۔ عید ہللا االضعر (شہید کرنال) ۔ ‪۰۰‬۔ عید ہللا االکیر (شہید کرنال) ۔‪۰۳‬۔ عید ہللا االوسط (شہید کرنال) ۔‪۰۹‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے۔‪۰۰‬۔ قاشم (شہید کرنال) ۔‪۶۹‬۔ دمحم‬ ‫ق یل ۔‪۰۲‬۔ علی االضعر ۔‪۰۳‬۔ علی االکیر ۔‪۰۸‬۔ عمر‪ ،‬اپ کرنال میں پ ہت کمسن تھ‬ ‫االضعر ۔‪۶۰‬۔ دمحم االکیر ۔‪۶۶‬۔مرازم ۔‪۶۰‬۔ حتنی ۔‪۶۳‬۔ تعقوب۔‬ ‫‪۰‬۔ ام الحسن (الکیری) ۔‪۶‬۔ ام الحسن ( الوسطی) ۔‪۰‬۔ ام الحسن (الصعری) ۔‪۳‬۔ ام الحسین ۔‪۹‬۔ ام الحیر ۔‪۲‬۔ام‬ ‫سلمہ ۔‪۳‬۔ ام عید الرجمان ۔‪۸‬۔ ام عید ہللا ۔‪۰‬۔ بیت الحسن ۔‪۰۹‬۔ رفنہ ۔‪۰۰‬۔زبیب ۔‪۰۶‬۔سکینہ ۔‪۰۰‬۔ قاطمہ الکیری‬ ‫۔‪۰۳‬۔ قاطمہ الصعری۔ اگر ام الحیر کا نام رملہ یہ ہو ثو امام حسن علنہ السالم کی ن بییوں کی تعداد ‪ ۰۹‬ہوگی۔‬ ‫‪130‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫اثو نکر بن حسن کرنال میں شہید ہوئے اپ ئر امام عسکری ئے زنارت ناجنہ میں ثوں سالم ھیجا ہے‪ :‬السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ے نی ر‬ ‫علی ابی بکر بن حسن‪ ،‬اسی زنارت کے م طاثق اپ کے قانل کا نام عید ہللا بن عفنہ العیوی تھا حس ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے ذرتعہ اپ کو شہید کیا۔‬

‫اثو نکر بن حسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫تعض ارناب مقانل ئے جن میں مسعودی‪ ،‬نالذری‪ ،‬اثو القرج اصقہانی سامل ہیں اثونکر کو امام حسین علنہ السالم کی اوالد‬ ‫ٓ‬ ‫میں سامل کیا ہے‪ ،‬لیکن ممکن ہے کہ یہ اثونکر بن حسن ہوں جونکہ تعض کیب میں چہاں اثونکر بن حسن کا نذکرہ انا ہے‬ ‫ٓ‬ ‫وہاں اثونکر بن حسین کا نام ب ظر پہیں ا نا۔ وہللا العالم۔‬

‫اثونکر بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ سنہ ‪۰۸‬ھ میں میولد ہوئے‪ ،‬میدرجہ ذنل رچز کو اپ ئے کرنال میں میارز طلب کرئے وقت ئڑھا تھا‪:‬‬ ‫شیخی علی ذو الفخار االطول‪ ،‬من ھاشم الصدق الکریم المفضل‪ ،‬ھذا حسین ابن النبی المرسل‪ ،‬عنہ نحامی‬ ‫بالحسام المصقل‪ ،‬تفدیہ نفسی من اخ مبجل‪ ،‬یارب فامنحنی ثواب المنزل‬ ‫میرے ئزرگ علی ہیں جو پہانت نلید نایہ سحصنت ہیں‪ ،‬جو ہاشمی جاندان سے ہیں کہ جو صداقت ‪ ،‬ئزرگی اور‬ ‫فص یلیوں والے ہے‪ ،‬یہ حسین ہیں جو بنی مرسل کے قرزند ہیں‪ ،‬ہم ان کی جمانت کرئے ہیں نیز دھار نلواروں کے ساتھ‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ج‬ ‫ے اچرت کا ثواب ع طا قرما۔‬ ‫میری جان میرے لیل القدر تھانی ئر قدا ہو‪ ،‬ئروردگارا مجھ‬

‫ع‬ ‫اثو سعید بن ق یل بن ابتطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اثوسعید سنہ ‪ ۰۲‬ھ میں ن یدا ہوئے‪ ،‬اپ کی زوجہ قاطمہ بیت علی تھیں جو کرنال میں جاضر ہوبیں‪ ،‬اپ کی شہادت کے نارے‬ ‫ٓ‬ ‫میں زنادہ ت قاصیل موجود پہیں ہیں یہ امر مسلم ہے کہ اپ سنہ ‪ ۲۰‬ھ کو کرنال میں شہید ہوئے۔‬

‫‪131‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫اجمد بن حسن بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ے‬ ‫اجمد بن حسن سنہ ‪ ۳۳‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اثو حمیف قرمائے ہیں کہ حب امام حسین کے ناور و انصار شہید ہو جک‬ ‫ٓ‬ ‫ے داہنی اور نابیں جانب نگاہ کی اور قرمانا‪:‬‬ ‫ثو اپ ئے ا بئ‬ ‫وا غربتاہ وا عطشاہ وا قلۃ ناصراہ‪ ،‬اما من معین یعیننا‪ ،‬اما من ناصر ینصرنا‪ ،‬اما من مجیر یجیرنا‪ ،‬اما‬ ‫من محام یحامی عن حرم رسول ہللا‬ ‫ہائے عرنت‪ ،‬ہائے ن یاس‪ ،‬ہائے مددگاروں کی کمی‪ ،‬کیا کونی ہمارا مددگار ہے؟ کیا کونی ہے جو ہماری نصرت‬ ‫کرے؟ کیا کونی ہے جو ہمیں شہارا دے؟کیا کونی ہے جو رسول جدا کی مجدرات کا دقاع کرے؟ یہ شن کر اجمد بن حسن اور‬ ‫ے ح یاب قاشم ئے شرنت شہادت کو ثوش قرمانا‬ ‫ے ہوئے جیمہ سے ناہر نشرتف الئے‪ ،‬پہل‬ ‫قاشم بن حسن لت یک لت یک کہئ‬ ‫اور ان کے تعد اجمد بن حسن کی شہادت وا فع ہونی۔‬

‫ع‬ ‫اجمد بن دمحم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے حجا موسی بن ق یل کی شہادت کے تعد‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪ ۳۳‬ھ میں میولد ہوئے‪ ،‬اثو حمیف کی روانت کے م طاثق اپ ا بئ‬ ‫م ٔ‬ ‫عرکہ ح یگ میں وارد ہوئے اور یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫الیوم ابلو حسبی و دینی‪ ،‬بصارم تحملہ یمینی‪ ،‬احمی بہ عن سیدی و دینی‪ ،‬ابن علی الطاھر االمین‬ ‫ٓ‬ ‫ے دبن کی فوت دکھانا ہوں اس نلوار کے ساتھ جو میرے دابیں ہاتھ میں ہے‪ ،‬اس‬ ‫ے حسب اور ا بئ‬ ‫اج میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اقا کا دقاع کرنا ہوں کہ جو طاہر و امین ہشنی علی کے قرزند ہیں‪ ،‬اس رچز کے تعد اپ‬ ‫ے دبن اور ا بئ‬ ‫ے میں ا بئ‬ ‫کے ذر ت ع‬ ‫ے۔‬ ‫ئے جملہ کیا اور ‪ ۸۹‬دشمیوں کو واصل چہیم کرئے کے تعد درج ٔہ شہادت ئر قائز ہو گئ‬

‫‪132‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫اجمد بن مسلم بن ق یل بن ابتطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫اجمد بن مسلم ئے اسجاق بن مالک االسیر کے تعد امام حسین علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہو کر ح یگ کی اجازت لی اور‬ ‫میدان ح یگ میں وارد ہو کر اس رچز کو ئڑھا‪:‬‬ ‫ب ُ‬ ‫غالم صادق من‬ ‫ض ْر َ‬ ‫سقَہ‪ ،‬اضربُکم بصارم ذی َر ْونَق‪َ ،‬‬ ‫اطلب ثا َر مسلم من َج ْمعکم‪ ،‬یا شر قوم ظالمینَ فَ َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫الوغی‪ ،‬صیرتُہ‬ ‫فی‬ ‫التقانی‬ ‫لما‬ ‫جاھد‬ ‫کم‬ ‫الشفقہ‪،‬‬ ‫ب‬ ‫ح‬ ‫ی‬ ‫من‬ ‫م‬ ‫اکن‬ ‫م‬ ‫ل‬ ‫و‬ ‫ناکصا‪،‬‬ ‫لقانی‬ ‫عمن‬ ‫انثنی‬ ‫ال‬ ‫دقہ‪،‬‬ ‫ص‬ ‫ِ‬ ‫ُ‬ ‫ِ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ ْ‬ ‫کاللَبنۃ ال ُمفَلقہَ‬ ‫ے یم ئر انک‬ ‫میں یم سے مسلم کے جون کا ندلہ لت یا ہوں‪ ،‬اے طالم و قاسق لوگو‪ ،‬میں اس حمکنی نلوار کے ذر ت ع‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے اوئر ئاے والی کسی مصییت کی ئرواہ پہیں ‪،‬‬ ‫ے ا بئ‬ ‫انسی کاری ضرب لگاوں گا کہ جو انک سجا پہادر جوان لگانا ہے‪ ،‬مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں ئاےکہ میں‬ ‫ے جی گجو میدان میں میرے مقا نل‬ ‫اور یہ ہی میں ان میں سے ہوں جو ہمدردثوں کو نسید کرئے ہیں‪ ،‬کیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اتھیں تھیڑ نکری کی طرح خیر تھاڑ دنا‪ ،‬اس رچز کو ئڑھ کر اپ ئے جملہ کیا‪ ،‬اور حمع کبیر کو واصل چہیم قرما کر جام شہادت کو‬ ‫ثوش قرمانا۔‬

‫‪133‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪134‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار‬ ‫جلد دوم‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار" بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی دوشری جلد ( جو ‪ ۲۰۳‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۶‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۸‬ء میں زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫م طالب کی حلیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪135‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪136‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ا جاب امام حسین علنہ السالم ( ٔ‬ ‫صہ دوم)‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫(کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء)‬

‫ے والے اور نیروکار ہوئے ہیں کہ جیھیں اصجاب نا جوارثون کے نام سے جانا جانا ہے‪ ،‬وہ‬ ‫ہر بنی اور رسول کے جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں ۔‬ ‫اقراد کہ جیھیں دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم کی رقاقت و مصاجیت جاصل ہونی اتھیں اصجاب کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ل فظ صجانی مصدر صجنۃ سے مستق ہے‪ ،‬قران مج ید میں مج یلف مقامات ئر ہللا ن یارک و تعالی ئے اس ل فظ کو اشیعمال کیا‬ ‫ہے‪ ،‬میال انک مقام ئر ذات اجدنت ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ال یستوی اصحاب النار و اصحاب الجنۃ اصحاب الجنۃ ھم الفائزون ( ٔ‬ ‫سورہ حشر انت ‪)۶۹‬‬ ‫چ‬ ‫ے‪ ،‬اور اصجاب جیت کامیاب ہیں۔‬ ‫تعنی اصجاب جیت اور اصجاب نار ( ہیمی اصجاب) ئرائر پہیں ہو سکئ‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ تعرتف اور ایہ میارکہ کی روشنی میں واصح ہونا ہے کہ کسی تھی ببعمیر کے ساتھ مصاجیت احت یار کرئے واال‬ ‫چ‬ ‫ے عمل کی ن یا ئر حینی نا ہیمی ہوئے ہیں‪ ،‬لہذا ہر‬ ‫سحص‪ ،‬محض مصاجیت کی وجہ سے مقدس پہیں ہو سکیا‪ ،‬نلکہ اصجاب ا بئ‬ ‫ش‬ ‫ے اور تھر ان معیارات ئر اصجاب ببعمیر کو‬ ‫ے مرجلہ میں صجابیت کے معیار کو مجھ‬ ‫ے ضروری ہے کہ وہ پہل‬ ‫مسلمان کے لئ‬ ‫ے۔‬ ‫ے‪ ،‬ناکہ اس عمل کے ذرتعہ و ہ خ طاکار صجانی سے دوری احت یار کرکے اصجاب الجنۃ کی نیروی کر سک‬ ‫ئر کھ‬ ‫ے مجلیف تعرت فیں را تج ہیں لیکن حفیقت میں صجانی اس سحص کو کہا جانا‬ ‫مسلماثوں کے درمیان صجانی کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے جو رسول اسالم کی حیات میں اپ کی زنارت کرے ‪ ،‬اپ ئر انمان الئے اور اپ کی نیروی کرے ‪ ،‬اور اس انمان‬ ‫اور نیروی ئر ساری زندگی قایم رہے ‪ ،‬لہذا وہ صجانی کہ حس ئے رسول اسالم کی زندگی میں ان کی اطاعت کی ہو لیکن‬ ‫‪137‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫اتحصرت کی وقات کے تعد وہ ان کی نیروی سے تھر جائے ثو انسا سحص صجابیت کے مقدس مقام کو کھو دن یا ہے اور‬ ‫رصانت دمحمی اور رصانت رب تھی اس سے سلب ہو جانی ہے ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ا تحصرت کی زندگی کے تعد نار تخ اسالم میں اصجاب کے درمیان سدند اح یالقات وجود میں ائے پہاں نک کہ‬ ‫ٓ‬ ‫ان کے درمیان جمل‪ ،‬ص فین و پہروان حیسی جیگیں وجود میں ابیں‪ ،‬جن میں صجایہ ئے انک دوشرے کو ئڑی ئے‬ ‫رحمی کے ساتھ ق یل کیا‪ ،‬اور سالہا سال ان میں سے انک قرثق ئے دوشرے قرثق ئر سب و شیم کیا۔‬ ‫حب اصجاب کے درمیان طالم و م طلوم‪ ،‬قانل و مفیول‪ ،‬عاصب و معصوب عنہ دوثوں موجود ہوں ثو ان میں‬ ‫سے ہر انک کو ئرائر درجہ اور مقام دن یا عدالت کے میاقی قرار نائے گا‪ ،‬لہذا ہر مسلمان کا قرنصہ ہے کہ وہ تحفیق و ئررسی‬ ‫ٓ‬ ‫کے تعد اس صجانی کی نیروی کرے حس کا فول‪،‬فعل اور سیرت ا تحصرت کے قرمودات کے م طاثق ہو ناکہ اس ذرتعہ‬ ‫ے۔‬ ‫سے اسکی دبنی راہ کا تعین ہو اور وہ جق وحفیقت نک رسانی جاصل کر سک‬ ‫ے‬ ‫ے کہ جیھوں ئے دبن اسالم کی ت قا ء کے لئ‬ ‫ے تھی تھ‬ ‫پیسک ببعمیر اسالم کے اصجاب میں سے کجھ ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫ابنی جان و مال سے ا تحصرت کی نصرت کی‪ ،‬لیکن نار تخ اسالم میں اصجاب امام حسین علنہ االسالم کی قرنان یاں ئے ب ظیر‬ ‫ے اصجاب کے نارے میں قرمانا‪:‬‬ ‫ہیں پ ہی وجہ ہے کہ امام عالی مقام ئے ا بئ‬ ‫فانی ال اعلم اصحابا اوفی و ال خیرا من اصحابی‪ ،‬و ال اھل بیت ابر و ال اوصل من اھل بیتی‪ ،‬فجزاکم ہللا‬ ‫عنی جمیعا خیرا‬ ‫ت‬ ‫ہ‬ ‫ے ا لییت سے زنادہ‬ ‫ے‪ ،‬اور یہ ہی ا بئ‬ ‫ے اصجاب اور سا ھیوں سے زنادہ وقادار اور پہیر اصجاب پہیں د یکھ‬ ‫میں ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ن یک و صا لح اور ہمدل کونی اہلییت نائے ہیں‪ ،‬ہللا تعالی اپ سب کو میری طرف سے چزائے خیر ع طا قرمائے۔‬ ‫ے نس پ ہی کاقی ہے کہ وہ دنگر ای مہ کے اصجاب ئر ئرئری‬ ‫اصجاب امام حسین علنہ السالم کی عظمت کے لئ‬ ‫ے رونما ہوئے والی نمام ح یگوں میں صجایہ کرام ئے فیح نانی کی امید میں ح یگ کی لیکن‬ ‫ے ہیں جونکہ وافعہ کرنال سے پہل‬ ‫ر کھئ‬ ‫کرنالنی شہداء ئے شہادت کے ت فین کے ساتھ امام حسین علنہ السالم ئر اس وقت ابنی جاثوں کو قرنان کردنا ح یکہ امام‬ ‫عالی مقام ئے اتھٰیں ئرک ح یگ کی ثوری اجازت دے رکھی تھی۔‬

‫‪138‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫پ ہی وجہ ہے جو مقام ان قداکار اور جان یار اصجاب کو مال وہ رنیہ کسی اور معصوم کے صجانی کو جاصل یہ ہو سکا‪،‬‬ ‫ے ی مویہ عمل ہے‪ ،‬اسی اہمیت کے پیش ب ظر دائرۃ المعارف کے‬ ‫ے اصجاب کی زندگی نمام مسلماثوں کے لئ‬ ‫لہذا ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫ے کی عرض‬ ‫مصتف انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے امام حسین علنہ السالم کے اصجاب کی حیات طینہ ئر روشنی ڈا لئ‬ ‫سے اس دائرۃ المعارف کی ‪ ۲‬جلدوں کو معحم انصار حسین (ہاشمی و غیر ہاشمی‪ ،‬مرد و عورت) سے حمیص قرمانا ہے ‪ ،‬حس‬ ‫میں مصتف ئے الق یاء کی ئربیب کے تجت انصار امام حسین کا نذکرہ کیا ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر معحم انصار حسین (ہاشمی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫انصار) کی جلد دوم ( جو ‪ ۲۰۳‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۸‬عیشوی میں زثور طبع سے اراسنہ ہو کر مت ظر عام ئر اجکی‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ہے) میں موجودہ م طالب ئر اجمالی روشنی ڈا لئ‬

‫نشر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪ ۳۰‬ہحری کو میولد ہوئے‪ ،‬ضرف شہر ابن اسوب (‪)1‬ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے‪ ،‬لہذا نار تخ‬ ‫ٓ‬ ‫میں اپ کے مبعلق زنادہ م طالب درج پہیں ہیں۔‬

‫جعقر االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ محرم الحرام سنہ ‪۳۰‬ھ میں تعد از شہادت امام علی علنہ السالم میولد ہوئے‪ ،‬تعنی موال علی کی شہادت کے وقت اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کی مادر گرامی اپ سے جاملہ تھیں‪ ،‬جونکہ ام التئین کے قرزند کا نام جعقر اکیر تھا لہذا اپ کو جعقر االضعر کے نام سے‬ ‫ٓ‬ ‫موسوم کیا گیا‪ ،‬ابن ق یدق (‪ )1‬ئے شمر ذی الجوشن الص یانی کو اپ کا قانل قرار دنا ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫‪ٓ 1‬‬ ‫ اپ کا نام دمحم بن علی بن شہر اسوب المازندرانی تھا جو سنہ ‪۳۸۸‬ھ میں مازندران ائران میں میولد ہوئے اور سنہ ‪ ۹۸۸‬ھ میں شہر جلب میں‬‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪،‬کیاب معالم العلماء اور میاقب ال ابت طالب اپ کی نصییقات ہیں۔‬ ‫ے تھ‬ ‫وقات نانی‪ ،‬اپ امامنہ مذہب سے تعلق ر کھئ‬

‫‪139‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫جعقر االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ے بین قرزندوں کو جعقر کے نام سے موسوم قرمانا تھا‪ ،‬جیھیں جعقر اکیر جعقر اوسط اور جعقر اضعر سے جانا‬ ‫ح یاب ق یل ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫جانا ہے‪ ،‬جعقر اکیر سنہ ‪ ۰۳‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام التئین الجوصا البعریہ تھا جو کرنال میں‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزند کی شہادت کو جیمہ کے در ئر کھڑے ہو کر دیکھا‪ ،‬حس وقت اپ ئے امام حسین علنہ السالم سے‬ ‫جاضر ہوبیں اور ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یگ کی اجازت لی اور میدان ح یگ میں وارد ہوئے ثو اپ ئے یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫انا الغالم االبطحی الطالبی‪ ،‬من معشر فی ھاشم و غالب‪ ،‬و نحن حقا سادة الذوائب‪ ،‬ھذا حسین اطیب‬ ‫االطائب‪ ،‬من عترة البر التقی الغالب‬ ‫ح‬ ‫ب‬ ‫میں ا طخی و طالنی جوان ہوں‪ ،‬ہاشم و عالب کی نسل سے ہوں‪ ،‬ہم ہی ہیں جو فیقی معنی میں پہادر و شردار‬ ‫ہیں‪ ،‬یہ حسین ہیں جو ناک ہسییوں کی ناکیزہ ئربن قرد ہیں‪ ،‬یہ ن یک و صا لح اور نلید نایہ غیرت میں سے ہیں‪ ،‬اس رچز کے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تعد اپ ئے ح یگ شروع کی اور ن یدرہ دشمیوں کو واصل چہیم کیا‪ ،‬نشر بن جوط ہمدانی ئے اپ کو شہید کیا‪ ،‬امام عسکری ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫زنارت ناجنہ میں اپ ئر اس طرح سالم ھ حیئ‬ ‫السالم علی جعفر بن عقیل لعن ہللا قاتلہ و رامیہ بشر بن حوط الھمدانی‬ ‫ع‬ ‫سالم ہو جعقر بن ق یل ئر ‪ ،‬ہللا لعیت کرے ان کے قانل اور ان ئر نیر جالئے والے نشر بن جوط ہمدانی ئر۔‬

‫جعقر االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫جعقر االکیر سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی ام التئین قاطمہ کالنیہ تھیں‪ ،‬اپ ام التئین کے دوشرے قرزند‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬روز عاسورا میدان ح یگ میں وارد ہو کر اپ ئے یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫لی‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام علی بن انی القاشم بن زند ا ی ہقی تھا جو سنہ ‪۳۰۰‬ھ میں سیزوار کے قری ٔہ ششتمد میں میولد ہوئے اور سنہ ‪۹۲۹‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬اپ‬ ‫ت ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬علم انساب میں اپ کو جاضی مہارت جاصل ھی‪ ،‬اپ کی ‪ ۳۲‬نالیقات‬ ‫کا سمار علماء امامنہ میں ہونا ہے‪ ،‬اپ ساعر‪ ،‬ادنب اور مصتف تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ہیں‪ ،‬امیلۃ االعمال الیجومنۃ‪ ،‬نار تخ بیہق‪ ،‬پہج االرساد قی االصول اپ کی نصییقات میں سے ہیں۔‬

‫‪140‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫انی انا جعفر ذو المعالی‪ ،‬ابن علی الخیر ذی النوال‪ ،‬ذاک الوصی ذو الثناء الوالی‪ ،‬حسبی بعمی شرفا و‬ ‫خالی‪ ،‬احمی حسینا ذالندی المفضال‪ ،‬و بالحسام الواضح الصقال‬ ‫میں جعقر ہوں جو اعلی صقات واال ہے‪ ،‬میں اس علی کا قرزند ہوں جو محش ٔ‬ ‫ے‪ ،‬وہ سانشن ٔہ‬ ‫مہ خیر اور ئرکیوں والے ت ھ‬ ‫ے کاقی ہیں‪ ،‬میں حسین کا سیاہی‬ ‫ے میرے حجا اور میرے ماموں ہی مجھ‬ ‫ے‪ ،‬میری عزت و شرف کے لئ‬ ‫ن یاء وضی و ولی تھ‬ ‫ع‬ ‫ہوں کہ جو ظمیوں اور فص یلیوں والے ہیں‪ ،‬میں اس نیز دھار حمکنی نلوار کے ساتھ ان کا دقاع کرئے جال ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد انک معرکہ اراء ح یگ وا فع ہونی‪ ،‬اور اچر میں ہانی بن پییت الحصرمی ئے اپ کو شہید کیا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫امام عسکری زنات ناجنہ میں اپ ئر ثوں سالم ھ حیئ‬ ‫السالم علی جعفر ابن امیر المومنین‪ ،‬الصابر بنفسہ محتسبا‪ ،‬والنائی عن االوطان مغتربا‪ ،‬المستسلم‬ ‫للقتال‪ ،‬المستقدم‪ ،‬للنزال‪ ،‬المکثور بالرجال‪ ،‬لعن ہللا ھانی بن ثبیت الحضرمی‬ ‫ے صائر ہوئے کا بیوت دنا‪ ،‬اور وطن سے دور‬ ‫سالم ہو جعقر بن امیر المومئین ئر کہ جیھوں ئے ہر مصییت و نکلیف میں ا بئ‬ ‫ے سے لگائے‬ ‫عرنت و ئردنس کی سحییوں کو تحمل کیا‪ ،‬جو میدان ح یگ میں فوت قلب کے ساتھ ائرے‪ ،‬جو نیزوں کو شیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬لعیت ہو (اپ کے قانل) ہانی بن پییت حصرمی‬ ‫ے تھرے میدان میں ائرے ت ھ‬ ‫ے‪ ،‬جو پہادروں سے کجھ‬ ‫والے تھ‬ ‫ئر۔‬

‫ع‬ ‫جعقر بن دمحم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے والد دمحم بن ق یل اور ابنی والدہ زبیب الصعری کے ہمراہ ت ھ‬ ‫جعقر بن دمحم سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کرنال میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ج‬ ‫اپ کی شہادت کے مبعلق مورخین کے درمیان اح یالف ہے تعض (جن میں ابن شہر اسوب‪ ،‬م لسی‪ ،‬جوارزمی‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫درن یدی سامل ہیں) ئے اپ کو شہدائے کرنال میں اور تعض دنگر ئےشہدائے چرہ میں سامل کیا ہے۔‬

‫ع‬ ‫جعقر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے مورخین ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے‪،‬‬ ‫اپ کی تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ھ کو والدت ہونی‪ ،‬طرتخی‪ ،‬درن یدی حیس‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫درن یدی ئے ت قل کیا ہے کہ روز عاسورا حس وقت اپ ئے میارز طلب کیا اور کونی تھی میارزہ ئر امادہ ب ظر یہ انا ثو اپ‬ ‫‪141‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ئے لسکر ئر جملہ کیا اور ان میں سے کنی اقراد کو ہالک قرمانا حس کے تعد اپ ئے عروہ بن عید ہللا الخعقی کے نیر سے‬ ‫شہادت نانی۔‬

‫حسن مینی بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے حجا کے ساتھ‬ ‫حسن مینی سنہ ‪۰۰‬ھ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام جولہ بیت متظور تھا‪ ،‬حسن مینی کرنال میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں کہ کرنال‬ ‫ے‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے ابنی پینی قاطمہ ضعری سے اپ کا عقد قرمانا‪ ،‬مورخین لکھئ‬ ‫نشرتف الئے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میں اپ ئے اپیس ‪ ۰۰‬دشمیوں کو واصل چہیم کیا‪ ،‬اس ح یگ میں اپ کے ندن ئر ‪ ۰۸‬ضرنئیں وارد ہوبیں جن کی وجہ سے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ثو لوگوں ئے اپ کے ندن میں رم ق‬ ‫ے جا رہے تھ‬ ‫ے‪ ،‬حب سب شہدا کے شر جدا کئ‬ ‫اپ عش کھاکر زمین ئر گر گئ‬ ‫ٓ‬ ‫حیات نانی‪ ،‬لسکر دشمن سے اسماء بن جارجہ قزاری ئے اپ کی س قاعت کی اور اس طرح حسن مینی کرنال میں شہید پہیں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫ہوئے‪ ،‬ولید بن عید الملک ئے اپ کو زہر دنا حس کے پییجہ میں اپ سنہ ‪۰۶‬ھ ہحری کو اس دار قانی سے وداع کر گئ‬

‫ع‬ ‫جکم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ت‬ ‫ع‬ ‫جکم بن ق یل کے مبعلق نار تخ میں زنادہ معلومات درج پہیں ہیں‪ ،‬رت عی ئے ابنی کیاب نار تخ مولد العلماء و وق یا ھم‬ ‫ٓ‬ ‫میں اپ کا نام شہدائے کرنال میں ذکر کیا ہے۔‬

‫حمزہ بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ابن ق یدق اور عمری ئے ابنی کیب میں اپ کو قرزندان امام حسن علنہ السالم میں سامل کیا ہے‪ ،‬ح یکہ کیاب میاقب ابن‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شہر اسوب میں اپ کا سمار کرنال میں شہید ہوئے والے قرزندان امام حسین علنہ السالم میں کیا گیا ہے‪ ،‬اپ کی کیفیت‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫شہادت کے مبعلق تھی مورخین کے درمیان اح یالف نانا جانا ہے یہ تھی ممکن ہے کہ اپ کا سمار ان تجوں میں ہو جو‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫گھوڑوں کی ناثوں میں اکر نا دم گھٹ کر شہید ہو گئ‬ ‫‪142‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫حمزہ بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫مورخ عمری ئے ا پ کا نذ کرہ شہدائے کرنال کے ذنل میں کیا ہے‪ ،‬اپ کے مبعلق نار تخ میں زنادہ معلومات درج‬ ‫پہیں ہیں۔‬

‫ع‬ ‫جالد بن جعقر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ع‬ ‫کیاب عصن الرسول میں اپ کو شہدائے ال ق یل کے زمرے میں سامل کیا گیا ہے۔‬

‫ع‬ ‫جالد بن سعید بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫جونکہ اپ سنہ ‪ ۹۲‬ہحرت کے تعد میولد ہوئے‪ ،‬لہذا اپ کا سمار ان اظقال میں ہونا ہے کہ جو کرنال میں کسی جادیہ کا سکار ہو‬ ‫ے۔‬ ‫ے تھ‬ ‫کر شہید ہو گئ‬

‫زند بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب زند سنہ ‪۶۹‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے اور سنہ ‪۰۶۹‬ھ میں ی مقام ب طجاء اپ کی وقات ہونی‪ ،‬اپ کرنال کی ح یگ‬ ‫ٓ‬ ‫ے حس کے تعد اپ کو اسیر ن یانا گیا‪ ،‬امام سجاد علنہ السالم کی سقارش ئر نمام اشرائے کرنال کے ساتھ ح یاب‬ ‫میں شرنک تھ‬ ‫ٓ‬ ‫زند کو تھی ازاد کیا گیا۔‬

‫زند بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ابن شہر اسوب ئے علی اکیر‪ ،‬ائراہیم‪ ،‬عید ہللا‪ ،‬دمحم‪ ،‬حمزہ‪ ،‬علی اضعر‪ ،‬جعقر‪ ،‬عمر‪ ،‬زند کو ان قرزندان امام حسین علنہ السالم میں‬ ‫سامل کیا ہے جو کرنال میں شہید ہوئے‪ ،‬گرجہ ان اسماء اور ان کی تعداد میں اح یالف نانا جاناہے۔‬ ‫‪143‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫سعد بن عید الرجمان بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫سعد بن عید الرجمان تقرن یا سنہ ‪ ۹۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬آپ کے والد عید الرجمان االکیر اور والدہ جدتجہ بیت علی علنہ السالم‬ ‫م‬ ‫تھیں‪ ،‬آپ کے والد کرنال میں شہید ہوئے‪ ،‬شیخ حسن سونکی کی کیاب ق یل الحسین میں وارد ہوا ہے کہ امام حسین علنہ‬ ‫السالم کی شہادت کے تعد حس وقت لسکر دشمن ئے ح یام ئر جملہ کیا ثو سدت ع طش اور جوف و ہراس سے سعد اور ان‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫کے تھانی ق یل شہید ہو گئ‬

‫ع‬ ‫سعید بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫درن یدی ئے کیاب اشرار لشھادۃ میں ت قل کیا ہے کہ روز عاسورا جعقر بن مسلم بن ق یل کے تعد سعید بن ق یل میدان‬ ‫ے ئر بیوست ہوا حس‬ ‫ح یگ میں وارد ہوئے‪ ،‬اور سیر دشمیوں کو موت کے گھاٹ انارا پہاں نک کہ انک نیر آپ کے گل‬ ‫کے پییجہ میں آپ کی شہادت وا فع ہونی‪ ،‬شہادت کے وقت آپ کی عمر ‪ ۶۹‬سال سے زنادہ تھی۔‬

‫عیاس االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫عیاس االضعر سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬آپ کی مادر گرامی کا نام ورقاء تھا‪ ،‬کیاب نار تخ جلیفہ‪ ،‬لیاب اور نا سخ الیوار تخ میں‬ ‫عیاس االضعر کا نذکرہ شہدائے کرنال کے ذنل میں کیا گیا ہے‪ ،‬نا سخ الیوار تخ کی روانت کے م طاثق آپ کی شہادت اس‬ ‫ے پہر قرات ئر جملہ ہوا تھا۔‬ ‫وقت ہونی کہ حب سب عاسور امام حسین علنہ السالم کی طرف سے نانی الئے کے لئ‬

‫‪144‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ح یاب عیاس کی والد ت کے مبعلق مورخین کے درمیان مجلیف افوال نائے جائے ہیں تعض ئے آپ کی والدت کو‬ ‫سنہ ‪ ۰۸‬ھ اور تعض دنگر ئے سنہ ‪۶۲‬ھ کو ذکر کیا ہے‪ ،‬جونکہ ام التئین قاطمہ بیت چرام‬

‫( ‪)1‬‬

‫کا نکاح امام علی سے سنہ ‪۰۰‬ھ‬

‫میں ہوا تھا‪ ،‬لہذا سنہ ‪۰۸‬ھ میں آپ کی والدت کا اجتمال فوی ئر معلوم ہونا ہے‪ ،‬آپ کے القاب قمر بنی ہاشم‪ ،‬سقا اور‬ ‫ل‬ ‫کییت اثو ا فصل‪ ،‬اثو القاشم‪ ،‬اثو قریۃ تھی‪ ،‬جائر ابن عید ہللا انصاری ئے زنارت کے وقت آپ کو ثوں مجاطب قرمانا‪:‬‬ ‫السالم علیک یا ابا القاسم‪ ،‬السالم علیک یا عباس ابن علی‬ ‫آپ ئے امیر المومئین کے ساتھ ح یگ ص فین میں شرکت کی تھی چہاں آپ ئے ابن سعیاء جو دس ہزار سجاعوں ئر‬ ‫تھاری تھا کو اس کے سات قرزندوں کے تعد موت کے گھاٹ انارا۔‬ ‫حصرت عیاس ئے لیایہ بیت عت ید ہللا بن عیاس بن عید الم طلب سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے آپ کو دو‬ ‫م‬ ‫ے لہذا وہ ابنی مادر کے ساتھ مدنیہ ہی میں فیم‬ ‫قرزند فصل اور عت ید ہللا ع طا قرمائے‪ ،‬وافعہ کرنال کے وقت فصل کمسن تھ‬ ‫ے ) ئے ‪ ۹۹‬سال عمر کی۔‬ ‫ے‪ ،‬لیکن عت ید ہللا (جو کہ قفنہ و عالم تھ‬ ‫رہے اور کمشنی میں رجلت قرما گئ‬ ‫ے جن کی مابیں بین مج یلف کبیزبں تھیں‪ ،‬جن میں سے قاشم اور‬ ‫ح یاب عیاس کے حسن‪ ،‬قاشم‪ ،‬دمحم نامی اور بین قرزند تھ‬ ‫ٔ‬ ‫ے‬ ‫ے‪ ،‬تعض مورخین ئے عید ہللا کو تھی آپ کے قرزندوں میں سامل کیا ہے‪ ،‬جو کہ کمسن تھ‬ ‫دمحم کرنال میں شہید ہوئے تھ‬ ‫ے۔‬ ‫ے تھ‬ ‫ے گئ‬ ‫اور کرنال میں اسیر کئ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب عیاس کی عظمت کو ای مہ لیہم السالم کے افوال کے ذرتعہ شمجھا جا سکیا ہے‪ ،‬امام سجاد ئے آپ کے‬ ‫نارے میں قرمانا‪:‬‬ ‫رحم ہللا عمی العباس فلقد آثر و ابلی وفدی اخاہ بنفسہ حتی قطعت یداہ‪ ،‬فابدلہ ہللا عز و جل بھما جناحین‬ ‫یطیر بھما مع المال ئکۃ فی الجنۃ‪ ،‬کما جعل لجعفر بن ابی طالب‪ ،‬و ان للعباس عند ہللا تبارک و تعالی منزلۃ‬ ‫یغبطہ بھا جمیع الشھداء یوم القیامۃ‬ ‫ٓ‬ ‫ق‬ ‫‪ -1‬انت ہللا کرناسی کے ئزدنک چرام چرف راء کے ساتھ درست ہے حس کے معنی قھی چرمت کے پہیں نلکہ تقدس و اخیرام کے ہیں۔‬

‫‪145‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے تھانی ئر ابنی جان قرنان کی‪ ،‬ان یار و قداکاری اور‬ ‫ہللا رحمت قرمائے میرے حجا عیاس ئر ‪ ،‬کہ جیھوں ئے ا بئ‬ ‫پہانت سحت یاں ئرداست کرئے ہوئے میدان میں پہادری کے جوہر دکھائے‪ ،‬پہاں نک کہ ان کے دوثوں ہاتھ فطع ہو‬ ‫ے ہیں‪ ،‬جن سے وہ قرشتوں کے ساتھ پہست میں‬ ‫ے‪ ،‬جن کے ندلے ہللا تعالی ئے اتھیں پہست میں دو ئر ع طا کئ‬ ‫گئ‬ ‫ے‪ ،‬پیسک ہللا تعالی کے‬ ‫ے تھ‬ ‫ے ہللا تعالی ئے جعقر بن اثوطالب کو دو ئر ع طا کئ‬ ‫ئرواز کرئے ہیں‪ ،‬یہ اسی طرح سے ہے حیس‬ ‫ئزدنک عیاس کا پہت نلید مقام ہےکہ ق یامت کے دن نمام شہداء ان ئر رسک کربں گے۔‬ ‫ے (‪ )1‬جونکہ حب کیھی آپ‬ ‫ے تھ‬ ‫ے سب سے آچر میں نشرتف لے گئ‬ ‫کرنال میں ح یاب عیاس ح یگ کے لئ‬ ‫ے ثو امام قرمائے کہ آپ میرے لسکر کے علمدار ہیں‪ ،‬اگر آپ شہید‬ ‫امام حسین علنہ السالم سے ح یگ کی اجازت ما یگئ‬ ‫ے ثو لسکر میقرق ہو جائے گا‪ ،‬اور حب آچری وقت اجازت دی ثو نانی مہیا کرئے کا جکم قرمانا۔‬ ‫ہو گئ‬

‫ع‬ ‫عید الرجمان االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫عید الرجمان االکیر تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬آپ کی مادر گرامی کا نام جلیلہ تھا‪ ،‬ابن شہر آسوب ت قل کرئے ہیں کہ عید‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے تھانی جعقر بن ق یل کے تعد میدان ح یگ میں وارد ہوئے اور میارز طلب کرئے ہوئے اپ ئے یہ رچز‬ ‫الرجمان ا بئ‬ ‫ئڑھا‪:‬‬ ‫ابی عقیل فاعرفوا مکانی‪ ،‬من ھاشم و ھاشم اخوانی‪ ،‬کھول صدق سادة االقران‪ ،‬ھذا حسین شامخ البنیان‪،‬‬ ‫و سید الشیب مع الشبان‬ ‫ع‬ ‫میرا مقام جان لو کہ میرے نانا ق یل ہیں کہ جو ہاشمی ہیں اور میرے تھانی ہاشمی جاندان سے ہیں‪ ،‬وہ ن یکر صداقت اور‬ ‫ٔ‬ ‫ہمیاوں کے شردار ہیں‪ ،‬یہ حسین ہیں جو نلید و عالی مربیت ہیں‪ ،‬نیری میں جواثوں کے شردار ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد آپ ئے ‪ ۰۳‬دشمیوں کو واصل چہیم کیا اور اچر میں جام شہادت کو ثوش قرمانا‪ ،‬امام عسکری ئے‬ ‫ت‬ ‫زنارت ناجنہ میں آپ ئر اس طرح سالم ھیجا‪:‬‬

‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫‪ -1‬آپ کے تعد ضرف اظقال شہید کئ‬

‫‪146‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫السالم علی عبد الرحمان بن عقیل‪ ،‬لعن ہللا قاتلہ و رامیہ عمر بن خالد بن اسد الجھنی‬ ‫ع‬ ‫سالم ہو عید الرجمان بن ق یل ئر ‪ ،‬ہللا کی لعیت ہو ان کے قانل اور ان ئر نیر جالئے والے عمر بن جالد بن اسد چہنی ئر۔‬

‫ع‬ ‫عید الرجمان بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ح یاب مسلم بن ق یل کے جودہ قرزند اور دو ن بت یاں تھیں جن کے اسامی یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ائراہیم شہید کوفہ ۔‪۶‬۔اجمد شہید کرنال ۔‪۰‬۔جعقر شہید کرنال ۔‪۹‬۔عید الرجمان۔‪۲‬۔عید العزئز۔‪۳‬۔عید ہللا شہید کرنال ۔‪۸‬۔عت ید‬ ‫ہللا شہید کرنال۔‪۰‬۔علی۔‪۰۹‬۔ عو ن شہید کرنال۔‪۰۰‬۔دمحم االضعر شہید کوفہ ۔‪۰۶‬۔دمحم االکیر شہید کرنال ۔‪۰۳‬۔مسلم۔‪۰۹‬۔حمیدہ آپ‬ ‫کرنال میں جاضر ہوبیں۔‪۰۲‬۔عانکہ۔‬ ‫ح یاب عید الرجمان کی سحصنت کے مبعلق نار تخ میں اح یالف ہے لہذا اجتمال ہے کہ آپ شہدائے کرنال میں سامل‬ ‫ہوں۔‬

‫عید ہللا بن مغیرہ بن جارث بن عید الم طلب بن ہاشمی‪:‬‬ ‫ابن ححر عسقالنی‪ ،‬ابن عساکر اور ابن سعد ئے طی قات میں آپ کا ذکر شہدائے کرنال میں کیا ہے‪ ،‬عید ہللا بن م غیرہ کرنال‬ ‫ے‪ ،‬آپ تقرن یا سنہ ‪ ۸‬ق یل از ہحرت کو مکہ میں میولد ہوئے‪،‬‬ ‫کے وہ واجد ہاشمی ہیں کہ جو اثوطالب کی اوالد سے پہیں تھ‬ ‫فیح مکہ کے تعد مدنیہ کی طرف ہحرت کی‪ ،‬رسول اسالم کی وقات کے تعد امام علی علنہ السالم کے ہمراہ کوفہ نشرتف لے‬ ‫ے اور ح یگ جمل‪ ،‬ص فین اور پہروان میں شرکت کی‪ ،‬تعد از شہادت امیر المومئین مدنیہ مراجعت کی اور امام حسین علنہ‬ ‫گئ‬ ‫السالم کے ہمراہ کرنال میں شہادت نانی۔‬

‫‪147‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عید ہللا االضعر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا االضعر سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوئے‪،‬اپ کی مادر گرامی کا نام زبیب بیت شیبع تھا‪ ،‬نارتخی میا تع سے معلوم ہونا ہے کہ‬ ‫ے۔‬ ‫کرنال میں آپ سب سے آچر ی شہید تھ‬

‫ع‬ ‫عید ہللا االضعر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ے شہید ہوئے۔‬ ‫ے ئڑے تھانی عید ہللا االکیر سے پہل‬ ‫عید ہللا االضعر تقرن یا سنہ ‪۶۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬آپ ا بئ‬

‫عید ہللا االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫عید ہللا االضعر سنہ ‪ ۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬آپ کی والدہ کا نام لیلہ پہسلنہ تھا جن سے حصرت علی علنہ السالم ئے سنہ ‪۰۲‬ھ‬ ‫ح‬ ‫ے فیقی تھانی اثونکر کے ساتھ کرنال میں شہید ہوئے۔‬ ‫میں عقد قرمانا تھا‪ ،‬عید ہللا االضعر ا بئ‬

‫عید ہللا االکیر بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا االکیر سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬روز عاسورا ہانی بن پییت الحصرمی ئے اپ کو شہید کیا۔‬

‫ع‬ ‫عید ہللا االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا االکیر تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ ئے میمویہ بیت علی ابن ابت طالب سے عقد قرمانا جن سے ہللا تعالی ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے تھانی عید ہللا االضعر کے تعد میدان‬ ‫ے قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬روز عاسورا اپ ا بئ‬ ‫اپ کو علی‪،‬عید الرجمان‪ ،‬ق یل اور دمحم حیس‬ ‫کارزار میں نشرتف الئے اور یہ رچز ئڑھا‪:‬‬

‫‪148‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫خلوا عن المصحر دون الغیل‪ ،‬خلوا عن الواضح من عقیل‪ ،‬یمنع عن صریخۃ الرسول‪ ،‬بسیفہ المھند‬ ‫ع‬ ‫ے سے ہٹ جاو اور دھوکے میں مت رہو ‪ ،‬ق یل کے سیر سے مقانلہ یہ کرو ‪ ،‬وہ رسول‬ ‫المصقول‪ ،‬سیر پہادر کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے لجت جگر کے دقاع میں ابنی نیز دھار حمکنی نلوار کے ساتھ میدان میں انا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد اپ ئے ح یگ شروع کی اور پہبیروں کو ق یل کرئے تعد درج ٔہ شہادت ئر قائز ہوئے ۔‬

‫عید ہللا االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ح یاب عید ہللا االکیر ام التئین کے جار قرزندوں (تعنی عیاس‪،‬جعقر‪،‬عید ہللا االکیر‪ ،‬عتمان االکیر) میں سے پیشرے قرزند‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور انک ع ظیم‬ ‫ے میدان کارزار میں نشرتف لے گئ‬ ‫ے جو سنہ ‪۰۹‬ھ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ ح یاب عیاس سے پہل‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ح یگ کے تعد شرنت شہادت کو ثوش قرمانا‪ ،‬اپ ئر امام عسکری ئے زنارت ناجنہ میں ثوں سالم ھیجا ہے‪:‬‬ ‫السالم علی عبد ہللا ابن امیر المومنین مبلی البالء والمنادی بالوالء فی عرصۃ کربالء‪ ،‬المضروب مقبال و‬ ‫مدبرا‪ ،‬لعن ہللا قاتلہ ھانی بن ثبیت الحضرمی‬ ‫سالم ہو عید ہللا بن امیر المومئین ئر جو سجت ئربن امیجان سے گزرے‪ ،‬اور جیھوں ئے میدان کرنال میں صدائے والنت‬ ‫ے اور نست دوثوں جانب سے نیروں کا نسایہ ن یانا گیا‪ ،‬ان کے قانل ہانی بن پییت حصرمی ئر ہللا کی‬ ‫نلید کی‪ ،‬اتھیں سا مئ‬ ‫لعیت ہو۔‬

‫عید ہللا االوسط بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫تعض مورخین ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال اور تعض دنگر ئے اسیران کرنال کے ذنل میں کیا ہے۔‬

‫عید ہللا بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫شہدائے کرنال میں امام حسین علنہ السالم کے دو ثومولود قرزندوں کا نذکرہ ملیا ہے جن میں سے انک کا نام عید ہللا رضیع‬ ‫ٓ‬ ‫اور دوشرے کا نام علی اضعر تھا ‪ ،‬حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے اس مقام ئر سب‬

‫‪149‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے مج یلف مقانل کی ان روانات کہ جن میں عید ہللا رضیع اور علی اضعر کا نذکرہ ملیا ہے کو ذکر کیا ہے جن میں‬ ‫سے پہل‬ ‫نشمنۃ من ق یل مع الحسین(مصتف فص یل اسدی)‪ ،‬الجداثق الوردیۃ(مصتف الیراقی)‪ ،‬مقانل ال طالئین(مصتف اثو‬ ‫م‬ ‫القرج اصقہانی)‪ ،‬االرساد(مصتف شیخ مق ید)‪ ،‬شرح اح یار(مصتف اثوحییفہ البعمان)‪ ،‬ق یل الحسین(مصتف‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫جوارزمی)‪ ،‬ملہوف(مصتف ابن طاوس)‪ ،‬میاقب ال انی طالب(مصتف ابن شہر اسوب)‪ ،‬نار تخ االمم و‬ ‫الملوک(مصتف طیری)‪ ،‬الفیوح(مصتف ابن اعیم کوقی)‪ ،‬طی قات کیری(مصتف ابن سعد)‪ ،‬مبیر االچزان(مصتف‬ ‫م‬ ‫ابن نما)‪ ،‬ق یل انی حمیف‪ ،‬االجیجاج(مصتف طیرسی)‪ ،‬اشرار الشھادۃ(مصتف درن یدی)‪ ،‬معحم الکبیر(مصتف طیرانی)‪،‬‬ ‫نذکرۃ الجواص(مصتف شبط ابن جوزی)‪ ،‬لیاب االنساب(مصتف ابن ق یدق)‪ ،‬انساب االشراف(مصتف‬ ‫نالذری)‪ ،‬م طالب الشؤل(مصتف ابن طلجہ) حیسی کیابیں سامل ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ‪:‬‬ ‫ان کیب میں موجودہ روانات ئر تحفیق و ئررسی کے تعد مصتف انت ہللا کرناسی اس پییجہ ئر پہیچ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫عید ہللا بن الحسین علنہ السالم کی والدہ کا نام رناب بیت امری القیس تھا‪ ،‬اپ روز عاسورا کو ثوقت ظہر کرنال میں میولد‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہاتھوں میں اتھائے ہوئے در جیمہ ئر‬ ‫ہوئے‪ ،‬ح یاب سکینہ اپ کی پہن تھیں‪ ،‬امام حسین علنہ السالم اپ کو ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬امام عسکری علنہ السالم ئے زنارت‬ ‫ے کہ اسی وقت چرملہ بن کاہل اسدی کا نیر لگا اور اپ شہید ہو گئ‬ ‫نشرتف قرما تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ناجنہ میں اپ ئر اس طرح سالم ھیجا ہے‪:‬‬ ‫السالم علی عبد ہللا بن الحسین‪ ،‬الطفل الرضیع‪ ،‬المرمی الصریع‪ ،‬المتشحط دما‪ ،‬المصعد دمہ فی السما‪،‬‬ ‫المذبوح بالسھم فی حجر ابیہ‪ ،‬لعن ہللا رامیہ حرملہ بن کاھل االسدی و ذویہ‬ ‫ٓ‬ ‫چ‬ ‫سالم ہو عید ہللا بن حسین ئر‪ ،‬وہ ظقل سیرجوار‪ ،‬وہ نیر سے ھلنی ندن‪ ،‬وہ جون میں لت نت‪ ،‬کہ حس کا جون اسمان کی طرف‬ ‫ے اس کے ناپ کی گود میں نیر سے ذ تح کیا گیا‪ ،‬ہللا لعیت کرے اس ئر نیر اندازی کرئے والے چرملہ بن‬ ‫اتھا نا گیا‪ ،‬حس‬ ‫کاہل اسدی اور اس کے ساتھیوں ئر۔‬ ‫ٓ‬ ‫لیکن انت ہللا کرناسی کے ئزدنک علی اضعر بن حسین علنہ السالم ن یا ئر مشہور رحب المرحب سنہ ‪ ۲۹‬ھ کو مدنیہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی والدہ کا نام ام اسجاق تھا‪ ،‬روز عاسورا امام حسین علنہ السالم دشمیوں سے سوال اب کے‬

‫‪150‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ے چہاں نانی کے تجائے ھانی بن پییث الحصرمی ئے نیر جال کر اپ کو شہید‬ ‫ے اپ کو ابنی اعوش میں ق یل لے گئ‬ ‫لئ‬ ‫کردنا‪ ،‬شہادت کے تعد امام حسین ئے علی اضعر کو جیمہ کے ئزدنک دق یانا۔‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫یہ نات قانل ذکر ہے کہ تعض مورخین عید ہللا رضیع اور علی اضعر کو انک ہی قرد جا بئ‬

‫ع‬ ‫عید ہللا بن جکم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ع‬ ‫عید ہللا بن جکم تقرن یا سنہ ‪۹۲‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬رت عی ئے اپ کا نذکرہ شہدائے ال ق یل میں کیا ہے‪ ،‬لیکن دوشرے کسی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ق یل میں اپ کا ذکر پہیں ملیا‪ ،‬لہذا اپ کی کیفیت شہادت کے نارے میں معلومات موجود پہیں ہیں‪ ،‬ممکن ہے کہ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کمشنی میں سدت ن یاس اور جوف کی وجہ سے کرنال میں شہید ہوئے ہوں۔‬

‫عید ہللا بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ح یاب عید ہللا بن عیاس کے نارے میں مورخین کے درمیان مج یلف اراء نانی جانی ہیں‪ ،‬تعض ئے اپ کا نذکرہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے اپ کا نذکرہ اشراء کرنال میں کیا ہے‪،‬فول‬ ‫شہدائے کرنال میں کیا ہے اور تعض دنگر ئے اپ کی کمشنی کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫دوم محقق کرناسی کے ئزدنک فوی ئر ہے۔‬

‫ع‬ ‫عید ہللا بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا بن مسلم سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام رفنۃ الکیری بیت علی علنہ السالم تھا‪ ،‬حب اپ امام‬ ‫ٓ‬ ‫حسین سے ح یگ کی اجازت طلب کرئے نشرتف الئے ثو امام علنہ السالم ئے اپ کو ابنی مادر کے ساتھ معرکہ کارزار‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہا یہ شن کر اپ ئے قرمانا اے میرے اقا موال میں اپ کو کس طرح دشمیوں کے درمیان چھوڑ کر جال‬ ‫چھوڑ ئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫جا سکیا ہوں‪ ،‬تھر اپ ئے اس سعر کو ئڑھا‪:‬‬ ‫نحن بنوھ اشم الکرام‪ ،‬نحمی عن ابن السید االمام‪ ،‬نسل علی االسد الضرغام‪ ،‬سبط النبی المصطفی التھامی‬

‫‪151‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ہم عظمت والے جاندان بنی ہاشم کی اوالد ہیں‪ ،‬ہم سید االنام کے قرزند کا دقاع و جمانت کرئے ہیں‪ ،‬ہم سیر پیش ٔہ کرنال‪،‬‬ ‫ث ٔ‬ ‫واسہ بنی مضطقی ئر جان قرنان کردبں گے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئر میدان کارزار میں نشرتف الئے اور اپ ئے جملہ کرئے ہوئے اس رچز کو ئڑھا‪:‬‬ ‫ح یاب عید ہللا اجازت ملئ‬ ‫الیوم القی مسلما وھو ابی‪ ،‬وفتیۃ بادوا علی دین النبی‪ ،‬لیسوا بقوم عرفوا بالکذب‪ ،‬لکن خیار و کرام‬ ‫النسب‪ ،‬من ھاشم السادات اھل الحسب‬ ‫ٓ‬ ‫اج میں مسلم سے مالقات کروں گا کہ جو میرے ندر ئزرگوار ہیں‪ ،‬اور ان ثوجوان سے کہ جیھوں ئے دبن بنی ئر‬ ‫ک‬ ‫قداکاری کی‪ ،‬وہ انسی فوم پہیں جو چھونی ہوئے کی شہرت ر ھنی ہو‪ ،‬لیکن وہ ن یک و صا لح اور اعلی نسب والے ہیں‪ ،‬وہ‬ ‫ہاشمی سادات سے ہیں جو نلید نایہ کردار کے مالک ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬حس وقت اپ ئے‬ ‫ح یاب مطقر قرمائے ہیں کہ حصرت مسلم کی اوالد میں عید ہللا سب سے زنادہ سجاع تھ‬ ‫ٓ‬ ‫لسکر ئزند ئر جملہ کیا ثو ان میں سے ‪ ۰۸‬اقراد کو واصل چہیم قرمانا‪ ،‬اس دوران اپ ئے ان یا ہاتھ پیسانی ئر رکھا ہی تھا کہ کسی‬ ‫ٓ‬ ‫دشمن کا نیر اپ کے ہاتھ اور پیسانی ئر بیوست ہو گیا‪ ،‬وقت کو عییمت شمجھ کر دشمیوں ئے ئے در ئے ضرنات کے ذرتعہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫اپ کو شہید کردنا‪ ،‬امام عسکری علنہ السالم زنارت ناجنہ میں اپ ئر اس طرح سالم ھ حیئ‬ ‫لسالم علی القتیل ابن القتیل عبد ہللا بن مسلم بن عقیل و لعن ہللا قاتلہ عامر بن صعصعۃ‬ ‫ع‬ ‫سالم ہو قت یل ابن قت یل عید ہللا بن مسلم بن ق یل ئر‪ ،‬اور لعیت ہو ان کے قانل عامر بن ضعصعہ ئر۔‬

‫عت ید ہللا بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئڑے تھانی‬ ‫عت ید ہللا بن عیاس االکیر سنہ ‪ ۹۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام لیایہ تھا‪ ،‬فصل اپ کے سگ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے اور‬ ‫ے‪ ،‬اکیر مورخین ئے ذکر کیا ہے کہ اپ ابنی مادر گرامی اور تھانی فصل کے ساتھ مدنیہ میورہ ہی میں ق یام نذئر تھ‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬گرجہ تعض دنگر ئے اپ کو شہدائے کرنال میں اور تعض ئے اشرائے کرنال‬ ‫کرنال میں کمشنی کی وجہ سے شرنک یہ ہو سک‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫میں سامل کیا ہے لیکن فول اول کو اکیر مورخین ئے مییجب قرمانا ہے‪ ،‬اپ کا سمار ان کیار ققہاء‪ ،‬اہل معرقت و نصیرت‬ ‫ے۔‬ ‫اصجاب امام سجاد علنہ السالم میں ہونا ہے کہ جن سے امام سجاد علنہ السالم ئے جد حمیت قرمائے تھ‬

‫‪152‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عت ید ہللا ابن عید ہللا االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عت ید ہللا تقرن یا سنہ ‪۶۳‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے اپ کی مادر گرامی کا نام ام الجوصاء تھا‪ ،‬جونکہ ح یاب عید ہللا جود کرنال‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزندوں کو امام حسین علنہ السالم کے سیرد قرمانا ناکہ وقت ضرورت وہ امام کی‬ ‫ے لہذا اپ ئے ا بئ‬ ‫میں جاضر یہ ہو سک‬ ‫ٓ‬ ‫ح ٔ‬ ‫ے مورخین‬ ‫نصرت کر سکیں‪ ،‬عون و دمحم کے عالوہ ح یاب عت ید ہللا کو اثو القرج اصقہانی‪ ،‬ابن ش ہر اسوب‪ ،‬جوارزمی‪ ،‬امین یس‬ ‫ئے شہدائے کرنال میں سامل کیا ہے۔‬

‫عت ید ہللا بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عت ید ہللا سنہ ‪ ۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ ئے م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال میں شرکت کی‪ ،‬اس ح یگ میں اپ ئر سدند چراحئیں وارد ہوبیں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ کے‬ ‫ے گئ‬ ‫لیکن اپ زندہ رہے اور اپ کو اسیر ن یانا گیا اپ سنہ ‪۲۳‬ھ میں نصرہ کے مذار نامی مقام ئر شہید کر د بئ‬ ‫قانل کے نارے میں کسی کو کونی اطالع یہ مل سکی۔‬

‫ع‬ ‫عت ید ہللا بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫روز عاسورا اپ ئے امام حسین علنہ السالم سے اجازت لی اور م ٔ‬ ‫ے ہوئے وارد ہوئے‪:‬‬ ‫عرکہ کرنال میں اس رچز کو ئڑ ھئ‬ ‫اقسمت ال اقتل اال حرا‪ ،‬وقد وجدت الموت شیئا مرا‪ ،‬اکرہ ان ادعی جبانا فرا‪ ،‬ان الجنان من عصی و فرا‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ئزدل و‬ ‫ے نسید پہیں کہ مجھ‬ ‫میں ئے قشم کھانی ہے کہ چر (ازاد) ہی ق یل کیا جاوں‪ ،‬میں ئے موت کو نلخ خیز نانا ہے‪ ،‬مجھ‬ ‫ے واال کہا جائے‪،‬پیسک ئزدل وہ ہے جو ناقرمان ہو اور میدان چھوڑ کر قرار کر جائے۔‬ ‫میدان چھوڑ کر تھا گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫اس رچز کے تعد اپ ئے نیرہ دشمیوں کو موت کے گھاٹ انارا حس کے تعد اپ شہید ہو گئ‬

‫‪153‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عییق بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫تعض مورخین جن میں ناف عی‪،‬دنار نکری ابن عماد سامل ہیں ئے ح یاب عییق کو شہدائے کرنال میں سامل کیاہے‪ ،‬ح یکہ اپ‬ ‫کی شہادت کی ت فصیالت ہماری دسیرس میں پہیں ہیں۔‬

‫عتمان بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ج‬ ‫عتمان بن علی سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬حصرت علی ئے اپ کا نام رسول اسالم کے لیل القدر صجانی عتمان بن م طعون‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬روز عاسورا ح یاب عیاس ئے اپ کو جود‬ ‫کے نام ئر رکھا‪ ،‬عتمان ح یاب عیاس کے تھانی اور ام التئین کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ے میدان ح یگ میں ھیجا‪ ،‬امام عسکری زنارت ناجنہ میں اپ ئر ثوں سالم ھ حیئ‬ ‫سے پہل‬ ‫السالم علی عثمان ابن امیر المومنین سمی عثمان بن مظعون‪ ،‬لعن ہللا رامیہ بالسھم خولی بن یزید‬ ‫االصبحی االیادی و االبانی الدارمی‪ ،‬سالم ہو عتمان بن امیر المومئین ئر ‪ ،‬کہ جو عتمان بن م طعون کے ہمیام ہیں‪ ،‬ہللا کی‬ ‫لعیت ہو ان کے نیر جالئے والے جولی بن ئزند اصیخی انادی اور انانی دارمی ئر۔‬

‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن عید الرجمان االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب ق یل سنہ ‪۹۹‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬مورخ سعرانی کی ت قل کے م طاثق اپ کے والد عید الرجمان االکیر‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے وقت ق یل اور اپ کے تھانی سعد‪ ،‬سدت ن یاس و جوف کی وجہ سے شہید ہو‬ ‫کرنال میں شہید ہوئے اور ح یام حسینی کو لو بئ‬ ‫ے۔‬ ‫گئ‬

‫‪154‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ضرف زرندی ئے ح یاب ق یل بن ق یل کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیاہے‪ ،‬نار تخ میں اپ کےنارے میں ت قاصیل‬ ‫موجود پہیں ہیں۔‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ق یل بن دمحم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب ق یل بن دمحم سنہ ‪۳۹‬ھ کے تعد میولد ہوئے‪ ،‬اپ کے نارے میں اح یالف ہے کہ انا اپ کرنال میں شہید ہوئے نا‬ ‫ے۔‬ ‫اسیر ن یائے گئ‬

‫علی اضعر بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب عید ہللا بن حسین کے نذکرہ کے ذنل میں عرض ہوا کہ دائرۃ المعارف الحس بینہ کے مصتف انت ہللا کرناسی کے‬ ‫ئزدنک ح یاب علی اضعر بن حسین علنہ السالم ن یا ئر مشہور رحب المرحب سنہ ‪ ۲۹‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬روز عاسورا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ے چہاں نانی کے‬ ‫ے تھ‬ ‫ے اپ کو ابنی اعوش میں ق یل لے گئ‬ ‫امام حسین علنہ السالم دشمیوں سے سوال اب کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫تجائے دشمیان اسالم ئے نیر جال کر اپ کو شہید کردنا‪ ،‬شہادت کے تعد امام حسین علنہ السالم ئے علی اضعر کو جیمہ کے‬ ‫ے عید ہللا بن حسین علنہ السالم کی طرف رجوع کیا جائے۔‬ ‫ئزدنک دق یانا‪ ،‬مزند ت فصیالت کے لئ‬

‫ع‬ ‫علی اضعر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اثو القرج اصقہانی ئے علی اضعر بن ق یل کا نذکرہ شہدائے کرنال کے ذنل میں ملیا ہے ح یکہ اپ کی کیفیت شہادت‬ ‫نک ہمیں دسیرسی جاصل پہیں ہے۔‬

‫‪155‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علی اکیر بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ح یاب علی اکیر اور امام زبن العاندبن کی عمر میں مورخین کے درم یان اح یالف نانا جانا ہے لہذا انت ہللا دمحم صادق کرناسی‬ ‫ئے ‪ ۶۰‬کیاثوں میں موجودہ م طالب ئر تحفیق و ئررسی کے تعد یہ پییجہ اجذ قرمانا کہ ح یاب علی اکیر ‪ ۰۰‬سعیان سنہ ‪۰۸‬ھ کو کوفہ‬ ‫ٓ‬ ‫میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی والدہ کا نام لیلی بیت اثو مرۃ تھا‪ ،‬ح یاب زبن العاندبن کی والدت سنہ ‪۰۰‬ھ کو وا فع ہونی لہذا‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور ح یاب علی اکیر کو علی اضعر کے مقانلہ میں اکیر کہا جانا ہے۔‬ ‫ے امام اپ سے شن میں ئزرگیر تھ‬ ‫جو تھ‬ ‫ے شہید ہیں‪ ،‬امام عسکری ئے تھی زنارت‬ ‫مج یلف روانات کی روشنی میں ح یاب علی اکیر ہاشمی شہداء میں سب سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ناجنہ میں اپ کو شہید اول کے عیوان سے مجاطب کیا ہے‪:‬‬ ‫السالم علیک یا اول قتیل من نسل خیر سلیل من ساللۃ ابراھیم الخلیل (تجار االثوار ج ‪۳۹‬ص ‪)۲۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫ج‬ ‫ے شہید ۔‬ ‫اپ ئر سالم ہو اے ائراہیم لیل ہللا کی ناک نسل سے ناک ذرنت کے سب سے پہل‬

‫علی بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب علی بن حسین سنہ ‪۰۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ساہ زنان بیت ئزدچرد تھا‪ ،‬اپ کا‬ ‫ٓ‬ ‫ے لیکن سدند عاللت کی ن یا ئر ح یگ‬ ‫سمار ناران امام حسین علنہ السالم میں اس عیوان سے ہے کہ اپ کرنال میں موجود تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اپ ئر بتماری کو عاند کیا ناکہ اپ ح یگ میں شرکت یہ‬ ‫ے‪ ،‬ہللا تعالی ئے امامت کے تح فظ کے لئ‬ ‫میں شرنک یہ ہو سک‬ ‫ٓ‬ ‫کر سکیں اور اس طرح امامت کا سلسلہ جاری و ساری رہے‪ ،‬شہادت امام حسین علنہ السالم کے تعد اپ ئے ‪ ۰۶‬سال‬ ‫ے‬ ‫نک ق یام کرنال کے اسیاب‪ ،‬م طلومیت امام حسین علنہ السالم اور کرنال میں رونما ہوئے والے م طالم کو لوگوں کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫ن یان قرمانا‪ ،‬سنہ ‪۰۶‬ھ میں ولید بن عید الملک ئے اپ کو زہر دے کر شہید کردنا‪ ،‬اپ کو جیت ال فبع میں امام حسن محینی‬ ‫کے قرنب دق یانا گیا۔‬

‫‪156‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫علی بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ئراقی ئے کیاب جداثق الوردیۃ میں اوالد ام التئین کے ذنل میں علی بن علی کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے‪ ،‬ح یکہ‬ ‫نار تخ میں ام التئین کے جار قرزندوں تعنی عیاس جعقر‪ ،‬عید ہللا‪ ،‬عتمان کے نام موجود ہیں‪ ،‬اس نات کا اجتمال ہے کہ‬ ‫مصتف کیاب جداثق سے علی اضعر نا علی اکیر اور علی بن علی میں جلط وا فع ہوا ہو۔‬

‫عمر االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ‬ ‫عمر االضعر سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬کہا جانا ہے کہ قرزندان امام علی علنہ السالم میں اپ سب سے اچری قرزند تھ‬ ‫میدان ح یگ میں اس رچز کے ساتھ وارد ہوئے‪:‬‬ ‫اضربکم و ال اری فیکم زجر‪ ،‬ذا الشقی بالنبی قد کفر‪ ،‬یا زجر یا زجر تدان من عمر‪ ،‬لعلک الیوم تبوا من‬ ‫سقر‪ ،‬شر مکان فی حریق و سعر‪ ،‬النک الجاحد یا شر البشر‬ ‫ٔ‬ ‫میں یم ئر انسی کاری ضرب لگاو ں گا کہ یم میں زچر زندہ پہیں تچ نائے گا‪ ،‬وہ زچر جو سقی و کاقر ہے‪ ،‬اے زچر‬ ‫ٓ‬ ‫ے شزا ہے‪ ،‬عین ممکن ہے کہ ثو اج سقر میں وارد ہو ‪ ،‬وہ سقر کہ جو ندئربن تھکایہ ہے کہ حس‬ ‫یہ عمر کی طرف سے نیرے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬یہ نیرا تھکایہ ہے جونکہ ثو اے شر ئر ئربن نشر‪ ،‬کاقر ہے۔‬ ‫میں اگ اور اس کے سعل‬ ‫ٓ‬ ‫تھر اپ ئے زچر بن ندر الیخ عی نامی قرد ئر جملہ کیا اور اسے ق یل کرئے کے تعد یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫خلوا یا عداة ہللا خلوا عن عمر‪ ،‬خلوا عن اللیث الھصور المکفھر‪ ،‬یضربکم بسیفہ وال یفر‪ ،‬و لیس فیھا‬ ‫کالجبان المنجحر‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫ے سے ہٹ جاو اے عمر کے دشمیوں‪ ،‬اس سے دور ہو جاو جو بیھرا ہوا سیر ہے‪ ،‬وہ یم ئر ابنی نلوار سے انسی‬ ‫میرے سا مئ‬ ‫ضرب لگائے گا کہ ی مہارے قرار کا راسنہ کونی یہ ہوگا‪ ،‬یم میں کونی تھی طافیور پہیں نلکہ شیھی ئزدل و تھگوڑے ہو۔‬ ‫اس رچز کے ساتھ آپ ح یگ کرئے رہے پہاں نک کے درج ٔہ شہادت ئر قائز ہوئے۔‬

‫‪157‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫عمر االطرف بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم ا لقرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عمر االطرف سنہ ‪۰۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ م ٔ‬ ‫ے‪ ،‬ح یگ میں محروح ہوئے کے تعد‬ ‫عرکہ کرنال میں شرنک تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کو س قا جاصل ہونی‪ ،‬اس طرح اپ وافعہ کرنال کے تعد تھی زندہ رہے اور اپ ئے سنہ ‪۸۸‬ھ کو نانی حجاز میں وقات‬ ‫نانی۔‬

‫عمرو بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫عمرو بن حسن تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کے نارے میں مورخین کے درمیان مج یلف اراء نانی جانی ہیں‪ ،‬تعض‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ کو شہدائے کرنال میں اور تعض دنگر ئے اسیران کرنال میں سامل کیاہے‪ ،‬تعض ئے یہ تھی کہا کہ اپ ق یل از‬ ‫ے وہللا العالم۔‬ ‫عاسورا سقر حج میں ی مقام اثواء رجلت کر گئ‬

‫عون بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب عون بن جعقر سنہ ‪۰‬ھ کو حیشہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام اسماء بیت عمیس تھا‪ ،‬سنہ ‪۳‬ھ کو عون‬ ‫ٓ‬ ‫والدبن کی معیت میں مدنیہ میورہ نشرتف الئے‪ ،‬ح یاب جعقر طیار کی شہادت کے تعد اپ کی کقالت کا ذمہ رسول اسالم‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے لیا اور ا تحصرت کی وقات کے تعد اپ امام علی کے ساتھ رہے اور ح یگ جمل‪،‬ح یگ ص فین و پہروان میں شرکت‬ ‫ٓ‬ ‫کی‪ ،‬امام علی کی شہادت کے تعد اپ ئے ساری زندگی امام حسن اور امام حسین علیہما السالم کے ساتھ گزاری اور ابنی زوجہ‬ ‫ٓ‬ ‫ام کلیوم یت علی کے ساتھ م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال میں جاضر ہوئے‪ ،‬ح یاب علی اکیر کے تعد اپ میدان ح یگ میں نشرتف الئے‬ ‫ب‬ ‫اور یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫ان تنکرونی فانا ابن جعفر‪ ،‬شھ ید صدق فی الجنان ازھر‪ ،‬یطیر فیھا بجناح اخضر‪ ،‬کفی بھذا شرفا فی‬ ‫المحشر‬

‫‪158‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے شہید کا قرزند جو شہادت کے تعد پہست ئربں میں سیز ئروں‬ ‫ے ثو جان لو کہ میں جعقر کا قرزند ہوں‪ ،‬ا نس‬ ‫اگر یم پہیں جا بئ‬ ‫ے پ ہی اعزاز کاقی ہے۔‬ ‫کے ساتھ ئرواز کر رہے ہیں‪ ،‬اور ق یامت کے دبن میرے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫عون بن جعقر کی ح یگ کی ت فصیالت نک ہمیں دسیرسی جاصل یہ ہوسکی الینہ اس میں کونی ئردند پہیں کہ اپ کے قانل‬ ‫کا نام زند بن رقاد چہنی ہے۔‬

‫عون بن عید ہللا بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عون بن عید ہللا سنہ ‪۶۹‬ھ کو مدنی ٔہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی زبیب بیت علی تھیں‪ ،‬روز عاسورا حس وقت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ میدان کارزار میں وارد ہوئے ثو اپ ئے اس طرح رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫اقسمت ال ادخل اال الجنۃ‪ ،‬موالیا الحمد و السنۃ‪ ،‬والفوز من بعد انقطاع المنۃ‪ ،‬ھو الذی انقذنا بمنہ‪ ،‬صلی‬ ‫علیہ ہللا باری الجنۃ‬ ‫ٔ‬ ‫میں ئے قشم کھانی ہے کہ پہست ہی میں جاوں گا کہ میں اجمد اور شنت بیوی کا دلدادہ ہوں‪ ،‬کامیانی کا راز دن یا سے منہ‬ ‫ے احسان کے ساتھ اس ہشنی کے ذرتعہ تجات ع طا قرمانی ہے‪ ،‬اس ئر جدا کا درود‬ ‫موڑئے میں ہے‪ ،‬ہللا ئے ہمیں ا بئ‬ ‫ہو۔‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے اس رچز کے ساتھ ح یگ شروع کی اور کنی دشمیوں کو واصل چہیم کرئے کے تعد شرنت شہادت کو‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ثوش قرمانا‪ ،‬امام عسکری زنارت ناجنہ میں اپ ئر ثوں سالم ھ حیئ‬ ‫السالم علی عون بن عبد ہللا بن جعفر الطیار فی الجنان‪ ،‬حلیف االیمان‪ ،‬و منازل االقران‪ ،‬الناصح‬ ‫للرحمان‪ ،‬التالی للمثانی و القرآن‪ ،‬لعن ہللا قاتلہ عبد ہللا بن قطنۃ النبھانی‬ ‫سالم ہو عون بن عید ہللا بن جعقر طیار ئر کہ جو جیت میں مجو ئرواز ہیں‪ ،‬جو جلیف االنمان (جوگر انمان) ہیں‪ ،‬نلید مرنیہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫سحصییوں کے ساتھ ہیں‪ ،‬جیھوں ئے ہمیشہ جدائے رجمان کی طرف لوگوں کو نالنا ہے‪ ،‬جو ہمیشہ نالوت قران میں ر ہئ‬ ‫ہیں‪ ،‬ہللا ان کے قانل عید ہللا بن فطنہ پہیانی ئر لعیت کرے۔‬

‫‪159‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫عون بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ابن شہر اسوب‪ ،‬شبط جوزی ئے عون بن ق یل کو شہدائے کرنال میں سامل کیا ہے‪ ،‬اپ کی شہادت کی ت فصیالت نک‬ ‫ہمیں دسیرسی جاصل پہیں ہے۔‬

‫عون بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫عون بن علی سنہ ‪۰۲‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے اپ کی مادر گرامی کا نام اسماء بیت عمیس تھا‪ ،‬مامقانی ت قل قرمائے‬ ‫ٓ‬ ‫ے وارد ہوئے‪ ،‬حس وقت عون‬ ‫ہیں کہ اپ امام حسین علنہ السالم کے وہ تھانی ہیں جو میدان کارزار میں سب سے پہل‬ ‫بن علی ئے اصجاب امام حسین علنہ السالم کی انک کبیر تعداد کو شہید ہوئے ہوئے دیکھا ثو امام علنہ السالم کی جدمت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں؟ اپ‬ ‫ے ن یار ہو گئ‬ ‫میں جاضر ہو کر ح یگ کی اجازت طلب کی‪ ،‬امام ئے ثوچھا اے تھانی کیا اپ مرئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے کیونکر امادہ یہ ہو جاوں ح یکہ اپ کا کونی ناور و مددگار پہیں ہے‪ ،‬یہ شن کر امام عالی مقام‬ ‫ئے قرمانا‪ :‬میں موت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ کو ح یگ کی اجازت قرمانی حس کے تعد اپ ئے کنی دشمیوں کو موت کے گھاٹ انار کر جام شہادت کو ثوش‬ ‫قرمانا۔‬

‫ع‬ ‫عون بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫عون بن مسلم تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬ضرف مورخ درن یدی ئے اپ کا سمار شہدائے کرنال کے ذنل میں کیا ہے۔‬ ‫ٓ ع‬ ‫ال ق یل سے یہ وہ نمام شہدائے کرنال ہیں کہ جن کی محیصر سی سوا تح حیات ہم ئے اس مقالہ میں پیش کی ہے یہ‬ ‫ٓ‬ ‫طالب اس ف ظرے کی مان ید ہیں کہ جو انک ٔ‬ ‫ے اصل‬ ‫کوزہ اب سے اجذ کیا جائے‪ ،‬لہذا قاربین مزند ت فصیالت کے لئ‬ ‫م‬ ‫کیاب معحم انصار الحسین الھاشمیون جلد ‪ ۶‬کی طرف مراجعہ قرمابیں۔‬

‫‪160‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار‬ ‫جلد سوم‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کے ہاشمی انصار" بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پیشری جلد (جو ‪ ۳۹۶‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۶‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۸‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫کی حلیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪161‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪162‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ا جاب امام حسین علیہم السالم ( ٔ‬ ‫صہ سوم)‬ ‫ص‬ ‫ح‬ ‫(کرنالء کے ‪ ۳۶‬ہاشمی شہداء)‬

‫ے گرد و ثواح میں موجود اقراد سے‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے انسان کو اجتماع نسید ن یانا ہے تعنی انسان ان یدائے جلقت سے ا بئ‬ ‫انس نانا ہے جواہ وہ اقراد ماں ناپ کی سکل میں ہوں نا تھانی پہن نا دوست کی سکل میں‪ ،‬جن سے وہ ابنی جوس یاں اور‬ ‫دکھ درد ناپت یا ہے ۔‬ ‫ے‬ ‫ماں ناپ‪ ،‬تھانی پہن‪ ،‬اور دنگر نمام رشتوں کی طرح انک رسنہ دوشنی کا تھی ہے حس میں انسان ا ب ئ‬ ‫دوست سے وہ نمام راز کی نابیں کرنا ہے کہ جو نسا اوقات ماں ناپ اور تھانی پہن سےپہیں کی جاسکئیں‪ ،‬لہذا دبن‬ ‫مئین اسالم میں دوست کو ئڑی اہمیت دی گنی ہے جونکہ اگر دوست ن یک اور خیر جواہ ہو ثو وہ انسان کے ساتھ کیھی‬ ‫ح یانت پہیں کرسکیا‪ ،‬لہذا ئے دبن‪ ،‬ئے علم و عمل اقراد سے دوشنی کی سجت مماتعت کی گنی ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے ہمہ بن اور ہمہ وقت امادہ‬ ‫ے دوست کی قکری‪ ،‬لمی‪ ،‬مالی اور جانی امداد کے لئ‬ ‫ن یک دوست وہ ہے جو ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہو‪ ،‬گرجہ دوشنی کے دعوندار دن یا میں پہت ب ظر ئاے ہیں لیکن دوست کی ح‬ ‫صیح ئرکھ مصییت کے مو فع ئر ہونی ہے‪ ،‬لہذا ہر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے دوست کو ازماکر دنکھ لے کہ انا وہ دوشنی میں مجلص ہے نا پہیں۔‬ ‫ے ا بئ‬ ‫ے کہ وہ دوشنی سے پہل‬ ‫انسان کو جا ہئ‬ ‫نار تخ اسالم میں معاویہ بن انی سق یان کے ابی قال کے تعد پہت سارے مسلمان امام حسین علنہ السالم کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬پہاں نک کہ حب ئزند ئر شر اق یدار انا اور امام حسین علنہ السالم ئے مثلی ال یبایع مثل یزید‬ ‫دوشنی کا دم تھرئے تھ‬ ‫ے کی ببعت پہیں کر سکیا) کہہ کر اس کی ببعت کو تھکرادنا اور مدنیہ سے ہحرت قرماکر مکہ مکرمہ میں‬ ‫(میرے حیسا ئزند حیس‬ ‫‪163‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ت‬ ‫ے جن میں سے اکیر خظوط میں جالیس اقراد کے اسماء اور‬ ‫وارد ہوئے ثو کوفیوں ئے ‪ ۰۶‬ہزار خظوط امام کی جدمت میں ھیچ‬ ‫ٓ‬ ‫ے(‪ ،)1‬کوفیوں ئے ان خظوط میں امام عالی مقام کی دوشنی کا دم تھرئے ہوئے اپ کو کوفہ نشرتف‬ ‫ان کے دشیخط موجود تھ‬ ‫الئے کی دعوت دی۔‬ ‫ع‬ ‫امام حسین علنہ السالم ئے ح یاب مسلم ابن ق یل کو ان یا نمان یدہ ن یا کر کوفہ روایہ کیا‪ ،‬اتھارہ ہزار‬

‫( ‪)2‬‬

‫لوگوں ئے‬

‫ٓ‬ ‫ے ہی ابن زناد کوفہ میں وارد ہوا اور اس ئے لوگوں کو ق یل کی دھمکی دی ثو نمام دوشنی کے‬ ‫اپ کی ببعت کی لیکن حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ے پہاں نک کہ اپ کو کوفہ میں ئڑی ئے رحمی کے ساتھ‬ ‫ے تعد دنگرےحصرت مسلم کا ساتھ چھوڑ ئے ل گ‬ ‫دعوے دار نک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ق‬ ‫ے پہاں نک کہ انک لیل‬ ‫ے سے اہشنہ اہشنہ چھوئے دعوندار امام سے جدا ہوئے گئ‬ ‫شہید کردنا گیا‪ ،‬جاالت کے ند لئ‬ ‫ٓ‬ ‫تعداد ئے روز عاسوراء ابنی جاثوں کو اپ ئر قرنان کیا۔‬ ‫ح‬ ‫پیسک فیقی اصجاب و مددگار کی تعداد ہمیشہ کم رہی ہے لیکن کرنال میں اصجاب امام حسین علنہ السالم کی‬ ‫ٓ‬ ‫ق‬ ‫لیل تعداد ئے وہ کر دکھانا کہ حس کی میال نار تخ میں کسی بنی و و لی کے اصجاب میں ب ظر پہیں انی‪ ،‬یہ القاظ دنگر یہ کہا جا‬ ‫سکیا ہے کہ حس طرح اصجاب امام حسین ئے دوشنی کے ت قاصوں کو ثورا کیا ہے اس کی میال نار تخ میں ئے ب ظیر ہےجو‬ ‫ے ی مویہ عمل ہے۔‬ ‫رہنی دن یا نک نمام نشرنت کے لئ‬ ‫کرنال کے جان یازوں کی قرنابیوں کو ہر فوم و ملت ئے شراہا ہے‪ ،‬جونکہ اصجاب کرنال ئے سجت ئربن جاالت‬ ‫ے ضروری ہے کہ‬ ‫میں امام عالی مقام کا ساتھ پہیں چھوڑا‪ ،‬ان کی امام سے اس حمیت و جذیہ قرنانی کے ادراک کے لئ‬ ‫ے‪ ،‬اسی م فصد کے پیش‬ ‫ے مسعل راہ بن سک‬ ‫ہم ان کی سوا تح حیات و سیرت ئر عور و قکر کربں ناکہ ان کی زندگی ہمارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ب ظر محقق انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے حسینی دائرۃ المعارف کی ح ید جلدوں کو اصجاب امام حسین علنہ السالم کی سوا تح‬ ‫ت‬ ‫حیات سے محصوص قرمانا ہے حس میں مصتف ئے ان کی زندگی ئر فصیل کے ساتھ روشنی ڈالی ہے‪ ،‬شیخ کرناسی ئے‬

‫‪1‬‬

‫‪ -‬زبیب کیری علیہا السالم من المھد الی اللجد ‪ ،‬دمحم کاطم ئزدی ص ‪۰۳۸‬۔‬

‫‪ -2‬اشرار عاسوراء سید دمحم ئزدی ٔ‬ ‫صہ دوم ص ‪۰۹‬۔‬ ‫ح‬

‫‪164‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ناران امام حسین کے ن یان میں بنی ہاشم کو اولونت دی ہے اور اس نات کو نای ٔہ بیوت نک پہیجانا ہے کہ کرنال میں شہید‬ ‫ے۔‬ ‫ہوئے والے نمام ہاشمی جوان نسل اثوطالب سے ت ھ‬ ‫ہم اس مقام ئر معحم انصار الحسین(الھاشمیون) کی جلد سوم(جو ‪ ۳۹۶‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪۶۹۹۸‬م زثور‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫طبع سے اراسنہ ہو جکی ہے) میں موجودہ اصجاب امام حسین کی سوا تح حیات ئر محیصر سی روشنی ڈا لئ‬

‫فصل بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫فصل بن علی تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬ضرف مورخ کاسانی ئے ابنی کیاب روضۃ الشہداء میں ا پ کی شہادت کا‬ ‫نذکرہ کیا ہے۔‬

‫قاشم بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قاشم بن حسن سنہ ‪۳۲‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی شہادت اس قدر ع ظیم تھی کہ امام عسکری ئے زنارت ناجنہ میں اپ ئر‬ ‫ت‬ ‫ان القاظ میں سالم ھیجا‪:‬‬ ‫السالم علی القاسم بن الحسن بن علی‪ ،‬المضروب ھامتہ‪ ،‬المسلوب المتہ‪ ،‬حتی نادی الحسین عمہ‪ ،‬فجلی‬ ‫علیہ عمہ کالصقر‪ ،‬وھو یفحص برجلیہ التراب‪ ،‬والحسین یقول‪ :‬بعدا لقوم قتلوک‪ ،‬و من خصمھم یوم‬ ‫القیامۃ جدک و ابوک‪ ،‬ثم قال‪ :‬عز وہللا علی عمک ان تدعوہ فال یجیبک‪ ،‬او یجیبک و انت قتیل جدیل‪ ،‬فال‬ ‫ینفعک‪ ،‬ھذا وہللا یوم کثر واترہ‪ ،‬و قل ناصرہ‪ ،‬جعلنی ہللا معکما یوم جمعکما‪ ،‬وبوأنی مبوأکما‪ ،‬و لعن ہللا‬ ‫قاتلک عمرو بن سعد بن نفیل االٔزدی و أصالہ جحیما و أعد لہ عذابا الیما (تجار االثوار جلد ‪ ۰۸‬ص ‪)۶۳۹‬‬ ‫چ‬ ‫سالم ہو قاشم بن حسن بن علی ئر‪ ،‬کہ جیہیں زحموں سے ھلنی کر دنا گیا‪ ،‬اور ان کی زرہ سلب کرلی گنی‪ ،‬پہاں نک‬ ‫پ‬ ‫ے‪ ،‬اور دیکھا کہ وہ ائڑناں رگڑ رہے ہیں‪،‬‬ ‫ے حجا حسین کو نکارا ثو ان کے حجا عقاب کی مان ید ان نک ہیچ گئ‬ ‫کہ اپہوں ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ق یل کرئے والے لوگ‪ ،‬ق یامت کے دن اپ کے جد اور اپ کے نانا‬ ‫اس وقت امام حسین ئے یہ قرمانا‪ :‬ن یاہ ہو تجھ‬ ‫ان کی سکانت جدا سے کربں گے‪ ،‬اس کے تعد امام حسین ئے کہا‪:‬جدا کی قشم نیرے حجا ئر یہ نات گران ہےکہ ثو اسے‬

‫‪165‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے اس کا‬ ‫ے‪ ،‬نا جواب ثو دے لیکن اس وقت نک ثو شہید ہو حکا ہو اور نیرے لئ‬ ‫ے جواب یہ دے سک‬ ‫نکارے اور وہ تجھ‬ ‫ے(امام عسکری)‬ ‫جواب قاندہ تحش یہ ہو‪ ،‬جدا کی قشم اس دن اس کے دشمن زنادہ اور اس کے مددگار کم ہیں‪ ،‬ہللا مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اپ دوثوں کے تھکائے میں جگہ‬ ‫ے ہوں‪ ،‬اور مجھ‬ ‫اپ دوثوں کے ساتھ اس دن اکیھا کرے حب اپ دوثوں ا کیھ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے‬ ‫دے‪ ،‬اور اپ کے قانل عمرو بن سعد بن ق یل ازدی ئر لعیت کرے اور اسے دوزخ میں جالئےاور اس کے لئ‬ ‫دردناک عذاب مقرر کرے۔‬

‫قاشم بن عیاس بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫قاشم بن عیاس کی والدت ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ کو ہونی‪ ،‬اسقراپینی(‪ )1‬اور مطقر (‪)2‬ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫اسقراپینی قرمائے ہیں کہ حب ح یاب قاشم بن عیاس کے تھانی شہید ہوئے ثو اپ ئے امام حسین علنہ السالم سے‬ ‫اجازت لی اور میدان ح یگ میں وارد ہو کر یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫الیکم من بنی المختار ضربا‪ ،‬یشیب لھولہ الطفل الرضیع‪ ،‬اال یا معشر الکفار جمعا‪ ،‬ھلموا دونکم ضرب‬ ‫فظیع‬ ‫ٓ‬ ‫ے کو ثوڑھا کردبنی ہے‪،‬‬ ‫اب ی مہاری طرف اوال د رسول میں سے وہ میدان میں ا رہا ہے حس کی ہییت سیرجوار تچ‬ ‫ٔ‬ ‫ہاں اے کاقروں کی جماعت‪ ،‬اب یم انک کاری و مہلک ضرب کھائے کو ن یار ہو جاو۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد اپ ئے جملہ کیا اور ‪ ۰۹۸‬دشمیوں کو واصل چہیم کرکے شرنت شہادت ثوش قرمانا۔‬

‫‪ -1‬وقات سنہ ‪۰۰۲‬ھ ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫‪ -2‬اپ کا نام عید الواجد بن اجمد بن حسن الیحقی تھا جو سنہ ‪۰۰۰۹‬ھ کو تحف اشرف میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ عالم‪ ،‬ادنب اور مورخ کی ح بییت سے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ کی نصییقات میں الت طل االسدی حییب‪ ،‬السیاسۃ العلویۃ اور مسیدرک مقانل ال طالئین حیسی کیابیں سامل ہیں‪ ،‬اپ کی‬ ‫جائے جائے تھ‬ ‫وقات سنہ ‪۰۰۰۹‬ھ میں وا فع ہونی۔‬

‫‪166‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قاشم بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قاشم بن علی تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬ابن شہر اسوب ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال کے ذنل میں کرئے ہوئے‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا کہ عید ہللا بن علی کے تعد قاشم بن علی میدان کارزار میں وارد ہوئے اور اپ ئے ان کلمات کو ابنی زنان ئر جاری‬ ‫قرمانا‪:‬‬ ‫یا عصبۃ جارت علی نبیھا‪ ،‬و کدرت من عیشھا ما قد نقی‪ ،‬فی کل یوم تقتلون سیدا‪ ،‬من اھلہ ظلما و ذبحا‬ ‫من قفا‬ ‫ٓ‬ ‫ے بنی ئر طلم کیا ہے‪ ،‬اور اس طرح یم ئے ابنی صاف شیھری زندگی کو الودہ کردنا‬ ‫اے وہ لوگو کہ جیہوں ئے ا بئ‬ ‫ہے‪ ،‬یم ہر روز ان کی اوالد میں سے انک سید کو پہانت ئے دردی سے ق یل کرئے ہو اور اسے نست کردن سے ذ تح‬ ‫کرئے ہو۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کرنال کی اس معرکہ ارا ح یگ میں اپ کو عمرو بن سعید ازدی ئے شہید کیا۔‬

‫قاشم بن دمحم االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫قاشم بن دمحم تقرن یا ق یل از سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬تعض ارناب مقانل ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے‪ ،‬روز‬ ‫ٓ‬ ‫عاسورا اپ ئے امام حسین علنہ السالم سے اجازت لی اور میدان کارزار میں وارد ہو کر اس رچز کو ئڑھا‪:‬‬ ‫انا الغالم االبطحی الطالبی‪ ،‬من معشر من ھاشم من غالب‪ ،‬و نحن حقا سادة الذوائب‪ ،‬ھذا حسین اطیب‬ ‫االطائب‪ ،‬من عترة الطھر النقی العاقب‬ ‫ب‬ ‫میں ا طخی جوان ہوں جو اثوطالب کی نسل سے ہے‪ ،‬اس کی رگوں میں بنی ہاشم و بنی عالب کا لہو دوڑنا ہے‪ ،‬ہم‬ ‫ہی حفیقت میں لوگوں کے شردار ہیں اور یہ حسین ناک‪ ،‬ناک نسل کے ناک ئربں قرد ہیں‪ ،‬یہ اس ناک غیرت سے ہیں‬ ‫جو ابنی ناکیزگی میں میقرد ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد اپ ئے جملہ شروع کیا اور ‪ ۸۹‬گھوڑسوار اور ‪ ۰۶‬ن یادہ اقراد کو موت کے گھاٹ انارا‪ ،‬حس کے تعد دشمیوں‬ ‫ٓ‬ ‫ئے گھیر کر اپ کو شہید کردنا (وسیلۃ الداربن‪)۶۳۹ :‬۔‬ ‫‪167‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫دمحم بن اثو سعید االجول بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم بن اثوسعید سنہ ‪۰۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬کرنال میں وقت شہادت اپ کی عمر ‪ ۶۹‬سال تھی‪ ،‬امام عسکری زنارت ناجنہ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫اپ ئر ثوں سالم ھ حیئ‬ ‫السالم علی محمد بن ابی سعید بن عقیل‪ ،‬و لعن ہللا قاتلہ لقیط بن ناشر (یاسر) الجھنی‬ ‫ع‬ ‫سالم ہو دمحم بن انی سعید بن ق یل ئر‪ ،‬اور ہللا لعیت کرے ان کے قانل لفیط بن ناشر (ناشر) چہنی ئر۔‬

‫دمحم االضعر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے والدبن کے ساتھ‬ ‫دمحم االضعر سنہ ‪۳‬ھ کو حیشہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام اسماء بیت عمیس تھا‪ ،‬اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۳‬ھ کو حیشہ سے مدنیہ میورہ نشرتف الئے‪ ،‬حب اتھ ہحری میں ح یاب جعقر طیار کی شہادت وا فع ہونی ثو رسول اسالم ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور‬ ‫ے ذمہ لی‪ ،‬ا تحصرت کی وقات کے تعد دمحم االضعر حصرت امیر کے ساتھ تھ‬ ‫اپ کے نمام اہل جایہ کی کقالت ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے ح یگ جمل‪ ،‬ح یگ ص فین اور ح یگ پہروان میں شرکت تھی کی‪ ،‬دمحم االضعر کو رسول اسالم‪ ،‬حصرت علی‪ ،‬امام‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫حسن اور امام حسین لیہم السالم کی صجابیت کا شرف جاصل تھا اپ سنہ ‪۲۰‬ھ کو امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال میں‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫شہید کئ‬

‫دمحم االضعر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لہذا اپ کو دمحم االضعر کہا گیا‪ ،‬درن یدی کی‬ ‫دمحم االضعر سنہ ‪۰۸‬ھ کو کوفہ میں میولد ہوئے‪ ،‬جونکہ دمحم جیفنہ اپ سے ئزرگ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫روانت کے م طاثق م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال میں حس وقت اپ ئے پہال جملہ کیا ثو ‪ ۰۹۹۹‬سواروں کو موت کے گھاٹ انارا‪ ،‬حب ن یاس‬ ‫کا علنہ ہوا ثو امام حسین علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہوئے اور نانی کی درجواست کی‪ ،‬امام عالی مقام ئے صیر کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫وضنت کی اور قرمانا کہ جاو عیقرنب رسول ہللا اپ کو سیراب کربں گے‪ ،‬یہ شن کر دمحم میدان ح یگ میں نشرتف الئے اور‬

‫‪168‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اس دفعہ اپ ئے ‪ ۶۹۹‬سواروں کو واصل چہیم کیا‪ ،‬پہاں نک کے دشمیوں ئے اجتماغی جملہ کے ذرتعہ اپ کو شہید کر دنا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫زنارت ناجنہ میں اپ ئر اس طرح سالم وارد ہوا ہے‪:‬‬ ‫السالم علی محمد ابن امیر المومنین قتیل االٔبانی الدارمی لعنہ ہللا و ضاعف علیہ العذاب االٔلیم‪ ،‬و صلی ہللا‬ ‫علیک یا محمد و علی اھل بیتک الصابرین‬ ‫سالم ہو دمحم بن امیر المومئین ئر کہ جو انانی دارمی کے ہاتھوں شہید ہوئے‪ ،‬ہللا کی لعیت ہو دارمی ئر اور وہ اس ئر دردناک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫( ‪)1‬‬ ‫عذاب میں اصافہ کرے‪ ،‬اور اپ ئر دورو ہو اے دمحم اور اپ کے اہلییت ئر جو کہ صیر کرئے والے ہیں‪ ،‬مورخ مجالنی‬ ‫ٓ‬ ‫ئے زرعہ بن شرنک الدارمی کو اپ کا قانل جانا ہے۔‬

‫ع‬ ‫دمحم االضعر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم االضعر کا لقب طاہر تھا‪ ،‬اپ سنہ ‪۹۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے ‪ ،‬اپ کو اپ کے تھانی ائراہیم کے ساتھ کوفہ‬ ‫ٓ‬ ‫میں شہید کیا گیا‪ ،‬اپ کے قانل کا نام جارث بن عروہ ال طانی تھا۔‬

‫ع‬ ‫دمحم االکیر بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم االکیر سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬کرنال میں اپ کی عمر ‪ ۶۳‬سال تھی‪ ،‬تعض روانات کے م طاثق میدان ح یگ میں اپ‬ ‫ٓ‬ ‫چ‬ ‫ئے ‪ ۰۳‬دشمیان اسالم کو واصل چہیم کیا‪ ،‬حس کے تعد مریم(نا مرھم) ازدی اور لفیط بن ناشر ھنی ئے اپ کو شہید کیا۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام ذ بیح ہللا بن دمحم بن علی اکیر السیرازی تھا جو سنہ ‪۰۰۰۹‬ھ کو مجالت سیراز میں میولد ہوئے اور اپ ئے سنہ ‪۰۳۹۹‬ھ میں وقات‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫نانی‪،‬اپ کا سمار علماء امامنہ میں ہونا ہے‪ ،‬اپ کی نالق یات میں کیاب الجق الی فین‪ ،‬مائر الکیراء قی نار تخ سامراء اور قرۃ العین کو شہرت جاصل‬ ‫ہے۔‬

‫‪169‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫دمحم االوسط بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم االوسط تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام امامہ بیت اثو العاص تھا‪ ،‬حصرت علی‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫علنہ السالم کی شہادت کے تعد اپ امام حسن اور امام حسین علیہما السالم کی مصاجیت میں رہے‪ ،‬مورخ زتجانی قرمائے‬ ‫ٓ‬ ‫ہیں کہ معرکہ کرنال میں اپ ئے جوب ح یگ کی اور مج یلف دشمیوں کو موت کے گھاٹ انارئے کے تعد شرنت شہادت‬ ‫ٓ‬ ‫ثوش قرمانا‪ ،‬اپ کی کیفیت شہادت کے نارے میں نار تخ میں ت فصیالت موجود پہیں ہیں۔‬

‫دمحم بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم بن حسن سنہ ‪ ۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی والدہ کا نام ام کلیوم بیت فصل بن عیاس بن عید الم طلب بن ہاشم تھا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫صاحب معالی السب طین ئے ذہنی سے ت قل کرئے ہوئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے۔‬

‫دمحم بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ابن ق یدق ئے دمحم بن حسین کو قرزندان امام حسین علنہ السالم میں سامل کیا ہے اور کیاب سحرۃ انساب العلویۃ میں اپ‬ ‫ٓ‬ ‫کو شہدائے کرنال میں سامل کیا گیا ہے‪ ،‬ح یکہ تعض دنگر ئے اپ کا نام اشرائے کرنال کے ذنل میں تھی کیا ہے‪ ،‬وہللا‬ ‫العالم۔‬

‫دمحم بن عیاس االکیر بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫دمحم بن عیاس کی والدت سنہ ‪۰۲‬ھ کے تعد وا فع ہونی‪ ،‬گرجہ مورخین ئے اپ کا نذکرہ شہدائے کرنال میں کیا ہے لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی شہادت کے نارے میں زنادہ معلومات موجود پہیں ہیں۔‬

‫‪170‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫دمحم بن عید ہللا االکیر بن جعقر بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم بن عید ہللا تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ہحری کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام جوصاء بیت ح فصہ بن تفیف تھا‪ ،‬ابن ش ہر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اسوب ت قل قرمائے ہیں کہ اپ عید الرجمان بن ق یل کے تعد میدان کارزار میں وارد ہوئے اور دس دشمیوں کو واصل‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫چہیم کرئے کے تعد شرنت شہادت ثوش قرمانا‪ ،‬امام عسکری زنارت ناجنہ میں اپ ئر اس طرح سالم ھ حیئ‬ ‫السالم علی محمد بن ع بد ہللا بن جعفر‪ ،‬الشاھد مکان ابیہ و التالی الخیہ‪ ،‬وواقیہ ببدنہ‪ ،‬لعن ہللا قاتلہ عامر‬ ‫بن نھشل التمیمی‬ ‫ے‬ ‫ے جال ہےاور ا بئ‬ ‫ے بیجھ‬ ‫ے تھانی کے بیجھ‬ ‫ے ناپ کی جگہ ئر پہیجا ہے ‪ ،‬اور ا بئ‬ ‫سالم ہو دمحم بن عید ہللا بن جعقر ئر ‪ ،‬کہ جو ا بئ‬ ‫پ‬ ‫ندن سے اس کی حقاطت کی ہے‪ ،‬ہللا لعیت کرے اس کے قانل عامر بن ہسل یمیمی ئر۔‬

‫ع‬ ‫دمحم بن عید ہللا االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم بن عید ہللا االکیر سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام میمویہ بیت علی بن انی طالب تھا‪ ،‬حسن بن دمحم‬ ‫ٓ‬ ‫قمی(‪)1‬ئے اپ کا ذکر شہدائے کرنال کے ذنل میں کیا ہے۔‬

‫ع‬ ‫دمحم االکیر بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫دمحم االکیر بن ق یل تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ ئے زبیب ضعری بیت علی سے عقد قرمانا تھا‪ ،‬جن سے ہللا ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے مورخین ئے اپ کا‬ ‫اپ کو دو قرزند ن یام عید ہللا االجول (‪ )2‬اور جعقر ع طا قرمائے‪ ،‬جوارزمی‪ ،‬دبیوری اور ابن شہر اسوب حیس‬

‫ے۔‬ ‫‪ -1‬حسن بن دمحم قمی کا سمار ان علماء امامنہ میں ہونا ہے کہ جو شیخ صدوق (میوقی سنہ ‪۰۸۰‬ھ) کے ہمعصر تھ‬ ‫ٓ‬ ‫‪2‬‬ ‫ے دور میں قفنہ اور مجدث کی ح بییت‬ ‫ عید ہللا اجول ئے امام صادق علنہ السالم کے دور کو درک قرمانا اور سنہ ‪۰۳۶‬ھ نک حیات نانی اپ ا بئ‬‫ے۔‬ ‫سے جائے جائے تھ‬

‫‪171‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫نذکرہ شہدائے کرنال کے ذنل میں کیا ہے‪ ،‬دمحم االکیر بن ق یل کو حصرت علی امام حسن اور امام حسین لیہم السالم کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ع‬ ‫ع‬ ‫صجابیت کا شرف جاصل رہا ہے‪ ،‬اپ اور اپ کے تھانی مسلم بن قیل کا سمار ققہائے ال ق یل اور ئزرگان ناتعین‬ ‫میں ہونا ہے۔‬

‫دمحم الیاقر بن علی بن حسین بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫امام دمحم ناقر علنہ السالم پہلی رحب سنہ ‪۹۳‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوئے‪ ،‬م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال میں امام سجاد علنہ السالم کے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور شہادت کے تعد اپ ئے دنگر اسیران‬ ‫ے‪،‬شہادت امام حسین علنہ السالم سے پہل‬ ‫ساتھ اپ تھی نشرتف الئے تھ‬ ‫کرنال کی طرح اسیری کی نمام ضعوبیوں کو تحمل قرمائے ہوئے مدنیہ سے مکہ‪ ،‬مکہ سے کرنال‪ ،‬کرنال سے کوفہ‪ ،‬کوفہ سے سام اور‬ ‫ٓ‬ ‫ے لیکن تھر تھی اپ کا سمار انصار‬ ‫سام سے مدنیہ کے طوالنی سقر کو طے قرمانا‪ ،‬گرجہ امام ناقر علنہ السالم کرنال میں کمسن تھ‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین علنہ السالم میں ہونا ہے لہذا دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے اس مقام ئر امام‬ ‫ناقر علنہ السالم کی والت (سنہ ‪۹۳‬ھ) سے سنہ ‪۰۰۰‬ھ (سال وقات) نک ہرسال رونما ہوئے والے وافعات ئر سلسلہ‬ ‫ے ہم طوالت کی وجہ سے اس مقام ئر ن یان کرئے سے قاضر ہیں‪ ،‬لہذا قاربین مزند معلومات کے‬ ‫وار روشنی ڈالی ہے‪ ،‬حس‬ ‫ے اصل کیاب کی طرف رجوع قرمابیں۔‬ ‫لئ‬

‫دمحم بن عمرو بن حسن بن علی بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دمحم بن عمرو سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬ئراقی ئے ابنی کیاب الجداثق الوردیۃ میں اپ کا نذکرہ اسیران کرنال کے ذنل میں کیا‬ ‫ہے۔‬

‫‪172‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے ح یاب رفنہ‬ ‫ح یاب مسلم ابن ق یل تقرن یا سنہ ‪۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام علنّۃ الیتطنۃ تھا‪،‬اپ ئے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫کیری بیت علی سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو عید ہللا االکیر (والدت ‪۰۳‬ھ ۔ شہادت‪۲۰‬ھ) اور علی (والدت‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اور حب سنہ ‪۳۹‬ھ میں رفنہ کیری کا ابی قال ہوا ثو اپ ئے رفنہ ضعری‬ ‫‪۰۲‬ھ ۔وقات ق یل از ‪۲۰‬ھ) نامی قرزند ع طا کئ‬ ‫ٓ‬ ‫بیت علی سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو عید ہللا االضعر (عت ید ہللا)(والدت ‪۳۲‬ھ ۔شہادت ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬حمیدہ‬ ‫(والدت ‪۳۰‬ھ ۔ وقات تقرن یا سنہ ‪۰۳۶‬ھ)‪ ،‬عانکہ (والدت ‪۹۶‬ھ ۔ شہادت ‪۲۰‬ھ) دمحم االضعر (والدت ‪۹۰‬ھ ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬اپ کو دنگر کبیزوں سے جو اوالد ہونی ان‬ ‫شہادت‪۲۶‬ھ) اور ائراہیم(والدت ‪۹۳‬ھ ۔ شہادت ‪ )۲۶‬حیس‬ ‫کے اسماء کجھ اس طرح ہیں‪:‬‬ ‫دمحم االکیر (والدت ‪۰۰‬ھ ۔ شہادت ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬جعقر (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ ۔شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬عون (والدت تقرن یا سنہ‬ ‫‪۳۹‬ھ ۔ وقات ق یل از ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬عید الرجمان(والدت سنہ ‪۳۶‬ھ ۔ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ )‪ ،‬عید العزئز (والدت ق یل از ‪۲۹‬ھ ۔‬ ‫وقات ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬مسلم (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ ۔ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫ح یاب مسلم بن ق یل کی شہادت کی خیر جود رسول اسالم ئے قرمادی تھی انک روز حصرت علی ئے‬ ‫ٓ‬ ‫اتحصرت سے ثوچھا‪:‬‬ ‫یا رسول ہللا انک لتحب عقیال؟ قال‪ :‬ای وہللا انی الحبہ حبین‪ ،‬حبا لہ و حبا لحب ابی طالب لہ‪ ،‬و ان ولدہ‬ ‫لمقتول فی محبۃ ولدک‪ ،‬فتدمع علیہ عیون المومنین‪ ،‬و تصلی علیہ المالئکۃ المقربون (کیاب الشہید مسلم‬ ‫ع‬ ‫بن ق یل ص ‪)۶۶۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫مج ع‬ ‫ٓ ع‬ ‫ے ق یل سے دو جوالوں سے حمیت‬ ‫ے ہیں؟ اتحصرت ئے قرمانا‪ :‬ھ‬ ‫نا رسول ہللا کیا اپ ق یل کو دوست ر کھئ‬ ‫ے جوالہ سے اور دوشری اس جوالہ سے کہ اثوطالب کو ان سے حمیت تھی اور یہ کہ ان کا‬ ‫ہے‪ ،‬انک جود ان کے ا بئ‬

‫‪173‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرزند اپ کے قرزند کی حمیت میں ق یل کیا جائے گا حس ئر مومئین کی ایکھیں اسکیار ہوں گی اور مالنکہ مقربین اس ئر نماز‬ ‫ئڑھیں گے۔‬ ‫ٓ‬ ‫رسول اسالم کی یہ پیسین گونی ثوری ہونی اور اپ کو ‪ ۰‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ کو کوفہ میں ئڑی ئے رحمی کے ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شہید کردنا گیا‪ ،‬اج تھی اپ کا مزار مسجد کوفہ کے قرنب موجود ہے‪ ،‬اور مومئین اپ ئر گریہ و زاری کرئے ہیں‪.‬‬

‫ع‬ ‫مسلم بن مسلم بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫مسلم بن مسلم تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬مورخ اسقراپینی کیاب ثور العین میں قرمائے ہیں کہ مسلم بن مسلم ح یاب‬ ‫علی اکیر بن حسین کے عد م ٔ‬ ‫عرکہ کارزار میں وارد ہوئے اور یہ رچز ئڑھا‪:‬‬ ‫ت‬ ‫الیوم القی مسلما وھو ابی‪ ،‬و فتیۃ ماتوا من اتباع النبی‪ ،‬و التقی بسادة نالوا ال ُمنی‪ ،‬اوالد موالنا الرسول‬ ‫العربی‬ ‫ٓ‬ ‫اج میں مسلم سے مالقات کروں گا کہ جو میرے نانا ہیں‪ ،‬اور ان جواثوں سے ملوں گا جو بنی کے نیروکار ہوئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے اقا و‬ ‫ے ہیں تعنی ا بئ‬ ‫ے‪ ،‬اور میں ان شرداروں سے ملوں گا جو شہادت کی سعادت جاصل کر جک‬ ‫ہوئے دن یا سے جل نس‬ ‫موال رسول عرنی کی اوالد سے۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے ساتھ اپ ئے جملہ کیا اور ‪ ۰۹‬سواروں کو موت کے گھاٹ انار ئے کے تعد شرنت شہادت ثوش قرمانا۔‬

‫ع‬ ‫معین بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫م‬ ‫ے ہیں کہ جن میں شہادت‬ ‫ے گئ‬ ‫ومیف (‪ )1‬کی کیاب ق یل الحسین میں ح یاب ام کلیوم کی طرف ح ید ان یات میشوب کئ‬ ‫اث ح‬ ‫ع‬ ‫معین بن ق یل اور ان کے تھانی عون کا نذکرہ ملیا ہے اور وہ ان یات یہ ہیں‪:‬‬ ‫اضحکنی الدھر و ابکانی‪ ،‬والدھر ذو صرف و الوان‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫‪1‬‬ ‫ اثو حمیف کا نام لوط بن تحنی تھا‪ ،‬اپ کی وقات سنہ ‪۰۹۳‬ھ میں وا فع ہونی‪ ،‬اپ کی نالیقات میں ق یل الحسین‪ ،‬اح یار المج یار‪ ،‬فیوح العراق اور‬‫االزارفۃ کو جاضی شہرت جاصل ہے۔‬

‫‪174‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫فھل بنا فی تسعۃ صرعوا ‪ ،‬بالطف اضحوا رھن اکفان‬ ‫و ستۃ لیس یجاری بھم‪ ،‬بنو عقیل خیر فرسان‬ ‫و اللیث عون و اخوہ ُم ِع ْی‪ ،‬ن ذکرھم جدد احزانی‬ ‫ے واال‪ ،‬کیا ان اقراد کو ناد یہ کیا‬ ‫ے زمائے ئے ہیسانا تھی ہے اور رالنا تھی ہے‪ ،‬زمایہ ہے ہی ئے وقا اور رنگ ند لئ‬ ‫مجھ‬ ‫ع‬ ‫ے کہ جن کا کونی مد‬ ‫ے سجاع و پہادر ت ھ‬ ‫ے‪ ،‬اور ان چھ اقراد کو تھی کہ جو بنی ق یل کے ا نس‬ ‫ے گئ‬ ‫جائے کہ جو کرنال میں شہید کئ‬ ‫مقانل یہ تھا‪ ،‬اور وہ سیر نیر عون اور ان کے تھانی معین کہ جن کی ناد ئے میرے عموں کو نازہ کردنا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ جوالہ کے عالوہ نار تخ میں کسی اور مقام ئر اپ کا نذکرہ پہیں ملیا ہے۔‬

‫ع‬ ‫موسی بن ق یل بن اثوطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ع‬ ‫ت‬ ‫ومیف ابنی کیاب ق یل‬ ‫اث‬ ‫ا‪،‬‬ ‫ھ‬ ‫مرو‬ ‫ت‬ ‫ی‬ ‫ء‬ ‫ا‬ ‫ص‬ ‫و‬ ‫ج‬ ‫ام‬ ‫ن‬ ‫ا‬ ‫ک‬ ‫گرامی‬ ‫ادر‬ ‫م‬ ‫کی‬ ‫پ‬ ‫ا‬ ‫موسی بن ق یل تقرن یا سنہ ‪۰۸‬ھ کو میولد ہوئے‪،‬‬ ‫ب ع‬ ‫ح‬ ‫الحسین میں ت قل قرمائے ہیں کہ موسی بن عق یل‪ ،‬مالک بن داود کی شہادت کے عد م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال میں وارد ہوئے اور یہ رچز‬ ‫ت‬ ‫ئڑھا‪:‬‬ ‫یا معشر الکھول و الشبان‪ ،‬اضربکم بالسیف و السنان‪ ،‬احمی عن الفتیۃ و النسوان‪ ،‬و عن امام االنس ثم‬ ‫الجان‪ ،‬ارضی بذاک خالق االنسان‪ ،‬ثم رسول الملک الدیان‬ ‫ٔ‬ ‫اے ثوڑھو اور جواثو‪ ،‬میں یم ئر ابنی نلواروں سے اور نیزوں سے ضرب لگاوں گا‪ ،‬میں تجوں اور عورثوں کی مدد کو‬ ‫ٓ‬ ‫ے جالق کہ جو جالق انسان ہے‬ ‫نکال ہوں‪ ،‬اور میں انس و جن کے امام کی جمانت میں میدان میں انا ہوں‪ ،‬میں اس طرح ا بئ‬ ‫اور تھر اس جاکم ئر جق کے رسول کو راضی کرنا جاہ یا ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫اس رچز کے تعد اپ ئے جملہ کیا اور سیر (‪ )۳۹‬سواروں کو موت کے گھاٹ انار کر درجہ شہادت ئر قائز ہوئے۔‬ ‫ے بنی ہاشم کے وہ شہداء کہ جن کی سوا تح حیات ئر ہم ئے اجیصار کے ساتھ روشنی ڈالی ہے‪ ،‬لیکن نارتخی‬ ‫یہ ت ھ‬ ‫ے ہوئے یہ پییجہ جاصل ہونا ہے کہ شہدائے کرنال کی تعداد ‪ ۳۶‬سے زاند تھی‪ ،‬اور ممکن ہے کہ ‪ ۳۶‬کا عدد‬ ‫سواہد کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ہاشمی شہداء سے محصوص ہو جونکہ کیاب تفس المہموم اور اشرار الشہادۃ میں اس نات کی ضراحت ان القاظ میں نانی جانی‬ ‫ہے ‪:‬‬

‫‪175‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ان الحسین لما نظر الی اثنین و سبعین رجال من اھل بیتہ صرعی۔۔۔۔۔۔‬ ‫تعنی حب امام حسین علنہ السالم ئے ‪ ۳۶‬اہلییت کو زمین ئر شہید ہوئے نانا۔۔۔۔۔ اس جملہ سے واصح ہونا ہے کہ ‪۳۶‬‬ ‫شہداء سے مراد ہاشمی شہیدوں کی تعداد ہیں۔‬ ‫ہم اس مقام ئر شہدائے کرنال کی تعداد میں جو ‪ ۰۹‬افوال نائے جائے ہیں اتھیں اجمال کے ساتھ پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫(الف) ‪ ۲۰‬شہید‪( ،‬ب) ‪ ۳۹‬شہید‪( ،‬ج) ‪ ۳۶‬شہید۔ ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۳۹‬ن یادہ‪( ،‬د) ‪ ۳۰‬شہید۔ ‪ ۰۰‬سوار اور ‪ ۳۹‬ن یادہ‪( ،‬ھ) ‪۳۳‬‬ ‫شہید‪( ،‬و) ‪ ۸۹‬شہید ۔ ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۳۸‬ن یادہ‪( ،‬ز) ‪ ۸۶‬شہید۔ ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۹۹‬ن یادہ‪( ،‬ح) ‪ ۰۶‬شہید۔ ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۲۹‬ن یادہ‪( ،‬ط)‬ ‫‪ ۰۰۶‬شہید۔ ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۸۹‬ن یادہ‪( ،‬ی) ‪ ۰۰۳‬شہید ‪ ۰۶‬سوار اور ‪ ۸۶‬ن یادہ‪( ،‬ک) ‪ ۰۳۹‬شہید ۔ ‪ ۳۹‬سوار اور ‪ ۰۹۹‬ن یادہ‪( ،‬ل) ‪۰۳۹‬‬ ‫شہید ۔ ‪ ۳۹‬سوار اور ‪ ۰۹۹‬ن یادہ‪( ،‬م) ‪ ۰۳۹‬شہید ۔ ‪ ۳۹‬سوار اور ‪ ۰۹۹‬ن یادہ‪( ،‬ن) ‪ ۶۸۰‬شہید‪( ،‬س) ‪ ۰۰۹۹‬شہید ۔ ‪ ۰۹۹۹‬سوار اور ‪۰۹۹‬‬ ‫ن یادہ۔‬ ‫قانل ذکر نات یہ ہے کہ مذکورہ اح یالف‪ ،‬ہاشمی و غیر ہاشمی شہداء دوثوں سے تعلق رکھیا ہے لہذا حسینی دائرۃ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں جن کے‬ ‫المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے اس کیاب کے جای مہ میں نا تچ جدول پیش کئ‬ ‫ذرتعہ شہدائے بنی ہاشم کی تعداد میں اح یالف کو نالوصوح درک کیا جا سکیا ہے اور وہ نا تچ جدول یہ ہیں‪:‬‬

‫پہال جدول‪:‬‬ ‫اس جدول میں ان شہدائے بنی ہاشم کا نذکرہ ہے کہ جن کی شہادت میں کسی قشم کا سک و سنہ پہیں نانا جانا اور ان کی‬ ‫تعداد ‪ ۹۰‬ہے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ائراہیم بن الحسین الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪ ،۳۶‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ ائراہیم بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ اثونکر بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫‪176‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۳‬۔ اثونکر بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۹‬۔ اثوسعید بن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۲‬۔ اجمد بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ اجمد بن دمحم الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۸‬۔ جعقر االکیر ابن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ جعقر االکیر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ جعقر بن الحسن الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ جعقر بن دمحم الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۶‬۔ جعقر بن مسلم الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ حمزہ بن الحسن الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ سعد بن عید الرجمان الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۹۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰۹‬۔ سعید بن ق یل الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۲‬۔ عیاس االضعر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ عیاس االکیر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰۸‬۔ عید الرجمان االکیر ابن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ عید ہللا بن انی سق یان الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۸‬ق یل از ہحرت‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۹‬۔ عید ہللا االضعر ابن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۶۰‬۔ عید ہللا االضعر ابن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۶‬۔ عید ہللا االضعر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۰‬۔ عید ہللا االکیر ابن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫‪177‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫‪۶۳‬۔ عید ہللا االکیر ابن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۹‬۔ عید ہللا االکیر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۲‬۔ عید ہللا بن حسین الہاشمی (والدت سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۳‬۔ عید ہللا بن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۸‬۔ عت ید ہللا بن عید ہللا الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۰‬۔ عت ید ہللا بن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ عتمان بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰۰‬۔ ق یل بن عید الرجمان الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۶‬۔ علی االضعر ابن الحسین الہاشمی (والدت سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰۰‬۔ علی االضعر بن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۶‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ علی االکیر ابن الحسین الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ عمر االضعر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۲‬۔ عون بن جعقر الہاشمی (والدت سنہ ‪۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ عون بن عید ہللا الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰۸‬۔ عون بن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ عون بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۹‬۔ قاشم بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۰‬۔ قاشم بن العیاس الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۶‬۔ دمحم بن اثوسعید الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۰‬۔ دمحم االضعر ابن جعقر الہاشمی (والدت سنہ ‪۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪178‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۳۳‬۔ دمحم االضعر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۹‬۔ دمحم االکیر ابن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۲‬۔ دمحم االوسط ابن علی الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۳‬۔ دمحم بن العیاس الہاشمی (والدت تعد از سنہ ‪۰۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۸‬۔ دمحم بن عید ہللا االکیر الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) (الطیار) ۔‬ ‫ع‬ ‫‪۳۰‬۔ دمحم بن عید ہللا االکیر الہاشمی (والدت ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ) (ال ق یلی)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۹۹‬۔ دمحم بن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۹۰‬۔ موسی بن ق یل الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫دوشرا جدول‬ ‫ے ہیں کہ جن کی شہادت کے نارے میں ح ید انک مقانل میں نذکرہ‬ ‫ے گئ‬ ‫اس جدول میں ان ہاشمی شہداء کے نام ذکر کئ‬ ‫ے محقق دمحم صادق الکرناسی کو کونی قا تع کت یدہ دل یل میشر یہ ہو سکی‬ ‫ملیا ہے لیکن ان کی شہادت کو نانت کرئے کے لئ‬ ‫ح یکہ ان کی شہادت کا ذکر تعض مقانل میں موجود ہے‪ ،‬اور وہ ‪ ۶۹‬نام یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ اثونکر ابن الحسن الہاشمی (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۶‬۔ اجمد بن ق یل الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ اجمد بن مسلم الہاشمی (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ نشر بن الحسن الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ جعقر االضعر ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۲‬۔ جکم بن ق یل الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫‪179‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫‪۳‬۔ حمزہ بن ق یل الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۸‬۔ جالد بن جعقر الہاشمی (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ جالد بن سعید الہاشمی (والدت تعد از سنہ ‪۹۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ عید الرجمان بن مسلم الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۶‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ عید ہللا بن الجکم الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۶‬۔ عییق بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫‪۰۰‬۔ ق یل بن ق یل الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ عون بن مسلم الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ فصل بن علی الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۲‬۔ قاشم بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ قاشم بن دمحم الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۸‬۔ مسعود بن ۔۔۔ الہاشمی (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ مسلم بن مسلم الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۶۹‬۔ معین بن ق یل الہاشمی (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫اگر جدول اول و دوم میں موجودہ ‪ ۹۰‬اور ‪ ۶۹‬اقراد کو حمع کیا جائے ثو ‪ ۳۰‬اقراد ہوئے ہیں‪ ،‬اور اگر اس تعداد میں امام‬ ‫حسین علنہ السالم کو سامل کیا جائے ثو شہدائے کرنال کی ‪ ۳۶‬تعداد ثوری ہو جانی ہے حس سے یہ واصح ہونا ہے کہ ‪ ۳۶‬شہداء‬ ‫سے مراد شہدائے بنی ہاشم ہیں (وہللا العالم)۔‬

‫‪180‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫پیشرا جدول‪:‬‬ ‫اس جدول میں ان جار شہداء کے نام درج ہیں کہ جن کی شہادت ثو کرنال میں وا فع پہیں ہونی لیکن ان کی شہادت کرنال‬ ‫سے ضرور مرثوط ہے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ائرہیم بن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۶‬ھ‪ ،‬مقام شہادت کوفہ)۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے) ۔‬ ‫ے تھ‬ ‫‪۶‬۔ محسن بن الحسین الہاشمی (والدت سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬اپ جلب میں س فط ہو گئ‬ ‫‪۰‬۔ دمحم االضعر ابن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬مقام شہادت کوفہ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۳‬۔ مسلم بن ق یل الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬مقام شہادت کوفہ)۔‬

‫جوتھا جدول‪:‬‬ ‫اس جدول میں ان اقراد کا نذکرہ ہے جو م ٔ‬ ‫ے‪ ،‬اسی‬ ‫عرکہ کرنال میں شرنک ہو کر محروح ہوئے اور درجہ شہادت ئر قائز یہ ہو سک‬ ‫ے لیکن کمشنی کی وجہ سے ح یگ میں شرنک یہ ہو‬ ‫طرح اس جدول میں ان اقراد کا تھی نذکرہ ہے جو کرنال میں موجود ثو تھ‬ ‫ے‪:‬‬ ‫ے اور تعد از شہادت امام حسین علنہ السالم اسیر ن یائے گئ‬ ‫سک‬ ‫‪۰‬۔ حسن بن حسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۶‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ زند بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۶۹‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ عید ہللا االوسط بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ عید ہللا بن العیاس االکیر الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ عت ید ہللا بن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۲۳‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۲‬۔ ق یل بن دمحم الہاشمی (والدت تعد از سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ علی بن الحسین الہاشمی۔امام سجاد علنہ السالم (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۰۶‬ھ)۔‬ ‫‪181‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۸‬۔ عمر االطرف ابن علی الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۸۸‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ عمرو بن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ قاشم بن عید ہللا الہاشمی (والدت تقرن یا سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ دمحم االضعر ابن الحسن الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۶‬۔ دمحم بن علی الہاشمی ۔امام ناقر علنہ السالم۔ (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۰۰۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ دمحم بن عمرو الہاشمی (والدت سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬وقات ق یل از سنہ ‪۰۰۰‬ھ)۔‬

‫ناتجواں جدول‪:‬‬ ‫ے لیکن شی خ‬ ‫اس جدول میں ان اقراد کے اسماء درج ہیں کہ جن کے نارے میں کہا جانا ہے کہ وہ کرنال میں موجود ت ھ‬ ‫ے‪:‬‬ ‫کرناسی کی تحفیق کے م طاثق کرنال میں یہ حصرات جاضر یہ تھ‬ ‫‪۰‬۔ اسماعیل بن عید ہللا الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۲‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۳۹‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ جعقر بن الحسین الہاشمی (والدت تعد از سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات ق یل از سنہ ‪۹۹‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ عت ید ہللا بن العیاس االکیر الہاشمی (والدت سنہ ‪۹۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۹۹‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ علی بن مسلم الہاشمی (والدت سنہ ‪۰۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫چھیا جدول‪:‬‬ ‫اس جدول میں ان اقراد کے اسماء درج ہیں کہ جن کا نذکرہ نار تخ کی تعض کیب میں موجود ہے لیکن محقق کرناسی کی‬ ‫تحفیق کے م طاثق ان اقراد کا نا ثو وجود پہیں ہے نا تھر ان کے ناموں میں جلط وا فع ہوا ہے۔‬

‫‪182‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ حمزہ بن الحسین الہاشمی۔ ‪۶‬۔ زند بن الحسین الہاشمی۔ ‪۰‬۔ عید الرجمان االوسط ابن ق یل الہاشمی۔ ‪۳‬۔ عدی بن عید ہللا‬ ‫الہاشمی۔ ‪۹‬۔ علی بن علی الہاشمی۔ ‪۲‬۔ عمرو بن الحسین الہاشمی۔ ‪۳‬۔ قاشم بن الحسین الہاشمی۔ ‪۸‬۔ دمحم بن الحسین‬ ‫الہاشمی۔ ‪۰‬۔ حتنی بن الحسن الہاشمی۔‬ ‫ان نمام جدولوں کے تعد جونکہ معحم انصار امام حسین کی پییوں جلدوں میں زنارت ناجنہ کا جوالہ دنا گیا ہے لہذا‬ ‫اس مقام ئر زنارت ناجنہ کو اسکی سید کے ساتھ ت قل کیا گیا ہےہم پہاں ضرف سید زنارت کے ن یان ئر اکی قاء کرئے‬ ‫ہیں‪:‬‬ ‫زنارت ناجنہ امام حسن عسکری علنہ السالم (والدت ‪۶۰۶‬ھ شہادت ‪۶۲۹‬ھ) کی جانب سے سنہ ‪ ۶۹۶‬کو وارد ہونی ہے‪،‬‬ ‫اس زنار ت کو سید ابن طاوس ئے ابنی کیاب االق یال میں ت قل کیا ہے حس کی سید دمحم بن عالب االصقہانی ئر میی ہی ہونی‬ ‫ٓ‬ ‫ہے تعنی حب دمحم بن عالب ئے امام حسن عسکری سے زنارت امام حسین علنہ السالم ئر جائے کی اجازت لی ثو اپ‬ ‫ے وارد‬ ‫ے کا جکم قرمانا‪ ،‬یہ زنارت امام زمایہ علنہ السالم کی والدت (‪۶۹۹‬ھ) سے بین سال پہل‬ ‫ئے یہ اس زنارت کو ئڑ ھئ‬ ‫ہونی ہے‪ ،‬الینہ اس زنارت کو امام زمایہ علنہ السالم کی طرف تھی میشوب کیا گیا ہے‪ ،‬ساند اس کی وجہ کلمہ ناجنہ ہے حس‬ ‫ے اشیعمال ہونا ہے‪،‬امام‬ ‫کے معنی جانب اور طرف کے ہیں اور یہ ل فظ امام عسکری اور امام زمایہ علیہما السالم کے لئ‬ ‫عسکری علنہ السالم ئے اس زنارت میں شہدائے کرنال کے نام اور ان کی کیفیت شہادت ئر روشنی ڈالی ہے۔‬ ‫یہ تھا نمام شہدائے بنی ہاشم کا نذکرہ جو تحمد ہللا اس مقام ئر مکمل ہوا۔‬

‫‪183‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪184‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬ ‫جلد اول‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین" بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد ( جو ‪ ۹۰۰‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۰‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۰‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫حلیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪185‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪186‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین ( ٔ‬ ‫صہ اول)‬ ‫ح‬ ‫کرنال میں جوابین کا کردار‬

‫ہللا ن یارک و تعالی ئے دبن مئین اسالم میں جوابین کو ئڑی اہمیت دی ہے‪ ،‬ح یکہ دنگر مذاہب میں دور جاہلیت سے‬ ‫ٓ‬ ‫دور جاضر نک جوابین ئر طرح طرح کے م طالم ڈھائے جائے رہے‪ ،‬کیھی اپہیں ثوچھ شمجھ کر دق یادنا گیا ثو کیھی ا ٔ‬ ‫لہ تجارت و‬ ‫ن یلبعات شمجھ کر ان سے مادی اشت قادہ کیا گیا۔‬ ‫خیرت کی نات ثو یہ ہے کہ جو لوگ جوابین کے حقوق کے ناسیان ہوئے کا دعوی کرئے ہیں وہی عورثوں ئر‬ ‫ٓ‬ ‫طرح طرح کے طلم ڈھائے ہیں‪ ،‬پہاں نک کہ اج کے دور میں عورت ئربیت اوالد‪ ،‬جایہ و سوہر داری کے ساتھ ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫معاسی امور میں تھی مردوں کے سایہ یہ سایہ مشکالت کا سکار ب ظر انی ہے۔‬ ‫دبن مئین اسالم میں عورت کو گھر کی زبیت قرار دنا گیا ہے‪ ،‬حصرت زہراء سالم ہللا علیہا ئے حب حصور سے‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے ئربیت اوالد‪،‬‬ ‫ے ہوئے اس کے لئ‬ ‫فشیم کار کی درجواست کی ثو ا تحصرت ئے قرمانا کہ عورت کی جلقت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے دنگر سجت امور کی‬ ‫ے کام میاسب ہیں‪ ،‬معاش کی نالش‪ ،‬زوجہ اور اوالد کی کقالت اور اس حیس‬ ‫جایہ داری اور سوہر داری حیس‬ ‫ت‬ ‫ذمہ داری مرد ئر ہے‪ ،‬حصور کی اس فشیم ن یدی ئر ح یاب قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا ئے جوسی و رصانت کا اظہار قرمانا۔‬ ‫ے کونی انسا جکم وارد پہیں ہوا ہے کہ حس سے ان کی ج ق‬ ‫قانل ذکر نات ہے کہ دبن اسالم میں جوابین کے لئ‬ ‫ن‬ ‫لقی ہونی ہو‪ ،‬گرجہ دشمیان اسالم ئے تعض عیوانات( کہ جن میں نلوغ‪ ،‬عورت کا نافص العقل ہونا‪ ،‬زن و مرد کے ناہمی‬ ‫ے‬ ‫اح یالط کی مماتعت‪ ،‬عورت اور امر معاش‪ ،‬مرد کا جاکم ہونا‪ ،‬حجاب‪ ،‬مرد کی والنت‪ ،‬تعدد زوجات‪ ،‬جق طالق‪ ،‬ارث حیس‬ ‫‪187‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے‬ ‫م طالب سامل ہیں) کے نام ئر یہ ئرونگیڈہ کرئے کی ثوری کوشش کی کہ پت یادی طور ئر اس دبن میں جوابین کے لئ‬ ‫ف‬ ‫کسی قشم کے حقوق پہیں نائے جائے‪ ،‬لہذا ہم اس مقام ئر مذکورہ مسانل اور ان میں موجود علط ہمیوں کو ئرطرف کرئے‬ ‫ے ان میں سے تعض موارد کو پیش کرئے ہیں۔‬ ‫کے لئ‬

‫نلوغ‪:‬‬ ‫ے شرغی احکام کیوں واحب ہوجائے ہیں؟‬ ‫اکیر یہ سوال کیا جانا ہے کہ دبن اسالم میں عورثوں ئر مردوں سے ‪ ۲‬سال پہل‬ ‫اس سوال کا جواب واصح ہے اور وہ یہ کہ جونکہ لڑکیاں حشمانی اور قکری اعت یار سے ‪ ۰‬سال کی عمر میں نا لغ ہونی ہیں لہذا‬ ‫ے الگو قرمانا ہے‪ ،‬لڑکیوں کے قکری رسد کا اندازہ مدارس‬ ‫شرتعت اسالم ئے ان ئر شرغی احکام و قرانض کو چھ سال پہل‬ ‫میں موجود طلنہ اور طالیات سے ک یا جا سکیا ہے‪ ،‬اکیر مساہدات میں یہ نات نانی جانی ہے کہ ‪ ۰‬سالہ لڑکے اور لڑکیوں کے‬ ‫درمیان عقل کے اعت یار سے کاقی قرق نانا جانا ہے‪ ،‬اس عمر میں لڑکوں کی نسنت لڑکیوں کی قکری ثوانان یاں دوح یدان‬ ‫ے مکلف ن یائے ہوئے تعض‬ ‫ے ہوئے ہللا تعالی ئے لڑکیوں کو لڑکوں سے پہل‬ ‫ہونی ہیں‪ ،‬لہذا اسی قکری رسد کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫امور میں اپہیں اشت قالل تھی ع طا قرما دنا ہے‪ ،‬حیسا کہ امام جعقر صادق علنہ السالم قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫اذا بلغت الجاریۃ تسع سنین دفع الیھا مالھا‪ ،‬و اقیمت الحدود التامۃ لھا و علیھا (وسانل السیعہ ج ‪۰۸‬۔ص‬ ‫‪)۰۰۳‬‬ ‫ے مال میں نصرف کرئے کا‬ ‫تعنی حب لڑکیاں ثو (‪ )۰‬سال کی ہو جابیں ثو ان کا مال اپہیں دے دنا جائے (جونکہ وہ ا بئ‬ ‫ک‬ ‫جق ر ھنی ہیں) اور اسی عمر سے ان کے جق میں نا ان کے جالف احکام و جدود الٰہنہ جاری کی جابیں گی۔‬ ‫اس جدنث سے واصح ہوجانا ہے کہ اسالم میں چہاں ‪ ۰‬سال کی عمر میں جوابین کو مکلف ن یانا گیا ہے وہیں‬ ‫ے مال میں جود نصرف کرسکیں‪ ،‬اور اگر عور کیا جائے ثو معلوم ہوگا کہ ہللا تعالی‬ ‫اپہیں یہ احت یار تھی دے دنا گیا ہے کہ وہ ا بئ‬ ‫ے جاضر ہوجانی ہیں جوکہ ہللا کی جانب سے ان‬ ‫ئے جوابین کو یہ شرف ع طا کیا ہے کہ وہ ہللا کی نارگاہ میں مردوں سے پہل‬ ‫ئر انک جاص عیانت و کرم کی دلیل ہے۔‬

‫‪188‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے کونی‬ ‫اس کے ئرعکس م غیرضین( کہ جن میں عرنی ممالک سامل ہیں) کے پہاں لڑکیوں کے نلوغ کے لئ‬ ‫جاص عمر معین پہیں ہے‪ ،‬لہذا مج یلف ادوار اور ممالک میں ‪ ۰۲‬سے ‪ ۰۸‬سال کو ان کے نلوغ کی عمر قرار دنا گیا ہے‪ ،‬جن‬ ‫ٓ‬ ‫میں وقت و مکان اور سیاشتوں کی پت یاد ئر ن یدنلی وا فع ہونی رہنی ہے‪ ،‬ح یکہ دبن اسالم میں جودہ سو سال سے اج نک‬ ‫انک ہی جکم ہے کہ حس میں کسی قشم کا ت غیر و ن یدل وا فع پہیں ہوا۔‬

‫نافص العقل‪ ،‬نافص الحظوظ‪ ،‬نافص االنمان‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ای مہ لیہم السالم سے تعض روانات میں وارد ہوا ہے کہ عوربیں نافص العقل‪ ،‬نافص الحظوظ اور نافص االنمان ہیں میال‬ ‫امام علی علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫معاشر الناس ان النساء نواقص االیمان‪ ،‬نواقص الحظوظ‪ ،‬نواقص العقول‬ ‫اے لوگو‪ ،‬پیسک جوابین کا انمان نافص ‪ ،‬ان کا ارث میں مرد سے حصہ کم ‪ ،‬اور ان کی عقلیں نافص ہیں‪ ،‬اس‬ ‫ے ہوئے یہ کہا جانا ہے کہ دبن اسالم میں جوابین کو مردوں سے کم‬ ‫روانت نا اس حیسی دوشری روانات(‪ )1‬کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے انک‬ ‫ے لئ‬ ‫شمجھا جانا ہے‪ ،‬ح یکہ اغیراض کرئے والے ئے مذکورہ جدنث کی ت فصیالت سے فطع ب ظر کرئے ہوئے ا بئ‬ ‫رائے قایم کرلی ہے‪ ،‬امام عالی مقام ئے پییوں ناثوں کی وجہ کو تھی اسی جدنث شرتف میں ن یان قرمانا ہے‪:‬‬ ‫فاما نقصان ایمانھن فقعودھن عن الصالة الصوم فی ایام حیضھن‬ ‫ان کے نافص االنمان ہوئے کی دلیل انام جیض میں ان کا نماز اور روزہ سے محروم ہونا ہے۔‬ ‫و اما نقصان عقولھن فشھادة امرأتین منھن کشھادة الرجل الواحد‬ ‫ان کے نافص العقل ہوئے کی وجہ ان میں سے دو عورثوں کی گواہی کا انک مرد کی گواہی کے ئرائر ہونا ہے۔‬ ‫و اما نقصان حظوظھن فمواریثھن علی االنصاف‬ ‫ے ہے کہ اپہیں ارث میں مردوں کا نصف حصہ ملیا ہے۔‬ ‫اور ان کا نافص الحظوظ ہونا اس لئ‬

‫‪1‬‬ ‫‪ -‬حصرت علی علنہ السالم ئے رسول اسالم سے روانت تقل کی کہ حصور ئے قرمانا‪ :‬یا ایتھا المرأة النکن ناقصات الدین و العقل (تجار‬

‫االثوار ج ‪ ۰۹۰‬ص‪)۰۹۲‬۔‬

‫‪189‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے یہ جان یا ضروری ہے کہ پہاں ت فص سے مراد کسی قشم کا ت فص و عیب پہیں‬ ‫اس جدنث کے ادراک کے لئ‬ ‫ے قرنصہ سے معذور رکھا ہے‪ ،‬لہذا چہاں جالت جیض‬ ‫ہے نلکہ ہللا تعالی ئے جالت جیض میں عورثوں کو روزہ اور نما ز حیس‬ ‫میں نماز واحب ہی یہ ہو ثو وہاں ت فص کی گیجانش ہی پہیں رہ جانی‪ ،‬ت فص اس جگہ ئر کہا جائے گا کہ چہاں واحب موجود ہو‬ ‫ے واح یات کو ان سے ئرطرف کرنا ہے‪ ،‬اور‬ ‫اور اس ئر عمل یہ کیا جائے‪ ،‬لہذا اس مقام ئر ت فص کا م طلب نماز اور روزہ حیس‬ ‫ے ئر پییھ کر ذکر و نسییح میں وقت گزارے ثو اسے نماز کا‬ ‫اس کے عالوہ اگر کونی عورت جالت جیض میں نماز کے وقت مصل‬ ‫ثواب ع طا کیا جا نا ہے حس سے واصح ہوجانا ہے کہ پہاں جدنث شرتف میں ت فص سے مراد عورت میں کمی پہیں نلکہ‬ ‫ے ہللا کی طرف سے شہولت کا نذکرہ ہے۔‬ ‫اس کے لئ‬ ‫تھر امام عالی مقام ئے قرمانا کہ عوربیں نافص العقل ہیں حس کی وجہ ان کی دو گواہیوں کا مرد کی انک گواہی‬ ‫کے ئرائر ہونا ہے‪ ،‬امام کی اس قرمانش سے تھی عورثوں میں کسی قشم کا ت فص طاہر پہیں ہونا‪ ،‬کیونکہ ہللا تعالی ئے‬ ‫مردوں کو کجھ انسی حصوصیات دی ہیں کہ جو عورثوں کو ع طا پہیں کی گئیں اور جو حصوصیات عورثوں میں ہیں وہ مرد میں‬ ‫ے مرد حشمانی طور ئر فوی ہونا ہے لیکن عورت کی تجلیق مرد کے مقانلہ میں نازک و ل ظیف ہے‪ ،‬اسی‬ ‫پہیں نانی جابیں حیس‬ ‫طرح عورثوں میں احساسات و عاظفہ‪ ،‬شرم و حیا مرد کی نسنت زنادہ نانی جانی ہے‪ ،‬لہذا اگر عورت حشمانی طور ئر مرد سے فوی‬ ‫یہ ہو‪ ،‬نا مرد میں احساسات کم نائے جابیں ثو یہ ان میں کسی قشم کی کمی اور ت فص کی دلیل پہیں ہے نلکہ ہللا تعالی ئے‬ ‫ے ہوئے اپہیں اسی طرح جلق قرمانا ہے۔‬ ‫مصا لح جلقت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے ہوئے اس میں عورت کی نسنت عاظفہ کو کم اور عقل کو زنادہ‬ ‫ہللا تعالی ئے مرد کی ذمہ دارثوں کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے‪ ،‬لیکن عورت میں عقل ئر احساسات کو عالب قرمانا ہے‬ ‫رکھا ہے ناکہ وہ معاش کی نالش اور دنگر مشکل امور کو جل کر سک‬ ‫ے‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ اگر کسی مقام ئر کونی‬ ‫ے کے قرانض اور ئربیت اوالد حیسی ذمہ دارثوں کو ثورا کر سک‬ ‫ناکہ عورت ماں پیئ‬ ‫ن‬ ‫جادیہ ہو جائے ثو عوربیں مرد کی نسنت زنادہ حساس ہو جانی ہیں‪ ،‬اور اس جالت میں ان میں فیصلہ اور حسیص کی قدرت‬ ‫ے دبن اسالم ئے دو عورثوں کی گواہی کو انک مرد کی گواہی کے ئرائر رکھا ہے ناکہ اگر ان میں‬ ‫کم ب ظر ہوجانی ہے‪ ،‬اسی لئ‬

‫‪190‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہللا تعالی ئےقران‬ ‫ے اسی لئ‬ ‫سے انک تھول جائے ثو دوشرے کی ناد دہانی سے جادیہ کی ت فصیالت کو درک کیا جا سک‬ ‫مج ید میں قرمانا‪:‬‬ ‫فان لم یکونا رجلین فرجل و امرأتان ممن ترضون من الشھداء أن تضل احداھما فتذکر احداھما االخری‬ ‫(تقرہ ‪)۶۸۶‬‬ ‫ٔ‬ ‫تھر اگر دو مرد یہ ہوں ثو انک مرد اور دو عوربیں کہ جن کی گواہی ئر یم راضی ہو کو گواہ ن یاو ناکہ اگر ان میں سے انک عورت‬ ‫تھولے ثو دوشری اسے ناد دہانی کروادے‪،‬حصرت امیر کے اس مدلل ن یان سے واصح ہو جانا ہے کہ یہ جکم تھی مرد و‬ ‫ے ہوئے صادر کیا گیا ہے‪ ،‬لہذا کسی تھی صورت سے ثوافص العقل‬ ‫عورت میں جلقت و صقات کے قرق کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے معنی ذہنی سعور میں کمی کے پہیں ہیں کیونکہ جہ نسا مدارس میں طالیات کی پیش رقت طلنہ سے پیسیر ب ظر انی ہے‪،‬‬ ‫اور انک حکیم و مدئر امام سے یہ نات دور ہے کہ وہ کلی طور ئر عورثوں کو کم سعور قرار دبں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے کا سوال ہے ثو اس کی وجہ یہ ہے کہ دبن اسالم میں‬ ‫اب چہاں نک ورانت میں عورثوں کو ادھا حصہ ملئ‬ ‫عورت کی ذمہ داری نا ناپ ئر عاند ہونی ہے نا تھر سوہر ئر‪ ،‬حیکہ عورت ئر کسی کی کقالت واحب پہیں ہے‪ ،‬لیکن مرد ئر‬ ‫واحب ہے کہ وہ والدبن‪ ،‬زوجہ اور اوالد کے اچراجات اتھائے ح یکہ عوربیں اس ذمہ داری سے معاف رکھی گنی ہیں‪،‬‬ ‫لہذا جو پیشہ اپہیں ملیا ہے وہ ضرف اپہیں کا ہونا ہے اور مرد کے اچراجات زنادہ ہیں لہذا اس کا حصہ دوگیا قرار دنا گیا‬ ‫ہے‪ ،‬جو کہ عین عدل ال ہی ہے۔‬

‫حجاب‪:‬‬ ‫ے جائے ہیں‪ ،‬انک یہ کہ اسالم میں حجاب کیوں واحب کیا گیا ہے اور‬ ‫حجاب کے مسیلہ میں دبن اسالم ئر دو اغیراض کئ‬ ‫یہ حجاب عورثوں ئر ہی کیوں واحب ہے؟‬ ‫ے سوال کے سلسلہ میں یہ کہا جائے گا کہ یہ نصور علط ہے کہ اسالم ہی میں عورثوں ئر حجاب واحب ہے‪،‬‬ ‫پہ ل‬ ‫ح یکہ نمام افوام و مذاہب میں حجاب کا وجود نانت ہے‪ ،‬گرجہ اس کی جدود اور طرتفہ میں قرق نانا جانا ہے‪ ،‬لہذا ال ہی مذاہب‬

‫‪191‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے پہودنت و مش حییت) کے ساتھ ساتھ نت ئرشتوں میں تھی حجاب کا ب ظریہ نانا جانا ہے حس کی وجہ محض عورثوں‬ ‫( حیس‬ ‫کے تح فظ کے عالوہ اور کجھ پہیں۔‬ ‫دوشری طرف یہ تھی کہیا علط ہوگا کہ اسالم میں ضرف عورت ئر حجاب واحب کیا گیا ہے ح یکہ اس دبن میں‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھی حجاب موجود ہے‪ ،‬ہللا ن یارک و تعالی ئے قران مج ید میں قرمانا‪:‬‬ ‫مردوں کے لئ‬ ‫قل للمومنین یغضوا من ابصارھم و یحفظوا فروجھم ذلک ازکی لھم ان ہللا خبیر بما یصنعوں‪ ،‬و قل‬ ‫ٓ‬ ‫للمومنات یغضضن من ابصارھن و یحفظن فروجھن و ال یبدین زینتھن اال ما ظھر منھا ( ٔ‬ ‫سورہ ثور انت‬ ‫‪۰۹‬۔‪)۰۰‬‬ ‫ے کہ ابنی نگاہیں بیخی رکھیں اور ابنی شرمگاہوں کی حقاطت کربں کہ پ ہی‬ ‫اور اے ببعمیر اسّالم آپ مومئین سے کہہ د حتئ‬ ‫ے کہ وہ تھی ابنی‬ ‫زنادہ ناکیزہ نات ہے اور پیسک ہللا ان کے اعمال سے جوب ناخیر ہے‪ ،‬اور مومیات سے کہہ د حتئ‬ ‫نگاہوں کو بیجا رکھیں اور ابنی عقت کی حقاطت کربں اور ابنی زبیت کا اظہار یہ کربں عالوہ اس کے جو ازجود طاہر ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ انت میں مردوں کا حجاب عقت داری اور نگاہوں کا بیجا رکھیا ہے‪ ،‬لیکن عورثوں کو جکم دنا گیا ہے کہ وہ‬ ‫ے اور عقت داری کے ساتھ ساتھ زبیت کے مقامات کو تھی مردوں سے چھیابیں ناکہ اس ذرتعہ سے‬ ‫نگاہوں کو بیجا ر کھئ‬ ‫ان کی حقاطت ہو اور وہ اشرار کے گزند سے محقوظ رہ سکیں‪ ،‬لہذا دبن اسالم نا کسی تھی مذہب میں حجاب عورت کی‬ ‫ے صدف نا صیدوق میں رک ھا‬ ‫حقاطت و وقار کا ذرتعہ ہے‪ ،‬کیونکہ عورت کی میال مونی نا اس فیمنی زثور کی سی ہے کہ حس‬ ‫جانا ہے۔‬ ‫ے جائے ہیں اگر م غیرضین تعصب کے ت غیر ان کے جوانات‬ ‫ے تھی اغیراصات عورت کے سلسلہ میں کئ‬ ‫حیئ‬ ‫کو مسلماثوں سے جاصل کرلیں ثو تھر کسی شیہہ کی گیجانش ناقی پہیں رہ جانی‪ ،‬دبن اسالم ئے کسی تھی مقام ئر عورت کو بیجا‬ ‫ٓ‬ ‫پہیں دکھانا نلکہ قران مج ید ثو ان جوابین کا فصیدہ ئڑھیا ہے کہ جیھوں ئے عقت و حجاب کے ساتھ ساتھ ع ظیم قرنان یاں‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫پیش کیں‪ ،‬جن میں ح یاب ہاچرہ (زوج ٔہ حصرت ائراہیم)‪ ،‬اسنہ بیت مزاحم (زوج ٔہ قرعون)‪ ،‬اقاجنہ (مادر حصرت موسی)‪،‬‬

‫‪192‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫صفیراء (زوج ٔہ صرت موسی)‪،‬نلقیس (م ٔ‬ ‫لکہ صیا)‪ ،‬جنّہ (مادر حصرت مریم)‪ ،‬حصرت مریم (مادر حصرت عیسی) حیسی‬ ‫ح‬ ‫ن یک اور ناک ن بت یاں سامل ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ان ناک ویبیبں کے عالوہ نار تخ اسالم میں تھی کجھ انسی سحصیات گذری ہیں کہ جیھوں ئے وقت ئاے ئر‬ ‫ے ہیں کہ جن کی وجہ سے دبن اسالم ئرونازہ ہو گیا‪ ،‬جن میں ان جوابین کا نام شر فہرست ہے‬ ‫ے کارنامے اتجام د بئ‬ ‫ا نس‬ ‫ے انک میال قایم کردی‬ ‫ے ہر طرح کی قرنانی پیش کرکے چہان کی عورثوں کی لئ‬ ‫جیھوں ئے کرنال میں دبن کی ت قاء کے لئ‬ ‫ے پہیربں ی موی ٔہ عمل ہے۔‬ ‫کہ اگر دبن جدا کو کسی تھی قشم کی قرنانی درکار ہو ثو کرنال کی ویبیبں کی میال ان کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫پیسک ہمیں کرنال میں جاضر ہوئے والی ویبیبں کے کارناموں کی میال کسی اور مقام ئر ب ظر پہیں انی جونکہ‬ ‫شہدائے کرنال کی ضعونئیں انکی شہادت ئر جیم ہوگئیں‪ ،‬لیکن کرنال میں موجود ویبیبں ئے اسیری کا زحم تھی ئرداست کیا اور‬ ‫کرنال سے کوفہ‪ ،‬کوفہ سے سام‪ ،‬اور سام سے مدنیہ کی ساری سحییوں اور نکلیقوں کو ئرداست قرمانا۔‬ ‫ٔ‬ ‫لہذا انسی سیر دل ماوں اور پہیوں کی سوا تح حیات کا جائزہ لت یا انک ضروری امر ہے‪ ،‬اسی م فصد کے تجت‬ ‫ٓ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کے مصتف انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے اس دائرۃ المعارف کی بین جلدوں کو ناضرات امام‬ ‫ت‬ ‫حسین علنہ السالم سے محصوص قرمانا ہے کہ حس میں انکی سوا تح حیات ئر فصیل کے ساتھ روشنی ڈالی گنی ہے‪ ،‬ہم اس‬ ‫ٓ‬ ‫مقام ئر کیاب معحم انصار الحسین الیساء جلد اول ( جو ‪ ۹۰۰‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۰‬میالدی کو زثور طبع سے اراسنہ‬ ‫ٓ‬ ‫ہو کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں موجود ناضرات امام حسین علنہ السالم کی سوا تح حیات ئر الق یا کی ئربیب کے م طاث ق‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫اجمالی روشنی ڈا لئ‬

‫ام اسجاق بیت طلجہ الییمنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ام اسجاق تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ کو میولد ہوبیں اور سنہ ‪۰۰‬ھ کے تعد اپ ئے وقات نانی‪ ،‬اپ کا نام ہی ام اسجاق تھا جونکہ نار تخ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ذکر پہیں کیا گہا ہے‪ ،‬امام حسن علنہ السالم ئے اپ سے عقد قرمانا حس‬ ‫میں اس کے عالوہ کونی اور نام اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے پییجہ میں ہللا ئے اپ کو طلجہ نامی قرزند ع طا کیا‪ ،‬امام حسن علنہ السالم ئے شہادت کے مو فع ئر امام حسین سے‬ ‫‪193‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫وضنت قرمانی کہ وہ اپ کے تعد ام اسجاق سے عقد قرمابیں‪ ،‬عدت وقات کے تعد امام حسین علنہ السالم ئے اپ‬ ‫ٓ‬ ‫سے عقد کیا حس کے پییجہ میں قاطمہ ضعری اور علی اضعر (‪)1‬میولد ہوئے‪ ،‬ام اسجاق کرنال میں موجود تھی اور اپ ئےدنگر‬ ‫ویبیبں کی طرح اسیری کی نمام ضعوبیوں کو تحمل قرمانا۔‬

‫ُ‬ ‫امامہ بیت انی العاص العیشمنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪ ۲‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬حصرت علی علنہ السالم ئے ‪ ۰۶‬جمادی الیانی سنہ ‪۰۰‬ھ میں اپ سے عقد‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا تھا‪ ،‬ہللا تعالی ئے اپ کو دمحم االوسط اور عید الرجمان نامی دو قرزند ع طا قرمائے جو کرنال میں امام حسین علنہ السالم کے‬ ‫ساتھ شہید ہوئے‪ ،‬گرجہ نارتخی سواہد کے م طاثق ح یاب امامہ تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ نا ئروانت دنگر سنہ ‪ ۹۳‬میں وقات نا گئیں‪ ،‬لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫مورخ مازندرانی ئے کا اپ کا نذکرہ ان جوابین میں کیا ہے کہ جو امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال نشرتف البیں حس‬ ‫سے یہ نیہ جلیا کہ کہ ان کے ئزدنک امامہ کی وقات سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد وا فع ہونی ہے۔‬

‫ام نسیر قاطمہ بیت انی مسعود الحزرجنہ اور ام حییب بیت عیاد البعلینۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪۳‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے نارے میں زنادہ ت قاصیل موجود پہیں ہیں لیکن قدر مسلم یہ ہے کہ م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫میں اپ تھی امام حسین علنہ السالم کے ساتھ جاضر ہوبیں‪ ،‬لہذا اپ کی وقات سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد وا فع ہونی‪ ،‬اسی طرح کرنال‬ ‫میں جاضر ہوئے والی سحصییوں میں ام حییب بیت عیاد کا تھی نام ملیا ہے کہ جن کی والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰‬ق یل از ہحرت‪،‬‬ ‫اور وقات تقرن یا سنہ ‪۲۰‬ھ میں وا فع ہونی۔‬

‫‪ٓ 1‬‬ ‫ انت ہللا کرناسی کے ئزدنک ح یاب علی اضعر کی والدہ کا نام ام اسجاق تھا‪ ،‬گرجہ مشہور فول کے م طاثق ح یاب رناب کو مادر علی اضعر کی‬‫ح بییت سے جانا جانا ہے‪ ،‬وہللا العالم۔‬

‫‪194‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ام الحسن بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ام الحسن تقرن یا سنہ ‪۳۸‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام نسیر قاطمہ بیت انی مسعود تھا‪ ،‬کرنال میں اپ کی عمر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تقرن یا نارہ سال تھی‪ ،‬حب ح یام امام حسین ئر دشمیوں ئے جملہ کیا ثو اپ گھوڑوں کی ناثوں میں ا کر شہید ہو گئیں‪ ،‬طاہرا اپ‬ ‫کو امام حسین علنہ السالم کے نان بینی دفن کیا گیا ہے۔‬

‫ام الحسین بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ام الحسین تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام نسیر قاطمہ بیت انی مسعود تھا ‪ ،‬عصر عاسور حب ح یام‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین ئر دشمیوں ئے جملہ کیا ثو اپ ابنی پہن ام الحسن کے ساتھ گھوڑوں کی ناثوں میں ا کر شہید ہو گئیں‪ ،‬طاہرا اپ کو‬ ‫تھی امام حسین علنہ السالم کے نان بینی دق یانا گیا ہے۔‬

‫ام جدتجہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا سمار حصرت امیر المومئین کی کبیزوں میں ہونا ہے‪ ،‬حصرت امیر سے‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اپ کو جدتجہ نامی پینی ہونی جن کا عقد عید الرجمان االکیر بن ق یل (شہید کرنال) سے ہوا‪ ،‬ام جدتجہ ابنی پینی جدتجہ کے ساتھ‬ ‫کرنال میں جاضر ہوبیں۔‬

‫ام سعید بیت عروہ الی قفنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ام سعیدق یل از سنہ ‪۹‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬حصرت امیر ئے تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ شہر مدنیہ میں اپ سے عقد قرمانا‪ ،‬ہللا تعالی ئے‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت امیر سے اپ کو بین لڑکیاں اور انک لڑکا ع طا قرمانا جن کے نام نیربیب یہ ہیں‪:‬‬

‫‪195‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫(الف) ام الحسن ۔والدت سنہ ‪۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ ۔ (ب) رملۃ الکیری۔والدت سنہ ‪۶۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ‬ ‫‪۲۰‬ھ۔ (ج) عمر االوسط ۔والدت سنہ ‪۶۰‬ھ وقات سنہ ‪۰۸‬۔(د) ام کلیوم الصعری۔والدت ‪۶۳‬ھ وقات ق یل از سنہ‬ ‫‪۳۹‬ھ۔‬ ‫مورخ مازندرانی ئے ام سعید بیت عروہ کا نذکرہ کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین کے ذنل میں کیا ہے‪ ،‬لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫جونکہ شیخ کرناسی کی تحفیق کے م طاثق ام سعید سنہ ‪۰۹‬ھ کو وقات نا گئیں تھیں لہذا اپ کے ئزدنک ام سعید کا کرنال میں‬ ‫جاضر ہونا انک تعید امر ہے۔‬

‫ام سعیب المحزومنہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫اپ سنہ ‪ ۶‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬اور سنہ ‪۶۹‬ھ میں بظور کبیز حصرت امیر المومئین کے گھر نشرتف البیں‪ ،‬ہللا تعالی‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ کو حصرت علی سے بین لڑکیاں ع طا کیں‪:‬‬ ‫(الف) تقیشہ بیت علی ۔والدت سنہ ‪۶۶‬ھ وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ۔ (ب) زبیب ضعری بیت علی۔ والدت سنہ ‪۶۰‬ھ‬ ‫وقات ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ۔ (ج) رفنہ ضعری بیت علی ۔ والدت سنہ ‪۶۳‬ھ وقات تعد ازسنہ ‪۲۰‬ھ۔‬ ‫مورخ مازندرانی ئے ابنی کیاب معالی السب طین میں ذکر کیا ہے کہ رفنہ ضعری بیت علی ابنی مادر گرامی ام‬ ‫ٓ‬ ‫سعیب کے ساتھ کرنال میں جاضر ہوبیں‪ ،‬ح یکہ محقق انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کی تحفیق کے م طاثق ام سعیب کی‬ ‫وقات تعد از ‪۳۹‬ھ ہوجکی تھی حس کی ن یا ئر ان کا کرنال میں جاضر ہونا ان کے ئزدنک غیر قانل فیول ہے۔‬

‫ام قاطمہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ق یل از سنہ ‪۰‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬اور سنہ ‪۶۰‬ھ میں اپ کو حصرت علی علنہ السالم کی کبیزی کا شرف جاصل ہوا‪ ،‬ہللا ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اپ کو حصرت علی سے قاطمہ نامی دخیر ع طا کی کہ جن کا عقد اثوسعید بن ق یل (شہید کرنال) سے ہوا‪ ،‬ام قاطمہ ابنی پینی‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫قاطمہ اور داماد اثوسعید کے ساتھ کرنال میں جاضر ہوبیں چہاں اثوسعید بن ق یل شہید کئ‬ ‫‪196‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ام کلیوم ضعری بیت عید ہللا بن جعقر الطیار بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ کو ہونی‪ ،‬زبیب کیری بیت علی اپ کی مادر گرامی تھیں‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے اپ‬ ‫ٓ‬ ‫کا عقد قاشم بن دمحم االکیر بن جعقر الطیار سے قرمانا‪ ،‬اپ ابنی مادر گرامی ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا اور سوہر ح یاب قاشم بن‬ ‫دمحم االکیر کے ساتھ کرنال میں جاضر ہوبیں تھیں۔‬

‫ام کلیوم کیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫حصرت امام علی علنہ السالم کی جار ن بت یاں تھیں‪:‬‬ ‫(الف) زبیب کیری بیت قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا۔والدت سنہ ‪ ،۲‬شہادت سنہ ‪۲۶‬ھ۔ ح یاب زبیب کی کییت ام‬ ‫کلیوم تھی۔‬ ‫(ب) ام کلیوم کیری بیت قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا۔ والدت سنہ ‪۰‬ھ وقات سنہ ‪۲۰‬ھ۔ ح یاب ام کلیوم کا نام زبیب‬ ‫تھا۔‬ ‫ٓ‬ ‫(ج) زبیب ضعری بیت ام سعیب المحزومنہ۔ والدت سنہ ‪ ۶۰‬وقات سنہ ‪۳۹‬ھ۔ اپ کی کییت ام کلیوم تھی۔‬ ‫ٓ‬ ‫(د) ام کلیوم ضعری بیت ام سعید الی قفنہ۔ والدت سنہ ‪۶۳‬ھ وقات سنہ ‪۳۹‬ھ۔ اپ کا نام زبیب تھا۔‬ ‫امام علی علنہ السالم کی جاروں ن بییوں کے نام زبیب جن میں سے ہر انک کی کییت ام کلیوم تھی‪ ،‬اس‬ ‫ٓ‬ ‫مقام ئر ہماری گق یگو ام کلیوم کیری بیت زہرا سالم ہللا علیہما کے نار ے میں ہے‪ ،‬اپ کی والدت ‪ ۰۲‬سعیان سنہ ‪۰‬ھ میں‬ ‫ٓ‬ ‫وا فع ہونی‪ ،‬گرجہ اہل شنت کے پہاں یہ مشہور ہے کہ اپ کی سادی عمر ابن خ طاب کے ساتھ ہونی لیکن مذہب امامنہ‬ ‫کے ئزدنک یہ نات ح‬ ‫صیح پہیں ہے‪ ،‬جونکہ جن سے حصرت عمر کا عقد ہوا وہ ام کلیوم بیت چرول االنصاریہ تھیں نام‬ ‫ے‬ ‫ے ح یکہ ح یاب ام کلیوم بیت علی کا عقد جود حصرت امیر ئے ا بئ‬ ‫میں مساپہت کی وجہ سے مورخین سنہ کا سکار ہو گئ‬ ‫ت‬ ‫ے عون بن جعقر طیار سے قرمانا تھا۔‬ ‫ھییچ‬ ‫‪197‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ح یاب ام کلیوم کو عون بن جعقر طیار سے اوالد یہ ہو سکی‪ ،‬دوثوں زن و سوہر کرنال میں جاضر ہوئے چہاں دبن‬ ‫ے ح یاب عون ئے جام شہادت ثوش قرمانا‪ ،‬تعد از واف ٔعہ عاسورا ح یاب ام کلیوم اسیر ہوبیں اور ح یاب‬ ‫اسالم کی ت قاء کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫ے ارساد قرمائے‪ ،‬مدنیہ وانسی کے تعد سنہ ‪۲۰‬ھ ہی میں اپ ئے‬ ‫زبیب کی طرح کوفہ اور سام میں اپ ئے فصیح و لبغ خ ظئ‬ ‫دار قانی کو وداع قرمانا۔‬

‫ام کلیوم بیت فصل بن عیاس بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب ام کلیوم تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد کا نام فصل اور والدہ کا نام صفنہ تھا‪ ،‬اما م حسن علنہ السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ سے سنہ ‪۶۲‬ھ میں عقد قرمانا جن سے دمحم االضعر (والدت سنہ ‪ ،۰۳‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ) اور قاطمہ ضعری‬ ‫میولد ہوئے‪ ،‬ح یاب ام کلیوم سے امام حسن علنہ السالم کی سنہ ‪۰۲‬ھ میں طالق وا فع ہونی‪ ،‬لیکن کیاب معالی السب طین‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزند‬ ‫میں اپ کا سمار کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین میں کیا گیا ہے‪ ،‬لہذا فوی اجتمال اس نات کا ہے کہ اپ ا بئ‬ ‫دمحم االضعر کے ساتھ م ٔ‬ ‫ے۔‬ ‫ے حجا کے ساتھ کرنال میں نشرتف الئے اور اسیر ن یائے گئ‬ ‫عرکہ کرنال میں جاضر ہونی ہوں جو ا بئ‬ ‫اس مقام ئر ہم یہ جاہیں گے کہ امام حسن علنہ السالم کی ازواج اور ان کی اوالد کا نذکرہ کربں کیونکہ بنی امنہ ئے امام حسن‬ ‫ے یہ ئرونگیڈہ کیا کہ امام عالی مقام ئے بین سو عورثوں سے عقد قرمانا‪ ،‬ح یکہ یہ‬ ‫علنہ السالم کی عظمت کو کم کرئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫نات جق و حفیقت سے دور ہے جونکہ امام حسن علنہ السالم کی مج یلف زماثوں میں اتھ بیوناں اور ‪ ۶۹‬کبیزبں تھیں‪ ،‬جن کی‬ ‫ت‬ ‫فصیل ہمیں نار تخ میں کجھ اس طرح سے ملنی ہے‪:‬‬

‫امام حسن کی ازواج اور انکی اوالد‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ قاطمہ بیت عفنہ الحزرجنہ (والدت تقرن یا سنہ ‪۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ :‬امام حسن علنہ السالم ئے سنہ ‪۰۰‬ھ میں اپ‬ ‫سے عقد قرمانا‪ ،‬ح یاب قاطمہ بیت عفنہ کی امام حسن سے ہوئے والی اوالد کے نام یہ ہیں‪:‬‬

‫‪198‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫زند (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۶۹‬ھ) ‪ ،‬ام الحیر رملہ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۰‬ھ)‪ ،‬اجمد (والدت سنہ‬ ‫‪۳۳‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنال)‪ ،‬ام الحسن الصعری( والدت تقرن یا سنہ ‪ ،۳۳‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنال)‪ ،‬نسیر (‬ ‫والدت تقرن یا سنہ ‪۳۸‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنال)‪ ،‬ام الحسین (والت تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ی مقام کرنال)۔‬

‫‪۶‬۔ ام کلیوم بیت فصل الہاشمنہ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ )‪ ،‬امام حسن علنہ السالم ئے تقرن یا سنہ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۶۲‬ھ میں اپ سے عقد قرمانا جن سے دمحم االضعر (والدت سنہ ‪ ،۰۳‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ )اور قاطمہ ضعری ن یدا ہوئے۔‬

‫‪۰‬۔ جعدہ بیت االسعث الکیدیہ (والدت سنہ ‪۶۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۹۹‬ھ) امام حسن علنہ السالم ئے جعدہ بیت اسعث‬ ‫سے تقرن یا سنہ ‪۰۲‬ھ کو عقد قرمانا‪ ،‬جعدہ کو امام حسن سے کونی اوالد یہ ہونی۔‬

‫‪۳‬۔ جولہ بیت متظور القزاریہ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬وقات ق یل از سنہ ‪۲۰‬ھ) سے امام حسن علنہ السالم ئے تقرن یا سنہ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰۲‬ھ میں عقد قرمانا‪ ،‬جن سے ہللا ئے اپ کو حسن مینی (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۰۶‬ھ) دمحم االکیر نامی قرزند ع طا‬ ‫ے۔‬ ‫کئ‬

‫‪۹‬۔ ام اسجاق بیت طلجہ الییمنہ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ،۰۹‬وقات تعد از سنہ ‪۰۰‬ھ) سے امام حسن علنہ السالم ئے تقرن یا سنہ‬ ‫‪۳۸‬ھ کو عقد قرمانا جن سے طلجہ بن حسن تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوئے۔‬

‫‪۲‬۔ عانشہ بیت جلیفہ ا حلبعمنہ‪ :‬امام حسن علنہ السالم ئے ابنی اس زوجہ کو طالق دی تھی۔‬

‫‪۳‬۔ ح فصہ بیت عید الرجمان الییمنہ امام عالی مقام ئے ابنی اس زوجہ کو ت ھی طالق دی تھی۔‬ ‫‪199‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۸‬۔ ہ ید بن شہیل العامریہ۔‬ ‫ٓ‬ ‫یہ تھیں امام حسن علنہ السالم کی وہ ازواج کہ جو مج یلف زماثوں میں امام عالی مقام کے عقد میں تھیں اب ہم اپ کی‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫کبیزوں اور ان کی اوالد کی طرف روشنی ڈا لئ‬

‫ٓ‬ ‫امام حسن علنہ السالم کی کبیزبں اور ان سے اپ کی اوالد‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫(‪)۰‬۔ رب ظہ ام اروی ہمدانی (قارسی)‪ :‬اپ کو امام حسن علنہ السالم سے اسماعیل و حمزہ نامی دو قرزند ہوئے۔(‪)۶‬۔‬ ‫ٰ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو کرنال میں امام حسین‬ ‫رناب المازنیۃ (المارنیۃ)‪ :‬جعقر بن حسن(والدت سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ کے قرزند ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫علنہ السالم کے ساتھ شہید ہوئے۔ (‪)۰‬۔ ح بینہ المعرنیۃ‪ :‬اپ کے عید ہللا االوسط ( والدت سنہ ‪۳۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ‪،‬‬ ‫ے۔ (‪)۳‬۔ زبیب الیجلنۃ ‪ :‬عید ہللا االضعر (والدت سنہ‬ ‫ی مقام کرنال) اور عید الرجمان(والدت سنہ ‪۳۰‬ھ) نامی دو قرزند ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو کرنال میں شہید ہوئے۔ (‪)۹‬۔ رملہ الرومنہ(جو ہمارے درمیان ام قروہ‬ ‫‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو سنہ ‪۳۲‬ھ کو میولد ہوئے اور سنہ ‪۲۰‬ھ ہحری کو کرنال میں شہید‬ ‫کے نام سے مشہور ہیں)‪ :‬ح یاب قاشم اپ کے قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ جن کا نام مرازم تھا۔ (‪)۳‬۔ ناجنۃ ام تعقوب‪ :‬اپ کے‬ ‫ہوئے۔ (‪)۲‬۔ فصنہ ام مرازم‪ :‬اپ کے انک قرزند ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫قرزند کا نام تعقوب تھا۔ (‪)۸‬۔ ئرحس الرومنہ‪ :‬اپ کی دو ن بت یاں تھیں کہ جن کا نام ام الحسن الکیری اور بیت الحسن‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھا۔ (‪)۰‬۔ ملیکۃ ام الحسن‪ :‬اپ کی دخیر کا نام ام الحسن الوسطی تھا۔ (‪)۰۹‬۔ الصھیاء‪ :‬ام سلمہ اپ کی دخیر تھیں۔ (‪)۰۰‬‬ ‫ٓ‬ ‫۔ عاضمہ ام رفنہ‪ :‬رفنہ اپ کی پینی تھیں۔ (‪)۰۶‬۔ صافنہ زتجنہ (والت تقرن یا ‪ ۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسن علنہ السالم سے اپ کو انک دخیر ہونی کہ جن کا نام قاطمہ کیری (والد ت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫‪۳۹‬ھ) تھا ۔ (‪)۰۰‬۔ ام ق یل‪ :‬اپ کے قرزند کا نام ق یل تھا۔ (‪)۰۳‬۔ ام علی اضعر‪ :‬اپ کے قرزند کا نام علی اضعر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھا۔ (‪)۰۹‬۔ ام علی االکیر‪ :‬اپ کے قرزند کا نام علی اکیر تھا۔ (‪)۰۲‬۔ ام عمرو الی قفنہ‪ :‬اپ کے قرزند کا نام عمرو تھا جو‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔ (‪)۰۳‬۔ ام تحنی‪ :‬اپ کے تحنی نامی‬ ‫ے گئ‬ ‫تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوئے اور سنہ ‪۲۰‬ھ کو کرنال کے میدان میں شہید کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔ (‪)۰۸‬۔ ام عید الرجمان‪ :‬اپ کے قرزند کا نام عید الرجمان تھا۔ (‪)۰۰‬۔ ام سکینہ‪ :‬اپ کی دخیر کا نام سکینہ‬ ‫قرزند تھ‬ ‫‪200‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫تھا۔ (‪ )۶۹‬۔ تق یلہ المدنیۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ :‬اپ کے انک قرزند کا نام اثو نکر تھا جو سنہ‬ ‫‪۳۳‬ھ کو میولد ہوئے اور سنہ ‪۲۰‬ھ کو کرنال میں شہادت نانی۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے امام حسن علنہ السالم کی ازواج‪ ،‬کبیزوں اور ان سے اپ کی اوالد کے اسماء کہ جن کا نذکرہ اہل نسب‬ ‫یہ تھ‬ ‫ت‬ ‫ئے نار تخ میں کیا ہے‪ ،‬ہماری اس فصیل سے بنی امنہ اور ان کے نیروکاروں کا مذکورہ ئرونگیڈہ ناطل ہوجانا ہے۔‬

‫ام وھب بیت وھب نصرانی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ام وھب بیت وھب تقرن یا سنہ ‪۶۲‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے سوہر اور قرزند کا نام تھی وہب تھا‪،‬اپ اور اپ کے قرزند‬ ‫ے) ئے امام حسین علنہ السالم کے ہاتھوں ئر اسالم فیول قرمانا۔‬ ‫(جوکہ نصرانی تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ح یکہ وہب بن‬ ‫اکیر مورخین اپ کے قرزند وہب بن وہب اور وہب بن عید ہللا کلنی کو انک قرد مجھئ‬ ‫ے کہ چہاں یہ نمام اقراد شہید‬ ‫عید ہللا ابنی مادر گرامی قمر‪ ،‬والد عید ہللا کلنی اور زوجہ ہانیہ کوفنہ کے ساتھ کرنال نشرتف الئے ت ھ‬ ‫ے‪،‬وہب بن عید ہللا کے گھرائے کی ہر قرد ان یداء سے مسلمان اور شیعہ علی تھی۔‬ ‫ے گئ‬ ‫کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے نلکہ اپ دوثوں ئے امام حسین علنہ‬ ‫لیکن ح یاب وہب بن وہب اور اپ کی مادر گرامی مسلمان یہ ت ھ‬ ‫السالم کے ہاتھوں ئر اسالم فیول قرمانا‪ ،‬شیخ صدوق (دمحم بن علی بن حسین قمی) ت قل قرمائے ہیں کہ روز عاسورا حب‬ ‫ے اور انک ع ظیم ح یگ کے تعد شرنت شہادت ثوش قرمانا ثو عمر سعد‬ ‫وھب بن وھب میدان کازار میں نشرتف لے گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ئے اپ کا شر کیوا کر ح یام حسینی کی طرف اچھال دنا‪ ،‬یہ دنکھ کر اپ کی مادر گرامی ام وہب ئے نلوار اتھانی اور ق یل کی‬ ‫طرف جائے لگیں اس وقت امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا اے ام وھب عورثوں ئر چہاد واحب پہیں ہے‪ ،‬وانس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ ٔ‬ ‫جلی او ‪ ،‬پیسک ی مھارا اور ی مھارے قرزند کا مقام جیت میں میرے نانا رسول ہللا کے ساتھ ہے‪ ،‬تھر امام ئے اپ کو‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شہادت کی نسارت دی اور اس طرح اپ ئے تھی کرنال میں شہادت نانی‪ ،‬قانل ذکر نات یہ ہے کہ اپ کے قرزند‬ ‫ح یاب وہب بن وہب کا شہادت کے مو فع ئر عقد پہیں ہوا تھا۔‬

‫‪201‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ت‬ ‫ّ ت‬ ‫ئرۃ ( فیح الیاء و فیح الراء المسددۃ)‪:‬‬ ‫ئرہ امام حسین علنہ السالم کی کبیز تھیں‪ ،‬حب شہرناثو مادر امام سجاد علنہ السالم جالت ت قاس میں رجلت قرماگئیں ثو امام‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئرہ کو معین قرمانا‪ ،‬جو اپ کے ساتھ کرنال میں جاضر ہوبیں‪ ،‬ح یاب ئرہ‬ ‫حسین علنہ السالم ئے امام سجاد کی کقالت کے لئ‬ ‫کی وقات سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد وا فع ہونی۔‬

‫ام اجمد ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ام اجمد ق یل از سنہ ‪۰۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ دمحم بن ق یل کی زوجہ تھیں کہ جن سے ہللا ئے اپ کو اجمد نامی قرزند ع طا‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا‪ ،‬تعض ارناب مقانل ئے اپ کا نذکرہ کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین کے ذنل میں کیا ہے‪ ،‬حس سے یہ اندازہ‬ ‫ٓ‬ ‫لگانا جاسکیا ہے کہ اپ کی وقات سنہ ‪۲۰‬ھ تعد وا فع ہونی۔‬

‫ام الحسن بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ام الحسن تقرن یا سنہ ‪۶۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد حصرت علی اور والدہ ام سعید بیت عروہ تھیں‪ ،‬رملہ کیری‪ ،‬عمر اوسط اور‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ کا سب سے پہال عقد جعدہ بن ہبیرہ المحزومی سے ہوا جن سے ہللا‬ ‫ے تھانی پ ہن ت ھ‬ ‫ام کلیوم ضعری اپ کے سگ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ئے اپ کو عید ہللا اور تحنی نامی دو قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬سنہ ‪۳۰‬ھ میں سوہر کی وقات کے تعد اپ ئے جعقر اکیر بن ق یل‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سے عقد قرمانا جن کے ساتھ اپ کرنال نشرتف البیں اور چہاں اپ کے سوہر ئے امام حسین علنہ السالم کے ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫شرنت شہادت ثوش قرمانا‪ ،‬سوہر کی شہادت کے تعد اپ اسیر ہوبیں پہاں نک کہ امام سجاد کے ساتھ مدنیہ وانس لوبیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫اپ کی وقات شہر مدنیہ میں وا فع ہونی‪ ،‬اور طاہرا اپ کو فبع میں دق یانا گیا۔‬

‫‪202‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ام القاشم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ام القاشم ق یل از سنہ ‪۶۰‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد دمحم اکیر بن جعقر بن ابت طالب سے ہوا جو سنہ ‪۰۳‬ھ کو ح یگ ص فین میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ہللا تعالی ئے اپ کو دمحم اکیر بن جعقر سے قاشم نامی قرزند ع طا قرمانا جو اپ کے ساتھ کرنال نشرتف الئے‬ ‫ے گئ‬ ‫شہید کئ‬ ‫ے۔‬ ‫اور امام حسین علنہ السالم کے ساتھ اس قدر ح یگ کی کہ محروح ہوئے اور کرنال کے تعد اسیر تھی ن یائے گئ‬

‫ام دمحم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے قرزند دمحم بن اثوسعید بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب کے ساتھ کرنال‬ ‫ام دمحم ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫نشرتف البیں کہ چہاں اپ کے قرزند ئے امام حسین علنہ السالم ئر ابنی جان قرنان کردی‪ ،‬ام دمحم کی وقات تعد از سنہ‬ ‫‪۲۰‬ھ میں وا فع ہونی۔‬

‫تحریہ بیت مسعود الحزرجنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزند عمرو بن ح یادہ‬ ‫ے سوہر ح یادہ بن کعب بن چرث انصاری اور ا بئ‬ ‫اب تقرن یا سنہ ‪۰۲‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬کرنال میں اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے ساتھ جاضر ہوبیں‪ ،‬چہاں اپ کے سوہر اور قرزند دوثوں درج ٔہ شہادت ئر قائز ہوئے‪ ،‬روانات کے م طاثق سوہر کی‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے امام کی جدمت میں ھیجا‪ ،‬جونکہ عمرو بن‬ ‫ے قرزند کو زرہ پہیانی اور ح یگ کی اجازت کے لئ‬ ‫شہادت کے تعد اپ ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لہذا امام عالی مقام ئے ماں کا لجاظ کرئے‬ ‫ے اپ کے والد شہید ہوئے تھ‬ ‫ے اور کجھ ہی دئر پہل‬ ‫ح یادہ گیارہ سال کے تھ‬ ‫ت‬ ‫ے یہ زرہ ناندھ کر ھیجا ہےاور وہ اس نات ئر‬ ‫ہوئے اجازت پہیں دی‪ ،‬یہ دنکھ کر عمرو ئے کہا‪ :‬موال میری ماں ئے مجھ‬ ‫ٔ‬ ‫راضی ہیں کہ میں تھی درجہ شہادت ئر قائز ہو جاوں‪ ،‬اس اشت یاق شہادت کو دنکھ کر امام عالی مقام ئے عمرو کو ح یگ کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫اجازت دی‪ ،‬حب عمرو شہید ہوئے ثو دشمیوں ئے اپ کے شر کو لسکر امام حسین کی طرف اچھال دنا‪ ،‬تحریہ ئے ا بئ‬ ‫قرزند کے شر کو اتھانا اور اسے وانس قانلین کی طرف تھت یک دنا۔‬ ‫‪203‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جمایہ بیت انی طالب الھاشمنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ سنہ ‪ ۰۸‬ق یل از ہحرت کو مکہ مکرمہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد اثوطالب اور والدہ قاطمہ بیت اسد تھیں‪ ،‬اپ کا‬ ‫ٓ‬ ‫ے (جعقر‪ ،‬عید ہللا‪ ،‬عت ید ہللا) اور انک پینی‬ ‫عقد م غیرہ بن جارث بن عید الم طلب سے ہوا کہ جن سے اپ کو بین پیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫(عانکہ) ن یدا ہونی‪ ،‬اپ کرنال میں امام حسین علنہ السالم کے ساتھ جاضر ہوبیں چہاں اپ ئے ابنی ایکھوں سے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور کاروان امام سجادکے ساتھ‬ ‫قرزند عید ہللا کی شہادت کو دیکھا‪ ،‬وافعہ کرنال کے تعد اپ ئے اسیر ی کے شیم تھی شہ‬ ‫مدنیہ وانس لوبیں۔‬

‫ح بینہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ تقرن یا سنہ ‪۶۸‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا سمار امام حسن علنہ السالم کی کبیزوں میں ہونا ہے‪ ،‬عید الرجمان بن حسن اپ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ جن کے ساتھ اپ کرنال میں جاضر ہونی تھیں۔‬ ‫کے قرزند تھ‬

‫حسینۃ ( ح مضموم‪ ،‬ثون مکشور‪ ،‬ی مفیوح و مسدد)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ق یل از سنہ ‪۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کو امام حسین علنہ السالم ئے ثوقل بن جارث بن عید الم طلب سے چرندا تھا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫اپ سے ھم نامی سحص ئے عقد کیا جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو میحح نامی قرزند ع طا قرمانا جن کے ساتھ اپ کرنال‬ ‫ٓ‬ ‫نشرتف البیں‪ ،‬کرنال کی اس معرکہ ارا ح یگ میں میحح درج ٔہ شہادت ئر قائز ہوئے‪ ،‬زنارت ناجنہ میں امام عسکری علنہ السالم‬ ‫ت‬ ‫ئے میحح ئر ثوں سالم ھیجا‪:‬‬ ‫السالم علی منجح مولی الحسین۔‬

‫‪204‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫حمیدہ بیت مسلم بن ق یل بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب حمیدہ سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد مسلم ابن ق یل اور ماں رفنہ ضعری(‪ )1‬بیت امیر المومئین تھیں‪ ،‬لہذا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫امام حسین علنہ السالم اپ کے اور اپ کے سوہر عید ہللا االجول(جن کی ماں کا نام زبیب ضعری بیت علی تھا اور جو‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫امام حسین علنہ السالم کی پہن تھیں) بن دمحم بن ق یل کے ماموں تھ‬ ‫ع‬ ‫یہ وہی حمیدہ ہیں کہ حب کرنال کےراسنہ میں ح یاب مسلم ابن ق یل کی شہادت کی اطالع ملی ثو امام حسین علنہ السالم‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ کے شر ئر دست س ققت تھیرا تھا‪ ،‬اپ کرنال میں اسیر ہوبیں اور حب ق ید سے وانسی ہونی ثو کجھ مدت کے تعد‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے) ئے اپ سے‬ ‫ے تھی تھ‬ ‫ح یاب عید ہللا االجول (‪ )2‬بن دمحم بن ق یل (جو کہ اپ کے جالہ زاد تھانی اور حجا کے پیئ‬ ‫عقد قرمانا۔‬

‫جدتجہ بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب جدتجہ بیت علی تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد عید الرجمان (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ) بن ق یل بن انی‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫طالب سے تقرن یا سنہ ‪۹۰‬ھ کو ہوا‪ ،‬جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو دو قرزند سعد (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ) اور ق یل (والدت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے سوہر اور تجوں کے ساتھ کرنال نشرتف البیں چہاں اپ کے سوہر شہید ہوئے اور دوثوں‬ ‫سنہ‪۹۹‬ھ) ع طا قرمائے‪ ،‬اپ ا بئ‬

‫‪ -1‬رفنہ ضعری بیت علی‪ ،‬زبیب ضعری بیت علی اور تقیشہ بیت علی سگی پہئیں تھیں کہ جن کی مادر گرامی کا نام ام سعیب المحزومنہ تھا‪،‬‬ ‫(معحم انصار الحسین الرجال ج ‪ ۰‬ص ‪)۸۳‬۔‬ ‫‪2‬‬ ‫‪ -‬عید ہللا االجول کی مادر گرامی زبیب ضعری بیت علی تھیں‪ ،‬اور ح یاب حمیدہ کی والدہ رفنہ ضعری بیت علی تھیں‪ ،‬لذا دوثوں کی مابیں انک‬

‫دوشرے کی پہئیں تھیں۔‬

‫‪205‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے حس کے تعد اپ اسیر ن یانی گئیں اور امام سجاد کے ساتھ مدنیہ وانس‬ ‫قرزند جوف و ن یاس کی سدت کی وجہ سے شہید ہو گئ‬ ‫لوبیں۔‬

‫جلیلہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب جلیلہ ق یل از سنہ ‪۲‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬اپ ح یاب ق یل بن ابت طالب کی کبیز تھیں کہ جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ے گئ‬ ‫ے جن کے نام نار تخ میں کجھ اس طرح سے ن یان کئ‬ ‫بین قرزند ع طا کئ‬ ‫‪۰‬۔ عید ہللا االکیر (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت ‪۲۰‬ھ)۔ ‪۶‬۔ عید ہللا االضعر (والدت سنہ ‪۶۳‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) ۔‪۰‬۔عید‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزندوں کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں اپ کے‬ ‫الرجمان االکیر (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬قرزندوں کی شہادت کے تعد اپ ئے امام سجاد علنہ السالم‬ ‫ے گئ‬ ‫پییوں قرزند امام حسین علنہ السالم کے ساتھ شہید کئ‬ ‫ٓ‬ ‫کے ساتھ اسیری کی سحییوں کو تحمل قرمانا پہاں نک کے مدنیہ وانس ہوبیں‪ ،‬سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد اپ کی وقات ہونی‪ ،‬طاہرا‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫اپ کو جیت ال فبع میں دق یانا گیا ہے۔‬

‫جوصاء بیت عمرو الھصانیۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب جوصاء تقرن یا سنہ ‪۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی کییت ام التئین تھی‪ ،‬ح یاب ق یل بن ابت طالب ئے سنہ ‪۰۹‬ھ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ سے عقد قرمانا جن سے اپ کو جار قرزند اس ئربیب کے ساتھ ہوئے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ ئزند بن ق یل‪ ،‬اپ کی کونی اوالد یہ تھی‪ ،‬اپ ہی کے نام ئر ح یاب ق یل کی اثوئزند قرار نانی۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪۶‬۔ اثوسعید بن ق یل (والدت سنہ ‪۰۲‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬اپ ئے قاطمہ بیت علی سے عقد قرمانا‪ ،‬جو اپ کے ساتھ‬ ‫کرنال میں جاضر تھیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ جعقر االکیر بن ق یل (والدت سنہ ‪۰۳‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬اپ ئے ام الحسن بیت علی سے عقد قرمانا‪ ،‬جو اپ کے‬ ‫ساتھ کرنال میں جاضر تھیں۔‬

‫‪206‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪۳‬۔ موسی بن ق یل (والدت سنہ ‪۰۸‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬اپ کی کونی اوالد یہ تھی۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے بین قرزندوں (تعنی اثوسعید‪ ،‬جعقر االکیر اور موسی) کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں اپ کے‬ ‫ح یاب جوصا ء ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے‪ ،‬حس کے تعد اپ ئے ابنی دوثوں پہووں کے ساتھ اسیر ن یانی گئیں پہاں نک کہ امام سجاد علنہ‬ ‫ے گئ‬ ‫ے شہید کئ‬ ‫پییوں پیئ‬ ‫السالم کے ساتھ مدنیہ وانس لوبیں۔‬

‫جوصاء بیت ح فصہ بن تفیف بن رببعہ بن عتمان الوانلنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب جوصاء تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد عید ہللا االکیر بن جعقر طیار سے ہوا جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو دمحم‬ ‫ے‪ ،‬صاحب معالی ئے آپ کا نذکرہ کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین میں‬ ‫االضعر ‪ ،‬عت ید ہللا اور اثونکر نامی بین قرزند ع طا کئ‬ ‫کیا ہے۔‬

‫ع‬ ‫رناب بیت امریء القیس بن عدی بن اوس بن جائر بن کعب بن لیم الکیدیۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ے لہذا اجتمال فوی ہے کہ‬ ‫رناب بیت امریء ال قیس سنہ ‪۲‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬جونکہ اپ کے والد دومۃ الج یدل میں فیم تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫اپ کی والدت دومۃ الج یدل (‪ )1‬نا اس کے اطراف میں وا فع ہونی ہو‪ ،‬اپ کی دو اور ئڑی پہئیں (مجیاۃ اور لمی) تھیں‪،‬‬ ‫س‬ ‫تھیں‪ ،‬مجیاۃ سے حصرت علی اور لمی سے امام حسن علیہما السالم ئے عقد قرمانا تھا‪ ،‬ح یاب رناب کا عقد امام حسین علنہ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم سے سنہ ‪۰۰‬ھ میں وا فع ہوا‪ ،‬اپ امام حسین علنہ السالم کی پہلی زوجہ تھیں جو ادب و اجالق‪ ،‬حسن و جمال‪ ،‬عقل و‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫ف‬ ‫ے امام عالی مقام ئے اپ سے انس و حمیت کا اظہار کرئے‬ ‫ھم میں دوشری عورثوں ئر ئرئری ر ھنی تھیں اسی لئ‬

‫‪ُ ٓ 1‬‬ ‫ اج دومۃ الج یدل سیرنا کی اس ساہ راہ ئر وا فع ہے کہ جو شہر مدنیہ ئر میی ہی ہونی ہے‪ ،‬یہ وہی مقام ہے کہ چہاں حیگ ص فین کے تعد حکمین ئے‬‫فیصلہ کیا تھا۔‬

‫‪207‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اب (‪)1‬۔۔۔۔۔۔ی مھاری قشم کہ میں اس گھر کو‬ ‫س َکیْنَۃُ َو ال َّر َب ُ‬ ‫ک اِنَّنِ ْی َ َال ُحب دَارا‪ ،‬تَ ِحل ِب َھا ُ‬ ‫ہوئے قرمانا‪ :‬لَ َع ْم ُر َ‬ ‫دوست رکھیا ہوں کہ حس میں سکینہ و رناب موجود ہوں۔‬ ‫ح یاب رناب سے بین ن بت یاں اور انک قرزند میولد ہوئے‪ ،‬جن کے نام یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ قاطمہ کیری۔ والدت سنہ ‪ ،۶۹‬وقات سنہ ‪۰۰۹‬ھ۔‬ ‫‪۶‬۔ سکینہ۔ والدت سنہ ‪ ،۳۶‬وقات سنہ ‪۰۰۳‬ھ۔‬ ‫‪۰‬۔ رفنہ۔ والدت سنہ ‪۹۳‬۔ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ۔‬ ‫‪۳‬۔ عید ہللا۔ والدت دس محرم سنہ ‪ ،۲۰‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب رناب‪ ،‬قاطمہ کیری ‪،‬سکینہ‪ ،‬رفنہ اور امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال نشرتف لے گئیں ‪ ،‬اپ کو‬ ‫ٓ‬ ‫ے جیھیں وہ صیح و سام ئڑھ کر گریہ‬ ‫ے کہ‬ ‫امام عالی مقام سے اس قدر محیت تھی کہ تعد از شہادت اپ ئے ئے سمار مر بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے پہت ساری عوربیں حمع ہونی تھیں اور عزاداری کے تعد شتو‬ ‫ے کو شیئ‬ ‫زاری کرنی تھیں‪ ،‬لکھا گیا ہے کہ اپ کے مر بئ‬ ‫ت‬ ‫ے۔‬ ‫(‪ )2‬بظور نیرک فشیم کیا جانا‪ ،‬ناکہ اسے کھا کرامام حسین علنہ السالم ئر زنادہ سے زنادہ گریہ کیا جا سک‬ ‫امام حسین علنہ السالم ئے ح یاب رناب کے تعد نیربیب میدرجہ ذنل جوابین سے مج یلف زماثوں میں عقد دایم قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ امام حسین علنہ السالم ئے سالفہ (ملومۃ) فصانیہ سے سنہ ‪ ۶۹‬ھ کو اپ کا عقد قرمانا جن سے جعقر تعد از سنہ ‪۶۰‬ھ اور‬ ‫ے ہی مدنیہ میں وقات نا گئیں۔‬ ‫قاطمہ وسطی (‪ )3‬میولد ہوئے‪ ،‬سالفہ سنہ ‪۰۹‬ھ سے پہل‬

‫ٓ‬ ‫‪ -1‬دثوان امام الحسین من السعر المیشوب النہ‪ ،‬نالیف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی‪ ،‬جلد اول ص ‪۰۰۰‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے جو نا ئاے سے نیائے ہیں کہ حس میں سکر تھی مالنی جانی ہے ۔‬ ‫‪ -2‬شتو کو مج یلف خیزوں سے ن یانا جانا ہے‪ ،‬تعض لوگ اسے تھئ‬ ‫‪ٓ 3‬‬ ‫ انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک پ ہی وہ قاطمہ وسطی تھیں کہ جو عاللت و بتماری کی وجہ سے کرنال میں جاضر یہ ہو سکیں ح یکہ قاطمہ‬‫ضعری و کیری دوثوں کرنال میں موجود تھیں۔‬

‫‪208‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۶‬۔ سنہ ‪۰۹‬ھ میں امام حسین علنہ السالم کا عقد سیدہ ساہ زنان بن ئزدچرد نالث ساسانی سے مدنیہ میں ہوا‪ ،‬جن سے ام‬ ‫کلیوم(والدت سنہ ‪۰۰‬ھ)‪ ،‬زبیب (والدت سنہ ‪۰۶‬ھ)‪ ،‬امام سجاد (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ) ن یدا ہوئے‪ ،‬ح یاب ساہ زنان سنہ‬ ‫‪۰۰‬ھ میں وقات نا گئیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ سنہ ‪۰۹‬ھ میں اپ ئے ح یاب لیلی بیت انی مرہ الی قفنہ سے مدنیہ میں عقد قرمانا جن سے علی اکیر سنہ ‪۰۸‬ھ کو کوفہ میں‬ ‫میولد ہوئے‪ ،‬ح یاب لیلی ئے سنہ ‪۲۰‬ھ میں وقات نانی۔‬ ‫‪۳‬۔ سنہ ‪۰۸‬ھ میں امام حسین علنہ السالم ئے سیدہ عانکہ بیت زند العدویہ سے مدنیہ میں عقد قرمانا جن سے ائرہیم سنہ‬ ‫ے‪ ،‬ح یاب عانکہ ئے سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد وقات‬ ‫‪۳۸‬ھ کو مدنیہ میں میولد کوئے اور محسن سنہ ‪ ۲۰‬ھ کو شہر جلب میں س فط ہو گئ‬ ‫نانی۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۹‬۔ سنہ ‪۹۹‬ھ میں اپ ئے ام اسجاق سے عقد قرمانا جن سے قاطمہ ضعری (والدت سنہ ‪۹۰‬ھ) اور علی اضعر سنہ ‪۲۹‬ھ کو‬ ‫میولد ہوئے‪ ،‬ح یاب ام اسجاق ئے سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد مدنیہ میں وقات نانی۔‬

‫رفنہ بیت الحسین بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب رفنہ سنہ ‪۹۳‬ھ کے اواچر میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام رناب بیت امریء القیس تھا‪ ،‬اپ کرنال میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫جاضر ہوبیں اور اسیری کی نمام ضعوبیوں کو ئرداست قرمانا‪ ۲ ،‬صقر سنہ ‪۲۰‬ھ کو زندان سام میں اپ کی شہادت وا فع ہونی‪ ،‬اج‬ ‫ٓ‬ ‫تھی اپ کا مفیرہ سام کی شر زمین ئر موجود ہے۔‬

‫‪209‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫رفنہ ضعری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب رفنہ ضعری سنہ ‪۶۳‬ھ کو مدنی ٔہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام سعیب المحزومنۃ تھا‪ ،‬ح یاب مسلم‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے ح یاب رفنہ کیری (‪ )1‬بیت علی سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو عید ہللا االکیر (والدت ‪۰۳‬ھ ۔‬ ‫ابن ق یل ئے پہل‬ ‫ے‪ ،‬اور حب سنہ ‪۳۹‬ھ میں رفنہ کیری کا ابی قال‬ ‫شہادت‪۲۰‬ھ) اور علی (والدت ‪۰۲‬ھ ۔شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) نامی قرزند ع طا کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہوا ثو اپ ئے رفنہ ضعری بیت علی (جن کی والدہ کا نام ام سعیب المحزومنہ تھا) سے اسی سال (سنہ ‪۳۹‬ھ) میں‬ ‫ٓ‬ ‫عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو عید ہللا االضعر (عت ید ہللا)(والدت ‪۳۲‬ھ ۔شہادت ‪۲۰‬ھ)‪ ،‬حمیدہ (والدت ‪۳۰‬ھ ۔‬ ‫وقات تقرن یا سنہ ‪۰۳۶‬ھ)‪ ،‬عانکہ (والدت ‪۹۶‬ھ ۔ شہادت ‪۲۰‬ھ) دمحم االضعر (والدت ‪۹۰‬ھ ۔ وقات‪۲۶‬ھ) اور‬ ‫ے قرزند ع طا قرمائے۔‬ ‫ائراہیم(والدت ‪۹۳‬ھ ۔ وقات ‪ )۲۶‬حیس‬ ‫رفنہ ضعری بیت علی کے قرزند عید ہللا االضعر کرنال میں شہید ہوئے‪ ،‬دمحم اضعر اور ائراہیم ( مشہور یہ نشران‬ ‫مسلم) کوفہ میں شہید ہوئے‪ ،‬تعد از شہادت امام حسین حب جیموں کو لونا جا رہا تھا ثو اسی وقت عانکہ گھوڑوں کی ناثوں کے‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے اکر شہید ہو گئیں‪ ،‬اور حمیدہ ابنی ماں ح یاب رفنہ بیت علی کے ساتھ اسیر ن یانی گئیں اور امام سجاد کے ساتھ مد بئ‬ ‫بیچ‬ ‫وانس لوبیں۔‬

‫‪ -1‬رفنہ کیری بیت علی کی مادر گرامی کا نام صھیاء بیت رببعہ المحزومنہ تھا‪ ،‬معحم انصار الحسین الہاشمیون جلد ‪ ۰‬ص‪۸۰‬۔‬

‫‪210‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫رملۃ الکیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫رملۃ الکیری (‪ )1‬تقرن یا سنہ ‪۶۶‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام سعید بیت عروہ بن مسعود تھا‪ ،‬اپ کا عقد عید‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ہللا م طلنی (شہید کرنال) سے ہوا‪ ،‬اپ کی اوالد کے نارے میں کونی نذکرہ پہیں ملیا ہے‪ ،‬الینہ اپ کے سوہر کرنال میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شہید ہوئے اور اپ اسیر ن یانی گئیں‪ ،‬اپ کی نار تخ وقات نک تھی ہمیں دسیرسی جاصل یہ ہو سکی‪ ،‬ممکن ہے کہ اپ کی‬ ‫ے کے تعد ہونی ہو۔وہللا العالم۔‬ ‫وقات امام سجاد کے ساتھ مدنیہ لو بئ‬

‫رملہ الرومنۃ‪:‬‬ ‫ح یاب رملہ امام حسن علنہ السالم کی کبیز تھیں جن کے نارے میں اجتمال ہے کہ وہ روم کی فیوجات میں اسیر ن یانی گنی‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫ہوں‪ ،‬اپ کی والدت ق یل از سنہ ‪ ۰۰‬ھ کو ہونی‪ ،‬جونکہ علماء میاچربن کے ئزدنک مشہور ہے کہ ح یاب قاشم کی ماں رملہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھیں لہذا انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے اسی فول کو احت یار کیا ہے‪ ،‬اپ کی حیات طینہ کے نارے میں مزند اطالعات‬ ‫ٓ‬ ‫نک ہمیں دسیرسی جاصل یہ ہو سکی‪ ،‬الینہ اس نات میں کونی سک پہیں کہ اپ امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال‬ ‫نشرتف البیں تھیں۔‬

‫روضہ ج ٔ‬ ‫ادمہ رسول ہللا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب روضہ کی والدت ق یل از ہحرت‪ ،‬ق یل از سنہ ‪ ۹‬میں وا فع ہونی‪ ،‬اپ رسول گرامی قدر کی کبیز تھیں جیھوں ئے ساری‬ ‫ٓ‬ ‫زندگی جاندان اہل بیت کی جدمت میں گزاردی‪ ،‬اپ ئے تعد از رسول بیت حصرت علی میں تقرن یا جودہ سال جدمت کی‬

‫‪1‬‬ ‫‪ -‬حصرت علی کی انک اور پینی تھیں کہ جن کا نام رملۃ الصعری تھا‪ ،‬جن کی ماں کا نام نار تخ میں ام رملۃ الصٖعری ذکر کیا گیا ہے‪ ،‬معحم انصار‬

‫الحسین الہاشمیون جلد ‪ ۰‬ص‪۸۳‬۔‬

‫‪211‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھر ح یاب زبیب کے گھر ج لی ابیں چہاں اپ ئے تقرن یا جالیس سال اپ کی جدمت کی پہاں نک کہ حصرت امام‬ ‫حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال نشرتف البیں اور اسیری کے م طالم کو ت ھی تحمل قرمانا‪ ،‬اور امام سجاد علنہ السالم کے ساتھ‬ ‫مدنیہ وانس لوبیں۔‬

‫زبیب بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫امام ناقر علنہ ا سالم کی ٔ‬ ‫والدہ ماجدہ کے نام میں اح یالف نانا جانا ہے تعض ئے اپ کا نام زبیب تعض ئے قاطمہ اور‬ ‫ل‬ ‫تعض دنگر ئے ام عید ہللا ذکر کیا ہے‪ ،‬حس سے یہ معلوم ہونا ہے کہ طاہرا امام علنہ السالم کی مادر گرامی کا نام قاطمہ‪،‬‬ ‫لقب زبیب‪ ،‬کییت ام عید ہللا تھی‪ ،‬امام حسن علنہ السالم کی یہ دخیر ن یک اخیر تقرن یا ق یل از سنہ ‪۳۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬کیب‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ق یل میں اپ کے کرنال میں جاضر ہوئے کے نارے میں نذکرہ پہیں ملیا ہے لیکن جونکہ امام ناقر علنہ السالم کرنال‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لہذا اس نات سے یہ اندازہ لگانا جا سکیا ہے کہ ساند اپ کی مادر گرامی تھی‬ ‫ے اور اپ کمسن تھی تھ‬ ‫نشرتف الئے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫کرنال میں جاضر ہونی ہوں‪ ،‬مگر یہ کہ کہا جائے کہ اپ کسی مرض کی ن یاء ئر مدنیہ ہی میں رہ گئیں۔وہللا العالم۔‬

‫زبیب ضعری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫زبیب ضعری سنہ ‪ ۶۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام سعیب المحزومنۃ تھا‪ ،‬تقیشہ(والدت سنہ ‪۶۶‬ھ وقات‬ ‫ٓ‬ ‫تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ) اور رفنہ ضعری(والدت سنہ ‪۶۳‬ھ وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ کی سگی پہئیں تھیں‪ ،‬زبیب ضعری ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫( ‪)1‬‬ ‫سنہ ‪۰۳‬ھ میں دمحم االکیر ابن ق یل سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو دو قرزند ع طا قرمائے‪ ،‬عید ہللا االجول‬ ‫(والدت سنہ ‪۰۸‬ھ وقات سنہ ‪۰۳۶‬ھ ) اور جعقر (والدت سنہ ‪۰۰‬ھ شہادت روز عاسواء سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫ٓ‬ ‫‪1‬‬ ‫ے دور میں قفنہ اور مجدث کی ح بییت‬ ‫ عید ہللا اجول ئے امام صادق علنہ السالم کے دور کو درک قرمانا اور سنہ ‪۰۳۶‬ھ نک حیات نانی اپ ا بئ‬‫ے۔‬ ‫سے جائے جائے تھ‬

‫‪212‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫ے سوہر دمحم االکیر بن ق یل‬ ‫مورخ مازندرانی ئے ابنی کیاب معالی السب طین میں ت قل قرمانا ہے کہ ح یاب زبیب ضعری ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫کے ساتھ کرنال میں جاضر ہوبیں چہاں اپ کے سوہر اور اپ کے قرزند جعقر شہید کئ‬

‫زبیب کیری بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب زبیب کیری سالم ہللا علیہا سنہ ‪ ۲‬کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی قاطمہ زہرا‪ ،‬والد حصرت علی‪ ،‬نانا‬ ‫ٓ‬ ‫رسول جدا‪ ،‬نانی ح یاب جدتجہ‪ ،‬دادا حصرت اثوطالب اور دادی قاطمہ بیت اسد تھیں‪ ،‬اپ کا نام زبیب‪ ،‬لقب عق ی ٔلہ بنی‬ ‫ٓ‬ ‫ہاشم‪ ،‬ملی ٔکہ عرب‪ ،‬سی ٔ‬ ‫دہ ب طجاء اور کییت ام کلیوم تھی‪ ،‬حس وقت اپ کی والدت ہونی ثو ح یاب زہراء سالم ہللا علیہا ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہا ثو حصرت علی ئے قرمانا کہ میں اس امر میں رسول ہللا ئر شتقت جاصل‬ ‫موال علی کو اپ کا نام معین کرئے کے لئ‬ ‫پہیں کر سکیا‪ ،‬لہذا حب دوثوں حصور کی جدمت میں جاضر ہوئے اور ثومولود کی نامگذای کی تجوئز رکھی ثو حصور ئے قرمانا کہ میں‬ ‫ے رب کے قرمان کا میت ظر ہوں‪ ،‬اسی وقت ح یاب خیرن یل امین درود و سالم کے ساتھ نازل ہوئے اور قرمانا کہ نا رسول‬ ‫ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ہللا اس ثومولود کا نام ہللا تعالی ئے زبیب معین قرمانا ہے‪ ،‬اس طرح اپ کا نام زبیب معین ہوا تعنی وہ پینی کہ جو ا بئ‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے ہاتھوں ئر اتھانا اور گریہ کرئے لگ‬ ‫ناپ کی زبیت ہے‪ ،‬نامگذاری کے تعد رسول اسالم ئے حصرت زبیب کو ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت زہراء سالم علیہا ئے حب گریہ کا شنب ثوچھا ثو حصور ئے ان مصانب کو ن یان قرمانا کہ جو ان یدہ اس ثومولود ئر وارد‬ ‫ے‪ ،‬حصرت زہراء سالم علیہا ئے ثوچھا کہ نانا جو میرے اس مولود کی مصییت ئر گریہ کرے گا اس کا‬ ‫ہوئےوالے تھ‬ ‫ثواب کیا ہوگا؟ ثو حصور ئے قرمانا جو زبیب ئر روئے اسے حسن و حسین ئر روئے کا ثواب نصنب ہوگا۔‬ ‫ع‬ ‫ح یاب زبیب کیری کو رسول گرامی قدر‪ ،‬حصرت زہراء‪ ،‬امام علی‪ ،‬امام حسن‪ ،‬امام حسین‪ ،‬امام سجاد‪ ،‬امام ناقر لیہم‬ ‫ٓ‬ ‫السالم کی مصاجیت کا شرف جاصل ہوا‪ ،‬اپ علم و تقوی و زھد کے نلید مرانب ئر قائز تھیں ‪ ،‬امام سجاد علنہ السالم ئے‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کے نار ے میں قرمانا‪:‬‬ ‫انت بحمد ہللا عالمۃ غیر معلمۃ و فھمۃ غیر مفھمۃ‬

‫‪213‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ف‬ ‫تعنی تحمد ہللا اپ انسی عالمہ ہیں کہ جن کا کونی معلم پہیں‪ ،‬اور انسی ھمیدہ ہیں کہ کسی کو اتھیں شمجھائے کی ضرورت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫پہیں‪ ،‬اپ ئے مذکورہ معصومین سے روانات ت قل کی ہیں اور اپ سے پیشمار اصجاب ببعمیر ئے تھی روانت کی ہے کہ‬ ‫ے اصجاب سامل ہیں۔‬ ‫جن میں عید ہللا ابن عیاس‪ ،‬عید ہللا بن جعقر‪ ،‬دمحم بن عمرو الہاشمی‪ ،‬ع طاء بن سانب حیس‬ ‫ے لہذا امام حسین علنہ السالم‬ ‫ے ہیں کہ جونکہ امام سجاد علنہ السالم کرنال میں بتمار تھ‬ ‫مورخ شیخ عید ہللا مامقانی لکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے امامت کی تعض امانئیں ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا کے سیرد کیں‪ ،‬اور ح ید وضتئیں تھی اپ کو قرمابیں پہاں نک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کہ امام حسین اور امام سجاد علیہما السالم ئے تھی انار والنت اور احکام الٰہنہ کو ن یان کرئے میں اپ کو ابنی نانی ٔہ جاضہ ن یانا تھا‬ ‫ے ح یاب زبیب کیری کی طرف‬ ‫ے کے لئ‬ ‫ے لوگ امام سجاد علنہ السالم کی س قا نانی نک جالل و چرام ال ہی کے جا بئ‬ ‫اسی لئ‬ ‫ے۔‬ ‫رجوع کرئے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ف‬ ‫اپ کے ھم و علم کا یہ عالم تھا کہ امام علی علنہ السالم ئے کمشنی میں اپ سے قرمانا کہ اے میری ثور ب ظر واجد‬ ‫ٓ‬ ‫(انک) کہو ‪ ،‬ثو ح یاب زبیب ئے ابنی زنان سے واجد کہا‪ ،‬تھر امام ئے قرمانا پت یا انئین(دو) کہو ثو اپ ئے قرمانا نانا میں‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہہ سکنی ہوں؟ اس سے اپ کا اسارہ جدا کے‬ ‫ابنی زنان کہ حس سے اتھی اتھی میں ئے واجد کہا ہے انئین(دو) کیس‬ ‫انک ہوئے (ثوحید) کی طرف تھا۔‬ ‫ٓ‬ ‫کسی اور مو فع ئر ح یاب زبیب ئے حصرت امیر سے ثوچھا کہ کیا اپ ہم سے محیت کرئے ہیں ثو امام ئے قرمانا‬ ‫ٓ‬ ‫ے ممکن ہے کہ میں اپ سے حمیت یہ کروں ثو ح یاب زبیب ئے قرمانا کہ نانا جان حمیت جدا سے ہونی ہے اور‬ ‫کہ یہ کیس‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ہم سے حمیت پہیں نلکہ س ققت قرمائے ہیں۔‬ ‫ے ثو لوگوں کی درجواست ئر ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا‬ ‫حب حصرت امیر سنہ ‪۰۲‬ھ میں کوفہ نشرتف لے گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫ئے عورثوں کو تفسیر قران اور دوشرے علوم دپینہ سے پہرہ مید قرمانا‪ ،‬انک مرنیہ اپ عورثوں سے ھبعص کی تفسیر ن یان‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرما رہی تھیں کہ امام علی علنہ السالم گھر میں داجل ہوئے اور اپ ئے پینی کی اواز شنی ثو قرمانا اے زبیب یہ چروف‬ ‫ٓ‬ ‫ے والی مصییت کو ن یان کرئے ہیں۔‬ ‫کرنال میں اپ کے تھانی حسین ئر ئڑ ھئ‬

‫‪214‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ح یاب زبیب کی سادی ح یاب عید ہللا بن جعقر طیار سے ہونی گرجہ کنی جواشتگاروں ئے جواشتگاری کی لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫ے سوہر کے گھر نشرتف البیں ثو ح یاب عید ہللا کے مال میں ئرکت‬ ‫امام عالی مقام ئے سب کو رد قرمادنا‪ ،‬حب اپ ا بئ‬ ‫ہونی اور ہللا تعالی ئے عید ہللا کو مال کبیر ع طا قرمانا‪ ،‬لیکن سوہر کے پہاں سب کجھ ہوئے کے ناوجود زھد کا یہ عالم تھا کہ‬ ‫امام زبن العاندبن قرمائے ہیں کہ‬ ‫انھا ما ادخرت شیئا من یومھا لغدھا ابدا‬ ‫ٓ‬ ‫ے اذوفہ و مال دن یا کو حمع پہیں قرمانا‪ ،‬امام سجاد کے اس فول‬ ‫میری تھوتھی ح یاب زبیب ئے کسی تھی وقت کل کے لئ‬ ‫سے واصح ہونا ہے کہ ح یاب زبیب جو کجھ گھر میں ہونا نا ثو اسے مصرف میں البیں نا تھر راہ جدا میں چرج کردنئیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی عقت و ناکدامنی کا عالم یہ تھا کہ گرجہ اپ عضمت کیری کے درجہ ئر قائز پہیں تھیں لیکن اپ کو‬ ‫ٓ‬ ‫عضمت ضعری ضرور جاصل تھی‪ ،‬گرجہ اتھی اپ کا تجین تھا لیکن تحنی مازنی کہیا ہے کہ میرا گھر حصرت علی کے ئڑوس‬ ‫ٓ‬ ‫میں تھا لیکن یہ میں ئے کیھی زبیب کیری کو دیکھا اور یہ ہی کیھی ان کی اواز شنی‪ ،‬اور حب تھی وہ نانا رسول ہللا کی زنارت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫ے‪ ،‬امام حسین اپ کے نابیں جانب اور‬ ‫ئر جابیں ثو رات میں گھر سے اس جالت میں ن لئیں کہ امام حسن اپ کے دا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫پ‬ ‫ے‪ ،‬انک‬ ‫ے ثو حصرت علی ق یدنلوں کو تجھا دنا کرئے ت ھ‬ ‫ے اور حب روض ٔہ رسول ئر ہ حیئ‬ ‫حصرت علی اپ کے اگے ہوئے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫مرنیہ حب امام حسن ئے چراغ تجھائے کی وجہ ثوچھی ثو اپ ئے قرمانا کہ میں پہیں جاہ یا کہ لوگ اپ کی پہن زبیب کو‬ ‫دنکھ سکیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا کی عیادت کا یہ عالم تھا کہ کہ اپ ئے کی ھی ثواقل کو ئرک پہیں قرمانا اسی لئ‬ ‫امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا اختاہ ال تنسینی فی نافلۃ اللیل‬ ‫ت‬ ‫ے نماز سب میں یہ تھولیا‪ ،‬قاطمہ بیت حسین قرمانی ہیں کہ ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا ئے سب عاسور ھی‬ ‫اے پہن مجھ‬ ‫نماز سب کو ئرک پہیں قرمانا‪ ،‬امام سجاد ئے قرمانا کہ میری تھوتھی ئے کرنال سے سام کے سقر کی مسفیوں میں کسی تھی‬ ‫ٓ‬ ‫وقت نماز سب کو ئرک پہیں قرمانا‪ ،‬انک مرنیہ حب میں ئے دیکھا کہ اپ نماز پییھ کر ادا کر رہی ہیں ثو ثوچھا‪ :‬اے تھوتھی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں ضرف انک رونی‬ ‫ے کا کیا شنب ہے؟ ثو اپ ئے قرمانا کہ دشمن ہم سب کو جوپیس گھیئ‬ ‫اپ کے پییھ کر نماز ئڑ ھئ‬ ‫‪215‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬لہذا تجوں کی پت یانی کو دنکھ کر میں ان یا حصہ اپہیں دے دبنی ہوں حس کی وجہ سے میرے ندن ئر اس قدر ضعف‬ ‫د بئ‬ ‫طاری ہے کہ میں پییھ کر ثواقل ادا کرنی ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا انسی عیادت گزار تھیں کہ اپ کی عیادت کا نذکرہ ہللا تعالی ئے قران مج ید میں‬ ‫قرمانا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ک (مزمل انت ‪)۶۹‬‬ ‫ک تَقُ ْو ُم اَد ْٰنی ِمنْ ثُلُثَ ِی ا ْللَ ْی ِل َو ِن ْ‬ ‫صفَہ َو ثُلُثَہ َو طَائِفَۃ ِمنَ الَّ ِذیْنَ َم َع َ‬ ‫ک َی ْعلَ ُم اَنَّ َ‬ ‫اِنَّ َربَّ َ‬ ‫ً‬ ‫اے رسول (ص)) تقت یا آپ(ص) کا ئروردگار جان یا ہے کہ آپ(ص) کیھی رات کی دو پہانی کے قرنب‪ ،‬کیھی‬ ‫ٓ‬ ‫ے) ق یام کرئے ہیں اور انک گروہ آپ کے ساتھیوں میں سے تھی اپ کے‬ ‫نصف سب اور کیھی انک پہانی (نماز کیلئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کھڑا ہونا ہے‪ ،‬ح یاب زبیب ئے اس انت کی نالوت کے تعد قرمانا کہ مذکورہ انت میں اس گروہ‬ ‫ساتھ عیادت کے لئ‬ ‫ے۔‬ ‫ے کھڑے ہوئے تھ‬ ‫ے جد کے ساتھ عیادت کے لئ‬ ‫سے مراد ہم ہیں جو ا بئ‬ ‫ے دوثوں قرزندوں کے ساتھ کرنال میں شرکت کی‪ ،‬اور تعد از شہادت امام‬ ‫ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حسین علنہ السالم اپ کی شہادت و ق یام کے مقاصد کو مسلماثوں کے گھر گھر میی قل قرمانا‪ ،‬اپ ئے مص بییوں ئر انسا صیر‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا کہ نار تخ میں کونی انسی نی نی ب ظر پہیں ابیں کہ جن ئر انک دن میں اس قدر مصانب ئڑے ہوں اور اس کے‬ ‫ناوجود وہ صیر کی اس میزل ئر قائز ہو کہ حب ابن زناد ئے ثوچھا کہ‬ ‫کیف رایت صنع ہللا فی اخیک‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ی مھارا اس ہللا کے نارے میں کیا ح یال کہ حس ئے ی مھارے تھانی حسین کے ساتھ انسا سلوک کیا؟ ثو اپ ئے ئرحشنہ طور‬ ‫ئر قرمانا‪:‬‬ ‫مارایت اال جمیال‬ ‫م ئے ہللا سے ن یکی کے عالوہ کجھ پہیں دیکھا‪ ،‬اور وہ طالم و قاسق و قاچر ہیں کہ جیھوں ئے ث ٔ‬ ‫واسہ رسول کو شہید کرکے ان‬ ‫کے اہلییت کو اسیر کیا ہے۔‬

‫‪216‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ح یاب زبیب کیری صائرہ ہوئے کے ساتھ ساتھ سجاع تھی تھیں حس کا اندازہ اپ کے کوفہ و سام میں د ب ئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے زنان دارازی یہ‬ ‫ے طاعوت زمایہ اپ کے سا مئ‬ ‫ے خطیات سے لگانا جا سکیا ہے‪ ،‬حس کے پییجہ میں ابن زناد و ئزند حیس‬ ‫گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کرنال میں حشم دندہ‬ ‫ے‪ ،‬پہاں نک کے حب اپ سام سے مدنیہ وانس لوبیں‪ ،‬ثو اپ ئے اہل مدنیہ کے سا مئ‬ ‫کر سک‬ ‫مصانب کی نصوئر کسی کی حس کی وجہ سے مدنیہ والوں میں انک ات قالب ئرنا ہو گیا‪ ،‬والی مدنیہ ئے حب اس نات کی خیر‬ ‫ئزند نک پہیجانی ثو ئزند ئے جکم دنا کہ ح یاب زبیب کیری کو کسی صورت مدنیہ چھوڑئے ئر حمیور کیا جائے‪ ،‬ح یاب زبیب ح ید‬ ‫ٓ‬ ‫بنی ہاشم کی عورثوں کے ساتھ مدنیہ سے اچری مرنیہ رحصت ہوبیں‪ ،‬اور ‪ ۶۳‬رحب نا سعیان سنہ ‪۲۰‬ھ کے اوانل میں شہر‬ ‫ے ہیں ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا کی شہادت اسی شہر میں وا فع ہونی‪ ،‬اور‬ ‫مصر میں داجل ہوبیں‪ ،‬تعض مورخین (‪ )1‬کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫سام میں اپ کی پہن ام کلیوم (‪( )2‬زبیب ضعری بیت علی و قاطمہ علیہما السالم) دفن ہیں‪ ،‬حب کہ دنگر علماء کا فول‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫یہ ہے کہ مصر کے تعد اپ سام نشرتف البیں چہاں اپ کی شہادت وا فع ہونی اور موجودہ مفیرہ زبیب کیری سالم ہللا‬ ‫علیہا ہی سے میشوب ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫‪ -1‬جن میں جود انت ہللا دمحم صادق کرناسی سامل ہیں۔‬ ‫ت‬ ‫‪2‬‬ ‫ے عرض کیا کہ امام علی علنہ السالم کی جار ن بییوں کا نام زبیب اور ان سب کی کییت ام کلیوم‬ ‫ جن کا نام ھی زبیب تھا حیسا کہ ہم ئے پہل‬‫تھی۔‬

‫‪217‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪218‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬ ‫جلد دوم‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین" بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی دوشری جلد ( جو ‪ ۰۸۸‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۶۹۹۰‬ء کو لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۰۹‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫حلیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪219‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪220‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین ( ٔ‬ ‫صہ دوم)‬ ‫ح‬ ‫کرنال میں جوابین کا کردار‬

‫ٓ‬ ‫صیقوں کو ببعمیران ال ہی ئر نازل قرمانا جن میں‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے نشر کی ہدانت و راہتمانی کے لئ‬ ‫ے اسمانی کیب اور ح‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫سے سب سے اچری کیاب قران مج ید ہے جو نمام اسمانی کیاثوں ئر فص یلت ر ھنی ہے‪ ،‬یہ وہ کیاب ہے کہ حس میں نمام‬ ‫ٓ‬ ‫ے ذات اجدنت ئے قرمانا‪:‬‬ ‫اسمانی کیاثوں کا جالضہ موجود ہے اسی لئ‬ ‫ٓ‬ ‫وال رطب و ال یابس اال فی کتاب مبین تعنی کونی حسک و ئر پہیں کہ حس کا نذکرہ کیاب مئین میں یہ ہو (اتعام انت‬ ‫‪)۹۰‬۔‬ ‫ے والی کیاب میں مرد و عورت سے انک حیسا خ طاب‬ ‫قانل عور نات یہ ہے کہ ہللا تعالی ئے اس ہدانت د بئ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا ہے‪ ،‬ح یکہ تعض لوگوں کو (جن میں مسلمان تھی سامل ہیں) یہ سنہ ہونا ہے کہ ہللا تعالی ئے قران مج ید میں ضرف‬ ‫ٓ‬ ‫مردوں سے خ طاب قرمانا ہے‪ ،‬ح یکہ یہ سوچ قران مج ید سے کوسوں دور ہے‪ ،‬ہللا تعالی ئے اس کیاب میں مج یلف‬ ‫ٓ‬ ‫مقامات ئر مردوں کے ساتھ ساتھ عورثوں سے تھی خ طاب قرمانا ہے حس ئر ساہد و گواہ میدجہ ذنل انات ہیں‪:‬‬

‫‪۰‬۔ یا ایھا الناس انا خلقناکم من ذکر و انثی و جلعناکم شعوبا و قبائل لتعارفوا ان اکرمکم عند ہللا اتقاکم ان‬ ‫ٓ‬ ‫ہللا علیم خبیر (ححرات‪ ،‬انت ‪)۰۰‬‬

‫‪221‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اے لوگو! ہم ئے ی مہیں انک مرد (آدم(ع)) اور انک عورت (جوا(ع)) سے ن یدا کیا ہے اور تھر ی مہیں مج یلف‬ ‫ت‬ ‫جانداثوں اور قت یلوں میں فشیم کر دنا ہے ناکہ یم انک دوشرے کو پہجان سکو‪ ،‬ئےسک ہللا کے ئزدنک یم میں سے‬ ‫ے واال اور ہر نات سے ناخیر ہے۔‬ ‫زنادہ معزز و مکرم وہ ہے جو یم میں سے زنادہ ئرہیزگار ہے‪ ،‬اور ہللا ہر سے کا جا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۶‬۔ فاستجاب لھم ربھم انی ال اضیع عمل عامل منکم من ذکر او انثی (ال عمران‪ ،‬انت ‪)۰۰۹‬‬ ‫نس جدا ئے ان کی دعا کوفیول کیا کہ میں یم میں سے کسی تھی عمل کرئے والے کے عمل کو صا تع پہیں کروں گا جاہے‬ ‫وہ مرد ہو نا عورت۔‬

‫‪۰‬۔ و من یعمل من الصالحات من ذکر او انثی وھو مومن فاولئک یدخلون الجنۃ وال یظلمون نقیرا (نساء‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪)۰۶۳‬‬ ‫ے ہی لوگ جیت میں داجل ہوں گے اور ان‬ ‫اور جو کونی ن یک عمل کرے گا جواہ مرد ہو نا عورت دراتجالیکہ وہ مومن ہو ثو ا نس‬ ‫ئر نل ئرائر طلم پہیں کیا جائے گا۔‬

‫‪۳‬۔ من عمل صالحا من ذکر او انثی وھو مومن ولنحیینہ حیاة طیبۃ و لنجزینھم باحسن ما کانوا یعملون‬ ‫ٓ‬ ‫(تجل‪ ،‬انت ‪)۰۳‬‬ ‫جو سحص تھی ن یک عمل کرے گا وہ مرد ہو نا عورت نشرطیکہ صاحب انمان ہو ہم اسے ناکیزہ حیات ع طا کربں گے اور اپہیں‬ ‫ے۔‬ ‫ان اعمال سے پہیر چزا دبں گے جو وہ زندگی میں اتجام دے رہے تھ‬

‫‪۹‬۔ و من عمل صالحا من ذکر او انثی وھو مومن فاولئک یدخلون الجنۃ یرزقون فیھا بغیر حساب (عاقر‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪)۳۹‬‬

‫‪222‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫عم‬ ‫رطی‬ ‫احب انمان تھی ہو اپہیں جیت میں داجل کیا جائے گا اور‬ ‫اور جو ن یک ل کرے گا جاہے وہ مرد ہو نا عورت نش کہ ص ِ‬ ‫وہاں ئے حساب رزق دنا جائے گا۔‬

‫ٓ‬ ‫‪۲‬۔ و انہ خلق الزوجین الذکر و االنثی (تحم انت ‪)۳۹‬‬ ‫اور اسی ہللا ئے زوخین تعنی مرد و عورت کو جلق قرمانا۔‬

‫ٓ‬ ‫‪۳‬۔ فجعل منہ الزوجین الذکر و االنثی (ق یامت انت ‪)۰۰‬‬ ‫ے ہوئے جون سے زوخین تعنی مرد اور عورت کو ن یانا۔‬ ‫تھر ہللا ئے اس حم‬ ‫‪۸‬۔ ان المسلمین و المسلمات و المومنین والمومنات و القانتین و القانتات و الصادقین و الصادقات و‬ ‫الصابرین و الصابرات و الخاشعین و الخاشعات و المتصدقین و المتصدقات و الصائمین و الصائمات و‬ ‫الحافظین فروجھم و الحافظات و الذاکرین ہللا کثیرا و الذاکرات اعد ہللا لھم مغفرة و اجرا عظیما(اچزاب‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪)۰۹‬‬ ‫ے‬ ‫پیسک مسلمان مرد اور مسلمان عوربیں اور مومن مرد اور مومن عوربیں اور اطاعت گزار مرد اور اطاعت گزار عوربیں اور سچ‬ ‫ے‬ ‫مرد اور سخی عوربیں اور صائر مرد اور صائر عوربیں اور قروبنی کرئے والے مرد اور قروبنی کرئے والی عوربیں اور صدفہ د بئ‬ ‫ے والی عوربیں اور ابنی عقت کی حقاطت کرئے‬ ‫ے والے مرد اور روزہ ر کھئ‬ ‫ے والی عوربیں روزہ ر کھئ‬ ‫والے مرد اور صدفہ د بئ‬ ‫ے معقرت اور ع ظیم اچر‬ ‫والے مرد اور عوربیں اور جدا کا یکیرت ذکر کرئے والے مرد اور عوربیں‪.‬ہللا ئے ان سب کے لئ‬ ‫مہیا کررکھا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ نمام انات سے طاہر ہونا ہے کہ ہللا تعالی کے ئزدنک مرد و عورت میں کسی قشم کا قرق پہیں نانا جانا‬ ‫نلکہ ان میں سے جو حت یا ئرہیزگار ہوگا وہ ہللا کی نگاہ میں ابنی ہی قدر و فیمت کا جامل ہوگا‪ ،‬لیکن اقشوس اس نات کا ہے‬ ‫ف‬ ‫ے‬ ‫کہ وہ دبن اسالم کہ جو عورثوں کے حقوق کا ناسیان ہے اسی دبن کے نیروکار تعض م طالب میں علط ہمی کا سکار ہو پیی ھ‬

‫‪223‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے انک انسا پہایہ‬ ‫حس کے پییجہ میں اپہوں ئے جو د کو عورثوں سے ئرئر و پہیر شمجھیا شروع کردنا‪ ،‬جو کہ دشمیان اسالم کے لئ‬ ‫س‬ ‫نانت ہوا کہ حس کے شہارے اپہوں ئے اسالم و م لمین کو شرکوب کرئے میں کسی قشم کی کشر یہ چھوڑی۔‬ ‫ے‬ ‫ے دنگر امور ا نس‬ ‫مرد کی عورت ئر والنت‪ ،‬مرد کو جار عورثوں سے عقد کرئے کی اجازت‪ ،‬جق طالق اور اس حیس‬ ‫ہیں کہ جن کی ن یا ئر مردوں ئے جود کو عورثوں سے ئرئر شمجھیا شروع کردنا‪ ،‬لہذا اگر اس سلسلہ میں وارد سدہ اسکاالت ئر ہم‬ ‫پہاں اجمالی روشنی ڈالیں ثو ئے جا یہ ہوگا۔‬

‫عورت ئر مرد کی والنت‪:‬‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے گئ‬ ‫ے تجوئز پہیں کئ‬ ‫ے میاصب ہیں کہ جو عورثوں کے لئ‬ ‫دبن مئین اسالم میں فصاوت‪ ،‬جاکمیت اور مرجعیت ا نس‬ ‫ے شزاوار پہیں کہ ان‬ ‫جونکہ حصرت امیر المومئین کے ارساد کے م طاثق عورت تھول کی مان ید ہے(‪ )1‬لہذا ان کے لئ‬ ‫کاموں کو اتجام دبں کہ جن میں مسقت و زحمت نانی جانی ہے‪ ،‬لہذا اگر اس دبن میں عورت کو کسی میصب سے روکا تھی‬ ‫ے ہللا تعالی ئے معاش کی ذمہ داری مرد کے سیرد قرمانی‬ ‫ے ہوئے ہے‪ ،‬اسی لئ‬ ‫گیا ہے ثو وہ اس کی شہولت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے حیسا کہ ذات اجدنت ئے قران مج ید میں قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫الرجال قوامون علی النساء بما فضل ہللا بعض ھم علی بعض و بما انفقوا من اموالھم (نساء انت ‪)۰۳‬‬

‫‪ -1‬فان المرأة ریحانۃ و لیست بقھرمانۃ (وسانل السیعۃ‪/‬شیخ چرعاملی‪ /‬ج ‪ -۸۳/۶۹‬ناب جملۃ من آداب عشرۃ الیساء ‪....‬ص‪:‬‬ ‫ے‬ ‫ے جابیں کہ جو اسکی جلقت سے موازنت یہ ر کھئ‬ ‫‪)۰۲۸‬عورت کی میال انک تھول کی سی ہے اور وہ فہرمان پہیں لہذا اس سے وہ کام یہ لئ‬ ‫ے ہللا تعالی ئے تھی حیگ حیسی مسقت سےعورثوں کو معاف رکھا ہے جو کہ ان کے جق میں ہللا کی جانب سے انک لطف و کرم‬ ‫ہوں‪ ،‬اسی لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے طلم کی نسانی ہے‪،‬‬ ‫ہے‪ ،‬لیکن اج عرنی ممالک میں عورثوں کو حیگ میں شرکت کی ئرعیب دالنی جانی ہے‪ ،‬جو کہ ان کے جق میں انک کھل‬ ‫ے چہاد کا ثواب رکھا حیسا کہ حصرت علی علنہ السالم ئے قرمانا‪ :‬جھاد المرأة حسن التبعل تعنی‬ ‫ح یکہ ہللا تعالی ئے سوہر داری میں ان کے لئ‬ ‫عورت کا چہاد جوب سوہرداری کرئے میں ہے۔‬

‫‪224‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫مرد عورثوں شرئرست اور ان کے امور کے نگراں ہیں ان فص یلیوں کی ن یا ئر جو جد ائے تعض کو تعض ئر دی ہیں اور اس‬ ‫ن یا ئر کہ اپہوں ئے عورثوں ئر ان یا مال چرچ کیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ انت میں ہللا تعالی ئے مردوں کو عورثوں کا فیم قرار دنا ہے تعنی نمام مردوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ‬ ‫عورثوں کی ضرورثوں کو ثورا کربں‪ ،‬اور جونکہ مرد عورثوں کی نمام ضرورثوں کے ذمہ دار ہیں (و بما انفقوا من اموالھم‬ ‫ے ہللا تعالی ئے اپہیں عورثوں کا شرئرست ن یانا ہے۔‬ ‫)اسی لئ‬ ‫پیسک مرد کو شرئرست نا عورت کے امور کا ذمہ دار ن یانا ضرف اس وجہ سے ہے کہ وہ عورت کی نسنت‬ ‫ٓ‬ ‫حشمانی اعت یار سے فوی ئر ہے حیسا کہ ہللا ئے مذکورہ انت میں قرمانا بما فضل ہللا بعضھم علی بعض کہ ہللا ئے تعض‬ ‫کو تعض دنگر ئر (حشمانی اعت یار) سے فص یلت دی ہے‪ ،‬لہذا اگر عورت مرد سے حشمانی اعت یار سے فوی ہونی ثو اسے مرد کا‬ ‫ے‬ ‫ے اس ئے جلقت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫فیم و شرئرست ن یانا جانا‪ ،‬لیکن جونکہ انسا پہیں ہے اور ہللا تعالی ہمارا جالق ہے اسی لئ‬ ‫ہوئے مرودوں کو عورثوں کا ذمہ دار ن یانا ہے اور اس کا یہ فیصلہ عدالت ئر اشتوار ہے۔‬

‫تعدد زوجات‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫دبن مئین اسالم میں مردوں کو انک ساتھ جد اکیر جار عورثوں سے عقد کرئے کی اجازت دی گنی ہے‪ ،‬قران مج ید میں ہللا‬ ‫ن یارک و تعالی کی جانب سے ہمیں یہ جکم ہے‪:‬‬ ‫فانکحوا ما طاب لکم من النساء مثنی و ثالث و رباع فان خفتم اال تعدلوا فواحدة او ما ملکت ایمانکم ذلک‬ ‫ٓ‬ ‫ادنی اال تعولوا (نساء انت ‪)۰‬‬ ‫ثو جو عوربیں ی مہیں نسید ہوں ان سے نکاح کر لو دو دو‪ ،‬بین بین‪ ،‬جار جار سے اور اگر ی مہیں اندنشہ ہو کہ (ان کے ساتھ)‬ ‫عدل یہ کر سکوگے ثو تھر انک ہی (بیوی) کرو۔ نا جو ی مہاری ملکیت میں ہوں (ان ئر اکی قا کرو) یہ زنادہ قرنب ہے اس‬ ‫کے کہ ئے انصاقی کرو۔‬

‫‪225‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ انت سےواصح ہونا ہے کہ انک سے زاند عقد کی اجازت اسی وقت ہے کہ حب انسان ازواج کے ساتھ عدالت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کے ساتھ پیش ئاے کی صالجیت رکھیا ہو‪ ،‬ح یکہ اگر یہ شرط ثوری یہ ہو سکنی ہو ثو مذکورہ انت میں ہللا تعالی ئے انک ہی‬ ‫عقد کو جائز قرمانا ہے۔‬ ‫اب سوال یہ اتھیا ہے کہ ناری تعالی ئے مردوں کو انسی اجازت کیوں دی؟ ح یکہ یہ جکم یہ عورثوں کے‬ ‫ٓ‬ ‫ئزدنک قانل فیول ہے اور یہ ہی اج کا دور اس نات کی اجازت دن یا ہے کہ انک مرد مبعدد عورثوں سے عقد کرے۔‬ ‫ے یہ کہیا ہوگا کہ کہ مذکورہ اجازت ضرف اجازت ہے کہ حس میں ضروری پہیں کہ‬ ‫اس سوال کے ذنل میں سب سے پہل‬ ‫ہر مالدار مرد مبعدد عورثوں سے عقد کرے اب رہی نات ان دالنل کی کہ جن کی ن یا ئر ہللا تعالی ئے اجازت قرمانی ہے ثو‬ ‫اس ضمن میں روانات و افوال علماء سے جو وجوہات قانل اشت قادہ ہیں وہ کجھ اس طرح ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ عورثوں کی تعداد کا مردوں کی تعداد سے زنادہ ہونا‪،‬۔‪۶‬۔ عوثوں کا مردوں کی نسنت جلد ثوڑھا نا نانشہ ہونا۔ ‪۰‬۔ جالت‬ ‫ے مہ یا یہ ہونا۔‪۳‬۔ عورت کا بتمار ہونا ۔‪۹‬۔ عورت کا تجہ دار یہ‬ ‫جیض و ت قاس اور اسی طرح جالت جمل میں ی مکین کے لئ‬ ‫ہونا۔‪۲‬۔مرد کی جاحت ۔‪۳‬۔کیرت نسل۔‬ ‫مذکورہ دلیلوں کے پیش ب ظر اگر پہلی ہی دلیل ئر عور کیا جائے ثو معلوم ہوگا کہ اگر از جیث محموع دن یا میں عورثوں‬ ‫کی تعداد مردوں سے زنادہ ہو ثو جار صوربیں ہی قانل نصور ہونگی‪ ،‬میال اگر مردو ں کی کل حمعیت ‪ ۰۹۹‬اور عورثوں کی ‪ ۰۹۹‬ہو ثو‬ ‫اس صورت میں نا ثو ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫(الف) سو سے ‪ ۹۹‬زاند عوربیں اگے ابیں اور اعالن کربں کہ وہ ساری زندگی ت غیر عقد کے زندگی گزاردبں گی۔‬ ‫ے ‪ ۰۹۹‬عوربیں ‪ ۰۹۹‬مردوں کے ساتھ عقد کربں اور تھر کجھ مدت کے تعد سوہر سے طالق لے کر‬ ‫(ب) نا کجھ مدت کے لئ‬ ‫ن‬ ‫ےاور اس طرح کسی کی جق لقی یہ ہو۔‬ ‫دوشری عورثوں کو اجازت دبں‪ ،‬ناکہ اپہیں تھی نکاح کرئے کا جق جاصل ہو سک‬ ‫(ج) نا ان میں سے کونی تھی مرد کے عقد نانی ئر راضی یہ ہو حس کے پییجہ میں معاشرہ میں فحساء ئڑھیا جائے‪ ،‬جو کہ دور‬ ‫جاضر کی صورت جال ہے۔‬

‫‪226‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہوئے ضر ف ان مردوں کو عقد نانی سے کی اجازت دی جائے جو عدالت و انصاف‬ ‫(د) نا اسالم کے قاثون کو ما بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫سے پیش ا سکئ‬ ‫ے ہللا ن یارک و تعالی ئے نشر کے ت قاصوں‬ ‫مذکورہ جار صورثوں میں جوتھی صورت ہی اس مسیلہ کا جل ہے کہ حس‬ ‫ے ہوئے معین قرمانا ہے‪ ،‬اسی طرح اگر دوشری ‪ ۲‬دلیلوں میں تھی عور و قکر کی جائے ثو اس جکم کا قلسفہ و‬ ‫کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫حفیقت واصح ہو جانی ہے۔‬ ‫ے ہیں کہ اسالم‬ ‫اقشوس اس نات کا ہے کہ دن یا کی پیشرقت کے ساتھ ساتھ اب لوگ یہ تھی سوال کرئے لگ‬ ‫ے کی اجازت کیوں پہیں دی گنی‪ ،‬ح یکہ عرنی ممالک میں عوربیں مج یلف‬ ‫میں مردوں کی طرح عورثوں کو تھی مبعدد سوہر ر کھئ‬ ‫اوقات میں مج یلف مردوں کے ساتھ زندگی گزارنی ہیں؟‬ ‫یہ انک انسا شب طانی سوال ہے کہ حس کے ذرتعہ جوابین کو ثوری طرح گمراہ کرئے کی کوشش کی گنی‪ ،‬اس نات‬ ‫میں کونی سک پہیں کہ عرنی ممالک میں عوربیں ابنی زندگی میں مبعدد مردوں کے ساتھ مبعدد اوقات میں زندگی نشر‬ ‫کرنی ہیں لیکن اس پیشرقت کے ناوجود تھی ان کے درمیان یہ نات قانل فیول پہیں ہے کہ انک عورت نیک وقت‬ ‫ے‪ ،‬جونکہ جود وہ معی قد ہیں کہ اس روش سے یہ نسل کا تح فظ ہوسکیا ہے اور یہ ہی یہ نات عورثوں‬ ‫مبعدد سوہر نا نانیرز ر کھ‬ ‫کے مزاج سے سازگار ہے‪ ،‬گرجہ ان کے مرد اس کے ئرجالف ذہییت و کردار کے جامل ہی کیوں یہ ہوں‪ ،‬اسی ف ظرت‬ ‫ے ہوئے اسالم ئے مرد کو جار عقد کی‬ ‫(تعنی عورت کا انک مرد ئر راضی ہونا اور مرد کا اس کے ئرجالف ہونا) کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫اجازت اور عورثوں کو انک سوہر کی اجازت قرمانی ہے۔‬

‫مسی ٔلہ طالق‪:‬‬ ‫انک اور اہم اسکال جو اع یار کی طرف سے اور احیانا تعض مسلماثوں کی طرف سے تھی کیا جانا ہے وہ ہے طالق کا مسیلہ کہ‬ ‫ش‬ ‫ے جار صوربیں قانل عور ہیں‪:‬‬ ‫ے کے لئ‬ ‫طالق کا جق مرد کو ہی کیوں دنا گیا ہے؟ اس سوال کے جواب کو مجھئ‬

‫‪227‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫(الف) نا طالق کا جق ضرف مرد کو دنا جائے ‪( ،‬ب) نا طالق کا جق ضرف عورت کو دنا جائے ‪( ،‬ج) نا طالق کا جق‬ ‫دوثوں کو جاصل ہو‪( ،‬د) نا طالق کا جق دوثوں میں سے کسی کو یہ ہو نلکہ کسی پیشرے قرد کے ہاتھ میں یہ جق دے دنا‬ ‫جائے‪،‬ان جار صورثوں کے عالوہ کونی اور صورت قانل نصور پہیں ہو سکنی۔‬ ‫اب حب ان صورثوں کا جائزہ لیا جائے ثو معلوم ہوگا کہ جوتھی صورت(تعنی طالق کا جق کسی پیشرے قرد کو‬ ‫دے دنا جائے) کسی کے ئزدنک قانل فیول پہیں ہو سکنی کیونکہ کونی تھی یہ پہیں جاہے گا کہ اس کی زندگی کا فیصلہ‬ ‫کونی اور کرے ‪ ،‬اب رہی نات پیشری صورت کی کہ طالق کا جق دوثوں کو دنا جائے ثو اس صورت سے تھی زوخین کے‬ ‫ٓ‬ ‫ے کے امکانات ئڑھ جابیں گے‪ ،‬لہذا اچر میں پہلی‬ ‫ے گا نلکہ اح یالف و کس یدگی اور گھر کے ثو بئ‬ ‫درمیان کونی جل ثو پہیں نکل‬ ‫اور دوشری صورت ناقی رہ جانی ہے‪ ،‬تعنی نا ثو مرد کو طالق کا جق دے دنا جائے نا تھر عورت کو‪ ،‬اس مقام ئر دبن اسالم‬ ‫ئے میدجہ ذنل دالنل کی پت یاد ئر طالق کا جق مرد کے سیرد کیا ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ نکاح کی ان یدا میں عورت کو ثورا جق دنا گیا ہے تعنی وہ جاہے ثو عقد ئر راضی ہوجائے نا تھر ئاے والے رسنہ کو رد‬ ‫کردے ‪ ،‬لہذا جونکہ ان یدا میں نکاح کا احت یار عورت کے ہاتھ میں ہے ثو طالق کا احت یار مرد کو دے دنا گیا۔‬ ‫ے اسے طالق کا احت یا دنا گیا ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ عورت کا مہر‪ ،‬ت قفہ‪ ،‬و دنگر ذمہ دارناں مرد کے اوئر ہیں اسی لئ‬ ‫ے کر سکنی‬ ‫ے‪ ،‬جونکہ عوربیں جذنات میں علط فیصل‬ ‫‪۰‬۔ اگر طالق عورثوں کے احت یار میں ہو ثو مفسدہ اور ت فصانات زنادہ رونما ہو نگ‬ ‫ہیں۔‬ ‫گرجہ مذکورہ ناثوں کے پیش ب ظر طالق کا جق مرد کو جاصل ہے لیکن اس کا م طلب یہ پہیں ہے کہ عورت کو‬ ‫کسی قشم کا احت یار جاصل یہ ہو جونکہ دبن مئین اسالم میں عورثوں کو یہ شہولت دی گنی ہے کہ وہ عقد کے وقت شرط مقرر‬ ‫ع‬ ‫کر سکنی ہیں کہ طالق کا جق اپہیں تھی دنا جائے‪ ،‬لیکن اگر عدم لمی کی ن یا ئر یہ احت یار ان کے ناس یہ ہو ثو وہ اح یالف کی‬ ‫صورت میں جاکم شرع کی طرف رجوع کرکے طالق جلع کی درجواست کرسکنی ہے‪ ،‬اور اس کے ساتھ ساتھ اگر مرد میں وہ‬ ‫عیوب نائے جابیں کہ جن کی وجہ سے نکاح قسخ کیا جا سکیا ہے ثو مرد ہی کی طرح عورت کو تھی ثورا احت یار ہے کہ وہ احکام‬

‫‪228‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے کا جق ضرف مرد‬ ‫میں ن یان کردہ عیوب کی ن یا ئر نکاح کو قسخ کردے‪ ،‬لہذا کلی طور ئر یہ کہیا علط ہوگا کہ اسالم میں طالق د بئ‬ ‫کو جاصل ہے۔‬ ‫حی‬ ‫دن یا کے نمام حقوق داثوں سے میرا اس نات ئر لیج ہے کہ اگر وہ عورثوں کے حقوق کے مبعلق اسالمی‬ ‫ے ن یان سدہ وجہ و علت کو درک کرئے کی کوشش کربں ثو‬ ‫فوابین کا جائزہ لیں اور ت غیر کسی تعصب کے ہر قاثون کے لئ‬ ‫ے نلکہ اپہیں یہ پییجہ جاصل ہوگا کہ دبن مئین اسالم میں جو فوابین جوابین‬ ‫ضرف ان کے اغیراصات ہی ئرطرف یہ ہو نگ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں ان کی میال کسی ملت و مذہب میں ب ظر پہیں انی‪ ،‬پ ہی وجہ ہے اج عرنی ممالک میں‬ ‫ے گئ‬ ‫ے معین کئ‬ ‫کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫پہت ساری عوربیں مسلمان ہونی ب ظر ارہی ہیں۔‬ ‫اس نات میں کسی قشم کا سک و سنہ پہیں ہے کہ اسالمی اقدار و فوابین کے پیش ب ظر مسلمان جوابین ئے‬ ‫ے ہیں کہ جو ئے ب ظیر ہیں‪ ،‬کرنال کی شرزمین مسلمان جوابین‬ ‫ے کارنامے اتجام د بئ‬ ‫نار تخ نشرنت میں ئرقی ہی پہیں نلکہ ا نس‬ ‫کی اقدار کی ثولنی نصوئر ہے کہ چہاں جاندان اہل بیت کی عورثوں ئے عقت‪،‬عیادت‪ ،‬زہد‪،‬سجاوت‪ ،‬ان یار‪،‬صیر ‪،‬سکر‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے پیش کرکے یہ ن یال دنا کہ چہاں اسالم کے تجائے میں‬ ‫سجاعت و چرنت کا ی مویہ ق یامت نک ئاے ولی عورثوں کے لئ‬ ‫امام حسین و اصجاب امام ئے قرنان یاں دی ہیں وہیں اسی م فصد کے پیش ب ظر اہل بیت چرم ئے تھی صیر و تحمل کے‬ ‫ساتھ مشکالت کا سامیا کیا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے کرنالنی جوابین ی موی ٔہ عمل ہیں‪ ،‬اسی اہمیت کے پیش ب ظر انت ہللا دمحم صادق‬ ‫لہذا ہر دور کی عورثوں کے لئ‬ ‫الکرناسی ئے حسینی دائرۃ المعارف کی ‪ ۰‬جلدوں کو معحم انصار حسین (نساء) سے محصوص قرمانا ہے‪ ،‬حس کی دوشری جلد‬ ‫ٓ‬ ‫( جو ‪ ۰۸۸‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪۶۹۰۹‬میالدی میں زثور طبع سے اراسنہ ہوجکی ہے) میں موجود ناضرات امام حسین‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫علنہ السالم کی حیات طینہ ئر ہم الق یاء کی ئربیب کے ساتھ روشنی ڈا لئ‬

‫‪229‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سکینہ بیت الحسین بن علی بن ابتطالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب سکینہ (سین مضموم‪ ،‬کاف مفیوح)سنہ ‪۳۶‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد ئزگوار امام حسین علنہ‬ ‫ٓ‬ ‫ا سالم اور ٔ‬ ‫والدہ ماجدہ ح یاب رناب بیت امرء القیس تھیں‪ (،‬انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک سام میں شہید‬ ‫ل‬ ‫ہوئے والی امام حسین علنہ السالم کی پینی کا نام رفنہ تھا‪ ،‬جن کی قیر اسی نام سے دمشق میں موجود ہے‪ ،‬گرجہ تعض دنگر‬ ‫علماء کا ب ظریہ یہ تھی ہے کہ ح یاب سکینہ و ح یاب رفنہ انک ہی قرد کے دو نام ہیں‪ ،‬وہللا العالم)۔‬ ‫ح یاب قاط ٔ‬ ‫مہ کیری (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪ )۰۰۹‬حصرت رفنہ (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬انت‬ ‫ے تھانی پہن تھ‬ ‫اور ح یاب عید ہللا رضیع (والدت دس محرم سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬شہادت دس محرم سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ کے سگ‬ ‫ہللا کرناسی کی تحفیق کے م طاثق نار تخ میں ای مہ اور ان کی اوالد کی تعداد اور ان کے اسماء کے نارے میں اح یالف نانا جانا‬ ‫ٔ‬ ‫ے ناموں کا‬ ‫ہے‪ ،‬اس کی وجہ سالطین وقت اور مورخین کی اہلییت کے ساتھ عداوت و دشمنی تھی انک وجہ انک حیس‬ ‫کیرت سے اشیعمال تھی‪ ،‬میال قاطمہ کیری‪ ،‬قاطمہ وسطی اور قاطمہ ضعری نا علی اکیر‪ ،‬علی اضعر و علی اوسط وغیرہ‪ ،‬اس ضمن‬ ‫ٓ‬ ‫میں انت ہللا کرناسی ئے حصرت امام حسین کی اوالد نالحصوص دخیران کے نارے میں تحفیق کرکےیہ رائے قایم کی‬ ‫ٓ‬ ‫ہےکہ حصرت سکینہ کا نکاح عید ہللا االکیر (‪ )1‬بن امام حسن علنہ السالم سے ہوا جن سے اپ کو اوالد یہ ہوسکی‪ ،‬عید ہللا‬ ‫ٓ‬ ‫ے حجا امام حسین علنہ السالم کے ساتھ شہید ہوئےحس کے تعد اپ ساری زندگی بیوہ رہیں‪ ،‬امام حسین‬ ‫االکیر کرنال میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫علنہ السالم کی شہادت کی تعد اپ کو دنگر اسیروں کی طرح اسیر ن یانا گیا پہاں نک کہ اپ امام سجاد کے ساتھ ق ید سے رہا ہو کر‬ ‫ٓ‬ ‫مدنیہ وانس لوبیں‪ ،‬کیب مقانل میں درج ہے کہ گیارہوبں محرم کو حب قاقلہ کو ق یلگاہ سے گزارا گیا ثو اپ ئے جود کو نانا‬ ‫ٓ‬ ‫کے ح یازے ئر گرا دنا اور امام عالی مقام کے گلوئے میارک سے یہ اواز شنی‪:‬‬ ‫شیعتی ما ان شربتم ماء عذب فاذکرونی‬

‫‪1‬‬

‫او سمعتم بغریب او شھید فاندبونی‬

‫ٓ‬ ‫‪ -‬ح یاب عید ہللا االکیر بن امام حسن علیہما السالم سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام تق یلہ تھا۔‬

‫‪230‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا کرناسی کی تحفیق کے م طاثق ح یاب سکینہ زمائے کی ئزرگیربن عالمہ‪ ،‬قاصلہ‪ ،‬زاہدہ و عاندہ تھیں‪ ،‬اپ‬ ‫ٓ‬ ‫پ‬ ‫کی ذکاوت و فصاحت کا یہ عالم تھا کہ انک مرنیہ اپ گریہ کرئے ہوئے ابنی مادر گرامی کے ناس ہیجیں ثو ماں ئے‬ ‫ٓ‬ ‫س َع ْتنِ ْی بِا ُبَ ْی َرة تعنی میرے قرنب سے شہد کی‬ ‫سوال کیا‪ :‬پت یا گریہ کا کیا شنب ہے؟ ثو اپ ئے قرمانا‪َ :‬مرتْ بِ ْی ُدبَ ْی َرة فَلَ َ‬ ‫ے کالم میں‬ ‫ے ڈس لیا‪ ،‬ح یاب سکینہ ئے اس کمشنی کے ناوجود ا بئ‬ ‫ے نارنک ڈنگ سے مجھ‬ ‫مکھی گزری اور اس ئے ا بئ‬ ‫وزن و سخع کا ثورا ح یال رکھا جو کہ اس جاندان کی عظمت کی طرف ہماری ثوچہات کو میذول کرنا ہے‪ ،‬ح یاب سکینہ عالمہ و‬ ‫ٓ‬ ‫قاصلہ ہوئے کےساتھ ساتھ راویہ تھی تھیں تعنی علماء رجال ئے اپ کا سمار روات ت قات میں کیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کی اس جلد میں انت ہللا کرناسی ئے لکھا ہے کہ ح یاب سکینہ سنہ ‪۰۰۳‬ھ کو شہر مدنیہ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫وقات ناگئیں‪،‬گرجہ تعض لوگوں ئے دمشق میں موجود قیر کو اپ کی طرف میشوب کیا ہے ح یکہ مورخ امین (‪)1‬ئے شیخ‬ ‫عیاس قمی(‪() 2‬صاحب مقا بیح الج یان) سے ت قل کرئے ہوئے قرمانا کہ حصرت رفنہ بیت امام حسین کی قیر دمشق میں‬ ‫ہے اور اسی شہر دمشق کے قیرسیان ناب الص غیر میں جو قیر سکینہ کے نام سے موسوم ہے وہ کسی نادساہ کی پینی کی قیر‬ ‫ہے کہ جن کی قیر ئر سکینہ بیت الملک کیدہ تھا حس کے کجھ عرضہ تعد یہ شہرت ہو گنی کہ یہ قیر سکینہ بیت الحسین کی ہے‬ ‫ی‬ ‫ح یکہ ح یاب سکینہ کی قیر مدنیہ میورہ کے جیت ال فبع میں وا فع ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫‪ٓ 1‬‬ ‫ اپ کا نام محسن بن عید الکریم العاملی الحسینی تھا جو سنہ ‪۰۶۸۳‬ھ کو میولد ہوئے اور سنہ ‪۰۰۳۰‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬اپ کا سمار ئزرگان علماء شیعہ‬‫ٓ‬ ‫میں ہونا ہے‪ ،‬اپ مرقد سیدہ زبیب کے جوار میں دفن ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -2‬شیخ عیاس قمی ابن دمحم رصا سنہ ‪۰۶۰۳‬ھ کو شہر قم میں میولد ہوئے اپ کا سمار ان علماء امامنہ میں ہونا ہے کہ جن کی جدمات قانل تحسین ہیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی پہت ساری نالیقات ہیں کہ جن میں سے مقا بیح‪ ،‬سقینۃ الیجار‪ ،‬اور کجل الیصر کو جاضی شہرت جاصل ہے‪ ،‬شیخ عیاس قمی کی وقات سنہ‬ ‫‪۰۰۹۹‬ھ کو شہر تحف میں وا فع ہونی۔‬

‫‪231‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫سالفہ (سین مضموم)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب سالفہ تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ حصرت علی علنہ السالم کی کبیز تھیں جو امام حسین علنہ السالم کے گھر‬ ‫میی قل ہوبیں‪ ،‬حب امام حسین علنہ السالم ئے ح یاب شہر ناثو سے عقد قرمانا اور امام سجاد میولد ہوئے ثو امام حسین ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے پ ہی کاقی ہے کہ اپ کو‬ ‫ے معین قرمانا‪ ،‬اپ کے شرف کے لئ‬ ‫اپ کو امام سجاد علنہ السالم کی جدمت گزاری کے لئ‬ ‫نار تخ میں امام سجاد علنہ السالم کی جادمہ کے نام سے جانا جانا ہے‪ ،‬ح یاب سالفہ کو جاندان اہلییت سے اس قدر حمیت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھی کہ اپ امام حسین علنہ السالم کےساتھ کرنال شرتف لے گئیں اور م ٔ‬ ‫عرکہ کرنال کے تعد اپ ئے اسیری کی سحییوں کو‬ ‫ن‬ ‫ے وانس لوبیں۔‬ ‫تحمل قرمانا اور امام سجاد علنہ السالم کے ساتھ مد بئ‬

‫س‬

‫لمی ام الرا فع‪:‬‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫ح یاب لمی تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ق یل ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ رسول گرامی قدر کی جادمہ تھیں‪ ،‬حصور کی وقات کے تعد اپ‬ ‫ئے حصرت علی‪ ،‬امام حسن اور تھر ح یاب زبیب کے گھر میں جدمت کی اور اتھیں کے ساتھ کرنال نشرتف البیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اور حصرت زبیب سالم ہللا علیہا کے ساتھ مدنیہ‬ ‫شہادت امام حسین علنہ السالم کے تعد اپ ئے اسیری کے شیم شہ‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫وانس ہوبیں‪ ،‬اپ کی قیر جیت ال فبع میں وا فع ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫ح یاب لمی کے سوہر کا نام اثو را فع ائراہیم تھا‪ ،‬اپ ئے ح یاب جعقر طیار کے ساتھ حیشہ ہحرت کی تھر رسول‬ ‫گرامی قدر کے ساتھ مدن یہ ہحرت قرمانی‪ ،‬دو ق یلوں کی طرف نماز ادا کی‪ ،‬ببعت عفنی و ببعت رصوان میں رسول گرامی قدر‬ ‫کے ہاتھوں ئر ببعت کی‪ ،‬حصور کے تعد امام علی کے ساتھ رہے پہاں نک کے ح یگ جمل و ص فین و پہروان میں‬ ‫شرکت قرمانی‪ ،‬امام علی کی شہادت کے تعد امام حسن کے ساتھ مدنیہ وانس ہوئے اور سنہ ‪۳۹‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬کیاب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫السین اور کیاب االحکام و ال فصانا اپ کی مشہور کیابیں ہیں کہ جن میں اپ ئے امام علی علنہ السالم سے روانات کو ت قل‬ ‫ٓ‬ ‫کیا ہے‪ ،‬علماء شیعہ کے ئزدنک اپ کا سمار موثق و معبیر روات میں ہونا ہے۔‬ ‫‪232‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫س‬ ‫ح یاب لمی کو ح یاب ائرہیم اثو را فع سے عت ید ہللا اور علی نامی دو قرزند ہوئے‪ ،‬جن کا سمار حصرت علی علنہ السالم کے‬ ‫ے‪ ،‬جن کی دو کیاثوں ن یام فصانا امیر المومئین اور‬ ‫قرنب ئربن اصجاب میں ہونا ہے‪ ،‬ح یاب عت ید ہللا امام علی کے کانب تھ‬ ‫ٓ‬ ‫کیاب من شھد معہ کو جاضی شہرت جاصل ہے‪ ،‬اپ ئے اس قدر حیات نانی کہ عہد امام دمحم ناقر علنہ السالم کو درک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا‪ ،‬اپ کے تھانی علی ئے تھی فیون قفہ ئر کیاب لکھی‪ ،‬اپ دوثوں کا سمار راونان ت قات میں ہونا ہے۔‬ ‫ت‬ ‫س‬ ‫مذکورہ فصیل سے نیہ جلیا ہے کہ ح یاب لمی کے جاندان کا ہر قرد مجب اہل بیت تھا اور علماء شیعہ ئے ان میں سے‬ ‫ہر انک کو تفہ جانا ہے۔‬

‫ساہ زنان بیت ئزدچر نالث ابن شہرنار بن ائروئز بن ہرمز بن اثوسیروان الساسانی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬حب لسکر‬ ‫ح یاب ساہ زنان (‪ )1‬سنہ ‪۰۰‬ھ کو مدابن میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد ساسانی حکمراثوں کے اچری نادساہ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫اسالم کو ائران ئر فیح جاصل ہونی ثو ح یاب ساہ زنان کو اسیر ن یانا گیا‪ ،‬حب اپ مدنیہ میں وارد ہوبیں ثو موال امیر المومئین ئے‬ ‫قرمانا کہ رسول اسالم کے قرمان کے م طاثق( اکرموا کریم کل قوم تعنی ہر فوم کے کریم اقراد کا اخیرام کرو)‪ ،‬ح یاب‬ ‫ٓ‬ ‫ساہ زنان کی چرند و قروحت یہ کی جائے‪ ،‬لہذا حصرت امیر المومئین ئے اور اپ کے ساتھ نمام مہاچربن و انصار ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اسیروں کا ازاد کردنا حس کے تعد ح یاب شہرناثو کو احت یار دنا گیا کہ اپ حس سے جاہیں عقد قرمابیں ثو اپ ئے امام حسین‬ ‫س‬ ‫ے میں ئے جواب میں رسول اسالم و‬ ‫علنہ السالم کو ابیجاب قرمائے ہوئے کہا کہ لسکر م لمین کے جملہ ور ہوئے سے پہل‬

‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اپ کو ساہ زنان کے ساتھ شہرناثو‪،‬‬ ‫ے جودہ نام نا القاب ذکر کئ‬ ‫‪ -1‬مورخین ئے امام سجاد علنہ السالم کی مادر گرامی ح یاب ساہ زنان کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫چہان ناثو‪ ،‬چہان ساہ ھی کہا گیا ہے‪ ،‬اپ کےمج یلف القاب ہیں کہ جن میں‪ ،‬جلوہ (خ مسکشور واو مفیوح)‪ ،‬عزالہ‪ ،‬سالفہ‪ ،‬سلمہ‪ ،‬چرار کو جاضی‬ ‫ٓ‬ ‫ے ساہ زنان اشم معین قرمانا۔‬ ‫شہرت جاصل ہے‪ ،‬حصرت علی علنہ السالم ئے اپ کے لئ‬

‫‪233‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫حصرت زہرا سالم ہللا علیہما کو دیکھا کہ اپہوں ئے میرا عقد امام حسین علنہ السالم سے قرمانا اور اپہیں کے ہاتھوں میں‬ ‫مسلمان ہونی۔‬ ‫ح یاب ساہ زنان کے ساتھ ان کی پہن مروارند تھی اسیر ہوبیں جن کا عقد حصرت امیر ئے دمحم ابن انی نکر سے قرمانا‪ ،‬ساہ‬ ‫زنان سے امام سجاد اور مروارند سے قاشم نامی قرزند ن یدا ہوئے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب ساہ زنان کی وقات کے مبعلق مشہور فول یہ ہے کہ اپ کی وقات امام سجاد علنہ السالم کی والدت‬ ‫ٓ‬ ‫کے تعد جالت ت قاس میں ہوگنی‪ ،‬فول مشہور کے مقانلہ میں تعض مورخین ئے قرمانا کہ اپ کرنال میں جاضر ہوبیں پہاں‬ ‫ٓ‬ ‫ے لوبیں اور اسی شہر میں اپ ئے وقات نانی‪ ،‬انک فول یہ تھی ہے کہ امام‬ ‫نک کہ تعد از کرنال امام سجاد کے ساتھ مد بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ذت فعدہ کے اواچر میں ائران روایہ کیا ناکہ تعد میں امام ان سے جا‬ ‫حسین علنہ السالم ئے اپ کو عراق جائے سے پہل‬ ‫م‬ ‫ملیں لیکن اس درمیان امام حسین علنہ السالم کی شہادت وا فع ہو گنی اور اس طرح ح یاب ساہ زنان شہر ری میں فیم‬ ‫ٓ‬ ‫رہیں پہاں نک کہ اپ ئے اسی شہر میں وقات نانی (‪)1‬۔‬

‫صافنہ زتجنہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب صافنہ زتجنہ تقرن یا سنہ ‪ ۹‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬امام حسن علنہ السالم ئے اپ سے عقد قرمانا جن سے ہللا‬ ‫ٓ‬ ‫تعالی ئے اپ کو قاطمہ نامی دخیر ع طاکی جو کہ امام سجاد علنہ السالم کی زوجہ اور امام ناقر علنہ السالم کی مادر گرامی تھیں‪ ،‬لہذا‬ ‫ک‬ ‫ح یاب صافنہ امام ناقر علنہ السالم کی نانی ہوئے کا شرف ر ھنی ہیں‪ ،‬جونکہ کرنال میں قاطمہ اور ان کے قرزند تعنی امام ناقر‬ ‫ے لہذا اجتمال ہے کہ ح یاب صافنہ تھی کرنال میں جاضر ہونی ہوں۔ وہللا العالم۔‬ ‫علنہ السالم جاضر ت ھ‬

‫ٓ‬ ‫‪ -1‬انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے فول اول کو ابیجاب کیا ہے۔‬

‫‪234‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫صفنہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن الہاشم القرسنہ‪:‬‬ ‫مورخ طرتخی ئے ح یاب صفنہ کا نذکرہ اشرائے کرنال میں کیاہے‪ ،‬لیکن کسی اور مورخ ئے حصرت علی کی ن بییوں میں‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب صفنہ کا ذکر پہیں کیا ہے‪ ،‬لہذا انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک یہ اجتمال ہے کہ صفنہ ح یاب ام الحسن‬ ‫بیت علی کا نام ہو‪ ،‬جن کی والدت تقرن یا سنہ ‪۶۰‬ھ اور وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ وا فع ہونی۔وہللا العالم۔‬

‫صہیاء بیت عیاد بن رببعہ البعلینہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب صھیاء تقرن یا سنہ ‪ ۰‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ حصرت علی کی کبیز تھیں کہ جن سے عمر اطرف اور رفنہ کیری‬ ‫ع‬ ‫میولد ہوئے‪ ،‬ح یاب رفنہ کیری (جو کہ مسلم ابن ق یل کی زوجہ تھیں) سنہ ‪۳۹‬ھ میں وقات نا گئیں اور ح یاب صھیاء‬ ‫ے قرزند عمر اطرف کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں ان کے قرزند محروح ہوئے اور ابنی ماں کے ساتھ اسیر ن یائے‬ ‫ا بئ‬ ‫ے۔‬ ‫گئ‬

‫عانکہ بیت زند العدویہ‪:‬‬ ‫سنہ ‪۰۸‬ھ میں امام حسین علنہ السالم ئے سیدہ عانکہ بیت زند العدویہ سے مدنیہ میں عقد قرمانا جن سے ائرہیم سنہ ‪۳۸‬ھ کو‬ ‫ے‪ ،‬ح یاب عانکہ ئے سنہ ‪۲۰‬ھ کے تعد وقات نانی‪،‬‬ ‫مدنیہ میں میولد ہوئے اور محسن سنہ ‪ ۲۰‬ھ کو شہر جلب میں س فط ہو گئ‬ ‫ٓ‬ ‫مورخین ئے اپ کا سمار کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین میں قرمانا ہے۔‬

‫‪235‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫عانکہ بیت مسلم بن ق یل بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب عانکہ بیت مسلم سنہ ‪۹۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام رفنہ ضعری بیت علی تھا‪ ،‬اپ‬ ‫ٓ‬ ‫شہادت امام حسین علنہ السالم کے تعد حب ح یام حسینی کو لونا جائے لگا ثو گھوڑوں کی ناثوں کے درمیان ا کر شہید ہو گئیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫شہادت کے وقت اپ کی عمر سات سال تھی۔‬

‫عزالہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب عزالہ تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ امام حسین علنہ السالم کی کبیز تھیں کہ جیھیں امام حسین ئے امام سجاد علنہ‬ ‫ے معین قرمانا تھا‪،‬ح یاب عزالہ امام حسین علنہ‬ ‫السالم کی والدت کے مو فع ئر ان کی دنکھ تھال اور جدمیگزاری کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم کے ساتھ کرنال نشرتف البیں‪ ،‬اپ ئے تعد از شہادت حسین امام سجاد کے ساتھ اسیری کی مسفیوں ئر صیر کیا اور‬ ‫مدنیہ وانس ہوبیں۔‬

‫قاجنہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب قاجنہ بیت علی سنہ ‪۰۳‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد ح یاب عید ہللا االضعر بن ق یل سے ہوا‪ ،‬ہللا تعالی ئے اپ کو‬ ‫س‬ ‫ے‪ ،‬ح یاب قاجنہ امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال‬ ‫ے دمحم‪ ،‬عید الرجمان اور دو ن بت یاں لمی اور ام کلیوم ع طا کئ‬ ‫دو پیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫نشرتف البیں کہ چہاں اپ کے سوہر عید ہللا اور قرزند دمحم شہید کئ‬

‫‪236‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قاطمہ بیت الحسن بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫قاطمہ بیت امام حسن علنہ السالم تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد امام سجاد علنہ السالم سے تقرن یا سنہ ‪۹۲‬ھ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ہوا حس کے پییجہ میں امام ناقر علنہ السالم ن یدا ہوئے‪ ،‬لہذا امام ناقر وہ امام ہیں کہ جو ماں ناپ کی جانب سے ال علی و‬ ‫قاطمہ سالم ہللا علیہما میں سامل ہیں۔‬ ‫ے وانس‬ ‫ے‪ ،‬اور حب مد بئ‬ ‫ے سوہر اور قرزند کے ساتھ کرنال نشرتف البیں‪ ،‬اور اسیری کے شیم شہ‬ ‫ح یاب قاطمہ بیت حسن ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫لوبیں ثو ہللا ئےسنہ ‪۲۶‬ھ میں اپ کو انک اور قرزند ع طا کیا کہ جن کا نام عید ہللا الیاھر تھا۔‬

‫قاطمہ ضعری بیت الحسین بن علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک قاطمہ وسطی بیت الحسین عاللت و بتماری کی وجہ سے کرنال میں جاضر یہ ہو‬ ‫سکیں ح یکہ قاطمہ ضعری و کیری دوثوں کرنال میں موجود تھیں‪ ،‬قاطمہ وسطی کی مادر گرامی کا نام ملومۃ الیلویۃ ال فصانیۃ تھا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قاطمہ ضعری سنہ ‪۹۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام اسجاق تھا‪ ،‬اپ ح یاب علی اضعر کی سگی‬ ‫ٓ‬ ‫پہن تھیں‪ ،‬سنہ ‪ ۲۹‬ھ میں حسن مینی (‪ )1‬بن امام حسن علنہ السالم سے اپ کا عقد ہوا‪ ،‬حس کے پییجہ میں ہللا تعالی ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫اپ دوثوں کو عید ہللا ا محض (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ) حسن میلث (والدت سنہ ‪۳۳‬ھ) ائراہیم العمر (والدت سنہ ‪۳۸‬ھ) اور‬

‫ٓ‬ ‫‪1‬‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے حجا کے ساتھ نشرتف الئے تھ‬ ‫ حسن مینی سنہ ‪۰۰‬ھ میں میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام جولہ بیت مت ظور تھا‪ ،‬حسن مینی کرنال میں ا بئ‬‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں کہ کرنال میں اپ ئے اپیس ‪ ۰۰‬دشمیوں کو واصل چہیم‬ ‫امام حسین علنہ السالم ئے ابنی پینی قاطمہ ضعری سے اپ کا عقد قرمانا‪ ،‬مورخین لکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جا‬ ‫ے‪ ،‬حب سب شہدا کے شر جدا کئ‬ ‫کیا‪ ،‬اس حیگ میں اپ کے ندن ئر ‪ ۰۸‬ضرنئیں وارد ہوبیں جن کی وجہ سے اپ عش کھاکر زمین ئر گر گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ثو لوگوں ئے اپ کے ندن میں رمق حیات نانی‪ ،‬لسکر دشمن سے اسماء بن جارجہ قزاری ئے اپ کی سقاعت کی اور اس طرح حسن‬ ‫رہے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫مینی کرنال میں شہید پہیں ہوئے‪ ،‬ولید بن عید الملک ئے اپ کو زہر دنا حس کے پییجہ می ں اپ سنہ ‪۰۶‬ھ ہحری کو اس دار قانی سے وداع کر گئ‬

‫‪237‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے سوہر کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں اپ ئے اسیری کی نمام مسفیوں کو‬ ‫ے‪ ،‬اپ (‪ )1‬ا بئ‬ ‫زبیب و ام کلیوم ع طا کئ‬ ‫تحمل قرمانا۔‬ ‫ح یاب قاطمہ ضعری کو علم جدنث میں راویہ کے نام سے جانا جانا ہے کہ جیہوں ئے امام حسین‪ ،‬امام سجاد ‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫زبیب بیت علی‪ ،‬قاطمہ بیت دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ وسلم‪ ،‬نالل عید ہللا بن عیاس‪ ،‬اسماء بیت عمیس سے‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫روانات ت قل کیں ‪ ،‬اور اپ سے تھی پہت سے راثوں ئے روانات ت قل کی ہیں کہ جن میں عید ہللا ا محض‪ ،‬ائراہیم العمر‪،‬‬ ‫حسن میلث‪ ،‬زبیب بیت حسن مینی‪ ،‬دمحم الدن یاج‪ ،‬زناد بن انی ئزند المدنی‪ ،‬ام ہسام بن زناد المدنی‪ ،‬مصعب بن دمحم العیدری‬ ‫سامل ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ح یاب قاطمہ ضعری کی وقات سنہ ‪۰۰۳‬ھ میں وا فع ہونی‪ ،‬علی ال طاہر اپ کو فبع میں دق یانا گیا ہے۔‬

‫‪ٓ 1‬‬ ‫ انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک قاطمہ وسطی بیت الحسین عاللت و بتماری کی وجہ سے کرنال میں جاضر یہ ہو سکیں ح یکہ قاطمہ ضعری‬‫و کیری دوثوں کرنال میں موجود تھیں‪ ،‬قاطمہ وسطی کی مادر گرامی کا نام ملومۃ الیلویۃ ال فصانیۃ تھا۔‬

‫‪238‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬ ‫جلد سوم‬ ‫کیاب "امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین" بین جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پیشری جلد ( کہ جو ‪ ۰۳۹‬ص فجات ئر‬ ‫ٓ‬ ‫مشتمل ہے) سنہ ‪۶۹۹۰‬ء کو لکھی گنی اور سنہ ‪ ۶۹۰۰‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہونی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں ۔‬

‫‪239‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪240‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین ( ٔ‬ ‫صہ سوم)‬ ‫ح‬ ‫کرنال میں جوابین کا کردار‬

‫ت‬ ‫نشرنت اس مجلوق جداوندی کا نام کہ حس کی جلقت کو ذات ناری ئے دو ضتقوں ئر فشیم قرمانا ہے‪ ،‬نشرنت کی پہلی‬ ‫ضتف مرد اور دوشری عورت کے نام سے جانی جانی ہے‪ ،‬یہ دوثوں ضت فیں انسابیت میں ثو انک دوشرے کے‬ ‫ٓ‬ ‫شرنک ہیں لیکن طاہری جلقت اور مزاج میں ان کے درمیان زمین و اسمان کا قرق نانا جانا ہے۔‬ ‫ے رکھا ناکہ اس ذرتعہ سے انسابیت میں بیوع کے ساتھ‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے ثوع نشرنت میں یہ قرق اس لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ساتھ بنی ادم کے سکون کے وسانل تھی قراہم ہوجابیں‪ ،‬اس نات کی طرف اسارہ کرئے ہوئے ذات ناری ئے قران‬ ‫مج ید میں قرمانا‪:‬‬ ‫و من آیاتہ ان خلق لکم من انفسکم ازواجا لتسکنوا الیھا و جعل بینکم مودة و رحمۃ ان فی ذالک الٓیات‬ ‫ٓ‬ ‫لقوم یتفکرون (روم‪ ،‬انت ‪)۶۰‬‬ ‫اور اس کی نسابیوں میں سے یہ تھی ہے کہ اس ئے ی مہارا جوڑا یم ہی میں سے ن یدا کیاہے ناکہ ی مہیں اس سے سکون‬ ‫ے نسان یاں ہیں‬ ‫جاصل ہو اورتھر اس ئے ی مہارے درمیان محیت اور رحمت قرار دی ہے کہ اس میں ان لوگوں کے لئ‬ ‫جو عور و قکر کرئے ہیں۔‬ ‫ے ہوئے کجھ‬ ‫ے ہللا تعالی ئے مرد و عورت کی جلقت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ے کے لئ‬ ‫اس م فصد (سکون) کو قایم ر کھئ‬ ‫ے جن میں تعض فوابین مردوں سے محصوص ہیں ثو تعض عورثوں سے اور کجھ فوابین میں دوثوں انک‬ ‫قاثون وضع کئ‬

‫‪241‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫دوشرے کے شرنک ہیں‪ ،‬چہاں نک کہ اسالم و انمان و علم کا تعلق ہے ہللا تعالی ئے مرد و عورت میں سے ہرانک کو‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫مساوی قرار دنا ہے حس ئر گواہ قران مج ید کی یہ انت ہے‪:‬‬ ‫ان المسلمین و المسلمات و المومنین والمومنات و القانتین و القانتات و الصادقین و الصادقات و‬ ‫الصابرین و الصابرات و الخاشعین و الخاشعات و المتصدقین و المتصدقات و الصائمین و الصائمات و‬ ‫الحافظین فروجھم و الحافظات و الذاکرین ہللا کثیرا و الذاکرات اعد ہللا لھم مغفرة و اجرا عظیما(اچزاب‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪)۰۹‬‬ ‫ے‬ ‫پیسک مسلمان مرد اور مسلمان عوربیں اور مومن مرد اور مومن عوربیں اور اطاعت گزار مرد اور اطاعت گزار عوربیں اور سچ‬ ‫ے‬ ‫مرد اور سخی عوربیں اور صائر مرد اور صائر عوربیں اور قروبنی کرئے والے مرد اور قروبنی کرئے والی عوربیں اور صدفہ د بئ‬ ‫ے والی عوربیں اور ابنی عقت کی حقاطت کرئے‬ ‫ے والے مرد اور روزہ ر کھئ‬ ‫ے والی عوربیں روزہ ر کھئ‬ ‫والے مرد اور صدفہ د بئ‬ ‫ے معقرت اور ع ظیم اچر‬ ‫والے مرد اور عوربیں اور جدا کا یکیرت ذکر کرئے والے مرد اور عوربیں‪ ،‬ہللا ئے ان سب کے لئ‬ ‫مہیا کررکھا ہے۔‬ ‫ے گھر ‪ ،‬لیاس‬ ‫ے ہیں میال معاش کی نالش‪ ،‬عورت کے لئ‬ ‫ے ہیں جو ضرف مرد سے تعلق ر کھئ‬ ‫لیکن تعض امور ا نس‬ ‫ے امور کو‬ ‫ے وسانل کا اہتمام کرنا مرد کی ذمہ داری ہے‪ ،‬سوہرداری‪ ،‬جایہ داری اور تجوں کی یگہداست و ئربیت حیس‬ ‫اور ان حیس‬ ‫ت‬ ‫عورثوں کے سیرد کیا گیا ہے‪ ،‬قانل مالخ ظہ نات ثو یہ ہے کہ ہللا تعالی کی جانب سے دبن مئین اسالم میں یہ فشیم ن یدی‬ ‫ے ہوئےطے کی گنی ہے۔‬ ‫دوثوں ضتقوں کی صالحییوں کو مد ر کھئ‬ ‫لیکن اقشوس کی نات یہ ہے کہ دور جاضر میں اع یار کی طرح مسلماثوں ئے تھی دن یا کے حصول کی عرض سے‬ ‫اسالمی جایہ داری کے ب طام کو ئرک کرکے عرنی رویہ احت یار کر لیا ہے کہ چہاں انک عورت مرد کے سایہ یہ سایہ معاش کی‬ ‫نالش میں صیح سے سام نک در یہ در تھوکربں کھانی تھرنی ہے‪ ،‬ح یکہ وہ لوگ کہ جو جود کو پیشرفنہ اور عورثوں کے حقوق کے‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے کے ناوجود اپہیں مردوں کی نسنت پیس فیصد کم بیجواہ د بئ‬ ‫ے ہیں وہی ان سے تھرثور کام لیئ‬ ‫ناسیان کہئ‬ ‫وہ ممالک کہ چہاں عورثوں کے کام کرئے کو ان کے ئرقی نافنہ ہوئے کی دلیل شمجھا جانا ہے وہیں ئر حب‬ ‫ے ناپ کی نسنت ماں سے زنادہ‬ ‫ے کام سے قارغ ہو کر گھر لوبنی ہے ثو جونکہ ف ظری طور ئر چھوئے تچ‬ ‫انک عورت ا بئ‬ ‫‪242‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٔ‬ ‫ےالزم ہو جانا ہے کہ وہ ان کی عذا اور دوشری ضرورنات کو ثورا کربں‪ ،‬حس کی وجہ سے‬ ‫ے ہیں‪ ،‬لہذا ان کے لئ‬ ‫لگاو ر کھئ‬ ‫ت‬ ‫عورت ئر ذمہ دارثوں کا ثوچھ مرد کی نسنت دو ئرائر ہو جانا ہے‪ ،‬اس فصیل کے ن یاطر میں اگر اچھی طرح عور کیا جائے ثو یہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئاے گا کہ اج کے دور میں ئرقی و پیشرقت کے نام ئر عورثوں کے ساتھ کھل کر طلم کیا جا رہا ہے ۔‬ ‫پییجہ سا مئ‬ ‫اسالم اس جگہ کہ چہاں عورت کا کام کرنا ناگزئر ہو اسے کام کرئے کی ثوری اجازت دن یا ہے‪ ،‬لیکن چہاں مرد‬ ‫ٓ‬ ‫ے اوالد کو ئے نی شبیر (دایہ) کے جوالے کرکے‬ ‫کی امدنی کاقی ہو ثو انسی صورت میں مزند روبیوں کے حصول کے لئ‬ ‫عورت کو گھر سے ئے گھر کرنا اسالمی جایہ داری کے ب طام کو ن یاہ کرئے کے ئرائر ہے۔‬ ‫وہ گھرائے کہ چہاں عوربیں کام ئر جانی ہیں اکیر یہ دیکھا گیا ہے کہ ان کی اوالد کی ئربیت اسالمی اقدار ئر پہیں ہونی اور یہ‬ ‫ے گھروں میں زن و سوہر کے درمیان ات قاق رائے نانی جانی ہے‪ ،‬جہ نسا کام ہی کے مسیلہ کو لے کر زن و سوہر‬ ‫ہی ا نس‬ ‫ے ہیں کہ جن میں ضرف گھر کے ڈکورنسن کے مسیلہ ئر زن‬ ‫ے جاندان تھی د یکھ‬ ‫میں طالق وا فع ہو جانی ہے‪ ،‬میں ئے ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫و سوہر میں نا ات قاق یاں وجود میں اگئیں اور وہ گھر ثوٹ گیا‪ ،‬نات ضرف ابنی تھی کہ ناورحی جایہ کو کس طرح ڈکورنٹ کیا‬ ‫جائے‪ ،‬حب مرد ئے ابنی رائے ئر اضرار کیا اور عورت ئے کہا کہ میں تھی کمانی ہوں لہذا میری تھی نات مانی جائے‪ ،‬ثو‬ ‫ٓ‬ ‫اسی نات کو لے کر اس قدر ناگوارناں اگے ئڑھیں کہ قرت فین میں طالق وا فع ہو گنی۔‬ ‫ے وہ ذمہ دار پہیں ہیں‪ ،‬حصرت امیر‬ ‫لہذا اسالم کی رو سے عورت سے وہ کام یہ کروائے جابیں کہ جن کے لئ‬ ‫کے فول کے م طاثق (کہ عورت انک تھول کی طرح ہے) ان کا پہیربن مقام گھر اور پہیربن کام جایہ داری ہے۔‬ ‫ے یہ نات ناعث عور و قکر ہے کہ دن یا کی سب سے مقدس جوابین کہ جن میں ح یاب قاطمہ زہرا‪ ،‬ح یاب‬ ‫جوابین کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ہاچرہ (زوج ٔہ حصرت ائراہیم)‪ ،‬ح یاب اسنہ بیت مزاحم (زوج ٔہ قرعون)‪،‬ح یاب اقاجنہ (مادر حصرت موسی)‪ ،‬ح یاب صفیراء‬ ‫(زوج ٔہ صرت موسی)‪،‬ح یاب نلقیس (م ٔ‬ ‫لکہ صیا)‪ ،‬ح یاب جنّہ (مادر حصرت مریم)‪ ،‬حصرت مریم (مادر حصرت عیسی)‬ ‫ح‬ ‫سامل ہیں ئے تھی جایہ داری‪ ،‬سوہر داری (ناس بت یاء حصرت مریم) اور ئربیت اوالد میں ابنی زندگی کو نشر قرمانا ‪ ،‬حس کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے القاب سے ناد کیا جانا ہے‪،‬اسی‬ ‫وجہ سے اج تھی اپہیں طاہرہ‪ ،‬عالمہ‪ ،‬مجدیہ و صدتفہ‪ ،‬جورائے انشنہ (انسانی جور) حیس‬ ‫ے ہوئے اوالد کی انسی ئربیت کی کہ کرنال‬ ‫ے دوشری میال کرنالنی جوابین ہیں کہ جیہوں ئےگھر میں ر ہئ‬ ‫طرح جوابین کی لئ‬ ‫‪243‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے ن یار تھا‪ ،‬اج کے دور نلکہ ہر دور کی جوابین کے لئ‬ ‫ے لگائے کے لئ‬ ‫میں ئاے واال ہر جوان ئے درنگ موت کو گ ل‬ ‫ضروری ہے کہ وہ ان ویبیبں کی زندگی کا جائزہ لیں اور ابنی زندگی کو ان کی حیات طینہ کی روشنی میں شتواربں‪ ،‬ناکہ دور جاضر‬ ‫کی میقی ن یلبعات سے محقوظ رہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫اسی م فصد کے پیش ب ظر انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے بین جلدوں ئر مشتمل معحم انصار حسین (الیساء جلد‬ ‫ت‬ ‫اول) میں کرنال میں نشرتف الئے والی نی بیوں کی سوا تح حیات ئر فصیل سے روشنی ڈالی ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر جلد‬ ‫سوم ( کہ جو ‪ ۰۳۹‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۰۰‬میں چھپ جکی ہے) میں موجود کرنالنی جوابین کی حیات طینہ ئر اجمالی‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫روشنی ڈا لئ‬

‫قاطمہ ضعری بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ح یاب قاطمہ ضعری بیت علی (کہ جن کی کییت ام ابیھا تھی) تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬حصرت علی علنہ السالم کی‬ ‫ٓ‬ ‫انک اور پینی تھیں کہ جن کا نام قاطمہ کیری(‪ )1‬تھا لہذا قاطمہ کیری کے مقانلہ میں اپ کو قاطمہ ضعری کہا گیا ہے‪ ،‬ح یاب‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے‬ ‫ح یاب قاطمہ ضعری ئے اثوسعید بن ق یل(‪ )2‬سے عقد قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو حمیدہ نامی پینی ع طا کی‪ ،‬اپ ا بئ‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫سوہر کے ساتھ کرنال نشرتف البیں چہاں اثوسعید بن ق یل امام حسین علنہ السالم کے ساتھ شہید کئ‬ ‫راونان جدنث کی انک کبیر تعداد ئے حصرت علی علنہ السالم کی ان دوثوں ن بییوں سے اجادنث ن یان کی ہیں کہ جن میں‬ ‫ج‬ ‫جارث بن کعب کوقی‪ ،‬جکم بن عید الرجمان الیجلی‪ ،‬زربن بن حییب ال ھنی‪ ،‬عروہ بن عید ہللا الخعقی‪ ،‬عیسی بن عتمان‪ ،‬موسی‬

‫ٓ‬ ‫‪ - 1‬قاطمہ کیری بیت علی کہ جن کی کییت ام حسین نا ام حسن تھی سنہ ‪۶۰‬ھ کو میولد ہوبیں‪،‬گرجہ اپ کی وقات سنہ ‪۳۰‬ھ کے تعد وا فع ہونی لیکن‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کرنال میں جاضر یہ تھیں۔‬ ‫ع‬ ‫‪ - 2‬اثوسعید بن ق یل سنہ ‪۰۲‬ھ کو میولد ہوئے۔‬

‫‪244‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ج‬ ‫بن عید ہللا ال ھنی‪ ،‬نا فع بن عید الرجمان القاری‪ ،‬اثونصیر (تحنی بن اسجاق االسدی)‪ ،‬ائراہیم العمر بن الحسن المینی بن امام‬ ‫حسن علنہ السالم سامل ہیں۔‬

‫قاطمہ بیت عفنہ بن عمرو بن تعلنہ بن اسیرۃ‪ ،‬بن عسیرۃ‪ ،‬بن عطنہ بن جدارۃ بن عوف بن الجارث بن الحزرج االنصاریۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب قاطمہ بیت عفنہ الحزرجنہ تقرن یا سنہ ‪۳‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد ئے اپ کی کییت ام نسیر رکھی ح یکہ اپ کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ جن کا نام نسیر تھا‪ ،‬لگیا ہے کہ اپ کے والد کو نسیر‬ ‫اوالد میں سے کسی کا نام نسیر یہ تھا‪ ،‬اپ کے انک تھانی تھی ت ھ‬ ‫ے کا نام نسیر رکھا۔‬ ‫ے اپہوں ئے ابنی پینی کی کییت ام نسیر اور پیئ‬ ‫نام کاقی نسید تھا اسی لئ‬ ‫ٓ‬ ‫عفنہ الحزرجنہ کا سمار ان اصجاب رسول گرامی قدر میں ہونا ہے کہ جو مکہ میں حصور ئر انمان الئے‪ ،‬طاہرا اپ‬ ‫ئے ہحرت سے انک سال ق یل اسالم فیول قرمانا اور رسول گرامی قدر کے ساتھ اسالم کی پہلی ح یگ‪،‬ح یگ ندر میں‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫شرکت کی اسی شمولیت کی وجہ سے اپ کو ندری لقب دنا گیا‪ ،‬حصور کی وقات کے تعد اپ حصرت علی کے ساتھ رہے‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ‬ ‫ے فصیدے کہ‬ ‫پہاں نک کہ ح یگ ص فین میں تھی شرکت کی‪ ،‬اپ ئے امام علی علنہ السالم کے نارے میں ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫جن سے اپ کی اہلییت کی نسنت محیت واصح ہو نی ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫اسی حمیت کی پت یاد ئر ح یاب عفنہ الحزرجنہ کی پینی قاطمہ کا عقد امام حسن علنہ السالم سے ہوا جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو‬ ‫زند (والدت سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۶۹‬ھ)‪ ،‬ام الحیر‪ ،‬اجمد (والدت سنہ ‪۳۳‬ھ ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ‪ ،‬ی مقام کرنال)‪ ،‬ام الحسن‬ ‫(والد ت تقرن یا سنہ ‪۳۳‬ھ شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنال)‪ ،‬ام الحسین (والدت سنہ ‪۳۰‬ھ ‪ ،‬وقات سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنال) نامی‬ ‫اوالد ع طا کی۔‬ ‫ے قرزندوں کے ہمراہ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں ح یاب‬ ‫ح یاب قاطمہ بیت عفنہ امام حسین علنہ السالم اور ا بئ‬ ‫ے‪ ،‬ح یاب اجمد کرنال میں شہید ہوئے‪ ،‬اور‬ ‫زند ئے امام حسین علنہ السالم کے ہمراہ ح یگ کی اور محروح ہو کر اسیر ن یائے گئ‬

‫‪245‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی دو ن بت یاں تعنی ام الحسن اور ام الحسین گھوڑں کی ناثوں میں ا کر شہید ہو گئیں‪ ،‬سالم ہو قاطمہ بیت عفنہ ئر کہ جن کی‬ ‫جار اوالد کرنال میں شہید کی گئیں۔‬

‫قاطمۃ الکیری بیت الحسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب قاطمہ کیری (‪)1‬سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام رناب بیت امریء القیس تھا‪ ،‬ح یاب سکینہ‬ ‫(والدت سنہ ‪۳۶‬ھ ‪ ،‬وقات سنہ ‪،)۰۰۳‬حصرت رفنہ (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ) اور ح یاب عید ہللا رضیع‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ امام حسین علنہ السالم‬ ‫ے تھانی پہن تھ‬ ‫(والدت دس محرم سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬شہادت دس محرم سنہ ‪۲۰‬ھ) اپ کے سگ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫کے ساتھ کرنال نشرتف البیں‪ ،‬تعد از شہادت امام حسین علنہ السالم حب اپ کو اسیر ن یا کر کوفہ النا گیا ثو اپ ئے فصیح و لبغ‬ ‫ے اوراق میں کجھ اس طرح سے رقم کیا ہے‪:‬‬ ‫ے نار تخ ئے ا بئ‬ ‫خطنہ(‪ )2‬ئڑھا کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫‪ - 1‬امام حسین علنہ السالم کی انک اور پینی تھیں کہ جن کا قاطمہ ضعری تھا جو سنہ ‪۹۰‬ھ کو مدنیہ میورہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اسجاق تھا‪ ،‬اپ ح یاب علی اضعر کی سگی پہن تھیں‪ ،‬سنہ ‪ ۲۹‬ھ میں حسن مینی * بن امام حسن علنہ السالم سے اپ کا عقد ہوا‪ ،‬حس کے پییجہ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫ہللا تعالی ئے اپ دوثوں کو عید ہللا ا محض (والدت سنہ ‪۳۹‬ھ) حسن میلث (والدت سنہ ‪۳۳‬ھ) ائراہیم العمر (والدت سنہ ‪۳۸‬ھ) اور زبیب و‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے سوہر کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں اپ ئے اسیری کی نمام مسفیوں کو تحمل قرمانا۔‬ ‫ے‪ ،‬اپ ا بئ‬ ‫ام کلیوم ع طا کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬امام‬ ‫ے حجا کے ساتھ نشرتف الئے تھ‬ ‫* حسن مینی سنہ ‪۰۰‬ھ کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام جولہ بیت مت ظور تھا‪ ،‬حسن مینی کرنال میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں کہ کرنال میں اپ ئے اپیس ‪ ۰۰‬دشمیوں کو واصل چہیم کیا‪،‬‬ ‫حسین علنہ السالم ئے ابنی پینی قاطمہ ضعری سے اپ کا عقد قرمانا‪ ،‬مورخین لکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جا رہے‬ ‫ے‪ ،‬حب سب شہدا کے شر جدا کئ‬ ‫اس حیگ میں اپ کے ندن ئر ‪ ۰۸‬ضرنئیں وارد ہوبیں جن کی وجہ سے اپ عش کھاکر زمین ئر گر گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ثو لوگوں ئے اپ کے ندن میں رمق حیات نانی‪ ،‬لسکر دشمن سے اسماء بن جارجہ قزاری ئے اپ کی سقاعت کی اور اس طرح حسن مینی‬ ‫تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫کرنال میں شہید پہیں ہوئے‪ ،‬ولید بن عید الملک ئے اپ کو زہر دنا حس کے پییجہ میں اپ سنہ ‪۰۶‬ھ ہحری کو اس دار قانی سے وداع کر گئ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ - 2‬گرجہ صاحب کیاب ملہوف ئے اس خ طنہ کو ح یاب قاطمہ ضعری کی طرف میشوب کیا ہے‪ ،‬لیکن انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک یہ‬ ‫فول دو دلیلوں کی ن یاء ئر ضعیف ہے‪:‬‬

‫‪246‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫الحمد ہلل عدد الرمل والحصى‪ ،‬و ِزنة العرش إلى الثرى‪ ،‬أحمدہ وأُؤم ُن به وأتوكل علیه‪ ،‬وأشھد أن ال إله إال‬ ‫ہللا وحدہ ال شریك له‪ ،‬وأن محمدا عبدہ ورسوله‪ ،‬وأن ذریته ذبحوا بشط الفرات بغیر ذحل وال ترات۔‬ ‫اللھم إني أعوذ بك أن أفتري علیك الكذب‪ ،‬وأن أقول علیك خالف ما أنزلت من أخذ العھود لوصیة علي بن‬ ‫أبي طالب ‪ ،‬المسلوب حقه‪ ،‬المقتول بغیر ذنب ـ كما قتل ولدہ باألمس ـ في بیت من بیوت ہللا‪ ،‬فیه معشر‬ ‫مسلمة مسلمة‪ :‬صفة على صیغة المؤنث السم الجمع «معشر»‪ .‬بألسنتھم‪ ،‬تعسا لرؤوسھم‪ ،‬ما دفعت عنه‬ ‫ضیما في حیاته وال عند مماته‪ ،‬حتى قبضته إلیك محمود النقیبة‪ ،‬طیب العریكة‪ ،‬معروف المناقب‪ ،‬مشھود‬ ‫المذاھب معروف المواقف‪ ، .‬لم تأخذہ في ہللا لومة الئم وال عذل عاذل‪ ،‬ھدیته یا رب لإلسالم صغیرا‪،‬‬ ‫وحمدتَ مناقبه كبیرا‪ ،‬ولم یزل ناصحا لك ولرسولك صلواتك علیه وآله حتى قبضته إلیك‪ ،‬زاھدا في الدنیا‪،‬‬ ‫غیر حریص علیھا‪ ،‬راغبا في اآلخرة‪ ،‬مجاھدا لك في سبیلك‪ ،‬رضیته فاخترته وھدیته إلى صراط مستقیم‪.‬‬ ‫أما بعد‪ ،‬یا أھل الكوفة‪ ،‬یا أھل المكر والغدر والخیالء ُ‬ ‫الخیالء‪ :‬العجب والكبر‪ ، .‬فإنا أھل بیت ابتالنا ہللا بكم‪،‬‬ ‫وابتالكم بنا‪ ،‬فجعل بالءنا حسنا‪ ،‬وجعل علمه عندنا وفھمه لدینا‪ ،‬فنحن عیبة علمه ووعاء فھمه وحكمته‬ ‫وحجته على أھل األرض في بالدہ لعبادہ‪ ،‬أكرمنا ہللا بكرامته وفضلنا بنبیه محمد على كثیر ممن خلق‬ ‫تفضیال بینا‪.‬‬

‫ن‬ ‫ے کی قدرت و ثوانانی رکھیا ہے‬ ‫‪۰‬۔ ح یاب قاطمہ ضعری کی عمر اسیری کے وقت ‪ ۰۹‬سال تھی‪ ،‬گرجہ جاندان اہل بیت کا تجہ تجہ فصیح و لبغ خ طنہ د بئ‬ ‫لیکن جونکہ قاطمہ کیری تھی درنار ابن زناد میں موجود تھیں لہذا ئڑی پہن کے ہوئے ہوئے چھونی پہن کا خ طنہ دن یا اور ئڑی پہن کا سکوت کرنا‬ ‫ٔ‬ ‫قانل نامل ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ امام دمحم ناقر علنہ السالم قرمائے ہیں کہ حب کرنال میں امام سجاد علنہ السالم کی طیبعت ناساز تھی ثو امام حسین علنہ السالم ئے انک کیاب اور‬ ‫ابنی وضنت قاطمہ کیری کے جوالے کی ناکہ تعد میں وہ ان دوثوں خیزوں کو امام سجاد علنہ السالم کے جوالے کردبں‪ ،‬ح یاب قاطمہ کیری ئے‬ ‫پ‬ ‫وضنت کے م طاثق عمل کیا اور وہ کیاب و وضنت میرے (امام ناقر) نانا سے مجھ نک ہیخی‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کا ان امابیوں کو ح یاب قاطمہ‬ ‫کیری کے جوالے کرنا ان کے کمال کی طرف اسارہ ہے اور یہ نات تعید ہے کہ انسی نا کمال ئڑی پہن کے ہوئے ہوئے ح یاب قاطمہ ضعری‬ ‫خ طنہ دبں اور وہ سکوت احت یار کربں‪ ،‬لہذا مذکورہ خطنہ ح یاب قاطمہ کیری سے میشوب ہے۔‬ ‫اس خ طنہ کو قاطمہ بیت علی علنہ السالم سے تھی میشوب کیا گیا ہے‪ ،‬لیکن یہ رائے تھی قانل فیول پہیں جونکہ اس خ طنہ میں ح یاب قاطمہ کیری‬ ‫ئے حصرت علی کو ان یا جد کہا ہے ‪ :‬فتبا لكم یا أھل الكوفة‪ ،‬أي ترات لرسول ہللا قبلكم وذحول له لدیكم بما عندتم بأخیه علي بن أبي‬ ‫طالب جدي۔‬

‫‪247‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫فكذبتمونا‪ ،‬وكفرتمونا‪ ،‬ورأیتم قتالنا حالال وأموالنا نھبا‪ ،‬كأننا أوالد ترك أو كابل‪ ،‬كما قتلتم جدنا باألمس‪،‬‬ ‫وسیوفكم تقطر من دمائنا أھل البیت‪ ،‬لحقد متقدم‪ ،‬قرت بذلك عیونكم‪ ،‬وفرحت قلوبكم‪ ،‬افتراء على ہللا‬ ‫ومكرا مكرتم‪ ،‬وہللا خیر الماكرین‪.‬‬ ‫فال تدعونكم أنفسكم إلى الجذل بما أصبتم من دمائنا ونالت أیدیكم من أموالنا‪ ،‬فإن ما أصابنا من المصائب‬ ‫الجلیلة والرزایا العظیمة في كتاب من قبل أن نبرأھا‪ ،‬إن ذلك على ہللا یسیر‪ ،‬لكیال تأسوا على ما فاتكم وال‬ ‫تفرحوا بما أتاكم‪ ،‬وہللا ال یحب كل مختال فخور‪.‬‬ ‫تبا لكم‪ ،‬فانتظروا اللعنة والعذاب‪ ،‬فكأن قد حل بكم‪ ،‬وتواترت من السماء نقمات‪ ،‬فیسحتكم بعذاب ویذیق‬ ‫بعضكم بأس بعض ثم تخلدون في العذاب األلیم یوم القیامة بما ظلمتمونا‪ ،‬أال لعنة ہللا على الظالمین‪.‬‬ ‫ویلكم‪ ،‬أتدرون أیة ید طاعنتنا منكم؟! وأیة نفس نزعت إلى قتالنا؟! أم بأیة ِرجل مشیتم إلینا تبغون‬ ‫محاربتنا؟!‬ ‫قست وہللا قلوبكم‪ ،‬وغلظت أكبادكم‪ ،‬وطبع على أفئدتكم‪ ،‬وختم على أسماعكم وأبصاركم‪ ،‬وسول لكم‬ ‫الشیطان وأملى لكم وجعل على بصركم غشاوة فأنتم ال تھتدون‪.‬‬ ‫فتبا لكم یا أھل الكوفة‪ ،‬أي ترات لرسول ہللا قبلكم وذحول له لدیكم بما عندتم بأخیه علي بن أبي طالب جدي‬ ‫وبنیه وعترة النبي األخیار صلوات ہللا وسالمه علیھم‪ ،‬وافتخر بذلك مفتخركم فقال‪:‬‬ ‫ق ْد قتلنا علیَّ ُك ْم وبنیه بسیوف ھندیة ورماحِ‬ ‫طاح‬ ‫ن‬ ‫وسبینا نساءھم سبي تُرك ونطحناھ ُم فأ َّ‬ ‫ي ِ ِ‬ ‫بفیك أیھا القائل الكثكث واألثلب الكثكث‪ :‬فتات الحجارة‪ ،‬والتراب‪ ،‬وكذلك األثلب‪ ، .‬افتخرت بقتل قوم زكاھم‬ ‫ہللا وأذھب عنھم الرجس وطھرھم تطھیرا‪ ،‬فاكظم وا ْقع كما أقعى أبوك‪ ،‬فإنما لكل امرء ما اكتسب وما قدمت‬ ‫یداہ‪.‬‬ ‫أحسدتمونا ویال لكم على ما فضلنا ہللا علیكم‪.‬‬ ‫فما ذنبنا إن جاش دھرا بحو ُرنا وبح ُرك ساج ال یواري الدَّعا ِمصا‬ ‫ذلك فضل ہللا یؤتیه َمن یشاء‪ ،‬وہللا ذو الفضل العظیم‪ ،‬و َمن لم یجعل ہللا له نورا فما له من نور۔‬

‫ئرحمہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ذروں اور کیکرثوں کی تعداد اور زمین و اسمان کے وزن کے ئرائر‪ ،‬میں اس کی جمد تجا النی ہوں اور‬ ‫جمد ہے ہللا کے لئ‬ ‫اس ئر انمان کے ساتھ اسی ئر ثوکل کرنی ہوں‪ ،‬اور میں گواہی دبنی ہوں کہ اس کے سوا کونی معیود پہیں‪ ،‬وہ نکیا ہے اس کا‬ ‫ٓ‬ ‫کونی شرنک پہیں‪ ،‬اور حصرت دمحم اس کے عید اور اس کے رسول ہیں‪ ،‬اور اتحصرت کی ذرنت و اوالد کو کسی چرم و خ طا‬ ‫ٔ‬ ‫کے ت غیر پہر قرات کےکیارے ذ تح کیا گیا۔ اے ہللا‪ ،‬میں اس سے نیری ن یاہ جاہنی ہوں کہ تجھ ئر چھونی پہمت لگاوں اور‬

‫‪248‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اس کے ئر جالف نات کروں جو کجھ ثو ئے امام علی ابن انی طالب علنہ السالم کی وصانت و امامت کے عہد کے‬ ‫ے‪ ،‬اور اپہیں ہللا کے گھروں میں سے انک گھر میں کہ حس‬ ‫ے گئ‬ ‫ے جق سے محروم کئ‬ ‫نارے میں نازل قرمانا ہے‪ ،‬وہ ا بئ‬ ‫میں زنانی دعوندار مسلماثوں کی کبیر تعداد موجود تھی نال چرم ق یل کیا گیا حس طرح ان کی اوالد کو کل کسی چرم کے ت غیر ق یل کر دنا‬ ‫ٓ‬ ‫گیا‪ ،‬ان ئر ڈھائے جائے والے مصانب کا سلسلہ ان کی ثوری زندگی اور ان کی رجلت نک جاری رہا پہاں نک کہ ناالچر‬ ‫ثوئے اپہیں ابنی طرف نال لیا‪ ،‬وہ ناکیزہ حصلیوں کےجامل‪ ،‬ناک سیرت و کردار کے مالک ‪ ،‬فصانل و میاقب میں معروف‬ ‫ے میں کسی کی تھی ئرواہ پہیں ہونی تھی‪ ،‬جواہ کونی حس‬ ‫ے‪ ،‬اپہیں ہللا کے معا مل‬ ‫ے ب ظرنات و مواقف میں مشہور تھ‬ ‫اور ا بئ‬ ‫ے‬ ‫ے‪ ،‬اور یہ کسی مالمت کرئےوالے کی مالمت کو کونی اہمیت د بئ‬ ‫قدر تھی ان کے نارے میں ناگوار القاظ کیوں یہ کہ‬ ‫ے‪ ،‬ئروردگارا‪ ،‬ثوئے اپہیں تجین ہی سے اسالم کی تعمت سے ثوازا اور زندگی تھر اپہیں ناکیزہ صقات ئر الثق سیانش قرا‬ ‫تھ‬ ‫دنا‪ ،‬وہ ہمیشہ لوگوں کو ہللا اور اس کے رسول کے نارے میں نصیجت قرمائے رہے پہاں نک کہ ان کا وصال ہو گیا‪ ،‬وہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ثو ان ئر راضی تھا‪ ،‬ثو ئے‬ ‫ے‪ ،‬نیری راہ میں چہاد کرئے والے ت ھ‬ ‫ے‪ ،‬اچرت میں کوساہ تھ‬ ‫دن یا میں زاہد و ئے رعیت تھ‬ ‫م ت‬ ‫اپہیں ح یا اور ضراط س فیم ئر گامزن قرمانا۔‬ ‫اما تعد‪ ،‬اے اہل کوفہ‪ ،‬اے دھوکہ و قرنب اور دعا کرئےوالو‪ ،‬اے مکاری و یکیر کے جامل لوگو‪ ،‬ہم اہلییت کا‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬ثو اس ئے ہمیں اس امیجان میں اچھا نانا‪،‬‬ ‫ے اور ی مہیں ازمانا ہے ہمارے ذر ت ع‬ ‫امیجان لیا ہے ہللا ئے ی مہارے ذر ت ع‬ ‫ے اور اس کے فہم و حکمت کا طرف ہیں‪ ،‬اور ہم‬ ‫اس ئے ان یا علم و فہم ہمارے ناس قرار دنا‪ ،‬ہم اس کے علم کے چز بئ‬ ‫روئے زمین ئر اس کے ن یدوں میں اس کی حجئیں ہیں‪ ،‬ہللا ئے ہمیں ابنی عیانات کے ساتھ عزت ع طا کی‪ ،‬اور ہمیں‬ ‫ے ابنی کبیر مجلوق ئر ئرئری ع طا قرمانی‪ ،‬مگر یم ئے ہماری نکذنب کی‪ ،‬ہمارا انکار کیا اور ہم سے ح یگ‬ ‫ے بنی دمحم کے ذر ت ع‬ ‫ا بئ‬ ‫ے کو روا جانا‪ ،‬گونا ہم ئرک نا کانلیوں کی اوالد ہیں‪ ،‬یم ئے کل ہمارے جد کو ق یل کیا‪ ،‬اور‬ ‫کرئے کو جالل اور ہمارے اموال لو بئ‬ ‫ی مہاری نلواربں ہم اہلییت کے جون سے ئر ہیں‪ ،‬یہ سب کجھ کسی ئرانی دشمنی کا پییجہ ہےکہ یم ئے ہمارے ساتھ انسا‬ ‫ٓ‬ ‫ے دلوں کو جوش کیا اور ابنی ایکھیں تھیڈی کیں‪ ،‬یم ئے ہللا ئر چھوٹ ناندھا اور مکر و قرنب کیا‪ ،‬ہللا پہیر‬ ‫سلوک کرکے ا بئ‬ ‫ص‬ ‫ندنیربں کرئے واال ہے‪ ،‬یم ہمارا جون پہا کر جوش یہ ہواور ہمارے اموال لوٹ کر ساداں یہ ہو‪ ،‬جو نکلی فیں اور م بتئیں ہم ہر‬ ‫‪249‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫انی ہیں وہ ہماری کیاب ت قدئر میں لکھی تھیں‪ ،‬سب کجھ ہللا کے احت یار میں ہے ناکہ یم اس ئر اقشوس یہ کرو جو ی مہارے‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ہاتھوں سے جال گیااور جو ی مہارے ہاتھ انا اس ئر یہ ائراو‪ ،‬کہ ہللا کسی عرور و یکیر کرئے والے کو نسید پہیں کرنا‪ ،‬یم ئر ہللا کا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عذاب ہو ‪ ،‬یم اس کی لعیت اور عذاب کے میت ظر رہو کہ جو یم ئر نازل ہو حکا ہے‪ ،‬یم ئر اسمانی اقئیں اگنی ہیں اور ہللا کے‬ ‫عذاب ئے ی مہیں گھیر لیا ہے‪ ،‬یم انک دوشرے کے عذاب کا مزہ حکھوگے‪ ،‬تھر یم ئے جو ہم ئر طلم کیا ہےاس کے‬ ‫پییجہ میں ق یامت کے دن دردناک عذاب میں مت یال ہوگے‪ ،‬ناد رکھو‪ ،‬طالوں ئر ہللا کی لعیت ہے۔‬ ‫ٔ‬ ‫ے‬ ‫ے ہو کہ یم میں سے کس کا ہاتھ ہم ئر ئڑا ہے‪ ،‬اور یم میں سے کون ہمارے مقا نل‬ ‫یم ن یاہ ہو جاو‪ ،‬کیا یم جا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫میں ح یگ کرئے نکال ہے؟ اور یم کن قدموں سے ہم سے ح یگ کرئے کو میدان میں ئاے ہو؟ جدا کی قشم ی مہارے دل‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ی مہارے شییوں میں ن یگی اگنی ہے‪ ،‬ی مہارے دلوں ئرمہربں لگ گنی ہیں‪ ،‬ی مہارے کاثوں اور ایکھوں‬ ‫سجت ہو گئ‬ ‫ے دام میں تھیسا لیا ہے‪ ،‬اور اس ئے ی مہاری‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ی مہیں شب طان ئے پہکا دنا ہے اور ی مہیں ا بئ‬ ‫ئر ئردے ئڑ جک‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫ایکھوں ئر ئردہ ڈال دنا ہےکہ یم ہدانت کی راہ دنکھ ہی پہیں سکئ‬ ‫ے ن یاہی ہو اے اہل کوفہ‪ ،‬ی مہیں رسول ہللا سے کیا دشمنی تھی کہ یم ئے ان کے تھانی علی بن‬ ‫ی مہارے لئ‬ ‫ابت طالب جو کہ میرے جد ہیں اور ان کی اوالد غیرت رسول سے عیاد مول لیا ہے کہ ی مہارے انک میکیر سحص ئے انسا‬ ‫کرئے ئر عرور کے ساتھ یہ کہا کہ ہم ئےہ یدی نلواروں اور نیزوں سے ی مہیں اور ی مہارے تجوں کو موت کے گھاٹ انارا‬ ‫ہےاور ی مہاری عورثوں کو ئرکی عورثوں کی مان ید نان ید سالسل کیا اور کس طرح اپہیں تجھاڑ دنا‬ ‫طاح)۔‬ ‫(ق ْد قتلنا علیَّ ُك ْم وبنیه بسیوف ھندیة ورماحِ وسبینا نساءھم سبي تُرك ونطحناھ ُم فأ َّ‬ ‫ي نِ ِ‬ ‫نیرا منہ ثوٹ جائے اے اس طرح کی گھت یا نابیں کرئے والے اور نست قکر سحص‪ ،‬نیرے منہ میں جاک منی‪،‬‬ ‫ثو ئے ان لوگوں کو ق یل کرئے ئر فحر کیا ہے جی ہیں ہللا ئے ناکیزہ قرار دنا اور اپہیں ہر طرح کے رحس و ناناکی سے ناک کیا‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے عصہ اور عصب کی اگ میں جل کر مرجا حس طرح نیرا ناپ مرا ہےکہ ہر سحص ا بئ‬ ‫حیسا کہ ناک کرئے کا جق ہے ثو ا بئ‬ ‫ے کا صلہ و پییجہ نائے گا۔‬ ‫کئ‬

‫‪250‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے فض و کرم سے ع طا قرمانا ہے‪ ،‬اس میں‬ ‫کیا یم اس ئر ہمارے ساتھ حسد کرئے ہو جو ہللا تعالی ئے ہمیں ا بئ‬ ‫ہمارا کیا فصور ہے کہ ہمارا درنائے کرم و فص یلت رواں و دواں ہےح یکہ نیرا درنا ابنی جگہ رک گیا ہے کہ اس میں روانی کہ‬ ‫رمق تھی دکھانی پہیں دبنی‬ ‫(أحسدتمونا ویال لكم على ما فضلنا ہللا علیكم‪.‬فما ذنبنا إن جاش دھرا بحو ُرنا وبح ُرك ساج ال یواري‬ ‫الدَّعا ِمصا)‬ ‫ے ہللا ثور قرار یہ‬ ‫ے جاہ یا ہے ع طا کرنا ہے‪ ،‬ہللا ع ظیم عیانت کرئے واال ہے‪ ،‬اور حس کے لئ‬ ‫یہ ثو ہللا کی عیانت ہےوہ حس‬ ‫دے ثو اسے کونی ثور پہیں مل سکیا۔(پہاں ئر خطنہ کا ئرحمہ جیم ہوا)۔‬ ‫ٓ‬ ‫نار تخ میں ح یاب قاطمہ کیری کی سادی کے جوالہ سے ہمیں کجھ پہیں ملیا جونکہ اپ کی وقات سنہ ‪۰۰۹‬ھ میں وا فع ہونی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ہے لہذا تعید ہے کہ اس عمر نک اپ کا عقد یہ ہوا ہو‪ ،‬لہذا اجتمال یہ ہے کہ اپ ئے اوالد جعقر و ق یل میں سے کسی‬ ‫کے ساتھ عقد قرمانا ہو۔‬ ‫حب ح یاب زبیب سالم ہللا علیہا مدنیہ سے مصر کی جانب روایہ ہوبیں ثو امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا کہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کے ہمراہ قاطمہ بیت الحسین اور سکینہ بیت الحسین تھیں‪ ،‬امام عالی مقام کی جدنث سے یہ اجتمال وجود میں ا نا‬ ‫ہے کہ ح یاب زبیب کے ساتھ جائے والی نی نی قاطمہ کیری ہوں جو ساند تعد از سنہ ‪۲۶‬ھ مدنیہ وانس لوبیں کہ چہاں ان کی‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫وقات وا فع ہونی ہو‪ ،‬اگر اس فول کو فیول کیا جائے ثو علی ال طاہر اپ کو جیت ال فبع میں دق یانا گیا ہوگا۔وہللا العالم۔‬

‫قاطمہ وسطی بیت الحسین بن علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب قاطمہ وسطی بیت امام حسین علنہ السالم تقرن یا ق یل از سنہ ‪۹۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ملومۃ الیلویۃ‬ ‫ٓ‬ ‫ال فصانیۃ تھا‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے بتماری و عاللت کی وجہ سے اپ کو زوج ٔہ رسول ہللا ح یاب ام سلمہ کے ناس مدن یہ‬ ‫میں چھوڑا تھا‪ ،‬ح یکہ قاطمہ کیری و ضعری دوثوں کرنال نشرتف البیں تھیں‪ ،‬ح یاب قاطمہ وسطی کے عقد کے مبعلق ح یاب‬

‫‪251‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫قاط ٔ‬ ‫مہ کیری کی طرح کونی نذکرہ پہیں ملیا‪ ،‬ممکن ہے کہ اپ ئے تھی اوالد جعقر و ق یل میں سے کسی کے ساتھ عقد قرمانا‬ ‫ہو(‪ ،)1‬ح یاب قاطمہ وسطی کی وقات سنہ ‪۰۶۲‬ھ میں وا فع ہونی۔‬

‫فص ٔہ ثونیہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب فصہ تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ق یل از ہحرت میولد ہوبیں‪ ،‬حب اپ رسول گرامی قدر کے ناس نشرتف البیں اور مسلمان ہو‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫بیں ثو حصور ئے اپ کو ازاد قرمانا لیکن ح یاب فصہ ئے ازادی کے ناوجود رسول و ال رسول کی کبیزی میں ابنی زندگی نشر‬ ‫کردی۔‬ ‫ے ہیں کہ انک روز ح یاب قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا ئے رسول گرامی قدر سے کبیز کی درجواست کی ثو‬ ‫مورخین لکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اگر اپ ہر نماز کے تعد‬ ‫حصور ئے قرمانا‪ :‬اے میری لجت جگر میں اپ کو جدمیگزار سے پہیر انک نسییح ع طا کرنا ہوں کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے خیر دن یا و ما فیہا ہوگا‪ ،‬حس کے تعد حصور ئے ابنی پینی کو نسییح قاطمہ کی ت لیم دی اور قرمانا‬ ‫ئڑھیں ثو اس میں اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫اے میری دخیر اپ ہر نماز کے تعد ‪ ۰۳‬نار ہللا االکیر‪۰۰ ،‬نار الحمد للہ‪ ۰۰ ،‬نار شیجان ہللا ئڑھیں اور اسے انک مرنیہ ال الہ اال‬ ‫ہللا ئر جیم کربں۔‬ ‫انک اور روانت کے م طاثق حب حصور ابنی پینی کی جواہش شن کر نی نی کے گھرسے ناہر نشرتف الئے ثو‬ ‫ٓ‬ ‫اتحصرت ئر وحی نازل ہونی اور ہللا تعالی ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫و اما تعرضن عنھم ابتغاء رحمۃ من ربک ترجوھا فقل لھم قوال میسورا (االشراء انت ‪)۶۸‬‬ ‫اور اگر ی مہیں ان لوگوں سے پہلوپ ہی کرنی ئڑے اس ابت طار میں کہ ی مہارے ئروردگار کی طرف سے رحمت آئے حس کے‬ ‫ٓ‬ ‫یم امیدوار ہو ثو ان سے ئرم انداز میں نات کرو‪ ،‬اس انت کے ئزول کے تعد حصور ئے ح یاب فصہ کو حصرت زہرا سالم‬ ‫ے سنہ ‪۹‬ھ میں معین قرمانا۔‬ ‫ہللا علیہا کی جدمیگزاری کے لئ‬

‫‪ - 1‬معحم انصار الحسین (الیساء) جلد سوم‪ ،‬ص ف ٔجہ ‪ ،۲۰‬س ظر‪۹‬۔‬

‫‪252‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫انک اور روانت میں وارد ہوا ہے کہ انک روز حصور ئے حصرت زہرا سالم ہللا علیہا کو انک ہاتھ سے ج کی‬ ‫ے ہوئے اور دوشرے ہاتھ سے امام حسن علنہ السالم کو دودھ نالئے ہوئے دیکھا‪ ،‬حب حصور ئے اجوال ئرسی کی ثو‬ ‫پیشئ‬ ‫ح یاب قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا ئے عرض کی‪:‬‬ ‫الحمد ہلل علی نعمائہ و اشکرہ علی آالئہ ہللا کی تعمیوں ئر اس کی جمد ہے اور اس کی عیانت ئر اس کا سکر ادا کرنی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ہوں‪ ،‬حب اپ ئے اس طرح سکر ادا کیا ثو ہللا تعالی ئے ایہ ولسوف یعطیک ربک فترضی (اورعیقرنب آپ کا‬ ‫ٓ‬ ‫ے) نازل قرمانی حس کے کجھ عرضہ تعد حصور ئے ح یاب فصہ کو اپ‬ ‫ئروردگار آپ کو ان یا ع طا کرے گا کہ آپ جوش ہو جاپت یگ‬ ‫ت‬ ‫ے‬ ‫ے معین قرمانا‪ ،‬حصرت زہرا سالم ہللا علیہا ئے ح یاب فصہ کے ساتھ اس طرح دن فشیم کئ‬ ‫کی جدمت گزاری کے لئ‬ ‫کہ انک روز جود نی نی جایہ داری قرمابیں اور دوشرے دن پ ہی ذمہ دارناں ح یاب فصہ کے سیرد ہوبیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے پ ہی کاقی ہے کہ جود رسول اسالم ئے اپ کا نام فصہ رکھا اور اپ کو‬ ‫ح یاب فصہ کی عظمت کے لئ‬ ‫ے کا جکم قرمانا‪:‬‬ ‫مشکالت کے مو فع ئر اس دعا کے ئڑ ھئ‬ ‫ا واحد لیس کمثلہ احد‪ ،‬تمیت کل احد‪ ،‬و تفنی کل احد‪ ،‬و انت علی عرشک واحد‪ ،‬التاخذک سنۃ و ال نوم۔‬ ‫ع‬ ‫ح یاب فصہ ئے رسول گرامی قدر کے عالوہ اہلییت اظہار کی ہر قرد سے لمی اشت قادہ کیا پہاں نک کہ وافعہ اطعام مسکین و‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫ے اور بین روز م لسل اہلییت کی نیروی‬ ‫ے روزے ر کھ‬ ‫پییم و اسیر میں اپ ئے حسئین علیہما السالم کی س قانانی کے لئ‬ ‫ے حصہ کی رون یاں ع طا کیں۔‬ ‫کرئے ہوئے پییم و مسکین و اسیر کو ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے اہلییت اظہار سے اس قدر کسب فیض قرمانا کہ جالیس سال نک ضرف قران مج ید کی انات کے ذرتعہ گق یگو‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ ح یاب فصہ ئے قاقلہ سے تجھرئے کے مو فع ئر انک احینی مرد سے قرانی‬ ‫کی‪ ،‬مورخ اثو القاشم الفسیری لکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫انات کے ذرتعہ ثوں گق یگو قرمانی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد ‪ :‬اپ کون ہیں؟‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب صہ‪ :‬وقل سالم فسوف یعلمون‪ ،‬اور سالم کہو یقرنب اپہیں معلوم ہو جائے گا (سو ٔ‬ ‫رہ زچرف انت ‪)۸۰‬۔‬ ‫ع‬ ‫ف‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬سالم ہو اپ ئر‪ ،‬اپ اس صحرا میں کیا کر رہی ہیں؟‬ ‫‪253‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے جدا ہدانت دے اسے کونی مراہ کرئے واال پہیں ہے(سو ٔ‬ ‫رہ زمر انت‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬من یھد ہللا فما له من مضل‪ ،‬حس‬ ‫گ‬ ‫‪ )۰۳‬۔تعنی میں قاقلہ سے تجھڑ گنی ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬کیا اپ ح یات میں سے ہیں نا انساثوں میں سے؟‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬یا بني آدم خذوا زینتكم‪،‬اے اوال ِد آدم! ہر نماز کے وقت زبیت کرو (سور ٔہ اعراف انت ‪ )۰۰‬۔تعنی میں‬ ‫انساثوں سے ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬اپ کہاں سے نشرتف البیں؟‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬یُنادون من مكان بعید اور ان لوگوں کو پہت دور سے نکارا جائے گا (سورہ فصلت انت ‪ .)۳۳‬تعنی میں‬ ‫ٓ‬ ‫پہت دور سے انی ہوں۔‬ ‫ک‬ ‫احینی مرد‪:‬کہاں کا فصد ر ھنی ہیں؟‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لوگوں ئر اس گھر کا حج کرنا واحب ہے (ال عمران انت‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬وہللِ على الناس ِحج البیت اور ہللا کے لئ‬ ‫ے جا رہی ہوں۔‬ ‫‪ ،)۰۳‬تعنی میں حج کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬اپ قاقلہ سے کب جدا ہوبیں؟‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬ولقد خلقنا السماوات واألرض وما بینھما في ستة أیام اور ہم ئے آسمان و زمین اور ان کے درمیان‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے سے تجھڑ ے ہوئے چھ دن ہو گئ‬ ‫ے قا قل‬ ‫کی مجلوقات کو چھ دن میں ن یدا کیا ہے (سورہ ق انت ‪۰۸‬۔)‪ ،‬تعنی مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬کیا اپ کھانا ن یاول قرمابیں گی؟‬ ‫ے تھی کونی انسا حشم پہیں ن یانا تھا جو‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬وما جعلناھم جسدا ال یأكلون الطعام اور ہم ئے ان لوگوں کے لئ‬ ‫کھانا یہ کھانا ہو (سورة األنبیاء آیت ‪ )۸‬تعنی میں کھانا کھانا جاہنی ہوں۔‬ ‫ے جلدی جلیں۔‬ ‫احینی مرد‪ :‬میں ئے اپہیں کھانا کھالنا اور کہا میرے بیجھ‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬ال یكلف ہللا نفسا إال وسعھا ہللا کسی تفس کو اس کی وسعت سے زنادہ نکلیف پہیں دن یا (سورہ الیقرہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کی کوشش کروں گی۔‬ ‫ے نئیں نیز جلئ‬ ‫انت ‪)۶۸۲‬۔ تعنی میں ا بئ‬ ‫‪254‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬کیا میں اپ کے ساتھ انک سواری ئر پییھ سکیا ہوں؟‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬لو كان فیھما آلھة إال ہللا لفس َدتَا اگر زمین و آسمان میں ہللا کے عالوہ اور جدا تھی ہوئے ثو زمین و آسمان‬ ‫ٓ‬ ‫دوثوں ئرناد ہوجائے ( ٔ‬ ‫سورہ اپت یاء انت ‪ ،)۶۶‬تعنی نامحرم کے ساتھ انک سواری ئر پییھیا موحب قساد ہو سکیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬میں سواری سے ائر انا اور تھر اپہیں سوار کیا۔‬ ‫ے مسحر کردنا‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬سبحان الذي سخر لنا ھذا۔۔۔ ناک و ئے ن یاز ہے وہ جدا حس ئے اس سواری کو ہمارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے۔۔۔ ( ٔ‬ ‫سورہ زچرف انت ‪( ،)۰۰‬دعائے سقر)۔‬ ‫ے۔‬ ‫ے سے جا مل‬ ‫دوثوں ئے سقر شروع کیا پہاں نک کہ قا قل‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬کیا قاقلہ میں اپ کا کونی ساتھی ہے؟‬ ‫ح یاب صہ‪ :‬یا داود إنا جعلناك خلیفة في األرض اے داؤد ہم ئے یم کو زمین میں ان یا جانسین ن یانا ہے ( ٔ‬ ‫سورہ ص‬ ‫ُ‬ ‫ف‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪ ،)۶۲‬وما محمد إال رسول اور دمحم ثو ضرف انک رسول ہیں ( ٔ‬ ‫سورہ ال عمران انت ‪ ،)۰۳۳‬یا یحیى ُخذ الكتاب‬ ‫ٓ‬ ‫بقوة اے حتنی! کیاب کو مصتوطی سے تھام لو (سورہ مریم انت ‪ ،)۰۶‬یا موسى‪ ...‬إنني أنا ہللا اے موسی‬ ‫ٓ‬ ‫۔۔۔۔۔۔۔ ئے سک میں ہی وہ ہللا ہوں جو ۔۔۔۔ (سورہ طہ انات ‪۰۰‬۔‪)۰۳‬۔تعنی ح یاب فصہ کے جار قرزندوں کے‬ ‫ٓ‬ ‫نام مذکورہ انات میں موجود ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫احینی مرد‪ :‬میں ئے یہ جار نام نکارے ثو جار جوان ئاے‪ ،‬میں ئے ثوچھا یہ کون ہیں؟‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب صہ‪ :‬المال والبنون زینة الحیاة الدنیا مال اور اوالد زندگانی دن یا کی ز یت ہیں (سو ٔ‬ ‫رہ کہف انت ‪ ،)۳۲‬تعنی یہ‬ ‫ب‬ ‫ف‬ ‫میرے قرزند ہیں۔‬ ‫ے کے لئ‬ ‫ے ماں سے ملئ‬ ‫حب پیئ‬ ‫ت استأجرہ إن خیر من استأجرتَ‬ ‫ے قرنب ہوئے ثو ح یاب فصہ ئے قرمانا‪:‬یا أب ِ‬ ‫ے آپ اچرت ئر رکھیں وہی ہے جو طاقت ور تھی ہو‬ ‫ے کیونکہ اچھا مزدور حس‬ ‫القوي األمین اے نانا! اس کو اچرت ئر رکھ ل حیئ‬ ‫ٓ‬ ‫اور امانت دار تھی (سور ٔہ فصص انت ‪)۶۲‬۔‬ ‫ے۔‬ ‫ے کجھ ھدانا بظور اچرت د بئ‬ ‫یہ شن کر پییوں ئے مجھ‬ ‫‪255‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے جاہ یا ہے اور ئڑھا دن یا ہے (سورہ تقرہ انت ‪ ،)۶۲۰‬تعنی‬ ‫ح یاب فصہ‪ :‬وہللا یضاعف لمن یشاء اور جدا حس کے لئ‬ ‫اچرت میں اصافہ کیا جائے۔‬ ‫احینی مرد‪ :‬حب تجوں ئے ہدانا میں اصافہ کیا ثو میں ئے ان سے ثوچھا کہ یہ جاثون کون ہیں؟‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ثو اپہوں ئے کہا کہ یہ ہماری مادر گرامی ح یاب فصہ کبیز حصرت زہراء سالم ہللا علیہا ہیں جو پیس سال سے قرانی انات‬ ‫کے ذرتعہ گق یگو کرنی ہیں (تجار االثوار جلد ‪ ۳۰‬ص ‪)۸۲‬۔‬ ‫ے ہیں کہ انک روز میں حج کی بیت‬ ‫اسی طرح کا انک اور وافعہ عید ہللا میارک سے تھی میقول ہے‪ ،‬وہ کہئ‬ ‫سے مکہ کی طرف جا رہا تھا کہ میں ئے انک جاثون کو صحرا میں نانا‪ ،‬میں ئے اپہیں سالم کیا ثو اس جاثون ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫رب رحیم ان کے جق میں ان کے مہرنان ئروردگار کا فول ضرف سالمنی ہوگا ( ٔ‬ ‫سورہ نس انت ‪)۹۸‬۔‬ ‫سالم قوال من ٍّ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬ہللا اپ ئر ابنی رحمئیں نازل قرمائے اپ اس جگہ کیا کر رہی ہیں؟‬ ‫ے جدا ہی مراہی میں چھوڑ دے اس کا کونی ہدانت کرئے واال پہیں ہے ( ٔ‬ ‫سورہ‬ ‫جاثون‪ :‬من یضلل ہللا فال ھادي له حس‬ ‫گ‬ ‫ٓ‬ ‫ے سے تجھڑ گنی۔‬ ‫اعراف انت ‪)۰۸۲‬۔ تعنی میں قا قل‬ ‫ٓ‬ ‫ک‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬اپ کہاں جائے کا فصد ر ھنی ہیں؟‬ ‫جاثون‪ :‬سبحان الذي أسرى بعبدہ لیال من المسجد الحرام إلى المسجد األقصى ناک و ناکیزہ ہے وہ ئروردگار جو‬ ‫ٓ‬ ‫ے ن یدے کو راثوں رات م جد ا حرام سے م جد افضٰی نک لے گیا ( ٔ‬ ‫سورہ اشراء انت ‪)۰‬۔‬ ‫ا بئ‬ ‫س ل‬ ‫س‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں شمجھ گیا کہ اپہوں ئے حج کرلیا ہے اور اب بیت المقدس جانا جاہنی ہیں‪ ،‬لہذا میں ئے ثوچھا‪ :‬اپ کو‬ ‫ے؟‬ ‫ے دن گزر گئ‬ ‫قاقلہ سےتجھڑے ہوئے کیئ‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫جاثون‪ :‬ثالث لیال سویا یم م لسل بین دثوں نک (سورہ مریم انت ‪)۰۹‬۔تعنی بین دن ہوئے ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬کیا اپ کے ناس اس مدت میں کھائے کو کجھ تھا؟‬ ‫ٓ‬ ‫جاثون‪ :‬و الذی ھو یُطعمني ویَسقین وہی کھانادن یا ہے اور وہی نانی نالنا ہے ( ٔ‬ ‫سورہ سعراء انت ‪)۳۰‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬اپ وصو کس طرح کرنی ہیں ح یکہ پہاں نانی کا نام و نسان نک پہیں؟‬ ‫‪256‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫جاثون‪ :‬فلم تجدوا ماء فتیمموا صعیدا طیبا ثو ناک منی سے بیمم کر لو ( ٔ‬ ‫سورہ ماندہ انت ‪ ،)۲‬تعنی میں وصو کے ندلے‬ ‫بیمم کرنی ہوں۔‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میرے ناس کجھ کھانا ہے کیا اپ ن یاول قرمابیں گی؟‬ ‫ٓ‬ ‫جاثون‪ :‬أتموا الصیام إلى اللیل تھر رات نک روزہ کو ثورا کرو ( ٔ‬ ‫سورہ تقرہ انت ‪ ،)۰۸۳‬تعنی اس وقت میں روزہ سے‬ ‫ہوں۔‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬یہ ثو ماہ میارک رمصان پہیں ہے تھر روزے کی کیا وجہ ہے؟‬ ‫ے پہیر ہے ( ٔ‬ ‫سورہ‬ ‫جاثون‪ :‬فمن تطوع خیرا فھو خیر له اور جو ابنی مرضی سے کجھ (زنادہ) تھالنی کرے ثو وہ اس کیلئ‬ ‫ٓ‬ ‫تقرہ انت ‪)۰۸۳‬۔‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬سقر میں کھانا پت یا ہم ئر جائز کیا گیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے زنادہ پہیر ہے ( ٔ‬ ‫سورہ تقرہ انت ‪)۰۸۳‬۔‬ ‫جاثون‪ :‬وأَن تصوموا خیر لكم اور اگر یم روزہ رکھو ثو یہ ی مہارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬اپ میری طرح گق یگو کیوں پہیں کربیں؟‬ ‫جاثون‪ :‬ما یلفظ من قول إال لدیه رقیب عتید وہ کونی ل فظ تھی پہیں ثولیا مگر یہ کہ اس کے ناس نگران ن یار موجود ہونا ہے‬ ‫ٓ‬ ‫( ٔ‬ ‫سورہ ق انت ‪)۰۸‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے سے ہے؟‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬اپ کا تعلق کس قت یل‬ ‫جاثون‪ :‬وال ت ْقفُ ما لیس ل َك به علم إن السم َع والبص َر والفؤا َد كل أولئك كان عنه مسؤوال اور حس خیز کا ی مہیں‬ ‫ً‬ ‫ے یہ ئڑو تقت یا کان‪ ،‬آنکھ اور دل ان سب کے نارے میں یم سے نازئرس کی جائے گی (سورہ‬ ‫علم پہیں ہے اس کے بیجھ‬ ‫ٓ‬ ‫اشراء انت ‪)۰۲‬‬ ‫ے معاف قرمابیں۔‬ ‫ے سوال سے شرمیدہ ہوں مجھ‬ ‫عید ہللا میارک‪:‬میں ا بئ‬ ‫تثریب علیك ُم الیو َم یغفر ہللا لكم آپ (ع) ئے کہا آج یم ئر کونی الزام (اور لعیت مالمت) پہیں‬ ‫جاثون‪ :‬قال ال‬ ‫َ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے ہللا ی مہیں عاف کرے اور وہ ئڑا رحم کرئے واال (مہرنان) ہے۔ ( ٔ‬ ‫سورہ ثوسف انت ‪)۰۶‬۔‬ ‫م‬ ‫‪257‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬کیا اپ میرے ناقے ئر سوار ہونا جاہیں گی؟‬ ‫ے! کہ وہ ابنی نگاہیں‬ ‫جاثون‪ :‬قُل للمؤمنین یغضوا من أبصارھم اے رسول(ص)) آپ مؤمن مردوں سے کہہ د حتئ‬ ‫ٓ‬ ‫بیخی رکھیں (سورہ ثور انت ‪)۰۹‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں ئے ابنی ایکھوں کو ن ید کر لیا‪ ،‬وہ سوار ہونا جاہنی تھیں کہ نافہ اگے ئڑھا اور اپ کا لیاس نارہ ہو گیا۔‬ ‫پ‬ ‫جاثون‪ :‬وما أصابكم من مصیبة فبما كس َبت أیدیكم اور یم نک جو مصییت تھی ہ حینی ہے وہ ی مہارے ہاتھوں کی‬ ‫ٓ‬ ‫کمانی ہے ( ٔ‬ ‫سورہ سوری انت ‪)۰۹‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے روک لوں۔‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬تھوڑا صیر کربں ناکہ میں نافہ کو اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫سلَیمان تھر ہم ئے س تمان علنہ ا سالم کو صحیح صلہ شمجھا دنا ( ٔ‬ ‫سورہ اپت یاء انت ‪)۳۰‬۔‬ ‫جاثون‪ :‬ففھَّمناھا ُ‬ ‫ل‬ ‫فی‬ ‫ل‬ ‫ے نافہ کو مہیا کیا پہاں نک کہ وہ سوار ہو گئیں۔‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں ئے ان کے لئ‬ ‫جاثون‪ :‬سبحانَ الذي س َّخر لنا ھذا وما كنا له مقرنین وإنا إلى ربنا لمنقلبون ناک و ئے ن یاز ہے وہ جدا حس ئے‬ ‫ے ئروردگار ہی‬ ‫ے اور پہرجال ہم ا بئ‬ ‫ے والے پہیں ت ھ‬ ‫ے م سحر کردنا ہے وریہ ہم اس کوقاثو میں السکئ‬ ‫اس سواری کو ہمارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫کی نارگاہ میں نلٹ کر جائے والے ہیں ( ٔ‬ ‫سورہ زچرف انات ‪۰۰‬۔‪)۰۳‬۔‬ ‫ے لگا۔‬ ‫ے ہوئے جلئ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں ئے نافہ کی رسی کو تھاما اور چھو مئ‬ ‫جاثون‪ :‬واقصد في مشیك واغضض من صوتك اور ابنی رق یار میں میایہ روی سے کام لو اور ابنی آواز کو دھتما رکھو (سورہ‬ ‫ٓ‬ ‫لقمان انت ‪)۰۰‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے لگا۔‬ ‫ے لگا اور ئریم میں سعر ئڑ ھئ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں ارام سے جلئ‬ ‫ٓ‬ ‫سر من القرآن حس قدر قرآن ممکن ہو ان یا ئڑھ لو (سورہ مزمل انت ‪)۶۹‬۔‬ ‫جاثون‪ :‬فاقرؤوا ما تی َّ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬ہللا ئے اپ کو خیر کبیر ع طا کیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫جاثون‪ :‬وما ی َّذ َّك ُر إال أولوا األلباب اور اس نات کوصاحیان عقل کے عالوہ کونی پہیں شمجھیا ہے ( ٔ‬ ‫سورہ تقرہ انت‬ ‫ِ‬ ‫‪)۶۲۰‬۔‬

‫‪258‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬کجھ سقر طے کرئے کے تعد میں ئے ثوچھا کیا اپ سادی سدہ ہیں؟‬ ‫جاثون‪ :‬یا أیھا الذین آمنوا ال تسألوا عن أشیاء إن ت ُب َد لكم تسؤكم اے انمان والو ان خیزوں کے نارے میں‬ ‫ٓ‬ ‫سوال یہ کرو جو یم ئر طاہر ہوجابیں ثو ی مہیں ئری لگیں ( ٔ‬ ‫سورہ ماندہ انت ‪)۰۹۰‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں سقر طے کرنا رہا پہاں نک کہ ہم ئے قاقلہ کو نالیا‪ ،‬میں ئے ثوچھا کیا اس قاقلہ میں اپ کا کونی عزئز و‬ ‫رسنہ دار موجود ہے؟‬ ‫ٓ‬ ‫جاثون‪ :‬المال والبنون زینة الحیاة الدنیا مال اور اوالد زندگانی دن یا کی ز یت ہیں ( ٔ‬ ‫سورہ کھف انت ‪)۳۲‬۔‬ ‫ب‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں سجھ گیا کہ اپ کے قرزند اس قاقلہ میں موجود ہیں لہذا میں ئے ثوچھا ان کی کیا پہجان ہے؟‬ ‫ے ہ یں‬ ‫ے درناقت کر لیئ‬ ‫جاثون‪ :‬وعالمات وبالنجم ھم یھتدون اور عالمات معین کردبں اور لوگ سیاروں سے تھی را شئ‬ ‫ٓ‬ ‫( ٔ‬ ‫سورہ تجل انت ‪)۰۲‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪:‬اپ کے اس کالم سے میں شمجھ گیا کہ اپ کے مبعل فین اس قاقلہ کے شرداروں میں سے ہیں لہذا‬ ‫ے۔‬ ‫ے ان اقراد کے نام درناقت کئ‬ ‫میں ئے عمارثوں کی طرف جائے سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ج‬ ‫جاثون‪ :‬واتخذ ہللا إبراھیم خلیال اور ہللا ئے ائراہیم علنہ السالم کو ان یا لیل اور دوست ن یانا ہے (سورہ نساء انت‬ ‫ٓ‬ ‫‪ ،)۰۶۹‬وكلَّم ہللا موسى تكلیما اور ہللا ئے موسٰی علنہ ا سّالم سے ناقاعدہ گق یگو کی ہے ( ٔ‬ ‫سورہ نساء انت ‪ ،)۰۲۳‬یا‬ ‫ل‬ ‫ٓ‬ ‫یحیى خذ الكتاب بقوة اے حتنٰی! کیاب کو مصتوطی سے تھام لو ( ٔ‬ ‫سورہ مریم انت ‪)۰۶‬۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬میں ئے ائراہیم‪ ،‬موسی‪ ،‬تحنی کے نام سے اواز دی ثو دیکھا کہ کجھ جونصورت جوان اگے ئاے اور حب‬ ‫اپہوں ئے ابنی ماں سے مالقات کی ثو انکی ماں ئے کہا‪:‬فابعثوا أحدكم بورقكم ھذہ إلى المدینة فلینظر أیھا أزكى‬ ‫ت‬ ‫ے کہ کون سا کھانا پہیر ہے اور تھر‬ ‫ے دے کر کسی کو شہر کی طرف ھیجو وہ د یکھ‬ ‫ے سک‬ ‫طعاما فلیأتكم برزق منه اب یم ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے رزق کا سامان قراہم کرے ( ٔ‬ ‫ے اور اپہوں ئے کھانا مہیا کیا‪،‬‬ ‫سورہ کہف انت ‪ ،)۰۰‬اپ کے انک قرزند گئ‬ ‫ی مہارے لئ‬ ‫عذا کو دنکھ کر اپہوں ئے قرمانا‪ :‬كلوا واشربوا ھنیئا بما أسلفتم في األیام الخالیة اب آرام سے کھاؤ بیو کہ یم ئے‬ ‫ٓ‬ ‫گزسنہ دثوں میں ان تع یوں کا ا طام کیا ہے ( ٔ‬ ‫سورہ جافہ انت ‪)۶۳‬۔‬ ‫م‬ ‫بت‬ ‫‪259‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫عید ہللا میارک‪ :‬اب مجھ سے رہا یہ گیا اور میں ئے کہا یہ کھایہ مجھ ئر اس وقت نک چرام ہے حب نک کہ میں یہ یہ جان‬ ‫لوں کہ یہ نی نی کون ہیں‪ ،‬نب ح یاب فصہ کے قرزندوں ئے قرمانا یہ ہماری مادر گرامی ح یاب فصہ ہیں جو جالیس سال‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سے قران مج ید کی انات کے ذرتعہ گق یگو کررہی ہیں (زہر الرببع ص ‪ ،۰۸۹‬اعیان الیساء ص ‪)۹۰۰‬۔‬ ‫ان دوثوں وافعات سے ح یاب فصہ کی عظمت کا اندازہ لگانا جاسکیا ہے‪ ،‬پہلی روانت کے م طاثق پیس سال‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ت قت ی ا‬ ‫اور دوشری روانت کے م طاثق جالیس سال نک اپ ئے قرانی انات کے ذرتعہ گق یگو کی‪ ،‬یہ وہ فیض ہے کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے اہلییت کے ساتھ زندگی گزارئے سے جاصل کیا ہے۔‬ ‫ح یاب فصہ رسول گرامی قدر کی وقات کے تعد نمام م طالم میں ح یاب قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا کی مددگار نانت‬ ‫ٓ‬ ‫ہوبیں‪ ،‬حب در قاطمہ ئر جملہ کیا گیا نب اپ تھی گھر میں موجود تھیں‪،‬ح یاب قاطمہ کو تھی حصرت فصہ سے ئڑی قرنت‬ ‫ٓ‬ ‫تھی پ ہی وجہ ہے کہ حب نی نی کی شہادت کا وقت قرنب ہوا ثو اپ ئے موال علی سے قرمانا کہ اے علی بن ابت طالب‬ ‫میری موت کی خیرعورثوں میں ضرف ام سلمہ‪ ،‬ام ای من‪،‬اور فصہ کو دی جائے‪ ،‬نی نی کی شہادت کے تعد ح یاب فصہ موال‬ ‫ٓ‬ ‫ے دور جکومت میں‬ ‫علی اور اپ کے نمام قرزندوں اور ن بییوں کی جدمت میں رہیں‪ ،‬پہاں نک کہ حب حصرت علی ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے عذا مہیا قرمانی تھیں‪ ،‬اپ ئے‬ ‫مدنیہ سے کوفہ نشرتف الئے ثو ح یاب فصہ تھی اپ کے ساتھ تھیں جو اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے دعانیہ جملوں میں قرمانا‪ :‬اللھم بارک لنا فی فضتنا‬ ‫حصرت امیر کی اس قدر جدمت کی کہ حصرت علی ئے اپ کے لئ‬ ‫ے میارک قرار دے۔‬ ‫اے ہللا ہماری فصہ کو ہمارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت علی ئے اپ کا عقد اثوتعلنہ الحیسی سے قرمانا جن سے ہللا ئے اپ کو انک قرزند ع طا کیا‪ ،‬اثوتعلنہ کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫وقات کے تعد اپ کا عقد اثو ملیک العطقانی سے ہوا‪ ،‬اپ کی اوالد کے نام نار تخ میں کجھ اس طرح سے درج ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔داود‪ ،‬۔ ‪۶‬۔ دمحم ۔‪۰‬۔ حتنی ۔‪۳‬۔موسی ۔‪۹‬۔ائراہیم ۔‪۲‬۔مِسکۃ(پینی)۔‬ ‫ع‬ ‫اوالد اور سوہر کی ذمہ دارثوں کے ناوجود ح یاب فصہ امام حسین اور اہل بیت چرم لیہم السالم کے ساتھ کرنال‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور ح یاب زبیب کی جدمت میں رہیں پہاں نک کہ نی نی‬ ‫نشرتف البیں‪ ،‬حس کے تعد اپ ئے اسیری کے شیم شہ‬ ‫زبیب ئے وقات نانی۔‬ ‫‪260‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ کی وقات سنہ ‪۲۶‬ھ کے تعد شہر دمشق میں وا فع ہونی‪ ،‬اج تھی اپ کی قیر اسی شہر میں موجود ہے۔‬

‫فکیھۃ (اشم مصعر) کبیز امام حسین علنہ السالم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب فکیھۃ تقرن یا سنہ ‪۲‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ ح یاب رناب بیت امریء القیس کی جدمت میں تھیں اور اجتمال ہےکہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قرزند قارب کے ساتھ کرنال‬ ‫اپ ح یاب رناب کے عقد کے مو فع سے اپ کی جدمت میں رہی ہوں‪ ،‬اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫شرتف البیں چہاں اپ کے قرزند ٔ‬ ‫ے جن ئر امام حسن عسکری علنہ السالم ئے زنارت ناجنہ‬ ‫ے گئ‬ ‫جملہ اول میں شہید کئ‬ ‫ن‬ ‫ت‬ ‫میں ثوں سالم ھیجا‪ :‬السالم علی قارب مولی الحسین‪،‬ح یاب فکیھۃ ئے شہادت امام حسین علنہ السالم کے تعد‬ ‫ے۔‬ ‫اسیری کے شیم شہ‬

‫قفیرۃ (اشم مصعر) بیت علقمہ بن عید ہللا بن انی قیس الحیشنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب قفیرہ ق یل از سنہ ‪ ۳‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ ح یاب جعقر طیار کی کبیز تھیں‪ ،‬حب جعقر طیار حیشہ سے مدنیہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھانی حصرت علی کی جدمت میں پیش کیا‪ ،‬ح یاب امیر ئے تھی‬ ‫وانس لوئے ثو اپ ئے قفیرۃ کو ہدیہ کے طور ئر ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے معین قرمانا‪ ،‬ح یاب زہراء کی شہادت کے تعد اپ حصرت‬ ‫قفیرۃ کو ح یاب قاطمہ زہراء سالم ہللا علیہا کی جدمت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫زبیب سالم ہللا علیہا کے گھر میی قل ہوبیں پہاں نک کہ اپ کے ساتھ کرنال نشرتف البیں‪ ،‬چہاں تعد از شہادت امام‬ ‫ٓ‬ ‫ے وانس ہوبیں۔‬ ‫ے اور ح یاب زبیب کے ساتھ مد بئ‬ ‫حسین علنہ السالم اپ ئے اسیری کے شیم شہ‬

‫‪261‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قمر ام وھب ( ‪ )1‬بیت عید الیمریۃ (ی مر بن قاسط) العدنانیۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب قمر تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے سوہر عید ہللا بن عمیر کلنی‪ ،‬قرزند وہب بن عید ہللا اور پہو ہانیہ کوفنہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور پہو کرنال میں شہید‬ ‫ے ح یاب قمر ‪ ،‬اپ کے سوہر‪ ،‬اپ کے پیئ‬ ‫ے اپ سب کے سب مسلمان تھ‬ ‫تھیں‪،‬کرنال سے پہل‬ ‫ے ہوئے شر کے ذرتعہ د شمیوں کو‬ ‫ے ہی قرزند کے کئ‬ ‫ے قرزند کی شہادت کے تعد ا بئ‬ ‫ے‪ ،‬ام وہب ئے ا بئ‬ ‫ے گئ‬ ‫کئ‬ ‫ٓ‬ ‫واصل چہیم کیاحس کے تعد شمر کے عالم ئے عمود سےجملہ کرکے اپ کو شہید کردنا۔‬

‫کیشہ (کاف مفیوح‪ ،‬ناء ساکن‪ ،‬سین مفیوح) ام سلتمان‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب کیشہ ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کو امام حسن علنہ السالم ئے ہزار درہم میں چرند کر ابنی زوجہ ام اسجاق کی‬ ‫ے معین قرمانا تھا‪ ،‬امام حسن علنہ السالم کی شہادت کے تعد ح یاب ام اسجاق ئے امام حسین علنہ السالم‬ ‫جدمت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سے عقد قرمانا ثو اپ کی یہ کبیز امام حسین علنہ السالم کے گھر میی قل ہوبیں‪ ،‬اپ کے سوہر کا نام اثو رزبن مسعود بن‬ ‫ٓ‬ ‫مالک کوقی تھا جن سے ہللا تعالی ئے اپ کو سلتمان نامی قرزند ع طا کیا‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے سلتمان بن اثو رزبن کو‬

‫ٓ‬ ‫م‬ ‫‪ -1‬ق یل میں انک اورام وھب کا نذکرہ ملیا ہے جو وہب کی پینی تھیں اور تقرن یا سنہ ‪۶۲‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے سوہر اور قرزند کا نام تھی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جیہوں ئے امام حسین علنہ السالم کے ہاتھوں ئر اسالم فیول قرمانا‪،‬شیخ صدوق (دمحم بن علی بن‬ ‫وہب تھا‪،‬اپ اور اپ کے قرزند نصرانی تھ‬ ‫ے اور انک ع ظیم حیگ کے تعد شرنت‬ ‫حسین قمی) تقل قرمائے ہیں کہ روز عاسورا حب وھب بن وھب میدان کازار میں نشرتف لے گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫شہادت ثوش قرمانا ثو عمر سعد ئے اپ کا شر کیوا کر ح یام حسینی کی طرف اچھال دنا‪ ،‬یہ دنکھ کر اپ کی مادر گرامی ام وہب ئے نلوار اتھانی اور ق یل‬ ‫ٓ ٔ‬ ‫کی طرف جائے لگیں اس وقت امام حسین علنہ السالم ئے قرمانا اے ام وھب عورثوں ئر چہاد واحب پہیں ہے‪ ،‬وانس جلی او ‪ ،‬پیسک ی مھارا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اور ی مھارے قرزند کا مقام جیت میں میرے نانا رسول ہللا کے ساتھ ہے‪ ،‬تھر امام ئے اپ کو شہادت کی نسارت دی اور اس طرح اپ ئے‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫تھی کرنال میں شہادت نانی‪ ،‬قانل ذکر نات یہ ہے کہ اپ کے قرزند ح یاب وہب بن وہب شہادت کے وقت غیر سادی سدہ تھ‬

‫‪262‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے قاصد کے طور ئر نصرہ کی جانب روایہ کیا چہاں وہ ماہ ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ کی ان یداء میں ابن زناد کے جکم سے شہید کر‬ ‫ا بئ‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫د بئ‬ ‫ے اور تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ‬ ‫ح یاب کیشہ امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال نشرتف البیں اور تعد از معرکہ کرنال اسیری کے شیم شہ‬ ‫میں وقات ناگئیں۔‬

‫لیلی بیت انی مرۃ بن عروۃ بن مسعود بن مبعب بن مالک بن کعب الی قفنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٔت‬ ‫ے‪،‬‬ ‫دہ ققی کے حجا زاد تھانی ت ھ‬ ‫ح یاب لیلی سنہ ‪۶۹‬ھ کو مدنیہ میں میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد اثو مرۃ ح یاب مج یار بن اثوعت ی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سنہ ‪۰۹‬ھ میں امام حسین علنہ السالم ئے اپ سے عقد قرمانا حس کے پییجہ میں ہللا تعالی ئے اپ کو ‪ ۰۰‬سعیان سنہ ‪۰۸‬ھ‬ ‫ے۔‬ ‫ے تھ‬ ‫میں علی اکیر حیسا قرزند ع طا قرمانا کہ جو صورت و سیرت میں رسول گرامی قدر سے س یاہت ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ح یاب لیلی کے کرنال جاضر ہوئے کے سلسلہ میں مورخین کے درمیان سدند اح یالف نانا جانا ہے انت ہللا‬ ‫کرناسی ئے اس مقام ئر ان نمام مورخین کا نذکرہ کیا ہے کہ جو ح یاب لیلی کے کرنال جاضر ہوئے کو فیول نا رد کرئے ہیں‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫مصتف ئے ان کے افوال کا تھی نذکرہ کیا ہے حس کے تعد اپ ئے پییجہ گیری قرمانی ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر ضرف‬ ‫قرت فین کے نام اور ان کی کیب کا نذکرہ اور شیخ کرناسی کی رائے کو ن یان کرئے ہیں‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫درج ذنل کیب میں مورخین ئے ح یاب لیلی کے کرنال میں جاضر ہوئے کو نا ثو فیول پہیں قرما نا نا تھر اس میں سک و‬ ‫ئردند کی ہے‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ ٔ‬ ‫‪۰‬۔ قمقام زاچر (نالیف‪:‬جاج قرہاد بن عیاس القاجاری‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۰۰‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹۹‬ھ) ۔‪۶‬۔ لولو و‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫مرجان(نالیف‪:‬شیخ حسین بن دمحم تقی الیوری‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۹۳‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۶۹‬ھ)۔ ‪۰‬۔مییجب الیوار تخ (نالیف‪:‬شیخ‬ ‫ٔ‬ ‫دمحم ہاشم بن دمحم علی الحراسانی‪ :‬والدت تقرن یا سنہ ‪۰۰۹۰‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹۶‬ھ)۔ ‪۳‬۔ الکیرنت االحمر (نالیف‪:‬شیخ دمحم ناقر بن‬ ‫ٔ‬ ‫حسن البیرح یدی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۳۲‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹۶‬ھ)۔‪۹‬۔ میی ہی االعمال (نالیف‪:‬شیخ عیاس قمی بن دمحم رصا‪ :‬والدت‬ ‫ٔ‬ ‫سنہ ‪۰۶۰۳‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹۰‬ھ)۔‪۲‬۔ تفس المہموم(نالیف‪:‬شیخ عیاس قمی بن دمحم رصا ‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۰۳‬ھ وقات سنہ‬ ‫‪263‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٔ‬ ‫‪۰۰۹۰‬ھ)۔‪۳‬۔وقا تع االنام‪( :‬نالیف‪:‬شیخ علی بن عید الع ظیم الج یانانی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۸۶‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۲۳‬ھ)۔‪۸‬۔علی‬ ‫ٔ‬ ‫م‬ ‫االکیر ابن الشھید (نالیف‪:‬سید عید الرزاق بن دمحم المقرم‪ :‬والدت سنہ ‪۰۰۰۲‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۰۰‬ھ)۔‪۰‬۔ال لحمۃ‬ ‫ٔ‬ ‫ل‬ ‫الحس بینۃ(نالیف‪:‬شیخ مرنضی بن دمحم حسین الم طہری‪ :‬والدت سنہ ‪۰۰۰۸‬ھ وقات سنہ ‪۰۳۹۹‬ھ)۔‪۰۹‬۔ قرسان ا ھیجاء‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫(نالیف‪:‬شیخ ذ بیح ہللا بن دمحم علی المجالنی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۰۰۹‬ھ وقات سنہ ‪۰۳۹۲‬ھ) ۔‪۰۰‬۔قاموس الرجال(نالیف‪:‬شیخ دمحم تقی‬ ‫بن کاطم الیسیری‪ :‬والدت سنہ ‪۰۰۶۹‬ھ وقات سنہ ‪۰۳۰۹‬ھ)۔‬ ‫ٔ‬ ‫درج ذنل کیب میں مورخین ئے ح یاب لیلی کے کرنال میں جاضر ہوئے کو نا فیول قرمانا ہے‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫‪۰‬۔ االق یال (نالیف‪:‬ابن طاوس سید علی بن موسی‪ :‬والدت سنہ ‪۹۸۰‬ھ وقات سنہ ‪۲۲۳‬ھ)۔‪۶‬۔ ثور العین قی مشھد الحسین‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫(نالیف‪:‬شیخ تعقوب بن اسجاق االسقراپینی‪ :‬والدت سنہ ‪۶۰۹‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۲‬ھ) ۔‪۰‬۔االعانی (نالیف‪:‬علی بن حسین‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫(اثو القرج) االصقہانی‪ :‬والدت سنہ ‪۶۸۳‬ھ وقات سنہ ‪۰۹۲‬ھ)۔‪۳‬۔ میاقب ال ابت طالب(نالیف‪:‬شیخ دمحم بن علی(ابن‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫شہر اسوب) المازندرانی‪ :‬والدت سنہ ‪۳۸۸‬ھ وقات سنہ ‪۹۸۸‬ھ) ۔‪۹‬۔ روضۃ الشہداء (نالیف‪:‬مال حسین بن علی‬ ‫ٔ‬ ‫الکاسانی‪ :‬والدت تقرن یا سنہ ‪۸۰۹‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹‬ھ)۔‪۲‬۔پہذنب القوادح الحس بینۃ (نالیف‪:‬شیخ حسین بن دمحم الرازی‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫والدت سنہ ۔۔۔۔ وقات سنہ ‪۰۶۰۲‬ھ)۔‪۳‬۔ اشرار الشہادۃ (نالیف‪:‬شیخ اعا بن عاند الدرن یدی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۹۸‬ھ وقات‬ ‫ٔ‬ ‫م‬ ‫سنہ ‪۰۶۸۹‬ھ)۔‪۸‬۔ ھیج االچزان(نالیف‪:‬شیخ حسن بن دمحم علی الیزدی‪ :‬والدت تقرن یا سنہ ‪۰۰۸۸‬ھ وقات سنہ‬ ‫ٔ‬ ‫‪۰۶۳۹‬ھ)۔‪۰‬۔نذکرۃ الشھداء(نالیف‪:‬شیخ حییب ہللا بن علی مدد الکاسانی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۲۶‬ھ وقات سنہ‬ ‫ٔ‬ ‫‪۰۰۹۰‬ھ)۔‪۰۹‬۔ذخیرۃ الداربن(نالیف‪:‬سید عید المج ید بن دمحم رصا الحسینی ‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۸۹‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۹۲‬ھ)۔‪۰۰‬۔ معالی‬ ‫ٔ‬ ‫السب طین (نالیف‪:‬شیخ دمحم مہدی بن عید الہادی المازندرانی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۰۰‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۸۳‬ھ)۔‪۰۶‬۔ اشرار الشھادۃ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫(نالیف‪:‬شیخ دمحم بن دمحم مہدی االشرقی‪ :‬والدت سنہ ‪۰۶۰۰‬ھ وقات سنہ ‪۰۰۰۹‬ھ)۔‪۰۰‬۔ مشھد الحسین (نالیف‪:‬شیخ عید المج ید‬ ‫بن حم ید الھر‪ :‬والدت سنہ ‪۰۰۶۸‬ھ وقات سنہ ‪۰۳۹۰‬ھ)۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے م طالب ئر دفیق تحفیق و ئررسی کے‬ ‫ے گئ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے قرت فین کی کیب میں ن یان کئ‬ ‫ٓ‬ ‫تعد یہ پییجہ اجذ قرمانا کہ ح یاب لیلی امام حسین علنہ السالم کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں اپ کے اکلوئے قرزند ع لی‬ ‫‪264‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬حس کے تعد اپ ئے اسیری کی مشکالت کو تحمل قرمانا اور‬ ‫ے گئ‬ ‫اکیر اور اپ کے سوہر امام حسین علیہما السالم شہید کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئر اپ اکیر گریہ و نکاء کربیں پہاں نک کہ ‪ ۳‬رببع الیانی سنہ ‪۲۰‬ھ کو مدن یہ‬ ‫ے کے ساتھ مدنیہ وانس لوبیں‪ ،‬مدنیہ لو بئ‬ ‫قا قل‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫میورہ میں اس دار قانی کو وداع کر گئیں‪ ،‬طاہرا اپ کو جیت ال فبع میں دق یانا گیا ہے۔‬

‫لیلی بیت مسعود بن جالد بن مالک بن رتعی بن سلم الیھسلنۃ الدارمنۃ الییمنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب لیلی بیت مسعود ق یل از سنہ ‪۶۶‬ھ میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کا عقد حصرت علی سے تقرن یا سنہ ‪۰۲‬ھ کو شہر نصرہ میں ہوا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت علی علنہ السالم سے اپ کو عید ہللا االضعر (والدت‪ :‬سنہ ‪۰۳‬ھ‪ ،‬شہادت‪ :‬سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنالء)‪ ،‬اثونکر (والدت‪:‬‬ ‫سنہ ‪۰۸‬ھ‪ ،‬شہادت‪ :‬سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنالء)‪ ،‬عت ید ہللا (والدت‪ :‬سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت‪ :‬سنہ ‪۲۳‬ھ ی مقام مزار) نامی بین قرزند‬ ‫میولد ہوئے۔‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت علی کی شہادت کے تعد سعیان سنہ ‪۳۰‬ھ میں اپ ئے ح یاب عید ہللا بن جعقر طیار سے عقد قرمانا جن‬ ‫ٓ‬ ‫سے موسی‪ ،‬ہارون‪ ،‬حتنی‪ ،‬ام ابیھا میولد ہوئے‪ ،‬مورخ مازندرانی ئے اپ کا نذکرہ کرنال میں جاضر ہوئے والی جوابین میں کیا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ی‬ ‫ہے‪ ،‬اپ کی وقات مدنیہ میں وا فع ہونی اور فوی اجتمال یہ ہے کہ اپ کو جیت ال فبع میں دق یانا گیا ہو۔‬

‫ملیکۃ بیت االجیف بن القیس بن معاویۃ بن حصین السعدیۃ الییمنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب ملیکہ تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے والد کا نام صجاک نا صحر اور کییت اثو تحر تھی اور اجیف اپ کا لقب‬ ‫ے۔‬ ‫ے والوں میں سے تھ‬ ‫تھا‪ ،‬جو رسول گرامی قدر کےصجانی اور اہلییت اظہار کے جا ہئ‬

‫‪265‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ح یاب ملیکہ کا عقد امام حسن علنہ السالم سے ہوا جن سے اثونکر(والدت تقرن یا سنہ ‪۳۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنالء) اور‬ ‫ٓ‬ ‫ام الحسن الوسطی( والدت سنہ ‪۳۶‬ھ ) ن یدا ہوئے‪،‬صاحب کیاب معالی(‪ )1‬ئے اپ کا نذکرہ کرنال میں جاضر ہوئے والی‬ ‫جوابین کے ذنل میں کیا ہے۔‬

‫ملیکۃ المدنیۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب ملیکہ تقرن یا سنہ ‪۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ سیدہ رناب بیت امریء القیس کی کبیز تھیں کہ جو امام حسین علنہ السالم‬ ‫ے کہ جن کا نام‬ ‫ے معین کی گئیں‪ ،‬ح یاب رناب کے انک اور عالم ت ھ‬ ‫سے عقد کے تعد ان کی جدمت گزاری کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫عفنہ بن شمعان تھا‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے اپ کا عقد عفنہ(‪ )2‬سے قرمانا‪ ،‬یہ دوثوں کرنال نشرتف الئے چہاں ح یاب‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ کے سوہر کی شہادت کے مبعلق مورخین کے درمیان اح یالف نانا جانا ہے تعض‬ ‫ملیکہ ئے اسیری کے شیم شہ‬ ‫ٓ‬ ‫ئے اپ کو شہداء میں اور تعض دنگر ئے اشرائے کرنال میں سامل کیا ہے۔‬

‫میمویہ بیت علی بن ابت طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ح یاب میمویہ بیت علی تقرن یا سنہ ‪۶۰‬ھ کو میولد ہوبیں ‪ ،‬تقرن یا سنہ ‪۰۲‬ھ میں اپ کا عقد ح یاب عید ہللا االکیر بن قیل الہاشمی‬ ‫ع‬ ‫(والدت‪ :‬تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام کرنالء) سے ہوا جن سے رفنہ ( والدت‪:‬سنہ ‪۰۳‬ھ)‪ ،‬ق یل (‬ ‫والدت‪:‬سنہ ‪۰۸‬ھ) اور ام کلیوم( والدت‪:‬سنہ ‪۰۰‬ھ) ن یدا ہوئے۔‬

‫‪ - 1‬دمحم مہدی بن عید الہادی المازندرانی۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪ - 2‬انساء ہللا اپ کا نذکرہ معحم انصار حسین غیر الہاشمئین کے ذنل میں کیا جائے گا۔‬

‫‪266‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫اپ دوثوں زن و سوہر کرنال میں جاضر ہوئے ح یکہ کسی تھی ق یل میں اپ کی اوالد کے جاضر ہوئے کا نذکرہ پہیں ملیا‪ ،‬حس‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے اپ کی اوالد ابی قال کر گنی ہو‪،‬ح یاب عید ہللا االکیر بن ق یل کرنال میں شہید ہوئے‬ ‫سے یہ اجتمال ہونا ہے کہ کرنال سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫اور اپ کی زوجہ میمویہ ئے سیدہ زبیب سالم ہللا علیہا کے ساتھ نمام اسیری کی سحییوں کو تحمل قرمانا۔‬

‫میمویہ ام عید ہللا بن ت ق ظر الحمیری‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب میمویہ ق یل از سنہ ‪ ۹‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ حصرت علی کے گھر کی جادمہ تھیں‪ ،‬انسی جادمہ کہ جو کبیز یہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫تھیں‪ ،‬اپ ئے امام حسین علنہ السالم کی والدت سے اپ کی جدمت کی‪ ،‬شہادت حصرت زہرا سالم ہللا علیہا کے تعد‬ ‫ٓ‬ ‫اپ امام حسین علنہ السالم کے گھر میی قل ہوبیں‪ ،‬پہاں نک کہ امام عالی مقام کے ساتھ کرنال نشرتف البیں کہ چہاں‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫اپ ئے اسیری کے شیم شہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ جیہیں حب امام حسین علنہ السالم ئے خط دے کر ح یاب مسلم ابن‬ ‫اپ کے عید ہللا نامی انک قرزند تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ق یل کی طرف کوفہ روایہ کیا تھا‪ ،‬مقام قادسنہ ئر حصین بن ی میر یمیمی ئے اپ کو اسیر کرکے ابن زناد کے ناس کوفہ روایہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تعوذ ناللہ امام حسین علنہ السالم ئر سب شیم‬ ‫کردنا چہاں ابن زناد ئے اپ کو جکم دنا کہ فصر سے نمام اہل کوفہ کے سا مئ‬ ‫ے ثو اپہوں ئے لوگوں کو خ طاب کرکے قرمانا‪ :‬اے لوگو میں حسین ابن علی کا قرسیادہ ہوں‪،‬‬ ‫کربں‪ ،‬حب عید ہللا اوتجانی ئر پہیچ‬ ‫اس ابن مرجایہ کی مجالقت میں حسین ابن علی کی مدد و نصرت کرو‪ ،‬یہ شن کر ابن زناد سے رہا یہ گیا اور اس ئے جکم دنا کہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھت یک دنا جائے‪ ،‬اپ کو دار االمارہ سے تھییکا گیا‪ ،‬اتھی اپ کے ندن میں رمق حیات ناقی‬ ‫اپ کو دار االمارہ سے بیچ‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫تھی کہ عید ہللا بن عمیر ا لحمی ئے اپ کو ذ تح کردنا۔‬

‫‪267‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫تقیشہ بیت علی بن انی طالب بن عید الم طلب بن ہاشم القرسنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب تقیشہ سنہ ‪۶۶‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کی مادر گرامی کا نام ام سعیب المحزومنہ تھا‪ ،‬اپ کی اور دو سگی پہئیں تھیں کہ‬ ‫ع‬ ‫جن کا نام زبیب ضعری (والدت سنہ ‪۶۰‬ھ‪ ،‬جو زوج ٔہ دمحم بن ق یل تھیں)رفنہ ضعری (والدت سنہ ‪۶۳‬ھ‪ ،‬جو زوج ٔہ مسلم‬ ‫ع‬ ‫بن ق یل تھیں) تھا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫ح یاب تقیشہ کا عقد عید ہللا االوسط بن ق یل سے ہوا جن سے ام ق یل ن یدا ہوبیں‪ ،‬اپ امام حسین علنہ السالم کے ساتھ‬ ‫کرنال نشرتف البیں اور کرنال کی نمام سحییوں کو تحمل قرمانا۔‬

‫تق یلہ (ام انی نکر بن حسن) المدنیۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب تق یلہ کی والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۰‬ھ میں ہونی‪ ،‬اپ امام حسن علنہ السالم کی کبیز تھیں جن سے اثونکر نامی قرزند ن یدا‬ ‫ہوئے‪ ،‬کرنال میں شہید ہوئے والے قرزندان امام حسن علنہ السالم میں اثونکر کا نام تھی ملیا ہے‪ ،‬جو ابنی مادر گرامی تق یلہ‬ ‫ے۔‬ ‫کے ساتھ کرنال نشرتف الئے ت ھ‬

‫ہانیۃ الکوفنۃ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے جن کے والد عید ہللا اور‬ ‫ح یاب ہانیہ تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ کو میولد ہوبیں‪ ،‬اپ کے سوہر وہب بن عید ہللا بن عمیر الکلنی تھ‬ ‫ٓ‬ ‫والدہ قمر بیت عید الیمریۃ کرنال میں شہید ہوئے‪ ،‬ح یاب وہب ئے ‪ ۶۰‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ کوفہ میں اپ سے عقد قرمانا‪ ،‬یہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫نمام جاثوادہ اتھ محرم کو کرنال میں ا مام حسین علنہ السالم سے جا مال‪ ،‬چہاں جود ح یاب ہانیہ اور اپ کے سوہر‪ ،‬ساس اور ششر‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫شہید کئ‬ ‫ٓ‬ ‫یہ تھا ان نمام ویبیبں کا حمیصر سا ن یان کہ جن کا نذکرہ انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے کیاب معحم انصار‬ ‫ت‬ ‫الحسین الیساء کی بین جلدوں میں فصیل کے ساتھ قرمانا ہے‪،‬مصتف ئے معحم انصار الحسین میں اس نات کو نانت‬ ‫‪268‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫قرمانا ہے کہ دبن اسالم کے اصول عدالت ئر مینی ہیں لہذا ہللا کی ب ظر میں عورت اور مرد میں کونی قرق پہیں نانا جانا ‪،‬‬ ‫عیادت و ن یدگی میں ہللا کے ئزدنک یہ دوثوں انسانی ضت فیں یکساں ہیں‪ ،‬حس کا بیوت ہمیں کرنال میں جاضر ہوئے والی‬ ‫قداکار جوابین سے ملیا ہے‪ ،‬کہ جیھوں ئے مردوں کے ساتھ ساتھ ہر قشم کی قرنانی پیش کرئے میں کسی تھی قشم کی کوناہی‬ ‫ٓ‬ ‫یہ کی اور دبن اسالم کی ت قاء اور م فصد حسینی کو ئاے والی نسلوں نک میی قل قرمانا ہے۔‬ ‫ہم اس مقام ئر جالضہ کے طور ئر محیرم قاربین کی جدمت میں سات فہرسئیں پیش کرئے ہیں کہ جن سے کرنال میں جاضر‬ ‫ہوئے والی جوابین کی تعداد کو وصاحت کے ساتھ درک کیا جا سکیا ہے‪ ،‬حس کے تعد امام حسن اور امام حسین علیہما السالم کی‬ ‫ے جابیں گے۔‬ ‫ے تھی پیش کئ‬ ‫ازواج و اوالد کے دو تفس‬

‫(پہلی فہرست۔کرنال میں شہید ہوئے والی ن بت یاں)‬ ‫‪۰‬۔ ام الحسن بیت الحسن الہاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۸‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ ام الحسین بیت الحسن الہاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ عانکہ بیت مسلم الہاشمنۃ (والدت سنہ ‪۹۰‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ قمر (ام وہب ) بیت عید الیمریۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ ہانیہ الکوفنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۲‬۔ ام وہیب بیت وہب نصرانی (والدت تقرن یا سنہ ‪۶۲‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫(دوشری فہرست۔ کرنال سے ناہر شہید ہوئے والی نی نی)‬ ‫‪۰‬۔ رفنہ بیت الحسین الہاشمنۃ (والدت سنہ ‪۹۳‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام دمشق)۔‬

‫‪269‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫( پیشری فہرست۔ وہ نی ن یاں کہ جن کی کرنال میں شہادت انت ہللا کرناسی کے ئزدنک نانت پہیں)‬ ‫‪۰‬۔ ام کلیوم بیت الحسین الہاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ‪ ،‬شہادت سنہ ‪۰۰‬ھ ی مقام موصل)۔‬ ‫‪۶‬۔ جولہ بیت الحسین الہاشمنۃ (والدت ۔۔۔‪ ،‬شہادت سنہ ‪۲۰‬ھ ی مقام تعلیک)۔‬ ‫‪۰‬۔ زبیب بیت الحسین الہاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬شہادت ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ ی مقام جلب)۔‬

‫(جوتھی فہرست۔ وہ ن بت یاں کہ جن کا کرنالمیں جاضر ہونا غیر تقینی ہے)‬ ‫ُ‬ ‫‪۰‬۔ امامہ بیت انی العاص العیشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۲‬ق یل از ہحرت ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۳۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ ام سعید بیت عروہ الی قفنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪۹‬ھ ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ حمیدہ بیت انی سعید بن ق یل الہاشمنۃ (والدت ۔۔۔ ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ع‬ ‫‪۳‬۔ حمیدہ بیت عید الرجمان االکیر ابن ق یل الہاشمنۃ (والدت ۔۔۔ ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ زبیب بیت الحسن الہاشمنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪۳۰‬ھ ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۲‬۔ عانکہ بیت (سعد بن زند) العدویۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۳‬ھ ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫(ناتجوبں فہرست۔ وہ ن بت یاں کہ جو کرنال میں جاضر ہوبیں اسیر ن یانی گئیں)‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ ام اجمد بن ق یل الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ ام اسجاق بیت طلجہ الییمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۰۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ ام الحسن بیت علی الہاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ ام جدتجۃ بیت علی الہاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ ام را فع سلمہ الفتطنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪270‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۲‬۔ ام سعیب المحزومنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ ام قاطمہ بیت علی الھاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۸‬۔ ام قاشم بن دمحم الطیار (والدت ق یل از سنہ ‪۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ ام الکلیوم الصعری بیت عید ہللا الطیار الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ ام کلیوم بیت عیاس الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ ام کلیوم الکیری بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۶‬۔ ام دمحم بن اثو سعید الھاشمی (والدت ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ ئرہ بیت الیوسجان القارسنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ تحریۃ بیت مسعود الحزرجنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ جمایہ بیت انی طالب الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۰۸‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۲‬۔ ح بینہ (ام عید الرجمان بن الحسن) المعرنیۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۶۸‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫ش‬ ‫‪۰۳‬۔ حسینۃ (ام میحج بن ھم المدنی )‪( ،‬والدت ق یل از سنہ ‪۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۸‬۔ حمیدۃ بیت مسلم الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪۳۰‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۰۳۶‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ جدتجہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۹‬۔ جلیلۃ ام عید ہللا الھاشمنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۰‬۔ الجوصاء بیت ح فصہ الوانلنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪۰ ۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۶‬۔ الجوصاء بیت عمرو الھصانیۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۰‬۔ رناب بیت امریء القیس الکلینۃ (والدت سنہ ‪۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۶‬ھ)۔‬ ‫‪۶۳‬۔ رفنۃ الصعری بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۶۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۹‬۔ رملۃ الکیری بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪271‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۶۲‬۔ رملۃ (ام القاشم ابن الحسن) الرومنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۰۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۳‬۔ روضۃ (جادمۃ الرسول) المدنیۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۸‬۔ زبیب الصٖعری بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۶۰‬۔ زبیب الکیری بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۲‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۲۶‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ سکینہ بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۳۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۰۰۳‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ سالفۃ مرنیۃ االمام السجاد علنہ السالم (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫س‬ ‫‪۰۶‬۔ لمی ام الرا فع الفتطنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ ہانیۃ ( ام قاطمہ بیت الحسن) الزتجنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۹‬ق یل از ہ حرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ صفنۃ بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۹‬۔ الصھیاء بیت عیاد البعلینۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰‬ق یل از ہحرت ‪،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۲‬۔ عزالۃ ام عید ہللا (امۃ االمام السجاد) (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۹‬ھ)۔‬ ‫‪۰۳‬۔ قاجنہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰۸‬۔ قاطمہ بیت الحسن الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۳۹‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۳۹‬ھ)۔‬ ‫‪۰۰‬۔ قاطمۃ الصعری بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۹۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۰۳‬ھ)۔‬ ‫‪۳۹‬۔ قاطمۃ الصعری بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۹‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۰۶۹‬ھ)۔‬ ‫‪۳۰‬۔ قاطمہ بیت عفنۃ الحزرجنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۳‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۶‬۔ قاطمۃ الکیری بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۰۰۹‬ھ)۔‬ ‫‪۳۰‬۔ فصہ (جادمۃ الزہراء) الیونیۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات سنہ ‪۲۶‬ھ)۔‬ ‫‪۳۳‬۔ فکیھۃ (امۃ الحسین) (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۲‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۶‬ھ)۔‬ ‫‪۳۹‬۔ قفیرۃ بیت علقمۃ الھاللنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۳‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪272‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۳۲‬۔ کیشۃ المدنیۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ)۔‬ ‫‪۳۳‬۔ لیلی بیت انی مرۃ الی قفنۃ (والدت سنہ ‪ ۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۸‬۔ لیلی بیت مسعود الیھسلنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۶۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۳۰‬۔ ملیکۃ بیت االجیف الییمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۹‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹۹‬۔ ملیکۃ المدنیۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹۰‬۔ میمویہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹۶‬۔ میمویہ (ام عید ہللا بن ت ق ظر الحمیری)‪( ،‬والدت ق یل از سنہ ‪ ۰۹‬ق یل از ہحرت‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹۰‬۔ تقیشہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۶۶‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬ ‫‪۹۳‬۔ تق یلہ المدنیۃ (والدت سنہ ‪ ۶۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۰‬ھ)۔‬

‫چ‬ ‫( ھنی فہرست۔وہ نی ن یاں جو کرنال میں جاضر یہ ہو سکیں)‬ ‫‪۰‬۔ ام سلمہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۰۳‬ھ‪ ،‬وقات تقرن یا سنہ ‪۰۹‬ھ)۔‬ ‫‪۶‬۔ ام کلیوم بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۶‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ ام کلیوم الصعری بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۶۳‬ھ‪ ،‬وقات ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ)۔‬ ‫‪۳‬۔ جمایہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۰‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۳۹‬ھ)۔‬ ‫‪۹‬۔ رفنۃ الکیری بیت علی الھاشمنۃ (والدت سنہ ‪ ۰۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۳۹‬ھ)۔‬ ‫‪۲‬۔ زبیب بیت الحسین الھاشمنۃ(والدت تقرن یا سنہ ‪ ۰۰‬ھ‪ ،‬وقات ق یل از سنہ ‪۳۹‬ھ)۔‬ ‫س‬ ‫‪۳‬۔ لمی بیت ححر الکیدیۃ (والدت سنہ ‪ ۳۰‬ھ‪ ،‬وقات تعد از سنہ ‪۲۳‬ھ)۔‬ ‫‪۸‬۔ ساہ زنان بیت ئزدچرد الساسانیۃ (والدت سنہ ‪ ۰۰‬ھ‪ ،‬وقات ‪۰۰‬ھ)۔‬ ‫‪۰‬۔ قاطمۃ الوسطی بیت الحسین الھاشمۃ (والدت ق یل از سنہ ‪ ۹۹‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۰۶۲‬ھ)۔‬ ‫‪273‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫(ساثوبں فہرست۔ وہ جوابین کہ جن کے اصل وجود میں سک ہے)‬ ‫‪۰‬۔ زن یدہ بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت ۔۔۔‪ ،‬وقات ۔۔۔)۔‬ ‫‪۶‬۔ سکینہ بیت علی الھاشمنۃ (والدت ۔۔۔‪ ،‬وقات ۔۔۔)۔‬ ‫‪۰‬۔ عانکہ بیت الحسین الھاشمنۃ (والدت ۔۔۔‪ ،‬وقات ۔۔۔)۔‬

‫‪274‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ازواج و اوالد امام حسن علنہ السالم‬

‫‪275‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ازواج و اوالد امام حسین علنہ السالم‬

‫‪276‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر‬

‫کیاب "جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر " بین سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے حس کی پہلی جلد (جو کہ ‪ ۹۶۸‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۰۰۰۰‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۹‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪277‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪278‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫حسینی جواثوں کی تعبیر‬

‫ے ہیں‪ ،‬مادنات کو‬ ‫حس دن یا میں ہم زندگی نشر کرئے ہیں اس میں تعض امور مادنات اور تعض معیونات سے تعلق ر کھئ‬ ‫ے امور ہیں کہ جیہیں ضرف‬ ‫طاہری اور معیونات کو ناطنی جواس سے درک کیا جانا ہے‪ ،‬معیونات سے ماوراء تھی کجھ ا نس‬ ‫ے تھی ہیں کہ جن کا شمجھیا جلقت کی مجدودنت کی وجہ سے‬ ‫انمان کامل کے ذرتعہ شمجھا جا سکیا ہے ح یکہ کجھ اور امور ا نس‬ ‫ے مجال ہے۔‬ ‫ہمارے لئ‬ ‫ے ناطنی جواس سے درک کیا جانا ہے ح یکہ تعض جواثوں کا تعلق ماورائے‬ ‫جواب کا تعلق معیونات سے کہ حس‬ ‫ے‬ ‫معیونات سے تھی ہونا ہے اس صورت میں ان جواثوں کے اسارات کا شمجھیا ضرف ان کامل االنمان اقراد کے لئ‬ ‫ممکن ہے جن ئر ہللا تعالی کی عیانت و کرم ہونا ہے۔‬ ‫ے‪ ،‬تعنی جواب سوئے ئر موفوف ہے‪،‬‬ ‫ے انسان ناگزئر ہے کہ وہ سوئے ناکہ جواب دنکھ سک‬ ‫ے کے لئ‬ ‫جواب دیکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہللا تعالی ئے قران مج ید میں سوئے کو ابنی نسابیوں میں سے جانا ہے حصرت ناری تعالی کا ارساد ہے‪:‬‬ ‫اسی لئ‬ ‫ٓ‬ ‫و من آیاتہ منامکم باللیل و النھار ( ٔ‬ ‫سورہ روم انت ‪)۶۰‬‬ ‫یہ ہللا تعالی کی نسابیوں میں سے ہے کہ یم دن اور رات میں سوئے ہو۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں لیکن مذکورہ انت‬ ‫سوئے کو عرنی زنان میں ثوم(ثون مفیوح‪ ،‬واو میم ساکن) اور سوئے کی جگہ کو میام کہئ‬ ‫ے ہیں جی ہیں‬ ‫ے گئ‬ ‫ے ‪ ۸‬القاظ اشیعمال کئ‬ ‫میں میام سے مراد سونا ہے‪ ،‬عرنی لعت میں سوئے نا پت ید کے مرانب کے لئ‬ ‫ح قفہ(خ مفیوح‪ ،‬ف ساکن‪ ،‬ق مفیوح)‪ ،‬تعاس(ن مضموم‪ ،‬ع مفیوح‪ ،‬س ساکن) ‪ ،‬کری(ک مفیوح‪ ،‬ر مکشور‪ ،‬ی‬ ‫ساکن)‪ ،‬سنہ(س مکشور‪ ،‬ن مفیوح‪ ،‬ہ ساکن)‪ ،‬عقوۃ(غ مفیوح‪ ،‬ف ساکن‪ ،‬و مفیوح)‪ ،‬ثوم(ثون مفیوح‪ ،‬واو میم‬

‫‪279‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ساکن) ‪ ،‬رقاد(ر مضموم‪ ،‬ق مفیوح‪ ،‬الف و دال ساکن)‪ ،‬سیات(س مضموم‪ ،‬ب مفیوح‪ ،‬الف و ت ساکن) کہا جانا‬ ‫ٓ‬ ‫ہے‪ ،‬ان کلمات میں سے ل فظ تعاس‪ ،‬سنہ‪ ،‬رقاد اور سیات کا قران مج ید میں نذکرہ ہوا ہے‪،‬ہللا تعالی قرمانا ہے‪:‬‬ ‫ثم انزل علیکم من بعد الغم امنۃ نعاسا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اس کے تعد جدا ئے انک گروہ ئرسکون پت ید طاری کردی (ال عمران‪ ،‬انت ‪)۰۹۳‬‬ ‫التاخذہ سنۃ وال نوم‬ ‫ٓ‬ ‫اسے یہ پت ید آنی ہے یہ اونگھ (تقرہ‪ ،‬انت ‪)۶۹۹‬‬ ‫و تحسبھم ایقاظا و ھم رقود‬ ‫ٓ‬ ‫اور یم اپہیں دیکھو ثو ح یال کرو کہ وہ جاگ رہے ہیں جاالنکہ وہ سوئے ہوئے ہیں (کہف‪ ،‬انت ‪)۰۸‬‬ ‫وھو الذی جعل لکم اللیل لباسا و النوم سباتا‬ ‫ٓ‬ ‫ے رات کو ئردہ ثوش اور پت ید کو (ناعث) راحت ن یانا (قرقان‪ ،‬انت ‪)۳۳‬۔‬ ‫اور وہی ہے حس ئے ی مہارے لئ‬

‫پت ید کی تعرتف‪:‬‬ ‫مذکورہ نمام القاظ میں سے ہر انک کی محصوص تعرتف ہے لیکن عام طور سے پت ید کو ثوم کہا جانا ہے‪ ،‬گرجہ جود ل فظ ثوم کی‬ ‫تعرتف تھی مجلیف انداز میں کی گنی ہے‪ ،‬ققہائے کرام حب ثوم کی تعرتف کرئے ہیں ثو قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫النوم ھو الغالب علی القلب و السمع و البصر‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫پت ید وہ ہے کہ جو قلب‪ ،‬کان اور انکھ ئر عالب اجائے‪ ،‬ح یاب لقمان ئے قرمانا‪:‬‬ ‫انما النوم بمنزلۃ الموت‬ ‫پت ید موت کی طرح ہے‪ ،‬امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫فاذا نامت العینان و االٔذنان انتقض الوضو‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں اور اس جالت میں داجل ہوئے سے وصو ثوٹ جانا ہے‪ ،‬اور‬ ‫تعنی حب انکھ اور کان دوثوں سو جابیں ثو اسے پت ید کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کی وجہ کو امام رصا علنہ السالم کی اس روانت سے شمجھا جا سکیا ہے کہ چہاں اپ ئے قرمانا‪:‬‬ ‫وصو کے ثو بئ‬ ‫النائم اذا غلب علیہ النوم یُفتح کل شیء منہ و استرخی‬ ‫ع‬ ‫حب انسان سونا ہے ثو اس کے ندن کے سارے مجارج کھل کر شست ئڑ جائے ہیں( لل الشرا تع ص فجہ ‪ ،)۶۹۳‬حس‬ ‫کی وجہ سے ئے احت یاری طور ئر تجوں میں تجاست اور ئڑوں میں ر تح جارج ہوجانی ہے۔‬ ‫‪280‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫پت ید کا قلسفہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اب رہی نات پت ید کے قلسفہ کی ثو پت ید کا م فصد ارام و اسانش کا حصول اور تجدند فوا ہے تعنی دن تھر کی تھکان دور کرئے‬ ‫ے ہللا تعالی ئے پت ید کو ہم ئر مقرر قرمانا ہے اور سونا انک انسی ف ظری نات ہے کہ جو نمام جانداروں جنی ن یانات و‬ ‫کے لئ‬ ‫ے امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫غیرہ میں تھی نانی جانی ہے‪ ،‬اسی لئ‬ ‫ما من حی اال وھو ینام خال ہللا وحدہ عز وجل‬ ‫ے ہللا تعالی‬ ‫کونی انسی حیات ہی پہیں کہ جو یہ سونی ہو سوائے جدائے واجد کے(سقینۃ الیجار جلد ‪ ۸‬ص فجہ ‪ ،)۰۹۰‬اسی لئ‬ ‫ے مبعلق قرمانا ہے‪:‬‬ ‫ئےا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ال تاخذہ سنۃ و ال نوم (تقرہ‪ ،‬انت ‪)۶۹۹‬‬ ‫ے امور کی ندنیر پہیں کرسکیا لہذا اگر جدا سو جائے ثو عالم ندنیر ال ہی سے‬ ‫اسے یہ پت ید آنی ہے یہ اونگھ‪ ،‬جونکہ انسان پت ید میں ا بئ‬ ‫گ‬ ‫جارج ہو کر ن یاہ ہو جائے گا‪ ،‬لہذا ہللا کی ذات یہ سونی ہے اور یہ ہی اوی ھنی ہے نلکہ وہ لوگ جو سوئے ہیں ان کے امور کی‬ ‫ندنیر تھی ہللا تعالی کے ہاتھوں میں ہونی ہے۔‬

‫سوئے کے اوقات‪:‬‬ ‫ے اہتمام‬ ‫حصرت اجدنت کا ہم ئر یہ لطف و کرم ہے کہ اس ئے پت ید کے ساتھ ساتھ اس کے وقت کا تھی ہمارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا ہے‪ ،‬اس سلسلہ میں ناری تعالی کا قران مج ید میں ارساد ہے‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ہللا الذی جعل لکم اللیل لتسکنوا فیہ و النھار مبصرا (عاقر‪ ،‬انت ‪)۲۰‬‬ ‫ے دن کو روشن ن یانا (ناکہ اس‬ ‫ے کے لئ‬ ‫ے رات ن یانی ناکہ اس میں آرام کرو اور دیکھئ‬ ‫وہ جدا ہی ہے حس ئے ی مہارے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫میں کام کرو)‪ ،‬اسی طرح انک اور انت میں قرمانا‪:‬‬ ‫ٔ ٓ‬ ‫و جعلنا نومکم سباتا‪ ،‬وجعلنا اللیل لباسا‪ ،‬و جعلنا النھار معاشا (ن یا‪ ،‬انت ‪۰‬۔‪)۰۰‬‬

‫‪281‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اور ہم ئے ی مہاری پت ید کو آرام کا سامان قرار دنا ہے‪ ،‬اور رات کو ئردہ ثوش ن یانا ہے‪ ،‬اور دن کو وقت معاش قراردنا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے مقرر قرمانا ہے‪،‬‬ ‫ے اور رات کو ارام کے لئ‬ ‫مذکورہ دوثوں انات سے واصح ہے کہ ہللا تعالی ئے دن کو کام کاج کے لئ‬ ‫لہذا روانات کی رو سے سوائے ق یلولہ کے دن میں سونا مذموم ہے ۔‬ ‫ٓ‬ ‫رسول گرامی قدر سے انک جامع روانت ت قل ہونی ہے کہ حس میں اپ ئے دن میں سوئے کے نا ت چ‬ ‫اوقات کی طرف اسارہ کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫ان النوم فی النھار علی خمسۃ اقسام‪ ،‬نوم العیلولۃ و نوم الفیلولۃ و نوم القیلولۃ و نوم الحیلولۃ و نوم‬ ‫الغیلولۃ (السعۃ و الرزق ص فجہ ‪)۰۹‬‬ ‫دن میں سونا نا تچ قشموں ئر مشتمل ہے‪ ،‬عیلولہ‪ ،‬ق یلولہ‪ ،‬ق یلولہ‪ ،‬حیلولہ‪ ،‬ع یلولہ‪ ،‬ہم پہاں اجمال کے ساتھ ان ناموں کے‬ ‫معانی ن یان کرئے ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ حس کے معنی مجیاحی کے ہیں حصرت‬ ‫‪۰‬۔ عیلولہ‪ :‬طلوع فحر سے طلوع اق یاب کے درمیان سوئے کو عیلولہ کہئ‬ ‫علی علنہ السالم قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫النوم قبل طلوع الشمس یورث الفقر‬ ‫ے سوجانا ققر کا ناعث ہے‪ ،‬دوشری جدنث میں وارد ہوا ہے کہ‪:‬‬ ‫تعنی طلوع جورس ید سے پہل‬ ‫ان النوم قبل طلوع الشمس و قبل صالة العشاء یورث الفقر و شتات االمر‬ ‫ٓ‬ ‫ے سونا ققر کا ناعث ہے حس سے انسان کے امور ئراکیدہ ہو ئے ہیں۔‬ ‫پیسک طلوع اق یاب اور نماز عساء سے پہل‬

‫ے ہیں‪ ،‬حس کی وجہ سے حسیگی و ضعف انسان کے ندن ئر طاری ہو نا ہے‪،‬‬ ‫‪۶‬۔ ق یلولہ‪ :‬تعد از طلوع شمس سوئے کو ق یلولہ کہئ‬ ‫ے مق ید جانا ہے لہذا کام کے وقت سونا مذموم ہے۔‬ ‫ے اطیاء ئے اس وقت کو کام کاج کے لئ‬ ‫اسی لئ‬

‫‪282‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ق یلولہ انسا ممدوح عمل ہے کہ حس کے نارے میں‬ ‫ے سوئے کو قلیلولہ کہئ‬ ‫‪۰‬۔ ق یلولہ‪ :‬زوال اق یاب سے کجھ دئر پہل‬ ‫روانات میں وارد ہوا ہے‪ :‬القیلولۃ من الغناء ق یلولہ عنی ہوئے کا شنب ہے۔‬ ‫جونکہ انسان صیح سے اس وقت نک ن یدار رہ یا ہے لہذا اس وقت سوئے کو شرتعت اسالم ئے نسید قرمانا ہے ناکہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جا سکیں‪ ،‬اور اس سوئے کی مدت ادھے کھینہ‬ ‫ن یداری کے تعد نساط و سادانی کے ساتھ دن کے تفنہ امور اتجام د بئ‬ ‫ے مج یلف ہو سکنی ہے۔‬ ‫سے انک گھینہ ہے جوکہ ہر سحص کے لئ‬

‫ے ہیں جونکہ یہ پت ید انسان اور نماز کے درمیان جانل ہوجانی ہے۔‬ ‫‪۳‬۔ حیلولہ‪ :‬تعد از زوال کی پت ید کو حیلولہ کہئ‬ ‫ے ہیں حس کی وجہ سے تھکان اور کسالت محشوس ہونی ہے۔‬ ‫‪۹‬۔ ع یلولہ‪ :‬ق یل از عروب سوئے کو ع یلولہ کہئ‬ ‫ے امرنکہ اور‬ ‫ے دور جاضر کے ڈاکیرز تھی تجوئز کرئے ہیں‪ ،‬اسی لئ‬ ‫مذکورہ نا تچ اقسام میں سے ضرف قلیلولہ ممدوح ہے حس‬ ‫عرنی ممالک میں ‪ Morning and afternoon shift‬رکھی جانی ہے ناکہ دوپہر کے وقت کام کرئے والے‬ ‫ٓ‬ ‫قدرے ارام کرسکیں۔‬

‫پت ید کےمراجل‪:‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬مح ق فین کا کہیا ہے کہ ہر سوئے واال سحص پت ید‬ ‫ے گئ‬ ‫پت ید کے اوقات کے ساتھ ساتھ پت ید کے مراجل تھی ن یان کئ‬ ‫کے ان چھ مراجل سے گزرنا ہے‪:‬‬

‫‪۰‬۔ ی مہیدی مرجلہ‪ :‬اس مرجلہ میں سحص ئر ششنی اور عیودگی طاری ہونی ہے۔‬

‫ے ان یدانی مراجل میں ہونی ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ ہلکی پت ید ‪ :‬اس مرجلہ میں پت ید ا بئ‬ ‫‪283‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ے میں داجل ہو جانا ہے۔‬ ‫‪۰‬۔ میوسط پت ید‪ :‬اس مرجلہ میں سوئے واال سحص پت ید کے ان یدانی مراجل سے گزر کر پت ید کے مر جل‬

‫‪۳‬۔گہری پت ید‪ :‬اس مرجلہ میں سحص سو حکا ہونا ہے۔‬

‫‪۹‬۔گہری سے گہری ئر پت ید‪ :‬اس مرجلہ میں سحص ثوری طرح سو جانا ہے۔‬

‫ے اور‬ ‫ے کی مدت ‪ ۳۹‬میٹ اور جو تھ‬ ‫ے مرجلہ کو چھوڑ کر) دوشرے اور پیشرے مر جل‬ ‫حب کونی تھی انسان سونا ہے ثو ( پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے ‪ NREM‬کہاجانا‬ ‫ے کی مدت ‪ ۹۹‬میٹ ہونی ہے‪ ،‬اس ‪ ۰۹‬میٹ میں انکھ میں کسی قشم کی چرکت(کہ حس‬ ‫ناتجوبں مر جل‬ ‫ہے) پہیں نانی جانی۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہونا ہے اس مرجلہ میں انسان کی انکھ نیزی سے چرکت‬ ‫‪۲‬۔ حس کے تعد چھیا مرجلہ ا نا ہے کہ جو ضرف ‪ ۰۹‬میٹ کے لئ‬ ‫ے ہیں)۔ اس دس میٹ میں ذہن کی امواج تھی غیر مرنب ہوجانی ہیں حس کے فوری‬ ‫ے ‪ Ren‬کہئ‬ ‫کرنی ہے (کہ حس‬ ‫ے اورناتجوبں مراجل طے کرنا ہے‪ ،‬اور یہ مراجل نار نار نکرار ہوئے ہیں‪ ،‬پہاں‬ ‫تعد انسان تھر سے دوشرے‪ ،‬پیشرے‪ ،‬جو تھ‬ ‫نک کے انسان جواب سے ن یدار ہوجائے( ‪)1‬۔‬

‫‪ -1‬پت ید کے مراجل کی یہ تحفیق قلورنڈا ثوبیورشنی ئے پیش کی ہے۔‬

‫‪284‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫کس پہلو سونا جائے؟‬ ‫ے کے ساتھ ساتھ ہمیں یہ تھی جان یا ضروری ہے کہ کس پہلو سونا جائے‪ ،‬اس سلسلہ میں‬ ‫سوئے کے مرانب کے جا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حصور دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ وسلم کی جدنث قانل عور ہے کہ حس میں اپ ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا علی النوم اربعۃ‪ :‬نوم االنبیاء علی افقیتھم‪ ،‬و نوم المومنین علی ایمانھم‪ ،‬و نوم الکفار و المنافقین علی‬ ‫ایسارھم‪ ،‬و نوم الشیاطین علی وجوھھم (تجار االثور جلد ‪ ۳۳‬ص ف ٔجہ ‪)۹۹‬‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫اے علی سوئے کے نا تچ طر تف‬ ‫ے پہلو سونا جوکہ مومئین کا طرتف ٔہ کار ہے۔‪۰‬۔نابیں پہلو سونا جوکہ کقار و‬ ‫‪۰‬۔ پییھ کے نل سونا جو کہ اپت یاء کا سعار ہے۔‪۶‬۔دا ہئ‬ ‫میاق فین کار کردار ہے۔‪۳‬۔بیٹ کے نل سونا جوکہ س یاطین کا انداز ہے۔‬ ‫ے پہلو سونا ممدوح ہے‪،‬اطیاء و ڈاکیرز تھی اسی طرح سوئے کو‬ ‫حصور کی اس جدنث میارکہ کی روشنی میں پییھ کے نل اور دا ہئ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫تجوئز کرئے ہیں اور بیٹ کے نل نا نابیں پہلو سوئے کو بتمارثوں کی وجہ قرار د بئ‬

‫جواب کی تعرتف‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫ے ہیں کہ جواب کے نارے میں اسالم کیا کہیا ہے‪ ،‬اس سے پہل‬ ‫ےدیکھئ‬ ‫مذکورہ نمام م طالب کا پت ید سے تعلق تھا اب ا بئ‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫کہ ہم جواب کے مبعلق قرانی انات و اجادنث کو پیش کربں‪ ،‬تھوڑی سے گق یگو ل فظ جواب ئر تھی کرئے ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫جواب کو عرنی زنان میں رونا کہا جانا ہے جو الرای سے مستق ہے‪ ،‬اور مصدر الرای کا تعلق کیھی انکھ سے کیھی عقل سے‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‬ ‫اور کیھی روح سے ہونا ہے‪ ،‬حب انکھ سےتعلق ہو ثو ہم کہئ‬ ‫رأیت الکتاب مفتوحا‬ ‫تعنی میں ئے کیاب کو کھال ہوا دیکھا‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں‬ ‫حب مصدر الرای کا تعلق عقل سے ہو ثو ہم کہئ‬ ‫ر ٗایت الرجل عالما‬

‫‪285‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫میں ئے اس مرد کو عالم نانا‬ ‫ے ہیں‬ ‫اور حب اس مصدر کا تعلق روح سے ہو ثو ہم کہئ‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫رانت جلما او رونا‬ ‫بں ئے جواب دیکھا‬ ‫پ ہی وجہ ہے کہ حب مصدر الرای سے م فصود دیکھیا مراد ہو ثو ل فظ رونت اور حب اس سے م فصود جواب ہو ثو رونا اور‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫حب اعی قاد و علم ہو ثو اسے رائے کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫جواب قران کی رو سے‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ ٓ‬ ‫کل ٔ‬ ‫مہ رونا قران مج ید میں ‪ ۳‬مقامات ئر اشیعمال ہوا ہے‪ ،‬ح یکہ دو اور ل فظ تعنی جلم اور میام تھی قران مج ید میں وارد ہوئے ہیں‬ ‫جو ل فظ رونا کے میرادف ہیں میال ہللا تعالی ئے حصرت ائراہیم کے کالم کو ت قل کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫قال یا بنی انی اری فی المنام انی اذبحک‬ ‫ٓ‬ ‫اے پت یا میں ئے جواب میں دیکھا کہ میں ی مہیں ذ تح کر رہا ہوں(صاقات‪ ،‬انت ‪)۰۹۶‬‬ ‫قالوا اضغاث احالم و ما نحن بتاویل االحالم بعالمین‬ ‫ے جواثوں کی تعبیر سے نا خیر پہیں ہیں(ثوسف‪ )۳۳ ،‬۔‬ ‫ان لوگوں ئے کہا کہ یہ ثو انک جواب ئرنسان ہے اور ہم ا نس‬ ‫ٔ‬ ‫ے اور جلم چھوئے جواثوں کو کہا جانا ہے‬ ‫لیکن ان پییوں القاظ کے معانی میں قرق نانا جانا ہے‪ ،‬اکیر اوقات رونا سچ‬ ‫ے ہیں لیکن یہ ل فظ جواب کے معنی میں ت ھی اشیعمال ہونا ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر اجمال کے‬ ‫اور میام سوئے کی جگہ کو کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫ساتھ ان سات انات کا نذکرہ کرئے ہیں کہ حس میں ل فظ رونا نا اس کے مست قات اشیعمال ہوئے ہیں‪:‬‬

‫‪۰‬۔ قال یا بنی انی أری فی المنام انی اذبحک‬ ‫ٓ‬ ‫اے پت یا میں ئے جواب میں دیکھا کہ میں ی مہیں ذ تح کر رہا ہوں(صاقات‪ ،‬انت ‪)۰۹۶‬۔‬

‫‪286‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۶‬۔ اذ قال یوسف البیہ یا ابت انی رأیت احد عشر کوکبا و الشمس و القمر رأیتھم لی ساجدین‪ ،‬قال یا بنی‬ ‫رویاک علی اخوتک فیکیدوا لک کیداان الشیطان لالنسان عدو مبین‬ ‫ال تقصص ٔ‬ ‫ے والد سے کہا کہ نانا میں ئے جواب میں گیارہ سیاروں اور آق یاب و ماہ یاب کو‬ ‫اس وقت کو ناد کرو حب ثوسف ئے ا بئ‬ ‫ے‬ ‫ے سجدہ کررہے ہیں تعقوب ئے کہا کہ پت یا خیردار ان یا جواب ا بئ‬ ‫دیکھا ہے اور یہ دیکھا ہے کہ یہ سب میرے سا مئ‬ ‫تھابیوں سے ن یان یہ کرنا کہ وہ لوگ ی مہارے نارے میں النی سیدھی ندنیروں میں لگ جابیں گے کہ تقت یا شب طان انسان‬ ‫ٓ‬ ‫کا ئڑا کھال ہوا دشمن ہے (ثوسف انت ‪۳‬۔‪)۹‬۔۔۔‬ ‫و رفع ابویہ علی العرش و خروا لہ سجدا و قال یا ابت ھذا تأویل ر ٔویای من قبل قد جعلھا ربی حق‬ ‫ے سجدہ میں گر ئڑے ثوسف ئے کہا‬ ‫اور اپہوں ئے والدبن کو نلید مقام ئر تجت ئر جگہ دی اور سب لوگ ثوسف کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میرے ئروردگار ئے سچ کر دکھانا ہے (ثوسف‪ ،‬انت ‪)۰۹۹‬۔‬ ‫ے جواب کی تعبیر ہے حس‬ ‫کہ نانا یہ میرے پہل‬

‫‪۰‬۔ و دخل معہ السجن فتیان قال احدھما انی ارانی اعصر خمرا و قال االٓخر انی ارانی احمل فوق راسی‬ ‫خبزا تاکل الطیر منہ نبئنا بتاویلہ انا نراک من المحسنین‬ ‫ے کو شراب تجوڑئے دیکھا‬ ‫ور ق ید جایہ میں ان کے ساتھ دو جوان اور داجل ہوئے انک ئے کہا کہ میں ئے جواب میں ا بئ‬ ‫ے شر ئر رون یاں الدے ہوں اور ئرندے اس میں سے کھارہے‬ ‫ہے اور دوشرے ئے کہا میں ئے دیکھا ہے کہ میں ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہیں‪ ،‬ذرا اس کی ناونل ثو ن یاؤ کہ ہماری ب ظر میں یم ن یک کردار معلوم ہوئے ہو (ثوسف‪ ،‬انت ‪)۰۲‬۔‬

‫‪۳‬۔ اذ یریکھم ہللا فی منامک قلیال ولو اراکھم کثیرا لفشلتم ولتنازعتم فی االمر و لکن ہللا سلم انہ علیم‬ ‫بذات الصدور‬ ‫ے) حب آپ کو ہللا ئے آپ کے جواب میں ان کاقروں (کے لسکر) کو تھوڑ ا کر کے دکھانا تھا اور اگر‬ ‫(وہ وافعہ ناد دال بئ‬ ‫ً‬ ‫ے میں‬ ‫(ہللا) آپ کو وہ زنادہ کر کے دکھانا ثو (اے مسلماثو!) یم ہمت ہار جائے اور یم تقت یا اس (ح یگ کے) معا مل‬

‫‪287‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫چ‬ ‫ے لیکن ہللا ئے (مسلماثوں کو ئزدلی اور ناہمی ئزاع سے) تجا لیا۔ پیسک وہ شییوں کی ( ھنی) ناثوں کو‬ ‫ناہم چھگڑئے لگئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے واال ہے (ات قال‪ ،‬انت ‪)۳۰‬۔‬ ‫جوب جا بئ‬ ‫‪۹‬۔ قال الملک انی اری سبع بقرات سمان یاکلھن سبع عجاف و سبع سنبالت خضر و اخر یابسات یا مالٔ‬ ‫للرویا تعبرون‬ ‫رویای ان کنتم ٔ‬ ‫افتونی فی ٔ‬ ‫ک‬ ‫اور تھر انک دن نادساہ ئے لوگوں سے کہا کہ میں ئے جواب میں سات مونی گابیں دی ھی ہیں جیہیں سات ن یلی گابیں‬ ‫کھائے جارہی ہیں اور سات ہری نازی نالیاں دیکھی ہیں اور سات حسک نالیاں دیکھی ہیں یم سب میرے جواب‬ ‫ٓ‬ ‫کے نارے میں رائے دو اگر ی مہیں جواب کی تعبیر کا علم ہو ثو (ثوسف‪ ،‬انت ‪)۳۰‬۔‬

‫رووسکم و‬ ‫الرویا بالحق لتدخلن المسجد الحرام ان شاء ہللا آمنین محلقین ٔ‬ ‫‪۲‬۔ لقد صدق ہللا رسولہ ٔ‬ ‫مقصرین ال تخافون فعلم ما لم تعلموا فجعل من دون ذالک فتحا قریبا‬ ‫ے رسول کو نالکل سجا جوب دکھالنا تھا کہ جدا ئے جاہا ثو یم لوگ مسجد الحرام میں امن و سکون کے ساتھ‬ ‫پیسک جدا ئے ا بئ‬ ‫شر کے نال میڈا کر اور تھوڑے سے نال کاٹ کر داجل ہوگے اور ی مہیں کسی طرح کا جوف یہ ہوگا ثو اسے وہ تھی معلوم‬ ‫تھا جو ی مہیں پہیں معلوم تھا ثو اس ئے ( فیح ّ‬ ‫ے) انک قربنی فیح قرار دے دی( فیح‪)۶۳ ،‬۔‬ ‫مکہ سے پہل‬

‫الرویا التی أریناک اال فتنۃ للناس و الشجرة المعلونۃ فی القرآن و نخوفھم فما یزیدھم اال‬ ‫‪۳‬۔ و ما جعلنا ٔ‬ ‫طغیانا کبیرا‬ ‫(اے رسول وہ وقت ناد کرو) حب ہم ئے آپ سے کہا تھا کہ آپ کے ئروردگار ئے لوگوں کو گھیرے میں لے لیا‬ ‫ے‬ ‫ہے اور جو مت ظر ہم ئے آپ کو دکھانا تھا اس کو اور اس سحرہ کو حس ئر قرآن میں لعیت کی گنی ہے‪ ،‬ہم ئے لوگوں کیلئ‬ ‫ٓ‬ ‫آزمانش کا ذرتعہ ن یانا ہے اور ہم اپہیں ڈرائے ہیں مگر یہ ڈرانا ان کی شرکسی میں اصافہ ہی کر رہا ہے (االشراء‪ ،‬انت‬ ‫‪)۲۹‬۔‬

‫‪288‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جواب اجادنث کی رو سے‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ حصور اور ای مہ اظہار‬ ‫ے دیکھئ‬ ‫ے وہ سات موارد کہ حس میں ہللا تعالی ئے جواب کا نذکرہ قرمانا ہے‪ ،‬اب ا بئ‬ ‫یہ تھ‬ ‫ئے اس سلسلہ میں کیا قرمانا ہے‪ ،‬رسول گرامی قدر قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫رویا من الشیطان‬ ‫رویا من الملک و ٔ‬ ‫رویا من ہللا و ٔ‬ ‫الر ٔویا ثالث‪ٔ :‬‬ ‫جواب بین طرح کے ہوئے ہیں انک وہ جواب ہے کہ جو ہللا کی طرف سے دوشرا وہ جواب ہے جو مالنکہ کی طرف سے‬ ‫اور پیشرا وہ جواب ہے جو ش ب طان کی جانب سے ہونا ہے(نار تخ ابن جلدون جلد ‪ ۰‬ص فجہ ‪)۰۹۳‬۔‬ ‫انک اور جدنث شرتف میں رسول گرامی قدر قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫الر ٔویا علی ثالثۃ‪ :‬منھا تخویف من الشیطان لیحزن بہ ابن آدم‪ ،‬و منھا االٔمر یحدث بہ نفسہ فی الیقظۃ‬ ‫فیراہ فی المنام‪ ،‬و منھا جزء من ستۃ و اربعین جزء من النبوة‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہونا ہے‪ ،‬دوشرا‬ ‫جواب بین طرح کے ہوئے ہیں انک وہ کہ جو شب طان کی طرف سے بنی ادم کو ئرنسان کرئے کے لئ‬ ‫وہ کہ جو انسان روز مرہ کے جاالت کے پیش ب ظر دیکھیا ہے اور پیشرا وہ جواب ہونا ہے جو اچزائے بیوت میں سے‬ ‫چھیالیشواں (‪ )۳۲‬چزو ہے(تجار االثوار جلد ‪ ۹۸‬ص فجہ ‪)۰۰۰‬۔‬ ‫اسی طرح حصور ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ال نبوة بعدی اال المبشرات قالوا یا رسول ہللا ما المبشرات؟ قال‪ :‬الر ٔویا الصالحۃ یراھا الرجل او تری لہ۔‬ ‫(میرے تعد بیوت جیم ہوجائے گی‪ ،‬سوائے میشرات کے‪ ،‬لوگوں ئے ثوچھا نا رسول ہللا میشرات کیا ہیں؟ ثو حصور ئے‬ ‫ے گا نا اس کے نارے میں دیکھا جائے گا(دار السالم جلد ‪ ۰‬ص فجہ‬ ‫قرمانا وہ ن یک جواب کہ جیہیں میرے تعد سحص د یکھ‬ ‫‪)۰۲‬۔‬

‫جواب کی ان یداء‬ ‫امام موسی کاطم علنہ السالم جواب کی ان یداء کے مبعلق قرمائے ہیں‪:‬‬

‫‪289‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ان االحالم لم تکن فی ما مضی فی اول الخلق‪ ،‬و انما حدثت۔۔۔فقال‪ :‬ان ہللا عز ذکرہ‪ ،‬اراد ان یحتج‬ ‫علیکم بھذا‪ ،‬ھکذا تکون ارواحکم اذا متم‪ ،‬و ان بلیت ابدانکم تصیر االرواح الی عقاب حتی تبعث االبدان۔‬ ‫ے لیکن تعد میں ہللا تعالی ئے جواب کے ذرتعہ حجت قایم کرکے یہ ن یال دنا کہ حس‬ ‫ے تھ‬ ‫ان یداء میں لوگ جواب پہیں دیکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہو اسی طرح موت کے تعد ی مہاری ارواح وجود میں ابیں گی‪ ،‬ح یکہ ی مہارے ندن‬ ‫ے اپ کو دیکھئ‬ ‫طرح جواب میں یم ا بئ‬ ‫ثوسیدہ ہوجابیں گے لیکن ی مہاری ارواح چزاء و شزا نابیں گی (تجار االثوار جلد ‪ ۹۸‬ص ف ٔجہ ‪ ،۰۸۰‬کاقی جلد ‪ ۸‬ص فجہ ‪)۳۹‬۔‬

‫ے اور چھوئے جواب‬ ‫سچ‬

‫ے اور چھوئے جواثوں کے مبعلق امام صادق علنہ السالم انک طونل جدنث میں قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫سچ‬ ‫اما الکاذبۃ المخلفۃ فان الرجل یراھا فی اول لیلۃ ۔۔۔ و اما الصادقۃ اذا رآھا بعد الثلثین من اللیل ۔۔۔ و ذلک‬ ‫قبل السحر فھی صادقۃ ال تخلف ان شاء ہللا اال ان یکون جنبا او یکون علی غیر طھر او لم یذکر ہللا عز و‬ ‫جل حقیقۃ ذکرہ فانھا تخلف و تبطیء علی صاحبھا‬ ‫ے جائے واال جواب سجا‬ ‫انسان چھونا جواب رات کے ان یدانی حصہ میں دیکھیا ہے۔۔۔ لیکن دوپہانی رات کے تعد د یکھ‬ ‫ے کا وقت ہے کہ حس میں جواب چھونا‬ ‫ہونا ہے۔۔۔ اور دوپہانی رات کے گزرئے سے مراد سحر کے وقت سے کجھ پہل‬ ‫پہیں ہونا‪ ،‬مگر یہ کہ سوئے واال سحص محیب نا ناناک ہو نا اس ئے اس طرح ہللا کا ذکر یہ کیا ہو کہ جو ذکر کرئے کا جق ہے ثو‬ ‫اس صورت میں جواب چھونا ہو سکیا ہے نا تھر اس کی تعبیر دئر سے وا فع ہونی ہے (تجار االثوار جلد ‪ ۹۸‬ص ‪ ،۰۰۰‬کاقی جلد‬ ‫‪ ۸‬ص ف ٔجہ ‪)۰۰‬۔‬ ‫ع‬ ‫ے ثو گونا اس ئے اپ ہی کو دیکھا‬ ‫لیکن اگر کونی سحص جواب میں رسول گرامی قدر نا ای مہ اظہار لیہم السالم کو د یکھ‬ ‫ہے‪ ،‬رسول گرامی قدر اس سلسلہ میں قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫من رآنی فی المنام فقد رآنی فان الشیطان ال یتمثل بی‬

‫‪290‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہی دیکھا جونکہ شب طان میری سکل احت یار پہیں کرسکیا (دار السالم جلد ‪ ۰‬ص فجہ‬ ‫ے جواب میں دیکھا اس ئے مجھ‬ ‫حس ئے مجھ‬ ‫‪ ،)۰۰‬دوشری جدنث میں حصور ئے قرمانا‪:‬‬ ‫الیتمثل بی فی النوم و ال الیقظۃ وال باحد من اوصیائی الی یوم القیامۃ‬ ‫ق یامت نک شب طان یہ جواب میں اور یہ ہی ن یداری میں‪ ،‬یہ میری اور یہ میرے اوصیاء میں سے کسی کی سکل احت یار‬ ‫کرسکیا ہے(دار السالم جلد ‪ ۰‬ص فجہ ‪)۹۰‬۔‬ ‫ے اسارات سے جکم شرغی جاصل پہیں کیا جا سکیا‬ ‫ے گئ‬ ‫لیکن انک نات قانل عور ہے کہ جواب میں د یکھ‬ ‫نالحصوص اس وقت کہ حب وہ جواب جکم شرغی کے مجالف ہو جونکہ امام صادق علنہ السالم قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫ان دین ہللا تبارک و تعالی اعز من ان یری فی النوم‬ ‫جدا کے دبن کی سان اس سے ئڑھ کر ہے کہ اس کی پت یاد انک جواب ئر ہو (تجار االثوار جلد ‪ ،۹۸‬ص فجہ ‪)۶۰۳‬۔‬

‫جواب کی حفیقت‬ ‫عام طور سے جواب کی حفیقت کے مبعلق دو ب ظرنات نائے جائے ہیں وہ مح ق فین جو روح کے وجود کی ئردند کرئے ہیں‬ ‫ے ہیں اس ب ظریہ کو مادی ب ظریہ کہا جانا ہے‪ ،‬ح یکہ صاحیان انمان جواب کو روح کی طرف‬ ‫وہ جواب کو عقل سے مرثوط جا بئ‬ ‫ے جو دلیل‬ ‫ے روحی ب ظریہ سے جانا جانا ہے‪ ،‬پہال گروہ ابنی نات کو نای ٔہ بیوت نک پہیجائے کے لئ‬ ‫ے ہیں حس‬ ‫نسنت د بئ‬ ‫پیش کرنا ہے وہ ضرف پ ہی ہے کہ جواب میں انسان وہ سب کجھ دیکھیا ہے کہ جو روز مرہ کی زندگی میں اس ئر گزرنی ہے‬ ‫ح یکہ ان کی یہ دلیل کنی اعت یار سے قانل ئردند ہے۔‬ ‫م ت‬ ‫ے یہ کہیا ہوگا کہ جواب کیھی ماضی ‪ ،‬کیھی جال اور کیھی س ق یل سے تعلق‬ ‫مذکورہ ب ظریہ کی ئردند میں سب سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫رکھیا ہے لہذا اگر جواب کا تعلق ضرف عقل سے ہو ثو اس صورت میں جواب ضرف ان خیزوں کے نارے میں ئاے‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ جو جواب میں ان یدہ رونما ہوئے‬ ‫جاہئیں کہ جن کا تعلق ماضی نا جال سے ہے‪ ،‬لیکن پہت سارے لوگ ا نس‬ ‫ے ہیں کہ جو نالکل اسی طرح ثورے ہوئے ہیں‪،‬پہاں نک کہ تعض اقراد ابنی موت‬ ‫والے وافعات و جادنات کو دنکھ لیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں لہذا اگر جواب ان یدہ کی خیر دے ثو اس کا تعلق‬ ‫اور مرئے کے مقام نا مرئے کے شنب کو تھی جواب میں دنکھ لیئ‬ ‫‪291‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫م ت‬ ‫عقل سے پہیں ہوسکیا کیونکہ عقل ضرف ماضی اور جال کے جاالت کے عالوہ س ق یل کے جاالت کو درک کرئے سے‬ ‫معذور ہے‪ ،‬لہذا اسالمی اعت یار سے جواب کا تعلق عقل اور روح دوثوں سے ہے نس اس قرق کے ساتھ کہ روح جواب‬ ‫ک‬ ‫ک‬ ‫دی ھنی ہے اور عقل اس جواب کو ناد ر ھنی ہے ۔‬ ‫ٓ‬ ‫سوئے کی جالت میں روح کے ندن سے جدا ہوئے کو ہللا تعالی ئے قران مج ید میں ن یان قرمانا‪:‬‬ ‫ہللا یتوفی االنفس فی موتھا و التی لم تمت فی منامھا فیمسک الذی قضی علیھا الموت و یرسل االخری‬ ‫الی اجل مسمی‬ ‫ہللا ہی ہے جو روجوں کو موت کے وقت ابنی طرف ناللت یا ہے اور جو پہیں مرئے ہیں ان کی روجوں کو تھی پت ید کے‬ ‫وقت طلب کرلت یا ہے اور تھر حس کی موت کا فیصلہ کرلت یا ہے اس کی روح کو روک لت یا ہے اور دوشری روجوں کو انک‬ ‫ے پہت سی نسان یاں نانی جانی ہیں (زمر‪،‬‬ ‫ے آزاد کردن یا ہے‪ ،‬اس نات میں صاحیان قکر و ب ظر کے لئ‬ ‫مقررہ مدت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫انت ‪ ،)۳۶‬اس انت کی روشنی میں معلوم ہونا ہے کہ سوئے وقت انسان کی روح ندن سےجارج ہو جانی ہے اور‬ ‫م ت‬ ‫ماضی‪ ،‬جال اور س ق یل میں سقر کرنی ہے حس کی معلومات کا اتعکاس انسان کی عقل ئر ہونا ہے اور اس طرح انسانی‬ ‫دماغ میں وہ جواب محقوظ ہو جانا ہے‪ ،‬امام صادق علنہ السالم اس سلسلہ میں قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫ان المومن اذا نام خرجت من روحہ حرکۃ ممددودة صاعدة الی السماء‪ ،‬اما تری الشمس فی السماء فی‬ ‫ضووھا و شعاعھا فی االرض‪ ،‬فکذالک الروح اصلھا فی البدن و حرکتھا ممدودة‬ ‫موضعھا و‬ ‫ٔ‬ ‫ٓ‬ ‫پیسک حب مومن سونا ہے ثو اس کی روح کی سعابیں اسمان کی طرف چرکت کرنی ہیں‪ ،‬کیا یم ئے پہیں دیکھا کہ سورج‬ ‫ٓ‬ ‫اسمان میں ہے لیکن اسکی روشنی زمین ئر ‪ ،‬نالکل اسی طرح حب انسان سونا ہے ثو اسکی روح ندن اور اسکی سعابیں‬ ‫ٓ‬ ‫اسماثوں میں ہونی ہے۔‬

‫ے ن یان کیا جائے؟‬ ‫جواب کس‬ ‫ے‬ ‫ے والے کے جاالت سے ناخیر ہو‪ ،‬اور حب ا نس‬ ‫ے کہ جو عالم ‪,‬ئرہیز گار اور جواب دیکھئ‬ ‫ے سحص کو ن یانا جا ہئ‬ ‫جواب کسی ا نس‬ ‫سحص سے جواب ن یان کیا جائے ثو اسے جواب کی ساری ت قاصیل تھی ن یانی جابیں‪ ،‬ان نمام شرائط کی طرف کم و پیش‬ ‫حصور ئے اسارہ قرمانا ہے‪ ،‬انک جدنث میں رسول گرامی قدر قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫‪292‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے جواب کو سوائے عالم نا نصیجت کرئے والے کے ن یان یہ کرو (میزان‬ ‫رویاک اال علی عالم او ناصح ا بئ‬ ‫ال تَقُص ٔ‬ ‫الحکمۃ جلد ‪ ۶‬ص ف ٔجہ ‪ ،)۰۸‬اسی طرح سے کسی اور جدنث میں حصور ئے قرمانا‪:‬‬ ‫مومن خال من الحسد‬ ‫الر ٔویا ال تُقَص اال علی ٔ‬ ‫ضرف اس مومن کو ان یا جواب ن یان کرو کہ جو دوشروں سے حسد پہیں کرنا (تجار االثوار جلد ‪ ،۲۰‬ص فجہ ‪)۰۳۳‬۔‬ ‫ے وہ نمام م طالب کہ جن کا تعلق سوئے نا تھر جواب سے تھا اب ہم اس مقام ئر حسینی دائرۃ المعارف کی‬ ‫یہ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫کیاب "رونا‪ ،‬مساھدات و ناونل" (جو ‪۹۶۸‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور ‪ ۶۹۹۹‬عیشوی کو چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں‬ ‫موجود ان جواثوں کا نذکرہ کرئے ہیں کہ جیہیں امام حسین علنہ السالم ئے ابنی حیات طینہ میں دیکھا تھا‪ ،‬اس کیاب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے ناب میں مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے امام حسین علنہ السالم کے جواثوں کو ن یان قرمانا ہے‪ ،‬حس‬ ‫پہ ل‬ ‫ع‬ ‫کے تعد دوشرے اور پیشرے ناب میں ان جواثوں کا نذکرہ ہے کہ جی ہیں معصومین لیہم السالم نا ان کے عالوہ دنگر اقراد‬ ‫ٓ‬ ‫ئے امام حسین علنہ السالم کے مبعلق دیکھا ہے‪ ،‬قانل ذکر نات یہ ہے کہ ہر جواب کے اچر میں مصتف ئے جواب‬ ‫کی تعبیر کو تھی ن یان قرمانا ہے‪ ،‬لہذا ہم اس مقام ئر ہر ناب میں موجود تعض جواثوں کی طرف اسارہ کرئے ہیں۔‬

‫ے)‬ ‫پہال ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم ئے د یکھ‬

‫‪۰‬۔ ئروز حمعہ‪ ۶۳ ،‬رحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سام‪:‬‬ ‫ابن اعیم کوقی روانت کرئے ہیں کہ عید ہللا ابن زنیر امام حسین علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہوئے اور قرمانا‪ ،‬ولید ابن‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ے کونسا راز ثوس یدہ‬ ‫عینہ والی مدنیہ ئے ہمیں ح ید نار قاصد کے ذرتعہ نال ھیجا ہے‪ ،‬کیا اپ کو خیر ہے کہ اس ببعام کے بیجھ‬ ‫ہے؟ یہ شن کر امام عالی مقام ئے قرمانا‪ :‬اے عید ہللا ابن زنیر کل سام میں ئے جواب میں دیکھا کہ معاویہ کا مبیر اس‬ ‫ٓ‬ ‫کے شر ئر الٹ گیا ہےاور اس کے گھر میں اگ جل رہی ہے حس سے میں ئے اندازہ لگانا کہ یہ جواب اس کی موت‬ ‫کی خیر ہے‪ ،‬یہ شن کر عید ہللا بن زنیر ئے کہا‪ ،‬ہللا کرے انسا ہی ہو۔‬

‫‪293‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۶‬۔ ئروز اثوار‪ ۶۰ ،‬رحب المرحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سحر‪:‬‬ ‫ے شر‬ ‫ابن اعیم کوقی اور دنگر مورخین ت قل کرئے ہیں کہ ‪ ۶۰‬رحب کی سحر کا وقت تھا کہ امام حسین علنہ السالم ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اقدس کو قیر رسول ئر رکھا اور اپ کو انکھ لگ گنی‪ ،‬جواب میں اپ ئے حصور کو مالنکہ کے انک گروہ کے ساتھ ا نا ہوا دیکھا‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے سے لگائے ہوئے اپ کی پیسانی‬ ‫ے‪ ،‬حصور قرنب ہوئے اور اپ ئے امام حسین کو شیئ‬ ‫کہ جو اپ کے جاروں طرف ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جون میں پہابیں گے‪ ،‬اور‬ ‫کے بیچ ثوسہ لے کر قرمانا‪ :‬اے میرے حمیوب حسین میں دنکھ رہا ہوں کہ عیقرنب اپ ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور‬ ‫ے اپ کو ذ تح کیا جائے گا‪ ،‬اس جال میں کہ اپ ن یاسے ہو نگ‬ ‫شرزمین کرنال ئر میری امت کے انک گروہ کے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اس عمل کے ذرتعہ میری س قاعت کا جواہاں ہوگا‪ ،‬لیکن ہللا ق یامت کے‬ ‫کونی اپ کو نانی نالئے واال یہ ہوگا‪ ،‬وہ گروہ ا بئ‬ ‫ے کسی قشم کی ناداش یہ ہوگی۔‬ ‫ے گا‪ ،‬اور ہللا کے ئزدنک ان کے لئ‬ ‫دن اپہیں میری س قاعت سے محروم ر کھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے حسین‪ ،‬پیسک اپ کے نانا‪ ،‬مادر گرامی‪ ،‬اور تھانی سب کے سب میرے ساتھ ہیں اور‬ ‫اے میرے چہیئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ع ظیم درجات ہیں کہ جن نک اپ شہادت کے تعد قائز‬ ‫اپ کی زنارت کے مس یاق ہیں‪ ،‬جیت میں اپ کے لئ‬ ‫ے دن یا کی طرف لوٹ کر جائے‬ ‫ے‪ ،‬یہ سیکر امام حسین علنہ السالم ئے جواب ہی میں حصور سے قرمانا‪ :‬نا رسول ہللا مجھ‬ ‫ہو نگ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬یہ شن کر حصور ئے عرض کی‪ :‬اے حسین اپ کو جواب‬ ‫ے ناس نال ل حیئ‬ ‫ے ا بئ‬ ‫کی ی میا پہیں ہے لہذا اسی جواب سے مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ثواب ع ظیم رکھا ہے‪ ،‬پیسک‬ ‫سے ن یدار ہوکر شہادت کے درجہ ئر قائز ہونا ہوگا‪ ،‬حس میں ہللا تعالی ئے اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬پہاں نک کہ‬ ‫اپ کے والد و مادر گرامی‪ ،‬تھانی‪ ،‬حجا اور حجا زاد تھانی سب کے سب انک ساتھ ق یامت میں محشور ہو نگ‬ ‫ے جواب کو‬ ‫ے‪ ،‬یہ شن کر امام حسین علنہ السالم جواب سے ن یدار ہوئے اور ا بئ‬ ‫وہ سب انک ساتھ پہست میں وارد ہو نگ‬ ‫ے شن کر وہ اس طرح معموم ہوئے کہ اس دن ثوری کان یات میں کونی اس قدر‬ ‫ے ن یان قرمانا حس‬ ‫اہلییت چرم کے سا مئ‬ ‫معموم یہ ہوا ہوگا۔‬

‫‪294‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۰‬۔ ئروز اثوار‪ ۶۰ ،‬رحب المرحب سنہ ‪۲۹‬ھ کی سام‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ جواب میں اپ ئے نانا رسول ہللا‬ ‫ے سوئے تھ‬ ‫اثو حمیف روانت کرئے ہیں امام حسین علنہ السالم ح ید لمجوں کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کو دیکھا کہ وہ اپ کو سالم کرکے قرمارہے ہیں کہ اے میرے قرزند اپ کے والد و مادر گرامی اور تھانی سب میرے‬ ‫ٓ‬ ‫ج ٓ ٔ‬ ‫ے او‪ ،‬اور اے‬ ‫ساتھ اندی مقام (دار ا حلیوان) میں ہیں اور اپ کے دندار کے مس یاق ہیں لہذا جلدی ہماری جانب ل‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے انک مقام ہے جو ثور جدا سے مملو ہے حس مقام ئر اپ شہادت‬ ‫میرے قرزند یہ تھی جان لو کہ جیت میں اپ کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اور عیقرنب اپ ہمارے ناس نشرتف الئے والے ہیں۔‬ ‫کے تعد قائز ہو نگ‬

‫‪۳‬۔ ‪ ۸‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام مکہ‪ ،‬سب میگل‪:‬‬ ‫ابن طاووس( ‪ )1‬ت قل کرئے ہیں کہ انک روز دمحم بن جیفنہ امام حسین علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہوئے اور لجام‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں؟ امام ئے قرمانا‪ :‬رسول گرامی قدر میرے جواب میں‬ ‫قرس کو تھام کر قرمانا؟ کیا وجہ ہے کہ اپ سقر کو نکل جل‬ ‫ے اور اپہوں ئے قرمانا‪:‬‬ ‫نشرتف الئے ت ھ‬ ‫یا حسین اخرج فان ہللا قد شاء ان یراک قتیال‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اے حسین اپ ق یام کربں جونکہ ہللا تعالی اپ کو مفیول دیکھیا جاہ یا ہے‪ ،‬یہ شن کر دمحم جیفنہ ئے کہا انا ہلل و انا الیہ‬ ‫ٓ‬ ‫راجعون‪ ،‬تھر دمحم جیفنہ ئے سوال کیا اگر اپ کے سقر کا م فصد شہادت کا حصول ہے ثو تھر ساہ زادثوں کو ساتھ لے‬ ‫جائے کی کیا وجہ ہے؟ امام ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ان ہللا قد شاء ان یراھن سبایا‬ ‫ہللا تعالی اپہیں اسیر دیکھیا جاہ یا ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام علی بن موسی بن اجمد بن دمحم بن دمحم بن طاووس الحشنی الحسینی تھا ‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۹۸۰‬ھ اور وقات سنہ ‪۲۲۳‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪295‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۹‬۔ ‪ ۰۶‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ‪ ،‬سب ہفنہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫اثو حمیف روانت کرئے ہیں کہ حب امام حسین علنہ السالم کو ح یاب مسلم ابن ق یل کی خیر یہ مل سکی ثو اپ ئے خین‬ ‫ے وانس‬ ‫ہوئے اور اس بیقراری کی کیفیت کو اہلییت چرم سے ن یان کرئے ہوئے اپہیں جکم دنا کہ وہ امام کے ساتھ مد بئ‬ ‫ے‪ ،‬نانا کے روضہ کی زنارت کی‪ ،‬اس مو فع‬ ‫لوبیں‪ ،‬امام مع ح ید اقراد کے مدنیہ میں وارد ہوئے‪ ،‬قیر رسول ئر نشرتف لے گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حب اپ ئر پت ید کا علنہ ہوا ثو اپ ئے جواب میں رسول ہللا کو دیکھا کہ حصور ئےقرمانا‪:‬‬ ‫یا ولدی العجل الجعل‪ ،‬الوحا الوحا فبادر الینا فنحن مشتاقون الیک‬ ‫ج ٓ ٔ‬ ‫ے او کیونکہ ہم سب ی مہاری زنارت کے مس یاق ہیں۔‬ ‫اے میرے قرزند جلد اور س یاب کے ساتھ ہماری طرف ل‬

‫‪۲‬۔ ‪ ۰۰‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام تعلینہ‪ ،‬ئروز ہفنہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے اپ‬ ‫ے ثو کجھ دئر کے لئ‬ ‫ابن طاووس ت قل قرمائے ہیں کہ حب امام حسین علنہ السالم ظہر کے وقت مقام تعلینہ ئر پہیچ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے کہا‪:‬‬ ‫کی انکھ لگ گنی حس کے تعد اپ ن یدار ہوئے اور قرمانا کہ میادی ئے ات ھی اتھی ندا د بئ‬ ‫انتم تسرعون و المنایا تسرع بکم الی االجنۃ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫پ‬ ‫ے ہے جو اپ سب کو جیت نک ہیجائے میں‬ ‫اپ لوگ ئڑی نیزی سے چرکت کر رہے ہیں اور موت لوگوں کے بیجھ‬ ‫س یاب زدہ ہے‪ ،‬یہ سیکر ح یاب علی اکیر ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا ابہ افلسنا علی الحق؟‬ ‫اے نانا کیا ہم جق ئر پہیں ہیں؟ امام ئے قرمانا پت یا اس جدا کی قشم کہ حس کی جانب نمام انسابیت کی نازگست ہے ہم‬ ‫جق ئر ہیں‪ ،‬یہ سیکر ح یاب علی اکیر ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا ابہ ال نبالی بالموت‬ ‫اے نانا تھر ہمیں موت کی ئرواہ پہیں ہے‪ ،‬یہ شن کر امام ئے دعانیہ جملوں میں قرمانا‪:‬‬ ‫جزاک ہللا یا بنی خیر ما جزا ولدا عن والد‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہونی ہے۔‬ ‫اے پت یا جدا اپ کو پہیربن چزا ع طا قرمائے جو کہ انک ناپ کی جانب سے اس کی اوالد کے لئ‬ ‫‪296‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۳‬۔ ‪ ۶۶‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ ی مقام بطن العفنہ‪ ،‬ئروز میگل ثوقت سام‪:‬‬ ‫ے‬ ‫ے عفنۃ التطن تھی کہئ‬ ‫ابن فولویہ( ‪ )1‬روانت قرمائے ہیں کہ حس وقت امام حسین علنہ السالم ی مقام بطن العفنہ (کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫ے شہید کیا جائے گا‪ ،‬حب اصجاب ئے اس گق یار کی وجہ‬ ‫ے اصجاب سے قرمانا عیقرنب مجھ‬ ‫ے ثو اپ ئے ا بئ‬ ‫ہیں) ئر پہیچ‬ ‫ٓ‬ ‫ثوچھی ثو اپ ئے قرمانا‪:‬‬ ‫رأیت کالبا تنھشنی اشدھا علی کلب ابقع‬ ‫ٓ‬ ‫ے مجھ ئر جملہ اور ہیں اور ان میں سے انک کیا کہ حس ئر سق ید و سیاہ داغ ہیں وہ مجھ‬ ‫میں ئے جواب میں دیکھا ہے کہ کجھ کئ‬ ‫ے کر رہا ہے۔‬ ‫ئر سدند جمل‬

‫‪۸‬۔ ‪ ۶۹‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ ثوقت ظہر‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫شیخ صدوق( ‪ )2‬روانت کرئے ہیں کہ حب امام حسین علنہ السالم ی مقام عذنب وارد ہوئے‪ ،‬ثو ظہر سے ق یل اپ ئے ق یلولہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا‪ ،‬جواب سے ن یدار ہوئے ہی اپ ئے گریہ کیا حب اپ کے قرزند ئے ثوچھا نانا جان گریہ کا کیا شنب ہے؟ ثو اپ‬ ‫ئے قرمانا پت یا یہ وہ وقت کہ حس کا جواب کیھی چھونا پہیں ہونا‪ ،‬میں ئے جواب میں سیا کہ انک میادی کہہ رہا ہے‪:‬‬ ‫انتم تسرعون السیر و المنایا تسرعون بکم الی الجنۃ‬ ‫پ‬ ‫یم نیزی سے سقر کر رہے ہو ح یکہ موت ی مہیں نیزی سے جیت ہیجائے کی مس یاق ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫‪ٓ 1‬‬ ‫ اپ کا نام جعقر بن دمحم بن جعقر بن موسی بن فولویہ تھا‪ ،‬اپ کی والدت پیشری صدی ہحری‪ ،‬اور وقات سنہ ‪۰۲۳‬ھ کو ہونی۔‬‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ل‬ ‫‪ -2‬اپ کا نام دمحم بن علی بن حسین بن موسی بن ناثویہ ا قمی تھا‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۰۹۲‬ھ اور وقات ‪۰۸۰‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪297‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۰‬۔ ‪ ۶۸‬ذی الحجہ سنہ ‪۲۹‬ھ‪ ،‬ئروز نیر ثوقت صیح‪:‬‬ ‫شیخ مق ید( ‪ )1‬ن یان قرمائے ہیں کہ حس وقت امام حسین علنہ السالم فصر بنی مقانل سے گزرے ثو کجھ وقت کے تعد نست‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرس ئر اپ ئر عیودگی طاری ہو نی‪ ،‬حب اقافہ ہوا ثو اپ ئے قرمانا‪:‬‬ ‫انا ہلل و انا الیہ راجعون و الحمد ہلل رب العالمین‬ ‫ٓ‬ ‫ے گھوڑے کو امام کے گھوڑے سے قرنب‬ ‫اپ ئے اس کالم کی دو نا بین نار نکرار کی‪ ،‬یہ شن کر ح یاب علی اکیر ئے ا بئ‬ ‫کیا اور قرمانا نانا جان اس کل ٔ‬ ‫مہ اسیرجاع اورجمد ناری تعالی کی کیا وجہ تھی؟ ثو امام ئے قرمانا کہ اتھی اتھی مجھ ئر عیودگی طاری‬ ‫ے رونما ہوا اور اس ئے مجھ سے کہا‪:‬‬ ‫ہونی ثو میں ئے دیکھا کہ انک سوار میرے سا مئ‬ ‫القوم یسیرون والمنایا تسیر الیھم فعلمت انھا انفسنا نعیت الینا‬ ‫ےسقر کر رہی ہے‪ ،‬پیسک یہ ہماری موت کی خیر ہے کہ‬ ‫ے بیجھ‬ ‫یہ فوم سقر کر رہی ہے حب کہ ان کی موت تھی ان کے بیجھ‬ ‫جو ہمیں دی گنی ہے‪ ،‬یہ شن کر ح یاب علی اکیر ئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا ابۃ ال اراک ہللا سوءا‪ ،‬السنا علی الحق‬ ‫ٓ‬ ‫نانا جان جدا اپ کو ہر شر سے محقوظ قرمائے‪ ،‬کیا ہم جق ئر پہیں ہیں؟ یہ شن کر امام ئے قرمانا‪:‬‬ ‫بلی‪ ،‬و الذی الیہ مرجع العباد‬ ‫اس جدا کی قشم کہ حس کی طرف ہر انک ن یدہ کی نازگست ہے پیسک ہم جق ئر ہیں‪ ،‬یہ شن کر ح یاب علی اکیر ئے قرمانا‪:‬‬ ‫فاننا ال نبالی ان نموت محقین‬ ‫جونکہ ہماری موت جق ئر ہے لہذا ہمیں موت کی ئرواہ پہیں۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام دمحم بن دمحم بن البعمان العکیری تھا‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۰۰۸‬ھ اور وقات سنہ ‪۳۰۰‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪298‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۰۹‬۔ ‪ ۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعرات‪ ،‬ثوقت عصر‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی‪:‬‬ ‫ے نلوار کے شہارے‬ ‫ے جیمہ کے سا مئ‬ ‫شیخ مق ید ن یان قرمائے ہیں کہ امام حسین علنہ السالم ‪ ۰‬محرم کو عصر کے وقت ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں ح یاب زبیب ئے انک نلید اواز شنی ثو جوقزدہ تھانی کے قرنب ہوبیں اور‬ ‫ے‪ ،‬ا بئ‬ ‫ے ارام قرما رہے تھ‬ ‫زاثو ئر شر ر ک ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے شر کو نلید کرئے ہوئے قرمانا‪:‬اتھی میں ئے جواب‬ ‫ثوچھا اے تھانی یہ نلید اواز کیسی تھی؟ امام علنہ السالم ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ اے حسین عیقرنب اپ ہمارے ناس نشرتف البیں گے ۔‬ ‫میں نانا رسول ہللا کو دیکھا وہ قرما رہے تھ‬

‫‪۰۰‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ثوقت سحر‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ابن شہر اسوب( ‪ )1‬ن یان قرمائے ہیں کہ روز عاسوراء ثوقت سحر امام حسین علنہ السالم ئر عیودگی طاری ہونی حس کے تعد‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جواب میں دیکھا ہے کہ ح ید کیوں ئے‬ ‫ے اصجاب سے قرمانا‪ :‬میں ئے اتھی اتھی ا بئ‬ ‫اپ ن یدار ہوئے ثو اپ ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫مجھ ئر جملہ کیا ہے حس میں سے سیاہ و سق ید رنگ کا کیا ئڑی سدت کے ساتھ مجھ ئر جملہ اور ہے حس سے اندازہ یہ ہونا ہے‬ ‫کہ میرا قانل ئرص کی بتماری میں مت یال ہے‪ ،‬تھر میں ئے جواب میں نانا رسول ہللا کو ان کے تعض اصجاب کے ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے والے اپ کو شہادت کی‬ ‫دیکھا‪ ،‬حصور ئے مجھ سے قرمانا‪ :‬اے حسین اپ شہید ال دمحم ہیں‪ ،‬اسمان اعلی و ادنی میں ر ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ےابیں‪ ،‬یہ قرسنہ ہے کہ‬ ‫نسارت دے رہے ہیں‪ ،‬اج رات اپ ہمارے پہاں اف طار کربں گے‪ ،‬لہذا جلد ہمارے ناس جل‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫جو اسمان سے نازل ہوا ہے یہ اپ کے جون کو سیز ثونل میں حمع کرے گا‪ ،‬امام حسین علنہ السالم ئے اس جواب کے‬ ‫ے اس دن یا سے رحصت ہونا‬ ‫ن یان کرئے کے تعد قرمانا کہ پیسک میری شہادت مجھ سے قرنب ہے اور کجھ ہی دئر میں مجھ‬ ‫ہے۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام دمحم بن علی بن شہر اسوب الشروی تھا‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۳۸۰‬ھ اور وقات سنہ ‪۹۸۸‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪299‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۰۶‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ثوقت صیح‪ ،‬ی مقام کرنالء معلی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئاے ثو‬ ‫مورخ طرتخی( ‪ )1‬ن یان قرمائے ہیں کہ روز عاسوراء حب ح یات امام حسین علنہ السالم کی مدد اور نصرت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫ے جلد از جلد لجق ہوئے کا‬ ‫ے نانا رسول ہللا کی مجالقت پہیں کرسکیا جونکہ اپہوں ئے مجھ‬ ‫اپ ئے ان سے قرمانا‪ ،‬میں ا بئ‬ ‫ے‪:‬‬ ‫ے نانا رسول ہللا کو جواب میں دیکھا کہ وہ قرما رہے تھ‬ ‫جکم قرمانا ہے‪ ،‬میں ئے کجھ دئر پہل‬ ‫یا حسین ان ہللا عز وجل قد شاء ان یراک مقتوال‪ ،‬ملطخا بدمائک‪ ،‬مخضبا شیبک بدمائک‪ ،‬مذبوحا من‬ ‫قفاک‪ ،‬و قد شاء ہللا ان یری حرمک سبایا علی اقطاب المطایا و انی وہللا اصبر حتی یحکم ہللا بامرہ وھو‬ ‫خیر الحاکمین‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہی جون میں ڈاڑھی سے حصاب سدہ‪ ،‬اور گردن سے ذ تح سدہ‬ ‫اے حسین‪ ،‬ہللا تعالی اپ کو شہید‪ ،‬جون میں عل طاں‪ ،‬ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫دیکھیا جاہ یاہے‪ ،‬اور وہ یہ تھی جاہ یا ہے کہ اپ کے اہل چرم اونٹ ئر اسیر ن یائے جابیں‪ ،‬اور پیسک میں اس جال میں‬ ‫صیر کرنا ہوں پہاں نک کہ ہللا فیصلہ قرمائے اور وہ پہیربن جکم کرئے واال ہے۔‬ ‫امام عالی مقام ئے اس جواب کے ن یان سے ح یات کی مدد کو رد قرما دنا۔‬

‫ٓ‬ ‫ے)‬ ‫ے گئ‬ ‫دوشرا ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم کی حیات طینہ میں اپ کے مبعلق د یکھ‬

‫۔‪۰‬۔ ماہ صقر سنہ ‪۳‬ھ‪:‬‬ ‫ل‬ ‫ابن طاووس اور دنگر مورخین ت قل قرمائے ہیں کہ انک روز ام ا فصل زوج ٔہ عیاس بن عید الم طلب ئے رسول ہللا سے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫قرمانا کہ میں ئے جواب میں دیکھا ہے کہ اپ کےندن کا انک حصہ اپ سے جدا ہو کر میری اعوش میں اگیا ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫لس‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام فحر الدبن بن دمحم بن علی بن اجمد ا م لمی االسدی تھا‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۰۳۰‬ھ اور وقات سنہ ‪۰۹۸۹‬ھ کو ہونی‪ ،‬اپ شیعہ امامی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ کی نالیقات میں کیاب محمع الیحربن‪،‬عرنب القران‪ ،‬عرنب الجدنث‬ ‫ے جو تحف اشرف میں ن یدا ہوئے اور اسی شہر میں وقات نا گئ‬ ‫تھ‬ ‫نماناں ح بییت کے جامل ہیں۔‬

‫‪300‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫رسول گرامی قدر ئے قرمانا کہ ی مہارا جواب سجا ہے پیسک عیقرنب قاطمہ کے بطن سے انک قرزند ن یدا ہوگا کہ جن کی‬ ‫ٓ‬ ‫رصاعت اپ کے سیرد ہوگی۔‬

‫‪۶‬۔ ماہ صقر سنہ ‪۳‬ھ‪:‬‬ ‫شیخ صدوق ن یان قرمائے ہیں کہ امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪ :‬انک روز ح یاب ام ای من کے ئڑوسی رسول ہللا کی‬ ‫جدمت میں جاضر ہوئے اور قرمانا کہ کل ساری رات ح یاب ام ای من گریہ قرما رہی تھیں‪ ،‬حصور ئے یہ شن کر ح یاب ام‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ای من سے ماچرا درناقت کیا ثو اپ ئے قرمانا کل رات میں ئے ئڑا عحیب و عرنب جواب دیکھا ہے کہ اپ کے تعض‬ ‫اعصائے ندن میرے گھر میں موجود ہیں‪ ،‬یہ سیکر رسول ہللا ئے اپہیں دعا دی اور قرمانا عیقرنب بطن قاطمہ سے حسین‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫نامی قرزند ن یدا ہوگا کہ جن کی اپ ئرورش قرمابیں گی‪ ،‬حب امام حسین علنہ السالم کی والدت ہونی اور ساثوبں دن اپ کا‬ ‫ٓ‬ ‫عفیفہ کیا گیا اور ام ای من ئے اپ کو کیڑے میں لییٹ کر رسول ہللا کی جدمت میں پیش کیا ثو حصور ئے قرمانا‪ :‬جامل و‬ ‫ٓ‬ ‫محمول دوثوں کو میارک ہو اور اے ام ای من پ ہی اپ کے جواب کی تعبیر ہے۔‬

‫‪۰‬۔ دس ہحری‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں‬ ‫ے لگی کہ میں ئے انک جواب دیکھا کہ حس‬ ‫انک روز ہ یدہ بیت عینہ بن رببعہ زوج ٔہ اثوسق یان عانشہ کے ناس ا کر کہئ‬ ‫رسول ہللا سے ن یان کرنا جاہنی ہوں‪ ،‬عانشہ ئے کہا کہ یم ان یا جواب مجھ سے ن یان کرو ناکہ میں جود اسے رسول ہللا نک‬ ‫میی قل کروں‪ ،‬ہ یدہ ئے کہا کہ میں ئے جواب میں انک درحساں سورج دیکھا حس کا ثور سارے عالم میں چھانا ہوا تھا‪ ،‬تھر‬ ‫ٓ‬ ‫اس سورج سے انک میور جاند وجود میں انا حس کا ثور تھی ساری دن یا ئر چھاگیا‪ ،‬تھر اس جاند سے دو سیارے ی موردار ہوئے‬ ‫ت‬ ‫جن کی روشنی مشرق و معرب میں ھیل گنی‪ ،‬تھر میں ئے دیکھا کہ رات کی نارنکی کی مان ید انک سیاہ ائر ی مودار ہوا حس سے‬ ‫انک سیاہ رنگ کا سانپ میولد ہوا‪ ،‬حس ئے ان دوثوں سیاروں کو ڈس کر نگل لیا‪ ،‬اس مت ظر کو دنکھ کر لوگ گریہ کرئے‬ ‫ے۔‬ ‫لگ‬

‫‪301‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حب عانشہ ئے یہ جواب حصور سے ن یان کیا ثو اتحصرت کے چہرے کا رنگ ندال اور اپ ئے گریہ کرئے‬ ‫ع‬ ‫ہوئے قرمانا‪ :‬اے عانشہ اس جواب میں سورج میں‪ ،‬قمر قاطمہ‪ ،‬دو سیارے حسئین لیہم السالم ہیں‪ ،‬اور سیاہ ائر سے معاویہ‬ ‫اور سانپ سے مراد ئزند بن معاویہ لعنۃ ہللا علنہ ہے۔‬

‫‪۳‬۔ تقرن یا سنہ ‪۰۰‬ھ‪:‬‬ ‫دمحم بن موسی دمیری (والدت سنہ ‪۳۳۶‬ھ‪ ،‬وقات سنہ ‪۸۹۸‬ھ) ن یان کرئے ہیں انک روز امام صادق علنہ السالم سے‬ ‫ٓ‬ ‫جواب کی ناونل کی ناخیر کے مبعلق ثوچھا گیا ثو اپ ئے قرمانا تعض جواثوں کی تعبیر تجاس سالوں کے تعد ثوری ہونی ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫کیونکہ رسول ہللا ئے انک دن جواب دیکھا کہ انک سیاہ و سق ید رنگ کا کیا اپ کے جون کو جاٹ رہا ہے‪ ،‬رسول ہللا ئے‬ ‫قرمانا اس جواب سے مراد شمر ذی الجوشن (میروص) کا میرے قرزند حسین کو شہید کرنا ہے‪ ،‬حصور کا یہ جواب تجاس سال‬ ‫کے تعد سنہ ‪۲۰‬ھ میں ثورا ہوا۔‬

‫‪۹‬۔ ‪ ۳‬سوال سنہ ‪۰۲‬ھ‪:‬‬ ‫امام حسین علنہ السالم ت قل قرمائے ہیں کہ ہم نانا علی ابن ابت طالب اور تھانی حسن کے ساتھ ص فین کے راسنہ میں وارد‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬نانا جواب سے‬ ‫ے شر کو تھانی حسن کی اعوش میں رکھا اور کجھ دئر ارام کرئے ل گ‬ ‫شرزمین کرنال ہوئے‪ ،‬حصرت امیر ئے ا بئ‬ ‫روئے ہوئے ن یدار ہوئےاور قرمانا کہ میں ئے اتھی اس وادی کرنال میں جون کا درنا دیکھا ہے کہ حس میں حسین عرق ہو‬ ‫رہے ہیں وہ مدد کو نکارئے ہیں لیکن کونی ان کی نصرت پہیں کرنا‪ ،‬تھر امام عالی مقام ئے امام حسین علنہ السالم سے‬ ‫ٓ‬ ‫ثوچھا کہ اے پت یا حب یہ وافعہ رونما ہوگا ثو اپ کیا کربں گےثو امام حسین ئے قرمانا‪ ،‬نانا جان میں اس وقت ضرف صیر‬ ‫سے کام لوں گا۔‬ ‫ت‬ ‫تھر امام عالی مقام ئے پ ہی جواب ابن عیاس کو فصیل کے ساتھ ن یان کرئے ہوئے قرمانا کہ اے ابن‬ ‫ٓ‬ ‫عیاس میں ئے اتھی کجھ لوگوں کو اسمان سے ائرئے ہوئے دیکھا کہ جن کے ہاتھ میں سق ید ئرحم اور سق ید وئراق نیز نلواربں‬ ‫‪302‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫تھیں‪ ،‬اپہوں ئے ابنی نلواروں کے ذرتعہ جدود کرنال کو معین قرمانا‪ ،‬تھر میں ئے دیکھا کہ اس مقام کے درجیوں کی ساخیں‬ ‫زمین میں گڑھ گنی ہیں حس کی وجہ سے زمین سے نازہ اور ئےجد شرخ رنگ کا جون نکل رہا ہے حس میں میرا الل و ن ٔ‬ ‫ارہ‬ ‫ے نکارنا ہے لیکن کونی تھی اس کی مدد و نصرت پہیں کرنا‪ ،‬اور وہ جو‬ ‫جگر حسین عرق ہو رہا ہے‪ ،‬جو لوگوں کو مدد کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ اے ال رسول اس وقت صیر سے کام لیں‪ ،‬گرجہ امت‬ ‫ے وہ ندا د بئ‬ ‫جونصورت جوان اسمان سے ائرے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫کے شرئر ئربن لوگ اپ کو ق یل کر رہے ہیں‪ ،‬لیکن اے حسین یہ جیت اپ کے دندار کی مس یاق ہے‪ ،‬تھر وہ مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں کہ اے اثو الحسن ہللا تعالی اس شہادت کے ندلے اپ کو ق یامت میں شرچرو قرمائے وہ‬ ‫ے ہوئے کہئ‬ ‫تعزنت د بئ‬ ‫دن کہ حس کے نارے میں ہللا تعالی ئے قرمانا یوم یقوم الناس لرب العالمین وہ دن کہ حب نمام لوگ ہللا تعالی کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے صادق و‬ ‫ے جابیں گے(مط ق فین‪ ،‬انت ‪ ،)۲‬اے ابن عیاس یہ وہی جواب ہے کہ حس کی خیر مجھ‬ ‫نارگاہ میں پیش کئ‬ ‫مصدق رسول ئے دی تھی کہ میں اس جواب کو اہل تعاوت سے ح یگ کے راسنہ میں دیکھوں گا ‪ ،‬پیسک یہ زمین‬ ‫ٓ‬ ‫ے جابیں گے‪ ،‬یہ زمین اسماثوں میں مکہ مکرمہ‪،‬‬ ‫کرب و نالء ہے کہ حس میں میرا حسین اور میری اوالد سے ‪ ۰۳‬جوان دفن کئ‬ ‫مدنیہ میورہ اور بیت المقدس (مسجد افضی) کی طرح مشہور و معروف ہے۔‬

‫‪۲‬۔ ‪ ۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ثوقت سام ی مقام کرنال‪:‬‬ ‫ابن انیر ( ‪ )1‬ن یان قرمائے ہیں کہ روز عاسوراء ح یاب چر بن ئزند رناحی امام حسین علنہ السالم کی جدمت میں جاضر ہوئے اور‬ ‫ے نانا کو دیکھا‪ ،‬اپہوں ئے مجھ سے ثوچھا کہ اے چر کیا کر رہے ہو؟‬ ‫عرض کی نابن رسول ہللا میں ئے کل جواب میں ا بئ‬ ‫میں ئے جواب دنا کہ میں ئے امام حسین علنہ السالم کا راسنہ روکا ہے‪ ،‬حس ئر ئزند رناحی ئے کہا وائے ہو تجھ ئر کہ ثو‬ ‫ئے رسول کے قرزند کا راسنہ روکا۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام علی بن دمحم بن عید الکریم الست یانی الحزری تھا‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪۹۹۹‬ھ اور وقات سنہ ‪۲۰۹‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪303‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اسی طرح کی انک اور روانت کیاب وسیلۃ الداربن ص فجہ ‪ ۰۶۳‬میں وارد ہونی ہے حس میں مذکورہ ن یان کے تعد‬ ‫ے ہو ثو رسول کے قرزند سے‬ ‫ے قرزند سے قرمانا کہ اے چر اگر یم اندی عذاب کا مزہ حکھیا جا ہئ‬ ‫ئزند بن رناحی ئے ا بئ‬ ‫ے ہو کہ حسین کے جد روز ق یامت ی مہاری س قاعت کربں اور یم ان کے ساتھ محشور ہو‪ ،‬ثو حسین کی‬ ‫ح یگ کرو لیکن اگر یہ جا ہئ‬ ‫مدد اور نصرت کرو۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے)۔‬ ‫ے گئ‬ ‫پیشرا ناب (وہ جواب کہ جو امام حسین علنہ السالم کی شہادت کے تعد اپ کے مبعلق د یکھ‬

‫‪۰‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام مدنیہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں اپہوں‬ ‫ے‪ ،‬ا بئ‬ ‫ے گھر میں ارام قرما رہے تھ‬ ‫ابن شہر اسوب ن یان کرئے ہیں کہ دس محرم سنہ ‪۲۰‬ھ کو ابن عیاس ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے سیا کہ اے عید الم طلب کی ن بییو میرے ساتھ‬ ‫ئے ح یاب ام سلمہ کے گھر سے روئے کی اواز شنی اور اپہیں یہ کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬حب ح یاب ام سلمہ سے ثوچھا گیا کہ اپ کو‬ ‫ے گئ‬ ‫حسین شہید ئر گریہ کرو‪ ،‬کیونکہ اتھی اتھی ی مہارے اقا و موال شہید کر د بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جواب میں دیکھا اس جالت میں کہ‬ ‫ے ہوا؟ ثو اپ ئے قرمانا اتھی اتھی میں ئے رسول ہللا کو ا بئ‬ ‫اس نات کا علم کیس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے)‪ ،‬میں ئے حب حصور کا یہ جال‬ ‫ے (ئروانت دنگر اپ کی داڑھی اور شر کے نال ع یار الود تھ‬ ‫اپ کے نال ئرنسان تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ئروانت تحرانی( ‪ )1‬حب‬ ‫ے گئ‬ ‫ے حسین اور اس کے اہلییت اتھی اتھی شہید کئ‬ ‫دیکھا ثو اتحصرت ئے قرمانا میرا پیئ‬ ‫ح یاب ام سلمہ جواب سے ن یدار ہوبیں اور اپہوں ئے اس ثونل کو دیکھا کہ حس میں کرنال کی منی تھی ثو وہ جون میں ن یدنل‬ ‫ہو جکی تھی۔‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪1‬‬ ‫ ہاشم بن سلتمان بن اسماعیل الیونلی الکیکانی‪ ،‬نار تخ وقات ‪۰۰۹۳‬ھ ‪ ،‬اپ کا سمار شیعہ علماء اعالم سے ہونا ہے‪ ،‬اپ تحربن میں میولد ہوئے اور‬‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے اسی شہر میں وقات نانی‪ ،‬اپ کی نالیقات میں کیاب ان یات الوضنۃ‪ ،‬اجیجاج المجال فین‪ ،‬اور کیاب االنصاف سامل ہیں۔‬

‫‪304‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۶‬۔ ‪ ۰۹‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام مدنیہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ انک‬ ‫جاکم پیساثوری( ‪ )1‬نسید ابن عیاس ن یان قرمائے ہیں کہ روز عاسور ح یاب ابن عیاس گھر میں ارام قرما رہے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫مرنیہ جواب میں اپ ئے رسول ہللا کو دیکھا کہ اپ کے شر اور ڈاڑھی کے نال ئراکیدہ اور ع یار الود ہیں اور اپ کے‬ ‫ٓ‬ ‫ساتھ انک ثونل ہے کہ حس میں جون ہے‪ ،‬میں ئے رسول ہللا سے ثوچھا کہ نا رسول ہللا یہ اپ کے ہاتھ میں کیا ہے؟ ثو‬ ‫حصور ئے قرمانا یہ حسین اور ان کے اصجاب کا جون ہے۔‬

‫‪۰‬۔ ‪۰۹‬محرم ا لحرم سنہ ‪۲۰‬ھ ‪ ،‬ئروز حمعہ‪ ،‬ی مقام کرنالء‪:‬‬ ‫ے ہوئے ہیں‬ ‫مورخ جوارزمی ن یان کرئے ہیں کہ لوگوں ئے انک سحص کو دیکھا کہ جو ناپ ت یا ہے‪ ،‬حس کے دوثوں ہاتھ نیر کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اگ سے تجات دندے‪،‬‬ ‫اور وہ اس عالم میں ہللا تعالی سے دعا مانگ رہا ہے کہ رب نجنی من النار اے ئروردگار مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫حب اس سے ثوچھا گیا کہ نیری جالت ثو قانل رحم ہے تھر ثو ہللا سے گڑگڑا کر انش چہیم سے تجات کیوں مانگ رہا ہے؟‬ ‫اس ئے جواب دنا کہ میرا سمار امام حسین علنہ السالم کے قانلوں میں ہونا ہے حب امام حسین علنہ السالم کے ندن‬ ‫سے نمام خیزوں کو عارت کر لیا گیا ثو میں ئے دیکھا کہ امام کا سلوار اور کمرن ید ئڑا فیمنی ہے‪ ،‬میں ئے جاہا کہ اس کمر ن ید کو انار‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہی میں ئے ہاتھ ئڑھا نا ثو امام ئے ان یا داہ یا ہاتھ کمرن ید ئر رکھا‪ ،‬حب میں اپ کے ہاتھ کو ہ یا یہ سکا ثو میں‬ ‫لوں لہذا حیس‬ ‫ئے اسے کاٹ دنا‪ ،‬اور کمرن ید کی طرف تھر سے ہاتھ ئڑھانا اس نار امام ئے ان یا ناناں نازو کمرن ید ئر رکھا ناکہ میں کمرن ید یہ انار‬ ‫سکوں لیکن میں ئے ئرواہ یہ کی اور امام کا ناناں نازو تھی فطع کردنا‪ ،‬تھر میں ئے سلوار انارئے کی کوشش کی ثو انک زلزلہ‬ ‫ے فصد سے میصرف ہو گیا‪ ،‬اسی وقت مجھ ئر پت ید کا علنہ ہوا اور عالم جواب میں میں ئے‬ ‫رونما ہوا حس کی وجہ سے میں ا بئ‬

‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -1‬اپ کا نام دمحم بن عید ہللا معروف یہ جاکم پیساثوری تھا‪ ،‬اپ کی والست سنہ ‪۰۶۰‬ھ اور وقات سنہ‪۳۹۹‬ھ کو ہونی۔‬

‫‪305‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫دیکھا کہ رسول ہللا ی معہ علی و قاطمہ و حسن لیہم السالم نشرتف الئے ہیں‪ ،‬سب ئے ناری ناری شر حسین کو اتھانا پہاں‬ ‫ے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫ے دلت ید کے شر کو ثوسہ د بئ‬ ‫نک کہ نی نی قاطمہ زہرا سالم ہللا علیہا ئے ا بئ‬ ‫یا بنی قتلوک قتلھم ہللا‬ ‫ٓ‬ ‫اے میرے قرزند جن دشمیوں ئے ی مہیں شہید کیا ہے ہللا اپہیں ق یل و عارت کرے‪ ،‬اس وقت امام کے شر سے اواز‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫انی (اے مادر گرامی) میرے شر کو شمر اور نازووں کو اس سحص ئے کانا‪ ،‬اس وقت ح یاب قاطمہ ئے مجھ سے خ طاب‬ ‫کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫قطع ہللا یدیک و رجلیک و اعمی ہللا بصرک و ادخلک النار ہللا‬ ‫ٓ‬ ‫ے انش چہیم کا مزہ‬ ‫(اے سحص) ہللا نیرے ہاتھوں اور نیروں کو جدا کرے‪ ،‬نیری پت یانی تجھ سے چھین لے اور تجھ‬ ‫حکھائے‪ ،‬حب میں جواب سے ن یدار ہوا ثو فورا حصرت زہرا سالم ہللا علیہا کی نددعا میرے جق میں فیول ہونی‪ ،‬میری پت یانی‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں ہللا سے دعا‬ ‫ے‪ ،‬اور اب انش چہیم کی ند دعا ناقی ہے اسی لئ‬ ‫جلی گنی‪ ،‬میرے دوثوں ہاتھ نیر ندن سے جدا ہو گئ‬ ‫ے تحش دے۔‬ ‫مانگ رہا ہوں کہ وہ مجھ‬

‫‪۳‬۔ گیارہ محرم سنہ ‪۲۰‬ھ کی سب‪:‬‬ ‫ے سوہر جولی بن ئزند االصیخی کو‬ ‫عیوف بیت مالک االسدیہ کہ جیہیں عیوف تعلینہ و فصانیہ تھی کہا جانا ہے( ‪ )1‬ئے حب ا بئ‬ ‫ے ہوئے دیکھا ثو سوال کیا کہ یہ شر کس کا ہے؟ جولی ئے اس سوال ئر حسارت کے ساتھ‬ ‫کو انک مقدس شر کو بیور میں ر کھئ‬ ‫ے ہوئے کہا‪ :‬یہ انک جارحی کا شر ہے کہ حس ئے عت ید ہللا ابن زناد ئر چروج کیا تھا‪ ،‬حب جولی کی زوجہ ئے نام‬ ‫جواب د بئ‬ ‫‪ٓ 1‬‬ ‫ اپ جولی کی دوشری زوجہ تھیں‪ ،‬جولی کی پہلی زوجہ کا نام ثوار بیت مالک بن عقرب الحصرمنہ نا المرضنۃ تھا‪ ،‬تعض روانات کے م طاثق جولی‬‫ٓ‬ ‫ے ثوار بیت مالک کے گھر لے انا‪ ،‬حب ثوار ئے ثوچھا یہ کس کا شر ہے ثو اس ئے کہا یہ حسین بن علی کا شر ہے حس ئر اس‬ ‫شر امام حسین کو پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے اس عمل سے دمحم و ال دمحم سے دشمنی مول لی‪ ،‬اب میں نیرے ساتھ پہیں رہ سکنی جونکہ اب‬ ‫ے ن یاہ کرے ثوئے ا بئ‬ ‫ئے کہا اے جولی جدا تجھ‬ ‫ٓ‬ ‫شج‬ ‫ے ان یا سوہر م ھنی ہو اور یہ ہی میں نیری زوجہ ہوں‪ ،‬یہ کہہ کر ثوار ئے عمود اہئین سے جولی کے شر ئر مارا حس کے تعد جولی ابنی دوشری‬ ‫یہ میں تجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫زوجہ عیوف کے گھر جال انا (الرونا و ناونل و مساھدات جلد اول ص فجہ ‪ ۶۰۶‬جاسنہ ‪)۶‬۔‬

‫‪306‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫درناقت کیا ثو اس ئے ن یائے سے انکار کردنا‪ ،‬حب رات ہونی ثو عیوف ئے دیکھا کہ انک ثور ہے کہ جو زمین سے اسمان‬ ‫ے ہی میں بیور کے قرنب گنی ثو میں ئے دیکھا کہ اسی شر میارک سے ثور‬ ‫نک ہر جگہ چھانا ہوا ہے‪ ،‬وہ کہنی ہے کہ حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے جولی ئے بیور میں رکھا تھا‪ ،‬حس کے قرنب قران مج ید کی نالوت کی اواز تھی ارہی تھی‪ ،‬اچری انت جو‬ ‫ساطع ہے کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫میں ئے شنی وہ ای ٔہ و سیعلم الذاین ظلموا ای منقلب ینقلبون تھی‪ ،‬میں ئے یہ تھی دیکھا کہ اس مکان ئر مالنکہ کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ج‬ ‫نسییح و ت لیل کی اواز نلید ہے‪،‬میں جولی کے ناس انی اور سوال کیا اے جولی یہ کس کا شر ہے‪ ،‬اس وقت جولی ئے ن یالنا‬ ‫ٓ‬ ‫کہ یہ شر حسین بن علی کا ہے‪ ،‬یہ شن کر عیوف عش کھا کر زمین ئر گر ئڑبں اور حب عش سے اقافہ ہوا ثو اپ ئے کہا اے‬ ‫ٓ‬ ‫شرئرئربن مجوس و نصرانی‪ ،‬وائے ہو تجھ ئر کہ ثو ئے دمحم ال دمحم کو انذاء پہیجانی اور اب شر امام حسین کے ندلے ابن زناد‬ ‫ٓ‬ ‫سے اتعام لت یا جاہ یا ہے؟ یہ کہہ کر وہ شر امام حسین کی طرف دوڑبں اور شر میارک کو اتھا کر ئڑے اخیرام سے اپ کے شر‬ ‫ٓ‬ ‫کو گرد و ع یار سے صاف کرئے ہوئے کہا کہ اے حسین م طلوم‪ ،‬ہللا لعیت کرے اس سحص ئر کہ حس ئے اپ کو ق یل کیا‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫ہے‪ ،‬اسی گریہ کے عالم میں عیوف ئر پت ید کا علنہ ہوا اور اپ ئے جواب میں دیکھا کہ گھر کی چھت ھنی اور ہر جگہ ثور‬ ‫ے میں انک سق ید ائر وارد ہوا کہ حس میں سے دو ن بت یاں ناہر نشرتف البیں جیہوں ئے شر امام حسین علنہ‬ ‫سے میور ہونی ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم کو اتھانا اور گریہ کرئے لگیں‪ ،‬مجھ سے رہا یہ گیا اور میں ئے ثوچھا اے نی نی اپ کون ہیں؟ ثو اپہوں ئے جواب دنا‬ ‫‪ :‬اے مومنہ میں جدتجہ اور یہ میری پینی قاطمہ زہرا ہیں‪ ،‬ہم نیرے سکرگزار ہیں کہ ثو ئے میرے قرزند کی جوب مہماثوازی‬ ‫ے ہی میں ن یدار ہونی‪ ،‬حب صیح‬ ‫کی پیسک نیرا مقام درجہ قدس میں ہمارے ساتھ ہوگا ‪ ،‬عیوف کہنی ہے کہ یہ جواب دیکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے طالق دے‬ ‫ے سے انکار کیا اور قرمانا اے جولی ثو مجھ‬ ‫ے انا‪ ،‬عیوف ئے جولی کو شر د بئ‬ ‫ہونی ثو جولی شر امام حسین کو لیئ‬ ‫ے‪،‬جولی ئے شر سیرد کر ئے ئر اضرار کیا اور عیوف انکار‬ ‫ے پہیں رہ سکئ‬ ‫دے‪ ،‬جدا کی قشم میں اور ثو انک انک چھت کے بیچ‬ ‫کرنی رہی حس کے تعد جولی ئے ابنی ہی زوجہ کو ق یل کرکے شر امام حسین کو جاصل کیا۔‬

‫‪307‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۹‬۔ تقرن یا ‪ ۰۰‬محرم سنہ ‪۲۰‬ھ‪:‬‬ ‫چر بن رناح قاضی ت قل کرئے ہیں کہ میں ئے عید ہللا بن رناح قاضی کو ناپت یا نانا‪ ،‬اس جال میں لوگ اس کے ناس‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬عید ہللا بن رناح ئے کہا کہ میرا سمار کرنالء میں ان دس لوگوں‬ ‫ے اور اس سے ناپت یانی کا شنب ثوچھ رہے ت ھ‬ ‫ارہے تھ‬ ‫میں تھا کہ جیہوں ئے ضرف لسکر ابن زناد میں شرکت کی لیکن اپہوں ئے کرنالء میں یہ کسی ئر نیزہ مارا یہ نلوار جالنی اور یہ‬ ‫ے ثو ہم سب گھر وانس ہوئے‪ ،‬میں ئے نماز عساء ادا کی‬ ‫ہی کسی کی طرف نیر تھییکا‪ ،‬حب امام حسین علنہ السالم شہید ہو گئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے رسول ہللا کی جدمت میں‬ ‫سنی کے ساتھ مجھ‬ ‫اور سو گیا‪ ،‬عالم جواب میں انک سحص میرے ناس انا اور اس ئے ئڑی ح‬ ‫ٓ‬ ‫پیش کیا‪ ،‬میں ئے دیکھا کہ حصور صحرا میں نشرتف قرما ہیں‪ ،‬اپ کے ہاتھ میں نیزہ ہے اور انک قرش تجھانا گیا کہ حس ئر‬ ‫ے ن یار کھڑے ہیں‪ ،‬میں ئے ان ‪ ۰‬اقراد کو‬ ‫ے کے لئ‬ ‫ے شزا د بئ‬ ‫ے حصور کے سا مئ‬ ‫محرموں کو شزا دی جانی ہے‪ ،‬اور کجھ قر شئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے لییٹ میں لینی‬ ‫ے ہی ان ئر ضرنت لگائے اپہیں اگ ا بئ‬ ‫ے‪ ،‬مالنکہ حیس‬ ‫تھی دیکھا کہ جو میرے ساتھ کرنالء میں موجود تھ‬ ‫اور وہ مر کر دونارہ زندہ ہوجائے‪ ،‬اس طرح سات مرنیہ مالنکہ ئے اپہیں شزا دی‪ ،‬اس وقت میں حصور کے قرنب ہو کر دو‬ ‫ٓ‬ ‫زاثو پییھ گیا اور میں ئے اپ کو سالم کیا‪ ،‬حصور ئے میرے سالم کا جواب پہیں دنا اور کجھ دئر تعد قرمانا‪ :‬اے دشمن جدا‬ ‫ثوئے میری ہ یک چرمت کی‪ ،‬میری غیرت کو ق یل کیا‪ ،‬اور میرے جق کی رعانت پہیں کی‪ ،‬یہ سیکر میں ئے حصور سے‬ ‫کہا‪ ،‬نا رسول ہللا گرجہ میں کرنالء میں موجود تھا لیکن میں ئے یہ نلوار جالنی یہ نیزہ مارا اور یہ ہی کونی نیر تھییکا‪ ،‬حصور ئے قرمانا‬ ‫ے حصور کے‬ ‫ثو ئے سچ کہا لیکن ثو ئے دشمیان حسین کے لسکر میں سامل ہو کر دشمن کے لسکر کی تعداد ئڑھانی‪ ،‬تھر مجھ‬ ‫ے انک طست دیکھا کہ حس میں امام حسین علنہ السالم کا جون‬ ‫قرنب لے جانا گیا حب میں قرنب ہوا ثو میں ئے سا مئ‬ ‫ٓ‬ ‫ہے‪ ،‬حصور ئے جون حسین کو شرمہ کی طرح میری انکھ میں لگانا‪ ،‬حب میں اس جواب سے ن یدار ہوا ثو میں ئے جود کو ناپت یا‬ ‫ے کجھ پہیں دکھانی دن یا۔‬ ‫نانا‪ ،‬حس کے تعد مجھ‬

‫‪308‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪۲‬۔ تعد از ‪ ۰۰‬محرم الحرام سنہ ‪۲۰‬ھ‪:‬‬ ‫شیخ طوسی ن یان کرئے ہیں کہ انک روز سدی (سین مضموم دال مفیوح و مسدد ‪ ،‬نا ساکن) ئے انک سحص سے ثوچھا کیا‬ ‫ے ہو ؟ اس ئے جواب میں کہا میں ئے کیھی ف ظران دی کھا ہی پہیں‪ ،‬میرا فصہ ثوں ہے کہ میں عمر سعد‬ ‫یم ف ظران( ‪ )1‬ب حیئ‬ ‫ے‪ ،‬انک روز میں ئے‬ ‫ے اشیعمال کرئے ت ھ‬ ‫ے وہ گھوڑوں کی تعل ئر لگائے کے لئ‬ ‫کے لسکر میں کیل بیجا کرنا تھا کہ حس‬ ‫ے‪ ،‬میں ئے تھی ان سے نانی‬ ‫جواب میں رسول ہللا اور علی ابن ابت طالب کو دیکھا کہ وہ شہدائے کرنال کو نانی نال رہے تھ‬ ‫مانگا‪ ،‬لیکن اپہوں ئے میری طرف ثوجہ یہ کی‪ ،‬اس وقت حصور ئے مجھ سے سوال کیا کہ کیا یم ئے ہمارے دشمیوں کا ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫پہیں دنا؟ میں ئے کہا نارسول ہللا میں لسکر عمر سعد میں ضرف کیلیں بیجا کرنا تھا‪ ،‬یہ شن کر حصور عصت یاک ہوئے اور اپ‬ ‫ے نکڑ کر ف ظران نالنا گیا‪ ،‬حب میں جواب سے ن یدار ہوا ثو بین دن نک بیت الجال‬ ‫ئے قرمانا‪ ،‬اسے ف ظران نالنا جائے‪ ،‬مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ف ظرا ن ا نا رہا حس تعد ف ظران کا جارج ہونا ثو ن ید ہوگیا لیکن اتھی نک اس کی ندثو میرے حشم میں ناقی ہے۔‬ ‫میں مجھ‬

‫‪۳‬۔ ‪ ۰۳‬محرم الحرم سنہ ‪۲۰‬ھ‪:‬‬ ‫مدابنی( ‪ )2‬اور شیخ صدوق ابنی اسیاد کے ذرتعہ قاشم بن اضیغ سے ن یان کرئے ہیں کہ میں ئے بنی دارم سے انک سحص کو‬ ‫دیکھا کہ حس کا چہرہ سیاہ ئڑ گیا تھا حب میں ئے اس سے اس ن یدنلی کا شنب ثوچھا ثو اس ئے کہا کہ میں ئے کرنال میں‬ ‫اصجاب امام حسین علنہ السالم سے عیاس االضعر کو شہید کیا جن کا چہرہ میور اور جن کی پیسانی ئر سجدہ کا نسان تھا‪ ،‬میں ان کا‬ ‫‪1‬‬

‫‪ -‬ف ظران انک انسا ندثودار مادہ ہے جو درجیوں سے نکاال جانا ہے‪ ،‬اس مادہ کے ذرتعہ اونٹ کی مالش کی جانی ہے ناکہ اسے جلد کے امراض‬

‫ے۔‬ ‫سے محقوظ رکھا جا سک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫‪ -2‬اپ کا نام علی بن دمحم بن عید ہللا تھا اپ کی والدت سنہ ‪۰۶۹‬ھ اور وقات سنہ ‪۶۶۹‬ھ کو ہونی‪ ،‬اپ کا سمار مورخین و ادناء کرام میں ہونا ہے‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫اپ ئے دو سو سے زاند کیابیں نالیف قرمابیں جن میں سے کیاب خطب الینی‪ ،‬خطب امیر المومین کیاب القاطمیات کو جاضی شہرت جاصل‬ ‫ٓ‬ ‫ے ‪ ،‬اپ ئے نصرہ سے مدابن اور مدابن سے تعداد مہاچرت کی اور اسی شہر میں وقات نانی۔‬ ‫ے تھ‬ ‫ہے‪ ،‬مدابنی نصرہ سے تعلق ر کھئ‬

‫‪309‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کسی رات خین سے پت ید یہ اسکی پہاں نک کہ انک رات عیاس‬ ‫شر لے کرکوفہ لونا‪ ،‬اپ کو شہید کرئے کے تعد مجھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے صیح نک کے‬ ‫ے اور مجھ‬ ‫ے سے نکڑ کر چہیم میں کی طرف کساں کساں لے گئ‬ ‫ے گل‬ ‫اضعر میرے جواب میں ئاے اور مجھ‬ ‫ے ہیں کہ اس‬ ‫ے چہیم میں رکھا‪ ،‬حب میں صیح کو جواب سے ن یدار ہوا ثو میرا چہرہ عذاب چہیم سے سیاہ ہو حکا تھا‪،‬قاشم کہئ‬ ‫لئ‬ ‫ے سوہر کی نصدثق کرئے ہوئے کہا کہ وہ جواب میں ساری رات جال رہا تھا۔‬ ‫سحص کی زوجہ ئے ا بئ‬

‫‪۸‬۔ ‪ ۲‬صقر کی سب سنہ ‪۲۰‬ھ‪:‬‬ ‫ے‪ ،‬امام‬ ‫طرتخی ت قل قرمائے ہیں کہ حب اشرائے کرنالء کو سام میں وارد کیا گیا‪ ،‬ثو اہلییت چرم صیح و سام گریہ قرمائے تھ‬ ‫حسین علنہ السالم کی رفنہ نامی انک پینی تھیں‪ ،‬جو اکیر حسین کو ناد کرکے گریہ کرنی تھیں‪ ،‬انک روز حب جواب سے ن یدار‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ہو کر گریہ کرئے لگیں ثو اہل چرم ئے گریہ کا شنب ثوچھا تخی ئے کہا کہ اتھی نانا میرے جواب میں نشرتف الئے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫پ‬ ‫ے اور اس گریہ کی اواز ئزند نک ہیخی‪ ،‬حس وقت ئزند کو جواب کے مبعلق خیر دی‬ ‫یہ شن کر نمام اہل چرم تھی گریہ کرئے لگ‬ ‫ت‬ ‫گنی ثو اس ئے جکم دنا کہ امام حسین علنہ السالم کے شر کو اس تخی کے ناس ھیجا جائے۔‬

‫‪۰‬۔ ‪ ۳‬صقر سنہ ‪۲۰‬ھ‪:‬‬ ‫ے ہوئے سفیر روم‬ ‫ابن طاووس ت قل کرئے ہیں کہ حب کاروان امام حسین علنہ السالم کو درنار ئزند میں النا گیا ثو وہ وہاں پییھ‬ ‫ئے شر امام حسین علنہ السالم کے نارے میں سوال کیا‪ ،‬حب ئزند ئے یہ ن یالنا کہ یہ حسین ث ٔ‬ ‫واسہ رسول ہیں‪ ،‬ثو اس‬ ‫نصرانی سفیر سے رہا یہ گیا اور اس ئے ئزند کی مالمت کرئے ہوئے کہا اے ئزند ثو ئے اس حسین کو شہید کردنا کہ حس کے‬ ‫نانا کا ثو کلمہ ئڑھیا ہے؟ ئزند سے سفیر روم کی مالمت ئرداست یہ ہونی لہذا اس ئے اس کے ق یل کا جکم صادر کردنا‪ ،‬سفیر‬ ‫پ‬ ‫ے کہ اے نصرانی ثو ہشنی‬ ‫ے جواب میں دیکھا تھا وہ قرما رہے ت ھ‬ ‫ے ہیں کہا میں ئے کل رسول ہللا کو ا بئ‬ ‫ئے جکم کے شیئ‬ ‫ے اس جواب‬ ‫ے معلوم ہو گیا ہے کہ حصور مجھ‬ ‫ے خیرت ثو ضرور ہونی تھی لیکن اب مجھ‬ ‫ہے‪ ،‬حصور کے اس کالم سے مجھ‬

‫‪310‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے شینہ سے‬ ‫ے‪ ،‬یہ کہہ کر اس نصرانی ئے کلمہ ئڑھا اور دوڑ کر شر حسین کو اتھانا‪ ،‬اسے ا بئ‬ ‫ے تھ‬ ‫کے ذرتعہ نسارت دن یا جا ہئ‬ ‫ے لگا‪ ،‬اسی عالم میں جالد ئے سفیر کے شر کو ندن سے جدا کردنا۔‬ ‫لگانا اور امام عالی مقام کا ثوسہ لیئ‬

‫‪۰۹‬۔ سب ‪ ۶۰‬جمادی االول سنہ ‪۲۹‬ھ‪:‬‬ ‫ے جواب میں دیکھا کہ وہ پہست کے ناعوں میں سے انک ناغ‬ ‫ح یاب سلتمان بن ضرد چزاغی ئے ابنی شہادت سے پہل‬ ‫میں ہیں کہ حس میں پہربں‪ ،‬درحت اور جونصورت ئرندے ہیں‪ ،‬تھر اپہوں ئے دیکھا کہ اپہیں انک فصر میں وارد کیا جارہا‬ ‫ے ہی وہ فصر میں وارد ہوئے اپہوں ئے انک محیرم نی نی کو دیکھا جو ان سے کہہ رہی تھیں‪ :‬اے سلتمان ہللا‬ ‫ہے‪ ،‬حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ی مہیں اور ی مہارے ساتھیوں کو چزائے خیر دے‪ ،‬پیسک ق یامت میں اپ اور جو تھی ہماری حمیت میں مارا جائے نا ہم ئر‬ ‫گریہ کرے ثو ان سب کا مقام ہمارے ساتھ پہست میں ہوگا‪ ،‬حب سلتمان ئے ان نی نی سے نام درناقت کیا ثو اپہوں‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ئے قرمانا کہ میں جدتجہ کیری اور یہ میری پینی قاطمہ زہرا اور یہ حسن و حسین لیہم السالم ہیں یہ سب اپ کو نسارت‬ ‫ٓ‬ ‫ے چہرے اور ندن ئر چھڑک لو اور‬ ‫ے‪ ،‬اسے سلتمان اس نانی کو ا بئ‬ ‫دے رہے ہیں کہ کل اپ ہماری جدمت میں ہو نگ‬ ‫ٓ‬ ‫ہماری طرف ئاے میں جلدی کرو۔‬ ‫ے ہی میں جواب سے ن یدار ہوا ثو میں ئے شرہائے نانی کا ئربن دیکھا‪ ،‬حب میں ئے وہ‬ ‫ے ہیں کہ حیس‬ ‫سلتمان کہئ‬ ‫ے‪ ،‬یہ دنکھ کر سلتمان ئے کہا‪ :‬ال الہ اال ہللا‪ ،‬محمد رسول ہللا‪،‬‬ ‫ے ندن ئر چھڑکا ثو سارے ن ید کے زحم میدمل ہو گئ‬ ‫نانی ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کا شنب ثوچھا ثو سلتمان ئے ثوارا جواب‬ ‫علی ولی ہللا‪ ،‬حب اپ کے اصجاب ئے نلید اواز میں ان کلمات کے کہئ‬ ‫ے اصجاب سے ن یان قرمانا اور اپہیں جیت کی نسارت دی۔‬ ‫ا بئ‬

‫‪۰۰‬۔ ق یل از سنہ ‪۰۹‬ھ۔‬ ‫ے ہیں کہ حس وقت میرے ئڑے تھانی کی شہادت وا فع ہونی ثو میرے دل میں شہادت کی ی میا‬ ‫اسماعیل بن مسلم کہئ‬ ‫جاگ اتھی‪ ،‬انک روز میں ئے مجلس اثو عید ہللا الحسین میں شرکت کی اور لوگوں کے ساتھ امام حسین علنہ السالم ئر گریہ کیا‬ ‫‪311‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫اور شہادت کی دعا مانگی‪ ،‬اسی رات میں ئے جواب میں دیکھا کہ عزائے امام حسین علنہ السالم ئرنا ہے اور انک ئزرگ‬ ‫ے ہوئے گریہ قرما رہے ہیں‪ ،‬میں ئے حب اس ئزرگ کے مبعلق سوال کیا ثو معلوم ہوا کہ وہ رسول اکرم دمحم‬ ‫کرسی ئر پییھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں حصور کی مجھ ئر ب ظر ئڑی ثو اپ ئے قرمانا اے اسماعیل کل رات یم ئے‬ ‫مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ہیں‪ ،‬ا بئ‬ ‫ے ہو ثو حسین ئر گریہ کرو ناکہ ی مہارا سمار تھی شہداء میں کیا جائے‪،‬‬ ‫شہادت کی دعا مانگی‪ ،‬اگر یم مرنیہ شہادت ئر قائز ہونا جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہی میری مالقات امام سجاد‬ ‫حب میں جواب سے ن یدار ہوا ثو میرے ذہن میں ح یال انا کہ ساند یہ جواب سچ یہ ہو‪ ،‬حیس‬ ‫علنہ السالم سے ہونی ثو امام ئے قرمانا‪ :‬اے اسماعیل جو کجھ یم ئے جواب میں دیکھا ہے اس میں سک یہ کرو‪ ،‬پیسک‬ ‫ٓ‬ ‫جو سحص میرے نانا حسین ئر گریہ کرنا ہے اس کا مقام شہداء کے ئرائر ہے اور اے اسماعیل جو تھی انکھ امام حسین علنہ‬ ‫ٓ‬ ‫السالم ئر گریہ کرنی ہے ہللا تعالی چہیم کی اگ کو اس ئر چرام کر دن یا ہے۔‬

‫‪۰۶‬۔ سنہ ‪۶۰۳‬ھ‪:‬‬ ‫ے اور ائراہیم بن‬ ‫شیخ طوسی ابنی اسیاد کے ذرتعہ ہارون معری سے ن یان کرئے ہیں کہ انک روز میوکل عیاسی ئے مجھ‬ ‫شہل دئزج کو قیر امام حسین علنہ السالم کے میہدم اور اس جانب پہر کا رخ موڑئے کا جکم دنا‪ ،‬رات کو میں ئے جواب‬ ‫ٓ‬ ‫ے کل‬ ‫ے اے ہارون معری میوکل ئے جو کام ی مہیں سون یا ہے اس کے لئ‬ ‫میں رسول ہللا کو دیکھا کہ اپ قرما رہے تھ‬ ‫ے ت غیر دئزج کا ساتھ دنا اور جو کرنا تھا وہ کیا‪ ،‬حس‬ ‫دئرج کے ہمراہ یہ جانا‪ ،‬لیکن حب صیح ہونی ثو میں ئے جواب کی ئرواہ کئ‬ ‫کے تعد میں ئے تھر سے جواب میں رسول ہللا کو دیکھا‪ ،‬حصور ئے قرمانا اے ہارون معری یم ئے وہی کیا کہ حس سے‬ ‫ے طماتجہ مارا اور میرے منہ ئر تھوکا حس کے تعد میرا چہرہ سیاہ ہو گیا۔‬ ‫میں ئے ی مہیں روکا تھا یہ کہہ کر رسول ہللا ئے مجھ‬ ‫ے‪،‬‬ ‫ے گئ‬ ‫ے وہ نمام م طالب جو حسینی دائرۃ المعارف کی کیاب الرونا مساھدات و ناونل کےمیں پیش کئ‬ ‫یہ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ےدائرۃ‬ ‫پیسک جواب کی حفیقت اور تعبیر و ناونل کے نارے میں پت یادی معلومات سے اگاہی جاصل کرئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫المعارف الحس بینہ کی اس جلد کے م طالعہ سے م فصود جاصل ہوسکیا ہے‪ ،‬مصتف انت ہللا کرناسی ئے حصرت امام حسین‬

‫‪312‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ع‬ ‫علنہ السالم سے مبعلق جواثوں کے جوالے سے پہانت لمی و معلومانی تجث کی ہے حس سے جواثوں کے نارے میں‬ ‫اصل حقاثق واصح ہوئے ہیں۔‬

‫‪313‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪314‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬ ‫جلد اول‬ ‫کیاب "امام حسین اور شرتعت اسالمی" دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے‪ ،‬حس کی پہلی جلد (جو ‪ ۹۰۰‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۰۰۰۳‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۹‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب کی‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪315‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪316‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قاثون اور زندگی‬

‫ے اصول ہیں کہ جن کا انسانی زندگی اور معاشرے کے ساتھ گہرا رئط نانا جانا ہے‪ ،‬جو زندگی قاثون کے‬ ‫قاثون اور بظم دو ا نس‬ ‫م طاثق گذاری جائے‪ ،‬اس میں ئرقی و پیشرقت تقینی ہونی ہے‪ ،‬لیکن حس معاشرے میں قاثون یہ ہو نا قاثون ثو نانا جائے‬ ‫لیکن اس ئر عمل یہ ہو ثو وہ معاشرہ نیزی سے زوال کی طرف گامزن ہوجانا ہے‪،‬‬ ‫ے قاثون کا‬ ‫ے ف ظرت انسانی ئے ان یدائے جلقت سے اس نات کو درک کر لیا کہ زندگی گزارئے کے لئ‬ ‫اسی لئ‬ ‫ے ہوئے قاثون ن یائے اور عوام‬ ‫ے دور کی ضرورثوں کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ہونا الزم و ضروری ہے لہذا ہر زمائے میں نشرنت ئے ا بئ‬ ‫الیاس کو ان فوابین ئر عمل کرئے کی ہدانات تھی دبں‪ ،‬لیکن جونکہ انسان خ طا‪ ،‬نسیان اور شہو کا سکار ہے اور وہ ن یک وقت‬ ‫ے سے قاضر تھی ہے لہذا اکیر یہ دیکھا گیا کہ کجھ ہی عرصے کے تعد نصونب سدہ قاثون میں‬ ‫نشرنت کی نمام مشکالت کو جا بئ‬ ‫ئرمیم کی ضرورت محشوس ہونی ہے‪ ،‬حس کے پییجہ میں وہ قاثون ندل دنا جانا ہے‪ ،‬تعض وقت ثو یہ تھی دیکھا گیا ہے کہ‬ ‫انک ہی قاثون میں کنی مرنیہ ئرمیم وا فع ہونی ہے‪ ،‬لہذا اس مقام ئر انسانی عقل یہ کہنی ہے کہ کونی انسا قاثونگذار ہونا‬ ‫ے فوابین ن یائے جن میں کسی تھی قشم کا ت فص یہ ہو‪ ،‬اور جن کی وجہ سے کسی‬ ‫ے جو خ طا‪ ،‬شہو اور نسیان سے دور رہ کر ا نس‬ ‫جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ئر یہ طلم ہو اور یہ ہی کسی کا جق صا تع ہوجائے‪ ،‬گرجہ اس احساس کے ہوئے کے ناوجود اج تھی نمام فومیں دعوے دار‬ ‫ہیں کہ ہم ہی پہیربن قاثونگذار ہیں ح یکہ ان میں سے ہر انک یہ جوب جان یا ہے کہ ان کا یہ دعوی حفیقت سے کوسوں دور‬ ‫ے ہیں‪ ،‬الینہ جو فومیں انصاف نسید ہیں وہ حمیصر‬ ‫ہے‪ ،‬لیکن بیجا یکیر و تجوت اتھیں اس حفیقت کو فیول کرئے سے روک د بئ‬ ‫پ‬ ‫تحفیق و ئررسی کے تعد اس پییجہ نک ہیچ جانی ہیں کہ ئروردگار کی ذات ہی پہیربن قاثونگذار ہے جونکہ وہی انسان کا جال ق‬ ‫ہوئے کے اعت یار سے اسکی نمام ضرورثوں سے ناخیر ہے۔‬

‫‪317‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے فوابین (شرتعت) کے ساتھ‬ ‫لہذا اصل قاثونگذار ہللا ن یارک و تعالی کی ذات ہے کہ حس ئے اپت یاء کو ا نس‬ ‫ت‬ ‫ن‬ ‫ھیجا کہ جن میں یہ کسی قشم کا ت فص نانا جانا ہے اور یہ ہی ان سے کسی کی جق لقی ہونی ہے‪ ،‬مج یلف ادوار میں ہللا کی‬ ‫ٓ‬ ‫جانب سے شرتعت کی سکل میں فوابین ئاے رہے اور صاحیان شرتعت اپت یاء ئے ان فوابین کو اچرا کیا‪ ،‬پہاں نک‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کے حصرت دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم اچری قاثون کی کیاب تعنی قران مج ید کے ساتھ ہمارے درمیان نشرتف‬ ‫الئے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے فوابین موجود ہیں جن کا اشیحراج اور‬ ‫قران مج ید وہ کیاب ہے حس میں حمیصر و مق ید انداز میں ق یامت نک لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ان ئر عمل کروانا ہر زمائے کے معصوم کا قرنصہ ہے‪ ،‬کیونکہ پ ہی وہ اقراد ہیں جو قران مج ید کو صحبع معنی میں درک کرئے کی‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں "وما یعلم تاویله اال ہللا و الراسخون فی العلم"(ال عمران‪ )۳:‬لہذا رسول اسالم سے لے کر‬ ‫صالجیت ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے دور میں قران مج ید کے فوابین سے لوگوں کی‬ ‫ے ا بئ‬ ‫حصرت امام مہدی لیہم السالم نک نمام معصومین ئے ا بئ‬ ‫ضرورثوں کو ثورا قرمانا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫جونکہ قران مج ید کے فوابین کا ادراک معصومین لیہم السالم کی ن یان کردہ اجادنث کے ت غیر ممکن پہیں‪ ،‬لہذا ہر‬ ‫زمائے میں انکی ن یان کردہ اجادنث ئر ئررسی و تحفیق کی ضرورت محشوس کی گنی ناکہ ان کے ذرتعہ فوابین الٰہنہ کو صحیح طرح‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے حسینی دائرۃ المعارف کی دس جلدوں کو‬ ‫ے‪ ،‬اسی نات کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫شمجھا جا سک‬ ‫ے‬ ‫"الحسین و الیشر تع االسالمی" سے محصوص قرمانا ہے ناکہ امام حسین علنہ السالم کی ان اجادنت ئر ئررسی و تحفیق کی جا سک‬ ‫ے جائے ہیں۔‬ ‫کہ جن سے اسالمی فوابین اجذ کئ‬ ‫ٓ‬ ‫"الحسین و الیشر تع االسالمی" کی جار جلدبں مت ظر عام ئر اجکی ہیں جن میں مصتف ئے اسالمی شرتعت کے‬ ‫ٓ‬ ‫مقدمات و مبعل قات ئر گق یگو کی ہے‪ ،‬اور جوتھی جلد کے نصف اچر میں ان قق ہی فوابین کو پیش کیا ہے کہ جو امام حسین علنہ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬ہم اس مقام ئر جلد اول (جو ‪ ۹۰۰‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪۶۹۹۹‬م‬ ‫السالم کے فول‪ ،‬فعل‪ ،‬اور تقرئر سے اجذ گئ‬ ‫ٓ‬ ‫میں چھپ کر مت ظر عالم ئر اجکی ہے) میں پیش کردہ م قدمانی میاحث سے اشت قادہ کرئے ہوئے زندگی میں قاثون کی‬

‫‪318‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہیں اور اسالمی فوابین کی ندوبن و عملی اچراء کا مرجلہ وار جائزہ لے کر‬ ‫اہمیت و ضرورت اور اقادنت و نانیر ئر روشنی ڈا لئ‬ ‫ع تح‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫حصرت امام حسین کے ارسادات و قرمودات کے جوالے سے ہوئے والے لمی و فیقی عمل ئر ب ظر ڈا لئ‬

‫نشر تع اور مشرع‪:‬‬ ‫ِ‬ ‫ے‬ ‫ے ہیں (التشریع ھو وضع السنن و المناھج)‪ ،‬اور مج یلف تعرتقوں کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫قاثون گذاری کے عمل کو نشر تع کہئ‬ ‫ے‬ ‫ہوئے شرتعت کا اطالق ان قق ہی‪ ،‬اجالقی اور اعی قادی احکام و فوابین ئر ہونا ہے کہ جیھیں جدا نشر کی سعادت کے ل ئ‬ ‫وضع کرنا ہے‪ ،‬لہذا اصل مشرع (قاثونگذار) جدا کی ذات ہے اور اپت یاء کو صاحب شرتعت نا مجافظ شرتعت کہا جانا ہے‪ ،‬جو‬ ‫ِ‬ ‫پ‬ ‫ٔ‬ ‫مرجلہ اچرا نک ہیجانا‬ ‫ا ٰل ہی فوابین کے ذرتعہ لوگوں کو سعادت کی راہ دکھا کر جکومت ا ٰل ہی ئرقرار کرئے ہیں ناکہ ان فوابین کو‬ ‫ے۔‬ ‫سک‬

‫نشر تع (قاثونگذاری) کی نار تخ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت ادم سے ق یامت نک نشر تع کے چھ ادوار ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ ئزول ادم سے تعیت ثوح نک۔‬ ‫‪۶‬۔ تعیت ثوح سے تعیت ائراہیم نک۔‬ ‫‪۰‬۔ تعیت ائراہیم سے تعیت موسی نک۔‬ ‫‪۳‬۔ تعیت موسی سے میالد مشیح نک۔‬ ‫‪۹‬۔ میالد مشیح سے تعیت رسول اسالم نک۔‬ ‫‪۲‬۔ تعیت رسول سے اس چہان کے جای مہ نک۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے کے بین ادوار ہیں‪:‬‬ ‫اس اچری مر جل‬ ‫‪۰‬۔ دور بیوت‪ :‬یہ دور تعیت بنی سے شروع ہو کر ‪ ۰۰/۶۸/۶‬ھ کو جیم ہوا۔‬ ‫‪319‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۶‬۔ دور امامت‪ :‬یہ دور وقات رسول سے شروع ہو کر عییت کیری ‪۰۶۰‬ھ ئر جیم ہوا۔‬ ‫‪۰‬۔ دور مرجعیت‪ :‬یہ دور عییت کیری سے شروع ہوا اور ظہور امام زمایہ(ع) نک جاری رہے گا۔‬ ‫ٓ‬ ‫شرتعت ادم‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو سنہ ‪ ۲۸۸۹‬ق یل از ہحرت کو ن یدا ہوئے اور سنہ‪ ۹۰۹۹‬ق یل از ہحرت میں‬ ‫اولین صاحب شرتعت ح یاب ادم ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬جن ئر ہللا ئے ‪ ۶۰‬صحیقوں کو نازل قرمانا۔‬ ‫ے بنی اور رسول تھ‬ ‫وقات نانی‪ ،‬ح یاب ادم ابنی نسل کے لئ‬

‫شرتعت ثوح‪:‬‬ ‫ے جن کے نام میں اح یالف نانا جانا ہے تعض ئے ان کا نام عید الع قار ذکر‬ ‫دوشرے صاحب شرتعت بنی ح یاب ثوح تھ‬ ‫کیا ہے ثو تعض ئے عید الملک‪ ،‬اور تعض دنگر ئے ان کو عید االعلی کے نام سے تھی موسوم کیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ح یاب ثوح سنہ ‪ ۹۸۶۳‬ق یل از ہحرت کو ن یدا ہوئے اور اپ ئے سنہ ‪ ۰۰۶۳‬ق یل از ہحرت میں وقات نانی‪ ،‬ح یاب ثوح تجار‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور اپ ئے ‪ ۰۹۹‬سال نک ابنی فوم کو ثوحید کی طرف دعوت دی تھی حس کا کونی قاندہ یہ ہوا‪ ،‬اس طرح ہللا ئے‬ ‫تھ‬ ‫ان کی فوم کو ‪ ۶۹۹‬سال کی مہلت دے دی‪ ،‬ح یاب ثوح ئے اسی مدت میں کشنی ن یانی اور اس مہلت کے احت یام ئر‬ ‫ٓ‬ ‫ے نازل ہوئے جن ئر وہ‬ ‫صیف‬ ‫عذاب نازل ہوا‪ ،‬طوقان کے تعد اپ ئے ‪ ۹۹۹‬سال زندگی نانی‪ ،‬ح یاب ثوح کے اجداد ئر ‪ ۸۹‬ح‬ ‫ع‬ ‫ے شرنانی زنان میں نازل ہوئے۔‬ ‫صیف‬ ‫جود عمل کرکے لوگوں کو ان کی ت لیم دنا کرئے ت ھ‬ ‫ے‪ ،‬یہ نمام ح‬

‫شرتعت ائراہیم (شرتعت حییفنہ)‪:‬‬ ‫ے جو سنہ ‪ ۶۶۳۰‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوئے اور سنہ‬ ‫پیشرے صاحب شرتعت بنی ح یاب ائراہیم بن نارخ بن ناجور ت ھ‬ ‫‪ ۶۹۲۸‬ق یل از ہحرت میں وقات نانی‪،‬‬

‫‪320‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫گرجہ ح یاب ائراہیم کے نیروکار اج موجود پہیں ہیں لیکن ان کی شرتعت پہودی‪ ،‬نصرانی‪ ،‬اور اسالمی شرتعیوں کے لئ‬ ‫ک‬ ‫مرجعیت کی ح بییت ر ھنی ہے‪ ،‬جود رسول اسالم کو شرتعت ائراہیمی ئر عمل کرئے کا جکم ہوا ہے حیسا کہ جداوند عالم قرمانا‬ ‫ہے‪:‬‬ ‫ثم اوحینا الیک ان اتبع ملة ابراھیم حنیفا (تجل‪)۰۶۰ :‬۔‬ ‫ح یاب ائراہیم کی شرتعت میں دس شتئیں انسی تھیں جو ق یامت نک ناقی رہیں گی اور وہ شتئیں یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ شر کا میڈوانا‪۶ ،‬۔ موتجھوں کا کان یا‪۰ ،‬۔ داڑھی کا یہ مونڈنا‪۳ ،‬۔ مشواک کرنا‪۹ ،‬۔ دابیوں میں جالل کرنا‪۲ ،‬۔ عسل ح یانت‬ ‫کرنا‪۳ ،‬۔ ناجن کان یا‪۸ ،‬۔ شرمگاہ اور ندن سے اصاقی نالوں کا نکالیا‪۰ ،‬۔ حینہ کرنا‪۰۹ ،‬۔ نانی سے طھارت لت یا۔‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ئے مذکورہ ‪ ۰۹‬شییوں کو تجکم جدا ابنی شرتعت میں سامل قرمانا ہے۔‬

‫شرتعت موسی (شرتعت تھودیہ)‪:‬‬ ‫ے جو شہر مصر میں سنہ ‪ ۰۹۲۸‬ق یل از ہحرت کو ن یدا ہوئے اور سنہ ‪ ۰۳۳۶‬ق یل از‬ ‫ے صاحب شرتعت بنی ح یاب موسی تھ‬ ‫جو تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ہحرت میں وقات نانی‪ ،‬ح یاب موسی ئر غیرانی زنان میں ثورنت نازل ہونی‪ ،‬اور اپ کے اوصیاء کی تعداد نارہ تھی جن‬ ‫کے اسامی یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ثوسع بن ثون بن اقرابیم بن ثوسف بن تعقوب۔‬ ‫‪۶‬۔ کالب بن ثوق یا۔‬ ‫‪۰‬۔ چزق یل بن ثوری بن العجوز۔‬ ‫‪۳‬۔ اسماعیل بن چزق یل صادق الوعد۔‬ ‫‪۹‬۔ الیاس بن نس بن فیجاص بن غیزار بن ہارون بن عمران۔‬ ‫‪۲‬۔ الیسع بن اخظوب بن فیجاص بن غیزار۔‬ ‫‪۳‬۔ ِالیا۔‬ ‫‪321‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫‪۸‬۔ عوندنا ( ذو الکقل) بن ادریم۔‬ ‫‪۰‬۔ اشمون یل بن نالی بن علقمہ بن ماجد بن عموصا بن الیہر بن صون بن علقمہ الہارونی۔‬ ‫س‬ ‫‪۰۹‬۔ داود بن انسا بن عوق ید بن ثوعز بن لمون بن تحشون‪ ،‬بن عمییوذب بن رم بن حصرون بن نارض بن پہوذا۔‬ ‫‪۰۰‬۔ سلتمان بن داود‬ ‫‪۰۶‬۔ زکرنا بن ئرح یا بن نشوا بن تحران یل بن شہلون بن ارسوا بن سونل بن تعود بن موسی بن عمران۔‬ ‫ے اور ح یاب داود ئر زثور نازل ہونی تھی لیکن اس کے ناوجود وہ صاحب شرتعت پہیں‬ ‫گرجہ ح یاب داود اور سلتمان بنی تھ‬ ‫کہالئے اور ان کا سمار بنی ہوئے کے ساتھ ساتھ اوصیاء ائراہیم میں ہونا ہے۔‬

‫شرتعت عیسی (شرتعت نصرانیہ)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے جو سنہ ‪ ۲۳۶‬ق یل از ہحرت کو میولد ہوئے‪ ،‬اپ ئر ہللا ئے غیرانی زنان میں‬ ‫ناتجوبں صاحب شرتعت بنی ح یاب عیسی تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫ے گئ‬ ‫اتج یل کو نازل قرمانا‪ ،‬اور سنہ ‪ ۲۹۰‬ق یل از ہحرت کو ح یاب عیسی اسمان ئر اتھا لئ‬ ‫نی‬ ‫ے‪ ،‬ان نارہ‬ ‫ے جو در حفیقت ان کے ساگرد اور ان کے مذہب کی لبغ کرئے والے تھ‬ ‫ح یاب عیسی کے نارہ جواری تھ‬ ‫اقراد کے نام یہ ہیں‪:‬‬ ‫ق‬ ‫‪۰‬۔ اندراوس‪۶ ،‬۔ ئرنلماوس‪۰ ،‬۔ ب ظرس‪۳ ،‬۔ ثوما‪۹ ،‬۔ العیور‪۲ ،‬۔ ل بیس‪۳ ،‬۔ منی‪۸ ،‬۔ تعقوب الکبیر‪۰ ،‬۔ تعقوب الص غیر‪۰۹ ،‬۔‬ ‫پہودا نداوس‪۰۰ ،‬۔ پہوذا‪۰۶ ،‬۔ ثوحیا۔‬

‫شرتعت اسالم ( شرتعت دمحمیہ)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫حصرت دمحمصلی ہللا علنہ و الہ و سلم ناتجوبں اور اچری صاحب شرتعت بنی ہیں جو شرتعت اسالم کے ساتھ ہمارے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫درمیان نشرتف الئے‪ ،‬اپ کی والدت سنہ ‪ ۹۰‬ق یل از ہحرت کو ہونی اور اپ ئے سنہ اا ہحری میں وقات نانی‪ ،‬انکی‬ ‫ے والی ہے۔‬ ‫شرتعت ق یامت نک ناقی ر ہئ‬ ‫‪322‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫مذکورہ نمام شرتعیوں کو ن یان کرئے کے تعد مصتف ئے اسالمی ب طام ئر تجث کی ہے اور قرمانا کہ اسالمی جکومت نارہ‬ ‫اصولوں ئر اشتوار ہونی ہے‪ ،‬ہم پہاں ان اصولوں کے نام ذکر کرئے ئر اکی قا کرئے ہیں‪:‬‬ ‫اخیرام‪ ،‬عقل‪ ،‬علم‪ ،‬حمیت‪ ،‬اتجاد‪ ،‬چرنت‪ ،‬عدل‪ ،‬مساوات‪ ،‬بظم‪ ،‬مشورت‪ ،‬اجالص‪ ،‬دانش و قرہ یگ۔‬

‫شرتعت اسالم کی نار تخ اور اس کی پیشرقت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے نشر تع کہا جانا ہے) کی ان یدا رسول اکرم دمحم مضطقی صلی ہللا علی و الہ و سلم کے مبعوث‬ ‫اسالمی قاثونگذاری (کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ئرسالت ہوئے سے شروع ہونی‪ ،‬اس دور سے لے کر اج نک قاثون گذاری کے دو مر جل‬ ‫‪۰‬۔ اس مرجلہ کو عصر وحی کہا جانا ہے جو ‪ ۶۳‬رحب سنہ ‪ ۰۰‬ق یل از ہحرت کو شروع ہوکر ‪ ۶۸‬صقر سنہ ‪ ۰۰‬ہحری کو رسول اسالم کی‬ ‫ٓ‬ ‫رجلت کے ساتھ جیم ہوا‪ ،‬یہ وہ دور تھا کہ حس میں ہر قاثون کو وحی ال ہی سے نسنت دی جانی تھی جاہے وہ وحی‪ ،‬قران نا‬ ‫جدنث قدسی ‪ ،‬نا تھر ان اجادنث کی صورت میں ہی کیوں یہ ہو کہ جن کا مضمون ثو وحی الٰہی تھا لیکن القاظ رسول اسالم‬ ‫ے۔‬ ‫کے ہوا کرئے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کو عصر امامت کہا جانا ہے‪ ،‬جو ‪ ۰۰‬ہحری سے شروع ہوا اور اج نک ناقی ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ اس مر جل‬

‫نشر تع کے مصادر‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں لیکن جن مصادر میں مسلماثوں کے درمیان‬ ‫نمام مسلمان‪ ،‬قران و شنت بیوی کو ہر قاثون کا مصدر و مرجع جا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫اح یالف نانا جانا ہے وہ ‪ ۰۲‬مصدر ہیں‪ ،‬اس مقام ئر انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ان مصادر کے نمام جوانب ئر‬ ‫ت‬ ‫ے ہوئے انکی ححیت و عدم ححیت ئر تجث کی ہے‪ ،‬اور وہ ‪ ۰۲‬مصادر یہ ہیں‪:‬‬ ‫فصیل کے ساتھ روشنی ڈا لئ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ اہلییت بنی کی شنت‪۶ ،‬۔ اجماع‪۰ ،‬۔ عقل‪۳ ،‬۔ ق یاس‪۹ ،‬۔ ققہاء کی اراء‪۲ ،‬۔ اشیحسان‪۳ ،‬۔ مصا لح مرسلہ‪۸ ،‬۔ ذرا تع‪،‬‬ ‫‪۰‬۔ عرف‪۰۹ ،‬۔ گذسنہ شرتعئیں‪۰۰ ،‬۔ مذہب صجانی‪۰۶ ،‬۔ قرعہ‪۰۰ ،‬۔ حیل شرعنہ‪۰۳ ،‬۔ شہرت‪۰۹ ،‬۔ سیرت‪۰۲ ،‬۔ اصول‬ ‫عملنہ۔‬

‫‪323‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫مصتف ئے ان نمام مصادر ئر لمی گق یگو کے تعد اچرمیں انک جدول پیش کیا ہے حس کے ذرتعہ واصح ہونا ہے کہ‬ ‫اناضنہ‪ ،‬امامنہ‪ ،‬جیفنہ‪ ،‬حت یلنہ‪ ،‬زندیہ‪ ،‬سافعنہ اور مالکنہ میں سے کس مذہب کے ئزدنک کونسا مصدر قانل فیول اور کونسا مصدر‬ ‫ناقانل فیول ہے۔‬

‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫مدرسہ رائے‪:‬‬ ‫مدرسہ جدنث اور‬ ‫ت‬ ‫ے قرقے ئے‬ ‫ے‪ ،‬پہل‬ ‫ے اصجاب رسول میں اح یالف ن یدا ہوا اور وہ دو قرفوں میں فشیم ہو گئ‬ ‫ببعمیر اسالم کی وقات سے پہل‬ ‫ٔ‬ ‫ٔ‬ ‫مدرسہ جدنث کے نانی علی‬ ‫مدرسہ رائے کے نانی عمر ابن خ طاب اور‬ ‫رائے ئر یکنہ کیا ثو دوشرے قرقے ئے جدنث ئر‪،‬‬ ‫ے۔‬ ‫ابن ابت طالب(ع) ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫یہ دو قکری مدارس اس وقت وجود میں ئاے حب رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫صیح مسلم جلد ‪ ۰‬ص‪ ،۶۶۶‬ح‬ ‫ائتونی بکتاب اکتب لکم کتابا التضلوا بعدہ ( ح‬ ‫صیح تجاری جلد ‪ ۰‬ص ‪ ۰۰‬ناب کیاب العلم)‪،‬‬ ‫نب عمر بن الح طاب ئے کہا ان النبی لیھجر حسبنا کتاب ہللا۔‬ ‫ے جدنث رسول کی مجالقت میں سحضی رائے عمر ابن الح طاب ئے پیش کی اور‬ ‫نار تخ اسالم میں سب سے پہل‬ ‫حسبنا کتاب ہللا کا تعرہ نلید کیا حس کے تعد اتھوں ئے اجادنث بیوی کی اس قدر مجالقت کی کہ اثونکر کی جالقت کے‬ ‫ان یدانی دور میں نمام مسلماثوں کو جدنث بیوی کے جالئے کا جکم دے دنا‪ ،‬اور دوشری طرف احکام ال ہی میں ابنی رائے‬ ‫ے انک مقام ئر وہ ارث جد کے ناب میں قرمائے ہیں‪:‬‬ ‫ے لگ‬ ‫سے جکم د بئ‬ ‫اقضی فی الجد برأیی واقول فیه برأیی‬ ‫ٓ‬ ‫ے فول سے جکم کروں گا (االحکام قی اصول االحکام لالمدی‪ :‬جلد ‪ ،۰‬ص فجہ ‪۸۰‬۔)‬ ‫تعنی ارث جد میں میں ابنی رائے اور ا بئ‬ ‫اسی طرح اثونکر ئے کاللہ کے ارث کے نارے میں کہا‪:‬‬ ‫اقول فیھا برأیی فان یکن صوابا فمن ہللا‪ ،‬و ان یکن خطأ فمنی و من الشیطان‪ ،‬وہللا و رسوله بریئان منه۔‬ ‫اس امر سے مبعلق میں ابنی رائے سے کام لوں گا جو اگر ح‬ ‫صیح ہونی ثو ہللا کی جانب سے اور اگر علط ہونی ثو میری اور‬ ‫شب طان کے جانب سے قرار نائے گی(روضۃ الیاطر‪)۰۳۸ :‬‬ ‫‪324‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫مذکورہ افوال اور نار تخ کی ئررسی سے واصح ہو جانا ہے کہ مذہب رائے کے نانی اور اس کو ئروان چڑھائے والے عمر و‬ ‫ے دور میں اس مذہب کو تقونت دی۔‬ ‫ے اور تھر عتمان اور بنی امنہ ئے ا بئ‬ ‫اثونکر تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫مدرسہ جدنث کی پت یاد رکھی اور اپ ئے ساری زندگی اجادنث رسول کو ن یان قرمانا‬ ‫علی بن ابت طالب(ع) ئے‬ ‫اور اپ ہی اجادنث کے ذرتعہ ابنی جالقت و امامت کو نانت کیا‪ ،‬اسی طرح حصرت زہرا سالم ہللا علیہا ئے اجادنث رسول‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے نمام ق یاوی میں قران مج ید کے‬ ‫کی روشنی میں خطن ٔہ قدک اور دنگر خطیات و اجیجاجات قرمائے‪ ،‬لہذا اج تھی علماء شیعہ ا بئ‬ ‫ع‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫تعد اجادنث معصومین لیہم السالم کو ہر قاثون کا مصدر و مرجع قرار د بئ‬

‫‪325‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪326‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬ ‫جلد دوم‬ ‫کیاب "امام حسین اور شرتعت اسالمی" دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے‪ ،‬حس کی دوشری جلد (جو ‪ ۳۲۳‬ص فجات ئر‬ ‫ٓ‬ ‫مشتمل ہے) سنہ ‪۰۰۰۳‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۹‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫م طالب کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪327‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪328‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ح‬ ‫فیقی اسالم اور مج یلف قرقے‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫رسول اکرم دمحم مضطقی صلی ہللا علنہ و الہ و سلم کی رجلت کے تعد چہان اسالم میں مج یلف قرقے وجود میں ئاے‪ ،‬اور‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫وقت کے گزرئے کے ساتھ ساتھ ان میں اصافہ تھی ہونا گیا‪ ،‬ا تحصرت صلی ہللا علنہ و الہ و سلم ئے قرمانا تھا‪:‬‬ ‫لتفترقن امتی علی ثالث و سبعین فرقة‬ ‫م‬ ‫ے ( عحم الکبیر‪ :‬جلد ‪ ،۰۸‬ص ‪۳‬ا‪ ،)۹‬رسول اسالم کی یہ پیسین گونی ثوری ہونی اور‬ ‫پیسک میری امت کے پہیر قرقے ہو نگ‬ ‫ٓ‬ ‫مسلماثوں کے درمیان پہیر قرقے وجود میں ئاے جن میں سے تعض کو پہت زنادہ شہرت جاصل ہونی۔‬ ‫رسول اسالم ئے یہ تھی قرمانا تھا کہ یہ نمام قرقے ہالک ہوں گے اور ان میں سے ضرف انک قرفہ تجات‬ ‫ٓ‬ ‫نائے گا‪ ،‬لہذا ہر دور میں مسلماثوں کے نمام قرفوں ئے جود کو تجات نافنہ شمجھا‪ ،‬ح یکہ ا تحصرت کی جدنث کے م طاث ق‬ ‫ضرف انک ہی قرفہ تجات نائے واال ہے‪ ،‬الینہ انسا پہیں ہے کہ اس ناحی قرقے کی حصور ئے پہجان یہ کروانی ہو‪ ،‬اگر‬ ‫جدنث ت قلین کا شہارا لیا جائے ثو واصح ہو جانا ہے کہ کونسا قرفہ تجات نائے واال ہے‪ ،‬رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫انی تارک فیکم الثقلین ما ان تمسکتم بھما لن تضلوا کتاب ہللا و عترتی اھل بیتی فانھما لن یفترقا حتی‬ ‫یردا علی الحوض (تفسیر ئرھان‪)۰/۰ :‬‬ ‫ٓ‬ ‫میں ی مھارے درمیان ت قلین (قران و اہلییت) چھوڑے جا رہا ہوں اگر یم ان دوثوں کا دامن تھامے رہوگے ثو کیھی گمراہ‬ ‫ٓ‬ ‫پہیں ہوگے‪ ،‬اس جدنث سے صاف طاہر ہے کہ ناحی قرفہ وہی ہے جو قران و اہلییت کے ساتھ ہو۔‬ ‫ٔ س‬ ‫عامہ م لمین ازواج رسول کو اہلییت‬ ‫جدنث ت قلین کو اکیر مسلمان فیول کرئے ہیں‪ ،‬نس اس قرق کے ساتھ کہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اب دیکھیا یہ ہوگا کہ انا ازواج‬ ‫میں داجل کرئے ہیں اور اہل نسیع ضرف بیجین کو اہلییت کا مصداق قرار د بئ‬ ‫رسول تھی اہلییت میں سامل ہیں نا پہیں؟‬

‫‪329‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے یہ جان یا ضروری ہے کہ حس طرح قران کی انات میں کسی قشم کا اح یالف‬ ‫اس نات کی وصاحت کے لئ‬ ‫ے‪ ،‬اور ان‬ ‫ے‪ ،‬ناکہ دوثوں کو ت قلین کہا جا سک‬ ‫پہیں نانا جانا اسی طرح اہلییت کے درمیان تھی کونی اح یالف پہیں ہونا جا ہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪،‬قران مج ید کی انات میں کسی قشم کا اح یالف پہیں ہے لہذا قران کو ت قل کہا گیا‪ ،‬اب ہمیں‬ ‫سے ہدانت جاصل کی جا سک‬ ‫ے اقراد کی نالش کی‬ ‫ان اقراد کو اہلییت میں سامل کرنا ہے جن میں کسی قشم کا اح یالف یہ نانا جائے‪ ،‬اور حب ہم ئے ا نس‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ثو ہمیں ضرف بیجین ب ظر ئاے جن میں قران کی طرح کسی قشم کا اح یالف پہیں نانا جانا ہے‪ ،‬لہذا ہم ئے اتھیں اقراد کو‬ ‫اہلییت کا مصداق جانا ۔‬ ‫ٓ‬ ‫لیکن اگر ح یاب عانشہ کو اہلییت میں کہ چہاں حصرت علی(ع) تھی موجود ہیں سامل کیا جائے ثو اگے جل کر‬ ‫ٓ‬ ‫نار تخ میں ان کے درمیان ح یگ جمل حیسا اح یالف ب ظر ا نا ہے‪ ،‬ح یکہ جدنث ت قلین کی روشنی میں مقروض یہ ہے کہ‬ ‫اہلییت میں وہی اقراد سامل ہوں گے کہ جن میں کسی قشم کا اح یالف یہ ہو لہذا ح یاب عانشہ موال علی سے اح یالف کرئے‬ ‫کی وجہ سے اہلییت میں داجل پہیں ہو سکئیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے دائرۃ المعارف‬ ‫ناحی قرقے کی نالش انک اہم اور مشکل امر ہے لہذا اس مشکل کو اسان کرئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫الحسینی کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے "الحسین و الیشر تع االسالمی" کی جلد دوم (جو ‪ ۳۲۳‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۹‬میالدی میں چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں اسالم میں ن یدا ہوئے والے نمام اہم قرفوں ئر‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫روشنی ڈالی ہے‪ ،‬حس میں ان قرفوں کے وجود میں ئاے کی نار تخ‪ ،‬انکی پیشرقت‪ ،‬اور ان کے اعی قادات کو فصیل کے‬ ‫ساتھ ن یان کیا گیا ہے‪ ،‬جلد اول کی طرح کیاب الحسین و الیشر تع االسالمی کی دوشری جلد میں تھی مصتف ئے امام‬ ‫ٓ‬ ‫حسین(ع) اور اسالمی نشر تع (قاثونگذاری) کے مقدمانی میاحث ئر گق یگو کی ہے‪ ،‬مصتف ئے جلد اول میں ادم سے‬ ‫ٓ‬ ‫جایم نک نشر تع کی نار تخ کو ن یان قرمانا تھا اور اس جلد میں رسول اسالم کے تعد وجود میں ئاے والے سات قرفوں اور‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫انکی نشر تع کے میانی کو فصیل کے ساتھ ن یان قرمائے ہیں‪ ،‬یہ قرقے وہ ہیں کہ جن کے نیروکار اور جکومئیں اج ت ھی‬ ‫موجود ہیں‪ ،‬اور وہ سات قرقے یہ ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ قرف ٔہ امامنہ ۔ ‪۶‬۔ قرف ٔہ زندیہ‪۰ ،‬۔ قرف ٔہ اناضنہ‪۳ ،‬۔ قرف ٔہ جیفنہ‪۹ ،‬۔ قرف ٔہ مالکنہ‪۲ ،‬۔ قرف ٔہ سافعنہ‪۳ ،‬۔ قرف ٔہ حت یلنہ۔‬ ‫‪330‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ہم اس مقام ئر مذکورہ قرفوں کے نانی‪ ،‬ان کے اعی قادات اور قق ہی میانی ئر اجمالی روشنی ڈا لئ‬

‫قرف ٔہ امامنہ‪:‬‬ ‫وہ اقراد جو امام معصوم کی نیروی کرئے ہیں اتھیں امامی کہا جانا ہے‪ ،‬پہاں امام سے مراد ان یا عشر ای مہ ہیں جن میں سے‬ ‫ٓ‬ ‫ے امام حصرت علی(ع) اور اچری امام حصرت مہدی(ع) ہیں‪ ،‬جونکہ شیعہ قرفوں میں زندی اور‬ ‫سب سے پہل‬ ‫اسماعیلی تھی نائے جائے ہیں لہذا ہر امامی کو شیعہ کہا جانا ہے لیکن یہ ضروری پہیں کہ ہر شیعہ امامی ہو ( پہاں عموم‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫حصوص من وجہ کی نسنت ہے)‪ ،‬قرف ٔہ امامنہ کو قرف ٔہ جعقری تھی کہئ‬ ‫ل فظ شیعہ رسول اسالم کے دور میں را تج تھا‪ ،‬جونکہ رسول اسالم ئے قرمانا تھا‪:‬‬ ‫علی و شیعته ھم الفائزون یوم القیامة‬ ‫اور اوانل میں اثوذر‪ ،‬مقداد اور سلمان قارسی کو شیعہ علی کہا جانا تھا۔‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ے والے میدرجہ ذنل امور ئر اعی قاد ر کھئ‬ ‫امامنہ مذہب کے ما بئ‬ ‫‪۰‬۔ جدا کا عادل ہونا‪۶ ،‬۔ رسول اور ای مہ کا معصوم ہونا‪۰ ،‬۔ جالقت کا میصوص من ہللا ہونا‪۳ ،‬۔ علم معصومین کا لدنی ہونا‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۹‬۔ م طلقا جدا کی رونت کا مجال ہونا‪۲ ،‬۔ قران مج ید کا مجلوق ہونا۔‬ ‫امامنہ مذہب کے قق ہی میانی یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪۰‬۔ قران‪۶ ،‬۔ شنت (جدنث معصومین لیہم السالم)‪۰ ،‬۔ اجماع‪۳ ،‬۔ عقل۔‬

‫‪331‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قرف ٔہ زندیہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫یہ قرفہ زند بن علی بن حسین(ع) سے میشوب ہے‪ ،‬ح یاب زند سنہ ‪۲۲‬ھ کو ن یدا ہوئے اور سنہ ‪۰۶۰‬ھ کو وقات نانی‪ ،‬اپ‬ ‫ے ہسام بن عید الملک ئر چروج کیا اور اس امر میں‬ ‫ئے امامت امام ناقر و امام صادق علیہما السالم کو ناقذ کرئے کے لئ‬ ‫ے ہوئے قرمانا ‪:‬‬ ‫درج ٔہ شہادت ئر قائز ہوئے‪ ،‬ح یاب زند کی قرنانی کو امام صادق علنہ السالم ئے شرا ہئ‬ ‫انم ا دعا الی الرضا من آل محمد‪ ،‬و لو ظفر لوفی بما دعا الیہ‬ ‫ٓ‬ ‫ص‬ ‫ئے سک اپہوں ئے لوگوں کو ال دمحم کی طرف دعوت دی اور اگر وہ کامیاب ہوئے ثو ان کا م طلوب جا ل ہو جانا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے لیکن ان کے نیروکار رای‪ ،‬ق یاس‪ ،‬اشیحسان‪،‬‬ ‫زند بن علی کے قق ہی میانی‪ :‬قران‪ ،‬شنت رسول و اہلییت ت ھ‬ ‫مصا لح مرسلہ‪ ،‬اشتصجاب کو تھی ان میانی میں سامل کرئے ہیں۔‬

‫قرف ٔہ ِاناضنہ‪:‬‬ ‫اس قرقے کی نسنت عید ہللا ابن ِاناض کی طرف دی جانی ہے جو سنہ ‪ ۶۳‬ھ میں ن یدا ہوئے اور سنہ ‪ ۸۲‬ہحری میں‬ ‫ے ہے‪ ،‬یہ قرفہ جوارج کے قرفوں میں سے انک ہے گرجہ‬ ‫ے والوں کو اناضی کہئ‬ ‫وقات نانی‪ ،‬عید ہللا ابن ِاناض کے ما بئ‬ ‫ے والے اس نات کو فیول پہیں کرئے‪ ،‬لیکن اکیر مورخین ئے قرف ٔہ اناضی کو جارحی قرفہ قرار دنا‬ ‫اس قرقے کے ما بئ‬ ‫ہے۔‬ ‫قرف ٔہ اناضنہ کے ح ید اعی قادات یہ ہیں‪:‬‬ ‫تفنہ کا ضرف فول میں جائز ہونا‪ ،‬اطاعت گذار سے دوشنی اور گیاہکار سے ئرانت کا اظہار کرنا‪ ،‬ق یامت کے دن جدا کی‬ ‫رونت کا ممکن یہ ہونا‪ ،‬مرنکب گیاہ کبیرہ کا کاقر ہونا‪ ،‬وہ امامت جو وضنت کے ذرتعہ ہو اس کا ناطل ہونا۔‬ ‫اس قرقے کے قق ہی میانی سات ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ قران‪۶ ،‬۔ شنت‪۰ ،‬۔ ق یاس‪۳ ،‬۔ اشیحسان‪۹ ،‬۔ مصا لح مرسلہ‪۲ ،‬۔ صجانی کا فول‪۳ ،‬۔ اسیدالل ۔‬

‫‪332‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫دور جاضر میں اس قرقے کے نیروکار عمان‪ ،‬ل بت یا‪ ،‬چزائر‪ ،‬ثونس‪ ،‬حصرموت‪ ،‬ی من‪ ،‬اور مصر میں نائے جائے ہیں۔‬

‫قرف ٔہ جیفنہ‪:‬‬ ‫ے جو سنہ ‪ ۸۹‬ھ کو ن یدا ہوئے اور سنہ ‪۰۹۹‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬اثوحییفہ انکی کییت تھی‬ ‫اس قرقے کے نانی تعمان بن نانت تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں‪ ،‬اس مذہب کے نیروکار کو جیقی کہا جانا ہے۔‬ ‫اور اپ کو اہلسنت امام اعظم تھی کہئ‬ ‫ے کہ انمان میں درجات پہیں ہوئے نلکہ سب کا انمان انک ہی مرنیہ ئر قائز ہونا ہے اور جدا ہی انسان‬ ‫اثوحییفہ معی قد تھ‬ ‫سے ن یکی و ئرانی کروانا ہے۔‬ ‫اس قرقے کے قق ہی میانی ‪ ۸‬ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ کیاب‪۶ ،‬۔ شنت‪۰ ،‬۔ ق یاس‪۳ ،‬۔ اشیحسان‪۹ ،‬۔ افوال اصجاب‪۲ ،‬۔ اجماع‪۳ ،‬۔ عرف‪۸ ،‬۔ حیل شرعنہ۔‬

‫قرف ٔہ مالکنہ‪:‬‬ ‫یہ مذہب مالک بن انس سے میشوب ہے جو سنہ ‪ ۰۰‬ھ میں ن یدا ہوئے اور سنہ ‪۰۳۰‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬اس مذہب کے‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫نیرو کار کو مالکی کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور اپ کے قق ہی میانی ‪ ۸‬ہیں‪:‬‬ ‫مالک بن انس رونت جدا کے قانل ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔قران‪۶ ،‬۔شنت‪۰ ،‬۔اجماع(اجماع ققہائے مدنیہ)‪۳ ،‬۔ق یاس(رائے)‪۹ ،‬۔اشیحسان‪۲ ،‬۔عرف‪۳ ،‬۔مصا لح مرسلہ‪،‬‬ ‫‪۸‬۔سد ذرا تع۔‬

‫‪333‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قرف ٔہ سافعنہ‪:‬‬ ‫اس مذہب کو دمحم ابن ادرنس ساف عی سے نسنت جاصل ہے جو سنہ ‪ ۰۹۹‬ھ میں ن یدا ہوئے اور سنہ‪۶۹۳‬ھ میں وقات نانی‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ قران مجلوق پہیں ہے اور جدا ق یامت میں‬ ‫ے ہیں‪ ،‬دمحم ابن ادرنس معی قد تھ‬ ‫اس مذہب کے نیروکار کو ساف عی کہئ‬ ‫دکھانی دنگا‪ ،‬ان کے قق ہی میانی جار ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔قران‪۶ ،‬۔شنت‪۰ ،‬۔اجماع‪۳ ،‬۔ق یاس۔‬

‫قرف ٔہ حت یلنہ‪:‬‬ ‫یہ قرفہ اجمد بن دمحم بن حت یل کی طرف میشوب ہے‪ ،‬جیھیں امام اجمد بن حت یل تھی کہا جانا ہے اور جو ان کا نیروکار ہے اسے‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫حت یلی کہئ‬ ‫اجمد بن حت یل سنہ ‪ ۰۲۳‬ہحری کو تعداد میں ن یدا ہوئے اور سنہ ‪ ۶۳۰‬ھ میں وقات نانی۔‬ ‫حت یلی قرقے کے اہم اعی قادات یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫س‬ ‫‪۰‬۔ ق یامت کے دن جدا کا دکھانی دن یا‪۶ ،‬۔ ببعمیر اسالم کا جدا کو دیکھیا‪۰ ،‬۔ قران کا مجلوق یہ ہونا‪ ،‬رسول کا فبع قرار نانا۔‬ ‫اس قرقے کے قق ہی میانی ‪ ۳‬ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ کیاب‪۶ ،‬۔ شنت‪۰ ،‬۔ فیوائے صجانی‪۳ ،‬۔ جدنث مرسل و ضعیف‪۹ ،‬۔ ق یاس‪۲ ،‬۔ مصا لح مرسلہ‪۳ ،‬۔ سد ذرا تع۔‬ ‫ٓ‬ ‫دائرۃ المعارف الحس بینہ کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے مذکورہ نمام قرفوں کے معبیر نا غیر معبیر‬ ‫ت‬ ‫ہوئے ئر فصیلی گق یگو کرئے کے تعد انک مح ق قایہ جدول پیش کیا ہے حس کے ذرتعہ کسی تھی مسیلہ میں ان قرفوں میں‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫موجود ہ اح یالف اراء کو تجونی درک کیا جا سکیا ہے۔ اس لمی کاوش کے تعد مصتف ئے ادوار نشر تع کے انک اہم دور‬ ‫تعنی دور مرجعیت ققھا شیعہ ئر روشنی ڈالی ہے۔‬

‫‪334‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ققہاء کی مرجعیت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫حس طرح رسول اسالم ئے تعد میں ئاے والے جلقاء کا تعین قرمانا تھا نالکل اسی طرح امام مہدی(ع) ئے تھی‬ ‫ے شیعوں سے قرمانا‪:‬‬ ‫ے ا بئ‬ ‫عییت کیری سے پہل‬ ‫و اما الحوادث الواقعة فارجعوا فیھا الی رواۃ حدیثنا فانھم حجتی علیکم و انا حجة ہللا علیھم (وسانل‬ ‫السیعہ جلد ‪ ۶۳‬ص ‪)۰۳۹‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے پیش ئاے والے مسانل میں راونان جدنث کی طرف رجوع کرو کیونکہ وہ ہماری طرف‬ ‫تعنی ہمارے زمای ٔہ عییت میں بئ‬ ‫سے یم ئر حجت ہیں اور ہم ہللا کی طرف ان ئر حجت ہیں‪ ،‬لہذا قرف ٔہ امامنہ کے نیروکار عییت کیری میں راونان جدنث‬ ‫ٓ‬ ‫(جیھیں قفنہ و مرجع ت قلید تھی کہا جانا ہے) کی طرف رجوع کرئے ہیں ناکہ وہ مسانل مشیجدیہ میں قران‪ ،‬جدنث‪ ،‬عقل اور‬ ‫اجماع کی روشنی میں احکام کا تعین کرسکیں۔‬ ‫ش‬ ‫ے نلکہ وہ قفنہ الثق ت قلید ہونا‬ ‫جونکہ مرجعیت انک اہم میصب ہے لہذا اہل نسیع ہر قفنہ کی ت قلید کو جائز پہیں مجھئ‬ ‫ے ضروری ہے کہ وہ میدرجہ‬ ‫ہے جو صقات حشنہ اور علوم مج یلفہ میں اعلی درجہ ئر قائز ہو‪ ،‬لہذا ہر جامع الشرائط قفنہ کے لئ‬ ‫ذنل صقات کا میحمل ہو‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ عاقل ہو‪۶ ،‬۔ ذہین ہو‪۰ ،‬۔ قراموش کار یہ ہو‪۳ ،‬۔ ن یک عق یدہ رکھیا ہو‪۹ ،‬۔ اجیہاد کی کامل اشیعداد و صالجیت رکھیا ہو‪۲ ،‬۔‬ ‫میوازن سحصنت و کردار کا مالک ہو‪۳ ،‬۔ عادل ہو‪۸ ،‬۔ دلیل کا نا تع ہو‪۰ ،‬۔ دبیوی و دبنی امور کو اچھی طرح جالئے کی‬ ‫قانلیت رکھیا ہو۔‬ ‫ع‬ ‫لمی اعت یار سے انک قفنہ کا میدرجہ ذنل علوم ئر مہارت رکھیا بیجد ضروری ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫‪۰‬۔ علم لع ِت عرنی‪۶ ،‬۔ علم ضرف‪۰ ،‬۔ علم تجو‪۳ ،‬۔ علم نالعت‪۹ ،‬۔ علوم قران‪۲ ،‬۔ علوم جدنث‪۳ ،‬۔ علم کالم‪۸ ،‬۔ علم‬ ‫اصول قفہ‪۰ ،‬۔ علم قفہ‪۰۹ ،‬۔ علوم اجتماغی۔‬

‫‪335‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قفنہ کی والنت‪:‬‬ ‫جو قفنہ مذکورہ نمام صقات اور علوم میں اعلی درجے ئر قائز ہو وہ مومئین ئر والنت رکھیا ہے لہذا اس مقام ئر مصتف‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے والنت قفنہ ئر فصل و مدلل تجث قرمانی ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر اجمال کے ساتھ اس‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫تجث ئر روشنی ڈا لئ‬

‫والنت اور اسکی اقسام‪:‬‬ ‫ٔ‬ ‫ے ہیں جو کسی سی نا سحص نا دوثوں ئر ہونا ہے (ھو حق التصرف‬ ‫لعت میں والنت اس نصرف کے جق کو کہئ‬ ‫السلطوی علی شیء او شخص او معا)۔‬ ‫ے ہیں‪ ،‬جاہے وہ موجودات انسان ہوں نا غیر انسان‪،‬‬ ‫اور اص طالح شرع میں موجودات ئر شرغی نصرف نا نسلط کو والنت کہئ‬ ‫انک قرد ہو نا ثورا اجتماع (ھو حق التصرف و االستیالء الشرعی علی الموجودات سواء کان انسانا او غیرہ‪،‬‬ ‫فردا کان اور مجتمعا)۔‬

‫والنت کی میدرجہ ذنل اقسام ہیں‪:‬‬

‫والنت نکوپینہ ذانیہ‪:‬‬ ‫وہ ذانی اور م طلق جق کہ حس کی پت یاد ئر جداوند عالم کان یات اور مجلوقات کو جلق قرمانا ہے اور ان میں نصرف کرنا ہے۔‬

‫والنت نکوپینہ نکری منہ‪:‬‬ ‫ع‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے اپت یاء اور ای مہ لیہم السالم کو کان یات اور مجلوقات ئر نصرف کا جق ع طا قرمانا ہے لہذا اس والنت کو‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے ہیں‪ ،‬حس کے ذرتعہ وہ معحزات اور کرامات تھی اتجام د بئ‬ ‫والنت نکوپینہ نکری منہ کہئ‬ ‫‪336‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫والنت نشرتعنہ ذانیہ‪:‬‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫قاثونگذاری کا ذانی جق جدا کو جاصل ہے لہذا اس امر میں ذات اجدنت کی والنت کو والنت نشرتعنہ ذانیہ کہئ‬

‫والنت نشرتعنہ نکری منہ‪:‬‬ ‫ع‬ ‫رسول اسالم اور ا ٔ‬ ‫ے ہیں تعنی اتھیں نشر تع کا جق جدا ئے ع طا قرمانا‬ ‫مہ اہلییت لیہم السالم نالعرض نشر تع کا جق ر کھئ‬ ‫ی‬ ‫ہے۔‬ ‫اس نات میں کسی قشم کا اح یالف پہیں ہے کہ ہر جامع الشرائط قفنہ کو والنت جاصل ہے ‪ ،‬لیکن اس کے‬ ‫ٓ‬ ‫دائ ٔ‬ ‫رہ احت یارات میں علماء کے درمیان اح یالف نانا جانا ہے‪ ،‬لہذا مصتف ئے اس مقام ئر قران و جدنث کی روشنی میں‬ ‫ٓ‬ ‫مدلل گق یگو کے تعد ابنی رائے کو پیش قرمانا ہے‪ ،‬والنت کی مزند میدرجہ ذنل اقسام ئر ثوجہ کرئے سے انت ہللا دمحم صادق‬ ‫ٓ‬ ‫ع تح‬ ‫کرناسی کی لمی و فیقی کاوش سے اگاہی جاصل ہونی ہے کہ اتھوں ئے کس قدر حمیت کے ساتھ موصوع سے مرثوط‬ ‫ٓ‬ ‫چہات کو اسکار کیا‪ ،‬اور اسی کے ضمن میں مصتف کی رائے تھی واصح ہوجانی ہے‪:‬‬ ‫والنت م طلفہ‪:‬‬ ‫وہ والنت حس میں احت یارات کا دائرہ ندون ق ید و شرط ہو ۔‬

‫والنت مق یدہ‪:‬‬ ‫وہ والنت جو ئرجالف والنت م طلفہ ‪ ،‬مق ید ہو۔‬

‫‪337‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫والنت عامہ‪:‬‬ ‫وہ والنت جو نمام جامع الشرائط اقراد میں نانی جانی ہے۔‬

‫والنت جاضہ‪:‬‬ ‫ے ناپ کی والنت اوالد ئر۔‬ ‫وہ والنت جو جاص اقراد میں نانی جانی ہے حیس‬ ‫ٓ‬ ‫مذکورہ ناال تف تمات کے پیش ب ظر انت ہللا دمحم صادق الکرناسی کے ئزدنک معصومین علیہم السالم کی والنت‪ ،‬والنت ع ٔ‬ ‫امہ‬ ‫ش‬ ‫م طلفہ ہے اور نمام جامع الشرائط ققہا کو والنت عامہ غیر م طلفہ جاصل ہے۔‬

‫والنت قفنہ اور والنت سوری‪:‬‬ ‫نمام اجتماغی‪ ،‬افیصادی اور سیاسی امور میں جامع الشرائط ققہاء کو مومئین ئر والنت جاصل ہے جونکہ امام مہدی علنہ السالم‬ ‫ئے قرمانا‪:‬‬ ‫و اما الحوادث الواقعة فارجعوا فیھا الی رواۃ حدیثنا فانھم حجتی علیکم و انا حجة ہللا علیھم (وسانل‬ ‫السیعہ جلد ‪ ۶۳‬ص ‪)۰۳۹‬‬ ‫لہذا اگر دور عییت میں کسی تھی ملک میں شی عی جکومت ئرقرار ہو جائے ثو نمام مومئین ئر واحب ہوگا کہ وہ دبنی امور کی‬ ‫طرح جکومنی امور میں تھی جامع الشرائط ققہاء کی نیروی کربں جونکہ مذکورہ جدنث کی روشنی میں معصوم ئے ققہاء کرام کو‬ ‫دبن و دن یا میں ہم ئر حجت قرار دنا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے انا انک قفنہ کاقی ہے؟ نا تھر جامع الشرائط‬ ‫لیکن سوال یہ پیش ا نا ہے کہ کسی تھی جکومت کو جالئے کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫ققہاء کی کمینی ہو ‪ ،‬اس امر میں ققہاء کے درمیان اح یالف ہے لہذا انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے والنت قفنہ اور‬ ‫ت‬ ‫والنت سورائے ققہاء ئر فصیلی تجث قرمانی ہے‪ ،‬ہم پہاں اجیصار سے اس تجث کو پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫‪338‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا حمینی قرمائے ہیں کہ عییت امام مہدی(ع) میں جو قفنہ عادل‪ ،‬سجاع‪ ،‬مدئر‪ ،‬مدئر‪ْ ،‬جاالت زمایہ سے‬ ‫ے ہوں اور اسکی ق یادت کو تھی فیول کرئے ہوں وہ مومئین ئر والنت رکھیا ہے لیکن اگر کسی‬ ‫ے سب پہجا بئ‬ ‫ناخیر ہو اور حس‬ ‫انک قرد میں یہ نمام شرائط یہ نانی جابیں ثو جامع الشرائط ققہاء کو والنت جاصل ہوگی (قاثون حمہوری اسالمی ائران‪ :‬ص‬ ‫‪ ۶۶‬م ٔ‬ ‫ادہ جامشہ)‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم سیرازی کا ب ظریہ اس ب ظریہ سے نالکل ئرعکس ہے حشمیں وہ قرمائے ہیں کہ نمام جامع الشرائط ققہاء‬ ‫( ‪)1‬‬

‫ے سورائے ققہاء کو والنت جاصل ہوگی‬ ‫ے سب سے پہل‬ ‫کو والنت جاصل ہے لہذا کسی تھی جکومت کو جالئے کے لئ‬ ‫لیکن اگر جامع الشرائط قفنہ انک ہی ہو ثو وہ ولی قفنہ قرار نائے گا۔‬ ‫ٓ‬ ‫مصتف انت ہللا الکرناسی ئے انک طوالنی تجث کے تعد قرمانا کہ ق یادت اور والنت سورائے ققہاء کو‬ ‫جاصل ہے‪ ،‬لیکن اگر جامع الشرائط قفنہ انک ہی ہو ثو اسے ق یادت جاصل ہوگی لیکن ان دوثوں صورثوں میں قفنہ نا ققہاء‬ ‫ے الزم و ضروری ہے کہ وہ اجتماغی‪ ،‬سیاسی‪ ،‬افیصادی‪ ،‬اور دنگر جکومنی امور میں اہل معرقت اور اہل تحصص سے‬ ‫کے لئ‬ ‫مشورہ کربں۔‬

‫نشر تع اسالم کی پیشرقت‪:‬‬ ‫ے ہوئے ان نمام شہروں کے نارے میں‬ ‫مصتف ئے اس عیوان کے تجت نشر تع اسالم کی پیشرقت ئر روشنی ڈا لئ‬ ‫ت‬ ‫ع‬ ‫فصیلی گق یگو قرمانی ہے کہ جن کو نشر تع اسالم کی پیشرقت میں لمی مراکز ہوئے کی ح بییت جاصل ہے ‪ ،‬کیاب "الحسین و‬ ‫پہ ع‬ ‫ے لمی مرکز تعنی مدنیہ میورہ ئر گق یگو کی گنی ہےاور تفنہ مراکز علمنہ کے نذکرہ کو جلد‬ ‫الیشر تع االسالمی" جلد دوم میں ضرف ل‬ ‫سوم ئر موکول کیا گیا ہے۔‬

‫‪ -1‬ہم ئے تھی اسی رائے کو احت یار کیا ہے(میرزا دمحم جواد شبیر)۔‬

‫‪339‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫مدنیہ میورہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫سب سے پہال لمی مرکز مدنیہ میورہ تھا چہاں جود رسول اسالم ئے ت لیم و ئربیت کا سلسلہ شروع قرمانا اور اپ کی درسگاہ‬ ‫ع‬ ‫سے پیشمار ساگرد وں ئے ئربیت نانی‪ ،‬رسول اسالم کی وقات کے تعد تھی اسی شہر کو لمی مرکز نت جاصل رہی‪ ،‬اس دور‬ ‫ع‬ ‫میں تھی ت لیم و ئربیت کےسلسلہ کو ناب مدنیۃ العلم علی بن ابت طالب(ع) ئے جاری رکھا‪ ،‬لیکن موال علی (ع) کے‬ ‫ع‬ ‫دور جکومت میں یہ لمی مرکز مدنیہ سے کوفہ میی قل ہوا اور تھر شہادت امیر المومئین کے تعد امام حسن(ع) کے دور میں‬ ‫ع‬ ‫ے دور میں پیشمار ساگرد ئربیت قرمائے‪ ،‬جن کی‬ ‫مدنیہ میورہ کو دونارہ لمی مرکزنت جاصل ہونی‪ ،‬امام حسن(ع) ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫تعداد ‪ ۳۹‬تھی‪ ،‬انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ان نمام ساگردوں کی سوا تح حیات ئر فصل روشنی ڈالی ہے‪ ،‬قاربین‬ ‫ے کیاب کی طرف رجوع قرمابیں۔‬ ‫مزند اطالعات کے لئ‬

‫‪340‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬ ‫جلد سوم‬ ‫کیاب "امام حسین اور شرتعت اسالمی" دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے‪ ،‬حس کی پیشری جلد (جو ‪ ۲۰۸‬ص فجات ئر‬ ‫ٓ‬ ‫مشتمل ہے) سنہ ‪۰۰۰۳‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۳‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫م طالب کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخظہ قرمابیں۔‬

‫‪341‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪342‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫دبنی مراکز اور ت لیمی درسگاہوں کی نار تخ‬

‫انسان حب اس چہان میں قدم رکھیا ہے ثو وہ دن یا کے جاالت سے ئے خیر ہونا ہے‪ ،‬اس کی میال نالکل اس سق ید کاعذ‬ ‫ے حس طرف گھمانا جائے وہ‬ ‫کی سی ہونی ہے کہ حس ئر کجھ تھی پہیں لکھا گیاہے‪ ،‬نا تھر اس ثودے کی سی ہونی ہے کہ حس‬ ‫اس طرف مڑ جانا ہے‪ ،‬لہذا ہر ثو مولود تجہ ماں کی س ققت اور ناپ کی محیت سے ماثوس ہوکر پہت ساری خیزوں کو اتھیں‬ ‫سے شیکھیا ہے‪ ،‬پ ہی وجہ ہے کہ ماں کی گود کو پہلی درسگاہ کہا گیا ہے‪ ،‬چہاں سے انسان کو سب سے پہلی ئربیت جاصل‬ ‫ے تھی کامیاب اقراد اس دن یا میں گزرے ہیں اگر انکی زندگی کا جائزہ لیا جائے ثو معلوم ہونا ہے کہ ان کے‬ ‫ہونی ہے‪ ،‬حیئ‬ ‫والدبن ئے ان کی ئربیت میں اہم کردار ادا کیا ہے۔‬ ‫رسول اسالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫کل مولود یولد علی فطرة االسالم حتی یکون ابواہ یھودانہ و ینصرانہ (سقینۃ الیجار جلد ‪ ،۰‬ص ‪)۰۸۰‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬رسول اسالم کی اس‬ ‫ہر ثومولود ف ظرت اسالم ئر ن یدا ہونا ہے لیکن اس کے ماں ناپ اسے پہودی نا نصرانی ن یا د بئ‬ ‫جدنث میارکہ سے واصح ہونا ہے کہ ہر ثومولود کی سعادت اور س قاوت کے ذمہ دار اس کے والدبن ہیں‪ ،‬لہذا والدبن کے‬ ‫ٓ‬ ‫ے ان یدانی درسگاہ کی اصالح کرنا بیجد ضروری ہے ناکہ اگے جل کر انک معلم اسی مصتوط پت یاد ئر انک نلید عمارت کو تعمیر‬ ‫لئ‬ ‫ع‬ ‫ے ‪ ،‬نسا اوقات انسا تھی دیکھا گیا ہے انسان کو ان یدانی ت لیم ثو اچ ھی ملنی ہے لیکن انک نامیاسب درسگاہ میں‬ ‫کر سک‬ ‫ٓ‬ ‫شمولیت کی وجہ سے اس کی دن یا و اچرت دوثوں ن یاہ ہو جائے ہیں‪ ،‬لہذا اس مقام ئر والدبن کی ذمہ دارناں دوح یداں ہو‬ ‫ت‬ ‫ے ضروری ہونا ہے کہ وہ ابنی اوالد کو اس درسگاہ میں ھیجیں کہ حس میں وہ ہدانت کی راہ ئر‬ ‫جانی ہیں‪ ،‬اور ان کے لئ‬ ‫گامزن رہ سکیں۔‬

‫‪343‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے دائرۃ المعارف الحسینی کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے‬ ‫درسگاہ کی اہمیت کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫کیاب "الحسین و الیشر تع االسالمی" کی جلد سوم ( جو ‪ ۲۰۸‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۳‬میالدی میں چھپ کر مت ظر‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫عام ئر اجکی ہے) میں ان نمام شہروں ئر فصل روشنی ڈالی ہے کہ جیھیں نار تخ اسالم میں دبنی علوم کا مرکز ہوئے کا‬ ‫ع‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫شرف جاصل رہا ہے‪ ،‬ہم اس مقام ئر ان لمی مراکز ئر اجمال کے ساتھ روشنی ڈا لئ‬

‫مدنیہ میورہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ع‬ ‫سب سے پہال لمی مرکز مدنیہ میورہ تھا چہاں جود رسول اسالم ئے ت لیم و ئربیت کا سلسلہ شروع قرمانا اور اپ کی درسگاہ‬ ‫ع‬ ‫سے پیشمار ساگرد وں ئے ئربیت نانی‪ ،‬رسول اسالم کی وقات کے تعد جلقاء کے دور میں تھی اسی شہر کو لمی مرکز نت‬ ‫ع‬ ‫جاصل رہی‪ ،‬اس دور میں ت لیم و ئربیت کےسلسلہ کو ناب مدنیۃ العلم علی بن ابت طالب(ع) ئے جاری رکھا‪ ،‬لیکن موال‬ ‫ع‬ ‫علی (ع) کے دور جکومت میں یہ لمی مرکز مدنیہ سے کوفہ میی قل ہوا اور شہادت امیر المومئین کے تعد امام حسن(ع)‬ ‫ع‬ ‫ے دور میں ‪ ۳۹‬جاص ساگرد ئربیت‬ ‫کے دور میں مدنیہ میورہ کو دونارہ لمی مرکزنت جاصل ہونی‪ ،‬امام حسن(ع) ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫م‬ ‫قرمائے ‪ ،‬انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ان نمام ساگردوں کی سوا تح حیات ئر فصل روشنی ڈالی ہے‪ ،‬قاربین مزند‬ ‫ے کیاب الحسین والیشر تع االسالمی کہ جلد دوم ص فجہ ‪ ۰۶۶‬کی طرف رجوع قرمابیں۔‬ ‫اطالعات کے لئ‬ ‫ع‬ ‫امام حسن(ع) کے ساتھ ساتھ امام حسین(ع) ئے تھی مدنیہ میں ت لیم و ئربیت کا سلسلہ جاری رکھا‪ ،‬اور یہ‬ ‫دور سنہ ‪ ۳۹‬سے شروع ہو کر سنہ ‪ ۲۹‬ھ ئرجیم ہوا‪ ،‬امام حسین(ع) کی شہادت کے تعد امام سجاد(ع) ئے سنہ ‪ ۲۰‬ھ سے‬ ‫ٓ‬ ‫م ت‬ ‫ٔ‬ ‫عرضہ دراز میں ‪ ۰۸۹‬سے زاند ساگردوں ئے‬ ‫سنہ ‪۰۹‬ھ نک اسی شہر میں لوگوں کو علوم ال دمحم سے س فیض قرمانا‪ ،‬اس‬ ‫ٓ‬ ‫اپ سے کسب فیض کیا جن میں جائر بن عید ہللا انصاری‪ ،‬انان بن تعلب الیکری‪ ،‬نانت بن دن یار التمالی‪ ،‬زند بن علی بن‬ ‫الحسین الہاشمی‪ ،‬سعید بن جبیر الکوقی‪ ،‬سعید بن مسنب المحرومی‪ ،‬دمحم بن مسلم بن عید ہللا الزہری کو نماناں ح بییت جاصل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے‪ ،‬امام سجاد علنہ السالم کے ارسادات کو اپ کے اصجاب ئے ح‬ ‫صیف ٔہ سجادیہ‪ ،‬میاجات حمس عشرۃ‪ ،‬رسالۃ‬ ‫و‬ ‫ج‬ ‫ا‬ ‫رمان‬ ‫ق‬ ‫مع‬ ‫ح‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫الحقوق‪ ،‬کیاب علی بن حسین کے نام سے شہرت ر کھئ‬ ‫‪344‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫امام ناقر و امام صادق علیہما السالم کا دور سنہ ‪ ۰۹‬ھ سے شروع ہو کر سنہ ‪ ۰۳۸‬ھ ئر جیم ہوا‪ ،‬حس میں اموی‬ ‫جکومت ضعیف ہونی گنی پہاں نک کہ میقرض ہوگنی اس دور میں امام ناقر و صادق(ع) ئے مکیب اہلییت کی جوب‬ ‫ٓ‬ ‫ئرو تج کی‪ ،‬اپ دوثوں اماموں سے پیشمار اقراد پہرمید ہوئے جن میں سے زرارہ‪ ،‬ئرند‪ ،‬اثونصیر‪ ،‬دمحم بن مسلم‪ ،‬جائر بن ئزند‬ ‫جعقی کو جاضی اہمیت جاصل ہے‪ ،‬ضرف جائر جعقی ئے امام ناقر سے ‪ ۰۹‬ہزار روانات کو ت قل کیا ہے‪ ،‬امام صادق(ع)‬ ‫ع‬ ‫کے تعد امام علی تقی(ع) نک مدنیہ میورہ کو لمی مرکزنت جاصل رہی۔‬

‫مکہ مکرمہ‪:‬‬ ‫ع‬ ‫گرجہ رسول اسالم کی والدت اور تعیت مکہ مکرمہ میں وا فع ہونی‪ ،‬لیکن ہحرت رسول کی وجہ سے اس شہر کو لمی مرکزنت‬ ‫ے لہذا اس‬ ‫جاصل یہ ہو سکی‪ ،‬موال علی(ع) کی شہادت کے تعد عید ہللا ابن عیاس اکیر مکہ مکرمہ میں زندگی نشر کرئے ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫دور میں اپ ئے ت لیم و ئربیت کا سلسلہ شروع کیا‪ ،‬عید ہللا ابن عیاس مکہ مکرمہ میں انک دن درس قفہ‪ ،‬دوشرے دن‬ ‫ے دن درس سعر ‪ ،‬اور ناتجوبں دن عرب کے وافعات کو ن یان قرمائے‬ ‫درس ناونل‪ ،‬پیشرے دن درس عزوات‪ ،‬جو تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور اس طرح مکہ مکرمہ انک مدت نک‬ ‫ے‪ ،‬واف ٔعہ چرہ کے تعد اصجاب و ناتعین مدنیہ سے ہحرت کرکے مکہ مکرمہ ا گئ‬ ‫تھ‬ ‫ع‬ ‫ے لمی مرکز ن یا رہا۔‬ ‫کے لئ‬

‫کوفہ‪:‬‬ ‫موال امیر المومئین علی ابن انی طالب علنہ السالم ئے ح یگ جمل کے تعد سنہ ‪ ۰۲‬ھ میں کوفہ کو ابنی جکومت کا دار الجالفہ‬ ‫ع‬ ‫قرار دنا‪ ،‬حس کے تعد پیشمار اصجاب کوفہ میی قل ہوئے ‪ ،‬اور اس ش ہر کو لمی مرکزنت جاصل ہونی۔‬ ‫رسول اسالم کی وقات کے تعد جاکمان وقت ئے جدنث رسول کے ت قل کرئے ئر نان یدی عاند کی تھی‪ ،‬لیکن موال امیر‬ ‫ع‬ ‫ے دور میں صجایہ کو ت قل جدنث کی اجازت قرمانی‪ ،‬اس دور میں چہاں موال علی(ع) مسعول ت لیم و‬ ‫المومئین ئے ا بئ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے وہیں حصرت زبیب سالم ہللا علیہا تھی کوفہ کی عورثوں کو تفسیر قران اور شرغی احکام کی ت لیم دبنی تھیں۔‬ ‫ئربیت تھ‬ ‫‪345‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫کرنالء معلی‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫سنہ ‪۲۲‬ھ میں حب روض ٔہ امام حسین علنہ السالم امادہ ہوا ثو اس دور کے ققہاء ئے اہشنہ اہشنہ اس شہر میں ق یام کرنا‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے اور وہاں ت لیم و‬ ‫شروع کیا اور حس وقت امام صادق (ع) کا دور انا ثو اپ کیرت سے کرنال نشرتف لے جائے لگ‬ ‫ٓ‬ ‫ے مقام امام صادق(ع)‬ ‫ئربیت میں مسعو ل ہوئے‪ ،‬اج تھی مرقد امام حسین(ع) سے قرنب انک مقام ہے کہ حس‬ ‫سے ناد کیا جانا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے اپ ئے بین‬ ‫امام موسی کاطم علنہ السالم تھی تقرن یا سنہ ‪ ۰۹۰‬ھ کو کرنال نشرتف الئے اور کجھ مدت کے لئ‬ ‫ٓ‬ ‫الحرمین کے مقام ئزقاق السادۃ میں ق یام قرمانا ‪ ،‬اپ کے اطراف تھی شیعہ حمع ہوئے اس طرح امام کاطم (ع) تھی‬ ‫ع‬ ‫ے اصجاب کی ت لیم و ئربیت میں مسعول ہوئے۔‬ ‫اس مقام ئر ا بئ‬ ‫کرنال میں سب سے پہال مدرسہ سنہ ‪۰۲۰‬ھ میں سل طان عصد الدولہ ئے ناشیس کیا‪ ،‬حس کے تعد مدارس کی ناشیس ہونی‬ ‫ٓ‬ ‫م ت‬ ‫رہی اور اج نک امام حسین علنہ السالم کے سایہ میں علماء علوم دپینہ سے س فیض ہوئے ہیں۔‬

‫تعداد (کاطمنہ مشرفہ)‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫تعداد میں شیعوں کی نار تخ اس شہر کے وجود میں ئاے کے ساتھ شروع ہونی ہے‪ ،‬اس شہر کا مجلہ کرخ شیعیت کا مرکز ت ھا‬ ‫ے‪،‬اس شہر میں مج یلف مذاہب کے علماء ئے تھی زندگی کی‪ ،‬جن میں اہل‬ ‫‪ ،‬حس میں ئزرگان شیعہ زندگی نشر کرئے ت ھ‬ ‫شنت کے امام اثوحییفہ‪ ،‬امام اجمد بن حت یل تھی سامل ہیں۔‬ ‫ے سیاسی جاالت کو مد ب ظر‬ ‫سنہ ‪۶۹۳‬ھ میں حب مامون عیاسی ئے طوس سے تعداد کی طرف ہحرت کی ثو سب سے پہل‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے اس ئے امام جواد (ع) کو مدنیہ سے تعداد ئاے کی دعوت دی حس کے تعد اس دور کے اکیر ققہاء کو تھی‬ ‫ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے۔‬ ‫تعداد میں حمع کیا گیا ناکہ طوس میں پیش ئاے والے میاطروں کی صورت جال تعداد میں تھی ئرقرار رہ سک‬

‫‪346‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے)‬ ‫ے ہوئے اتھیں علم جاصل کرئے کی تجوئز پیش کر رہے ت ھ‬ ‫حب تعداد کے علماء (جو امام جواد (ع) کی کمشنی کو دیکھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫امام کے علم و کمال سے اگاہ ہوئے ثو اتھوں ئے اپ سے کسب علم کی جواہش کا اظہار کیا‪ ،‬حب نک امام جواد (ع)‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے اپ ئے ت لیم و ئربیت کا سلسلہ جاری رکھا۔‬ ‫تعداد میں نشرتف قرما ت ھ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور اپ میں‬ ‫ے تھ‬ ‫امام مہدی(ع) کے ثواب ارتعہ تھی تعداد میں امام کی طرف سے ن یانت کے قرانض اتجام د بئ‬ ‫ٓ‬ ‫سے ہر انک ئے اسی شہر میں وقات نانی‪ ،‬جن کی قیربں اج تھی تعداد میں موجود ہیں۔‬ ‫ک‬ ‫شہر تعداد میں دمحم بن تعقوب لینی‪ ،‬دمحم بن دمحم المق ید (شیخ مق ید)‪ ،‬سید مرنضی‪ ،‬سید رضی‪ ،‬دمحم بن حسن طوسی(شیخ طوسی)‬ ‫ٓ‬ ‫نی‬ ‫اور دنگر ح ید علماء شیعہ ئے لبغ علوم ال دمحم میں ابنی نمام زندگی کو ضرف کیا ہے۔‬

‫تحف اشرف‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫شہر تحف موال امیر المومئین علی بن ابت طالب کے وجود اقدس سے اناد ہوا ‪ ،‬گرجہ حصرت علی(ع) اس شہر میں سنہ ‪ ۳۹‬ھ کو‬ ‫ٓ‬ ‫دفن ہوئے‪ ،‬لیکن کوفہ میں جوارج و دشمیان اہلییت کی وجہ سے ‪ ۰۰۹‬سال نک اپ کی قیرمیارک ثوس یدہ رہی‪ ،‬اور سنہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے اور یہ شہر اناد ہو گیا۔‬ ‫‪۰۳۹‬ھ میں طاہر ہونی‪ ،‬حس کے تعد مجیان اہلییت اس شہر میں حمع ہوئے گئ‬ ‫ے دمحم بن حسن الظوسی(شیخ‬ ‫ے ‪ ،‬سب سے پہل‬ ‫شہر تحف و ہ نا ئرکت شہر ہے کہ چہاں پیشمار علماء ئے علوم جاصل کئ‬ ‫ع‬ ‫طوسی‪ ،‬شیخ ال طاتفہ) ئے سنہ ‪ ۳۹۹‬ھ میں اس شہر میں سکونت احت یار کی‪ ،‬حس کے تعد یہ شہر لمی مرکز میں ن یدنل ہوگیا۔‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫اس مقام ئر محقق زمان انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے ان نمام ققہاء و مراجع کرام کا فصیل کے ساتھ نذکرہ کیا ہے کہ‬ ‫جیھوں ئے تحف میں جوزہ ھای علمنہ کو وجود تحسا اور جیھیں جوزہ کی زعامت تھی جاصل تھی‪ ،‬ہم پہاں اجیصار کے ساتھ‬ ‫ان علماء اعالم کے نام پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫دمحم بن حسن الظوسی‪ ،‬حسن بن دمحم بن حسن الظوسی‪ ،‬دمحم بن حسن بن دمحم بن حسن الظوسی‪ ،‬علی بن حسین الکرکی‪ ،‬اجمد بن دمحم‬ ‫اردن یلی (مقدس اردن یلی)‪ ،‬دمحم مہدی بن مرنضی تحر العلوم‪ ،‬جعقر بن حصر الج یاحی‪ ،‬موسی بن جعقر کاسف الع طاء‪ ،‬علی بن‬ ‫جعقر کاسف الع طاء‪ ،‬حسن بن جعقر کاسف الع طاء‪ ،‬دمحم حسن بن ناقر الیحقی‪ ،‬مرنضی بن دمحم امین االنصاری(شیخ انصاری)‪،‬‬ ‫‪347‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ج‬ ‫ج‬ ‫حسین بن دمحم الکوہکمری‪ ،‬حسین بن لیل ال لیلی‪ ،‬دمحم کاطم بن حسین الحراسانی‪ ،‬دمحم کاطم بن عید الع ظیم ئزدی‪ ،‬فیح ہللا بن‬ ‫دمحم جواد االصقہانی‪ ،‬حسین بن عید الرجیم الیاپینی‪ ،‬اثو الحسن بن دمحم االصقہانی‪ ،‬عید الہادی بن اسماعیل السیرازی‪ ،‬محسن بن‬ ‫مہدی الحکیم‪ ،‬محمود بن علی الساہرودی‪ ،‬اثو القاشم بن علی اکیر الجونی‪ ،‬عید االعلی بن علی رصا السیزواری‪ ،‬علی بن دمحم ناقر‬ ‫السیسیانی۔‬

‫سامراء المشرفہ‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئر سنہ ‪ ۶۶۰‬ھ میں اناد کیا‬ ‫گرجہ شہر سامراء کی نار تخ پہت قدیم ہے لیکن عہد اسالمی میں اس شہر کو معیضم عیاسی کے کہئ‬ ‫ے‪ ،‬امام‬ ‫ے گئ‬ ‫گیا‪ ،‬اور میوکل عیاسی ئے امام تقی اور امام عسکری علیہما السالم کو اس شہر میں نالنا چہاں یہ دوثوں امام شہید کئ‬ ‫ع‬ ‫زمایہ علنہ السالم تھی اسی شہر میں میولد ہوئے لہذا اس شہر کو بین ای مہ ئے لمی مرکزنت ع طا کی‪ ،‬طول نار تخ میں نا تچ سو‬ ‫سے زاند ققہاء ئے اس شہر میں سکونت احت یار کی۔‬

‫سام‪:‬‬ ‫ع‬ ‫علماء مذہب امامنہ ئے قرن ہشیم ہحری سے سورنا کے شہر دمشق کو لمی مرکز قرار دنا‪ ،‬گرجہ قرن سوم و چہارم ہحری سے‬ ‫ٔ‬ ‫اس شہر میں شیعہ کی تعداد ئڑھنی گنی لیکن ہر دور میں امامنہ مذہب کے نیروکار اس شہر میں سحییوں اور سجت دناو میں‬ ‫رہے‪ ،‬اور شہید اول (صاحب کیاب لم ٔعہ دمسفنہ) کی شہادت تھی اسی شہر میں وا فع ہونی‪ ،‬لہذا اس شہر میں امامنہ مذہب‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫کے لمی مراکز کو زنادہ پیشرقت جاصل یہ ہو سکی‪ ،‬اج تھی سام میں ضرف ‪ ۰۶‬دبنی مدارس نائے جائے ہیں۔‬

‫‪348‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫جلب‪:‬‬ ‫ے شیعہ نادساہ تعنی شتف الدولہ ئے مقام راس الحسین اور مقام ح یاب محسن(امام‬ ‫شہر جلب میں جمدانئین کے پہل‬ ‫حسین(ع) کے س فط سدہ قرزند) کو سنہ ‪۰۹۰‬ھ میں تعمیر کروانا‪ ،‬قرن سوم سے قرن ششم ہحری نک اس شہر میں ئزرگ‬ ‫ٓ‬ ‫علماء شیعہ وجود میں ئاے جن کے اسامی ہم پہاں پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫علی بن دمحم الییوحی‪ ،‬حسین بن اجمد السیب عی‪ ،‬حسن بن علی الحرانی‪ ،‬علی بن عید الملک الجلنی‪ ،‬تقی بن تحم الجلنی‪،‬‬ ‫ن‬ ‫نانت بن اسلم الجلنی‪ ،‬حمزہ بن عید العزئز الد لمی‪ ،‬عید الرجمان بن اجمد ال بیساثوری‪ ،‬دمحم بن حتنی الحساب‪ ،‬حیدر بن حسن الجلنی‪،‬‬ ‫ع‬ ‫ثواب بن حسن الجلنی‪ ،‬کردی علی القارسی‪ ،‬دمحم بن حسن الجلنی‪ ،‬حسین بن ق یل بن الح قاحی‪ ،‬حسین بن اجمد بن عیاش‪ ،‬اسد‬ ‫بن علی العسانی‪ ،‬دمحم بن عید المک چرادۃ‪ ،‬حمزہ بن علی الحسینی‪ ،‬دمحم بن علی المازندرانی‪ ،‬اسد بن اثوب الجلنی‪ ،‬حسن بن حسین‬ ‫الجلنی‪ ،‬علی بن میصور الجلنی‪ ،‬دمحم بن علی الجلنی۔‬

‫طرانلس‪:‬‬ ‫طرانلس (جو لت یان میں وا فع ہے) میں امامنہ مذہب کے قفنہ حسن بن عمار ئے دولت عماریہ مستقر کی جو سنہ ‪ ۳۲۶‬ھ میں‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ن‬ ‫شروع ہو کر سنہ ‪۹۹۶‬ھ میں جیم ہونی اس دور میں پیشمار لمی مراکز وجود میں ئاے‪ ،‬اور امین الدولہ‪ ،‬حسین بن نشر الظرا لسی‪،‬‬ ‫ے ققہاء کو اسی شہر سے نسنت جاصل ہے۔‬ ‫اسعد طب انی روح حیس‬

‫ح یل عامل‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ح یل عامل( جو جیوب لت یان میں وا فع ہے)سے علماء شیعہ کی انک کبیر تعداد وجود میں انی جن میں محقق اول علی بن‬ ‫عید العالی المیسی‪ ،‬محقق دوم علی بن حسین بن علی الکرکی العاملی‪ ،‬شہید اول دمحم بن مکی العاملی‪ ،‬شہید نانی زبن الدبن بن‬ ‫علی العاملی‪ ،‬حسین بن عید الصمد بن دمحم العاملی (ندر شیخ پہانی)‪ ،‬دمحم بن حسین بن عید الصمد (شیخ پہانی)‪ ،‬شیخ دمحم بن حسن‬ ‫‪349‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ئزرگ علماء سامل ہیں‪،‬‬ ‫الحر العاملی(صاحب کیاب وسانل)‪ ،‬دمحم جواد بن دمحمالعاملی(صاحب کیاب المق یاح) حیس‬ ‫ٓ‬ ‫کیاب "الحسین والیشر تع االسالمی" کے مصتف انت ہللا دمحم صادق الکیاسی ئے ح یل عامل کے نذکرہ کے ساتھ ساتھ‬ ‫ٓ‬ ‫قدس و تعلیک ‪ ،‬مصر ‪،‬ثونس‪ ،‬قاس (مراکو کا نابیجت)‪ ،‬قرطنہ(اسئین کا شہر) میں وجود میں ائے والے اسالمی مراکز ئر‬ ‫ت‬ ‫تھی فصیل سے روشنی ڈالی ہے‪.‬‬

‫ائران‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ملک ائران میں رسول اسالم کے دور میں اسالم وارد ہوا‪ ،‬ا تحصرت کے ئزرگ صجانی سلمان قارسی کا اسی ملک سے‬ ‫ت‬ ‫ے لگا‪ ،‬یہ وہ شرزمین ہے کہ حس کے مجلیف شہروں‬ ‫تعلق تھا‪ ،‬سنہ ‪۶۰‬ھ سے اس شر زمین ئر اسالم نیزی کے ساتھ ھیلئ‬ ‫ٓ‬ ‫سے پیشمار ح ید علماء وجود میں ئاے‪ ،‬اہلسنت کے ای مہ ارتعہ میں سے تعض اور صجاح سنہ اور کیب ارتعہ کے نمام‬ ‫مصت فین کا تعلق اسی ملک سے ہے‪ ،‬ہم پہاں اجیصار کے ساتھ ائران کے ان اہم شہروں کا نذکرہ کرئے ہیں کہ جیھیں‬ ‫ع‬ ‫نشر تع اسالم کی نار تخ میں لمی مرکز ہوئے کی ح بییت جاصل ہے۔‬

‫شہر ری‪:‬‬ ‫ے والوں کو رازی کہا گیا جونکہ اس شہر کا دوشرا نام راز تھا‪ ،‬اس شہر میں‬ ‫ری ائران کا پہت قدیم شہر ہے ‪ ،‬پہاں کے ر ہئ‬ ‫ے پہت سارے سادات کرام ئے ائران‬ ‫ے کے لئ‬ ‫اسالم سنہ ‪۶۰‬ھ میں وارد ہوا‪ ،‬بنی امنہ و بنی عیاس کے طلم سے حتئ‬ ‫کی طر ف مہاچرت کی جن میں عید الع ظیم بن عید ہللا بن علی بن حسن بن زند بن امام حسن علنہ السالم تھی سامل ہیں جو‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‪ ،‬اپ ئے امام‬ ‫سنہ ‪۶۹۹‬ھ کو شہر ری میں وارد ہوئے اور تقرن یا سنہ ‪۶۹۰‬ھ میں وقات نانی‪ ،‬اپ قفنہ و مجدث زمایہ تھ‬ ‫ٓ‬ ‫جواد و امام ہادی علیہما السالم سے روانات ت قل کی ہیں‪ ،‬اس شہر سے پیشمار علماء اعالم وجود میں ئاے جن میں علی بن‬ ‫ک‬ ‫ک‬ ‫ع‬ ‫ائراہیم (اعالن) الرازی‪ ،‬دمحم بن ق یل ال لینی‪ ،‬دمحم بن تعقوب ال لینی‪ ،‬اجمد بن قارس الرازی‪ ،‬عید الج یار بن عید ہللا‬ ‫الرازی‪ ،‬حسین بن علی الرازی‪ ،‬دمحم بن دمحم الرازی سامل ہیں۔‬

‫‪350‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قم المقدسہ‪:‬‬ ‫ی‬ ‫حب حجاج بن ثوسف ال ققی ئے مجیان اہلییت کا ق یل عام کیا ثو جاندان اہلییت اور دوسیداران اہلییت کی کبیر تعداد قم‬ ‫ع‬ ‫میں وارد ہونی‪ ،‬ای مہ لیہم السالم کے ئزرگ اصجاب اور علماء شیعہ ئے اسی شہر میں ق یام کیا جن میں زکرنا بن‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ل‬ ‫ٓ ل‬ ‫ادرنس(امام صادق‪ ،‬امام کاطم‪ ،‬امام رصا لیہم السالم کےصجانی)‪ ،‬ادم بن اسجاق بن ادم ا قمی‪ ،‬علی بن ائراہیم ا قمی‪،‬‬ ‫ل‬ ‫ل‬ ‫علی بن حسین بن موسی بن ناثویہ ا قمی‪ ،‬جعقر بن دمحم بن موسی بن فولویہ ا قمی سامل ہیں‪ ،‬لہذا ان یداء سے شہر قم میں‬ ‫موالیان اہلییت کی کبیر تعداد نانی جانی تھی پہاں نک کہ معصومہ قم ہمس یرہ امام رصا علیہا السالم کو تھی اسی شہر میں دفن‬ ‫کیا گیا۔‬ ‫ع‬ ‫سنہ ‪۰۰۳۹‬ھ میں عید الکریم الجائری ئے اس شہر کو دونارہ لمی مرکزنت ع طا کی ‪ ،‬حس کے تعد ققہاء و مراجع کرام‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫کی انک کبیر تعداد اس شہر سے وجود میں ئاے‪ ،‬وقت گزرئے کے ساتھ ساتھ ات قالب ائران کامیاب ہوا اور اج تھی شہر‬ ‫ع‬ ‫قم کو مذہب امامنہ کا لمی مرکز جانا جانا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫اج اس ش ہر میں پہت زنادہ دبنی مراکز نائے جائے ہیں جن کی تعداد ‪ ۹۲‬سے زنادہ ہے لہذا ہم اس مقام ئر‬ ‫گیارہ قدیم مدارس کو انکی نار تخ ناشیس کے ساتھ ن یان کرئے ہیں‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ مدرسہ فیصنہ‪ :‬سنہ تعمیر ‪۰۰۳‬ھ‪۶ ،‬۔ مدرسہ دار الس قاء‪ :‬سنہ تعمیر ‪۰۹۹۹‬ھ‪۰ ،‬۔ مدرسہ مومینہ‪ :‬سنہ تعمیر ‪۰۰۰۰‬ھ‪۳ ،‬۔ مدرسہ جان‪:‬‬ ‫سنہ تعمیر ‪۰۰۶۰‬ھ‪۹ ،‬۔ مدرسہ چہایگیر‪ :‬سنہ تعمیر ق یل ‪۰۰۳۰‬ھ‪۲ ،‬۔ مدرسہ رصویہ‪ :‬سنہ تعمیر ‪۰۶۹۹‬ھ‪۳ ،‬۔ مدرسہ والدہ الساہ‪ :‬سنہ تعمیر‬ ‫تقرن یا ‪۰۶۲۳‬ھ‪۸ ،‬۔ مدرسہ جاحی‪ :‬سنہ تعمیر ‪۰۶۳۰‬ھ‪۰ ،‬۔ مدرسہ ححینہ ضعری‪ :‬سنہ تعمیر‪۰۰۲۳‬ھ‪۰۹ ،‬۔ مدرسہ ححینہ کیری‪ :‬سنہ تعمیر‬ ‫‪۰۰۲۲‬ھ‪۰۰ ،‬۔ مدرسہ الجاج صادق‪ :‬سنہ تعمیر ق یل از ‪۰۶۰۳‬ھ۔‬ ‫ٓ‬ ‫ان مدارس علمنہ کے تعد پہت سارے دنگر مدارس تھی وجود میں ئاے ہیں جن کے اسامی یہ ہیں‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫مدرسہ املی‪ ،‬مدرسہ شہید حسن سیرازی‪ ،‬مدرسہ اصقہانی‪ ،‬مدرسہ وندی‪ ،‬مدرسہ امام امیر المومین‪ ،‬مدرسہ امام ناقر‪ ،‬مدرسہ امام‬ ‫حسین‪ ،‬مدرسہ امام صادق‪ ،‬مدرسہ امام عسکری‪ ،‬مدرسہ امام مہدی‪ ،‬مدرسہ امام موسی ابن جعقر‪ ،‬مدرسہ امام ہادی‪ ،‬مدرسہ شہید‬

‫‪351‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫صدر‪ ،‬مدرسہ تعیت‪ ،‬مدرسہ جائر بن حیان‪ ،‬مدرسہ جامعۃ الزہراء‪ ،‬مدرسہ جعقریہ‪ ،‬مدرسہ حسینہ‪ ،‬مدرسہ حقانی‪ ،‬مدرسہ دار الزہرا‪،‬‬ ‫مدرسۃ الرسالۃ‪ ،‬مدرسہ رسول اعظم‪ ،‬مدرسۃ السینہ‪ ،‬مدرسۃ السعادۃ‪ ،‬مدرسہ شہانیہ‪ ،‬مدرسہ شہیدبن‪ ،‬مدرسہ صدوق‪ ،‬مدرسہ علوی‪،‬‬ ‫مدرسہ عدئریہ‪ ،‬مدرسہ قاطمنہ‪ ،‬مدرسہ کرمانیہ‪ ،‬مدرسہ گلیانکانی‪ ،‬مدرسہ مدنیۃ العلم‪ ،‬مدرسہ مرعسی‪ ،‬مدرسہ معصومنہ‪ ،‬مدرسۃ معھد‬ ‫الدراسات االسالمنۃ‪ ،‬مدرسۃ المعھد العالمی‪ ،‬مدرسہ مکیب ثوحید‪ ،‬مکیب المعصومۃ‪ ،‬مدرسہ مہدیہ‪ ،‬مدرسہ ناپینی‪ ،‬مدرسہ وحیدیہ‪،‬‬ ‫ٓ‬ ‫مدرسہ امام مہدی المیت ظر‪ ،‬مدرسہ امام رصا‪ ،‬مدرسۃ الزہراء‪ ،‬مدرسہ امام حمینی‪ ،‬دائرۃ المعارف الحس بینہ کے مصتف انت ہللا‬ ‫ت‬ ‫ع‬ ‫دمحم صادق الکرناسی ئے اس مقام ئر قزوبن‪ ،‬اصقہان ‪ ،‬چراسان اور پیساثور کے لمی مراکز ئر تھی فصیلی روشنی ڈالی ہے‪،‬‬ ‫ع‬ ‫حس کے تعد اتھوں ئے ہ یدوسیان‪ ،‬ناکسیان‪ ،‬افعانسیان میں موجودہ لمی مراکز کو تھی ن یان قرمانا ہے۔‬ ‫ٔ‬ ‫ع‬ ‫پیسک دبنی مراکز کی ناشیس اور ت لیمی درسگاہوں کی اہمیت انک انسا موصوع ہے حس ئر پہت کم ارناب‬ ‫تحفیق ئے ثوجہ کی‪ ،‬اگرجہ نار تخ ثونسی میں اہل علم حصرات ئے ابنی ثوان یاں ئروئے کار الکر مج یلف موصوعات ئر دائرۃ‬ ‫ٓ‬ ‫ع تح‬ ‫ے لیکن جو کام دائرۃ المعارف الحس بینہ میں لمی و فیقی انداز میں ہوا وہ ابنی میال اپ ہے‪ ،‬ضرورت‬ ‫المعارف مرنب کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے‬ ‫اس امر کی ہے کہ اس طرح کے اہم موصوعات ئر ہر جوالہ سے تحفیق کا کام کیا جائے ناکہ ان یدہ نسلوں کے لئ‬ ‫ع‬ ‫معلومات یکجا ہوں اور جاالت کے ہر لمجہ ن یدنل ہوئے والی صورت کے ساتھ ساتھ لمی جلقوں میں ئرقی اور نکا مل کی‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے۔‬ ‫راہیں ہموار ہو سکیں اور دبنی و ت لیمی مراکز کی اہمیت و انار سے اگاہی کا حصول ہو سک‬

‫‪352‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬ ‫جلد چہارم‬ ‫کیاب "امام حسین اور شرتعت اسالمی" دس سے زاند جلدوں ئر مشتمل ہے‪ ،‬حس کی جوتھی جلد (جو ‪ ۳۸۹‬ص فجات ئر مشتمل‬ ‫ٓ‬ ‫ہے) سنہ ‪۰۰۰۳‬ء میں لکھی گنی اور سنہ ‪۶۹۹۸‬ء کو زثور طبع سے اراسنہ ہو نی‪ ،‬قاربین کرام اس کیاب میں موجود م طالب‬ ‫ٓ‬ ‫ن‬ ‫کی لحیص کو ئاے والے ص فجات ئر مالخ ظہ قرمابیں۔‬

‫‪353‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫‪354‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫ع‬ ‫اجیہاد کا نس مت ظر‪ :‬انک لمی جوالہ‬ ‫ٓ‬ ‫ے قران مج ید کو نازل قرمانا‪ ،‬حس میں عصر ببعمیر سے روز ق یامت نک‬ ‫ہللا ن یارک و تعالی ئے امت مسلمہ کی ہدانت کے لئ‬ ‫صاب ٔظہ عمل موجود ہے‬ ‫ع‬ ‫و الرطب و ال یابس اال فی کتاب مبین (سورہ االتعام‪ )۹۰:‬لیکن ان فوابین کا ثورا علم ضرف معصومین لیہم السالم کو‬ ‫ٓ‬ ‫ش‬ ‫ے کی صالجیت نانی جانی ہے‬ ‫جاصل ہے کیونکہ جدا کے تعد پ ہی وہ اقراد ہیں کہ جتمیں قران مج ید کے ناطن کو مجھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ٔ‬ ‫و ما یعلم تاویله اال ہللا و الراسخون فی العلم ( ٔ‬ ‫سورہ ال عمران‪ ،)۳:‬اور ہللا ن یارک و تعالی ئے ہر سی کا علم تھی‬ ‫اتھیں اقراد کو ع طا قرمانا ہے‬ ‫و کل شی احصیناہ فی امام مبین (سورہ نس‪)۰۶ :‬‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫ے تھی مسانل پیش ائے ان سب کا جواب‬ ‫لہذا ا تحصرت کے دور سے امام مہدی علنہ السالم کی عییت کیری نک حیئ‬ ‫ع‬ ‫معصومین لیہم السالم ئے روانات کے ذرتعہ ع طا قرمانا‪ ،‬لیکن سنہ ‪۰۶۰‬ھ میں حب امام مہدی علنہ السالم ئے عییت‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫م ت‬ ‫ے جن کا جکم یہ ثو قران مج ید میں‬ ‫کیری احت یار قرمانی اور معصوم کا س فیم فیض می قطع ہوا اور جدند مسانل ت ھی پیش ئاے لگ‬ ‫ٓ‬ ‫ضراحت کے ساتھ ب ظر انا اور یہ ہی جدنث میں‪ ،‬ثو اس مقام ئر امام مہدی کے نان یان عام ( کہ ح یکی طرف رجوع کرئے کا‬ ‫جکم جود امام مہدی علنہ السالم ئے یہ کہہ کر دنا کہ‬ ‫واما الحوادث الواقعة فارجعوا فیھا الی رواۃ حدیثنا فانھم حجتی علیکم و انا حجة ہللا علیھم‬

‫‪355‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫تعنی میرے تعد وا فع ہوئے والے مسانل میں ہماری روانات ت قل کرئے والوں کی طرف رجوع کرو جونکہ وہ یم ئر میری‬ ‫جانب سے حجت ہیں اور میں ان ئر ہللا کی حجت ہوں۔ وسانل السیعہ جلد ‪ ۶۳‬ص ‪ )۰۳۹‬ئے علم اصول(‪)1‬کا شہارا لیا‬ ‫ے۔‬ ‫ناکہ ان اصول کے ذرتعہ جکم شرغی نک رسانی ہو سک‬ ‫ع‬ ‫ے اصجاب سے یہ‬ ‫اس نات میں کونی سک پہیں کہ علم اصول کی اتجاد ای مہ لیہم السالم ئے قرمانی‪ ،‬اور ا بئ‬ ‫جاہا کہ وہ ان کے ن یان کردہ اصول میں سے قروع ن یدا کربں‪ ،‬حیسا کہ امام صادق علنہ السالم ئے قرمانا‪:‬‬ ‫انما علینا ان نلقی الیکم االصول و علیکم ان تفرعوا‬ ‫ہماری ذمہ داری یہ ہے کہ ہم یم ئر اصول کو القاء کربں اور ی مھارا قرنصہ یہ ہے کہ یم ان اصول سے قروعات کو ن یدا کرو‬ ‫ٓ‬ ‫(وسانل السیعہ کیاب فصا‪ ،‬جدنث ‪ ، )۹۰‬اسی طرح کا مضمون ہمیں امام رصا علنہ السالم کی روانت میں تھی ب ظر ا نا ہے‬ ‫ٓ‬ ‫کہ حس میں اپ ئے قرمانا‪:‬‬ ‫علینا القاء االصول و علیکم التفریع (وسانل السیعہ کیاب فصا‪ ،‬جدنث ‪)۹۶‬‬ ‫ع‬ ‫لہذا یہ کہا جائے گا کہ موجودہ علم اصول‪ ،‬ای مہ لیہم السالم کے ن یان کردہ اصول کی قرع ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫یہ نات تھی قانل ذکر ہے کہ علم اصول‪ ،‬اجیہاد (‪ )2‬اور قران و افوال ای مہ کی روشنی میں فیوی (‪ )3‬دن یا ای مہ لیہم‬ ‫ے صجانی انان بن تعلب سے قرمانا‪:‬‬ ‫السالم کی دور میں تھی را تج تھا‪ ،‬امام ناقر علنہ السالم ئے ا بئ‬ ‫اجلس فی مسجد المدینة وافت الناس فانی احب ان یری فی شیعتی مثلک اے انان مسجد الییوی میں پییھو اور‬ ‫ے اقراد نائے جابیں(رجال تجاسی‪ ،)۰۹ :‬ای مہ‬ ‫فیوی دو ‪ ،‬کیونکہ میں دوست رکھیا ہوں کہ میرے شیعوں میں ی مھارے حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫ے پ ہی وجہ‬ ‫لیہم السالم ئے انان کی طرح کنی ساگرد ئربیت قرمائے جو قران و اجادنث کی روشنی میں فیوی دنا کرئے تھ‬ ‫ٓ‬ ‫ع‬ ‫‪ -1‬علم اصول‪ :‬ان فواعد کا علم کہ جن کے ذرتعہ جکم شرغی کسف کیا جانا ہے‪ ،‬علم اصول میں موجودہ نمام فواعد قران اورمعصومین لیہم السالم کے‬ ‫ارسادات سے ماجوذ ہیں۔‬ ‫ع‬ ‫‪2‬‬ ‫ اجیہاد‪ :‬وہ لمی جد و چہد کہ حس کے پییجہ میں جکم شرغی نک رسانی جاصل ہونی ہے۔‬‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫‪ -3‬فیوی‪ :‬قران‪ ،‬جدنث‪ ،‬عقل اور اجماع کی روشنی میں قفنہ کی رائے کو فیوی کہئ‬

‫‪356‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ہے کہ امام مہدی علنہ السالم کی عییت کیری کے تعد اجیہاد کو نیزی کے ساتھ قروغ جاصل ہوا ‪ ،‬اج تھی ققہاء کرام فیوی‬ ‫دے کر امام ناقر علنہ السالم کی جواہش اور ابنی شرغی ذمہ داری کو ثورا کرئے ہیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫اسی سل ٔ‬ ‫ے ہوئے انت ہللا دمحم صادق الکرناسی ئے "الحسین و الیشر تع االسالمی" کی جلد‬ ‫سلہ اجیہاد کو ئرقرار ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫چہام (جو ‪ ۳۸۹‬ص فجات ئر مشتمل ہے اور سنہ ‪ ۶۹۹۸‬میالدی میں چھپ کر مت ظر عام ئر اجکی ہے) میں امام حسین علنہ‬ ‫السالم کی ان روانات ئر اجیہادی تجث قرمانی ہے کہ جن کا تعلق ناب ظہارت سے ہے‪ ،‬گرجہ اثواب قفہ میں نمام‬ ‫ع‬ ‫ے ہیں لیکن مصتف ئے اس کیاب میں انک میقرد انداز احت یار کیا کہ‬ ‫ققہاء کرام ای مہ لیہم السالم کی روانات کا شہارا لیئ‬ ‫حشمیں اتھوں ئے نمام اثواب قفہ میں ضرف امام حسین(ع) کی اجادنث کے ذرتعہ اس بت یاط قرمانا ہے ۔‬ ‫حس طرح "الحسین و الیشر تع االسالمی" کی گزسنہ بین جلدوں میں مقدمانی میاحث ئر گق یگو کی گنی اسی طرح مصتف ئے‬ ‫اس مقام ئر تھی ح ید مقدمانی میاحث کو پیش قرمانا ہے کہ جن کی طرف ہم اجمال کے ساتھ اسارہ کرئے ہیں۔‬

‫ے مروجہ القاب‪:‬‬ ‫علماء کے لئ‬ ‫ے مذہب کے علماء کا اخیرام اور ان کی قدر دانی کرئے ہوئے اتھیں مج یلف القاب سے ثوازنی ہے لیکن حس‬ ‫ہر فوم ا بئ‬ ‫قدر دبن اسالم ئے علم اور عالم کو اہمیت دی ہے ساند ہی کسی مذہب ئے دی ہو‪ ،‬کیونکہ دبن اسالم وہ دبن ہے کہ جو‬ ‫ع‬ ‫گہوارے سے لجد نک ت لیم جاصل کرئے کا جکم دن یا ہے‪ ،‬اس دبن میں عالم کی دو رکعت نماز جاہل کی سیر رکعت نماز‬ ‫ٓ‬ ‫کے سے پہیر ہے‪ ،‬لہذا نار تخ نشر تع میں علماء کو کیھی قفنہ‪ ،‬عالمہ‪ ،‬حجت االسالم کہا گیا ثو کیھی قاصل‪ ،‬انت ہللا اور امام‬ ‫ے القاب سے ثوازا گیا۔‬ ‫حیس‬ ‫ٓ‬ ‫دائرۃ المعارف الحس بینہ کےمصتف انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے اس مقام ئر نشر تع اسالمی میں علماء کے‬ ‫ے مروجہ القاب کی نشر تح کی کہ جن میں سے ہر انک کی تعرتف کو ہم قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں‪:‬‬ ‫لئ‬

‫‪357‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫قفنہ‪:‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬لہذا جو سحص فہیم ہو اسے قفنہ کہا جانا ہے اور اسکی حمع ققہاء ہے‪ ،‬اص طالح میں قفنہ اس‬ ‫لعت میں قفہ فہم کو کہئ‬ ‫ے صجانی انان‬ ‫ے کی صالجیت نانی جانی ہو‪ ،‬امام صادق علنہ السالم ئے یہ ل فظ ا بئ‬ ‫ے ہیں کہ حس میں فیوی د بئ‬ ‫سحص کو کہئ‬ ‫ے ان کی وقات کے تعد اشیعمال کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫بن تعلب کے لئ‬ ‫اما وہللا لقد اوجع قلبی موت ابان‪ ،‬و کان قارئا من وجوہ القراء‪ ،‬فقیھا لغویا‪ ،‬سمع من العرب‪ ،‬و حکی‬ ‫عنھم‬ ‫ٓ‬ ‫ے کہ‬ ‫ے قفنہ و ادنب تھ‬ ‫ے‪ ،‬وہ ا نس‬ ‫ے رتج یدہ کردناہے‪ ،‬پیسک وہ قارنان قران میں سے تھ‬ ‫جدا کی قشم انان کی موت ئے مجھ‬ ‫جیہوں ئے ادناء عرب سے علم جاصل کیا اور ہمہ وقت اس کی ئرو تج میں مسعول و مصروف رہے (معحم رجال جدنث‬ ‫جلد اول ص فجہ ‪)۰۳۳‬۔‬

‫عالمہ‪:‬‬ ‫عالمہ عالم کا اشم میالعہ ہے تعنی وہ سحص جو دبنی علوم میں اعلی مرانب ئر قائز ہو۔‬

‫حجت‪:‬‬ ‫ے ہیں‪،‬اور نشر تع میں حجت اس سحص کو کہا جانا ہے کہ حس کا فول فعل اور تقرئر لوگوں‬ ‫لعت میں دلیل و ئرہان کو حجت کہئ‬ ‫ع‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے اشیعمال ہونا ہے اور ہم اتھیں حجت ہللا کہئ‬ ‫ے حجت ہو‪ ،‬لہذا یہ ل فظ معصومین لیہم السالم کے لئ‬ ‫کے لئ‬

‫عالم‪:‬‬ ‫ے ہیں‪ ،‬امام صادق علنہ السالم ئے عالم کی تعرتف کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫ے والے کو عالم کہئ‬ ‫علم دبن جا بئ‬ ‫یعنی بالعلماء من صدق فعله قوله‪ ،‬و من لم یصدق فعله قوله فلیس بعالم‬

‫‪358‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے ہیں( الکاقی جلد اول ص فجہ ‪۰۲‬۔) عالم پہت ع ظیم‬ ‫حس سحص کا فول اس کے فعل سے م طاتقت کرے اسے عالم کہئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے کی عظمت کو ہللا ن یارک و تعالی ئے قران مج ید میں ثوں ن یان قرمانا‪:‬‬ ‫رنیہ ہے اس مر بئ‬ ‫انما یخشی ہللا من عبادہ العلما (قاطر ‪۶۸‬۔)‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫تعنی علماء ہی ہللا کا جوف ر کھئ‬

‫قاصل‪:‬‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫ے علم ئر عمل کرئے ہوئے رذانل اور ت قانص سے دوری احت یار کرے اسے قاصل کہئ‬ ‫جو سحص ا بئ‬

‫امام‪:‬‬ ‫اس کلمہ کا اطالق امام معصوم ئر ہونا ہے‪ ،‬اور اس نات میں کونی سک پہیں کہ درجہ امامت درجہ بیوت سے نلید ہ ئر‬ ‫ے ثو ہللا ن یارک و تعالی ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ہے جونکہ ح یاب ائراہیم حب بنی تھ‬ ‫انی جاعلک للناس اماما (سورہ تقرہ‪)۰۶۳ :‬‬ ‫پیسک میں ی مہیں لوگوں کا امام ن یا رہا ہوں‬ ‫ے اثوحییفہ کو انکی وقات کے تعد امام‬ ‫لیکن قرن دوم ہحری کے تعد یہ کلمہ غیروں ئے تھی اشیعمال کیا اور سب سے پہل‬ ‫کہا گیا۔‬

‫آنت ہللا‪:‬‬ ‫ے جد امجد حصرت امیر المومئین علی ابن ابت طالب علنہ السالم کو مجاطب‬ ‫اس لقب سے امام ناقر علنہ السالم ئے ا بئ‬ ‫کرئے ہوئے قرمانا ‪:‬‬ ‫لسالم علیک یا آیة ہللا العظمی (تجار االثوار جلد ‪ ۰۳‬ص فجہ ‪)۰۳۰‬‬ ‫‪359‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫سلمان قارسی ئے تھی موال علی علنہ السالم کو اسی لقب سے مجاطب کرئے ہوئے قرمانا‪:‬‬ ‫یا امیر المومنین انت وہللا اآلیة ہللا العظمی(تجار االثوار جلد ی میر ‪ ۶۳‬ص فجہ ‪)۰۹‬۔‬ ‫ح‬ ‫ع‬ ‫پیسک مذکورہ نمام القاب کے فیقی حقدار معصومین لیہم السالم ہی ہیں‪ ،‬لیکن علماء کو ان القاب سے اعزازا‬ ‫ے اشیعمال کرئے‬ ‫ے لئ‬ ‫ے یہ شزاوار پہیں ہے کہ وہ ان القاب کو ا بئ‬ ‫اور ن یان یا ثوازا جانا ہے ‪،‬لہذا انک عالم دبن کے لئ‬ ‫ے اتھوں ئے اس نات میں شرف محشوس کیا کہ لوگ اتھیں ہللا کا عید‬ ‫ئرمصر ہو کیونکہ جود جو اقراد ان القاب کے حقدار ت ھ‬ ‫ے ہم کل ٔ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫مہ شہادت میں و اشھد ان محمدا عبدہ و رسوله کہئ‬ ‫کہیں‪ ،‬اسی لئ‬

‫اثواب قفہ کی اتجاد‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے اتحصرت(ص) کے صجانی علی بن انی‬ ‫علم قفہ میں اثواب کی اتجاد رسول اسالم کے دور سےہونی‪ ،‬سب سے پہل‬ ‫را فع ئے حصرت علی علنہ السالم کی اجادنث کو ناب وصو ‪ ،‬ناب صلوۃ کے ذنل میں حمع کیا‪ ، ،‬حب دمحم بن تعقوب بن‬ ‫ٓ ٓ‬ ‫ک‬ ‫اسجاق (معروف یہ شیخ لینی میوقی سنہ‪۰۶۰‬ھ ) کا دور انا ثو اپ ئے اثواب قفہ کو اصول دبن اور قروع دبن کے ذنل‬ ‫ت‬ ‫ے قرزند دمحم (شیخ صدوق) کے‬ ‫میں فشیم قرمانا‪ ،‬اسی دور میں علی بن حسین (ندر شیخ صدوق میوقی سنہ ‪ )۰۶۰‬ئے ا بئ‬ ‫ے کیاب شرا تع لکھی کہ حس میں سید روانت کو ئرک کیا دنا گیا حس کے تعد کیاب قفہ میں اسیاد کا نذکرہ کلی طور ئر میروک‬ ‫لئ‬ ‫ے دنت و جدود کے‬ ‫قرار نانا‪ ،‬محقق جلی (میوقی سنہ‪۲۳۲‬ھ ) ئے اثواب قفہ کو عیادات‪ ،‬معامالت‪ ،‬ات قاعات‪ ،‬احکام( حیس‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫احکام) ئر فشیم قرمانا اور انت ہللا دمحم ناقر سیزواری(میوقی سنہ ‪۰۹۰۹‬ھ) ئےسب سے پہلی ثوصیح المسانل لکھی حس کے‬ ‫ٓ‬ ‫تعد ان کی کیاب ئر تعد میں ئاے والے علماء ئے ابنی رائے(فیوی) کے م طاثق جاسنہ لگائے‪ ،‬زمایہ کے گزرئے کے‬ ‫ٓ‬ ‫ساتھ ساتھ دو اور مشہور کیابیں ن یام تجنہ( مصتف انت ہللا دمحم ائراہیم الکرناسی میوقی سنہ ‪۰۶۲۰‬ھ )اور عروۃ الوتقی(‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬ ‫مصتف انت ہللا سید کاطم ئزدی میوقی ‪۰۰۰۳‬ھ) وجود میں ابیں کہ جن ئر تھی ئے سمار مراجع کرام ئے جاسنہ لگائے‪،‬‬ ‫محسن بن مھدی الحکیم (جو سنہ ‪۰۰۹۲‬ھ میں ن یدا ہوئے اور سنہ ‪ ۰۰۰۹‬میں وقات نانی )ئے میہاج الصالجین لکھی کہ حس‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہیں۔‬ ‫کے تعد اج نک مراجع کرام اسی اسلوب ئر قق ہی کیابیں لکھئ‬ ‫‪360‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫کیاب ظہارت‪:‬‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے کیاب "الحسین و الیشر تع االسالمی" کی جلد اول سے جلد چہارم کے نصف اول نک‬ ‫مقدمانی میاحث ئر گق یگو کی اور اس مقام سے مصتف ئے اصل موصوع تعنی امام حسین اور قاثونگذاری کا آعاز کرئے‬ ‫ہوئے ناب ظہارت میں احکام تجلی‪ ،‬احکام اشییجا‪ ،‬احکام ثول الصنی‪ ،‬احکام اشیحمام‪،‬احکام وصو‪ ،‬احکام یک فین میت میں‬ ‫سے ہر انک کے مبعلق امام حسین علنہ السالم سے میشوب نمام اجادنث ئر اس بت یاطی و اجیہادی تجث قرمانی ہے‪ ،‬ہم‬ ‫پہاں احکام تجلی سے مبعلق امام حسین علنہ السالم کی انک جدنث ئر اکی قا کرئے ہوئے اس میں موجود نمام جوانب کو‬ ‫ے‬ ‫ے انک حمیہد کے ل ئ‬ ‫قاربین کی جدمت میں پیش کرئے ہیں ناکہ واصح ہو جائے کہ کسی تھی مسیلہ نک رسانی کے لئ‬ ‫کس قدر جد وچہد درکار ہے‪:‬‬ ‫سئل الحسین بن علی ما حد الغائط؟ قال ال تستقبل القبلة و تستدبرھا‪ ،‬وال تستقبل الریح وال تستدبرھا‬ ‫(تھایۃ االحکام جلد اول ص فجہ ‪)۸۶‬‬ ‫ٓ‬ ‫حب کسی سحص ئے امام حسین علنہ السالم سے ر فع جاحت کے نارے میں سوال کیا ثو اپ ئے قرمانا ر فع جاحت کے‬ ‫مو فع ئر رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ‪ ،‬رو یہ ہوا نا نست یہ ہوا مت پییھو۔‬ ‫ے سید جدنث ئر تحفیق و ئررسی کی حس کے‬ ‫اس جدنث کے ت قل کرئے کے تعد مصتف ئے سب سے پہل‬ ‫تعد جدنث سے ماجوذ ققہاء کے افوال کو ان کے دالنل کے ساتھ ن یان قرمانا‪ ،‬امام حسین علنہ السالم کی مذکورہ جدنث میں‬ ‫ے نائے جائے ہیں‪ ،‬پہال مسیلہ اسق یال و اسیدنار ق یلہ کے نارے میں ہے اور دوشرا مسیلہ اشتق یال و اسیدنار ر تح‬ ‫دو مسیل‬ ‫ے ہم مسیلہ اسق یال و اسیدنار ق یلہ میں موجودہ ققہاء کے ضرف جار مشہور افوال ن یان‬ ‫سے مبعلق ہے‪ ،‬لہذا سب سے پہل‬ ‫کرئے ہیں ‪:‬‬ ‫ے میدان نا ن ید مکان میں رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ پییھیا چرام ہے ( اکیر ققہاء امامنہ‬ ‫‪۰‬۔ پیساب اور ناتجایہ کرئے وقت‪ ،‬کھل‬ ‫ئے اس جکم ئر ات قاق کیا ہے)‬

‫‪361‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ے میدان میں رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ پییھیا چرام ہے (مالکی‪ ،‬ساف عی‪ ،‬حت یلی‬ ‫‪۶‬۔ پیساب اور ناتجایہ کرئے وقت ضرف کھل‬ ‫اس جکم ئر ات قاق کرئے ہیں)‬ ‫ے میدان نا ن ید مکان میں رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ پییھیا مکروہ ہے ( شیخ مق ید ‪،‬‬ ‫‪۰‬۔ پیساب اور ناتجایہ کرئے وقت‪ ،‬کھل‬ ‫مقدس اردن یلی اور دمحم بن علی عاملی اس جکم ئر ات قاق کرئے ہیں)‬ ‫ے میدان میں رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ پییھیا چرام ہے لیکن ن ید مکان میں‬ ‫‪۳‬۔ پیساب اور ناتجایہ کرئے وقت‪ ،‬ضرف کھل‬ ‫یہ عمل مکروہ ہے( تعض علماء ئے اس جکم ئر ات قاق ہے)‬ ‫ے ہیں‪ ،‬لہذا اکیر‬ ‫ے جا سکئ‬ ‫جونکہ جدنث شرتف میں موجودہ مماتعت سے کراہت اور چرمت دوثوں معانی اجذ کئ‬ ‫ٓ‬ ‫ے ہوئے مذکورہ مسیلہ میں چرمت کا فیوی جاری کیا‪ ،‬انت ہللا‬ ‫علماء کرام ئے سیاق و سیاق اور دنگر روانی ادلہ کو مد ب ظر ر کھئ‬ ‫ٓ‬ ‫ت‬ ‫دمحم صادق کرناسی ئے مذکورہ نمام اراء اور ان کے دالنل ئر فصیلی ت قد و ئررسی کے تعد پہلی رائے کو نسید قرمانا‪ ،‬جونکہ‬ ‫ٓ‬ ‫مصتف کے ئزدنک روانات کے م طاثق جای ٔہ کعنہ ہللا تعالی کی ع ظیم انات میں سے انک ہے‪ ،‬اور ق یلہ رخ نا نست یہ‬ ‫ق یلہ ہو کر ر فع جاحت کرنا اس میارک مکان کی ثوہین کرئے کے ئرائر ہے ۔‬ ‫ے ہیں‪:‬‬ ‫ے سے میدرجہ ذنل ن یا تج اجذ کئ‬ ‫ے حص‬ ‫مصتف ئے امام حسین (ع) کی اس جدنث شرتف کے پہل‬ ‫‪۰‬۔ جالت احت یار میں رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ ر فع جاحت کرنا چرام ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ مذکورہ جکم پیساب اور ناتجایہ دوثوں ئر الگو ہونا ہے۔‬ ‫‪۰‬۔ اشبیراء اور ظہارت کے مو فع ئر اگر پیساب اور ناتجایہ جارج ہونا ہو ثو رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ پییھیا چرام ہے۔‬ ‫‪۳‬۔ علی ال طاہر مذکورہ جکم کا اطالق ضرف جای ٔہ کعنہ ئر ہونا ہے یہ کہ ق ی ٔلہ اول (بیت المقدس) ئر۔‬ ‫‪۹‬۔ مکلف کو جالت اص ظرار میں احت یار ہے‪ ،‬جاہے رو یہ ق یلہ ہو کر ر فع جاحت کرے نا ئرعکس‪ ،‬لیکن اگر عرف میں ان‬ ‫میں سے کونی انک زنادہ قییح ہو ثو اس چہت کا ئرک کرنا ضروری ہے۔‬ ‫‪۲‬۔ اشتق یال و اسیدنار کا جکم ضرف عوربین (شرمگاہ) سے پہیں نلکہ مقادیم (تعنی ثورے ندن کے جاص حصوں) سے‬ ‫تعلق رکھیا ہے۔‬

‫‪362‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ے میں قرار نائے ثو مذکوہ جکم علی ال طاہر الگو‬ ‫‪۳‬۔ اگر ائرنسن کی وجہ سے پیساب اور ناتجایہ کا محرج موق یا ندن کے کسی اور حص‬ ‫ٓ‬ ‫ے ندل دنا‬ ‫پہیں ہوگا‪ ،‬لیکن اگر پیساب اور ناتجایہ کے محرج کو کسی بتماری کی وجہ سے ائرنسن کے ذرتعہ ہمیشہ کے لئ‬ ‫جائے ثو اس مو فع ئر جدند محرج کو رو یہ ق یلہ نا نست یہ ق یلہ قرار دے کر ر فع جاحت کرنا جائز یہ ہوگا۔‬ ‫‪۸‬۔ حس سحص کو کسی مقام ئر شمت ق یلہ کا علم یہ ہو ثو ناب صلوۃ میں جو س یاحت ق یلہ کا طرتفہ ن یال گیا ہے اس ئر عمل‬ ‫ت‬ ‫کرے‪ ،‬اور اس طرف ر فع جاحت یہ کرے کہ حس طرف ق یلہ کے ہوئے کا اجتمال ہو‪ ،‬لیکن اگر فحص کے تعد چہت ق یلہ کا‬ ‫ے ثو کسی تھی چہت میں ر فع جاحت کرنا جائز ہے۔‬ ‫تعین یہ ہو سک‬ ‫‪۰‬۔ اظقال اور محیون اقراد کے ر فع جاحت کے وقت ان کے اولیاء ئر الزم ہے کہ وہ مذکورہ جکم کا ثورا ح یال رکھیں۔‬ ‫ٓ‬ ‫ے ئر‬ ‫مصتف انت ہللا کرناسی ئے مذکورہ ن یا تج کے اجذ کرئے کے تعد جدنث شرتف کے دوشرے مسیل‬ ‫ے ہوئے قرمانا کہ اشتق یال و اسیدنار ر تح میں حمہور ققہاء ئے کراہت کا جکم دنا ہے لیکن ان کے درمیان اس‬ ‫روشنی ڈا لئ‬ ‫سلسلہ میں جار ب ظرنات نائے جائے ہیں‪ ،‬اور وہ ب ظرنات یہ ہے‪:‬‬ ‫‪۰‬۔ ضرف پیساب کرئے وقت رو یہ ہوا پییھیا مکروہ ہے۔‬ ‫‪۶‬۔ پیساب و ناتجایہ کرئے وقت رو یہ ہوا پییھیا مکروہ ہے۔‬ ‫‪۰‬۔ پیساب و ناتجایہ کرئے وقت رو یہ ہوا نا نست یہ ہوا پییھیا مکروہ ہے‬ ‫‪۳‬۔ ضرف پیساب کرئے وقت رو یہ ہوا نا نست یہ ہوا پییھیا مکروہ ہے۔‬ ‫مصتف ئے اس مسیلہ میں تھی مذکورہ ناال ب ظرنات ئر ت قد و ئررسی کے تعد اشتق یال و اسیدنار ر تح کی کراہت کو‬ ‫ضرف پیساب سے مبعلق جان کر جوتھی رائے کو احت یار قرمانا ہے‪ ،‬جونکہ اس جکم کی مماتعت کی وجہ تجاست کا ندن نا‬ ‫لیاس ئر شرانت یہ کرنا ہے لہذا اس حکمت کا تعلق پیساب ہی سے ہو سکیا ہے۔‬ ‫ٓ‬ ‫انت ہللا دمحم صادق کرناسی ئے ناب ظہارت کے تفنہ عیوانات کے تجت امام حسین علنہ السالم کی‬ ‫ع تح‬ ‫اجادنث ئر اسی روش کے ساتھ روشنی ڈالی ہے اور امام علنہ السالم کے قرمودات سے ئے سمار لمی و فیقی ن یا تج اجذ‬

‫‪363‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫قرمائے ہیں‪ ،‬مصتف کے اس عمل سے واصح ہو جانا ہے کہ پیسک امام حسین علنہ السالم رسول اسالم کی اس جدنث‬ ‫ٓ‬ ‫شرتف کا مصداق ہیں کہ حس میں ا تحصرت ئے قرمانا‪:‬‬ ‫ان الحسین مصباح ھدی و سفینة نجا ة و امام خیر و یمن و عز و فخر و بحر علم و ذخر‪ ،‬الحسین منی و‬ ‫انا من الحسین‬ ‫ے امام کہ جو صاحب خیر و ئرکت ‪ ،‬صاحب عزت و افیجار اور‬ ‫تقت یا امام حسین علنہ السالم ہدانت کا چراغ‪ ،‬کشنی تجات‪،‬ا نس‬ ‫درنائے علم و شرمایہ ہیں۔‬

‫‪364‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬ ‫ٓ‬ ‫ات حسین کے ‪ ۰۹‬ماجذ و مصادر‬ ‫حسینی دائرۃ المعارف کی ‪ ۸۲‬سا تع سدہ کیب سے تجل ی ِ‬

‫ٓ‬ ‫حسین کریم قران ع ظیم کی روشنی میں‬

‫امام حسین علنہ السالم شنت کی رو شنی میں‬

‫(جلد اول)‬

‫(جلد اول)‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم‬

‫سیرت امام حسین علنہ السالم‬ ‫(جلد دوم)‬

‫(جلد اول)‬

‫‪365‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫نسل اثو طالب سے ہاشمی انصار امام حسین‬

‫نسل اثو طالب سے ہاشمی انصار امام حسین‬

‫علنہ السالم (جلد اول)‬

‫علنہ السالم(جلد دوم)‬

‫نسل اثو طالب سے ہاشمی انصار امام حسین‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬

‫علنہ السالم(جلد سوم)‬

‫(جلد اول)‬

‫‪366‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬

‫امام حسین علنہ السالم کی مددگار جوابین‬

‫(جلد دوم)‬

‫(جلد سوم)‬

‫جواب‪ ،‬مساہدے اور تعبیر‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬

‫(جلد اول)‬

‫(جلد اول)‬

‫‪367‬‬


‫‪ ‬تجلی ِات حسین ‪‬‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬

‫(جلد دوم)‬

‫(جلد سوم)‬

‫امام حسین اور شرتعت اسالمی‬ ‫(جلد چہارم)‬

‫‪368‬‬